Wednesday, April 8, 2020

New urdu novels ab sa tum mra ho by sidra hussain


آب سے تم میرے ہو۔۔۔۔۔۔❤️❤️❤️
از-قلم  سدرہ حسین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھابی یہ کیا سُن رہی ہوں میں کیا واقعی آپ ادا کا نکاح ابراہیم سے کروانے پر راضی ہو گئی ہے ؟
ہاں راحیلہ کیا کروں تم تو جانتی ہوں خان صاحب  کے اگے ہماری کہاں چلتی ہے اب یہ انوکھی ضد ہے اُنکی تب تک ہم کینیڈا شفٹ نہیں ہو سکتے جب تک ادا کا نکاح ابراہیم سے نہ ہو جائے اور تم تو جانتی ہو ہمارا وہاں جانا بھی ضروری ہے پتہ نہیں کیسا ڈر بیٹھ گیا ہے اُن کے دل میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلیے کوئی بات نہیں بھابھی پریشان نہیں ہو دیکھیے گا سب بہتر ہوگا ۔۔۔۔۔۔
انشاءاللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ بہت پیارا بنگلہ نما گھر ہے جس کے برے خان صاحب ہے اُنھوں نے یہ گھر بہت پیار سے بنوایا اُن کی اہلیہ مختار صاحبہ نے اس گھر کو سجانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی ہر چیز بہت نفاست سے اپنی جگہ پر رکھی گئی اُن کے تین ہی بیٹے ہیں سب سے برے رحیم خان اُنکی بیوی زکیہ بیگم اُنکی دو اولادیں ہیں بیٹا ابراہیم  اُس سے دو سال چھوٹی بیٹی پاکیزہ ۔۔۔۔۔۔
اُن سے چھوٹے بیٹے کلیم خان جس نے ضد کر کے پسند کی شادی کی تھی لیکن اُن کی بیوی رابعہ نے کبھی اُن کو شکایت کا مواقع نہیں دیا تھا اُن کی اس  سے ایک ہی اولاد 6 سالہ  بیٹی ادا فاطمہ ہے ۔۔۔۔۔۔
سب سے جھوٹے بیٹے سکندر خان ان کی بیوی راحیلہ اُن کا ابھی ایک ہی بیٹا  ہے  دو سال کا حماد خان جتنا پیارا گھر ہے اتنے ہی پیار کرنے والے اس گھر میں رہائش پذیر ہیں سب کی ایک دوسرے میں جان بستی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کلیم خان کو ہمشہ سے ملک سے باہر سیٹ ہونے میں انڑسٹ تھا اب بزنس کے سلسلے میں اُنکو کچھ عرصے کے لیے کینیڈا شفٹ ہونا تھا، وہ اپنی بیوی بچی کے بغیر وہاں نہیں جانا چاہتے تھے ۔۔۔۔
خان صاحب کے دل میں عجیب ڈر نے جگہ لے لی تھی اگر کلیم وہی کا ہو کر رہ گیا تو؟
مختار بیگم نے بہت سمجھانے کی کوشش کی لیکن خان صاحب نہیں مانے اور بچوں کے نکاح کی شرط رکھ دی جس پر کسی کو کوئی اعتراض نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔۔
 ابراہیم 13،سالہ لڑکا تھا جو شاید کہی نہ کہی نکاح کا مطلب بخوبی جانتا تھا وہ اس بندھن میں نہیں بندھنا چاہتا تھا لیکن ماں باپ کے اگے اُسکی بات کی کوئی اہمیت نہیں تھی جہاں ادا ابھی معصوم سی نیلی آنکھوں والی بچی تھی وہی ابراہیم اپنی عمر سے زیادہ عقل مند سنجیدہ رہنے والا لڑکا ہے جسکو ہر کام وقت پر پرفیکٹ کرنے کی عادت ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُنکے جانے میں کچھ ہی دن باقی تھے گھر میں اُنکے جانے کے ساتھ ساتھ نکاح کی تیاریاں بھی چل رہی تھی ۔۔۔۔۔
ابراہیم سکول سے گھر ایا ہی تھا لان میں پاکیزہ اور ادا فاطمہ جھگڑا کر رہی تھی ابراہیم کو دیکھتے ہی ادا اُسکی طرف بھاگی تھی ابی بھائی دیکھے پاکیزہ مجھے گڑیا نہیں دے رہی ادا کی نیلی آنکھوں میں نمی تیرنے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا ادھر آؤ رونا نہیں ورنہ گڑیا نہیں لے کر دونگا پہلے تو پاکیزہ کو آپی بولا کرو کتنی بار سمجھایا ہے؟
سوری ابی بھائی ادا نے فوراً اپنے کانوں کو ہاتھ لگایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ ادھر اؤ کیوں نہیں ادا کو ڈول دے رہی؟
یہ میری گڑیا ہے  پاکیزہ نے جلدی سے وجہ بتائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بُری بات وہ چھوٹی ہے تمہیں خیال رکھنا چاہئے ۔۔۔۔۔
لیکن بھائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس پاکیزہ دو اُسے گڑیا شاباش مل کر کھیلو ابراہیم اُن کا مسئلہ حل کرتے ہی اپنے کمرے کی طرف بڑھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم؟
جی ماما آجائیے ۔۔۔۔۔۔۔
زکیہ نکاح پر پہننے کے لیے ابراہیم کا سوٹ لے کر کمرے میں داخل ہوئی ۔۔۔
یہ کیا ہے ماما؟
تمہارا سوٹ جو کل نکاح پر پہننا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم کا سُنتے ہی موڈ اوف ہوا تھا ۔۔۔۔۔
ماما پلیز بس کردے وہ چھوٹی سی بچی ہے جسکو میرا نام بھی پورا بولنا نہیں اتا اپ سب کو سمجھ کیوں نہیں آرہی میری بات ۔۔۔۔۔
یہ تمہارے سوچنے کی باتیں نہیں ہے  ابراہیم سب خوش ہے تمہیں بھی سب کے ساتھ خوش ہونا چاہئے بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما؟
پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اخر کار نکاح کا دن آ پہنچا ۔۔۔۔۔۔۔۔
نکاح پر باہر سے کسی کو نہیں بلوایا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
6 سال کی  بچی پیارے سے لباس میں بیٹھی دولہن کی طرح ماتھے پر بندیا سجائے اپنے کھیل میں مگن تھی اُسکے پاس موجود سب لوگ بہت اچھے سے تیار ہوئے تھے 13 سالہ لڑکا دلہے کے لباس میں بہت سنجیدہ سا بیٹھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مولوی صاحب اکر اُس بچی کے قریب اپنی جگہ سنبھال چکے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم خان والد رحیم خان سکہ راءجالوقت ایک کروڑ حق مہر کیا آپکو قبول ہے؟
چھوٹی سی بچی اپنی گڑیا کے ساتھ کھیل رہی تھی جب پاس بیٹھی ماں نے اُسکا دوپٹہ سہی کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔ادا بیٹا مولوی صاحب کو بولو قبول ہے اُس بچی نے حیرانگی سے ماں کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بولو میری جان قبول ہے ۔۔۔۔۔۔۔
ادا نے ماں کے کہنے پر گڑیا سے کھیلتے ہوئے قبول ہے  بول دیا تھا مولوی صاحب نے اپنی بات دوہرائی تو رابعہ نے ادا کو بولا ۔۔۔۔۔بولو بیٹا قبول ہے ۔۔۔۔۔۔۔
ماما پھر سے؟  ادا کے سوال پر سب مسکرا دیئے تھے جی میری جان پھر سے ۔۔۔۔۔
بولو قبول ہے ۔۔۔۔۔۔
قبول ہے ۔۔۔۔۔۔
تیسری بار بھی یہی عمل دوہرایا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اب مولوی صاحب ابراہیم سے مخاطب تھے لاکھ کوششوں کے بعد بھی ابراہیم یہ سب روک نہیں پایا تھا نکاح ہو چکا تھا سب خوشی خوشی کھانا کھانے میں مصروف ہو گئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔
بچے لان میں کھیل رہے تھے ہال میں پڑا ہوا فون بج رہا تھا راحیلہ نے فون اُٹھاتے ہی سلام لی ۔۔۔۔۔۔۔
و علیکم السلام  کیسی ہے میری بیٹی ؟
ٹھیک ہو پاپا۔۔۔۔۔آپ کیسے ہے؟
اللہ کا برا کرم ہے میری بچی گھر میں سب کیسے ہے؟
پاپا سب ٹھیک ہیں ۔۔۔۔۔۔
خان سے بات کروا دو میری بچی میں نے کھانے کی دعوت دینے کے لیے فون کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
جی پاپا ابھی بلواتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
راحیلہ خان صاحب کے اکلوتے دوست خان محمد  کی بیٹی ہے دونوں دوست ہونے کے ساتھ بزنس پارٹنر بھی ہیں دوستی بہت پرانی تھی خان صاحب نے یہ رشتہ طے کر کے اس دوستی کو اور مضبوط کیا تھا ۔۔۔۔۔۔
خان صاحب پاپا کی کال آئی ہے......
خان صاحب رومال سے منہ صاف کرتے فون کی طرف بڑھے ۔۔۔۔۔
بول خان محمد  کیا حال ہے ۔۔۔۔۔۔
خان جی اللہ کا شکر سب ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں چاہ رہا تھا کل آپ سب لوگ ہماری طرف کھانے پر آئے ۔۔۔۔
تو آجائیں گے خان محمد پہلے کبھی انکار کیا ہے کھانے سے؟
ہاہاہا چل ٹھیک کل انتظار کروں گا ۔۔۔۔۔۔
ٹھیک  روبی بیٹی کو کہنا بریانی تیز کر کے بنائے ۔۔۔۔۔
ہاہاہاہا، ٹھیک ہے یارا جیسا تو کہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خان محمد کا ایک  بیٹا ذین اور ایک ہی بیٹی راحیلہ تھی بیٹے ذین کی تین اولادیں تھی دو بیٹے ٹوینس دانش خان اور تابش خان اور ایک بیٹی کلثوم۔۔۔۔۔۔۔
بیٹوں کی عمر 14 سال جبکہ بیٹی 8 سال کی ہے
روبی ان کی اکلوتی بہو جو کھانا بنانے میں بہت مہارت رکھتی خان صاحب کو روبی کے ہاتھ کی بریانی بہت پسند ہے وہ جب بھی دعوت پر آتے بریانی کی فرمائش کرتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب مرد کھانے کے بعد ہال میں جمع تھے جبکہ عورتیں برتن سمیٹ رہی تھی خان صاحب نے فون بند کرتے ہی کل کی دعوت کے بارے میں بتایا اور ساتھ ہی تلقین کی سب ٹائم پر تیار ہو جانا  ۔۔۔۔۔
جی خان صاحب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
----------------------------
آج ابراہیم تیار ہوکر بیگ کاندھے پر پہنے نیچے آیا تو گھر میں بہت شور ہورہا تھا یہ شور کچن سے آرہا تھا ابراہیم اپنا بیگ ہال میں پڑے صوفے پر رکھ کچن کی طرف گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما ناشتہ؟
بیٹھو بیٹا لگا رہی ہوں پاکیزہ بھائی کو دیکھ کر بھائی کی طرف لپکی بھائی دیکھے ادا سکول نہیں جارہی میرے ساتھ ادا نے اپنی زبان نکال پاکیزہ کو چڑایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بُری بات ادا ایسے نہیں کرتے ۔۔ابراہیم نے بہت ارام سے کہا ۔۔۔۔۔
ابی بھائی پاکیزہ مجھے تنگ کررہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ادا کے بھائی کہتے ہی زکیہ اور رابعہ نے ایک دوسرے کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کتنی بار بولا ہے ادا آپی کہا کرو اور کیوں نہیں سکول جارہی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم لوگ out of country  جارہے ہیں اسلیے سکول نہیں جانا میں نے ادا نے بہت فخر سے بتایا ۔۔۔۔۔۔
ابراہیم بہت پیار سے پاکیزہ کو سمجھانے میں لگ گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا کو رابعہ نے آواز دے کر اپنے پاس بلوایا اپنی گود میں بیٹھا کر اُسے سمجھانے لگی ادا دیکھو بیٹا اگر اپ پاکیزہ کو آپی نہیں کہہ سکتی تو ابی کو بھی بھائی نہیں کہا کرو۔۔۔۔۔۔
ابراہیم اُٹھ باہر ہال میں آگیا ماما مجھے باہر ناشتہ لا دے ۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں ماما ابی بھائی برے ہے ۔۔۔۔
تو پاکیزہ آپی بری نہیں؟
نہیں وہ تو میری دوست ہے ماما
اج سے ابی بھی اپکا دوست ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
سچی؟  ادا تالیاں بجاتی خوش ہوئی تھی
بلکل رابعہ نے جیسے سکون کا سانس لیا تھا ۔۔.۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم باہر سب سُن رہا تھا دادا جان نے ٹھیک نہیں کیا چھوٹی سی بچی کو کس رشتے میں باندھ دیا ہے  بری ہوکرجب اس رشتے کا پتہ چلے گا  کیا ری ایکشن ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ لو بیٹا ناشتہ زکیہ نے ناشتہ لاکر بیٹے کے سامنے رکھا لیکن ابراہیم تو کہی اور ہی تھا زکیہ ابراہیم کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر اُسے ہوش میں لائی ۔۔۔۔۔۔۔
کہا گُم ہو بیٹا ناشتہ کرلو ۔۔۔۔۔۔
جی ماما  ۔۔۔۔اج جلدی آجانا روبی انٹی کے گھر دعوت ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما، آپ جانتی ہے مجھے وہاں جانا اچھا نہیں لگتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں میری جان اتنا پیار کرتے ہیں سب پھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے ماما آجاؤں گا اپ جلدی سے پاکیزہ کو بھیجے میں لیٹ ہو جاؤں گا ابراہیم بیزار ہوا۔۔۔۔.۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ابراہیم کی شروع سے ہی دانش سے نہیں بنتی تھی تابش سے اچھی دوستی تو نہیں لیکن اچھے سے ملتے تھے دانش بچپن سے تھوڑا سر پھیرا تھا لڑنا جھگڑنا کوئی بری بات نہیں  روبی خود اپنے بیٹے سے بہت پریشان تھی لاکھ سمجھانے پر بھی وہ ایک بات نہیں سمجھتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات سب تیاری کر رہے تھے ابراہیم پاکیزہ اور ادا تیار ہوکر لان میں فٹبال کے ساتھ کھیل رہے تھے راحیلہ حماد کو اُٹھائے لان میں ائی ابراہیم اسکو پکڑو تیار نہیں ہونے دےرہا ۔۔۔۔۔ابراہیم نے اپنی چچی کی طرف دیکھا جو تقریباً تیار تھی ۔۔۔۔۔
ابھی اور تیار ہو گی؟  ابراہیم نے حماد کو اُٹھاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہاہا نہیں بھئی بس بال سمیٹ لوں راحیلہ ابراہیم کی بات سمجھ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم حماد سے باتیں کررہا تھا پاکیزہ اور ادا کھیل میں مصروف تھی پانچ منٹ میں ہی ادا رونے لگی ابراہیم جلدی سے ان کی طرف گیا کیا ہوا ہے؟
ابی پاکیزہ نے مجھے مارا ہے ادا اپنے ماتھے پر ہاتھ رکھے ابراہیم کو بتا رہی تھی ۔۔۔۔۔
لیکن ابراہیم حیرانگی سے ادا کو دیکھ رہا تھا جسنے اج بھائی نہیں کہا تھا واقعی بچے بہت معصوم ہوتے ہیں ادا 6 سال کی بچی تھی لیکن ماں کے ایک بار سمجھانے پر وہ سمجھ گئی تھی ابی دوست ہے اور دوستوں کا نام لیتے ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب خان محمد کے گھر کھانے کے ٹیبل پر موجود باتوں میں مصروف تھے بچوں کو الگ ٹیبل پر کھانا دیا گیا تھا تابش اور ابراہیم کب سے کسی بات پر معمولی سی بحث کر رہے تھے دانش کو تابش پر بہت غصہ ارہا تھا دانش نے اپنا چمچہ پلیٹ میں غصے سے اُچھالا وہ چمچہ ادا کے اُلٹے ہاتھ پر لگا ادا ہاتھ سے نکلتا خون دیکھ اُونچی آواز میں رونے لگی  راحیلہ اپنی جگہ سے اُٹھ بچوں کے ٹیبل کی طرف بھاگی ادا کے ہاتھ نکلتا خون دیکھ راحیلہ پریشان ہوئی پاکیزہ نے ساری بات اپنی چچی کو بتائی تو راحیلہ نے ایک زور دار تھپڑ دانش کی گال پر رسید کیا تم کب بچپنا چھوڑوں گے؟  اب چھوٹے سے بچے نہیں ہو دیکھو ہاتھ زخمی کردیا اُسکا کب عقل ائے گی تمہیں راحیلہ ادا کو لے کر وہاں سے چلی گئی دانش غصے سے پاکیزہ کی طرف دیکھ رہا تھا، میری بہن کی طرف کیا دیکھ رہے ہو تم نے اپنی کم عقلی پر مار کھائی ہے دانش بغیر کوئی جواب دیئے غصہ سے چلا گیا یہ پہلی بار نہیں ہوا تھا لیکن دانش اس بار زیادہ ہی سوچ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

----------------------------------------------------
اج وہ لوگ جارہے تھے ان کے جانے سے سب اداس تھے مختار بیگم تو رو رو، اپنی انکھیں سوجا لی تھی صبح سے ادا کو گود  میں لیے بیٹھی تھی کبھی اس سے باتیں کرتی کبھی رونے لگتی ادا اپنے چھوٹے چھوٹے ہاتھوں سے اُن کے آنسوں ساف کرتی دادو نہیں روئے پلیز  میں اپ سے ملنے روز ایا کروں گی ۔۔۔
چلو ادا بیٹا ماما بلوا رہی ہے کپڑے چینچ کرلو زکیہ نے آتے ہی ادا کو کہا نہیں میں دادو کو چھوڑ کر نہیں جاؤں گی وہ روئے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔
میری گڑیا نہیں روؤں گی میں آپ جاؤ ماما کی بات سُنو ادا دادو کے کہتے ہی چلی گئی ۔۔۔۔۔
اماں کیا ہوگیا ہے بچی کو پریشان کردیا اپ نے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا کروں زکیہ میری اولاد پردیس جارہی ہیں کیا پتہ یہ انکھیں دوبارہ اُن کو دیکھ سکے گی یا نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اماں ایسی باتیں کر کہ اپ بھائی صاحب کو پریشان کرے گی اور کچھ نہیں سنبھالے خود کو اماں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب لان میں کھڑے مل رہے تھے خاں صاحب کی نصیحتیں ختم  ہونے کا نام نہیں  لے رہی تھی ادا پاکیزہ اور ابی سے سلام لے کر اللہ حافظ کہہ چکی تھی وہ لوگ  اپنے سفر کی طرف گامزن تھے اللہ تعالیٰ نے یہ چیز انسان کی سوچ سے بہت دور رکھی ہے  کہ انے والے وقت میں کیا ہوگا وہ ہمارے لیے اچھا ثابت ہو گا جیسا کہ ہم سوچ کر بیٹھے ہیں یا وہ ہوگا جسکا تصور بھی ہمیں چھو کر نہیں گزرا سب کی زندگی اپنے معمول کے مطابق اگے بڑھ رہی تھی کلیم صاحب بہت مصروف ہوگئے تھے لیکن زکیہ روز گھر کال کرتی ادا کی بات  بھی کروائی جاتی سب سے زیادہ بات پاکیزہ سے ہی کی جاتی جس میں زیادہ تو بات جھگڑے پر ختم ہوتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اج بارہ سال گزر گئے تھے کلیم صاحب کو گئے ہوئے اس عرصے میں وہ خود دو بار پاکستان ائے تھے لیکن ادا اور رابعہ نہیں ائی تھی
سب کچھ بدل گیا تھا چھوٹے بڑے اور بڑے بوڑھے ہو رہے تھے مختار صاحبہ اب بیمار رہنے لگی تھی کلیم کا فون انے پر ایک ہی بات دوہراتی تھی بیٹے واپس اجاؤ پتہ نہیں کب یہ بوڑھی انکھیں بند ہو جائے ۔۔۔۔
اللہ زندگی دے اماں اپکو بس ادا کی پڑھائی پوری ہو جائے ہم ہمیشہ کے لیے اجائے گے ۔۔
کلیم صاحب یہی کہہ کر بات ختم کردیتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نے MBA کے بعد بزنس سنبھال لیا تھا پاکیزہ یونیورسٹی کی سٹوڈنٹ ہے حماد 9th  کلاس جبکہ اسکی چھوٹی بہن علیزہ 5 کلاس میں پڑھتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
اج پاکیزہ نے یونی سے اوف کیا تھا صبح صبح ہال میں بیٹھ کر ادا کو ویڈیو کال ملائی ۔۔۔۔۔
ہیلو پاکیزہ کیسی ہو؟
الحمدلله ٹھیک تم سُناو تمہیں ہماری یاد نہیں اتی ادا؟
اتی ہے بہت اتی ہے تمہیں ایسا کیوں لگا؟
نہ کال نہ مسیج کتنے دنوں بعد ہماری بات ہورہی ہے بتاؤ؟
بزی تھی سٹڈیز میں بس ۔۔۔۔۔
تم ہر بار ایسا کہتی ہو ……….
دونوں باتوں میں مصروف تھیں جب ابراہیم اپنے پورے رعب سے ہمیشہ کی طرح چہرے پر سنجیدگی ایک بازوں پر اپنا کوٹ رکھے دوسرے ہاتھ سے لیپ ٹاپ اُٹھائے سیڑھیاں اتر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھائی اجاؤ ادا، سے بات کرلو پاکیزہ نے لیپ ٹاپ ابراہیم کی طرف گھماتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
Hello my dear czn how are you?
کتنی بار کہا ہے سلام لیا کرو ۔۔۔۔۔۔۔۔
سُنتے ہی ادا نے اپنی زبان دانتوں میں دی سوری  تم ہر بار ایسے ہی کرتے ہو ۔۔۔۔۔
اور تم بھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بات کرتے وقت ابراہیم بہت کم ادا کی طرف دیکھتا تھا  بال تو شروع سے ہی لمبے تھے انکھیں نیلی بڑے ہونے کے ساتھ اور بھی خوبصورت ہوگئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور یہ کیا پہن رکھا ہے تم نے؟ 
ادا پر نظر پڑتے ہی ابراہیم سخت لہجے میں بولا تھا ۔۔۔۔
ادا فُل سلیو لیس شرٹ پہنے ایزی ہو کر بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا؟  کچھ انوکھا پہن لیا ہے میں نے ؟
تم اپنے اپ کو غور سے دیکھو۔۔۔۔۔ ابراہیم بغیر دیکھے کہہ رہا تھا۔۔۔۔۔
کیا دیکھوں پتہ ہے کبھی کبھی مجھے ڈر لگتا ہے میں پاکستان انا ہی نہیں چاہتی ہر بات میں روک ٹوک ایسے بات کرو ایسے بیٹھو ایسا پہنو یار میری لائف ہے میں جو بھی کروں ۔۔۔۔
بس ہر بار کی طرح شروع ہو جاؤ بائے ابراہیم اٹھ کر چلا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوگیا ہے ادا بھائی تمہارے اچھے کے لیے ہی کہتے ہے ۔۔۔۔
ہاں تم بھی اپنے کھڑوس بھائی کا ہی ساتھ دینا پھر بات ہوگی بائے ادا نے جھٹ سے کال بند کی ………..
اف پاکیزہ پاؤں پٹکتی ہوئی بھائی کے سر پر سوار ہوئی یہ کیا کردیا اپ نے ناراض ہوگئی ہے مجھ سے بھی ۔۔۔۔
تو؟
کیا تو بھائی اپ کو ایسا نہیں کرنا چاہئے وہ جہاں رہتی ہے وہاں کا کلچر ہی ایسا ہے ۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ وہ جہاں بھی رہے میری عزت ہے تمہیں اس کو سمجھانا چاہئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا سمجھاؤں بھائی وہ تو ابھی کچھ جانتی بھی نہیں اس رشتے کے بارے میں اور اپ نے اسے خوف زدہ کردیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ اس ٹائم تم بھی پینٹ کُرتا پہنے کھڑی ہو میں نے تمہیں کچھ کہا؟
بندے کو تھوڑی تو عقل ہونی چاہئے ۔۔۔۔۔۔
کچھ بھی بھائی میں کینیڈا رہتی ہوں؟
نہیں رہتی ہو لیکن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس رہنے دو بھائی پاکیزہ منہ پھولائے اپنے کمرے کی طرف بڑھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ فائدہ ہوا؟.
ماما اپ نہیں شروع ہو جانا پلیز میں آفس جارہا ہوں اللہ حافظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

-----------------
ابراہیم ابھی آفس میں ایا ہی تھا دانش دروازہ کھولتے ہی سر پر سوار ہوا ابراہیم جو اپنے کوٹ کے بٹن کھولنے والا تھا ہاتھ وہی رک گیا تھا یہ کیا طریقہ ہے؟
نوک کر کے نہیں آ سکتے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں یہ صرف تمہارے باپ کا آفس ہے؟
دانش اپنی زبان کو کنڑول میں رکھ کر بات کیا کرو تم جس لائق تھے تمہیں بھی آفس دیا گیا ہے وہاں تم اپنی مرضی کے مالک ہو لیکن یہ میرا آفس ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے اس آفس آنے میں زیادہ ٹائم نہیں لگے گا ابراہیم خان تم دیکھنا کیسے ذلیل کر کے یہاں سے نکالوں گا تمہیں اور پاپا کو کیا شکایت لگائی ہے تم نے میرے اور حیا کے بارے میں؟  وہ میری سیکرٹری ہے ہمارے درمیان جو بھی چل رہا ہو تم دور رہو سمجھے ۔۔۔۔۔
دانش اگر تم میں اتنی قابلیت ہوتی تو تم مجھ سے پہلے اس آفس میں  موجود ہوتے مجھے نکالنے کی ضرورت نہیں پڑتی اب یہاں سے نکلو مجھے کام کرنا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہیں تو میں دیکھ لوں گا ابراہیم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ روز کا ڈرامہ تھا ۔۔۔۔۔۔۔ابراہیم اپنی کرسی سنبھالے ادا کے بارے میں سوچنے لگا تم کب سمجھو گی ادا تم پر صرف میرا حق ہے جب اس طرح کپڑے پہن کر اپنی نمائش کرتی ہو زہر لگتی ہو مجھے تم ایک بار پاکستان آجاؤ تم دیکھنا کیسا سیدھا کروں گا تمہیں جتنا انتظار تم کروا رہی ہو اتنی ہی سخت سزا دوں گا ابراہیم اپنا موبائل نکال ادا کی تصویر دیکھتے ہوئے مسکرایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 ماما میرا ناشتہ؟
ادا یونی کے لیے تیار کھڑی تھی بیٹھو لا رہی ہوں  رابعہ نے کچن سے ہی آواز دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جلدی ماما لیٹ ہو جاؤں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جلدی اُٹھ جاتی اور یہ کیا پہن لیا ہے ادا بیٹا کیسے سمجھاؤں تمہیں ادا جو چھوٹی سی فراک پہنے کھڑی تھی ٹانگوں پر کپڑے کے نام پر کچھ نہیں تھا رابعہ دیکھتے ہی پھٹ پڑی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما اپ سب کو کیا مسئلہ ہے میرے کپڑوں سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب کو؟
جی رات کو ابی سے اسی بات پر جھگڑا ہو گیا پتہ نہیں کیا سمجھتا ہے خود کو اور بابا کہاں ہے مجھے بات کرنی تھی اُن سے ادا کو اچانک یاد ایا تھا ۔۔۔۔۔
کیا بات کرنی ہے مجھے بتاؤ ۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے بابا سے ہی کرنی ہے آپ تو لیکچر ہی دے گی ۔۔۔۔۔
جی بابا کی ڈول بابا حاضر ہے ۔۔۔۔۔۔
گڈ مارننگ میرے پیارے بابا ۔۔۔۔۔۔۔۔
گڈ مارننگ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بابا آج ہم باہر کھانا کھائے گے بس میں اور آپ ادا نے اپنی ماما کی طرف دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
ماما کیوں نہیں ۔۔۔۔۔
سمجھا کرے بابا اپ کو کسی سے ملوانا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے میری جان رات 8 بجے تک میں اجاؤں گا ۔۔۔۔۔۔۔
تھینکیو بابا جانی اوکے مجھے لیٹ ہورہا ہے بائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بائے۔۔۔۔۔۔
اپ نے پوچھا کیوں نہیں کس سے ملوانا ہے ادا کے جاتے ہی رابعہ کلیم صاحب سے مخاطب ہوئی ۔۔۔۔۔۔
جب رات کو ملوا رہی ہے تو کیا پوچھتا ۔۔۔۔۔۔
کلیم اپکو واقعی سمجھ نہیں آتی ایک جوان لڑکی اپنے باپ کو گھر سے باہر کھانے پر کس کو ملوائے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہو گیا ہے رابعہ اتنے سال ہوگئے یہاں ائے اور تم ابھی وہی چھوٹی سوچ رکھتی ہو بچی ہے وہ ویسے ہی کسی دوست سے ملوانا ہو گا رابعہ میری بچی کو تنگ نہ کیا کرو جاؤ ناشتہ لگاؤ میں اتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
کلیم میں تو کہتی ہوں پاکستان چلتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ ہم کوئی اور بات کر سکتے ہیں؟
نہیں مجھے ڈر لگتا کہی حالات ہمارے ہاتھ سے نہ نکل جائے کلیم ابھی بھی ٹائم ہے پاکستان چلتے ہیں ۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے جلدی چلے گے ابھی تو ناشتہ کروا دو کلیم صاحب مسکرائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

------------------------------------------------
حیا مجھے لگتا ہے اب ابراہیم کا کچھ سوچنا پڑے گا دانش حیا کے ساتھ ہوٹل کے ایک کمرے میں موجود تھا لیکن ذہین ابراہیم پر ہی اٹکا تھا ۔۔۔۔۔۔
مطلب کیا؟
کچھ ایسا جس سے سب چھن جائے وہ ٹوٹ جائے بکھڑ جائے۔۔۔۔
دانش تم نے بتایا تھا اسکی شادی ہوگئی تھی بچپن میں ۔۔۔۔
ہاں میں نے بھی سُنا ہی ہے اج تک سُنتا آرہا ہوں وہ لڑکی یہاں نہیں ہے ۔۔۔۔
اگر وہ یہاں ہوتی تو میں تمہیں کوئی ایڈیا دیتی ۔۔۔۔۔۔
اجائے گی نکاح ہوا ہے کب تک نہیں ائے گی تم سوچ کر رکھو جلد ائے گی دانش بہت گہری سوچ میں ڈوب گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ماما میں کیسی لگ رہی ہوں نہ چاہتے ہوئے بھی ادا نے اپنی ماما سے سوال کرلیا تھا جسکا جواب بھی وہ خود جانتی تھی
کپڑے پورے ہوتے تو دنیا کی حسین ترین لڑکی لگ رہی ہوتی میری بیٹی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اف ماما ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بابا اجائے جلدی ادا نے کلائی پر بندھی گھڑی کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
You are so handsome baba......
Thanku meri Jan.......
چلے؟
جی بلکل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دونوں باپ بیٹی گھر سے نکل چکے تھے رابعہ کی سانس اوپر کہی اٹکی ہوئی تھی اے میرے پروردگار ہم  پر رحم فرما ہمیں کسی بھی آزمائش سے دور رکھنا ہم تیرے گنہگار بندے ہیں رابعہ ماں تھی اور ایک ماں اپنے بچے کے دل کا حال بتائے بغیر جان جاتی ہے جیسے رابعہ جان گئی تھی اب وہ بے صبری سے ان کی واپسی کا انتطار کرنے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا اور اسکے بابا konston کے ایک عالی شان ہوٹل میں داخل ہوئے  جہاں پہلے سے ٹیبل بک کیا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو انکل؟
ریحان نے کلیم کو ہیلو بولتے ہوئے اپنا ہاتھ اگے بڑھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔
کلیم صاحب نے بھی ہاتھ ملاتے ہوئے اسے بیٹھنے کا اشارہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔
وہ لوگ کھانا کھا کر فارغ ہو چکے تھے اس دوران ریحان اپنے بارے میں کافی کچھ بتا چکا تھا وہ بھی اپنے بچپن میں ہی یہاں شفٹ ہوئے تھے وہ اور ادا کلاس فیلو ہیں  ۔۔۔۔۔
انکل میں اور ادا ایک دوسرے کو پسند کرتے ہیں شادی کرنا چاہتے ہے اس لیے میں اپ سے ملنا چاہ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
بول لیا کلیم صاحب سخت لہجے میں مخاطب ہوئے ۔۔۔۔۔۔
جی ریحان نے نہ سمجھی میں کلیم صاحب کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔
آئندہ ادا سے ملنے کی کوشش نہیں کرنا ویسے بھی ہم لوگ پاکستان جارہے ہیں کلیم صاحب نے وہی کھڑے کھڑے اپنا پروگرام بنا لیا۔۔۔۔۔
لیکن بابا ۔۔۔۔۔
چپ۔۔۔۔۔ ادا بیٹا گھر جا کر بات کرتے ہیں
----------------------

پاکستان میں فجر کا ٹائم ہو گیا تھا سب نماز اور تلاوت میں مصروف تھے اج مختار صاحبہ کو اپنی طبعیت بہت ناساز محسوس ہورہی تھی ۔۔۔۔
پاکیزہ۔۔۔۔۔پاکیزہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی دادو کیا ہوا ابراہیم جو مسجد سے گھر ایا تھا دادو کی آواز سُن کر انکے روم میں ایا ۔۔۔۔۔
بیٹا کلیم کو فون ملا میرا دل بہت گھبرا رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دادو میں کرتا ہوں فون اپ یہ پانی پیئے ابراہیم نے پانی کا گلاس دادو کی طرف بڑھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نے تیسری بار کال ملائی تھی لیکن کلیم صاحب نے اٹینڈ نہیں کی تھی دادو وہ شاید بزی ہے وہ دیکھے گے تو خود کال کرلے گے اپ تھوڑی دیر سو جائے ۔۔۔۔۔
---------------------------------

بابا مجھے بتائیں کیوں کہاں اپ نے ایسا ریحان کو ہم کب جارہے ہیں پاکستان بابا بولے  ادا گھر اتے ہی بن پانی کے مچھلی کی طرح تڑپ رہی تھی ۔۔۔۔۔
اسی ہفتے میں پاکستان جارہے ہیں اپنا سامان پیک کرلو ہم دوبارہ نہیں ائے گے یہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بابا میری طرف دیکھے میں نہیں جاؤں گی مجھے پاکستان کبھی بھی نہیں جانا میری ریحان سے شادی کردے اور پاکستان چلے جائے میں نہیں جاؤں گی رابعہ جو چپ سی کھڑی باپ بیٹی کی باتیں سُن رہی تھی ادا کو کچھ بتانے کے لیے اگے بڑھی ۔۔۔۔۔۔
ادا بیٹا تمہاری شادی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ ۔۔۔۔کلیم صاحب رابعہ کو خاموش کروا گئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا میری بیٹی اپنے بابا کی بات ضرور مانے گی کلیم صاحب نے برے مان سے ادا کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔
میں ہر بات مانوں گی لیکن پاکستان نہیں جاؤں گی اگر آپ نے مجھے فورس کیا تو میں پولیس کے پاس جاؤں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا کہتے ہی اپنے روم میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ  کلیم صاحب کے پاس اکر بیٹھی اپ کو اُسے بتا دینا چاہیے تھا ۔۔۔۔
نہیں رابعہ پھر وہ ضد میں اجائے گی وہ یہاں سے نہیں جائے گی یہی سے وہ رشتہ ختم کردے گی کلیم صاحب کے ماتھے پر پسینے کے قطرے نمودار ہوئے جنکو صاف کرتے ہوئے وہ کمرے میں چلے گئے رابعہ وہی بیٹھی سوچ میں پڑ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کمرے میں اتے ہی کلیم صاحب نے اپنا موبائل دیکھا پاکستان سے اتنی کالز؟
انہوں نے فوراً کال ملائی ۔۔۔۔۔۔
وہاں سب ناشتہ کررہے تھے جب ابراہیم کے موبائل پر کال آئی دادو چاچو کا فون ابراہیم نے سکرین پر نمبر دیکھتے ہی دادو کی طرف موبائل بڑھایا ۔۔۔۔۔۔
اسلام وعلیکم !
و علیکم السلام امّاں ۔۔۔۔۔۔۔۔کلیم کی ہمت جواب دے گئی تھی ماں کی آواز سُنتے ہی انہیں بات کرنا مشکل لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا کلیم پریشان ہے میرے بچے؟
نہیں امّاں بس تھک گیا ہوں پاکستان انا چاہتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
تو آجا میرے بچے مختار صاحبہ تو سُن کر خوش ہو گئی لیکن اگلے ہی لمحے انکی خوشی ختم ہوگئی تھی ۔۔۔۔
ادا نہیں آنا چاہتی پاکستان امّاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں؟ ادا کیوں نہیں چاہتی؟
ٹیبل پر موجود ہر انسان مختار صاحبہ کی بات غور سے سُن بھی رہا تھا اور سمجھ بھی ۔۔۔۔۔۔۔
ادا سے میری بات کروا میں سمجھاتی ہوں اُسے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں اماں وہ نہیں سمجھے گی اپ دعا کریں میرے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔
کلیم بیٹا پریشان نہیں ہو اللہ سب بہتر کرے گا تو منا لے گا ادا بیٹی کو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
----------------------------

کلیم صاحب فون بند کرتے ہی بیڈ پر بیٹھ گئے انہیں اپنے سینے میں درد محسوس ہورہی تھی ۔۔۔۔
رابعہ ۔۔۔۔رابعہ؟
رابعہ کلیم کی آواز سُنتے ہی کمرے میں ائی ۔۔۔۔۔
کیا ہوا اپ کو یہ ہاتھ کیوں سینے پر رکھا ہے اپنے کلیم کیا ہوا بولے کلیم صاحب کا ہاتھ بیڈ پر گِر گیا تھا رابعہ کے ہاتھ پاؤں پھولے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا ادا بیٹا تمہارے بابا کو دیکھو کیا ہوا ہے ادا رابعہ روتے ہوئے ادا کو آوازیں دینے لگی ۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا ماما ادا کی نظر اپنے باپ کی طرف گئی تو وہ بھاگ کر اپنے بابا کی طرف گئی بابا اُٹھے کیا ہوا بابا سوری بابا پلیز اُٹھے ماما کال کرے جلدی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا دو گھنٹے سے ہسپتال کے کمرے کے باہر اپنے بابا کے لیے دعائیں کررہی تھی رابعہ کی حالت بھی ادا سے کچھ مختلف نہیں تھی اخر کار ڈاکٹر نے باہر اکر انکو اچھی خبر دی اور بہت سی نصیحتیں بھی کی جو ہارٹ پیشنٹ کے لیے کی جاتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا فوراً کلیم صاحب کے کمرے میں ائی انکا ہاتھ پکڑے پاس بیٹھ گئی تھی بابا کیا ہو گیا اپ تو میرے بہادر بابا ہے نہ پھر میری چھوٹی سی بات کو دل پہ لے لیا بابا اگر اپ کو کچھ ۔۔۔۔۔۔۔
ادا رونے لگی تھی میری بیٹی بھی تو بابا کی پیاری بیٹی تھی پھر ۔۔۔۔۔
اس پر ہم پھر بات کریں گے ابھی اپ ریسٹ کریں بابا ۔۔۔۔۔۔
نہیں ادا میری بات سُنو ۔۔۔۔۔
جی بابا ۔۔۔۔۔۔۔
ہم اسی ہفتے پاکستان جائے گے چلو گی میرے ساتھ؟
جی بابا چلوں گی لیکن پھر ہم جلد واپس آئے گے اوکے؟
اوکے میری جان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔…



Next
جی دادو اپ نے بلوایا ہے ۔پاکیزہ نے کمرے میں اتے ہی پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں میری بچی تو نہ ادا کو فون کر وہ پاکستان نہیں انا چاہ رہی کلیم بڑا پریشان ہے ۔۔۔۔
جی دادو کوشش کرتی ہوں اپ جانتی ہے وہ کسی کی نہیں سُنتی اور ایسا بھی بس کلیم چاچو کی وجہ سے ہے ۔۔۔۔۔
چل تو فون ملا بات کر اور مجھے بتا ۔۔۔۔کیا کہتی ہے ۔۔۔۔۔
جی دادو میں بات کر کے اتی ہوں ۔۔۔۔
نہیں یہاں میرے پاس بات کرو یہاں بیٹھ کر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا دادو موبائل تو لے آؤں ۔۔۔۔۔
ہاں جلدی آ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھوڑی دیر میں ہی پاکیزہ موبائل لے کر دادو کے پاس آگئی تھی ۔۔۔۔۔
دو کالز کے بعد کال رسیو ہوئی ۔۔۔۔
اسلام و علیکم!
وعلیکم السلام۔۔۔ چچی ادا کا موبائل اپکے پاس؟
رابعہ صبر کا دامن چھوڑ رونے لگی تھی اپنوں سے اتنی دور جو تھی اتنے سالوں کی جدائی اور یہ آزمائش؟ وہ ٹوٹ گئی تھی ….
چچی کیا ہوا ہے ادا؟  ادا تو ٹھیک ہے؟
ہاں بیٹا تمہارے چچا ہسپتال ہے۔۔۔۔۔
کیا ہوا اُن کو؟  اور ادا کہاں ہے؟
وہ اُن کے پاس ہی ہے  کمرے میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اُن کو دل کی تکلیف ہوئی تھی لیکن اب بہتر ہے ۔۔۔۔۔۔۔
چچی اپ پریشان نہیں ہو پلیز آپ جلدی سے ہمارے پاس، آجائے بس ۔۔۔۔
ماما اپکو بابا بُلا رہے ہے ۔۔۔۔۔۔
ادا نے اتے ہی رابعہ کو کلیم کا پیغام دیا ۔۔۔۔۔۔
اچھا پاکیزہ یہ ادا سے بات کرلو میں تمہارے انکل کے پاس جارہی ہوں ۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسی ہو ادا؟
ٹھیک ہوں ۔۔۔۔۔
پریشان نہیں ہو انکل ٹھیک ہوجائے گے ۔۔۔۔۔۔
میں اچھی بیٹی نہیں ہوں پاکیزہ میری وجہ سے وہ ہرٹ ہوئے ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہاری وجہ سے؟
ہاں میری ضد کی وجہ سے۔۔۔۔۔پاکیزہ اج تک ہر بات پوری کی ہے  بابا نے  میری اب شادی کی بات ائی تو میری بات نہیں مان رہے ۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ تو جیسے سُن پر گئی تھی ۔۔۔۔۔۔
شادی؟
ہاں میں ریحان سے شادی کرنا چاہتی ہوں بابا کو ملوایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن پتہ نہیں کیا ہوا اُن کی طبعیت خراب ہوگئی لیکن میں منا لوں گی ادا نے اپنے آنسو صاف کیے  میں نے اُن کی مان لی ہے ہم پاکستان آ رہے ہیں اسی ہفتے اُن کو بھی میری ماننی ہو گی ۔۔۔۔۔
ادا؟
ہاں؟
کیا تم ریحان سے محبت؟
یہ مجھے نہیں پتہ لیکن مجھے لگتا ہے میں اُس کے ساتھ اچھی زندگی گزار سکتی ہوں ہم ایک دوسرے کو سمجھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ کے پاس الفاظ ختم ہوگئے  ذہین ماؤف ہو گیا تھا ۔۔۔۔
اوکے ادا پریشان نہیں ہو میں دوبارہ فون کروں گی ۔۔۔۔۔
اوکے بائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دادو سب سُن چکی تھی پاکیزہ اور دادو کے پاس ایک دوسرے کو کہنے کے لیے کچھ نہیں تھا پاکیزہ اُٹھ اپنے کمرے میں آکر ٹہلنے لگی کچھ سوچ کر ابراہیم کو کال ملائی ۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم بزی ہونے کی وجہ سے کال پک نہیں کر رہا تھا پاکیزہ اپنا موبائل بیڈ پر پھینک دادو کے روم میں آگئی تھی ۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ یہ بات کسی کو نہ  کہنا بیٹا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں دادو پہلے ہی بات چھپا کر اتنا بڑا مسئلہ بنا لیا ہے اب پھر؟
بیٹا تمہیں پتہ ہے ابراہیم کے غصے کا وہ یہ کبھی نہیں برداشت کرے گا تم چپ رہو وہ لوگ ارہے ہے ہم بات کرے گے اُن سے۔۔۔۔ سمجھائے گے ادا کو ۔۔۔۔۔
دادو ۔۔۔۔پاکیزہ پریشان سی دادو کے گلے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب ٹھیک ہوجائے گا اللہ بہتر کرنے والا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات ابراہیم اتے ہی پاکیزہ سے ملا ۔۔۔۔۔
فون کر رہی تھی خیریت؟  میں اج بہت بزی رہا ابھی آتے ہوئے موبائل چیک کیا ۔۔۔
جی بھائی وہ  ادا آرہی ہے یہ بتانا تھا پاکیزہ کو جو سمجھ ایا بول دیا ۔۔۔۔۔
یہ بات اتنی ضروری تھی؟ ابراہیم نے اپنی خوشی چھپاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہو گیا بھائی وہ آرہی ہے آپکو اُسکا دل جیتنا ہے نہ کہ ایسی باتیں کر کے اسے اور خود سے دور کرنا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ نے بہت سریس ہوکر بات کی جو ابراہیم کو کھٹکی ۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ؟
کچھ ہوا ہے؟
نہیں تو ۔۔۔۔۔۔۔۔
پھر ایسا کیوں کہا؟
نہیں وہ اپ ٹوکتے ہے تو وہ غصہ کرتی ہے اسلیے کہاں ۔۔۔۔۔
ویسے کب آرہی ہے؟  ابراہیم جاتے جاتے پلٹا ۔۔۔۔۔۔
اسی ویک اینڈ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابراہیم اپنے بیڈ پر سیدھا لیٹا چھت کو گھور رہا تھا دل مچل رہا تھا اپنے یار کے دیداد کو کیسے گزرے گے یہ دن۔۔۔۔۔۔۔  جب سے ادا کے انے کا سُنا تھا دل زورو سے دھڑک رہا تھا ابراہیم اپنے دل پر ہاتھ رکھے خود کو نارمل کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
------------------------------------
وہ شام 5 بجے پاکستان ائیرپورٹ پر پہنچ کر گاڑی کا ویٹ کر رہے تھے جہاں کلیم صاحب کینیڈا کو بائے بول ائے تھے وہی ادا بہت جلد واپسی کا سوچ کر ائی تھی دونوں اپنا اپنا میشن سوچ کر پاکستان ائے  تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گاڑی آچکی تھی رحیم صاحب خود لینے ائے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گھر سب نے بہت اچھا استقبال کیا ادا کی سب سے ویڈیو کال پر بات ہوتی تھی اسلیے کسی کو پہچاننے میں مشکل نہیں ہوئی تھی ابراہیم اور سکندر ابھی افس سے نہیں ائے تھے باقی سب گھر میں موجود تھے سب سے مل کر ادا  کو پاکیزہ کے روم میں ارام کرنے بھیجا گیا رابعہ اور کلیم بھی اپنے روم میں آگئے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گھر میں مختلف کھانوں کی مہک سب کی بھوک میں اضافہ کر رہی تھی ماما کب تک کھانا لگے گا؟  پاکیزہ پیٹ پر ہاتھ رکھے کچن کے دروازے میں کھڑی تھی ۔۔۔۔۔۔بس پانچ منٹ جاؤ ادا کو اُٹھا لاؤ ۔۔۔۔۔
رابعہ اور کلیم تھوڑی دیر لیٹ کر باہر اگئے تھے جبکہ ادا گھوڑے بیچ سو رہی تھی رات 9 بج گئے تھے سب مرد ہال میں بیٹھے باتوں میں مصروف تھے ابراہیم کی نظریں کتنی بار سیڑھیوں کی طرف اُٹھی تھی ادا کو دیکھنے کے لیے انکھیں بے تاب تھی۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا اُٹھ جاؤ یار کتنا سونا ہے اُٹھو بھی پاکیزہ نے تاکیہ ادا کو مارتے ہوئے اسے اُٹھانے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔
پلیز ماما تھوڑا سا اور ۔۔۔۔۔۔
ہاہاہا ماما کی بچی میں ہوں پاکیزہ تمہاری فلیٹ پاکستان لینڈ کرگئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔
اف یار سونے دو پلیز ادا نے دھائی دی ۔۔۔۔۔۔اُٹھو بھی میں نے اتنی باتیں کرنی تھی تم اتے ہی سو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہے یار ادا،انکھیں مسلتی ہوئی اُٹھ بیٹھی؟  اُٹھو چینچ کرو کھانا کھائے سب ہمارا ویٹ کررہے ہے ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے ۔۔۔۔۔۔۔۔ادا  شاور لے کر لے کر باہر آئی ، تمہارے پاس کوئی لونگ شرٹ نہیں ہے؟
 پاکیزہ پلیز یار۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ادا بلیک پینٹ کے ساتھ بلیک شرٹ پہنے بہت خوبصورت لگ رہی تھی سب سے بڑا احسان تو اسنے بازوؤں والی شرٹ پہن کر کیا تھا ۔۔۔۔۔۔
اوکے اوکے سوری پاکیزہ نے فوراً اپنے ہاتھ کھڑے کیے ۔۔۔۔۔۔۔
 چلو چلے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ادا  لائٹ سی لپسٹک لگائے اپنے بالوں کو کھلے چھوڑ  کلائی پر گھڑی باندھتے ہوئے بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھینکیو  تمہاری تیاری تو پوری ہوئی بہت بھوک لگ رہی تھی پاکیزہ نے باہر نکلتے ہوئے کہا  دونوں مسکرا دی ۔۔۔۔۔
ابراہیم جو ہال سے اُٹھ ٹیبل کی طرف جارہا تھا ادا کی آواز پر چونکا ادا اور پاکیزہ آپس میں باتیں کرتی ہوئی سیڑھیاں اتر رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم کی نظریں ادا پر ٹھہر  گئی تھی وہ اپنی تصویروں سے بھی خوبصورت تھی ابراہیم نے  خود کو سنبھالہ۔۔۔۔۔
اسلام و علیکم!
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔کیا حال ہے ابی؟
ٹھیک تم بتاو تھکاوٹ اتری؟
نہیں یہ پاکیزہ کی بچی نے سونے نہیں دیا ادا نے جمائی لیتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہا خدا کا خوف کرو ادا تین گھنٹے سوئی ہو پاکیزہ نے بھی جلدی سے حساب بتایا۔۔۔۔۔۔۔۔
اجاؤ بچوں کھانا لگ گیا ہے ۔۔۔۔۔۔ذکیہ کی آواز پر سب ٹیبل کی طرف بڑھ گئے۔۔۔۔۔۔۔۔
-----------------------
رات کلیم صاحب اپنی امّاں کے کمرے میں  پہنچے ۔۔۔۔
کتنے کمزور ہو گئے ہو کلیم مختار جو بات پانچ گھنٹے سے نوٹ کر رہی تھی آخر بیان کردی ۔۔۔۔۔۔
نہیں امّاں اپ کا وہم ہے اپ بتائیے طبعیت کیسی رہتی ہے اب ۔۔۔۔۔۔۔
میرے بچے آگئے ہیں میں بھی ٹھیک ہوگئی ہوں کلیم بیٹا بڑی دیر کردی ۔۔۔۔۔
آآآ ہاں امّاں واقعی دیر ہوگئی ہے کلیم نے ایک لمبی سانس بھری ۔۔۔۔
کوئی نہ اللہ سب بہتر کرے گا۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں اماں اللہ ہی بہتر کرے گا ورنہ میں نے تو کوئی کسر نہیں چھوڑی سب غلط کرنے میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ بیٹا  مایوس نہیں ہوتے دیکھنا ادا کا یہاں دل لگ گیا تو وہ خود نہیں جانا چاہے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی اماں کلیم صاحب جانتے; تھے یہ نہیں ہوسکتا پھر بھی خاموش ہو گئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو بھی پاکیزہ لان میں چلے یار مجھے عجیب سا لگ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
کھانا کم کھانا تھا نہ لگتا عجیب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم میرے کھانے پر نظر رکھے ہوئے تھی؟
ہاہاہاہا تو اور کیا میں نے تو نوالے تک گن لیے تھے ۔۔۔۔۔
ادا پاکیزہ کو گھور رہی تھی ۔۔۔۔۔
مذاق کررہی ہوں چلو پہلے کچن میں چائے بناتے ہیں پھر لان میں چلے گے ۔۔۔۔۔۔
اوکے گو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 پاکیزہ چائے بنانے لگی اور ادا پاس پڑی کرسی پر بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔۔
ادا اب کیا کرنے کا ارادہ ہے؟
کیا ؟گھومے گے پھیرے گے اور کیا۔۔۔۔۔۔۔۔
تم مجھے گھمانے کب لے کر جاؤ گی؟
میں؟
نہیں سب کزنز چلے گے سنڈے والے دن ابھی تم دو دن ریسٹ کرو ۔۔۔۔۔۔۔
اف بور ہو جاؤں گی پھر میری بھی ایک شرط ہے ۔۔۔۔۔۔
کیا ؟پاکیزہ نے چائے کپ میں ڈالتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔
تم یونی سے اوف لو گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس؟  اوکے میری پیاری ڈول پکا ہوگیا اب سے چھٹیاں ہی چھٹیاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دونوں چائے لیے لان میں اکر بیٹھ گئی تھیں ۔۔۔۔
ادا؟
ادا کی جیب میں موبائل کی رِنگ ہوئی تھی ۔۔۔۔۔
ریحان کی کال ؟  دیکھتے ہی ادا کے چہرے پر الگ ہی چمک آ گئی ۔۔۔۔
ہیلو ریحان ۔۔۔۔۔۔اداس بھی ہو گئے ۔۔۔۔
ہاہاہاہا۔۔۔۔۔۔  نہیں میں بابا کو منا لوں گی تم فکر نہیں کرو ۔۔۔۔۔
کہا نہ بابا مان جائے گے بس کچھ دن کی بات ہے تم ریلیکس ہو جاؤ ۔۔۔۔۔۔
اوکے بائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 ادا تمہیں کیوں لگتا ہے چاچو مان جائے گے؟
میرے بابا ہے میں اچھے سے جانتی ہوں وہ میری کوئی بات نہیں ٹالتے ادا نے موبائل سامنے ٹیبل پر رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا یہ بتاؤ کھانے میں کیا پسند ہے؟
 پیزا برگر  بریانی ائسکریم بہت پسند ہے ۔۔۔۔۔۔
گڈ۔۔۔۔ پاکیزہ اپنے بھائی کے لیے پریشان ہو گئی تھی وہ جانتی تھی ابراہیم بہت محبت کرتا ہے ادا سے اتنے سالوں کی محبت کو چوٹ لگی تو دونوں زخمی ہو جائے گے ۔۔۔
کہاں کھو گئی؟  ادا نے پاکیزہ کے سامنے چٹکی بجائی ۔۔۔۔۔
یہی ہوں یار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ابراہیم لیٹ گیا تھا لیکن ادا کا مسکراتا چہرہ نیلی چمکتی انکھیں اُسے سونے نہیں دے رہی تھی وہ منہ پر تکیہ رکھ سونے کی کوشش کررہا تھا لیکن ہر بار ناکام تھا بس اب شادی ہو جانی چاہیے اُسے بتا سکوں گا کتنی شدت سے محبت کرتا ہوں ادا تم میرے اتنے قریب اکر بھی قریب نہیں ہو پتہ نہیں کب یہ دوریاں ختم ہوگی خود سے ہی سوال جواب کرتے ابراہیم نیند کی وادی میں اتر گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صبح ہوگئی ایک نئی صبح۔۔۔۔ لیکن رابعہ اور کلیم کی فکر اور بڑھ گئی تھی کلیم اب ادا سے بات کرنے کا فیصلہ کرچکے تھے اسے سب بتانا چاہتے تھے وہ کسی اور کے بارے میں سوچنے کا حق بھی نہیں رکھتی شادی تو دور کی بات ہے لیکن وہ اپنی بیٹی کو پہچنے والی اذیت سے ڈر رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب  نے ناشتہ کر لیا تھا سوائے پاکیزہ اور ادا کے وہ ساری رات باتوں میں گزار کر اب سونے میں مصروف تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب اپنے اپنے کاموں میں مصروف ہو گئے تھے مرد آفس میں بچے سکول اور عورتیں گھرداری میں ۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ سچ سچ بتانا ہماری یاد آتی تھی؟
بھابی بہت یاد آتی تھی اب تو میرے اندر امید ہی ختم ہوگئی تھی کہ میں کبھی اپنوں سے ملوں گی ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں تمہیں تو انا ہی تھا ہماری امانت جو تمہارے پاس تھی زکیہ نے کہا تینوں مسکرا دی ۔۔۔۔۔۔
ویسے بھابی کیا سوچا ہے شادی کے بارے میں؟  راحیلہ نے کپڑے تہہ کرتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی تو ادا کی تعلیم مکمل ہونے تک کچھ نہیں سوچا راحیلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلے اپ آگئے ہیں سب کچھ ہوجائے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انشاءاللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
  اج کہی باہر چلے ادا نے چائے کا سپ لیتے ہوئے پاکیزہ سے کہا۔۔۔۔۔۔
کہاں؟
گھومنے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ تو ٹھیک لیکن کس کے ساتھ؟  ڈرائیور کے ساتھ بھائی نہیں جانے دیتے ۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈرائیور کیوں ؟ میں ہوں نہ خود ڈرائیو کروں گی چلو کچھ شاپنگ کرکے اتے  ہیں ۔۔۔۔۔
لیکن بھائی ۔۔۔۔۔
کیا ہے پاکیزہ میں بور ہورہی ہوں ۔۔۔۔۔
اچھا چلو چلتے ہیں ۔۔۔۔پاکیزہ نے کچھ سوچتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ ابراہیم کے غصے سے ڈر رہی تھی پھر اسنے اپنے موبائل سے ابراہیم کو میسج کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسلام و علیکم!
بھائی ادا بہت ضد کر رہی تھی تو میں اسکے ساتھ شاپنگ کے لیے آگئی ہوں سوری ہم جلدی گھر اجائے گے اپ ڈانٹنا نہیں پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم۔
    ابھی کہاں ہو؟
پاکیزہ ۔
    راستے میں  square mall  جارہے ہے۔
ابراہیم ۔
      اوکے میں بھی اتا ہوں ۔۔۔۔
کہاں بزی ہو کوئی بوائے فرینڈ ہے؟
پاکیزہ کو فون میں گھسا دیکھ ادا نے شرارت سے پوچھا ۔۔۔۔۔
شرم کرو لڑکی بھائی نے سُن لیا تو مار دے گے مجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
توبہ تم تھک نہیں جاتی اس سب سے؟
کس سب سے؟
کہ یہ نہ کرو ۔۔۔وہاں نہ جاؤں۔۔۔ یہ نہ پہنو۔۔۔ایسے نہ بیٹھو ۔۔
نہیں ادا مجھے تو بہت اچھا لگتا ہے بھائی کا فکر کرنا ماما کا ڈانٹنا بابا کا پیار سے سمجھانا ۔۔۔۔۔۔۔
وہ گاڑی پارکنگ میں لگا کر شاپنگ مال کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ کے موبائل پر مسیج ایا تھا ۔۔۔۔۔
میں دس منٹ میں پہنچ جاؤں گا ۔۔۔
اوکے ۔۔۔۔۔۔۔
وہ دونوں  ایسکیلیٹر  پر تھی جب اُن پر کسی کی نظر پڑی ۔۔۔۔
دانش حیا کے ساتھ اُسی مال میں موجود تھا وہ پاکیزہ کے ساتھ ادا کو دیکھ سمجھ گیا تھا وہ ابراہیم کی وائف ہے کیوں کہ وہ گھر میں سُن چکا تھا وہ لوگ پاکستان آگئے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حیا اؤ تمہیں ابراہیم خان کی وائف سے ملواؤں ۔۔۔۔
کہاں؟  حیا نے حیرانگی سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اوپر چلو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو پاکیزہ دانش نے پیچھے سے آواز دی ۔۔۔
اسلام و علیکم!  دانش بھائی کیسے ہے آپ؟
پاکیزہ پلٹتے ہی بولی ۔۔۔۔۔
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔فائن کیا کررہی تھی یہاں میرا مطلب ابراہیم اکیلے نہیں جانے دیتا  کہی اسلیے پوچھا ۔۔۔۔۔
جی اس سے ملے میری کزن ادا فاطمہ کلیم چاچو کی بیٹی ہے اسکو شاپنگ کے لیے لائی تھی بھائی بھی آ رہے ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے تو نہیں بتایا تم نے ادا نے سرگوشی کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو!
ہائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپ اکیلے ائے ہے؟
ہاں میں اکیلا ایا ہوں اب سب کی قسمت تمہارے بھائی جیسی تھوڑی ہے دانش نے عجیب سی نظروں سے ادا کی طرف دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔
شاپنگ کرلی یا ابھی کرنی ہے؟  پاکیزہ نے فوراً بات تبدیل کی ۔۔۔۔
کرلی بس جا رہا تھا اوکے پھر ملاقات ہوگی بائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانش حیا کو سائیڈ پر کھڑا کر کے ایا تھا وہ ابھی حیا کو ابراہیم کے خلاف استعمال کرنا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نے دانش کو اُنکے پاس دیکھ لیا تھا پہنچتے ہی ابراہیم نے سوال کیا ۔۔۔
یہ کیا کر رہا تھا یہاں ؟
پتہ نہیں بھائی  اچانک سے ۔۔۔۔۔
کون تھا یہ ؟ دیکھتا کتنا عجیب تھا ۔۔۔۔۔
ایسے کپڑے پہن کر باہر نکلو گی تو لوگ ایسے ہی دیکھے گے ابراہیم نے سنجیدگی سے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔
مسئلہ میرے کپڑوں میں نہیں یہاں کے لوگوں کے دماغوں میں ہے ادا نے بھی بات منہ پر ماری تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ دونوں شاپنگ میں مصروف تھیں ابراہیم مسلسل ادا کو دیکھ رہا تھا وہ جس دن سے ائی تھی موقع ہی کہا ملا تھا اج وہ جی بھر کر اپنے محبوب کو دیکھ رہا تھا وہ شاپنگ کرتی کبھی پاکیزہ سے کچھ پوچھتی کبھی کسی بات پر کھلکھلا کر ہنستی کبھی مصروف سے انداز میں کپڑوں کو دیکھتی  ہر ادا میں وہ ابراہیم کا پیاری سے پیاری لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔
ہیلو کزن؟  ادا نے ابراہیم کے اگے چٹکی بجائی ۔۔۔۔۔۔۔۔
مممم؟
کچھ نہیں لو گے؟
اگر پیسے نہیں تو میں بل پے کردوں گی ادا نے شرارت سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
تمہارے سارے بل تو میں پے کروں گا ادا ابراہیم خان ۔۔۔۔۔
کیا ہوا مذاق کررہی ہوں اتنا سڑیل سا منہ کیوں بنا لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں  مجھے کسی چیز کی ضرورت نہیں ابھی ۔۔۔۔۔۔
واہ ۔۔۔۔ادا  داد دیتی ہوئی اپنی شاپنگ میں مصروف ہو گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا بہت تھک گئی تھی پورا مال گھوم گھوم کر شاپنگ کی ۔۔۔۔
کچھ کھلا دو ظالموں ۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ مسکرائی ہاں بابا  وہی جارہے ہیں ۔۔۔۔
یہاں مال کے پیچھے ہی میکڈونلڈ ہے چلو پیزا کھلاتی ہوں تمہیں ۔۔۔۔
ایک شرط پر ۔۔۔۔
بولو۔۔۔۔۔۔۔
بل میں پے کروں گی پہلے ہی ابی نے سارے بل پے کیے ہے اب بس ۔۔۔۔۔
ہاہاہا اچھا بابا چلو اب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
-------------------------------------
راحیلہ کو اپنے میکے سے بار بار دعوت کی کالز  آرہی تھی لیکن وہ اپنی طبعیت کا بہانہ بنا کر ٹال رہی تھی کیوں کہ رابعہ ابھی نہیں جانا چاہ رہی تھی لیکن اج خان محمد خود گھر اکر دعوت دے گئے تھے کل رات سب اُن کے گھر ڈنر کریں گے کلیم اور رابعہ پہلے ہی پریشان تھے اُنکو ائے اج پندرہ دن ہو گئے تھے وہ جانتے تھے ادا آج نہیں تو کل واپسی کا مطالبہ ضرور کرے گی اور ایسا ہی تھا ادا نے سوچ لیا تھا کل وہ ہر حال میں اپنے بابا کو منا لے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ؟
بولو جانی پاکیزہ بستر پر لیٹتے ہوئے بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے لیے دعا کرو یار بابا مان جائے پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ھممم ۔۔۔۔۔
کیا ھممممم ادا اچھل کر اُٹھ بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔
میں کہہ رہی ہوں دعا کرنا اور تم نے ھممم کہہ کر بات ختم کردی ۔۔۔۔
دیکھو ادا کچھ فیصلے ہمیں قسمت پر چھوڑ دینے چاہئے وقت دینا چایئے اللہ تعالیٰ جو بھی کرتے ہے وہ ہمارے حق میں بہترین ہوتا ہے ۔۔۔۔۔
ہاں ٹھیک ہے تمہاری بات لیکن ۔۔۔۔۔۔
لیکن کچھ نہیں میں اج بہت تھک گئی ہوں صبح سے یونی بھی جانا ہے لائٹ اوف کردو پلیز ۔۔۔
اوکے ادا منہ لٹکائے لیٹ گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم فریش ہوکر لیٹا تو ادا کو دیکھنے کا دل کیا لیکن ٹائم کو ذہین میں رکھتے ہوئے دل کی بات کو اگنور کردیا اور موبائل نکال اج کی بنائی گئیں پکس دیکھنے لگا کہی وہ ہنس رہی تھی تو کہی پیزے پر ٹوٹتی ہوئی شرارتیں کرتی ہوئی زندگی سے بھرپور ادا فاطمہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
----------------------------------
ادا کی انکھ بارہ بجے کھلی تو اُٹھتے ہی شاور لے کر فریش ہوئی اج وہ ناشتے سے پہلے ہی کلیم صاحب سے بات کرنا چاہتی تھی جلدی سے اُن کے روم کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔۔۔
دروازہ نوک کرتے جب اندر گئی تو رابعہ کپڑے تہہ کر الماری میں رکھ رہی تھی ۔۔۔۔
بابا کہاں ہے؟
آفس گئے ہے اج ۔۔۔۔
کیوں؟
ادا نے بیڈ پر بیٹھتے ہوئے  سوال کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ویسے ہی بور ہورہے تھے تو تمہارے تایا کے ساتھ چلے گے ۔۔۔۔۔
ماما مجھے بات کرنی تھی بابا سے ۔۔۔۔۔۔
کیا بات؟
میں اُن کو ہی بتاؤں گی ادا کمرے سے باہر گئی وہ جانتی تھی ماما پھر بات کا پوچھے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ بے جان سی ہوکر بیڈ پر بیٹھ گئی  انکھوں میں نمی تیرنے لگی تھی میں  اپنی بیٹی کو اس تکلیف میں نہیں دیکھ سکتی جس میں وہ پڑنے والی ہے میں ایسا کیا کروں وہ اس اذیت سے بچ سکے بلکہ مجھے کرنا چاہیے تھا اُسے بتا دینا چاہیے تھا بہت پہلے سب کچھ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب تیار تھے نکلنے کے لیے ادا اپنے ماما بابا کے ساتھ ہی گاڑی میں بیٹھی تھی وہ راستے میں بات کرنا چاہتی تھی پاکیزہ بھی ادا کے ساتھ ہی اکر بیٹھ گئی تھی سفر شروع ہو چکا تھا اور ادا کی بات بھی ۔۔۔۔۔۔۔
بابا ہم کب جارہے ہے واپس؟
ادا بیٹا میں خود بھی بات کرنا چاہ رہا تھا  لیکن اب یہ وقت نہیں بات کرنے کا نہ ہی جگہ ہم کل ضرور بات کریں گے ۔۔۔۔۔۔
لیکن بابا مجھے ریح۔۔۔۔۔۔۔
ادا میری جان کل بات کرتے ہیں کلیم صاحب پاکیزہ کے سامنے بات گول کرنے کی کوشش کررہے تھے وہ دونوں اس بات سے انجان تھے پاکیزہ سب جانتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راستے میں گاڑی ٹریفک سگنل پر رکی تو ایک بچا پھولوں کے گجرے بیچتا ہوا ادا کو نظر ایا پاکیزہ وہ دیکھو ادا نے بچوں کی طرح خوش ہوکر پاکیزہ کو بتایا ۔۔۔۔
پہنو گی؟  رابعہ نے بیٹی کی خوشی دیکھتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی  ماما ۔۔۔رابعہ نے اس بچے کو بُلا کر پاکیزہ اور ادا کو گجرے دِلاے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خاں محمد کے گھر عید کا سما لگ رہا تھا ادا کو کچھ بھی یاد نہیں تھا راحیلہ نے ادا کا ہاتھ پکڑا الٹے ہاتھ پر اج بھی وہ چھوٹ کا نشان موجود تھا ۔۔۔۔۔
یہ دیکھو یہ چوٹ اسی گھر میں لگی تھی ادا میں نے دانش کو بہت ڈانٹا تھا کا تھپڑ بھی مارا تھا دانش جو بہت غور سے ادا کو دیکھ رہا تھا ایک چوٹ اج بھی دوں گا ادا میڈم یہ چوٹ تو بھول گئی اج والی نہیں بھولو گی دانش آج گھر میں سُن چکا تھا کہ ادا نکاح کے بارے میں کچھ نہیں جانتی اس نے تبھی فیصلہ کرلیا تھا اج ادا کو بتا دے گا یہ تو دانش کو بھی ایڈیا تھا ایک 18 سالہ لڑکی اچانک اپنے نکاح کا سُن کر کیا ری ایکٹ کرسکتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب کھانا کھانے کے بعد ہال میں بیٹھے باتیں کر رہا تھے جب زکیہ بچوں سے مخاطب ہوئی ۔۔۔۔۔
جاؤ بچوں ادا کو گھر دیکھاؤ یہاں کیوں بور ہورہے ہو زکیہ نے تو جیسے بچوں کا مسئلہ حل کردیا کلثوم فوراً کھڑی ہوئی چلے میں دیکھاتی ہوں ادا  اپکو اپنا گھر ۔۔۔۔۔
ادا کلثوم اور پاکیزہ  گھر دیکھنے چلی گئی دانش کیسے بھی پیچھے جانے کا بہانہ سوچنے لگا تھا ابراہیم کب سے دانش کی عجیب نظریں اور حرکتیں نوٹ کررہا تھا ابراہیم بات تو تابش سے کر رہا تھا لیکن دھیان سارا دانش کی طرف تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانش اپنے موبائل پر مصروف تھا جب کال آنے لگی  ۔۔۔۔۔۔
وہ سب کو ایسکیوز کرتا موبائل کان کو لگائے ابراہیم کی انکھوں سے اوجھل ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ جانتا تھا گھر دیکھنے کے بعد لڑکیاں چھت پر ہوگی اسلیے دانش سیدھا چھت  پر آیا ۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو ادا کیسا لگا ہمارا گھر دانش اپنی ناپاک نظریں ادا کے چہرے پر گاڑے پوچھ رہا تھا کتنی پیاری ہو تم ادا تمہاری انکھیں۔۔ میں ابراہیم کی جگہ ہوتا تو اب تک وہ گندے خیالات میں ادا کے چہرے سے اپنی انکھیں ہٹانا بھول گیا تھا جسکو پاکیزہ اور کلثوم بھی نوٹ کرچکی تھی ادا اسکی نظروں سے کنفیوز ہورہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھائی اپ کو کچھ چاہیے تھا؟
نہیں میں تو فون سن رہا تھا اپ پر نظر پڑی تو آگیا ۔۔۔۔
یہ گجرے ضرور ابراہیم نے دِلاے ہو گے؟
دانش کی نظریں اب ادا کے ہاتھوں پر تھی ۔۔۔۔۔
نہیں یہ میری ماما نے لے کر دیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا نہیں اکثر شوہر ہی بیویوں کو لے کر پہناتے ہیں تو میں سمجھا  ابراہیم نے ۔۔۔۔۔
مطلب؟
ادا نے پاکیزہ کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔
دانش کا مطلب ہے کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا مطلب یہ ہے چایے نکاح بچپن میں ہوا ہو لیکن اب تم ابراہیم کی بیوی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دانش نے  پاکیزہ کی بات کاٹتے ہوئے اپنا مقصد پورا کیا ۔۔۔۔۔
پاکیزہ یہ کیا کہہ رہا ہے مجھے کچھ سمجھ نہیں آرہا ادا نے دو قدم پیچھے ہٹتے ہوئے کہا ۔۔۔۔
دانش اپنا کام کر گیا تھا وہ سیڑھیوں سے نیچے جارہا تھا جب ابراہیم ان کو بُلوانے اوپر ارہا تھا دانش ابراہیم کی طرف دیکھ ہنسا تھا ابراہیم کو اسکی ہنسی بلکل بھی بے معنی نہیں لگی وہ تیزی سے سیڑھیاں چڑھتا ہوا چھت پر ایا تھا ادا پاکیزہ سے سنبھل نہیں رہی تھی ابراہیم وہی لاسٹ سیڑھی پر کھڑا ہو کر ادا کو دیکھنے لگا اس کی گال پر آنسوں لگاتار بہہ رہے تھے لیکن اس کے الفاظ ابراہیم کے ہوش اُڑا رہے تھے ۔۔۔۔۔
پاکیزہ بولو پلیز دانش جھوٹ بول رہا تھا پلیز ۔۔۔۔۔۔۔
ادا یار گھر جاکر بات کرتے ہے سنبھالو خود کو ۔۔۔۔
نہیں مجھے پاکستان نہیں انا چاہیے تھا نہیں ادا اپنا ایک ہاتھ کمر پر اور دوسرا منہ پر رکھے غصے سے دیوار کو کک کررہی تھی ۔۔۔۔
کلثوم کو وہاں سے جانا بہتر لگا اس کا بھائی جو کام کر گیا تھا وہ ادا کی حالت سے اندازہ لگا سکتی تھی۔۔۔۔۔۔۔
کلثوم جاتے ہوئے ابراہیم کو دیکھ چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا میری جان بات تو سُن لو میری ۔۔۔۔
نہیں تم نے بھی بابا کے ساتھ مل کر مجھے چیٹ کیا ہے تم سب جانتی تھی؟  ادا نے پاکیزہ کو بہت غور سے دیکھا ۔۔۔۔۔۔
ہاں لیکن ۔۔۔۔
لیکن تم لوگوں نے میرے ساتھ اتنا بڑا گیم کھیلا ماما بابا نے میں سوچ بھی نہیں سکتی تھی ادا پاگلوں کی طرح کبھی روتی تو کبھی ہنس رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شادی تو میں بھی ریحان سے ہی کروں گی میں کسی رشتے کو نہیں مانتی ۔۔۔
ادا کے آخری الفاظ ابراہیم کی برداشت کی آخری حد تھی ۔۔۔
ادا نے فوراً اپنے موبائل پر نمبر ملانے لگی ۔۔۔۔
کس کو فون کررہی ہو ادا،؟
ریحان کو وہ مجھے لے کر جائے یہاں سے ۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نے اتے ہی ادا کے ہاتھ سے موبائل کھینچا ریحان کون ہے؟
ابراہیم کے سخت لہجے میں پوچھے گئے سوال پر ادا نے اس کی طرف دیکھا ریحان میرا بوائے فرینڈ ہم جلد شادی کرنے والے ہیں اوکے ۔۔۔۔
ادا نے ابراہیم کی انکھوں میں انکھیں ڈالے مضبوط لہجے میں اپنا فیصلہ سُنایا تھا۔۔۔۔
ادا کی انکھوں سے آنسوں اپنی رفتار سے بہہ رہے تھے لیکن وہ خود کو مضبوط دکھا رہی تھی سچ تو یہ تھا اُسے اپنا کھڑا رہنا بھی مشکل لگ رہا تھا وہ خود کو گِرنے سے بچا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
کب سے چل رہا ہے یہ سب؟
تم کون ہوتے ہو پوچھنے والے؟
میں کسی رشتے کو نہیں مانتی ہوں بہتر ہوگا تم بھی اپنے ذہین سے فضول خیالات کو نکال دو ادا کہتے ہی وہاں سے جانے لگی تھی ۔۔۔
ابراہیم نے اسے بازوں سے دبوچا ۔۔۔۔۔
فضول خیالات میرے نہیں تمہارے ہے جتنی جلدی ہو سکے اپنا ذہین درست کرلو ورنہ۔۔اور ہاں نیچے جاکر کوئی فضول حرکت میں برداشت نہیں کروں گا جو بات ہو گی اب گھر جاکر ہوگی کلیئر؟
ادا نے ایک بار بھی اپنا بازوؤں چھوڑوانے کی کوشش نہیں کی وہ تو ابراہیم کو دیکھ رہی تھی اسکی انکھوں میں جو اتنے دنوں سے اپنائیت تھی اس کی جگہ غصہ اور نفرت تھی ابراہیم اک جھٹکے میں اسے چھوڑ نیچے چلا گیا ۔۔۔۔۔
ادا تم پھس گئی ہو ادا نے اپنے آنسوں صاف کرتے سوچا ۔۔۔۔۔۔۔
ایک ہی طریقہ ہے گھر جاؤ اپنا  پاسپورٹ پکڑو اور نکلو یہاں سے ادا سوچ رہی تھی پاکیزہ کو ایک دم ادا بدلی بدلی لگ رہی تھی وہ اسکی سوچ پڑھنے کی کوشش کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا کیا ہوا کیا سوچ رہی ہو ادھر دیکھو ۔۔۔۔۔۔
مجھے یہاں سے جانا ہے ابھی جانا ہے پاکیزہ تم میری ہیلپ کرو گی نہ؟
دیکھو ادا جب تک تم حقیقت سے انجان تھی اور بات تھی اب جب تم سب جان گئی ہو تو سمجھ لو تم مر سکتی ہو لیکن اس رشتے سے آزاد نہیں ہوسکتی ۔۔۔۔۔۔۔
ادا کچھ نہیں سُننا چاہ رہی تھی فوراً نیچے کی طرف بھاگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نیچے جانے تک سب آپس میں مل رہے تھے کچھ روانہ بھی ہو چکے تھے ادا اپنا منہ صاف کرتی سب سے مل کر گاڑی میں بیٹھ گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔
گاڑی اپنے منزل کی طرف رواں تھی پاکیزہ ابراہیم کے ساتھ جا چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم جانتی تھی  ؟ ریحان کے بارے میں؟
پاکیزہ نے پچھلی نشست پر بیٹھے حماد اور علیزے کو دیکھا جو موبائل پر بزی تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے کچھ پوچھا ہے ابراہیم غصے میں دھاڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ج ج جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے بتانا چاہیے تھا ۔۔۔۔۔
دا دا دادو نے منع کیا تھا ۔۔۔۔۔
دادو بھی جانتی تھی ابراہیم پر نئا انکشاف ہوا اسنے حیرانگی سے پاکیزہ کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بابا اپ نے اچھا نہیں کیا میرے ساتھ ادا نے گاڑی سے باہر دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔
کیا میری بچی؟
آپ مجھے دھوکے سے یہاں لائے ہے سوچ سمجھ کر ۔۔۔۔۔۔
ادا بیٹا میری بات سنو ۔۔۔۔۔
نہیں بابا اب آپ میری سُنے مجھے صبح ہی جانا ہے واپس بس ۔۔۔
تم نہیں جاسکتی ادا ۔۔۔۔۔۔
تم ابراہیم کے نکاح میں ہو ۔۔۔۔۔۔
Are you joking baba?
مجھے پتہ بھی نہیں اور میں کسی کی وائف ہوں؟
میں ایسے کسی رشتے کو نہیں مانتی   بابا مجھے صبح جانا ہے بس یہ میرا آخری فیصلہ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


بیٹا اب تمہارے ہر فیصلے کا حق ابراہیم کے پاس ہے میں مجبور ہوں میری جان ۔۔۔۔۔۔
اپنے بابا کی حالت کو سمجھو ادا نہیں پریشان کرو خود کو اور اپنے بابا کو رابعہ نے اپنی بیٹی کو سمجھانا چاہا  ۔۔۔۔۔
ادا خاموش تھی وہ اب خود اپنے لیے کچھ سوچنا چاہتی تھی مجھے یہاں سے جانا ہے بس مجھے انکی باتوں میں نہیں انا ادا گھر پہنچتے ہی کمرے میں گھس گئی تھی ۔۔۔۔۔
میرا موبائل لاکر دو اپنے بھائی سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ کے قدم کمرے میں رکھتے ہی ادا نے حکم سُنایا۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ بہت غصے میں ہے میں  نہیں جاؤں گی پاکیزہ نے جیولری اتراتے ہوئے صاف جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے میرا موبائل چاہیے پاکیزہ ادا رو دینے کو تھی ۔۔۔۔
صبح کوشش کروں گی پلیز تم نہیں جانتی بھائی کو غصے میں کچھ نہیں سمجھ آتی میری پوزیشن کو سمجھو ادا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم کمرے میں اتے ہی شاور لینے لگا دماغ میں ادا کے الفاظ گونج رہے تھے میں کسی رشتے کو نہیں مانتی ریحان سے شادی کروں گی؟
شاور لیتے ہی ابراہیم بیڈ پر سیدھا لیٹ گیا انکھوں سے آنسو نکل رہے تھے اتنے سال جس محبت کا انتطار کیا جسکو نکاح سے لے کر سوچتا ایا تھا وہ سامنے ائی بھی تو کسی اور کے خیال کے ساتھ لیکن وہ مرد تھا کھل کر رو نہیں سکتا تھا اذیت کم کرنے کی کوشش میں چیخ چیخ کر اپنی تکلیف بیان نہیں کر سکتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات ایک کا ٹائم ہوگیا تھا ادا اپنے ذہین میں مختلف پلین بنا کر رد کرچکی تھی سب سے پہلے موبائل پھر ہی ریحان سے بات کرسکوں گی اور واپسی کی ٹکٹ بھی ۔۔۔۔۔
ادا کچھ سوچتے ہوئے اپنے بیڈ سے اُٹھی بغیر جوتا پہنے چھوٹے چھوٹے قدم اُاٹھاتی کمرے سے باہر ائی ۔۔۔۔۔۔۔اک کمرہ چھوڑ دوسرا کمرا ابراہیم کا تھا اسکا لاک گھماتے ہوئے اک ہاتھ اپنے منہ پر رکھے وہ کمرے میں چوروں کی طرح داخل ہوئی کمرے میں اندھیرے میں جلتی چھوٹی سی لائٹ ہر چیز کو اور خوبصورت بنا رہی تھی ادا اپنے چھوٹے چھوٹے قدم اٹھاتی سائیڈ ٹیبل تک پہنچی جہاں ابراہیم کے موبائل کے ساتھ ادا کا موبائل بھی نظر آرہا تھا ادا نے اپنا ہاتھ موبائل کی طرف بڑھایا ہی تھا ابراہیم اسکی کلائی کھینچ اسے بیڈ پر گِرا کر اسکے منہ پر اپنا ہاتھ رکھے اس پر جھکا تھا ۔۔۔۔۔
ادا ایک سیکنڈ کے لیے کچھ نہیں سمجھ پائی تھی وہ اپنی پوری انکھیں کھولے ابراہیم کو گھور رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم ادا پر اور جھک رہا تھا ادا کو اپنی سانس روکتی ہوئی محسوس ہوئی
کیوں مجھے اور غصہ دِلا رہی ہو ابراہیم نے ادا کے کان میں سرگوشی کی ادا اپنے اپ کو چھڑوانے کی ناکام کوشش کررہی تھی ۔۔۔۔۔
ادا کے اتنے نزدیک دھیمی سی روشنی میں ابراہیم اپنا اپ کھو رہا تھا وہ خود کو سنبھالتا ہوا اُٹھ کھڑا ہوا ۔۔۔۔۔۔ادا بھی ایک جھٹکے سے کھڑی ہوکر اپنی سانس بحال کرنے لگی  ۔۔۔۔۔۔۔
مجھے میرا موبائل چاہیے ۔۔۔۔
مل جائے گا صبح ایک نئے نمبر کے ساتھ
ابراہیم اپنے سینے پر ہاتھ باندھے بہت آرام سے بولا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے ابھی چاہیے یہی نمبر تم لوگ مجھے یہاں قید نہیں کرسکتے سمجھے اگر میں  پولیس کے پاس چلی گئی تو۔۔۔۔۔
تو؟
میں صبح ہی پولیس کو گھر بلوا لوں گا جو بھی ہیلپ چاہیے انکو بتا دینا یہ کینیڈا نہیں یہاں پولیس کو گھر بلوا لیتے ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا پھر سے اپنے موبائل کی طرف لپکی ۔۔۔۔۔
ابراہیم دوبارہ اسکی کلائی کو اپنی گرفت میں لے چکا تھا ویسے اچھا مشورہ دیا ے ادا تمہیں اب اس کمرے سے باہر نہیں جانے دینا چاہیے یہی قید کرلینا چاہیے ابراہیم نے اک جھٹکے سے ادا کو کھینچا وہ اس کے سینے سے ٹکرائی تھی ۔۔۔۔۔
سوچنا بھی مت۔۔۔ وہ جلدی سے دو قدم پیچھے ہوئی چھوڑو میرا ہاتھ ادا واقعی اسکی بات سے ڈر گئی تھی انکھوں سے آنسو نکل کر اسکی شرٹ کو بھیگو رہے تھے ۔۔۔۔۔
پیلز میرا ہاتھ چھوڑے پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔
رونے کی وجہ سے الفاظ دم توڑ رہے تھے ۔۔۔۔
چھوڑ رہا ہوں پہلے انسانوں کی طرح میری بات سُنو ۔۔۔۔۔۔۔
اب ایسی کوئی حرکت نہیں کرو گی اب سمجھ جاؤ تمہاری زندگی مجھ سے شروع ہوکر مجھ پر ختم ہوجاتی ہے  تم میری عزت ہو اور مجھے اپنی عزت کی حفاظت کرنا اچھے سے آتی ہے سمجھی؟
ابراہیم اسکا ہاتھ چھوڑ چکا تھا وہ ایک لمحہ ضائع کیے بغیر اس کمرے سے بھاگی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنے کمرے میں آتے ہی اسنے سکون کا سانس لیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
موبائل رکھ لو لیکن مجھے نہیں یہاں رکھ سچ سکتے ادا لائٹ اون کر الماری سے کچھ ڈھونڈنے لگی لائٹ اون ہوتے ہی پاکیزہ کی آنکھ کھلی اسنے اُٹھتے ٹائم دیکھا 2بج رہے تھے ۔۔۔۔۔
ادا ۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ڈھونڈ رہی ہو؟
اپنا پاسپورٹ ڈھونڈ رہی ہوں کہا ہے مل کیوں نہیں رہا ادا ایک کے بعد ایک چیز باہر پھینک رہی تھی ۔۔۔۔۔ پاکیزہ جلدی سے اُٹھ ادا کی طرف بھاگی ادا اپنے ہاتھ جوڑے پاکیزہ کے سامنے کھڑی ہو گئی پلیز پاکیزہ میرا پاسپورٹ مجھے دے دو ۔۔۔۔۔۔
میرے پاس نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں نہیں تم جھوٹ بول رہی ہو ادا اپنے بالوں کو نوچنے لگی تھی ۔۔۔۔۔
ادا  کو ایسی حالت میں دیکھ کر پاکیزہ رونے لگی ادا میری جان پلیز ریلیکس ہو جاؤ کیوں ایسے کررہی ہو اتنی کمزور تو تم کبھی بھی نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا اپنے بال چھوڑ چکی تھی آنکھیں بند ہورہی تھی وہ پاکیزہ کی بانہوں میں ڈھیر ہوگئی تھی لیکن پاکیزہ اُسے سنبھال نہیں پائی تھی وہ زمین پر گِر گئی تھی ۔۔۔۔۔
ادا ۔۔۔ادا پلیز یارا اُٹھو  ۔۔۔۔۔
پاکیزہ کمرے سے باہر بھاگی ابراہیم کے کمرے کی لائٹ اون دیکھتے ہی پاکیزہ نے جھٹ سے دروازہ کھولا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ب بھا بھائی وہ ادا ۔۔۔۔۔۔
کیا ادا ابراہیم کے ماتھے پر پریشانی کی لکیریں نمودار ہوئی ۔۔۔۔
بولو ۔۔۔۔۔۔۔۔
پتہ نہیں چلے دیکھے کیا ہوا ہے اُسے وہ زمین پر پڑی ہے پاکیزہ نے روتے ہوئے مشکل سے اپنی بات پوری کی ۔۔۔۔۔۔
ابراہیم پاکیزہ کو وہی چھوڑ اُسکے کمرے کی طرف بھاگہ ۔۔۔۔۔۔۔۔
دروازہ کھولتے ہی ابراہیم ادا کی طرف بڑھا ۔۔۔۔
ادا اُٹھو پاکیزہ دروازے میں کھڑی رونے میں مصروف تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نے اُسے بیڈ پر لیٹا دیا تھا جاؤ پانی لے کر آؤ پاکیزہ ۔۔۔۔۔
جی بھائی ۔۔۔۔۔۔۔
میری جان بہت محبت کرتا ہوں تم سے مجھے مشکل میں مت ڈالو پلیز ابراہیم ادا کا ہاتھ پکڑے التجا کررہا تھا ابراہیم نے اپنے ہونٹ ادا کے ماتھے پر رکھ دیے اتنے انتظار کے بعد میں اذیت کا حقدار تو نہیں تھا ادا کیوں خود کو اور مجھے مشکل میں ڈال رہی ہو ۔۔۔۔۔۔
بھائی پانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس نے بہن کے ہاتھ سے پانی لے کر ادا کے منہ پر پانی کے کچھ چھینٹے مارے تھے ۔۔۔۔
ادا نے آہستہ آہستہ اپنی انکھیں کھولی۔۔۔۔
انکھیں کھولتے ہی اسکی نظر ابراہیم پر پڑی وہ اچھل کر پیچھے ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنے ہاتھوں سے اپنے بالوں نوچ کر خود کو اذیت دینے لگی تھی میں جانتی ہوں تم لوگ مجھے یہاں قید کرنا چاہتے ہو لیکن میں ایسا ہونے نہیں دوں گی وہ دیوانہ وار چِلا رہی تھی ابراہیم کی برداشت جواب دے رہی تھی ۔۔۔۔۔
پاکیزہ سنبھالو اِسکو ۔۔۔۔۔۔۔
وہ کہتے ہی اپنے روم میں چلا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
دو گھنٹے بعد ادا سوچکی تھی پاکیزہ کا سر بھی درد کررہا تھا اسنے ادا کو کیسے سنبھالا تھا تھا یہ بس وہی جانتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
صبح یونی جانے کا پروگرام کینسل کرتے ہوئے پاکیزہ بھی سونے کے لیے لیٹ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
-------------------------------------------
پاکیزہ آج جلدی اُٹھ گئی تھی ادا ابھی تک سو رہی تھی ایک دن میں اسکے چہرے کی رونق کہی کھو گئی تھی پاکیزہ صبح سے کمرے میں موجود تھی وہ ادا کو اکیلا نہیں چھوڑنا چاہتی تھی پتہ جب اُٹھے گی کیا ری ایکشن ہوگا وہ سوچ سوچ کر تھک گئی تھی رابعہ صبح سے دو چکر کمرے میں لگا گئی تھی سب ایک دوسرے سے کوئی نہ کوئی بات چھپانے کی کوشش کررہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم اج پہلی بار ناشتے کے بغیر آفس گیا  زکیہ کے لاکھ کہنے پر بھی وہ ناشتہ چھوڑ گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب کیا کرے گے؟  رابعہ جو کب سے خاموش بیٹھی تھی کلیم کی طرف دیکھتے ہوئے پوچھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
کلیم صاحب نے ایک لمبی سانس لی مجھے کچھ سمجھ نہیں رہی رابعہ تم نے پاسپورٹ تو نکال لیا تھا؟
جی جی میرے  پاس ہے ۔۔۔۔
کلیم میں اپنی بیٹی کو تکلیف میں نہیں دیکھ سکتی رابعہ رونے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ میرا ساتھ دو مجھے کمزور نہ کرو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بہت بری غلطی کردی ہم نے رابعہ ۔۔۔۔۔۔۔
زیادتی کی انتہاء کی ہم نے اپنی بیٹی کے ساتھ تکلیف میں ڈال دیا ہے اسے کلیم صاحب اپنا ضبط کھو رہے تھے رابعہ نے اگے بڑھ کر انکے کندھے پر ہاتھ رکھا ۔۔۔۔۔۔۔
فکر نہ کرے سب ٹھیک ہوجائے ربعہ نے تسلی دی جبکہ اُنکا خود دل انے والے وقت سے خوفزدہ تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
----------------------
ابراہیم کی صبح سے تیسری بار کال آگئی تھی ۔۔۔۔
کیسی ہے ادا؟
بھائی سو رہی ہے اُٹھے گی تو میں خود بتا دوں گی آپکو کیوں پریشان ہورہے ہے؟
ٹھیک ہے مجھے ضرور کال کرنا ۔۔۔۔
جی بھائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دروازه نوک ہونے کی آواز سن کر پاکیزہ نے کال بند کردی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آنٹی آپ ؟ آجائے ۔۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ اندر اتے ہی ادا کے پاس بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔
ادا میری بچی اُٹھ جاؤ میری جان کب تک سوتے رہنا ہے؟
پاکیزہ کو کمرے سے باہر جانا ہی بہتر لگا آنٹی اپ یہاں ہی ہے تو ماما کے پاس چلی جاؤں؟۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی بیٹا  اپ جاؤں میں یہاں ہی ہوں ۔۔۔۔۔
پاکیزہ باہر جاتے ہوئے دروازہ بند کرنا نہیں بھولی تھی ۔۔۔۔۔۔
ادا بیٹا اُٹھ جاؤ ۔۔۔۔۔۔
ادا نے نارمل انداز میں انکھیں کھول ماں کی طرف دیکھا ۔۔۔
ادا  کو ایک سیکنڈ لگا تھا رات کی باتیں یاد کرنے میں وہ اُٹھ کر بیٹھی تھی ماما میرا پاسپورٹ دے مجھے  پلیز ۔۔۔۔۔
میری جان ادھر اؤ رابعہ نے اپنا ہاتھ ادا کی طرف بڑھایا جس سے وہ بجلی کی رفتار سے پیچھے ہوئی تھی ۔۔۔۔۔
ماما میں کوئی بات نہیں سُننا چاہتی سمجھنا بھی نہیں چاہتی پلیز بس مجھ پر رحم کرے پاسپورٹ دے میرا میں جانتی ہوں وہ اپکے پاس ہے ۔۔۔۔۔
ادا تمہیں اپنے بابا کی کوئی پرواہ نہیں؟
مجھے؟  ماما مجھے پرواہ تھی جو میں یہاں چلی ائی آپ نے مجھے دھوکہ دیا ہے میں ریحان سے شادی کروں گی بس اپ میرا پاسپورٹ دے پلیز ادا چِلائی تھی ۔۔۔۔
میری جان تمہارا نکاح ہوچکا ہے تم ابراہیم کے نکاح میں ہو کیسے تم ریحان سے شادی کر سکتی ہو ۔۔۔۔۔۔
ادا گھٹنوں میں سر دیئے رو رہی تھی ماما نہیں کرے میرے ساتھ یہ پلیز نہیں کرے میں خود کو کچھ کرلوں گی ادا کے منہ سے یہ الفاظ نکلنے کی دیر تھی جیسے کوئی حل اسکے ذہین میں آیا تھا وہ جھٹ سے اُٹھی اور نیچے کچن میں ائی تھی وہاں سے چھری اُٹھائے وہ واپس کمرے کی طرف بھاگی تھی پاکیزہ اور زکیہ اُسے چھری اُٹھاتے دیکھ چُکی تھی وہ بھی اُس کے پیچھے سیڑھیاں چڑھنے لگی ۔۔۔۔۔۔
کمرے میں داخل ہوتے ہی ادا اپنی کلائی پر چھری رکھ چِلانے لگی ماما میرا پاسپورٹ دے ابھی ورنہ میں خود کو مار ختم کرلوں گی اور آپ جانتی ہے میں یہ کر گُزروں گی ماما ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ کے الفاظ دم توڑ گئے تھے وہ بس اپنا ہاتھ اُاٹھائے اُسے منع کررہی تھی زکیہ اور پاکیزہ ادا کے قریب جانے کی کوشش کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا پلیز میری بات سُنو میں تمہارے ساتھ ہوں ہم کوئی حل ڈھونڈ لے گے یہ نہیں کرو پلیز ادا چاچو کا سوچو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما آپ دے رہی ہے یا؟
پاکیزہ فوراً کمرے سے باہر جاکر ابراہیم کو کال ملانے لگی ۔۔۔۔
وہ پہلے سے ہی کال کے انتظار میں بیٹھا تھا پہلی بیل پر کال رسیو کرچکا تھا ۔۔۔۔
بھائی؟
کیا ہوا رو کیوں رہی ہو؟
بھائی گھر آجائے پلیز وہ ادا پاگل ہوگئی ہے چھری کلائی پر رکھے کھڑی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
سُنتے ہی ابراہیم سانس لینا بھول گیا تھا میں  ابھی ایا بس تم دیکھو اُسے اُسکے پاس رہو وہ آفس سے نکلتا ہوا پاکیزہ کو سمجھا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی بھائی پلیز جلدی ائے کال بند کرتے ہی پاکیزہ روم میں ائی ادا اُسی پوزیشن میں کھڑی تھی رابعہ کمرے میں موجود نہیں تھی وہ ادا کا پاسپورٹ لینے اپنے روم میں گئی تھی زکیہ بیگم  پریشان سی کھڑی ناسمجھی میں پاکیزہ کو دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ کمرے میں اتے ہی کلیم صاحب کو کال ملانے لگی لیکن وہ پک نہیں کر رہے تھے ……….
وہ تین چار بار کال ملا چکی تھی لیکن کلیم صاحب نے کال نہیں اُٹھائی رابعہ الماری سے پاسپورٹ لے کر سیڑھیاں چڑھنے لگی ابراہیم بھی تیزی سے سیڑھیوں کی طرف بڑھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
چاچی رُکیے ابراہیم اُنکے ہاتھ میں پاسپورٹ دیکھ چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ کے قدم وہی ابراہیم کی آواز پر رُک گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ مجھے دیں ابراہیم نے اپنا ہاتھ بڑھایا ۔۔۔۔۔۔
بیٹا وہ کچھ کرلے گی خود کو ۔۔۔۔۔
چچی پلیز مجھ پر بھروسہ رکھے دیں مجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ نے پاسپورٹ ابراہیم کو دے دیا تھا  دونوں ادا کے کمرے کی طرف بڑھے ادا، وہی پوزیشن میں کھڑی ماں کا انتظار کررہی تھی وہ ماں کے ساتھ ابراہیم کو دیکھ کر گھبرائی نہیں تھی بلکہ اور ڈھٹ کر کھڑی ہوگئی تھی ۔۔۔۔۔
ادا یہ چھری نیچے پھینکو ورنہ میں یہ پھاڑ دوں گا چلو شاباش جلدی جو بات بھی کرنی ہے ہم بیٹھ کر کرے گے ۔۔۔۔۔۔
نو نو اگر اس کو پھاڑا تو میں ۔۔۔۔ادا چھری اپنی گردن تک لے گئی تھی ۔۔۔۔
رابعہ کی چیخ کمرے میں گونجی ادا نہیں میری جان ۔۔۔۔۔۔۔
ماما مجھے بس یہاں سے جانا ہے مجھے اور کچھ نہیں چاہیے جلدی کرے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ادا بچوں والی حرکتیں نہیں کرو چھری پھینک دو ابراہیم انے آخری بار کوشش کی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں بلکل نہیں تم لوگ مجھے یہاں قید نہیں کرسکتے ۔۔۔۔۔
اوکے تم نہیں مانو گی؟
نہیں بلکل بھی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم  نے کچھ بھی  سوچے سمجھے بغیر ایک جھٹکے سے پاسپورٹ کے ٹکڑے کر دیئے ۔۔۔۔۔۔۔
ادا اپنی پوری انکھیں کھولے ابراہیم کو دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔
چھری زمین پر گِر گئی تھی اور ادا بھی اسکی ناک سے خون بہنے لگا تھا ابراہیم نے اگے بڑھ کر اسکے بے جان وجود کو اُٹھایا اور تیزی سے کمرے سے باہر کی طرف بھاگہ کسی کو ساتھ لیے  بغیر وہ ادا کو گاڑی کی پچھلی سیٹ پر لیٹا کر ہسپتال کی طرف گاڑی کو بھاگا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
ادا نے شروع سے ہی کبھی سخت حالت دیکھے ہی نہیں تھے اکلوتی  تھی اور  خدا نے اتنا نوازہ تھا کسی چیز کی کمی نہیں تھی زندگی میں کبھی کوئی دکھ تکلیف نہیں دیکھی اج مشکل ائی تو وہ سمجھ نہیں پارہی تھی کیسے ہیڈل کرے وہ پوری طرح بکھر گئی تھی زندگی سے بھرپور لڑکی آج ہسپتال کے ICU  میں زندگی اور موت کی جنگ لڑ رہی تھی باہر کھڑا ابراہیم اپنے رب کے حضور دعا میں مصروف تھا دل کچھ کہہ رہا تھا اور دماغ کچھ وہ ٹوٹا ہوا مرد اجڑی ہوئی حالت میں اِدھر اُدھر چکر لگا رہا تھا ۔۔۔۔
پاکیزہ اور رابعہ ڈرائیور کے ساتھ ہسپتال پہنچ گئی تھیں کلیم اور سکندر بھی آفس سے سیدھا یہی ائے تھے سب نے اتے ہی ایک ہی سوال پوچھا جسکا جواب شاید ابراہیم کے پاس نہیں تھا ڈاکٹر کو باہر آتا دیکھ سب ڈاکٹر کی طرف بڑھے ۔۔۔۔۔۔
اُنکا نروس بریک ڈاون ہوا ہے ابھی دعا کیجیے کنڈیشن کچھ زیادہ بہتر نہیں ہے ہم آپ کو کوئی جھوٹی تسلی نہیں دینا چاہتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ کو اپنی ٹانگوں سے جان نکلتی محسوس ہوئی وہ منہ پر ہاتھ رکھے کرسی پر بیٹھ گئی ۔۔۔۔
چچی ہماری ادا کو کچھ نہیں ہوگا پلیز پریشان نہیں ہو پاکیزہ جو خود اس وقت خوف کی زد میں تھی رابعہ کو تسلی دینے لگی ابراہیم ہسپتال سے باہر آگیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
گھر پر اج ساری باتیں کھل گئی تھیں مختار صاحبہ خان صاحب کو خوب سُنا رہی تھی اکلوتی بیٹی ہے ہمارے کلیم کی کچھ ہوگیا اُسے تو کیا منہ دیکھائے گے ہم اپنے بیٹے کو کہا تھا میں نے نہ کرو نکاح اتنے چھوٹے بچوں کا بڑے ہوکر اُن کے دل بدل گئے تو لیکن نہیں میری کون سُنتا ہے ۔۔۔۔۔
خان صاحب أج واقعی پچھتا رہے تھے لیکن اب کوئی فائدہ نہیں تھا وہ وقت گزر گیا تھا اور یہ وقت تھم گیا تھا وہ بے بسی سے اپنی انکھوں سے آنسو صاف کر نماز کے لیے چلے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ نے اتنی بڑی بات کیسے چھپا لی راحیلہ ہمیں بتاتی  ہم سمجھاتے ادا کو وہ ہی بیچاری پریشان ہوتی رہی ۔
جی بھابھی میں بھی یہی سوچ رہی تھی ادا بیچاری کا کوئی قصور نہیں وہ تو اتنی چھوٹی سی تھی کچھ یاد بھی نہیں اُسے الله اس بچی کو زندگی دے اور صبر بھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
4 گھنٹے گزر گئے تھے لیکن ابھی تک ڈاکٹر کچھ نہیں بتا رہے تھے رابعہ پاکیزہ اور کلیم ہسپتال میں تھے سکندر ہسپتال سے باہر ابراہیم کو ڈھونڈ رہا تھا ابراہیم خاموش تھا نہ دماغ کچھ سوچ رہا تھا نہ دل کوئی گواہی دے رہا تھا وہ گاڑی میں بیٹھ کر اپنے آنسوؤ کو روکنے کی کوشش کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔
ابراہیم؟
سکندر نے گاڑی کا دروازہ نوک کیا ۔۔۔۔
جی چاچو ابراہیم گاڑی سے باہر ایا ۔۔۔۔۔
کیا ہو گیا یار ہمت کرو ۔۔۔۔۔
ابراہیم شاید کسی کے کندھے کی تلاش میں تھا سکندد کے تسلی دیتے ہی وہ اُسکے گلے لگ گیا ۔۔۔۔
ادا ٹھیک ہوجائے گی اللہ پر یقین رکھو ڈاکٹر تو کچھ بھی بول دیتے ہے ۔۔۔۔۔۔۔
چاچو میں اُسے چھوڑ نہیں سکتا  ابراہیم نے اپنا ڈر بیان کیا ۔۔۔
تو پاگل ہوگیا ہے  ابراہیم کون کہہ رہا ہے چھوڑنے کو وہ تیری بیوی ہے اور مرتے دم تک بیوی ہی رہے گی وہ ٹھیک ہوجائے سوچتے ہیں کچھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آخر 5 گھنٹے بعد ڈاکٹر نے آکر ادا کی طرف سے بہتری کی خبر سُنا دی رابعہ کو اپنے جسم میں حرکت ہوتی محسوس ہوئی ڈاکٹر  جا چکا تھا رابعہ فوراً اُٹھ کلیم کے سامنے گھٹنوں کے بل بیٹھی میں نے آج تک آپ س کچھ نہیں مانگا کلیم آج ہاتھ جوڑ مانگ مانگ رہی ہوں میں اپنی بیٹی کو مزید تکلیف میں نہیں دیکھ سکتی کچھ بھی کرے جیسا وہ چاہتی ہے ویسا کردے آپ ۔۔۔رابعہ کے الفاظ وہاں موجود پاکیزہ کے علاوہ سکندر اور ابراہیم نے اتے ہوئے سن لیے تھے ابراہیم کے قدم وہی رُک گئے تھے ۔۔۔
رابعہ میں ایسا بھی کر جاتا کلیم نے رابعہ کے ہاتھ تھام اُن کو کرسی بیٹھایا میں بھی اپنی بیٹی کی خوشی چاہتا ہوں رابعہ لیکن یہ ممکن نہیں ۔۔۔۔۔
کیوں کلیم کیوں ممکن نہیں رابعہ نے حیرات سے کلیم کی طرف دیکھا۔.۔
ریحان ہماری بیٹی سے پیار نہیں کرتا رابعہ وہ تو اسکی دولت کے پیچھے پاگل ہورہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
آپ یہ جھوٹ بول رہے ہے؟  رابعہ کو اپنے شوہر پر شک ہورہا تھا کیوں کہ آپ کچھ کرنا ہی نہیں چاہتے اپنی بیٹی کے لئے ۔۔۔۔۔۔۔
بس کردو رابعہ کلیم نے بے بسی رابعہ کی طرف دیکھا وہاں کھڑی پاکیزہ کی نظریں مسلسل اپنے بھائی کی طرف تھی جو کلیم کی بات سمجھنے کی کوشش کررہا تھا ۔۔۔۔
میں نے وہاں موجود ایک آفس کے بندے کو ریحان کے بارے پتہ کرنے کے لیے کہا تھا، اُسنے کل ہی مجھے فون کیا اور بتایا ریحان کا صرف ہماری بیٹی سے نہیں اور بھی لڑکیوں سے ریلیشن ہے اور اُسکے ایسے ایسے شوق ہے تم سُنو تو چودہ طبق روشن ہوجائے رابعہ تم کیا سمجھتی ہو مجھے اپنی بیٹی سے پیار نہیں ہے؟ لیکن بتاؤ کیسے جانتے بوجھتے میں اپنی بیٹی کو ایسی کھائی میں دھکیل دوں؟
وہ کبھی نہیں مانے گی ہماری بات کلیم ۔۔۔۔۔۔
ہاں میں جانتا ہوں اسلیے میں نے اُسے ثبوت دینے کے لیے کہا تم فکر نہیں کرو رابعہ کچھ دنوں کی بات ہے سب ٹھیک ہوجائے گا وہ سمجھ جائے گی ۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نے اگے بڑھ کر کلیم کے کندھے پر ہاتھ رکھا چاچو آپ پریشان نہیں ہو
ابراہیم میری بیٹی بہت معصوم ہے اُسے معاف کردینا کلیم صاحب اپنی نظریں جُھکائے ابراہیم کو کہہ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔
چاچو آپکو فکر کرنے کی ضرورت نہیں ہم سب ساتھ ہے اور ساتھ مل کر اس مشکل سے باہر نکل ائے گے آپ دیکھنا ادا سمجھ جائے گی. ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کلیم یہ کب ادا سے ملنے دیں گے؟
ابھی بلوا لے گے رابعہ دعا کرو اللہ سے ہمیں مشکلات سے نجات دے۔۔۔۔۔۔۔۔
آمین ۔۔.۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج ادا کو 4 دن ہوگئے تھے ہسپتال میں وہ جب سے ہوش میں ائی تھی اک لفظ نہیں بولی تھی بس خاموش سی خالی نظروں سے سب آنے والوں کو دیکھتی رابعہ پاکیزہ پاس بیٹھ کر بہت کوشش کرتی باتیں کرتی لیکن وہ خاموش تھی کچھ نہیں بولی تھی ۔۔۔۔
ادا آج رات ہم گھر چلے جائے گے بیٹا ڈاکٹر نے بولا ادا بلکل ٹھیک ہے ادا نے کوئی ری ایکشن نہیں دیا وہ لوگ گھر کے لیے نکل چُکے تھے گھر تک اتے ہی ادا کو اپنی ٹانگوں میں درد محسوس ہونے لگا وہ ہال میں ہی انکھیں بند کر صوفے پر بیٹھ گئی۔۔۔۔۔
کمرے میں نہیں چلو گی؟  پاکیزہ نے پاس بیٹھ کر بہت نرمی سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔
ادا کچھ نہیں بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم گھر میں داخل ہوا تو ہال میں بیٹھی ادا پر نظر پڑی جو انکھیں بند کیے خود میں سمٹ کر بیٹھی تھی جیسے اپنے اندر ہوتی کسی تکلیف کو روکنے کی کوشش کررہی ہو  انکھوں کے نیچے ہلکے اترا ہوا چہرا صاف اسکی بےبسی بیان کر رہے تھے ۔۔۔۔۔۔
ابراہیم سیڑھیاں چڑھتا ہوا اپنے روم کی طرف بڑھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا کو دیکھنے ملنے سب ہال میں جمع ہو گئے تھے لیکن ادا نے کسی سے کوئی بات نہیں کی دادو خاں صاحب چاچو زکیہ سب نے بہت کوشش کی لیکن ناکام رہے ۔۔۔۔۔۔
کافی ٹائم گزرنے کے بعد پاکیزہ ادا کو پکڑ روم میں لے ائی تم آرام کرو میں اتی ہوں وہ ادا کو بیڈ پر لیٹائے خود نیچے ائی تھی سب لوگوں نے اج کتنے دنوں بند ایک ساتھ رات کا، کھانا کھایا تھا ۔۔۔پاکیزہ ادا کا کھانا اوپر لے جانے لگی جب ابراہیم کی آواز، پر سیڑھیوں میں ہی رک گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسی ہے اب؟
پتہ نہیں کیا سوچ رہی ہے جب سے ہوش میں ائی ہے ایک لفظ نہیں بولی خاموش ہے ۔۔۔۔
یہ کھانا اس کے لیے؟
جی ۔۔۔۔۔
لاؤ مجھے دو تم ابھی ماما کے پاس جاؤ ابراہیم پاکیزہ کے ہاتھ سے کھانا لے کر ادا کے روم میں ایا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اتے ہی پہلے دروازہ لاک کیا ادا جو لیٹی تھی دروازہ لاک ہونے کی آواز سے فوراً مڑ کر دروازے کی طرف دیکھا جہاں ابراہیم کھانا لیے کھڑا تھا ادا کو اپنی سانس لینا مشکل لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
کیسی ہو؟
ادا خاموش تھی وہ خود میں سمٹ گئی تھی ۔۔۔۔۔
تم سے پوچھ رہا ہوں کیسی ہو؟
لیکن ادا تو جیسے یہاں تھی ہی نہیں اپنی سوچ میں کہی گم تھی ۔۔۔۔
ابراہیم کھانا ادا کے پاس رکھتا ہوا خود بھی بیٹھ چکا تھا ایک بات اپنے ذین میں بیٹھا لو اچھے سے تم میری بیوی ہو  میری عزت ہو میں تمہیں چھوڑوں گا تو کبھی نہیں اور یہ جو بھی تمہارے دماغ میں چل رہا ہے اس پر عمل کرنے کی کوشش بھی مت کرنا سمجھی ۔۔۔۔۔۔
ادا تو جیسے اسکی بات سُن ہی نہیں رہی تھی ابراہیم کچھ سوچتے اُٹھ ادا کی طرف بڑھا تھا اور اسکا خیال درست تھا ادا فوراً چِلائی ۔۔۔۔۔
رکو میرے پاس نہیں انا پلیز ادا اپنے ہاتھ منہ پر رکھے چِلا رہی تھی ۔۔۔۔۔
اوکے نہیں اتا خاموش بس میری باتوں کا جواب دو ابراہیم وہی رک گیا تھا ۔۔۔
کیوں کررہی ہو ایسا چاچو اور چچی کو اتنی اذیت کیوں دے رہی ہو؟
اذیت؟  مجھ سے پوچھے اذیت کیا ہوتی ہے سولی پر لٹکی ہوں میں جہاں نہ تو مر رہی ہوں نہ جان باقی ہے ادا کے آنسو ابراہیم کو تکلیف دے رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا چاہتی ہو؟
سولی سے رہائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسے؟
واپس جانا چاہتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسکے علاوہ جو کہو گی سب ہوجائے گا لیکن میں تمہیں چھوڑ نہیں سکتا یہ میرے بس میں نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم کی آواز میں کچھ تو تھا ادا نے اسکی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔
تمہیں کچھ یاد نہیں ادا لیکن مجھے سب یاد ہے میں نے اس رشتے کا بہت مان رکھا ہے کبھی اس میں خیانت  نہیں کی ہمیشہ تمہارا انتظار کیا ۔۔۔۔۔۔
یہ تمہارا موبائل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابراہیم نے اپنی جیب سے موبائل نکال ادا کی طرف بڑھایا ۔۔۔۔۔۔۔
سم چینچ نہیں کی تاکہ تم کسی کی امید ختم کردو تم اب یہی رہو گی اس حقیقت کو تسلیم کرو اور اپنی سٹڈیز شروع کرو ۔۔۔۔۔۔۔
ادا اخری کوشش کرنا چاہتی تھی وہ اپنی جگہ سے اُٹھ ابراہیم کے قدموں میں آ بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
میں تمہارے اگے ہاتھ جوڑتی ہوں مجھے جانے دو پلیز میں یہاں مر جاؤں گی اور اگر تم چلی گئی تو میں مر جاؤں گا ابراہیم اپنی بات پوری کر کے رکا نہیں تھا وہ وہی زمین پر بیٹھی اپنی قسمت پر ماتم کررہی تھی ادھا گھنٹے سے وہ ٹھنڈی زمین پر بیٹھی رو رہی تھی ساری امیدیں دم توڑ گئی تھی کوئی راستہ باقی نہیں بچا تھا میں کیوں ائی یہاں مجھے نہیں آنا چاہیے تھا ادا تم دنیا کی سب سے بیوقوف لڑکی ہو جسے اپنے ہی گھر والوں نے پاگل بنا دیا ہے ابھی مرنا ساری زندگی ان کی غلامی کرنا انکی مرضی سے اُٹھنا بیٹھنا کھانا پہننا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا تم نیچے کیوں بیٹھی ہو؟
پاکیزہ کمرے میں اتے ہی ادا کی طرف بھاگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ پلیز مجھے مار دو میں ایسے گھوٹ گھوٹ کر نہیں جینا چاہتی میں نے کبھی اپنے لیے ابراہیم جیسا لاٰئف پارٹنر سوچا نہیں جیسے میرے ہر کام پر عتراض ہو ادا نے روتے ہوئے اپنے دل کی بات پاکیزہ کے سامنے رکھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا مطلب ادا؟
مطلب ہیلو بولنے سے میرے بیٹھنے پہننے تک وہ ساری زندگی مجھ پر پابندیاں لگائے گا میں جانتی ہوں میں ایسی زندگی نہیں گزار سکوں گی پاکیزہ پلیز ۔۔۔۔۔
یہاں سے اُٹھو اوپر بیڈ پر بیٹھو پھر بات کرتے ہے ہیں ۔۔۔۔.۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا کو بیڈ پر بیٹھا کر پاکیزہ نے اسکی طرف پانی بڑھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں مجھے نہیں پینا ۔۔.
اُس دن تم نے مجھے کیا کہا تھا؟
پاکیزہ کے سوال پر ادا نے سوالیہ نظروں سے اسکی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔
تم نے کہا میری اور ریحان کی اچھی انڈرسٹینڈنگ ہے مطلب تم اس سے محبت نہیں کرتی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس تم دونوں کے خیالات ملتے ہے وہ ہر اچھی بری بات میں تمہارا ساتھ دیتا ہے؟  روک ٹوک نہیں کرتا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اور دوسری طرف تم یہاں کے ماحول سے پریشان ہو یا یوں کہہ لو بھائی کا ٹوکنا تمہیں اچھا نہیں لگتا تمہیں لگتا ہے ساری زندگی وہ تم پر اپنی مرضی مسلط کرے گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
تم ریحان کے پاس نہیں جانا چاہتی بلکہ اس ماحول سے نکلنا چاہتی ہو ایسا ہی ہے؟
ادا کے پاس کوئی جواب نہیں تھا شاید یہی سچ تھا ریحان بس اچھا دوست تھا اچھی انڈرسٹینڈنگ کی وجہ سے انہیں لگا کہ وہ اچھے لائف پارٹنر بن سکتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری جان میری بات سُنو پاکیزہ نے بہت مضبوطی سے ادا کے ہاتھ اپنے ہاتھوں میں لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم اپنے ماما بابا کا کل اثاثہ ہو انکی پوری زندگی تمہارے گِرد گھومتی ہیں تم سوچ بھی نہیں سکتی وہ اس وقت کس تکلیف سے گزر رہے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔
بس چُپ ہوجاؤ پاکیزہ نے ادا کے آنسو صاف کرتے ہوئے اسے گلے سے لگایا ۔۔۔۔
میری ایک بات مانو گی؟
پلیز کچھ ٹائم لے لو یہاں رہو سب کو سمجھو تمہاری یونی شروع ہونے والی تھی نہ؟
تم یہاں یونی میں ایڈمیشن لے لو ادا تم دیکھنا تمہارا دل و دماغ تمہارے سارے خدشات دور کردیں گے تم جیسا بھائی کے بارے میں سوچ رہی ہو ویسا کچھ بھی نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں سونا چاہتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے سو جاؤ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ادا کو نیند نہیں آرہی تھی بس وہ باتوں سے پیچھا چھوڑا رہی تھی پاکیزہ بھی یہ بات اچھے سے سمجھ گئی تھی پاکیزہ اپنی بکس اُٹھائے صوفے پر بیٹھ گئی تھی کھانا وہی پڑا ٹھنڈا ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
ادا جب کافی دیر کروٹ بدل بدل کر تھک گئی تو اٹھ کر کھانا پکڑ کر بیٹھ گئی ۔۔۔۔
ادا ٹھنڈا ہے تو گرم کروا دوں؟
نہیں میں کھا لوں گی کہتے ہی ادا رونے لگی پاکیزہ اسکے پاس آگئی ادا کیا ہو گیا ہے یار ۔۔۔۔
مجھے لگتا ہے میں پاگل ہو جاؤں گی ادا پاکیزہ کے ساتھ چمٹ کر بڑی طرح رو رہی تھے ۔۔۔۔۔
میں سمجھ سکتی ہوں تمہاری بات ادا لیکن جان پلیز پلیز بس ایک بار میری بات پر غور کرو سمجھنے کی کوشش تو کرو کیوں خود کو تکلیف میں ڈال رہی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم  آفس ورک کر کے تھک گیا تھا اپنی انکھیں بند کر بیڈ سے ٹیک لگائے ادا کو سوچنے لگا  وہ ادا کو تکلیف میں نہیں دیکھ سکتا تھا لیکن ادا کو چھوڑنے کی تکلیف بھی برداشت نہیں کر سکتا تھا میں تمہیں نہیں چھوڑ سکتا ادا تم میری سانسوں پر بھی اختیار رکھتی ہو روکنے کو بولو گی تو روک دوں گا لیکن تمہارے بغیر زندگی کا تصور بھی نہیں کر سکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم اپنا موبائل پکڑے پاکیزہ کا نمبر ملانے لگا ۔۔۔۔۔

پاکیزہ سونے کے لیے لیٹی ہی تھی کہ ابراہیم کی کال آنے لگی وہ جلدی سے کال کٹ کر ابراہیم کے کمرے کی طرف چل دی ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی بھائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آجاؤ اندر ۔۔۔۔۔۔
کال کر رہے تھے آپ؟
ہاں میں وہ ادا کا پوچھنا تھا وہ ٹھیک ہے؟
نہیں وہ ٹھیک نہیں ہے بھائی ۔۔۔۔۔پاکیزہ بھائی کے پاس بیڈ پر ہی بیتھ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھائی وہ ریحان سے محبت نہیں کرتی یہ اسنے مجھے پہلے ہی بتا دیا تھا ۔۔۔۔۔
بس وہ ہمارے ماحول سے خوفزدہ ہے جس کے ذمدار بس اپ ہے کتنا کہتی تھی میں نہ ہر بات پر کہنے بیٹھ جایا کریں جب وہ ہمارے درمیان ائے گی خود ہی ہمارے ماحول میں ڈھل جائے گی لیکن آپکو تو بہت خوشی ملتی تھی نہ یہ سب کر کے اُسے صرف آزادی چاہیے بس دیکھیے گا کیسے سب ٹھیک ہوجائے گا ۔۔۔۔۔۔۔
وہ واقعی ریحان سے محبت نہیں کرتی؟  ابراہیم کا ذہین پہلی بات پر ہی اٹکا ہوا تھا جیسے اگلی باتیں وہ سُن ہی نہیں رہا تھا ۔۔۔۔۔
نہیں کرتی وہ سوچتی ہے شادی کے لیے محبت نہیں انڈرسٹینڈنگ کی ضرورت ہوتی ہے جو ریحان اور اسکی اچھی ہے بس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم اُسے اپنے ساتھ یونی لے جاؤ ایڈمیشن کرواؤ اسکا گھر پر رہ کر اور دماغ خراب ہوگا ۔۔۔۔۔
بھائی اپکا سونا ہی بنتا ہے سو جائے پاکیزہ غصے سے اُٹھ ابراہیم کے روم سے نکل اپنے روم میں اگئی ۔۔۔۔۔۔۔
------------------------------------
صبح ہوچکی تھی سب ناشتے کے ٹیبل پر موجود تھے سوائے ایک وجود کے ۔۔۔۔۔
 اُٹھی نہیں تھی ادا؟  رابعہ نے  پاکیزہ سے پوچھا۔۔۔۔۔
اُٹھ گئی تھی چچی لیکن نیچے نہیں آنا چاہ رہی تھی میں بیگ لینے جاتی ہوں اوپر تو ناشتہ لے جاوں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں بیٹا آپ آرام سے یونی جاؤ میں کروا دوں گی ناشتہ ۔۔۔۔۔۔۔
جی چچی ۔۔۔۔۔۔
ابراہیم ٹیبل سے اُٹھ کھڑا ہوا مجھے لگتا ہے اُسے ہمارے ساتھ ناشتہ کرنا چاہیے وہ میری ذمداری ہے اور یہ ذمداری اب مجھے اُٹھا لینی چاہیے مجھے اُمید ہے اپ سب کو کوئی اعتراض تو نہیں ہوگا ۔۔۔۔
ابراہیم کہتے ہی سیڑھیوں کی طرف بڑھ گیا تھا۔۔۔۔۔
 کمرے کا دروازہ کھولتے ہی ابراہیم ادا کی  طرف بڑھا وہ خود کو موبائل پر بزی شو کروا رہی تھی ابراہیم کو دیکھ کر بھی اسنے کوئی ری ایکٹ نہیں کیا ۔۔۔۔۔
تم نیچے ناشتہ کرنے کیوں نہیں آئی؟
میری مرضی ۔۔۔۔ادا نے موبائل میں بزی رہ کر ہی جواب دیا جیسے اسے ابراہیم کے انے سے کوئی فرق نہیں پڑا ہو ۔۔۔۔۔
اُٹھو ۔۔۔۔۔۔ادا اُٹھو چلو نیچے سب کے ساتھ بیٹھ کر ناشتہ کرو ۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم کے بولنے میں سختی آگئی تھی جسکا ادا پر کوئی اثر نہیں ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے بھوک نہیں جب ناشتہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا کی بات پوری ہونے سے پہلے ہی ابراہیم اسکا بازو پکڑ اسے کھڑا کر چکا تھا ۔۔۔۔۔
چھوڑو مجھے یہ کیا طریقہ ہے ۔۔۔۔۔
یہی میں تمہیں سمجھا رہا ہوں یہ کیا طریقہ ہے پورے گھر کو پریشان کررکھا ہے تم نے ۔۔۔۔۔
میرا بازو چھوڑو ابی………
پہلے بتاؤ کتنے دن یہ ڈرامہ کرنے کا ارادہ ہے؟
تمہیں یہ ڈرامہ لگتا ہے ادا کی انکھوں میں نمی تیرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نے ایک جھٹکے سے اسے اپنی طرف کھنچا وہ اس کے سینے سے ٹکرائی اسکی کمر کو، اپنے بازو کے حصار میں لیا ۔۔۔۔۔۔
آآآ چھوڑو مجھے ابی پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آئندہ مجھے انا پڑا تو اُٹھا کر لے جاؤں گا نیچے چلو ناشتہ کرو اور سب کے ساتھ اچھے سے پیش اؤ سمجھی؟
میں غلام نہیں ہوں ادا نے روتے ہوئے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔
میں نے کب غلام کہا ابراہیم نے بہت نرم لہجے میں سوال کیا ۔۔۔۔۔۔۔
چھوڑو مجھے۔۔۔۔۔۔ حکم تو ایسے ہی دے رہے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر پیار سے کہوں تو مان لو گی؟  ابراہیم نے ادا کے چہرے کو چھوتی ہوئی لٹو کو کان کے پیچھے کرتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔
پلیز چھوڑو ادا کو ابراہیم کا اتنا نزدیک ہونا  عجیب لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔
لو چھوڑ دیا ۔۔۔۔
اب بولو اچھی بچی بنو گی یا اپنی بانہوں میں اُٹھا کر لے جاؤں ۔۔۔۔۔۔
ادا فوراً پیچھے ہوئی ہرگز نہیں  میں خود آؤ گی ادا نے اپنی انکھیں صاف کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
شاباش کوشش کرنا مجھے دوبارہ تمہارے اتنے قریب آنے کا موقع نہیں ملے ورنہ کوئی گستاخی ہوجائے گی مجھ سے ابراہیم ادا کو ڈراتے ہوئے کمرے سے باہر نکلا ادا بھی خود کو سنبھالتی ہوئی اسکے پیچھے ہی نیچے ائی اور سب کے ساتھ ناشتہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
--------------------------
ابراہیم کا موڈ دانش بہت دنوں سے نوٹ کررہا تھا اور باقی کی خبر وہ راحیلہ کو فون کر کے لے لیتا تھا ابراہیم کی حالت دیکھ وہ سمجھ گیا تھا ابراہیم ادا کے معاملے میں بہت کمزور ہے  یا محبت نے کمزور کردیا ہے  جو بھی تھا دانش کی نیت اب آفس کے ساتھ ساتھ ادا پر بھی خراب ہوچکی تھی در حقیقت تو وہ ابراہیم کی تکلیف کی وجہ ادا کو بنانا چاہتا تھا وہ کہتے ہے نہ چوٹ جتنی گہری ہوتی ہے تکلیف اتنی ہی زیادہ تو دانش سوچ چکا تھا اپنے کام کو کیسے سرانجام دینا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا سارا دن گھر بور ہوتی رہی دوپہر کے 3 کا ٹائم ہو گیا تھا حماد اور علیزہ گھر آگئے تھے ادا انہیں دیکھتے ہی خوش ہوگئی بچوں باہر چلے؟
ابھی؟  علیزہ نے کندھے سے بیگ اتارتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔
جی ابھی میں بور ہورہی ہوں ۔۔۔۔۔
حماد صوفے پر بیٹھ گیا تھا آپی میں تھکا ہوا ہوں ۔۔۔۔
مجھے یہاں کے راستوں کا نہیں پتہ ورنہ میں اکیلی چلی جاتی ادا نے منہ بنایا ۔۔۔۔
چلو میرے ساتھ چلنا ادا میں تھوڑی دیر  میں بابا کی طرف جارہی ہوں ۔۔۔۔۔
نہیں چچی رہنے دیں مجھے کہی پارک میں جانا تھا ۔۔۔۔۔۔
چلو علیزے کو لے جاؤ یہاں پاس میں ہی ایک پارک ہے علیزے اچھے سے جانتی ہے ۔۔۔۔
اوکے میں ویٹ کررہی ہوں گڑیا جلدی اؤ پارک کا نام سُنتے ہی علیزہ بھی فریش ہوگئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھوڑی دیر بعد ہی علیزہ ہاتھ میں سینڈوچ پکڑے خاضر ہوئی آپی چلے؟
جی چلو ۔۔۔۔چچی نے  سارا راستہ سمجھا دیا تھا پارک زیادہ دور نہیں تھا اس لیے ادا پیدل ہی چلی گئی گڑیا اپ کون سے سکول جاتی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا کھانے میں کیا پسند ہے؟  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ادا چھوٹے بچوں کی طرح علیزے سے باتیں کرتی ہوئی پارک پہنچی وہاں جاتے ہی علیزہ جھولوں کی طرف لپکی اور ادا نے ریحان کو کال ملائی ۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو ادا  کیسی ہو ؟تمہارا نمبر کیوں بند تھا ؟کہاں تھی ؟یار تم نے تو ڈرا ہی دیا تھا ۔ریحان نے کال رسیو کرتے ہی سوال کیے …..
زندہ ہوں  ۔۔۔۔۔۔
ایسا کیوں بول رہی ہو؟
ادا نے پوری بات ریحان کو بتائی جسکو سُن ریحان کو غصہ آیا یہ کیسا مذاق ہے ادا؟
مذاق تو میرے ساتھ ہوا ہے مجھے بس یہاں سے نکلنا ہے ہیلپ می پلیز ریحان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن میں کیا کرسکتا ہوں؟
ریحان پلیز ایسا نہیں بولو ۔۔۔۔۔۔۔کچھ تو کرو یار
دیکھو ادا تم جانتی ہو میں خود ابھی سٹڈی کرتا ہوں جیب خرچ بھی پاپا سے لیتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک ہی حل ہے تم اپنے والدین کو منا لو اگر میں کچھ کر کے تمہیں یہاں بلوا بھی لیتا ہوں تو تمہارے پاپا تمہیں کچھ نہیں دیں گے ۔۔۔
مجھے کچھ چاہیے بھی نہیں ریحان ادا کو اپنے الفاظ بے معنی لگ رہے تھے جس کی وجہ سے وہ اتنی فائٹ کررہی تھی اسنے کتنی آسانی سے اپنا رونا رویا تھا ۔۔۔۔۔
میں تمہیں ایک ہی مشورہ دوں گا ادا تم اپنے گھر والوں کی مان لو اس سے۔۔۔۔
Shutup.. Just shutup.............
ریحان کی بات مکمل ہونے سے پہلے ہی ادا چِلائی اور فون بند کردیا اپنے آنسو صاف کرتی ادا پارک میں موجود لوگوں کی طرف دیکھ دیکھنے لگی لیکن آنسو تھم نہیں رہے تھے میں ہار گئی ہوں؟  ادا کلیم خان تم ہار گئی ہو بڑی طرح سے تمہاری زندگی میں تو سب ایک سے بڑھ کر ایک دھوکے باز نکلا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ادا اپنی سوچو میں گم تھی جب علیزہ کے رونے کی آواز پر ادا کو ہوش آیا ۔۔۔۔
کیا ۔۔۔کیا ہوا علیزہ رو کیوں رہی ہو؟  علیزہ کے ماتھے سے خون بہہ رہا تھا وہ جھولے سے گِر گئی تھی ۔۔۔۔
آہ علیزہ یہ کیا ہوا یہ تو خون نکل رہا ے ادا کے ہاتھ کانپنے لگے میں گھر کال کرتی ہوں ادا نے جلدی سے پاکیزہ کو کال ملائی ۔۔۔
پاکیزہ میں علیزہ کو پارک لائی تھی اسے چھوٹ لگ گئی خون نکل رہا ہے میں پیدل ائی تھی گاڑی بھی نہیں ہے ادا ایک سانس میں سب کہہ گئی تھی ۔۔۔۔
ادا پلیز رونا تو بند کرو میں بھائی کے ساتھ گھر ہی جارہی ہوں ہم بس 5 منٹ میں پہنچ جائے گے پریشان نہیں ہو ۔۔۔۔۔
4 منٹ میں پاکیزہ اور ابراہیم پارک میں اتے دیکھائی دیئے ادا اپنا مفلر  علیزہ کے ماتھے پر رکھ بیٹھی رو رہی تھی ڈر سے ہاتھ پاؤں کانپ رہے تھے ۔۔۔۔۔
ابراہیم نے علیزہ کو گود میں اُٹھایا اور گاڑی کی طرف بڑھا پاکیزہ اور ادا بھی پیچھے پیچھے چل پڑی ۔۔۔۔۔۔
زخم گہرا نہیں بچت ہوگئی ہے بچی جلد ٹھیک ہوجائے گی ڈاکٹر نے علیزہ کی گال تھپتھپا کر کہا تو علیزہ مسکرا دی ادا کا روم سے باہر رو رو کر بُرا حال تھا پاکیزہ چچی مجھے ڈانٹے گی انکی بیٹی کو میری وجہ سے چوٹ لگ گئی ہے وہ ناراض ہوگی مجھ سے میں نے ہی اسکا دھیان نہیں رکھا مجھے لانا ہی نہیں چاہیے تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوجاتا ہے تمہیں ادا کیوں اتنی جزباتی ہوجاتی ہو کچھ نہیں کہے گی چچی وہ جانتی ہے بچی  ہے جھولا جھولتے ہوئے چوٹ لگ گئی اس میں اتنا پریشان ہونے والی کیا بات ہے ۔۔۔۔۔۔۔
جب بچوں کی دیکھ بھال کرنی نہیں اتی تو ساتھ لانے کی کیا ضرورت تھی ابراہیم علیزہ کو اُٹھائے باہر ایا تو ادا کو سُنا دی وہ پہلے ہی ڈری ہوئی تھی ابراہیم کی بات سُن کر سر کو جُھکا گئی پاکیزہ نے فوراً اپنے بھائی کی طرف شکایت بھری انکھوں سے دیکھا ۔۔۔۔۔۔
میں نے کچھ غلط نہیں کہا اگر زیادہ چوٹ لگ جاتی تو؟
بھائی پلیز لگی تو نہیں نہ زیادہ دیکھے علیزہ تو مسکرا رہی ہے  ادا  سر جُھکائے رونے میں مصروف تھی ۔۔۔۔
چلو باقی کا گھر جا کر رو لینا یہاں لوگ دیکھ رہے ہے ابراہیم کو غصہ علیزہ کی چوٹ کا نہیں تھا بلکہ عجیب سی ڈریسنگ کیے ادا کا اکیلے پارک انے پہ تھا جس کو ابراہیم بیان نہیں کرسکا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
----------------------------------
گھر پہنچ کر راحیلہ نے الٹا ادا کو تسلی دی جب بچے چھوٹے ہوتے ہیں  تو تھوڑی بہت اونچ نیچ ہوجاتی ہے ادا ایسے پریشان نہیں ہوتے اپنا حال دیکھو علیزہ سے بُری حالت میں تم خود ہو اس وقت جاؤ شاباش فریش ہوجاؤ ۔۔۔۔
ادا بغیر جواب دیئے سیڑھیاں چڑھتی ہوئی انکھوں سے اوجھل ہوگئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
بھائی کیا ضرورت تھی وہاں ادا کو سُنانے کی اسنے جان بوجھ کر تو نہیں کیا تھا ایسا اپ بھی نہ پتہ نہیں کب سمجھے گے ۔۔۔۔۔۔
پورے گھر میں پاکیزہ ہی تھی جو ابراہیم کے اگے ایسے بول لیتی تھی اسکی لاڈلی بہن جو تھی باقی سب تو ابراہیم کے غصے سے ڈرتے کچھ بولتے ہی نہیں تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ ابراہیم کو سُناتے ہی اپنے کمرے کی طرف روانہ ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا کروں وہ حرکتیں ہی ایسی کرتی ہے نہ چاہتے ہوئے بھی غصہ اجاتا ہے ابراہیم بھی سوچتے ہوئے اپنے کمرے کی طرف بڑھ گیا ۔۔۔۔۔۔
رات کھانے کے ٹیبل پر سب موجود تھے ادا بھی ابراہیم کی وجہ سے بغیر بُلائے ہی کھانا کھانے پہنچ گئی تھی ۔۔۔۔۔
ادا بیٹا تم کب سے یونی جانا سٹارٹ  کر رہی ہو خاں صاحب نے کھانا کھاتے ہوئے ادا، سے پوچھا ۔۔۔۔
صبح سے ۔۔۔میں نے اج  اپنے دوست سے بات کی وہ  یونی میں پروفیسر ہے اسنے کہا ہے صبح ادا پاکیزہ کے ساتھ ہی یونی اجائے باقی وہ دیکھ لے گا جواب ابراہیم کی طرف سے ایا تھا جس پر سب خاموش تھے ادا نے  بھیگی انکھوں سے اپنے بابا کی طرف دیکھا ابراہیم ادا کی انکھوں میں دیکھ چکا تھا لیکن ایک امید تھی سب ٹھیک ہوجائے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب کھانے سے فارغ ہوئے تو دانش اور کلثوم گھر میں اتے دیکھائی دیے سب ہال میں بیٹھ چکے تھے دانش اپنی اس دن والی حرکت پر معافی مانگنے ایا تھا دادو سچ میں نہیں جانتا تھا کہ ادا کچھ نہیں جانتی ورنہ میں کچھ نہیں بولتا اس بارے میں ۔۔۔۔۔۔
کوئی بات نہیں بیٹا ہم نے بھی ایک دن بتانا ہی تھا چلو جو ہوتا ہے اچھے کے لیے ہی ہوتا ہے دادو نے پاس بیٹھی ادا کو گلے لگاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی دادو لیکن میں شرمندہ ہوں پلیز مجھے معاف کردیں ۔۔۔۔۔
چھوڑو میرے بچے لو چائے آگئی ہے سب مل کر پیتے ہیں مختار صاحبہ نے بات چینچ کرنے کی کوشش کی ۔۔۔
دانش کب سے بات کرتے کرتے ادا کو ہی دیکھ رہا تھا پاکیزہ کو کچھ سمجھ نہیں ارہی تھی وہ دانش کا عجیب نظروں سے دیکھنا نوٹ کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کلثوم چلو لان میں چلتے ہیں پاکیزہ نے ادا ،کلثوم کی طرف دیکھتے ہوئے کہا تینوں اپنی اپنی چائے پکڑے لان کی طرف چلی پڑی دانش کا دل بہت بُرا ہوا اسکا بس نہیں چل رہا تھا پاکیزہ کو ایک لگا
 ۔۔۔۔۔۔۔
وہ تینوں لان میں بیٹھی باتیں کررہی تھی کلثوم ادا کا بات کرتے کرتے کہی کھو جانا کتنی بار نوٹ کرچکی تھی ۔۔۔۔۔
ادا تم خوش نہیں ہو؟
خوش ہوں تمہیں کیوں لگا میں خوش نہیں؟
نہیں ویسے ہی پوچھا ۔۔۔اچھا اپنا سیل نمبر تو دو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کلثوم کو یہاں اسی کام کے لیے لایا گیا تھا دانش نے کلثوم سے کہا وہ ادا سے بات کرکے معافی مانگنا چاہتا ہے یہ بات کلثوم کو ہضم تو نہیں ہوئی لیکن وہ اپنے بھائی کی بات ماننے کی پابند تھی ۔۔۔۔۔
سیل نمبر کیوں ۔۔۔۔پاکیزہ نے فوراً سوال کیا ۔۔۔۔
ویسے ہی یار کیا میں ادا کو کال نہیں کرسکتی؟
 ایسی بات نہیں لے لو نمبر ۔۔۔۔۔ دو نمبر ادا کلثوم کو ۔۔۔
ادا جو پہلے ہی کہی گم تھی اپنا نام سُنتے ہی سیدھی ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا؟  نمبر دو یار کلثوم کو اپنا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اہ لکھو ادا نے اپنا نمبر کلثوم کو لکھوا دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے سر میں درد ہے میں روم میں جارہی ہوں ادا کہتے ہی وہاں سے چلی گئی اندر کی طرف آتے ہی وہ دانش سے ٹکرائی جو باہر ہی آرہا تھا ۔۔۔۔۔۔
دانش نے ادا کو سنبھالتے ہوئے اس کی کمر سے پکڑا ۔۔۔۔۔
سوری ادا جھٹ سے پیچے ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی بات نہیں میری خوش قسمتی ہے کہ میں نے دنیا کی خوبصورت لڑکی کو گِرنے نہیں دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم جو پیچھے کھڑا غصے سے دیکھ رہا تھا جلدی سے اگے ایا اب تمہاری خوش قسمتی اسی میں ہے کہ تم یہاں سے دفع ہو جاؤ ابراہیم نہایت سختی سے بولا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانش ایک سیکنڈ سے پہلے وہاں سے چلتا بنا ادا بھی اندر کی جانب بڑھنے لگی جب ابراہیم نے اسے بازو سے پکڑا تم دیکھ کے نہیں چل سکتی تھی؟
ابی پلیز۔۔۔۔۔۔۔۔ ابراہیم کو اپنے غصے میں اپنی پکڑ کی مضبوطی کا بھی خیال نہیں رہا ۔۔۔۔۔
چھوڑو پلیز ادا کے نازک سے وجود پر ابراہیم کی سخت گرفت اسکے آنسوؤں کو بہا لائی تھی آئندہ جتنا ہو سکے اس شخص سے دور  رہنا سمجھی ۔۔۔۔
بھائی کیا کررہے ہو چھوڑو ادا کو۔۔۔۔۔
 پاکیزہ نے اتے ہی ادا کو ابراہیم سے آزاد کروایا ادا رُکی نہیں روتی ہوئی اپنے کمرے میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔
کیا ہو گیا ہے بھائی وہ پہلے ہی اتنی خوفزدہ ہے آپ سے پاکیزہ تھک گئی تھی اپنے بھائی کو سمجھاتے سمجھاتے وہ خود بھی اب رو دینے کو تھی ۔۔۔۔۔۔
میری تو سُن لو ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں اپ رہنے دو پاکیزہ جلد ہی ادا کے پاس جانا چاہتی تھی وہ ابراہیم کی سُنے بغیر وہاں سے چلی گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا پلیز سوری یار وہ بھائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس کردو پاکیزہ پلیز مجھے اکیلا چھوڑ دو پلیز ادا نے روتے ہوئے دھائی دی یہ دیکھو ادا نے روتے ہوئے اپنی شرٹ کا بازو اوپر کیا جہاں ابراہیم کی گرفت اپنا نشان چھوڑ گئی تھی اسکے نیلے پڑتے بازو کو دیکھ پاکیزہ کے الفاظ کہی دم توڑ گئے تھے ۔۔۔۔۔
بولو پاکیزہ چُپ کیوں ہو گئی ہو بولو مجھے بتا دو میں ایسا کیا کروں جو یہاں کے لوگوں کے معیار پر پوری اتر سکو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا کی ہچکیاں پورے کمرے کو اپنی لپیٹ میں لے رہی تھی وہ اپنے ہاتھوں سے اپنے بالوں کو کھینچ کر خود کو اذیت دے رہی تھی  ۔۔۔
ادا کو ایسے دیکھنا پاکیزہ کے لیے بہت مشکل ہورہا تھا الفاظ ختم ہوچکے تھے پاکیزہ اُٹھ ابراہیم کے کمرے میں ائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپ اُسے آزاد کردے بھائی ۔۔۔۔۔
ابراہیم نے پلٹ کر پاکیزہ کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا؟
اُسے چھوڑ دیں جانے دیں یہاں سے وہ پاگل ہو جائے گی یہاں، جا کر اُس کی حالت دیکھے وہ ایسے ماحول کی عادی نہیں ہے اپ نے اسکے بازو پر جو نشان چھوڑا ہے اسنے اسکے دل و دماغ  میں ائے اندیشوں کو سچ ثابت کردیا ہے ۔۔۔۔۔
پاکیزہ تم ہمیشہ اسکی سائیڈ ہی کیوں لیتی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ مجھے بہت عزیز ہے بھائی میں اُسکے ساتھ زیادتی نہیں ہونے دوں گی میں اپکو کہہ کہہ کر تھک گئی ہوں پاکیزہ تھک کر بیڈ پر بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔
پاکیزہ ادھر دیکھو میری طرف ۔۔۔۔۔
ابراہیم گھٹنوں کے بل اپنی بہن کے سامنے بیٹھا گیا تھا ۔۔۔۔۔
اچھا سوری آئندہ ایسا نہیں ہوگا اوکے؟
تم جانتی ہو دانش کو وہ کیسی طبعیت کا مالک ہے ادا کو اسکے ساتھ دیکھ مجھے غصہ اگیا تھا اور ۔۔۔۔۔
اور؟  اپنے وہ غصہ ادا پر نکال دیا پاکیزہ نے اپنے آنسو صاف کرتے ہوئے ابراہیم کی طرف دیکھا ۔۔۔۔
آپ میری ایک بات مانے گے؟
جی بھائی کی جان دو باتیں مانوں گا بولو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپ کچھ دن ادا کو اسکے حال پر چھوڑ دے پلیز میں کوشش کروں گی وہ جلد یہاں  ایڈجسٹ ہوجائے اپ اسے پریشان کردیتے ہے وہ اپکی حرکتوں سے ڈسٹرب ہوجاتی ہے ۔۔.۔۔
بس؟
جی ۔.۔۔۔۔۔
 اوکے میں ویسے بھی کل اسلام آباد جارہا ہوں کوشش کروں گا وہاں دو دن زیادہ رُک جاؤں ۔۔۔۔۔
اوکے میں اپکو مس کروں گی پاکیزہ نے بہت پیار سے اپنے بھائی کی طرف دیکھا ۔۔۔
جھوٹ تمہیں تو ادا سے پیار ہے مجھے کیوں مس کرو گی ….
پاکیزہ فوراً بھائی کے گلے لگی اپ دنیا کے بیسٹ بھائی ہو بس بیسٹ شوہر بھی بن جائے مجھے جتنا اپ سے پیار ہے ادا بھی مجھے اتنی ہی عزیز ہے بھائی میں اُسے تکلیف میں نہیں دیکھ سکتی پلیز اپ آئندہ اُسے ہرٹ نہیں کرے گے پرامس کریں ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے پرامس میں پوری کوشش کروں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔
کوشش؟
اچھا بابا آب تو مجھے لگ رہا ہے تم میری نہیں ادا کی بہن ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دونوں اس بات پر مسکرا دیئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو باہر چلتے ہیں آئسکریم کھانے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی؟  لیکن ادا نہیں جائے گی ۔۔۔۔
کیوں؟
اسکا موڈ بہت اوف ہے ۔۔۔۔
تم ابھی اپنے بھائی کو جانتی نہیں نیچے چلو میں ابھی لے کر ایا اُسے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

-------------------------------------------------
ادا؟  ابراہیم نے دروازہ کھولتے ہی ادا کو آواز دی لیکن دروازہ کھولتے ہی ابراہیم کے کان میں ادا کی ہچکیاں سُنائی دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم دروازہ لاک کر ادا کے قریب آکر بیٹھا ۔۔۔۔۔۔۔
سوری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا؟  سوری یار مجھے دانش پر غصہ ایا تھا لیکن میں نے تمہیں ہرٹ کردیا ۔۔۔۔۔۔
ادا اپنے رونے میں ہی مصروف رہی ابراہیم کی آواز سُن کر بھی وہ نہیں سُن رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب چُپ تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابراہیم  نے ادا کے آنسو صاف کرنے چاہے ادا جھٹکے سے پیچھے ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ادا چِلائی ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے پہلے میری بات آرام سے سُنو یہ رونا بند کرو پلیز  ۔۔۔
مج -مجھ- مجھے کوئ-- کوئی بات نہیں ک کرنی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا اپنی بات مشکل سے ہی کرپائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پلیز میری جان بات تو سُنو بس ایک بار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اپنا ہاتھ ادا کے سر کے پیچھے رکھ  ادا کے اور قریب ہوا اپنا سر ادا کے سر سے جوڑے التجا کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
چُپ ہوجاؤ ادا تمہارا ایسے رونا مجھے اذیت دے رہا ہے وہ ادا کی خوشبو خود میں اتارنے لگا وہ خود کو کھورہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم نے مجھے بہت ہرٹ کیا ابی ۔ادا نے سوسوسو کرتے اپنی بات سامنے رکھی ۔۔۔۔۔
میں جانتا ہوں لیکن پلیز تم حرکتیں ہی ایسی کر جاتی ہو ادا ۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نے ادا کے ماتھے پر اپنے پیار کی مہر لگائی  سوری ۔۔۔۔۔.
ادا چاہ کر بھی وہاں سے ہل نہیں پائی وہ حیرانگی سے ابراہیم کے چہرے کی طرف دیکھنے لگی سفید رنگ سُرخ پڑتی انکھیں ماتھے پر بکھرے بال وہ اس وقت ہر لحاظ سے ایک خوبصورت مرد لگ رہا تھا ۔۔۔۔
ایسے دیکھو گی تو کچھ کر بیٹھوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا نے اپنی انکھیں گھمائی ۔۔۔۔
ہاہایا ادا میں تم سے بہت محبت کرتا ہوں اِدھر دیکھو میری طرف ابراہیم نے ادا کے چہرے کو اپنے ہاتھوں میں بھرا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ابراہیم خان اپنے پورے ہوش ہواس میں ادا خان سے محبت کا اعتراف کرتا ہوں ابراہیم نے کہتے ہی دوبارہ اپنے ہونٹ ادا کی پیشانی پر رکھ دیئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا عجیب سا محسوس کررہی تھی وہ جتنی بھی آزاد خیال سہی لیکن ابراہیم اسکے اتنے قریب آنے والا پہلا مرد تھا جو خوش قسمتی سے اسکا محرم بھی تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو اُٹھو آئسکریم کھانے چلے پاکیزہ نیچے ویٹ کررہی ہے ۔۔۔۔
میرا موڈ ۔۔۔۔۔۔۔
پلیز  ابراہیم نے ادا کی بات سُنے بغیر التجا کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا اپنی جگہ سے اُٹھ واشروم میں گھس گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نیچے آگیا تھا ۔۔۔۔۔۔
کیا کہا آرہی ہے؟  پاکیزہ نے بھائی کو دیکھتے ہی پوچھا ۔۔۔۔۔
بلکل ابراہیم نے بہت فخر سے بتایا ۔۔۔۔
ادا واشروم میں مرر کے سامنے کھڑی خود کی انکھوں میں گھور رہی تھی ادا یہ تمہیں پاگل بنا رہا ہے تمہیں اپنے پیار میں ڈال کر یہاں رکھنا چاہتا ہے ادا یہ تمہیں ہرانا چاہتا ہے تم نے اسکی باتوں میں نہیں انا سمجھی وہ اپنا منہ دھو کر نیچے ائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
--------------------------------
تینوں ائسکریم کھانے کے لیے گھر سے نکل گئے تھے راستے میں کوئی خاص بات نہیں ہوئی جتنی بات پاکیزہ پوچھتی ادا بس جی، ہاں میں جواب دے رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تینوں ٹیبل پر آئسکریم کھانے میں مصروف تھے ابراہیم نے ادا کی طرف دیکھ بات شروع کی ۔۔۔
مجھے رات 12 بجے اسلام آباد کے لیے نکلنا ہے وہاں مجھے دو سے چار دن بھی لگ سکتے ہیں ۔۔۔۔۔
ادا  اپنی ہی دھن میں آئسکریم کھانے میں مصروف تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا تم صبح سے یونی جارہی ہو پاکیزہ کے ساتھ میری وہاں بات ہو چکی ہے اوکے؟
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ نے بھائی کو اشارہ کیا کہ سب سنبھال لے گی ابراہیم نے بھی چُپ رہنا بہتر سمجھا ۔۔۔۔۔۔
گھر آتے ہی پاکیزہ اور ادا اپنے روم میں چلی گئی ابراہیم کو نکلنا تھا وہ اپنی پیکنگ میں مصروف ہو گیا اچانک موبائل کی بیل ہوئی ۔۔۔
دانش کی کال؟
ہاں بولو؟  ۔میں نے یہ بتانے کے لیے کال کی تھی میں تمہارے ساتھ نہیں جارہا حیا جائے گی میری جگہ ۔۔۔۔
وہ کیوں؟
میری طبعیت ٹھیک نہیں میں نے پاپا سے بات کرلی ہے حیا ہی تمہارے ساتھ جائے گی ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے ۔۔۔کال بند کرتے ہی ابراہیم بیڈ پر بیٹھا تھا پھر کچھ سوچتے ہوئے وہ آُٹھ اپنی تیاری کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔
---------------------------
صبح ادا نے  سب کے ساتھ ناشتہ کیا اور پاکیزہ کے ساتھ یونی کے لئے روانہ ہوئی پاکیزہ اج سارا دن ادا کا ایڈمیشن کروانے میں بزی رہی وہ دونوں بہت تھک گئی تھیں ۔۔۔۔۔
پاکیزہ بھوک لگی ہے ادا نے منہ بنایا ۔۔۔۔۔
چلو میری جان سینڈوچ کھلاؤں یہاں سے بہت مزے کے ملتے ہیں پاکیزہ نے فوراً مسئلہ حل کیا ۔۔۔
ادا خوشی خوشی کینٹین کی طرف بڑھی ۔۔۔۔
تم وہاں بیٹھو میں ابھی لے کر آتی ہوں  پاکیزہ ٹیبل کی طرف اشارہ کرتی ہوئی اگے بڑھ گئی ۔۔۔۔۔
ادا ابھی ٹھیک سے بیٹھی نہیں تھی اسکے موبائل پر رِنگ ہوئی ۔۔۔۔۔
ہیلو۔۔۔۔۔
کیسی ہو ادا؟
فائن ۔۔۔۔کون بات کررہا ے؟
تمہارا ہمدرد بات کررہا ہوں ادا خان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نام کیا ے؟
نام کو چھوڑو میرے پاس تمہیں دینے کو دو خبریں ہیں اک اچھی ہے تو اک بُری بتاؤ؟  پہلے کون سی دوں؟
لو میری جان دل کھول کر کھاؤ پاکیزہ نے ٹرے ٹیبل پر رکھتے ہوئے کہا ۔۔
ادا فورا فون بند کرگئی ۔۔۔۔۔۔کس کا فون تھا پاکیزہ نے چپس کھاتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔
ک کس کسی کا نہیں ۔۔۔۔۔
بات تو کرر ہی تھی تم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رونگ کال تھی ۔۔۔۔پتہ نہیں کیوں چُھپا رہی ہوں پاکیزہ سے کون ہو سکتا ہے؟
ہیلو کہاں کھو گئی سینڈوچ ٹھنڈے ہوجائے گے ۔۔۔۔
ممممم ادا بھی کھانے میں مصروف ہوگئی ۔۔۔۔۔
دانش اب بے صبری سے ادا کی کال کا ویٹ کرنے لگا وہ جانتا تھا جن حالات سے وہ گزر رہی ہے اسکو تھوڑی سے امید دلانے کی ضرورت ہے بس وہ قابو میں آجائے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گھر آتے ہی پاکیزہ اور ادا سو گئی تھیں 3گھنٹے کے بعد ادا کی آنکھ کھلی تو اسے یونی میں آنے والی کال یاد ائی وہ موبائل اُٹھائے ابراہیم کے کمرے میں چلی گئی وہ جانتی تھی ابراہیم کے یہاں نہ ہونے کی وجہ سے یہاں کوئی نہیں ائے گا ۔۔۔۔۔
ادا نے اس نمبر پر کال ملائی ۔۔۔۔
ہیلو ہاں اب بولو کیا کہہ رہے تھے؟
بتا دیتا ہوں اتنی جلدی بھی کیا ہے ۔۔۔۔
بس یہ سمجھ لو مجھے تم سے بہت ہمدردی ہے میں تمہاری مدد، کرنا چاہتا ہوں ۔۔۔۔۔۔
مدد؟  کیسے؟
تمہیں یہاں سے نکلنے میں تمہاری مدد کرسکتا ہوں ۔۔۔
سچی؟  ادا کچھ بھی سوچے بغیر خوشی سے اُچھلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلکل سچ ۔۔۔۔۔
لیکن تم ہو کون؟
جلد بتاؤ گا ابھی تمہارے لیے بس یہ جاننا ضروری ہے کہ میں ابراہیم کو بہت اچھے سے جانتا ہوں اور وہ اس وقت اسلام آباد میں اپنی گرل فرینڈ کے ساتھ گھم رہا ہے ۔۔
گرل فرینڈ؟  ادا نے اس لفظ کو دہرایا۔۔۔۔۔۔۔
چلو آج کے لیےاتنا ہی باقی کل بات کرے گے ۔۔۔بائے
کال بند ہوچکی تھی ادا کسی گہری سوچ میں ڈوب گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے ہمیشہ اس رشتے کا مان رکھا ہے ۔۔۔۔
میں تم سے محبت کرتا ہوں ۔۔ادا کے ذہین میں ابراہیم کے بولے ہوئے الفاظ گونجنے لگے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
------------------------------------
رات کھانے کے بعد ادا لان میں بیٹھی کچھ سوچ رہی تھی کلیم صاحب چائے لے کر اپنی بیٹی کے پاس ائے ۔۔۔۔
ناراض ہے ابھی تک میری بیٹی؟  کلیم صاحب نے چائے کا مگ ادا کی طرف بڑھایا ۔۔۔۔
ادا نے پہلے اپنے بابا کے چہرے کی طرف دیکھا پھر مگ کو تھام لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کلیم صاحب خود ہی ادا کے پاس بیٹھ گئے ۔۔۔
اپنے بابا کو معاف کردو بیٹا …….
کیوں بابا ادا نے انکھوں میں نمی لیے مسکرا کر پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری جان تمہارے بابا تم سے بہت پیار کرتے ہے انہوں نے بہت بے بسی سے ادا کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اولاد تو ہمیشہ سے ایسے کرتی ائی ہے ایک بات مزاج کے خلاف ہوجائے تو ماں باپ  کی  ساری زندگی کی محبت خلوص پیار بُھلا دیتیں ہیں ادا بھی تو یہ کررہی تھی کلیم اور رابعہ نے جس بیٹی کو ساری زندگی اپنے شفقت کے سائے میں رکھا ہر دکھ تکلیف سے بچا کر رکھا وہ انکے کیے گئے ایک جذباتی فیصلے کو ماننے سے انکاری تھی اس ایک فیصلے نے ادا کو اپنے ہی ماں باپ سے دور کردیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بابا میں بھی یہی سمجھتی تھی اُسنے بہت بے رُخی سے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کلیم صاحب کو اپنا یہاں انا ،بات کرنا، بے معنی لگا وہ اُٹھے ادا کو پیار کرتے ہوئے اندر چلے گئے۔۔۔
ادا نے انکو روکا نہیں بلکہ چائے پیتی ہوئی اپنے موبائل پر بزی ہو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا روم میں ائی تو پاکیزہ ابراہیم کے ساتھ بات کررہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ادا بھی ٹھیک ہے یونی میں سب کام ٹھیک سے ہو گیا تھا آپ سُناؤ کیسی رہی میٹنگ؟
8 اچھی حیا نے کافی اچھا کام کیا تھا ۔۔۔۔
واہ حیا بھی ٹھیک ہے؟  ہاں چلو بعد میں بات کرتے ہے ابراہیم نے ادا کا پوچھنے کے لیے ہی کال کی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا ابراہیم کی بات تو نہیں سُن سکی لیکن پاکیزہ کے منہ سے حیا کا نام سُنتے ہی ادا کو انجان نمبر والے بندے پر یقین ایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

صبح یونی پہنچ کر دونوں اپنی اپنی کلاسز کی طرف چلی گئی ادا اپنی کلاس میں بیٹھی مسلسل ایک ہی بات سوچے جارہی تھی ۔۔۔۔۔۔
وہ کب کال کرے گا؟  یا میں کرلوں؟
نہیں وہ خود کرلے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں میں خود کلاس کے بعد کال کرلوں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا نے کلاس ختم ہوتے ہی اپنی سوچ کو تکمیل دی اور اس نمبر پر کال کردی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو؟
جی بیوٹی فل گرل؟
جی بتاؤ کیا ہیلپ کرسکتے ہو تم ؟
وہ بھی بتا دوں گا اتنی بھی کیا جلدی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے بس جانا ہے یہاں سے جلد تم جو بھی ہو تمہیں جتنے پیسے چاہیے میں دوں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہاہاہا مجھے جو چاہیے میں خود لے لوں گا ۔۔۔۔۔
مطلب؟  ادا پریشان ہوئی ۔۔۔۔
مطلب میرے پاس بہت پیسے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اہ پھر بتاؤ کیا ہیلپ کر سکتے ہو؟
اسکے لیے تمہیں ملنا ہوگا مجھ سے ۔۔۔۔۔۔۔۔
میں کل فون کروں گا پھر ملنے کی جگہ بتاؤں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے میں ویٹ کروں گی ۔۔۔۔۔۔۔بائے ۔۔۔۔۔
ہاہاہاہاہا ویٹ تو میں کروں گا ادا ابراہیم خان ساری زندگی ابراہیم تمہیں دیکھ دیکھ کر مجھے یاد کرے گا ایسی تکلیف دوں گا جو قبر تک اسکو قرار نہیں لینے دے گی دانش اپنا شیطانی دماغ بہت تیزی سے چلا رہا تھا ۔۔۔۔
----------------------
ہیلو ادا، روکو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پاکیزہ نے پیچھے سے آواز دی ۔۔۔۔۔۔۔
ادا نے پلٹ کر دیکھا تو اپنا بھی ہاتھ ہوا میں ہلایا ۔۔۔۔۔ہیلو۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں کب سے کال کررہی تھی تمہارا نمبر بزی تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا؟  نہیں تو ۔۔۔۔۔ادا نے جھوٹ بولا ۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ نے بہت غور سے ادا کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا سچ میں میرا نمبر بزی نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں میں تو یہ دیکھ رہی ہوں اج تم بہت خوش لگ رہی ہو ۔۔
پاکیزہ کو واقعی ادا کے چہرے پر الگ ہی چمک نظر ائی۔۔۔۔
وہ تو میں ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا وہ کیوں پاکیزہ نے گاڑی کی طرف بڑھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔
بس ہے کوئی بات سرپرائز ہے دعا کرو بس میرے لیے ۔۔۔۔۔
اللہ تمہیں ہمیشہ خوش رکھے آمین۔۔۔۔۔
----------------------
گھر اتے ہی ادا سو گئی پاکیزہ فریش ہوکر نیچے زکیہ کے پاس پہنچی ۔۔
کیسی ہے میری پیاری ماما پاکیزہ نے ماں کے منہ پر پیار کرتے ہوئے پوچھا ۔۔۔
آگئی یاد ماں کی؟  زکیہ نے بھی فوراً گلہ کیا ۔۔۔۔
ماما پلیز اب آپ یہ نہ کہنا بھائی یہاں نہیں ادا سو رہی ہے تو مجھے آپ کی یاد آگئی ۔۔۔
ہاہایاہا میں نے کب کہا میری بچی تم خود ہی کہہ رہی ہو ۔۔۔۔۔
ماما ۔۔۔۔پاکیزہ نے اپنے پاؤں پٹکے۔۔۔۔
چلو بتاؤ ادا کا دل لگ گیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ماما تقریباً ۔۔۔بھائی سے بات ہوئی اپکی؟
ہاں اج ہوئی تھی بات کل آجائے گا انشاءاللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انشاءاللہ ۔۔
ادا کہاں ہے پاکیزہ؟  رابعہ نے پاکیزہ کو کچن میں دیکھ کر پوچھا ۔۔۔
چچی سو گئی ہے آپ بتائے طبعیت کیسی ہے آپ کی؟
اللہ کا شکر ہے بیٹا تمہارے چاچو بہت پریشان رہتے ہے ادا کی وجہ سے تم سمجھاؤ اُسے اب ناراضگی دور کردے ۔۔۔۔۔
پاکیزہ رابعہ کے گلے لگی چچی آپ بلکل فکر نہ کریں ادا آہستہ آہستہ بہتر ہورہی ہے کچھ ہی دنوں میں سب ٹھیک ہوجائے گا ۔۔۔
------------------------------------------
دانش کل کی ساری تیاری کر چکا تھا ہوٹل کا روم بھی بک کروا لیا تھا اب وہ بے صبری سے کل کا انتظار کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔
دانش اپنے روم میں بیٹھا چائے پی رہا تھا فون کی بیل ہوئی ۔۔۔۔
ہیلو مائے ڈارلنگ ۔۔۔۔
تم کہاں ہو؟ جب سے مجھے اسلام آباد بھیجا ہے خود غائب ہی ہوگئے ہو …
نہیں جان بس آفس ورک ۔۔۔۔۔
دانش آفس ورک مجھے بھی پتہ ہے سب جانتی ہوں مجھے تو یہ نہیں  سمجھ ارہی تم نے مجھے ابراہیم کے ساتھ کیوں بھیجا ۔۔۔۔۔
جان جب تم واپس آجاؤ گی سب بتا دونگا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے ہم کل آجائے گے ۔۔۔
کل؟  دانش نے جلد کنفرم کیا ۔۔
ہاں کل۔۔۔۔۔
 یہاں کام ختم ہوگیا ہے ہم آج ہی آجاتے ابراہیم کی طبعیت ٹھیک نہیں اس لیے اب کل تک آجائے گے ۔۔۔۔
اوکے ٹھیک پھر بات ہوگی بائے ۔۔۔۔۔۔۔دانش نے فوراً کال بند کر ادا کا نمبر ملایا ۔۔۔۔۔۔۔
ادا نے انکھیں کھولے بغیر کال رسیو کی موبائل کان کو لگایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو پرینسز ۔۔۔۔۔
ادا کی انکھیں آواز سُنتے ہی کھلی ۔۔۔۔
تم؟  ادا نے پورے کمرے میں اپنی نظریں دوڑائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ روم میں نہیں تھی ادا اُٹھ جلدی سے دروازہ لاک کیا ۔۔۔۔
جی میں ۔۔۔۔۔۔
میں نے سوچا اب تمہیں انتظار نہیں کروانا چاہیے تمہاری ہیلپ کردینی چاہیے ۔۔۔۔۔۔
بلکل تو بولو پھر ۔۔۔۔۔ادا بھی پوری طرح تیار تھی ۔۔۔
میں تمہیں ہوٹل کا نام اور روم نمبر میسیج کرتا ہوں کل پورے 12 بجے تم وہاں موجود ہو ۔۔۔۔۔
اگر لیٹ ہوگئی تو کبھی میری کال نہیں ائے گی ۔۔۔۔۔
میں پورے ٹائم پر آجاؤں گی  پورا ایڈریس سیڈ کرنا مجھے یہاں کے راستوں کا کچھ اندازہ نہیں ۔۔۔۔۔۔
اوکے ڈئیر ضرور ۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹکٹکٹکٹکٹکٹک۔۔
دروازہ نوک ہوتے ہی ادا فون رکھ چکی تھی ۔۔۔۔
دروازہ کیوں لاک کیا؟  تم تو سو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
ادا کے دروازه کھولتے ہی پاکیزہ نے حیرانگی سے اسکی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔
ابھی اُٹھی ہوں میں ادا کہتے ہی واشروم میں گُھس گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہو گیا ہے اس لڑکی کو عجیب حرکتیں کررہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ پریشان سی بیٹھ کر سوچنے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
--------------------------------
ادا، پاکیزہ، حماد، علیزہ سب ہال میں بیٹھ ٹی وی دیکھ رہے تھے ،مرد حضرات آفس سے گھر آنا شروع ہوگئے تھے عورتیں کچن میں مصروف تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا بور ہورہی تھی ۔۔۔۔۔
پاکیزہ باہر چلے؟
ابھی؟  میرا مطلب اس ٹائم؟
پلیز چلو میں بور ہورہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
اچھا ماما سے پوچھ لوں پھر چلتے ہیں ۔۔۔۔
پاکیزہ کچن میں ائی تو زکیہ سلاد بنانے میں مصروف تھی ۔۔۔
ماما ادا باہر جانا چاہ رہی ہے تھوڑی دیر کے لیے چلی جائے؟
چلی جاؤ لیکن اکیلے نہیں ڈرائیور کے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے ماما ۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا ڈرائیور کا سُنتے ہی بیزار ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔
کوئی بات نہیں یار ڈرائیور انکل ساتھ ہوگے تو ماما کو فکر نہیں ہوگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ رہنے دو ادا اُٹھ کر روم میں ائی پاکیزہ بھی پیچھے پیچھے روم میں ائی ۔۔۔بہت بری بات ہے ادا پہلے اجازت لی اور اب جا بھی نہیں رہی ۔۔۔۔
میرا موڈ نہیں اب رہنے دو ۔۔۔۔۔
دونوں بات کرنے میں مصروف تھی پاکیزہ کے موبائل پر ابراہیم کی کال آنے لگی ۔۔۔۔
بھائی کی کال۔۔۔۔۔۔۔پاکیزہ نے کال رسیور کرتے سلام لی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیسی ہے بھائی کی جان؟
میں تو ٹھیک ہوں لیکن بھائی اپکی آواز کو کیا ہوا؟
طبعیت ٹھیک نہیں لگ رہی آپکی ۔۔پاکیزہ کو اپنے بھائی کی فکر ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
بس بخار ہوگیا تھا میڈیسن لی ہے اب بہتر محسوس کررہا ہوں پریشان نہیں ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابراہیم کی طبعیت کافی ناساز تھی لیکن وہ پاکیزہ کو پریشان نہیں کرنا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھائی پکا؟
جی بلکل پکا ۔۔۔۔۔ادا کیسی ہے؟
موڈ اوف ہے ۔۔۔پاکیزہ نے ادا کی طرف دیکھتے ہوئے ابراہیم کو بتایا ۔۔
کیوں اب کیا ہوگیا؟
ویسے ہی میں ابھی ٹھیک کرلوں گی آپ اپنا خیال رکھے پلیز ۔۔
بھائی اپ صبح آرہے ہے؟
جی صبح 5 بجے کی فلائٹ ہے ۔۔.۔۔۔
پھر تو آپ سو جاؤ جلدی اُٹھنا ہوگا اپکو ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے اللہ حافظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اللہ حافظ ۔۔۔
ادا منہ بنا کر بیٹھی سب سن رہی تھی پھر بھی اُسنے کچھ نہیں پوچھا ۔۔۔۔
پاکیزہ کو اپنے بھائی کے لیے بہت بُرا لگ رہا تھا اس لیے وہ خود ہی بول پری ۔۔۔۔۔۔۔
بھائی کی طبعیت کافی خراب لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں اسکی گرل فرینڈ نے اسکا دھیان نہیں رکھا؟
ادا کے منہ سے گرل فرینڈ کا سُنتے پاکیزہ کو جھٹکا لگا ۔۔۔۔
گرل فرینڈ ؟؟؟
ہاں وہ اپنی گرل فرینڈ کے ساتھ گیا ہے کیا نام لے رہی تھی تم اس دن ۔۔۔۔۔
حیا؟  ادا نے سوچتے ہوئے نام بھی بتا دیا ۔۔۔۔۔۔۔
ادا؟  تمہیں یہ سب کون؟
حیران کیوں ہورہی  ہو پاکیزہ کہ مجھے کیسے پتہ چل گیا؟
ادا نے مسکراتے ہوئے پوچھا ……….
ادا؟ تمہیں کوئی غلط گائیڈ کررہا ہے میری جان۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسنے بہت اپنائیت سے ادا کا ہاتھ پکڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔
بھائی ایسے نہیں ہے وہ تم سے پیار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا نے اپنا ہاتھ کھنچا بس کردو پاکیزہ میں اتنی بیوقوف نہیں ہوں سب سجھتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ تو بس ادا کی انکھوں میں دیکھتی رہ گئی کیا نہیں تھا اسکی انکھوں میں بے اعتباری ۔نفرت ۔شک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔سب کچھ تھا نہیں تھا تو بس اپنوں پر یقین بھروسہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔.۔
----------------------------------
ادا آج ضرورت سے زیادہ ہی خوش تھی جب سے اُٹھی تھی چہک رہی تھی پاکیزہ نوٹ کررہی تھی وہ یہ بھی جانتی تھی یہ خوشی بھائی کے آنے کی تو نہیں کیوں کہ ادا نے ایک بار بھی ابراہیم کا نہیں پوچھا تھا پاکیزہ تو اُٹھتے ہی بھائی سے مل ائی تھی ابراہیم کی طبعیت کافی خراب ہونے کی وجہ سے وہ میڈیسن لے کر سو گیا تھا ۔۔۔۔۔۔
یونی جاتے ہوئے بھی پاکیزہ انتظار کرتی رہی کب ادا ابراہیم کا پوچھے لیکن ادا تو اپنی پلاننگ میں ہی مصروف تھی ۔۔۔۔۔
ادا؟  کیا ہوا؟  کیا سوچ رہی ہو؟
کچھ نہیں ادا نے مسکراتے ہوئے گاڑی سے باہر دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یونی پہنچتے ہی دونوں  اپنی اپنی کلاسز کی طرف  چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 ادا بار بار ٹائم دیکھ رہی تھی 10 بج چکے تھے وہ یونی سے نکل کر لوگوں سے پوچھ پوچھ ٹیکسی تک پہنچی ۔۔۔۔۔۔۔
وہ ٹیکسی والے کو سارا ایڈریس سمجھا کر اپنی منزل کی طرف چل پڑی تھی
اادا کو ڈر نہیں لگ رہا تھا اسکی وجہ اپنوں سے دوری اور انجان پر بھروسہ تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ آج جلدی فارغ ہوئی تو ادا کو ڈھونڈنے لگی کتنی بار تو کال ملا چکی تھی لیکن ادا کا نمبر سوئچ اوف تھا وہ تھک ہار کر بیٹھ گئی تھی۔۔۔۔۔۔
ادا ہوٹل کے کمرے تک پہنچی دروازہ کھلا تھا وہ کمرے میں داخل ہوتے ہی اپنی نظریں ادھر اُدھر دوڑانے لگی کمرے میں کوئی نہیں تھا وہ ہاتھ میں پکڑے موبائل پر انجان نمبر پر کال کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔
ہیلو؟
کہاں ہو میں یہاں کمرے میں پہنچ گئی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آرہا ہوں تم جوس پیئو میں پہنچ جاؤں گا 10 منٹ میں کال بند ہوچکی تھی ادا کی نطر ٹیبل پر پڑی جہاں گلاس میں جوس پڑا تھا وہ اپنی جگہ اُٹھ گلاس منہ کو لگائے کمرے کا جائزہ لینے لگی ابھی آدھا گلاس جوس پیئا تھا کہ ادا کو اپنا سر چکرتا ہوا محسوس ہوا اتنے میں دانش بھی دروازے کو لاک لگاتا کمرے میں داخل ہوا ۔۔۔
ادا نے اپنی آدھی کھلی آنکھوں سے دانش کو دیکھا  جو اسکاسر سے لے کر پاؤں تک جائزہ لے رہا تھا ۔۔۔۔
ادا پینٹ کے ساتھ سلیو لیس شرٹ اور گلے میں مفلر پہنے اپنے دونوں ہاتھوں سے سر کو تھامے مشکل سے کھڑی تھی ۔۔۔۔۔۔
تم؟
ہاہاہاہا  ہاں میں دانش نے اگے بڑھ کر  ادا کو کمر سے پکڑ سنبھالہ ۔۔۔
چ چھوٍڑو ۔۔۔۔ادا بمشکل ہی کچھ سمجھ پارہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اسنے ادا کا مفلر گلے سے کھنچا ۔۔۔۔وہ کسی وحشی کی طرح اس پر ٹوٹا تھا ادا کے ہونٹوں کو زحمی کرتا ہوا اپنے ناخن اسکے بازو میں پیوست کیے اسکی گردن کو بری طرح زخمی کررہا تھا ادا اپنے وجود میں تکلیف تو محسوس کررہی تھی لیکن اپنے اپ کو بچانے کے لیے کچھ نہیں کر پارہی تھی ذہین کچھ بھی سوچنے سمجھنے سے قاصر تھا دانش اسے بیڈ پر گِرا کر جُھکا ہی تھا کہ کمرے کا دروازہ کھلنے کی آواز پر دانش نے دروازے کی طرف دیکھا جہاں ابراہیم پولیس کے ساتھ دانش کی طرف بڑھا ادا کی انکھیں بند ہو چکی تھی ابراہیم نے دانش کو گریبان سے پکڑا دو تین تھپڑ رسید کیے تھے ذلیل انسان تم اس حد تک گِر جاؤ گے میں سوچ بھی نہیں سکتا تھا ۔۔۔۔۔۔
پولیس  دانش کو ابراہیم سے آزاد کروا کر لے گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم ادا کو دیکھ اپنا منہ موڑ کر زمین پر بیٹھ گیا تھا انکھوں سے آنسوں بہہ زمین پر گِر رہے تھے ۔۔۔۔۔۔
ماضی ۔۔۔۔۔۔۔
جس رات دانش نے ابراہیم کو کال کر کے اپنی جگہ حیا کو بھیجنے کا کہا تھا اسی ٹائم  ابراہیم کو کچھ غلط ہونے کا امکان لگ رہا تھا اسنے اسی ٹائم ادا پر نظر رکھنے کے لیے ایک بندہ اریج کیا جب بھی ادا گھر سے باہر ہوتی وہ ادا پر پوری نطر رکھتا اج جب ادا ہوٹل کے لیے نکلی تو اس نے ابراہیم کو بہت کالز کی لیکن ابراہیم میڈیسن کھا کر سو رہا تھا جسکی وجہ سے ابراہیم نے لیٹ کال اٹینڈ کی اسکے بتانے کی دیر تھی ابراہیم سب سمجھ گیا اور پولیس کو لےکر ہوٹل پہنچ گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
--------------------------------------
ابراہیم میں تھوڑی بھی ہمت باقی نہیں تھی وہ اُٹھ کر ادا کو دیکھے ۔۔۔
دو گھنٹے سے ابراہیم وہی پوزیشن میں بیٹھا آنے والے وقت کا فیصلہ کر رہا تھا وہ اپنی جگہ سے کھڑا ہوا ادا کی طرف دیکھا جس کے ہونٹ سے خون نکل ٹھنڈا پڑ گیا تھا گردن اور بازؤں پر نشان دانش کی درندگی کا پتہ دے رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 ادا کی حالت دیکھ کر ابراہیم کا دماغ سُن ہورہا تھا تم اتنی نفرت کرتی ہو مجھ سے ادا وہ نم آنکھوں سے ادا کو دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔
مجھ سے دور ہونے کے لیے تم کچھ بھی کر گُزرو گی؟
اُسنے اگے بڑھ کر ادا کے ہونٹوں کو چھوا تھا تم اپنی ضد میں ہر حد سے گزر گئی ہو اب تم میری ضد دیکھو گی ادا تمہیں اپنے قریب رکھنے کی ضد مے میں بھی ہر حد سے گزر جاؤں گا جتنی اذیت تم نے مجھے دی ہے اب اتنی ہی اذیت سے تمہیں بھی گزرنا ہوگا یہ سفر طے کرکے ہی تم میری محبت کی حقدار بنو گی ابراہیم نے اپنی آنکھوں سے آنسوؤں کو صاف کیا۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم کے موبائل پر پاکیزہ کی کال آنے لگی ۔۔۔۔۔
ہیلو بھائی ادا پوری یونی میں نہیں ہے میں تین گھنٹے سے ڈھونڈ ڈھونڈ کر تھک گئی ہوں ۔۔۔
ریلیکس ہوجاؤ پاکیزہ ادا میرے ساتھ ہے ۔۔۔۔۔۔ابراہیم نے بہت آرام سے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپ کے ساتھ؟
ہاں میں ابھی. یونی سے پک کرتا ہوں تمہیں تھوڑا ویٹ کرنا ہوگا ہم اتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی بھائی اوکے ۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نے کال بند ہوتے ہی پانی کا جگ اُٹھایا اور ادا کے چہرے پر پانی کے چھینٹے مارنے شروع کیے ۔۔۔۔
وہ آہستہ اہستہ انکھیں کھولے ہوش میں آئی تھی۔۔۔۔۔۔۔
مکمل ہوش میں اتے ہی ہی وہ بغیر کچھ سوچے سمجھے ابراہیم کے گلے لگ بچوں کی طرح بلکہ بلک کر رونے لگی تھی اسکا وجود کانپ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نے اسے غصے سے پیچھے کرنا چاہا لیکن ادا  بہت مضبوطی سے ابراہیم کو پکڑے رو رہی تھی۔۔۔۔۔
ابراہیم نے بھی ادا کے بالوں کو سہلاتے ہوئے اسے چُپ کروانے کی کوشش کی جس میں وہ کافی حد تک کامیاب بھی ہو گیا تھا۔۔۔۔
ادا کے چُپ ہوتے ہی اسنے ادا کا مفلر اُٹھا کر اسکے کندھوں پر پھیلایا اور اسکا ہاتھ تھام ہوٹل سے باہر ایا ۔۔۔۔۔۔
---------------------------------
راستے میں پاکیزہ کو پک کر وہ گھر کی طرف روانہ ہوئے پاکیزہ کبھی روتی ہوئی ادا کو دیکھ رہی تھی کبھی ابراہیم کو جسکے چہرے پر غصے کے علاوہ کچھ نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ بہت کچھ پوچھنا چاہ رہی تھی لیکن ادا کی حالت دیکھ ہمت بھی نہیں کر پارہی تھی۔۔۔۔۔۔۔
گھر پہنچتے ہی  پاکیزہ کو اپنے ہر سوال کا جواب مل چکا تھا ہال میں موجود گھر کے سب افراد انکا ہی انتظار کررہے تھے جن خان محمد روبی بھی موجود تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم تم نے دانش کو پولیس کے حوالے کردیا؟  زکیہ نے بہت نرمی سے ابراہیم سے سوال کیا ۔۔۔
ادا ماں کو دیکھتے ہی  گلے لگ رونے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نے ایک نظر ادا پر ڈالی ۔۔۔
ہاں مجھ سے غلطی ہوگئی ہے مجھے پولیس کے حوالے نہیں کرنا چاہیے تھا بلکہ گولی مار دینی چاہیے تھی ۔۔۔۔۔
لیکن بیٹا ؟  رحیم صاحب ابراہیم کے غصے سے واقف تھے اسلیے بہت نرمی سے بولے۔۔۔۔
 دادا جان میں آپکی بہت عزت کرتا ہوں اور میں یہ بھی جانتا ہوں آپ سب جانتے ہے اس لیے پلیز  دانش کا ساتھ دینے سے بہتر ہے آپ اُسے سمجھائے ۔۔۔۔۔۔۔۔
میں سمجھا دونگا بیٹا لیکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دادا جان پلیز ۔۔۔۔۔ابراہیم اب خان محمد سے اور بات نہیں کرنا چاہتا تھا یہ بات وہ بھی سمجھتے ہوئے وہاں سے چلے گئے ۔۔۔۔
 ادا ماں سے لپیٹی بھوٹ پھوٹ کر رورہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کل ادا کی رخصتی ہوگی جسنے جو تیاری کرنی ہے کرلے ابراہیم سختی سے کہتا ہوا سیڑھیاں چڑھ گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم کی بات سُن کر ادا رونا بھول گئی اور اپنی ماں کی طرف دیکھنے لگی ۔۔۔۔
نو ماما ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری بچی کتنا سمجھایا تھا تمہیں  خود کو ٹائم دو اس رشتے کو سمجھو تم نے جزبات  میں آکر سب غلط کردیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما پلیز میں معافی مانگتی ہوں آپ سب سے پلیز ماما ابی کو منا کردے میں ابھی نہیں شادی کرنا چاہتی ادا اپنے یاتھ جوڑے ماں کے سامنے بیٹھی تھی راحیلہ تو شرمندگی محسوس کرتے ہوئے اپنے کمرے میں چلی گئی زکیہ نے ادا کو سنبھالنے کی کوشش کی ادا بیٹا ابراہیم مرد ہے اور تمہارا شوہر بھی جو کچھ آج ہوا ہے تم کبھی نہیں سمجھ سکتی اس پر کیا گزر رہی ہے وہ کیسے برداشت کر گھر تک پہنچا ہے ۔۔۔۔
تائی اماں میں سمجھتی ہوں میں اپ سب کی بات مانوں گی ادا نے اپنے آنسوؤں صاف کرتے ہوئے کہا بس آپ ابی کو منا کردے میں نہیں شادی کرنی ماما پلیز ۔۔۔۔
بابا پلیز ادا اُٹھ کلیم صاحب کے سامنے آبیٹھی آپ ابی سے بولے رک جائے ۔۔۔۔۔۔
میری بچی یہ فیصلہ تم نے مجبور کیا ہے کرنے پہ میں تو ابراہیم سے شرمندہ ہوں۔۔۔۔۔
کیا ہو گیا ہے اپ سب کو  ادا چِلائی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
میں کہہ رہی ہوں نہ مجھ سے غلطی ہوگئی ہے معاف کردیں۔۔۔۔۔
پلیز تائی اماں پلیز آپ کہے پاکیزہ تم کہو تمہاری تو ہر بات مانتا ہے ابی پلیز ۔۔۔۔۔۔
ادا چُپ ہوجاؤ چلو روم میں ۔۔۔پاکیزہ نے اسے سنبھالتے ہوئے کہا ۔۔۔
نہیں جاؤں گی میں کہی نہیں جاؤں گی میں ادا ہال میں ہی زمین پر بیٹھی سسکیاں لینے لگی لیکن کوئی بھی اسے جھوٹی امید نہیں دلانا چاہتا تھا سب خاموش تھا سب جانتے تھے جو ہوگیا ے وہ ابراہیم کی برداشت کی آخری حد تھی اب وہ کسی کی نہیں سُنے گا ۔۔۔۔۔
لیکن پاکیزہ ادا کے لیے آخری کوشش کرنا چاہتی تھی ۔۔۔
ادھر دیکھو میری طرف پاکیزہ نے ادا کے چہرےکو اپنے ہاتھوں میں لیا ۔۔۔۔
میں بات کرتی ہوں بھائی سے لیکن پہلے رونا بند کرو کمرے میں چل کر شاور لو فریش ہوجاؤ پھر میں بھائی سے بات کروں گی پرامس ۔۔۔
پاکیزہ تم جیسے کہو گی میں کروں گی سب کی بات مانوں گی میں کہہ رہی ہوں مجھ سے غلطی ہوگئی ہے میں شرمندہ ہوں پلیز تم ابی کو کہو ابھی ادا شادی نہیں کرنا چاہتی ۔۔۔۔
اوکے اوکے لیکن اُٹھو پہلے چلو روم میں پرامس بات کرتی ہوں بھائی سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کمرے میں اتے ہی ادا شاور لینے لگی خود کے زخموں کو ہاتھ سے چھوتے ہوئے آنسو خود ہی اپنی جگہ بنا رہے تھے ۔۔۔۔
ٹکٹکٹک ۔۔۔۔۔۔
بھائی ۔پاکیزہ دروازہ کھولتی ہوئی روم میں داخل ہوئی ۔۔۔
ابراہیم تولیے سے بال رگڑتا ہوا واشروم سے باہر ایا ۔۔۔۔۔۔۔۔
سوری بھائی ۔۔۔۔
کس لیے؟
میں نے کہا تھا میں سب سنبھال لوں گی لیکن ۔۔۔۔
اوکے ایک شرط پر معافی مل سکتی ہے ۔۔۔
کیا؟
تم اب ادا کی سائیڈ نہیں لو گی اب جو بھی میں کروں گا تم منا نہیں کرو گی ۔۔۔
لیکن بھائی ۔۔۔۔
پلیز پاکیزہ اس بار تم اپنے بھائی پر بھروسہ کرو میں سب ٹھیک کردوں گا ۔۔۔۔۔۔
اوکے پاکیزہ جانتی تھی اب کچھ بھی کہنے کا کوئی فائدہ نہیں اسلیے وہ خاموش ہوگئی ۔۔۔۔۔۔۔
کیا واقعی کل رخصتی؟
ہاں بلکل ۔۔۔۔
اتنی جلدی تیاری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوجائے گا سب تم فکر نہیں کرو تم صرف صبح جاکر ماما کے ساتھ کچھ شاپنگ کر لانا باقی میں دیکھ لوں گا ۔۔۔۔
اوکے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
--------------------
سب بڑے ہال میں بیٹھے اسی مسئلے پر بات کررہے تھے سب اپنی اپنی سوچ مطابق بات کررہے تھے  ۔۔۔۔۔۔۔۔
کلیم تم بتاؤ کیا چاہتے ہو؟
بھائی صاحب جیسے آپ سب کو بہتر لگتا ہے کر لیجئے میں پہلے ہی بہت شرمندہ ہوں ۔۔۔۔
نہیں کلیم پتر تو کیوں شرمندہ ہے وہ بچی ہے دیکھنا ابراہیم کا فیصلہ سب ٹھیک کردے گا ۔۔۔۔۔۔۔
ویسے بھی اماں اب ابراہیم ہماری کہاں سُنے گا رحیم خان نے اپنے بیٹے کی طرف سے اندیشہ ظاہر کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی بات نہیں مجھے لگتا ہے اس مسئلے کا اس سے بہتر کوئی حل ہونا بھی نہیں تھا یہی ٹھیک ہے کل چھوٹا سا فنکشن کرتے ہے اور رخصتی کردیتے ہے زکیہ نے بات ختم کی  ۔۔۔۔
رابعہ تم کیوں خاموش ہو؟  کچھ بولو ۔۔۔۔۔
بھابھی کیا بولوں رابعہ کہتے ہی رونے لگی ۔۔۔۔
کیا ہوا رابعہ پریشان نہیں ہو اللہ سب بہتر کرنے گا زکیہ رابعہ کو گلے لگا کر تسلی دینے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ کمرے میں ائی تو ادا گھٹنوں میں سر دیے بیٹھی تھی۔۔۔۔
ادا کھانا کھاؤ گی ۔۔۔۔۔۔
نہیں ۔۔۔۔۔۔
اچھا میری ایک بات مانو گی؟
ادا نے اپنا سر اوپر اُٹھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب وہی ہوگا جو بھائی نے کہہ دیا ہے وہ کسی کی نہیں سُنے گے تو تم پلیز اب یہ سب مان لو یقین کرلو یہ تمہاری زندگی کا حصہ ہے پلیز رونا نہیں اب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا کو اپنا رونا واقعی بے معنی لگ رہا تھا  ۔۔۔
بولو ادا۔
کیا؟
کچھ بھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ نہیں ا۔۔۔۔۔۔۔۔دا جان گئی تھی جو غلطی آج وہ کر بیٹھی ہے اب یہی سزا ہے اس کی آنسوں بہنا بند ہوچکے تھے وہ خالی نظروں سے زمین کو دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
--------------------------------------
صبح ہوگئی تھی اج اسماں پر بادل کا بسیرا تھا جس نے موسم کو مزید ٹھنڈا کردیا ۔سب تیاریوں میں مصروف کسی کو ناشتے تک کی ہوش نہیں تھی زکیہ  ۔مارکیٹ کھلنے کا انتظار کررہی تھی پاکیزہ بھی تیار ہو نیچے آگئی ادا سو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ کس کالر کا جوڑا لاؤں ادا تو کچھ بولے گی نہیں تم ہی بتا دو زکیہ نے ہال میں آتے ہی پوچھا ۔۔۔۔
بھابھی جو کالر اپکو پسند ہے وہی لے ائیے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چچی آجکل لائٹ کالر اِن ہیں اوف وائٹ کالر بہت پیارا لگے گا ہماری ادا پر پاکیزہ نے اپنا مشورہ دیا ۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ خاموش سی اُٹھ کچن میں گئی اور اپنی بیٹی کے لیے ناشتہ بناکر اس کے روم میں ائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا میری جان؟  اُٹھو شاباش ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رابعہ نے ادا کے بال سہلاتے ہوئے بہت سے پیار اسے پکارا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا نے تھوڑی سی انکھیں کھول ماں کی طرف دیکھا پھر انکھیں بند کرلی۔۔۔۔۔۔
اُٹھو میری جان ماما کے ساتھ ناشتہ کرلو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا تھوڑی سی اُٹھ ماں کی گود میں سر رکھ کر لیٹ گئی ۔۔۔۔۔۔۔رابعہ بھی ادا کے بالوں کو سہلانے لگی ۔
سوری ماما ادا کی بھیگی ہوئی آواز سن کر رابعہ بھی اپنا ضبط کھو بیٹھی روتے ہوئے ادا کی پیشانی پر پیار کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری بچی تم نے اپنے بابا کو بہت ہرٹ کیا ساری رات وہ ایک پل بھی نہیں سوئے تمہاری باتیں کر کے روتے رہے۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا میری بیٹی کو اتنی نفرت ہوگئی اپنے ماں باپ سے؟
 نہیں ماما ایسا نہیں ہے میں اپ سے دور نہیں بھاگ رہی تھی میں تو شاید خود سے بھاگ رہی تھی جس مے میں بُری طرح ناکام ہوگئی ہوں ۔۔۔۔
ادا؟  میری جان اب کچھ الٹا سیدھا نہیں کرنا  ہم پہلے ہی بہت شرمندہ ہیں سب سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما؟  ادا نے بہت بے بسی سے ماں کو پکارا ۔۔۔.۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
-------
جیسے جیسے دن گزر رہا تھا  ادا کو خود پر کنڑول ختم ہوتا محسوس ہورہا تھا وہ آج اپنے روم سے باہر نہیں نکلی تھی ذہین میں ہزارو خیال آکر دم توڑ گئے تھے رہائی ناممکن لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔
ادا تھوڑا سا صبر کرلیتی تو شاید سب ٹھیک کرلیتی خود ہی اپنی موت کو آواز دی ہے دروازے کی دستک پر ادا کی سوچ کا تسلسل ٹوٹا ۔۔۔۔۔۔۔
زکیہ پارلر والی کے ساتھ کمرے میں ائی ادا بیٹا مہندی لگوا لو ٹاٰئم بہت کم ہے پھر کالر نہیں  ائے گا ۔۔۔۔۔
زکیہ کہتے ہی چلی گئی ادا نے اپنے ہاتھ لڑکی کے اگے بڑھا دیے اتنی تیاری کے بعد مجھے قبر میں اتارے گے؟  ابراہیم تو محبت کا دعویدار تھا تو کیا میری ایک غلطی کو نظرانداز نہیں کرسکتا تھا؟
----------------------------
ابراہیم پوری تیاری کے ساتھ شیشے کے سامنے کھڑا بالوں میں برش کررہاتھا جب پاکیزہ روم میں ائی ۔۔۔۔۔
بھائی آ بھی جائے اب اپکی تو تیاری ختم نہیں ہورہی ۔۔۔۔۔
ماشاءاللہ بہت پیارے لگ رہے ہو پاکیزہ نے بھائی کو دیکھتے ہی نظر اتاری ابراہیم سلیور کالر کی شیروانی پہنے جو ادا کے ڈریس کے ساتھ میچ کرکے لی گئی تھی  بہت پیارا لگ رہا تھا ۔۔۔
تھینکیو میری جان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپ بھی بھائی کی شہزادی لگ رہی ہو پاکیزہ بلیو کالر کی گھٹنوں تک  اتی فراک پہنے تھی جس پر بہت نفاست سے وائٹ کالر کی کرھائی کی گئی تھی جس میں پاکیزہ واقعی ہی شہزادی لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلے بھی بھائی ۔۔۔۔
ماما خود اجائے گی پھر ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے اوکے چلو ابراہیم پرفیوم واپس اسکی جگہ پر رکھنے ہوئے بولا ۔۔۔۔۔۔
زیادہ لوگوں کو نہیں بلوایا گیا تھا اس لیے گھر کے لان میں بہت پیاری سجاوٹ کیے فنکشن کا آغاز کیا گیا خان محمد کے گھر سے تابش اور روبی نے شرکت کی خان محمد نے طبعیت خراب کا کہہ کر انے سے معذرت کرلی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نکاح کا عمل دوہرایا گیا تھا یہ خواہش ابراہیم کی تھی اس وقت ادا بہت چھوٹی تھی اسلیے وہ چاہتا تھا اب وہ اپنے پورے ہوش و ہواس میں اس رشتے کو اپنائے نکاح کے بعد ادا کو لان میں لا کر ابراہیم کے ساتھ بیٹھایا گیا ابراہیم تو جیسے ادا سے نظریں ہٹانا ہی بھول گیا تھا وہ اوف وائٹ لہنگا پہنے ہلکے سے میکاپ لائٹ سی جیولری زیب تن کیے کسی پرنسس سے کم نہیں لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
کلیم صاحب نے ادا کے سر پر بہت شفقت سے ہاتھ رکھا جسکو ادا تھام کر چومتے ہوئے رونے لگی تھی کلیم صاحب بھی ادا کو گلے لگا کر نم انکھوں سے اپنی بیٹی کے لیے دل میں  دعائیں مانگ رہے تھے ۔۔۔۔۔
پاکیزہ نے ادا کو سنبھالتے ہوئے واپس اسکی جگہ پر بیٹھایا  ادا جان چکی تھی اسکے ایک غلط فیصلے نے بہت کچھ غلط کردیا ے جسکو ٹھیک ہونے میں بہت ٹائم لگ جائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فنکشن اپنے اختتام کو پہنچ چکا تھا مہمان جانا شروع ہوگئے تھے پاکیزہ ادا کو روم میں چھوڑنے ائی تو ادا نے پاکیزہ کا ہاتھ تھام لیا ۔۔۔
پلیز میرے پاس ہی رہو پاکیزہ نے ادا ہاتھوں میں کپکپاہٹ محسوس کی تو اسکے ہاتھوں پر اپنی گرفت مضبوط کی ۔۔۔۔
میری جان پریشان نہیں ہو میں یہی ہوں تمہارے پاس اوکے؟
بہت پیاری لگ رہی ہو اسنے ادا کے دوپٹے کو سہی کرتے ہوئے کہا ۔۔۔
پاکیزہ؟  سوری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے ایک لگا دینی ہے جو مجھ سے سوری بولا تو ۔۔۔۔
میں نے سب غلط کردیا ادا کی انکھوں سے دو موتی گِرے ۔۔۔۔
بس چُپ پلیز ادا رونا نہیں پلیز پاکیزہ نے فوراً اسکے آنسوؤں صاف کے ۔۔۔
سب ٹھیک بھی ہوجائے گا دیکھنا تم سب کچھ ٹھیک ہوجائے گا اور ہم یہ  وقت یاد کر کے ہنسا کرے گے ۔۔۔۔۔۔
دروازہ کھلنے کی آوار پر ادا نے پاکیزہ کے ہاتھوں کو زور سے پکڑا ۔۔۔۔۔۔
ابراہیم  کمرے میں ایا تو پاکیزہ نے اپنی جگہ سے اُٹھنا چاہا لیکن ادا پاکیزہ کو چھوڑنا نہیں چاہ رہی تھی جو ابراہیم کی نظر سے بھی بچ نہیں سکا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا پلیز یار ۔۔۔۔۔پاکیزہ نے سرگوشی کی۔۔۔
جسکے جواب میں ادا نہ میں سر ہلا گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


پلیز چاندہ ۔۔۔۔۔پاکیزہ  زبردستی  ہاتھ کھینچتی ہوئی کھڑی ہوئی ۔۔۔۔
بھائی کچھ چاہیے؟
نہیں ۔۔۔۔ابراہیم نے شیروانی سے خود کو آزاد کرواتے ہوئے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا تمہیں کچھ چاہیے؟
ادا نے بھی نفی میں جواب دیا ۔۔۔
پاکیزہ نے روم سے جانے کے لیے قدم اُٹھائے ادا کی فورا آواز ائی ۔۔۔۔
پاکیزہ؟
 وہ پلٹی تھی جی؟
پانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پاکیزہ نے اپنے بھائی کی طرف دیکھا اور سائیڈ ٹیبل کی طرف بڑھ کر پانی کا گلاس ادا کی طرف بڑھایا جسکو وہ بغیر سانس لیے پی گئی اور گلاس واپس پاکیزہ کی طرف بڑھایا ۔۔۔۔۔۔
وہ گلاس ٹیبل پر رکھ کمرے سے جا چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
ادا کو اپنی سانس بند ہوتی محسوس ہورہی تھی ابراہیم وہی کھڑا سینے پر ہاتھ باندھے ادا کو دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
وہ کبھی کانپتے ہاتھوں سے دوپٹہ سہی کرتی کبھی ہاتھوں کو اپس میں جکڑ لیتی۔۔۔۔۔۔۔
اسنے ایک بار بھی نظریں اُٹھا کر ابراہیم کی طرف نہیں دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم اگے بڑھ کر ادا کے قریب بیڈ پر بیٹھا ادا خود میں سمٹی  ابراہیم نے اپنی جیب سے ایک ڈبی نکال کر اس میں سے بریسلیٹ نکالی اور اپنا ہاتھ ادا کی طرف بڑھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا نے اپنے ہاتھ گود میں سمیٹے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا ہاتھ دو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابراہیم نے بہت سنجیدگی سے  سخت لہجے میں کہا ۔۔۔
ادا نے اپنا کانپتا ہوا ہاتھ ابراہیم کی طرف بڑھایا۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم بریسلیٹ ادا کی کلائی میں پہنا چکا تھا ادا نے فوراً اپنا ہاتھ اپنی گود میں رکھا ۔۔۔۔۔۔۔
تم بچوں والی حرکتیں کب چھوڑو گی؟  یہ بات انتہائی غصے میں پوچھی گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
اب ابی  سوری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا نے روتے ہوئے اپنی بات کا آغاز کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا کے بازوں پر کل دانش کے چھوڑے ہوئے نشان نظر  آرہے تھے جنکو دیکھ ابراہیم کا غصہ بڑھ گیا تھا ………
ائندہ میں تمہیں سلیو لیس  پہنے نہ دیکھوں سمجھی؟
ادا اپنے ہاتھوں پر نظریں جمائے بیٹھی تھی آنسو ایک کے بعد ایک گِر اسکے ہاتھوں کو بھیگو رہے تھے۔۔۔۔۔۔
میں کیا کہہ رہا ہوں ۔۔۔۔ابراہیم دھاڑا تھا اسکی تیز آواز سے ادا کا وجود کانپ گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
ج جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اکیلی کہیں نہیں جاؤ گی بلکہ کسی کے ساتھ کہی نہیں جاؤ گی تمہیں جہاں جانا ہوگا میرے ساتھ جاؤ گی ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ ابراہیم کی بات پوری ہوتے ہی جھٹ سے بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جاؤ چینچ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابراہیم کے منہ سے چینچ کا لفظ سُن کر ہی ادا  جلدی  سے بیڈ سے لہنگا اُٹھائے جانے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری بات ابھی پوری نہیں ہوئی۔۔۔۔۔
ادا اسی پوزیشن میں سٹچوں بن گئی تھی حرکت میں تھے تو صرف آنسو جو لگاتار گِر رہے تھے ۔۔۔۔۔
آئندہ میری بات پوری سُن کر اس پر عمل کرنا جاؤ چینچ کرو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا اب آرام سے اپنی سانس روکے چینچگ روم کی طرف بڑھی ۔۔
روم کا دروازہ لاک کرتے ہی وہ اپنے منہ پر ہاتھ رکھے اپنی آواز کو دبانے لگی جب رو رو کر تھک گئی تو  بے دردی سے جیولری اتار کر اپنی چوڑیاں اتارنے لگی نہ جانے کہاں کہاں سے ٹوٹتی ہوئی چوڑیاں ہاتھ کو زخمی کررہی تھی  ادا کو اج ان زخموں کی کہاں فکر تھی اج اسکے سارے اندیشے سچ ثابت ہوگئے تھے وہ چاہے ہار گئی تھی لیکن اسکی سوچ اج جیت گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک گھنٹے بعد ادا بلیک کُرتا پاجاما پہنے باہر ائی تھی جو اج ہی پاکیزہ نے خریدہ تھا ۔۔۔۔۔
ادا جو سوچ کر باہر ائی تھی اسکے برعکس ابراہیم صوفے پر بیٹھا اسکا ہی انتظار کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔
اسکو دیکھتے ہی وہ اپنی جگہ سے اُٹھ اس کی طرف بڑھا تمہیں چینچ کرنے بھیجا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔ادا کہتے ہی دو قدم پیچھے ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اسنے ادا کو بازو سے دبوچ۔۔۔۔۔ا پھر اتنی دیر کیوں لگائی وہ تو اج سارے حساب پورے کرنے والا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
اب --ابی ---چ ---چھو ---،چھوڑے ----
ابراہیم کہاں اسے دیکھ یا سُن رہا تھا وہ اسکی انکھوں میں دیکھ تکلیف نہیں دے سکتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اسنے ادا کو کھنچ اسکی کمر کو اپنے حصار میں لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب تو تمہیں یقین ہو گیا ہے تم میری بیوی ہو اسلیے میرے نزدیک انے پر کوئی اعتراض نہیں ہونا چاہیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بات سُنتے ہی ادا کو اپنا دل بند ہوتا محسوس ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اب ۔۔ابی  پلی۔۔۔۔پلیز ۔۔۔۔۔مھ ۔۔۔مجھے ۔۔۔مع ۔۔۔معاف ۔۔۔کر۔۔۔دے
اب ابراہیم کی بھی برادشت جواب دے رہی تھی ادا کی حالت اُسے تکلیف دے رہی تھی اسکی نظر ادا کی انکھوں پر پڑی نیلی انکھیں لال ہونے  کے ساتھ سوج چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم اور تنگ کرنے کا ارادہ ملتوی کرتا ہوا پیچھے ہوا  ۔۔۔۔۔۔
ائندہ کوشش کرنا میرے سامنے اپنے آنسوں نہ بہانا ورنہ رونے کا شوق ایک بار میں پورا کردوں گا وہ کہتے ہی بیڈ پر لیٹ گیا تھا ۔۔۔۔۔
کیا ایسا نہیں ہو سکتا یہ خواب ہو میری انکھیں کھلے اور تحلیل ہوجائے اسنے اپنے آنسو صاف کرتے ہوئے سوچا ۔۔۔
اب ساری رات یہی کھڑی رہو گی؟
نہیں وہ کہتے ہی صوفے کی طرف بڑھی ۔۔۔۔
تم کیا چاہتی ہو میں ساری رات تمہیں بانہوں میں بھر کر سمجھاتا رہوں تم نہیں جانتی صوفے اور بیڈ میں کیا فرق ہے؟
صوفہ بیٹھنے جبکہ بیڈ سونے کے کام اتا ہے آواز میں سختی بھرے سمجھانے والے انداز میں کہا گیا ۔۔۔۔۔
مقابل خاموشی سے آکر دوسرے کنارے پر لیٹ گئی تھی ۔۔۔۔۔
یہاں اؤ ابراہیم نے اپنا بازوں سیدھا کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
ادا اپنی انکھیں ابراہیم کے کندھے پر گاڑے دیکھنے لگی ۔۔۔۔
یہاں آکر لیٹو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ آنسو حلق میں اتارے کندھے پر سر رکھے ابراہیم سے تھوڑا فاصلہ رکھ لیٹ گئی ادا کا کانپتا وجود بھی ابراہیم کو سکون دے رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
یہ سارا بیڈ چھوڑ  کنارے پر لیٹنے کی سزا ہے ابراہیم اسکا ہاتھ اپنے سینے پر رکھ ادا کو خود میں سمیٹے سو گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
-------------------------------------------
صبح اذان کی آواز پر ابراہیم کی آنکھ کھلی تو ادا اُسی پوزیشن میں سو رہی تھی ابراہیم کو اپنے کندھے پر بہت ہیٹ محسوس ہوئی اسنے ہاتھ بڑھا کر ادا کے ماتھے پر رکھا وہ بخار میں تپ رہی تھی ابراہیم کو رات اپنا تنگ کرنا یاد ایا تو خود پر ہی غصہ کرتا ہوا اُٹھ کھڑا ہوا………
کچن سے چاٰے اور بسکٹ لیے وہ اپنے کمرے میں واپس آیا ۔۔۔۔
ادا؟  ادا اُٹھو انکھیں کھولو وہ اسکے منہ کو تھپتھپا ہوا جگانے لگا ۔۔ادا نے تھوڑی سی انکھیں کھول ابراہیم کی طرف دیکھا جو اس پر جھکا جگا رہا تھا ادا کو اپنے جسم میں تکلیف محسوس ہوئی اسنے دوبارہ انکھیں بند کرلی ۔۔۔۔۔
اُٹھو جلدی سے چائے پیئو پھر میڈیسن کھانی ہے ادا اُٹھو جان۔۔۔۔۔۔۔جیسے تیسے ابراہیم نے ادا کو چائے پلا کر میڈیسن کھلائی وہ دوبارہ سو چکی تھی ابراہیم اس پر بلیکٹ اڑا کر خود کمرے میں ہی نماز پڑھنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
-------------------------
صبح کے 10 بجے پاکیزہ کی انکھ کھی تو ادا کا خیال ایا وہ جھٹ سے فریش ہوئی اور جاکر ابراہیم کا دروازہ نوک کیا ابراہیم جو صوفے پر بیٹھا افس ورک کررہا تھا پاکیزہ کو اندر انے کی اجازت دی ۔۔۔۔۔۔
اُٹھ گئی میری بہن پاکیزہ کو دیکھتے ہی ابراہیم مسکرایا ۔۔۔
جی پاکیزہ کی نظر ادا پر پڑی وہ ابھی تک سو رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ جوتا اتار ادا کے پاس ہی سیٹ ہوگئی تھی ۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ چیک کرو اب بخار کم ہوا ادا کا ۔۔۔۔۔
کیا بخار ہوگیا ادا کو پاکیزہ نے کہتے ہوئے اپنا ہاتھ ادا کی پیشانی پر رکھا ۔۔.
پاکیزہ کا ہاتھ ادا کی پیشانی کو چھوتے ہی ادا اچھل کر اُٹھی بیٹھی تھی ۔۔۔۔
اہ سوری ادا میں تمہارا بخار چیک کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
ادا شرمندہ سی سیدھی ہوکر بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔
ادھر دیکھاؤ نہیں اب تو بہتر ہے پاکیزہ نے ادا کو چھوتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم کے اندر بھی سکون اترا سُن کر ۔۔۔.۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا؟  کچھ بولو میں تم سے ملنے ائی ہوں یار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا تو رات کے سحر سے ہی باہر نہیں نکلی تھی رات ابراہیم کی کہی گئی ایک ایک بات ذہین میں گھوم رہی تھی ادا کو لگا وہ رو دے گی اسلیے اسے اُٹھ فریش ہونا ہی بہتر لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ اسے ایسے دیکھ پریشان ہوئی اسنے کھا جانے والی نظرو سے اپنے بھائی کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔
کیا  ؟ ایسے کیوں دیکھ رہی ہو میں نے تو اسے چُپ رہنے کے لیے نہیں کہا ۔۔۔۔۔۔۔
بھائی آپ جو کہہ سکتے ہو مجھے اندازہ ہے پاکیزہ کہتے ہی ناراض سی کمرے سے چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اج سب اوف ہونے کی وجہ سے لیٹ اُٹھے سب ناشتے کے ٹیبل پر خوش گپیوں میں مصروف تھے ۔۔۔۔۔۔
ابراہیم اب رسیپشن کا کیا سوچا ہے؟  خان صاحب نے منہ میں نوالہ ڈالتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔
دادا جان ابھی نہیں آفس میں بہت ضروری کام چل رہا ہے کچھ دن بند ریلیکس ہوکر سوچے گے ۔۔۔۔۔
چلو جیسے تم سب کو ٹھیک لگے ۔۔۔۔۔
ابراہیم بیٹا دانش کے لئے اتنی سزا کافی ہے خان محمد بار بار فون کررہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رحیم صاحب نے بھی اپنی بات سامنے رکھی ۔۔۔۔
نہیں پاپا ابھی دو تین دن اور وہی رہنے دیں پھر سوچے گے اور سزا بلکل بھی کافی نہیں ہے وہ اپنے ہاتھ ٹشو سے صاف کرتا ہوا چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا چائے کا مگ لیے باہر دھوپ میں آگئی یا شاید وہ اکیلے رہنا چاہتی تھی ۔۔۔کیا ہے  وہ جو رات کو تھا غصے والا اکڑو بےحس یا جو صبح تھا کیر کرنے والا پریشان سا فکر کرنے والا اج ادا ابراہیم کو سوچ رہی تھی کیوں کہ اب نہ چاہتے ہوئے بھی وہ اس رشتے کو مان رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
میری جان یہاں کیا کررہی ہو پاکیزہ نے پیچھے سے آکر ادا کو بانہوں میں لیا ۔۔۔۔۔۔۔
کچھ نہیں دھوپ میں بیٹھنے کو دل کیا تو آگئی ادا نے نارمل انداز میں جواب دیا ۔۔۔۔
ادا تم ان کپڑوں میں بہت پیاری لگ رہی ہو  اسنے کرسی سنبھالتے ہوئے تعریف کی ادا سکین کالر کا کرتا پاجاما پہنے تھی ۔۔۔۔۔۔۔
ھمممم ۔۔۔۔۔
بس ھمممم؟  میں تمہاری تعریف کررہی ہوں ہاتھ دیکھاؤ پاکیزہ کی نظر ادا کی کلائی میں چمکتی ہوئی بریسلیٹ پر پڑی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا نے بھی اپنا ہاتھ اسکی طرف بڑھا دیا ۔۔۔۔۔
یہ چوڑیاں لگی دھیان سے اتارتی نہ پاکیزہ نے زخموں کو چھوتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
 بریسلیٹ بہت خوبصورت ہے بھائی نے دی؟
بریسلیٹ واقعی بہت خوبصورت تھی ادا نے بھی نظر بھر دیکھی ۔۔۔۔
ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا بتاؤ اب طبعیت کیسی ہے؟
ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا؟  میں اب ناراض ہوجاؤں گی یار موڈ ٹھیک کرو اپنا ۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا ہے میرے موڈ کو ادا نے اپنے منہ پر اتے بال پیچھے کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔
اوکے کچھ نہیں ہوا پاکیزہ اُٹھتے ہی جانے لگی ادا نے اسکا ہاتھ تھاما ۔۔۔۔۔۔۔
پلیز مجھے تھوڑا ٹائم دو پاکیزہ ۔۔۔۔۔
پاکیزہ اسکا ہاتھ تھام دوبارہ کرسی پر بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری جان کس لیے ٹائم چاہیے؟  اب جو ہونا تھا ہوگیا ہے اب بس پریشان ہونا چھوڑو خوش رہو ۔۔۔۔۔۔
میں کوشش کررہی ہوں لیکن میں بھی انسان ہوں مجھے کچھ ٹائم تو دو پاکیزہ ۔۔۔۔۔
اس نے التجائی انداز میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے چھوڑو بتاؤ کہی چلے؟
باہر جہاں تم کہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا کو فورا ابراہیم کی بات یاد ائی  (تمہیں جہاں جانا ہوگا میرے ساتھ جاؤ گی )
نہیں میرا دل نہیں کررہا پھر چلے گے وہ کہتے کھڑی ہوئی چلو اندر چلتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
چلو ۔۔۔۔۔۔۔۔دونوں ہال میں بیٹھ ٹی وی دیکھنے لگی جب روبی تابش کے ساتھ اتی دیکھائی دی۔۔۔۔۔
اسلام وعلیکم آنٹی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دونوں کھڑی ہوئی
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔
بیٹا ماما کہاں ہے؟  کچن میں آنٹی میں بلواتی ہوں آپ بیٹھے ۔۔۔
کہتے ہی پاکیزہ ماں کو بلانے چلی گئی ۔۔۔۔۔
ادا بیٹا تم تو ابراہیم کی بیوی ہو اور بیویاں کیا نہیں منا لیتی میں مانتی ہوں دانش نے بہت گندی حرکت کی ہے لیکن وہ میرا بیٹا ہے تم بات کرو ابراہیم سے دانش معافی مانگ لے گا تم سے ابراہیم سے سب سے ۔۔۔۔۔
آنٹی میں کیسے؟
اسلام وعلیکم!  روبی کیسی ہو؟
وعلیکم السلام  زکیہ کیسی ہو سکتی ہوں جسکا جوان بیٹا جیل میں سڑ رہا ہو وہ ماں کیسی ہوسکتی ہے ……..
اچھا بیٹھو تو ۔۔۔
نہیں میں ابراہیم سے بات کرنے ائی ہوں تم ابراہیم کو بلاؤ میں اسکے پیر پکڑ لوں گی ہاتھ جوڑوں گی ۔۔۔۔روبی نے اپنے آنسو صاف کرتے ہوئے کہا ۔
اسکی ضرورت نہیں آنٹی میں نے فون کردیا ہے رات تک گھر پہنچ جائے گا ابراہیم نے سیڑھیاں اترتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن یہ لاسٹ وارننگ تھی اسکے بعد معافی کی گنجائش نہیں ہو گی ابراہیم نے چہرے پر سختی سجائے کہا۔۔۔
بیٹا میں سمجھا دونگی اسے تم فکر نہیں کرو ۔۔۔۔۔
چلو چھوڑو سب کچھ یہ لو چائے پیئو او زکیہ نے روبی کی طرف چائے بڑھائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تابش ابراہیم سے باتیں کرتا ہوا لان میں چلا گیا انکی چائے وہی پہنچا دی گئی  بھابی کھانا کھا کر جائیے گا اب راحیلہ نے بہت اپنائیت سے کہا ۔۔۔
نہیں راحیلہ پھر سہی اج نہیں انسان کیا کیا سوچتا ہے لیکن روبی نے ایک لمبی سانس لی ۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا روبی زکیہ نے فکر سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سوچا تھا پاکیزہ کو اپنی بیٹی بناؤں گی کتنے دنوں سے انا بھی چاہ رہی تھی لیکن دانش نے جو کیا اب ابراہیم کہا مانے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ کیا کہہ رہی ہے بھابھی ۔۔۔۔
زکیہ نے حیرات سے روبی کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ  ادا کو لیے اپنے کمرے میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سہی کہہ رہی ہوں بھابھی میری خواہش ہے پاکیزہ کا رشتہ تابش کے لیے مانگوں ۔۔۔۔۔۔
اب ابراہیم نہیں مانے گا در حقیقت تو روبی نے اپنا ڈر بیاں کیا ۔۔۔۔۔۔
جبکہ  یہ خواہش روبی کی کم تابش کی زیادہ تھی تابش شروع سے ہی پاکیزہ سے بہت محبت کرتا تھا اسے یہ بھی امید تھی وقت انے پر رشتہ ہونے میں کوئی دقت نہیں پیش ائے گی لیکن اب دانش کی وجہ سے سب ختم ہوتا دیکھائی دے رہا تھا ۔۔۔۔۔
بھابھی اپ فکر کیوں کرتی ہے راحیلہ اپنی بھابھی کے پاس بیٹھی سمجھانے لگی حالات ٹھیک ہونے دیں سب بہتر ہوگا انشاءاللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
-----------------------------------
ادا سارا دن اپنے کمرے میں نہیں گئی تھی رات سب کھانا کھا کر رومز میں جاچکے تھے ادا پاکیزہ کے ساتھ لان میں واک کرتی باتوں میں مصروف تھی
ویسے پاکیزہ تابش بھائی ہے تو اچھے دانش سے بہت مختلف ہے ۔۔۔۔۔۔
ہاں واقعی میں اچھے ہے لیکن اب شاید ایسا ممکن نہیں ہو گا ۔۔۔۔
کیوں غلط تو دانش نے کیا تابش کا کیا قصور؟
چلو گھر والے جو فیصلہ کرے گے بہتر ہی کرے گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ نے بات ختم کرنا چاہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں تمہاری مرضی کوئی معنی نہیں رکھتی؟  ۔
رکھتی ہے لیکن مجھے خوشی ہوگی اگر میں سب کی خوشی کی وجہ بنوں گی ماما بابا  اور بھائی نے اج تک میری ہر خواہش پوری کی ہے اور اگر کوئی نہیں کی تو اس میں بھی میرے لیے ہی بہتری تھی اب میں چاہوں گی کہ میری زندگی کا اہم فیصلہ بھی وہ کریں جن سے زیادہ میرا کوئی مخلص نہیں ہوسکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا پاکیزہ کی بات سُننے کے ساتھ ساتھ وہ بار بار اپنی کلائی پر بندھی گھڑی دیکھ رہی تھی رات گیارہ کا ٹائم ہوچکا تھا پاکیزہ کو نیند انے لگی تھی ۔۔۔۔۔
چلو یار مجھے نیند ارہی ہے اسنے جمائی لیتے ہوئے ادا کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔
چلو ادا کو یقین تھا ابراہیم سو چکا ہو گا وہ بھی پاکیزہ کی ہاں میں ہاں ملتے ہوئے کمرے کی طرف چل پڑی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کمرے کا دروازہ کھولتے ہی ادا کی نظر ابراہیم پر پڑی جو لیپ ٹاپ گود میں رکھے بیڈ سے ٹیک لگائے  انگلیوں سے اپنے ماتھے کو مسل رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
اسکے چہرے سے ہی تھکاوٹ جھلک رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
چا ۔۔چائے لا دوں؟
ادا کے پوچھتے ہی اسنے حیرات بھری نظروں سے اسکی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔
کیا؟
چائے لا دوں؟  اسنے ڈرتے ڈرتے اپنی بات دوہرائی ۔۔۔۔۔۔۔
اگر میرا ساتھ دو گی تو لے آؤ ابراہیم نے نارمل انداز میں جواب دیا ۔۔۔۔۔
اوکے میں لے کر اتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔اسنے کہتے ہی باہر کی طرف قدم بڑھائے ۔۔۔۔۔۔
یہ شاید تھوڑی دیر پہلے پاکیزہ کی کہی گئی باتوں کا اثر تھا اج پہلی بار ادا نے ان باتوں پر غور کیا ٹھندے دماغ سے اسکی بات سُنی اور سمجھی تھی چائے بناتے ہوئے ادا ریحان کے بارے میں سوچنے لگی کیا واقعی میرا انتخاب غلط تھا میرے بُرے وقت میں کیسے وہ پیچھے ہٹ گیا تھا میں نے اسکی وجہ سے سب کا کتنا دل دکھایا لیکن کیا ماما بابا کا فیصلہ سہی ہے میرے لیے؟
ابراہیم تنگ ذہین کا انسان ہے وہ ساری زندگی مجھ پر اعتبار نہیں کرے گا مجھے پابندیوں میں رکھے گا کیا ایسے میں وہ اچھا شوہر ثابت ہوگا؟
اسنے چائے کپ میں ڈالتے ہوئے اپنی سوچو کو بائے بولا اور دونوں کپ ٹرے میں رکھے سیڑھیاں چڑھنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹرے ٹیبل پر رکھتے ہوئے اسنے ایک کپ ابراہیم کی طرف بڑھایا اسنے کپ تھام ادا کو اپنے پاس بیٹھنے کا اشارہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔
وہ بھی اپنا کپ تھام ابراہیم کے پاس بیٹھی ۔۔۔۔۔۔
کیسی طبعیت ہے اب؟
بہتر ہے …….
دوبارہ میڈیسن لی تھی؟
نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم بیڈ سے اُٹھا میڈیسن لیے ادا کی طرف بڑھا یہ لو چائے سے پہلے کھا لو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا نے میڈیسن کھا کر دوبارہ چائے کا کپ تھاما ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نے ادا کے چہرے کو چھوتی لٹو کو کان کے پیچھے کیا اپنا خیال رکھا کرو ۔۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔ادا نے بس اتنا جواب دینا ہی بہتر سمجھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سارا دن روم میں کیوں نہیں آئی؟  اسنے سپ لیتے ہوئے سوالیہ نظروں سے ادا کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ویسے ہی ۔۔۔۔۔۔۔۔
پہلے تو روم سے نکلتی نہیں تھی اور اج روم میں ائی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مقابل خاموشی نہیں ٹوٹی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چائے ختم ہو چکی تھی ادا خالی کپ ہاتھ میں پکڑے فیصلہ نہیں کر پا رہی تھی اُٹھ جاؤ یہاں سے؟  نہیں ابی ڈانٹے گا ۔۔۔۔۔۔
یہاں بیٹھ کر کیا کروں؟  خود ہی کہہ دے جاؤ ادا سو جاؤ ۔۔۔۔۔
کیا ہوا؟  ادا کو کھوئے ہوئے دیکھ ابراہیم نے پوچھا ۔۔۔۔
کچھ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم  اُٹھ ادا کے سامنے گھٹنوں کے بل بیٹھا تھا اسکے ہاتھ  تھامے ادا کی انکھوں میں دیکھا جہاں اب حیرت کا راج تھا ۔۔۔۔
میں نے سوچا تھا جو اذیت تم نے مجھے پہنچائی ہے میں اسکا ٹھیک سے حساب برابر کروں گا لیکن مجھ سے یہ نہیں ہوگا تم بتاؤ جس انسان نے بارہ سال سے ایک ایک پل تمہیں سوچ کر گزارا ہو کیا وہ اتنی اذیت کا حقدار تھا؟
ادا تو ابراہیم کی انکھوں میں دیکھ رہی تھی جہاں نمی اتر ائی تھی ۔۔۔۔۔۔
تم سوچتی ہو میری سوچ بہت چھوٹی ہے۔۔۔
ہاں میری سوچ چھوٹی ہے میں چاہتا ہوں تمہیں لوگوں کی نظر سے بچا کر رکھوں  تم سلیقے سے کپڑے پہنو نہ کہ ایسے کپڑے پہنو کہ جسم کی نمائش کرتی پھرو تم گھر سے باہر جاؤ تو اک مضبوط سہارے کے ساتھ تاکہ تمہیں کوئی مشکل نہ پڑھ جائے ۔۔۔۔۔۔
ابراہیم خاموش ہوا تھا ۔۔۔۔۔
میں نے تو کبھی ایسے نہیں سوچا تو کیا یہ میری فکر میں مجھے ٹوکتا تھا ادا کی  سوچ کے پردے ہٹنے لگے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں تم سے محبت کرتا ہوں ادا  بہت محبت کرتا ہوں میں یہ اعتراف بار بار کرنا چاہتا ہوں ابراہیم خان تمہاری محبت کے اگے ایک کمزور مرد ہے ابراہیم ادا کے ہاتھوں کو اپنی پیشانی سے لگائے بچوں کی طرح رو رہا تھا ادا کی حالت ابراہیم سے مخلتف نہیں تھی ۔۔.۔۔۔۔۔۔۔۔
ابی اس دن کے لیے سوری پلیز مجھے معاف کردیں جب سے ہوش سنبھالی ہے بابا نے ہر بات بولنے سے پہلے پوری کی تھی میں کبھی یہ سوچ بھی نہیں سکتی تھی کہ وہ اتنا برا فیصلہ مجھے پوچھے بتائے بغیر کرلے گے میں بھی اپنی جگہ غلط نہیں تھی ابی ۔۔۔۔۔۔۔
میں جانتا ہوں ادا لیکن اگر تم اس دن وہ حرکت نہیں کرتی تو میں ابھی رخصتی کا کبھی نہیں کہتا تمہاری اس حرکت نے مجھے بہت ڈرا دیا تھا تم سے دوری کا خیال بھی میرا سانس لینا مشکل کردیتا ہے میں ابراہیم خان ادا کے بغیر کچھ بھی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اج ابراہیم کا یوں اعتراف محبت نہ جانے کیوں ادا کو اچھا لگ رہا تھا ابراہیم کتنی ہی دیر ادا کی گود میں سر رکھے بیٹھا رہا ادا بھی خاموش اپنے اندر کے خوف اور ڈر کو انسو کی شکل میں بہا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم اپنی انکھیں صاف کرتا کھڑا ہوا چلو سو جاؤ صبح سے یونی بھی جانا شروع کرو ۔۔۔۔۔
جی ادا اپنی انکھیں صاف کرتی ہوئی لیٹ گئی تھی
-------------------------------------------------
صبح ناشتے کے ٹیبل پر سب ادا کا خوشی سے چمکتا چہرہ نوٹ کررہے تھے ابراہیم کو بھی ادا بہت بدلی بدلی لگ رہی تھی ابراہیم ناشتہ ختم کرتے ہی ہاتھ صاف کرتا کھڑا ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اجاؤ جلدی جاتے ہوئے یونی چھوڑ دوں دونوں کو ۔۔۔۔
جی بھائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا بنا کچھ کہے ہی فرنٹ سیٹ سنبھال چکی تھی لیکن وہ پیچھے مُڑ مسلسل پاکیزہ کے ساتھ باتوں میں مصروف تھی اج کتنے دونوں بعد ابراہیم کو وہ پرانی ادا لگ رہی تھی پاکیزہ نے بھی ادا کو خوش دیکھ اللہ کا شکر ادا کیا ۔۔۔۔۔ 
جب فری ہوجاؤ مجھے میسیج کردینا میں اجاؤں گا انکو گاڑی سے اترتے ہوئے دیکھ ابراہیم نے کہا ۔۔۔۔۔۔
جی بھائی کردے گے ۔۔۔بائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بائے ادا نے بھی ہوا میں ہاتھ ہلایا ابراہیم بھی مسکراتا ہوا بائے بول کر روانہ ہوا
دانش گھر اگیا تھا لیکن غصہ پہلے سے بھی بڑھ گیا تھا زین صاحب نے اتے ہی خوب سُنائی اور ابراہیم سے معافی مانگنے کا بھی کہا اب وہ یہی سوچ پر اٹکا تھا کہ کیسے بدلہ لیا جائے بہت سوچنے کے بعد اسنے اپنا موبائل جیب سے نکالا اور ایک نمبر ملانے لگا ۔۔۔۔
روبی اب دیر نہیں کرنا چاہتی تھی اس لیے اج شام ہی وہ رشتے کے لیے جانا چاہتی تھی وہ سوچ رہی تھی ایسے  میں  دونوں گھروں میں کھڑی ہونے والی دیوار بھی گِر جائے گی۔۔۔۔۔۔۔۔
----------------------------
ابراہیم اج خود کو بہت ہلکا محسوس کررہا تھا اسکی وجہ ادا کا ہنستا مسکراتا چہرہ تھا وہ آفس پہنچ کر بھی ادا کو سوچ مسکرا رہا تھا اور بے صبری سے انکے میسیج کا انتظار کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
4 بجے ابراہیم کو پاکیزہ کا میسیج موصول ہوا۔۔۔۔۔۔۔
 بھائی ہم 5 منٹ میں فری ہوجائے گے آپ آجاؤ ۔۔۔۔
میسیج دیکھتے ہی ابراہیم گاڑی کی چابی پکڑے افس سے باہر ایا ۔۔۔۔30 منٹ کی ڈرائیو کر وہ یونی کے باہر کھڑا تھا ادا اور پاکیزہ  جو پہلے ہی اسکا انتطار کررہی تھیں اسے دیکھتے ہی اکر گاڑی میں بیٹھیں ۔۔۔۔۔۔
کیسا گزرا دن دونوں کا ابراہیم نے گاڑی اگے بڑھاتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔
بہت اچھا ۔۔۔  دونوں ہم آواز بول کر ہنسی ۔۔۔۔۔۔
ابراہیم بھی مسکرا دیا ۔۔ ۔
ادا  نے ترچھی نظروں سے ابراہیم کو مسکراتے ہوئے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ کھاؤ گی؟
نہیں بھائی بہت تھک گئے ہیں بس گھر چلے ۔۔۔۔۔۔۔
ادا تم بتا دو اگر کچھ کھانا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں ہم نے ابھی سموسے کھائے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب گھر جا کر کھانا ہی کھا لیتیں باہر کی چیزیں صحت کے لیے اچھی نہیں ہوتی ۔۔۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ادا کو اج ابراہیم کا کہنا برا نہیں لگا تھا شاید وہ سمجھ گئی تھی یہ کیئر کے علاوہ کچھ نہیں ہے ۔۔۔۔
پاکیزہ کو ادا کا بدلہ بدلہ رنگ دیکھ بہت پیار ایا ابراہیم انکو گھر کے باہر چھوڑ واپس آفس چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
-------------------------------
گھر میں رات کے کھانے کے لیے بہت اہتمام ہورہا تھا ادا اور پاکیزہ ہال میں بیٹھی سٹڈی کررہی تھیں لیکن مختلف کھانوں کی اتی خوشبوں انکو بھوک کا احساس کروا رہی تھی حماد اور علیزے ہال میں بیٹھے لڈو کھیل رہے تھے راحیلہ ان چاروں کے لیے چپس بناکر لائی تھی ۔۔۔۔  ۔   
چچی چپس کیوں اب تو کھانے کا ٹائم ہوگیا ہے پاکیزہ نے چپس منہ میں ڈالتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔
نہیں اج بھابھی کھانے پر ارہی ہے اسلیے کھانے میں تھوڑی دور ہوجائے گی اپ لوگوں کو چپس دی ہے کھاؤ اور اپنے کاموں میں لگے رہو راحیلہ مسکراتی ہوئی واپس کچن میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔
ادا اور پاکیزہ چپس کھاتے ایک دوسرے کو دیکھ ایک ہی پوائنٹ کو سوچ رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ دیر میں راحیلہ دوبارہ ہال میں ائی حماد اور علیزہ کے سامنے لڈو اٹھاتی ہوئی بولی ۔۔۔۔۔
چلو تم سب کمرے میں چلے جاوں وہی کھانا مل جائے گا اُٹھو شاباش ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ ،ادا، حماد، علیزے سب سیڑھیاں عبور کرتے ہوئے پاکیزہ کے روم کی طرف بڑھ گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نیچے روبی کلثوم تابشں اور زین صاحب خان محمد کے ساتھ آچکے تھے سب نے مل کر کھانا کھایا کلثوم کھانا کھاتے ہی پاکیزہ لوگوں کے پاس پہنچی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کلثوم ادا سے بہت شرمندہ تھی اسنے ملتے ہی پہلے ادا سے معافی مانگی ادا نے بھی کھلے دل سے معاف کیا اب وہ تینوں لڈو لے کر بیٹھی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب ہال میں بیٹھے چائے پینے میں مصروف تھے جب خان محمد نے اپنی بات شروع کی ۔۔۔۔۔۔۔۔
خان میں اج یہاں بری ضروری بات کرنے  ایا ہوں اور مجھے یہ بھی یقین ہےتو میری بات کا جواب میرے مطابق ہی دے گا ہم نے شروع سے ہی پاکیزہ کو اپنی بیٹی سمجھا ہے اور اسے تابش کے لیے سوچا ہے یہ بات ہمارے گھر میں بہت بار ہوئی لیکن تجھ سے کرنے کے لیے ہم سہی وقت کا انتظار کررہے تھے
تو کیا یہ وقت اب سہی ہے؟
سب سے پہلا سوال ابراہیم کی طرف سے ایا تھا ۔۔۔
ابراہیم پتر تیری بات میں سمجھ گیا ہوں لیکن دیکھ خان محمد  اب دانش نے جو کیا وہ غلط تھا لیکن اب ہم بچے کی بیوقوفی کی وجہ سے اپنے برسوں پرانے تعلقات خراب نہیں کرسکتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہہ تو تم ٹھیک رہے ہو خان محمد لیکن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن ویکین کچھ نہیں بس ہماری بیٹی ہمیں سونپ دیں رحیم بھائی روبی نے بہت امید سے رحیم صاحب کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔
دادو اور خان صاحب نے ابراہیم کی طرف دیکھا جیسے جواب چاہ رہے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دادا، جان تابش بہت اچھا لڑکا ہے اس میں کوئی شک نہیں وہ میری بہن کو بہت خوش رکھے گا لیکن پھر بھی میں پاکیزہ کی مرضی پوچھے بغیر کچھ نہیں کہوں گا ابراہیم نے اپنی بات پوری کرتے ہی راحیلہ کی طرف دیکھا جو اپنا سانس روکے سب سُن رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
راحیلہ ابراہیم کا اشارہ س سمجھتے ہی پاکیزہ کے روم کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ مجھے ابراہیم نے بھیجا ہے بھابھی تمہارا رشتہ لے کر ائی ہے لیکن ابراہیم تمہاری مرضی جاننا چاہ رہا ہے راحیلہ نے کھڑے کھڑے ہی اپنی بات کہہ دی ۔۔۔۔
پاکیزہ جو اپنا سارا دماغ گیم میں لگائے کھیل رہی تھی اچانک سے ایسی بات سن کنفیوز ہوئی ۔۔۔۔۔۔
چچی  جیسا اپ سب چاہے مجھے کوئی اعتراض نہیں بھائی جو بھی فیصلہ کرے میں اس مے خوش ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا تو ابراہیم کے پوچھنے پر ہی حیران سی پاکیزہ کی طرف دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راحیلہ نے نیچے اتے ہی خوشخبری سنائی سب خوش ہوگئے سب کا منہ میٹھا کروایا گیا تابش کو جیسے اپنی خوشی سنبھالنا مشکل لگ رہا تھا وہ یہ مواقع گنوانا نہیں چاہتا تھا اسنے اپنا منہ ابراہیم کی طرف موڑتے ہوئے بغیر کسی ڈر کے اپنے دل کی بات کہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم میں ایک بار پاکیزہ سے بات کرنا چاہتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں تم دونوں کو ایک بار بات کر لینی چاہیے  تم لان میں ویٹ کرو میں پاکیزہ کو بھیجتا ہوں ابراہیم نے کھڑے ہوتے ہوئے کہاں ۔۔۔۔۔۔۔
وہ تیزی سے سیڑھیاں عبور کرتا ہوا پاکیزہ کے روم میں پہنچا پاکیزہ بھائی کو دیکھ پہلی بار کنفیوز ہوئی بھائی؟
ابراہیم نے اگے بڑھ کر پاکیزہ کے سر پر شفقت بھرا ہاتھ رکھا پاکیزہ فوراً بھائی کے ساتھ لپٹی نہ جانے کیوں دونوں کی انکھوں میں نمی اتر ائی تھی ۔۔۔۔۔۔
ادا بھی نم انکھوں سے دونوں کو دیکھ رہی تھی  ابراہیم باہر سے خود کو جتنا بھی مضبوط مرد دیکھائے اندر سے اتنے ہی نرم دل کا مالک ہے ادا نے سوچتے ہوئے اپنی گال پر گِرے آنسو صاف کیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ جاؤ باہر لان میں تابش ایک بار خود تم سے بات کرنا چاہتا ہے ابراہیم نے پاکیزہ کو خود سے الگ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
بھائی میں کیا بات کروں گی؟
اب یہ بھی میں بتاؤں گا ابراہیم نے پاکیزہ کے سر پر مصنوعی تھپڑ لگاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
جاؤ ایک بار بات کرلو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ تنگ ذہین کا انسان تو بلکل نہیں ہے تو کیا وہ سب محبت میں کی جانے والی فکر تھی کیئر تھی وہ تو شاید اپنی قیمتی شے کی طرح مجھے سنبھالنا چاہ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 ابراہیم کے جاتے ہی ادا نے زبردستی پاکیزہ کو نیچے بھیجا ۔۔۔۔
پاکیزہ سب کی نظرو سے خود کو بچاتی ہوئی لان کی طرف بڑھ گئی اج پہلی بار وہ تابش سے اکیلے میں مل رہی تھی ورنہ ہمیشہ سے سب کے سامنے کی نارمل علیک سلیک ہی ہوا کرتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ نے کبھی تابش کے بارے میں ایسا نہیں سوچا تھا لیکن اج تابش تک پہنچتے پہنچتے اس کی دھڑکن بے قابو ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسلام وعلیکم!  پاکیزہ کو دیکھتے ہی تابش  کھڑا ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔پاکیزہ نے بھی دھیمی آواز میں جواب دیا  وہ پینٹ کے ساتھ گولڈن کلر کا کُرتا پہنے بالوں کی ٹیل پونی کیے بہت پیاری لگ رہی تھی ۔۔۔۔
بیٹھے۔۔۔۔ تابش  پاکیزہ کو بیٹھنے کا کہہ کر خود بھی اپنی جگہ پر بیٹھ چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
وہ نظریں زمین پر گاڑے کرسی پر بیٹھ چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اپ سے  خود پوچھنا  چاہتا تھا اپکو اس رشتے سے کوئی اعتراض تو نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے ماما بابا میرے لیے بہتر فیصلہ کریں گے میں انکے ہر فیصلے میں انکے ساتھ ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یعنی میں یہ مان لوں اپ خوش ہے؟
تابش نے اپنے تیز ہوتی سانس کو قابو کرتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔
میں نے کہا نہ میں اپنوں کی خوشی میں خوش ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تابش مسلسل پاکیزہ پر نظریں جمائے تھا اسکے برعکس پاکیزہ نے ایک نظر بھی تابش کی طرف نہیں دیکھا ۔۔۔۔۔۔
لیکن میں کچھ بتانا چاہتا ہوں پاکیزہ ۔۔۔۔۔
اسے تابش کی آواز میں بہت اپنائیت محسوس ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اپ سے بہت محبت کرتا ہوں یہ میں بھی  نہیں جانتا کب سے لیکن جب جب آپکو دیکھا ہے میرے دل نے اپ سے محبت کی گواہی دی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ کو اپنا دل زورو سے دھڑکتا محسوس ہوا اسنے جھٹ سے نظریں اٹھا کر تابش کی طرف دیکھا جو پہلے ہی اس پر نطریں جمائے تھا وہ دوبارہ نظریں جُھکا گئی ۔۔۔۔۔۔
مجھے اندر جانا چاہیے اب ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ضرور کیا میں اپکو فون کرسکتا ہوں؟
جی کر لیجئیے گا وہ کہتے ہی رُکی نہیں اندر کی طرف بھاگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
----------------------------
رات سب سونے کے لیے لیٹ گئے تھے ادا پاکیزہ کی جان نہیں چھوڑ رہی تھی بتاو بھی کیا کہا تابش بھائی نے ادا دسویں بار یہ سوال کررہی تھی جس کا ہر بار ایک ہی جواب مل رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سچی کچھ خاص نہیں بس پوچھ رہے تھے کوئی اعتراض تو نہیں میں نے کہا نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ادا بس بھی کردو یار کیوں تنگ کررہی ہو جاؤ بھائی انتظار کررہے ہو گے تمہارا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ  کا چہرہ شرم کے مارے لال ہورہا تھا ادا اسے جی بھر کے تنگ کر اپنے روم میں ائی تھی جہاں ابراہیم ابھی تک افس ورک کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابی بس کردو گھر بھی اتنا کام لے اتے ہو ادا نے کمرے میں اتے ہی کہا ۔۔۔۔
چائے لادوں؟
ابراہیم نے بہت پیار بھری نظروں سے ادا کی طرف دیکھا اچھا کام نہیں کروں گا تو تمہیں تنگ کروں گا وہ کہتے ہی اپنی جگہ سے اُٹھ ادا کے قریب ایا ۔۔۔۔۔
میں نے چائے کا پوچھا ادا دو قدم پیچھے ہوتے ہوئے بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے بھی کچھ کہا وہ نہیں سُنا اسنے ادا کو اپنی بانہوں میں لیا ۔۔۔۔۔۔
ابی نہ تنگ کرے پلیز  ۔۔۔۔۔۔اج اسے ابراہیم سے ڈر نہیں لگ رہا تھا وہ بہت مضبوط لہجے میں بات کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور اگر تمہاری بات نہ مانوں تو؟  اس نے ادا کی ناک کو انگلی سے چھوا ۔۔۔۔۔۔
اپ میری بات ٹال ہی نہیں سکتے اسنے ابراہیم کی انکھوں میں دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اتنا یقین؟
جی بلکل ۔۔۔۔اسنے خود کو ابراہیم سے آزاد کرواتے ہوئے کہا ۔۔۔
میں چائے لا رہی ہوں جلدی سے لیپ ٹاپ بند کرو ۔۔۔۔
جو حکم جان ابراہیم مسکرایا ۔۔۔۔۔
ادا جاتے جاتے پلٹی ۔۔۔۔۔
ابی؟
جی میری جان ۔۔۔۔۔۔۔۔
تم مسکراتے ہوئے زیادہ پیارے لگتے ہو وہ کہتے ہی چلی گئی تھی ۔۔۔
ابراہیم کی حیرت سے انکھیں باہر انے کو تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دس منٹ میں ادا چائے لیے کمرے میں ائی ابراہیم ابھی بھی لیپ ٹاپ پر کام کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
ادا اپنا کپ اُٹھائے بالکونی میں کھڑی ہوگئی تھی جہاں سرد ہوا کے جھونکے سکون دے رہے تھے ابراہیم بھی اپنا کپ تھامے ادا کے ساتھ  کھڑا ہوا ۔۔۔۔
کیا سوچ رہی ہو؟
کچھ بھی نہیں وہ سِپ لیتے ہوئے بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔
بتا بھی دو اب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ کی شادی ہوجائے گی تو میرا دل نہیں لگے گا وہ مسکرائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہاہا سچ میں تم یہ سوچ رہی تھی؟
ہنس کیوں رہے ہو؟  ابی پلیز ہنسو تو نہیں نہ ۔۔۔۔
ابھی تو میری تعریف کر کے گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی لیکن میری بات کا مذاق نہ اُڑائے ادا روہانسی ہوئی۔۔۔۔
اچھا بتاؤ کیوں دل نہیں لگے گا اپنے دل کو میرے دل کا پتہ دینا اسنے ادا کے بال کان کے پیچھے کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اپنی نظریں جُھکا گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
--------------------------

صبح پاکیزہ یونی کے لیے تیار ہورہی تھی مسلسل موبائل پر اتی کال اسے پریشان کررہی تھی پتہ نہیں کس کو صبح صبح ایمرجنسی پر گئی ہے وہ کلائی پر گھڑی بندھتے ہوئے موبائل کی طرف بڑھی ۔۔۔
یہ کس کا نمبر ہے؟ وہ کال رسیو کرتے ہوئے بربرائی ۔۔۔۔۔۔
اسلام و علیکم ۔۔۔۔۔۔۔۔
وعلیکم السلام ۔۔۔۔جی کون پاکیزہ نے بیذاری سے پوچھا وہ فون کو کندھے کا سہارا دیتی ہوئی بیگ چیک کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔
تابش بات کر رہا ہوں ۔۔۔۔
اہ پاکیزہ کا موبائل گرتے گِرتے بچا ۔۔۔۔
اپ؟
جی کیا حال ہے؟
الحمدالله ٹھیک ہوں ۔۔۔۔۔
میرا نہیں پوچھو گی؟
وہ مجھے یونی کے لیے لیٹ ہوجائے گا نیچے بھائی ویٹ کررہے ہے ۔۔۔۔۔
سوری یونی کا میرے ذہین میں نہیں رہا ۔۔۔۔
نہیں سوری تو نہیں بولے اپ ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے میں رات کو کال کروں گا اللہ حافظ ۔۔۔
جی اللہ حافظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ جلدی سے ناشتے کے ٹیبل پر پہنچی ۔۔۔۔
کہا رہ گئی تھی پاکیزہ؟ بیٹا زکیہ نے ناشتہ سرو کرتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔
ماما بک ڈھونڈ رہی تھی لیٹ ہوگئی ۔۔۔۔۔۔۔
ادا مسکراتے ہوئے پاکیزہ کی طرف دیکھا جیسے اسکا جھوٹ پکڑ چکی ہو ۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ نے بھی انکھیں دیکھائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
-------------------------------
حیا آج تم ابراہیم کے روم میں جاؤ گی اور جیسا میں کہوں ویسا کرو گی ۔۔۔۔لیکن کیا؟
وہ میں تمہیں سمجھا دونگا بس کچھ دن خوش ہو جاؤ ابراہیم پھر تمہارے برے دن شروع ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانش ہدایات پانے والوں میں سے ہرگز نہ تھا وہ اج بھی اتنا ہی گندا ذہین رکھتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
اسنے اپنے پلین کے مطابق حیا کو سمجھایا کیسے وہ ابراہیم کے قریب جائے جسکا فائدہ اٹھاتے ہوئے وہ دونوں کی تصویریں لے سکے حیا نے بھی پلین کو کامیاب بنانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی تھی وہ ابراہیم کے افس میں گئی اسکے سر پر سوار جھک کر اسے فائل دیکھانے لگی جیسے ہی وہ سیدھی ہونے لگی جان بوجھ کر وہ ابراہیم پر گری جس کو دانش مختلف پوز میں موبائل میں سیو کرچکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔
-----------------------
رات پاکیزہ سونے کے لیے لیٹی ہی تھی کہ موبائل بجنے لگا ۔۔۔۔
نمبر دیکھتے ہی دھڑکتے دل کے ساتھ وہ اٹھ بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اسلام وعلیکم!
و علیکم السلام ۔۔۔۔سو تو نہیں گئ تھی؟
نہیں بس سونے کے لیے لیٹی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا فون کرنا بُرا تو نہیں لگا ۔۔۔ ؟؟؟؟؟
نہیں ۔۔۔۔۔
وقت گزر رہا تھا ادا کو، ابراہیم کی عادت سی ہوگئی یا پھر محبت وہ روز چائے بنا کر لے جاتی اور کتنی دیر ابراہیم کے ساتھ بیٹھ باتیں کرتی  گھر فنکشن کی تیاریاں چل رہی تھی ابراہیم کے رسپشن کے ساتھ پاکیزہ کا نکاح طے پایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابی مجھے شاپنگ پر جانا ہے ادا یونی جانے کے لیے تیار ہورہی تھی جب بُرا سا منہ بنا کر ابراہیم کو دیکھا ۔۔۔۔
تو چلی جاو پاکیزہ نے بھی تیاری کرنی ہے تم دونوں ماما کے ساتھ چلیں جانا اسنے اپنی فائل ڈھونڈتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے تمہارے ساتھ جانا ہے  ابی ۔۔۔۔
ابراہیم کو تو جیسے اپنی سماعت پر یقین نہیں ایا اسنے نظریں اٹھا کر ادا کی طرف دیکھا جو اپنے بالوں کو پونی میں قید کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم ادا کے پیچھے اکر کھڑا ہوا تھا ادا شیشے سے اُسے دیکھ جواب کا انتظار کررہی تھی اسنے ادا کے گرد اپنی بانہیں پھیلائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے ساتھ ہی کیوں؟
ویسے ہی ۔۔۔۔۔۔
ابراہیم کو بہت پیار ایا تھا ادا پر اج پہلی دفعہ اسنے کوئی فرمائش کی تھی وہ بھی اتنی خوبصورت ۔۔۔۔۔
وہ نظریں جھکائے سامنے پڑے ہیئر پرش کو دیکھ رہی تھی اب اسے ابراہیم کا یوں قریب انا برا نہیں لگتا تھا اب تو ابراہیم آفس سے لیٹ ہوجاتا تو اسے بے چینی ہونے لگتی وہ رات کا انتظار بے صبری سے کرتی کہ وہ ابراہیم کے لیے چائے بنائے اور خوب باتیں کرے لیکن وہ اپنی فلیگ ابراہیم کو بتا نہیں پارہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم  نے اسکا رُخ اپنی طرف موڑا اور اسکی پیشانی پر پیار کیا ادا ابراہیم کی شرٹ کو مضبوطی سے تھامے تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اج شام کو چلے گے شاپنگ پر اوکے؟  ابراہیم کہتے ہی دوبارہ فائل ڈھونڈنے لگا ادا بھی اپنے دل کو قابو میں کیے دوبارہ تیاری میں لگ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
--------------------------------------------
وقت گزر رہا تھا جیسا کہ اسکا کام ہی گزرنا ہے اس دران تابش روز کال کرتا لیکن پاکیزہ نے کبھی بھی 5 منٹ سے زیادہ بات نہیں کی جب بھی کال اتی پاکیزہ کو  بات کرنے کے لیے الفاظ ہی نہ ملتے تابش کے لیے تو اتنا ہی کافی تھا پاکیزہ کی آواز سُننے کو مل جاتی ادا کے تعلقات اپنے والدین کے ساتھ بھی بحال ہوگئے گھر میں سب خوش تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اج دانش یونی پہنچا تھا کافی کوشش کے بعد اسے ادا نظر ائی اسنے ہاتھ میں پکڑا لفافہ کسی لڑکے سے کہہ کر ادا تک پہنچایا
خود وہی کھڑا دیکھنے لگا ادا نے پکڑتے ہی اسے کھولا اور جس میں سے چند تصویریں ادا کی گود میں گِری جن کو دیکھ اک پل تو ادا کا دماغ گھما تھا ابراہیم اپنی کرسی پر بیٹھے کسی لڑکی کو تھامے تھا
لیکن ادا کو ابراہیم کی محبت نے بدل دیا تھا اب وہ ایک جذباتی لڑکی نہیں تھی اسکے دل نے ابراہیم کی حق میں گواہی دی مجھے انکے ساتھ ایک کمرے میں رہتے ہوئے 3مہینے ہوگے ہے لیکن اس نے کبھی مجھ پر اپنی مرضی مسلط نہیں کی میں جانتی وہ یہی چاہتا ہے میں یہ رشتہ دل سے قبول کروں لیکن میں اسکی بیوی تھی وہ چاہتا تو اپنی مرضی کو بھی ترجیح دے سکتا تھا ایسا انسان یہ حرکت نہیں کرسکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانش دور کھڑا ادا کو گہری سوچ میں ڈوبا دیکھ محفوظ ہورہا تھا لیکن اگلے ہی پل وہ حیران ہوا ادا تصویرو کو پھاڑ پھیک رہی تھی دانش کچھ سوچتا ہوا چہرے پر غصہ لیے وہاں سے چلا گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چھوڑوں گا، تو نہیں ابراہیم تمہیں اتنے سکون سے نہیں رہنے دوں گا تمہیں تم ہمیشہ سے جیتتے ائے ہو لیکن اس بار تمہیں ہارنا ہوگا دانش گھر پہنچتے ہی روالور ڈھونڈنے لگا وہ جانتا تھا ابراہیم پاکیزہ ادا کو یونی سے پک کرنے جاتا ہے دانش روالور لیے یونی کے سامنے چُھپ کر اسکا ویٹ کرنے لگا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
دو گھنٹے بعد اسے ابراہیم کی گاڑی اتی دیکھائی دی گاڑی دیکھتے ہی ادا اور پاکیزہ بھی وہاں اگئی تھیں ۔۔۔۔۔۔
دانش نے اپنی پوزیشن سنبھال لی تھی ابراہیم گاڑی سے باہر ایا تھا تم دونوں زیادہ نہیں تھکی تو مارکیٹ چلے؟  ضروری ہے ابھی؟  پاکیزہ تھکی ہوئی تھی اسکا تو مارکیٹ کا سن کر منہ ہی لٹک گیا تھا ۔۔۔۔۔
چلو رہنے دو گھر جاکر ریسٹ کرو شام میں چلے گے
تمہیں کچھ دکھانا تھا ادا نے سوالیہ نظروں سے ابراہیم کی طرف دیکھا دراصل ابراہیم پاکیزہ کی شادی کا تحفہ اسے ساتھ لے جاکر لینا چاہ رہا تھا لیکن پاکیزہ کے منہ بنانے سے ہی اس کی تھکاوٹ کا اندازہ لگا چکا تھا۔۔۔۔۔۔
 دانش روالور سے گولی نکال چکا تھا لیکن ابراہیم پلٹا تھا اور گولی سامنے کھڑی پاکیزہ کو جا لگی تھی ادا کی چیخ پر ابراہیم نے پیچھے دیکھا تھا
 وہ کچھ سمجھ نہیں پارہا تھا دماغ تو جیسے سُن ہوچکا تھا لوگ جمع ہوگئے تھے ادا پاکیزہ کا سر گود میں رکھے چیخ رہی تھی
 ابی پلیز ہوسپٹل چلے پلیز ابی جلدی کرے ادا نے پاکیزہ کا سر زمین پر رکھ اسے جھنجھوڑا تھا،
ابی چلے بھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا؟  ابی کے منہ سے بے اختیار نکلا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوسپٹل چلے پلیز۔۔۔
 ابراہیم ہوش میں اتے ہی پاکیزہ کو گاڑی میں ڈالے ہوسپٹل کی طرف گاڑی بھاگا دی ادا مسلسل پاکیزہ کا منہ تھپتھپاتے اسے پکار رہی تھی پاکیزہ پلیز انکھیں کھولو اُٹھو پلیز پاکیزہ انکھیں کھولو وہ چیخ رہی تھی لیکن اس وجود میں کوئی حرکت نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Don't copy or paste anywhere without my permission..

ابراہیم نے ہوسپٹل پہنچ گھر فون کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا اور ابراہیم آپریشن تھیٹر کے باہر بیٹھے تھے ادا تو اپنے آنسو صاف کرتی دعائیں مانگ رہی تھی لیکن ابراہیم انکھیں بند کیے دیوار سے ٹیک لگائے کیا سوچ رہا تھا ۔۔۔۔
کہاں ہے پاکیزہ میری بچی زکیہ کی آواز پر ابراہیم نے انکھیں کھولی وہ کسی چھوٹے بچے کی طرح ماں سےلپٹا ۔۔۔۔۔۔۔
ماما آپ دعا کریں اللہ سے پاکیزہ کو کچھ نہ ہو وہ رو رہا تھا رابعہ نے بہت مشکل سے ماں بیٹے کو الگ کیا تھا ادا نے ابراہیم کے کندھے پر ہاتھ رکھ اسے تسلی دینی چاہی ادا  خود کس ڈر کے حصار میں تھی اسے اپنا کھڑا رہنا مشکل لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پولیس کو انفارم کردیا گیا تھا یونی کے گیٹ پر لگے کیمرے سے بہت مدد ملی تھی اس میں صاف دانش روالور چلاتا ہوا دیکھائی دے رہا تھا اب اسے ڈھونڈنا باقی تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر باہر آیا تو ابراہیم نے اپنے کندھے پر رکھا ادا کا ہاتھ مضبوطی سے پکڑا سب اپنی سانس روکے ڈاکٹر کی طرف سوالیہ نظروں سے دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اب خطرے سے باہر ہے گولی دل کے قریب لگی تھی یہ سمجھے کہ اللہ نے اپکی دعائیں قبول کرلی ہے اپ کو انکا بہت خیال رکھنا ہوگا انکو ریکور کرنے میں ٹائم لگے گا ۔۔۔۔۔۔۔
ہم مل سکتے ہیں؟  زکیہ فوراً بولی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں ابھی وہ ہوش میں نہیں ہے ہوش میں اتے ہی انکو روم میں شفٹ کردیا جائے گا پھر اپ مل سکتے ہیں ۔۔۔۔۔۔
روبی سُنتے ہی تابش کے ساتھ ہوسپٹل پہنچی تھی بھابی کیسی پاکیزہ ؟
اللہ کا شکر ہے اب خطرے سے باہر ہے ۔۔۔۔۔
مجھے معاف کردیں مجھے دانش کو جیل سے نکلوانے کا نہیں کہنا چاہیے تھا ۔۔۔۔۔۔
روبی واقعی بہت شرمندہ تھی ۔۔۔۔۔
بچے غلط کریں تو اس میں ماں باپ کا کیا قصور ہے بھابھی اپ پریشان نہیں ہو اللہ نے میری بیٹی کو زندگی بخشی میں اسکی شکرگزار ہوں ۔۔۔۔۔
ابراہیم کی نظر تابش پر پڑی جو منہ لٹکائے سائیڈ پر کھڑا تھا چہرے پر فکر پریشانی صاف جھلک رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم نے اگے بڑھ کر تابش کے کندھے پر ہاتھ رکھا وہ بھی تو اپنی بہن کے لیے خوش تھا اللہ نے اسکی دعائیں رد نہیں کی تھیں اسکی پیاری بہن زندگی کی طرف لوٹ ائی تھی ۔۔۔۔
وہ ٹھیک ہے تم پریشان نہیں ہو تابش نے تو جیسے ابراہیم کے تسلی دینے سے سکون کا سانس لیا تھا ورنہ کون کون سے خیالات اسکو ستا رہے تھے  ۔۔۔۔۔۔
انکو روم میں شفٹ کردیا ہے اپ مل سکتے ہیں لیکن  سب اکٹھے نہیں چلے جانا سسٹر نے سب کی طرف دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔
لیکن کون رکنے والا تھا سب ہی پاکیزہ کے سر پر سوار تھے  سب نے اسنے دیکھ سکون کا، سانس لیا تھا وہ سب کو دیکھ منہ پر آکسیجن ماسک  لگنے کے باوجود ہلکہ سا مسکرائی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
-------------------------------------
دانش گرفتار ہوچکا تھا اور اس بار کسی نے اسکی رہائی کروانے کی کوشش نہیں کی دن گزر رہے تھے سب پاکیزہ کا بہت خیال رکھ رہے تھے وہ جلد صحت یاب ہورہی تھی روبی اور خان محمد دو بار پاکیزہ کا حال احوال پوچھ گئے تھے تابش روز پاکیزہ کو کال کرتا مشکل سے دو منٹ ہی بات ہوتی جس میں صرف علیک سلیک کے بعد حال پوچھا جاتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا سوچا ہے پھر شادی اپنے مقررہ وقت پر ہی کرنی ہے یا؟
اج خان محمد سپشلی شادی کی بات کرنے ہی ایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شادی اپنے مقررہ وقت پر ہی ہوگی لیکن دادا جان اپ یہ مت سوچیئے گا شادی کے بعد دانش کے بارے میں رعایت کی جائے گی میں تو اب اس شادی کے حق میں ہی نہیں ہوں بس دادا جان کی خواہش کو نظر انداز نہیں کرسکتا اور تابش میں بھی کوئی برائی نہیں جس کو جواز بنایا جائے ۔۔۔۔۔
نہیں ابراہیم پُتر تو فکر نہ کر دانش اب جیل میں ہی رہے ہمیں ایسے بیٹے کی کوئی ضرورت نہیں ہے ہمارا ایک ہی بیٹا ہے تابش خان محمد دکھی ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔
-----------------
جان جی اُٹھ جاؤ اج لہنگا لینے جانا ہے ادا نے کمرے میں اتے ہی پاکیزہ کا کمبل کھنچا ۔۔۔۔۔۔۔
ادا جانی پلیز تھوڑا سا اور سونے دو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلکل بھی نہیں ابھی اُٹھو جلدی ابھی کلر بھی سلیکٹ کرنا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
ادا فل موڈ میں ائی تھی پاکیزہ کو اُٹھنا ہی پڑا ۔۔۔۔۔
پاکیزہ میں سوچ رہی تھی تم ریڈ کلر کا لہنگا پہننا بہت سوٹ کریں گا تمہیں ۔۔۔۔۔۔
چلو کلر سلیکٹ ہو گیا؟
میں سو جاؤں؟  پاکیزہ دوبارہ لیٹی تھی ۔۔۔۔
اوکے میں جارہی ہوں ۔۔۔۔
ہاہاہا مذاق کررہی تھی میری جان ادھر اؤ جلدی سے بتاؤ کب جانا ہے بھائی کے ساتھ جانا ہے کیا؟
------------------------------------------
اج پاکیزہ کی مہندی تھی فنکشن میرج ہال میں ایک ساتھ ہی کیا گیا تھا پاکیزہ گرین کلر کا لہنگا پہنے اور تابش سفید شلوار کے ساتھ گولڈن کُرتا پہنے تھا انکی جوڑی کسی شہزادے شہزادی کی جوڑی سے کم نہیں لگ رہی تھی سب لوگ انہیں دیکھ رشک کررہے تھے ادا بھی گرین کلر کی فراک جو پاؤں تک ارہی تھی سائیڈ پر دوپٹہ سیٹ کیے بہت پیاری لگ رہی تھی وہ کب سے ابراہیم کو تلاش کررہی تھیں لیکن وہ کہی نظر نہیں ارہا تھا
15 منٹ بعد ابراہیم اتا ہوا دیکھائی دیا ادا اسے دیکھتے ہی اسکی طرف بڑھی ابی کہا گئے تھے میں کب سے ڈھونڈ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
اچھا وہ کیوں ابراہیم نے شرارت بھری مسکراہٹ سجائے پوچھا ۔۔۔۔
ادا فوراً نظریں جُھکا گئی ویسے ہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاتھ دو  ۔۔۔۔۔۔۔۔ابراہیم نے اپنا بڑھاتے ہوئے کہا
اسنے اپنا ایک کے بعد ایک ہاتھ اگے بڑھایا جس میں ابراہیم پھولوں کے گجرے پہنا چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
تھینکیو ابی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابراہیم اسکی ناک کو چھوتا ہوا اگے بڑھ گیا ۔۔۔ ۔
مہندی کے فنکشن کے بعد سب تھکے ہارے گھر پہنچے اپنے اہنے کمروں میں گھس گئے تھے ابراہیم پاکیزہ کے روم میں ایا اسکا انتطار کررہا تھا وہ چینچ کر کے باہر نکلی تو ابراہیم کو دیکھ مسکرا دی ۔۔۔۔۔
بھائی؟  اپ کب ائے؟
ابھی ایا ۔۔۔۔۔یہاں او میرے پاس بیٹھو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ ہاتھوں کو لوشن لگاتی ہوئی بھائی کے پاس اکر بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
طبعیت کیسی ہے؟  ابراہیم کو پاکیزہ بہت تھکی تھکگیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔
بلکل ٹھیک پاکیزہ اپنے ہاتھوں سے ابراہیم کا بازوں پکڑ کر اسکے کندھے سے ٹیک لگائے اپنی انکھیں موند گئی تھی ۔۔۔۔۔
ابراہیم دوسرے ہاتھ سے اسکے بال سہلانے لگا ۔۔۔
خوش ہو؟
جی …………
ایک پرامس لینے ایا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی بولے پاکیزہ انکھیں موندے ہی بات کررہی تھی  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس گھر میں کوئی بھی پرابلم ہو تو تم مجھے فوراً کال کرو گی  کوئی بھی کسی بھی قسم کا مسئلہ ہو مجھ سے کبھی نہیں چُھپاؤ گی تمہارا یہ بھائی ہمیشہ ہر حال میں تمہارے ساتھ کھڑا ملے گا ۔۔۔۔۔
میں جانتی بھائی اور اپ اپنے دل سے سارے خدشات نکال دیں کچھ نہیں ہوگا سب ٹھیک ہو گا اب کیوں اتنا نیگٹیو سوچ رہے ہو ۔۔۔۔۔۔
اللہ کرے ایسا ہی ہو ابراہیم کو محسوس ہورہا تھا جیسے پاکیزہ سو رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو اُٹھو سو جاؤ تھک گئی ہو ۔۔۔۔
پاکیزہ واقعی ہی آدھی نیند میں تھی وہ اُٹھ کر بیڈ تک گئی ۔۔۔۔۔۔
بھائی؟
جی ابراہیم دروازے سے پلٹا ۔۔۔۔۔
وہ اگے بڑھ بھائی کے گلے لگی  l love you so much bhai....
 I love you 2 meri Jan  اللہ میری بہن کو ہمیشہ خوش رکھے نہ چاہتے ہوئے بھی دونوں کی انکھیں نم ہوئی تھی ابراہیم نہیں چاہتا تھا پاکیزہ اب رو پڑے وہ اسے پیچھے کرتا ہوا کمرے سے جا چکا تھا پاکیزہ بھی انکھیں صاف کرتی ہوئی لیٹ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اپنے کمرے میں ایا تو ادا سو چکی تھی وہ بھی شاید بہت تھک گئی تھی ابراہیم بھی لائٹ اوف کر لیٹ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صبح کا آغاز ہو چکا تھا گھر میں بھاگم بھاگ لگی ہوئی تھی زکیہ کب سے پاکیزہ کے پاس جانے کا سوچ رہی تھی لیکن کام ہی ختم ہونے کا نام نہیں لے رہے تھا ۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ خود ہی نیچے ماما کو ڈھونڈتی ہوئی کچن میں پہنچی  ۔۔۔۔۔۔
ماما ۔۔۔۔۔پاکیزہ نے کام کرتی ماں کو پیچھے سے اکر اپنی بانہوں میں لیا ۔۔۔۔۔
بولو میری جان ۔۔۔۔۔۔۔
اپنے ہاتھ سے اچھا سا ناشتہ بنا دیں ۔۔۔۔۔۔۔۔
بیٹھو میری بچی زکیہ نے اپنی بیٹی کے ماتھے کو چوما ۔۔۔۔۔۔۔
ماما ۔۔۔۔۔۔اب پاکیزہ سامنے سے ماما کے گلے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی  کیا ہوا؟
میں اپ کو بہت مس کروں گی پاکیزہ کہتے ہی رو دی تھی  ۔۔۔۔
نہ میری بچی روتے نہیں اللہ میری بیٹی کی قسمت اچھی کرے ۔۔۔۔۔۔
ارے یہاں کیا ہورہا ہے ؟
ادا نے کچن میں اتے ہی ماحول ٹھیک کرنے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے پریشان کررہی ہے ادا دیکھو بچوں کی طرح لپٹی ہے چلو بیٹھو تم دونوں ناشتہ کرو پھر پارلر بھی جانا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادا نے اگے بڑھ کر پاکیزہ کو سنبھالہ ۔۔۔۔۔۔۔

--------------------------------------

اج پاکیزہ  نے سکین کلر کا لہنگا جس پر سیلور کام ہوا تھا ریڈ دوپٹے کے ساتھ پہنا تابش سکین شیروانی پہنے پاکیزہ کے ساتھ بیٹھا تھا دونوں بہت پیارے لگ رہے تھے دوسری طرف ادا لائٹ پنک کالر کے لہنگے میں بہت پیاری لگ رہی  تھی ساتھ بیٹھے ابراہیم نے پینٹ کوٹ پہن رکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
لوگ دونوں جوڑیوں کو رشک کی نگاہوں سے دیکھ رہے تھے پاکیزہ کے نکاح کے بعد کھانا کھایا گیا اور رخصتی کا ٹائم آ پہنچا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو کہ ہر لڑکی کے لیے بہت مشکل مرحلہ ہوتا ہے پاکیزہ کے لیے بھی اتنا ہی مشکل تھا وہ سب سے مل کر بہت روئی اپنے ساتھ ساتھ سب گھر والوں کو بھی رولا کر وہ رخصت ہوچکی تھی مہمانوں کو رخصت کر سب گھر کی طرف روانہ ہوئے ۔۔۔۔۔
پاکیزہ راستے میں بھی بار بار اپنے آنسوں صاف کررہی تھی تابش نے پاکیزہ کے ہاتھ کو تھام اسے چُپ ہونے کے لیے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
وہ گھر پہنچ گئے تھے کلٹوم نے پاکیزہ کا لہنگا سنبھالتے ہوئے اسے کمرے میں پہنچایا تھا وہی تھوری بہت رسمیں کی گئی پاکیزہ اب کافی حد تک سنبھل چکی تھی وہ کلثوم کی کسی بات پر ہنسی تھی جب تابش کمرے میں ایا تھا پاکیزہ اسے دیکھتے ہی اپنا دوپٹہ ٹھیک کرتی ہوئی سیدھی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔
ہیلو بھائی کدھر؟  کلثوم بھائی کی طرف بڑھی پہلے پیسے دینے تھے پھر اندر انا تھا ۔۔۔۔
پیسے کیوں؟
کیوں کیا رسم ہے بھائی ۔۔۔۔۔۔
جلدی کرے پیسے نکالے کلثوم نے اپنا ہاتھ بڑھایا ۔۔۔۔۔۔
تابش نے اپنا پرس نکال کلثوم کے ہاتھ پر رکھا ۔۔۔
لو جتنے چاہیے لے لو ۔۔۔
واہ چلے میں سارے ہی رکھ لیتی وہ کہتے ہی روم سے چلی گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ کو، اپنے ہاتھ کانپتے ہوئے محسوس ہورہے تھے
اسلام وعلیکم!
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسی ہو؟
ٹھیک ۔۔۔۔۔۔۔
 تابش نے پاس بیٹھتے ہی اپنی جیب سے منہ دیکھائی کے لیے لی گئی رِنگ نکالی اور اپنا ہاتھ پاکیزہ کی طرف بڑھایا ۔۔۔۔
اسنے بھی اپنی تیز ہوتی دھڑکن کو نارمل کرتے ہوئے اپنا ہاتھ تابش کے ہاتھ میں دیا ۔۔۔۔
بہت پیاری لگ رہی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسنے رِنگ پہناتے ہوئے تعریف کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ نے اپنا چہرہ اور جُجھکایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری تعریف نہیں کرو گی؟  اسنے پاکیزہ کا منہ ہاتھ سے اوپر کیا ۔۔۔۔
پاکیزہ پھر بھی نظریں جُجھکائے تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ میری طرف دیکھو  ۔۔۔
اسنے اپنی پلکیں اٹھائی ۔۔۔۔۔
میں تم سے بہت محبت کرتا ہوں اور یہ اعتراف میں پہلے بھی کرچکا ہوں  میں پوری کوشش کروں گا تمہیں جلد اس بات پر یقین اجائے ۔۔۔۔۔۔۔
مجھے یقین ہے تابش ۔۔۔۔۔۔۔۔
پاکیزہ مشکل سے یہ الفاظ ادا کر پائی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو پھر میرے زندگی کے سفر کو خوبصورت بنانے میں میرا ساتھ دو گی؟
جی میں پوری کوشش کروں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تابش اور پاکیزہ کی نئی زندگی کا خوبصورت آغاز ہو چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
-----------------------
ابراہیم کمرے میں ایا تو ادا مرر کے سامنے کھڑی اپنی جیولری اتار رہی تھی اسنے اتے ہی ادا کی مدد کرنی شروع کی ۔۔۔۔
میں کرلوں گی ابی پلیز رہنے دو ۔۔۔۔۔
ابراہیم نے جھٹ سے  اسے اپنے حصار میں لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
بس کردو کیوں اتنا ظلم کررہی ہو مجھ غریب پر ابراہیم نے اس پر جھکتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔
میں نے کیا ظلم کیا؟  وہ معصوم بنی تھی ۔۔۔
اتنی پیاری بیوی سامنے ہو اور جیولری بھی نہ اترانے دے یہ ظلم نہیں؟
ابی؟
جی جان بولو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب سے تم میرے ہو اج میں ادا ابراہیم خان اپنے پورے ہوش ہواس میں اپنی محبت کا اظہار کرتی ہوں ۔۔۔۔
ابراہیم تو جیسے گِرنے والا تھا وہ اپنی پوری انکھیں کھولے ادا کو دیکھ رہا تھا ادا نے ابراہیم کا منہ اپنے ہاتھوں میں بھرا ۔۔۔۔۔۔۔۔
I love you so much aabhe......
I love you to Jan....
ابراہیم نے ادا کو گلے لگایا  ادا اسکی بانہوں میں سمٹی تھی اج ابراہیم کی محبت مکمل ہوئی تھی اسنے اپنے صبر اور محبت سے ادا کو اپنا بنا ہی لیا تھا اور اللہ تعالیٰ نے تو نکاح کا رشتہ ہی ایسا بنایا ہے اس میں محبت اپنی جگہ بنا ہی لیتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
----------------------
میرج ہال میں پاکیزہ کے ولیمے کا فنکشن اپنے عروج پر تھا چاروں طرف لگی لائٹس پھولوں سے کی گئی سجاوٹ ماحول کو اور خوبصورت بنائے ہوئے تھے پاکیزہ اور ادا کب سے سر جوڑے باتوں میں مصروف تھیں ابراہیم تابش کو کچھ خاص لوگوں سے ملوانے لے گیا تھا پاکیزہ پیچ کالر کا لہنگا پہنے تھی ادا بھی بلیو کالر کی فراک پہنے ہوئے تھی دونوں خوش تھی اپنی اپنی زندگی  میں نئے سفر پر گامذن تھی ۔۔۔۔
تھوڑی دیر میں ایک ایک کر دونوں جوڑیوں کا فوٹو شوٹ ہوا  اور پھر فیملیز کے ساتھ خوشگوار لمحات کو کیمرے میں قید کیا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
.