Friday, April 24, 2020

تیرے عشق میں پاگل new urdu novels read online

تیرے عشق میں پاگل ۔۔۔۔
بقلم  سدرہ حسین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسط نمبر ایک۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇👇

آج اُسکا ہسپتال میں بطور ڈاکٹر پہلا دن تھا وہ اپنا کوٹ پہنے کلائی پر مہنگی گھڑی باندھے ہاتھ میں اسٹیتھوسکوپ پکڑے تیزی سے چل رہا تھا ساتھ چل رہی سسٹر مسلسل مریض کی انفارمیشن دے رہی تھی" سر یہ لڑکی پاگل ہے پچھلے پانچ سال میں کافی بار ایسی حالت میں یہاں لائی گئی ہے وہ تیزی سے چلتے ہوئے ایمرجنسی کی طرف بڑھ رہے تھے ڈاکٹر میر جیسے دروازہ دھکیلتا ہوا اگے بڑھا سامنے پڑے وجود پر نظر پڑتے ہی اسکے قدم رک گئے  "دعا"  آج پانچ سال بعد میر کے منہ سے یہ نام نکلا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماضی ۔۔۔۔۔۔۔۔
" ماما جانی " کہاں ہو آپ وہ ننگے پاؤں دونوں ہاتھوں سے اپنی بلیک فراک اُٹھائے سیڑھیاں عبور کرتی چھت پر ائی تھی وہ درمیانے قد کی  لڑکی نازک سراپا سفید دودھ جیسا رنگ  بھوری موٹی انکھیں  ریشمی کالے لمبے بال جن کو سمیٹ کر اسنے حجاب کیا ہوا تھا دونوں ہاتھوں میں چوڑیاں پہنے کانچ کی گڑیا لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا دعا بیٹا ننگے پاؤں کیوں آگئی ہو اتنی دھوپ گرم فرش تمہارے پاؤں جل جاتے تو ؟ رافعہ اپنی بیٹی کے لیے پریشان ہوئی ۔۔۔۔۔
ماما جانی دیکھے میں تیار ہوگئی ہوں اور بھائی ابھی تک نہیں ائے میں کب سے فون بھی کر رہی ہوں لیکن کال رسیو نہیں کررہے وہ بات کرتے کرتے کرسی پر بیٹھ چکی تھی ۔۔۔۔۔
اجائے گا تھوڑا انتظار کرو لڑکی اتنی جلدی بھی کیا ہے؟
ماما جانی کینزا نے میری وجہ سے دن میں ہی اپنی سالگرہ کا فنکشن رکھا ہے اب اگر میں ہی لیٹ ہو گئی تو؟
نہیں ہوتی لیٹ فرقان کو تجھ سے زیادہ تیرے کام کی فکر ہوتی ہے وہ آرہا ہوگا رافعہ کے منہ سے بات پوری نکلتے ہی ڈور بیل بجی تھی دعا نے فوراً سے چھت کا درمیانی حصہ جو کھلا ہوا تھا وہاں سے منہ نیچے کر آواز دی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رابی باہر دیکھے بھائی ائے ہے؟
رابی کچن سے نکلتی اپنے دوپٹے سے ہاتھ صاف کرتی ہوئی دروازے کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔
ایک منٹ میں ہی رابی نے منہ اوپر اُٹھائے دعا کو آواز دی چھوٹی بی بی فرقان بھائی اگئے ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا تو سُنتے ہی بھاگتی ہوئی نیچے ائی ۔۔۔۔۔
بھائی کتنا ٹائم لگا دیا اپ نے میں کب سے انتظار کررہی تھی دعا نے اتے ہی شکایت بھری نظروں سے  بھائی کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔
میری گڑیا سوری ٹریفک اتنی زیادہ تھی فرقان نے پانی کا گلاس منہ کو لگاتے ہوئے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔
اسنے اپنا ہیل والا جوتا پہنا چلے جلدی کرئے اب دعا اپنا پرس کندھے پر ڈالتے ہوئے بولی مجھے فریش نہیں ہونے دو گی فرقان نے بھی بُرا سا منہ بنا کر پوچھا ۔۔۔۔۔۔
بلکل بھی نہیں آپ تو ایسے ہی شہزادے لگ رہے ہے اور ویسے بھی آپ مجھے باہر ہی چھوڑ کر اجائے کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے میری جان چلو خود اتنی تیاری کرلی اور بھائی کو چینچ بھی نہیں کرنے دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا بھائی سے لپٹی سچی آپ ایسے ہی پیارے لگ رہے ہو ۔۔۔۔۔
مسکے لگا لو اب ۔۔۔۔۔۔۔۔
اہ میں گفٹ تو کمرے میں ہی بھول گئی بس میں ایک منٹ میں لے کر ائی اپ گاڑی سٹارٹ کرو وہ بھائی کو مشورہ دے کر اپنے کمرے کی طرف بھاگی جہاں پنک کلر کے شاپنگ بیگ میں ریڈ کلر کی پیکنگ میں گفٹ پڑا تھا جس کو اٹھائے وہ بھاگتی ہوئی گاڑی میں آ بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا بچے کیا سوچا پھر کس یونی میں ایڈمیشن لینا ہے؟  فرقان نے ڈرائیو کرتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھائی میں میڈیکل میں ہی جانا چاہتی ہوں ایک بار رزلٹ اجائے پھر دیکھتے ہے دعا ابھی ابھی  fsc  کے امتحانات سے فارغ ہوئی تھی دعا کی بڑی بہن کائنات کی شادی ہوچکی تھی فرقان کا بھی اپنی ماموں کی بیٹی دانیہ سے رشتہ طے ہو چکا تھا رافعہ اور عابد صاحب نے اپنے بچوں کی بہت اچھی پرورش کی تھی اس گھر میں کسی چیز کی کمی نہیں تھی عابد صاحب کا اپنا بزنس تھا جسکو اب فرقان بھی جوائن کرچکا تھا سب پانچ وقت نماز کے پابند ہے اگر اسکو پرفیکٹ فیملی کہا جائے تو کچھ غلط نہیں ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ کینزہ کے گھر پہنچ چکی تھی جہاں اور بھی فرینڈز موجود تھی وہ امتحانات کے بعد اج مل رہی تھیں سب بہت خوش باتوں میں مصروف تھیں جمع تو کینزہ کی برتھ ڈے سلیبیرٹ کرنے کے لیے ہوئی تھیں لیکن وہاں سارا وقت فیوچر کی پلینیگ ہی چلتی رہی ۔۔۔۔۔
وہ رات تھکی ہوئی گھر ائی تھی جلدی سے فریش ہوکر سلیقے سے سر پر دوپٹہ لیے کھانے کے میز پر پہنچی تھی یہ اس گھر کا اصول تھا اگر کسی نے کھانا نہیں بھی کھانا تو بھی ٹیبل پر موجود ہونا ضروری ہے دعا بھی کھانا کھا کر ائی تھی لیکن اب سب کے ساتھ اکر بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔
بابا جانی میں نے سب پتہ کرلیا ہے مجھے اسلام اباد میں ایڈمیشن لینا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں میری گڑیا یہاں لاہور میں اچھے سے اچھے میڈیکل کالج ہیں پھر اتنی دور کیوں؟
بابا  جانی کینزہ بھی وہی کا سوچ رہی ہے مجھے بھی اسکے ساتھ ہی ایڈمیشن لینا ہے پلیز بابا جانی ۔۔۔۔۔۔
دعا میری جان ماما اکیلی ہوجائے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں اکیلی ہوجائے گی اپکی شادی کردیتے ہے اسنے برے آرام سے حل بتا دیا تھا ۔۔۔۔۔۔
اب میری شادی کہاں سے آگئی بیچ میں فرقان نوالہ منہ ڈالتے ہوئے بولا ۔۔۔۔۔
کیوں بھائی کرنی تو ہے ہی ابھی کردیتے ہیں پلیز میرے لیے مجھے کینزہ کے ساتھ ایڈمیشن لینا ہے پلیز پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ویسے دعا کی بات پر غور کیا جاسکتا ہے عابد صاحب فوراً دعا کی ہاں میں ہاں ملانے لگے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا کے چہرے پر پیاری سی  مسکراہٹ پھیلی جسکو دیکھ کر ہی عابد صاحب نے فیصلہ سنا دیا ۔۔۔۔
چلے فیصلہ ہوگیا ہے پھر اج رات کو دانیہ بیٹی کے گھر چلتے ہیں شادی کی تاریخ لے اتے ہیں تاکہ دعا کے جانے سے پہلے پہلے ہی شادی کردی جائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیکھ لو دعا تمہارے لیے بھائی قربانی دے رہا ہے اب یاد رکھنا اسکو ساری زندگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا مسکرائی تھینکیو بھائی ۔۔۔۔۔
میں اپی کو فون کروں؟  دعا کو خوشی کے موقعے پر کائنات کی یاد ائی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اسکی کال ائی تھی تھوڑی دیر پہلے وہ ویسے بھی تم سے بات کرنا چاہ رہی تھی رافعہ کو کائنات کا ذکر ہوتے ہی یاد ایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے ماما میں کال کرتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔
اسلام و علیکم!  آپی کیسی ہو؟
وعلیکم و السلام ۔۔میری ڈول میں ٹھیک ہوں تم بتاؤ  گھر رہ کر بور تو نہیں ہوگئی؟
نہیں آپی مجھے آپ کو خوشخبری دینی ہے آج ہم بھائی کی ڈیٹ فکس کرنے جارہے ہیں ۔۔۔۔۔
ٹھہرو ٹھہرو دعا یہ کب ہوا میرا مطلب ایسے اچانک؟
جی میں اسلام آباد ایڈمیشن لے رہی ہوں تو ماما اکیلی نہ رہ جائے اس لیے یہ فیصلہ کیا گیا ۔۔۔۔۔۔
دعا بیٹا یہاں بھی تو ایڈمیشن لے سکتی تھی اتنی دور؟
آپو کینزہ وہاں ایڈمیشن لے رہی ہے تو میں یہاں کیسے؟
بچے ضروری تو نہیں کہ تم شروع سے اسکے ساتھ پڑھتی آرہی ہو تو اگے بھی ساتھ ضروری ہے ۔۔۔۔۔۔
آپو کیا میں نے خوشخبری بتانے کے لیے کال کی اور آپ میرا موڈ خراب کررہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا چلو ناراض نہیں ہو میں تو بس سمجھا رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔
اپ بتاؤ آرہی ہو پھر شام کو دعا اپنے منہ پر اتی لٹو سے کھیلتے ہوئے پوچھ رہی تھی ۔۔
سلیمان سے کال کر کے پوچھتی ہوں پھر بتاتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے آپی میں ویٹ کروں گی  love u  ……..
Love u 2 میری جان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ سب دانیہ کے گھر موجود تھے کائنات بھی سلیمان کے ہمراہ ائی تھی سب نے کھانا کھایا شادی جلدی کرنے کی وجہ بتائی گئی جس پر ریاض صاحب دانیہ کے پاپا کو کوئی اعتراض نہیں تھا بہت خوش دلی سے ایک ہفتے بعد 5 تاریخ طے پائی ۔۔۔۔
دعا دانیہ کے ساتھ باہر لان میں ننگے پاؤں گھاس پر چل رہی تھی ۔۔۔
وہ سی گرین لونگ فراک کے ساتھ چوڑی دار پاجاما پہنے سر پر سلیقے سے دوپٹہ لیے ہوئے تھی ۔۔۔۔۔۔
دعا تم وہاں اکیلی رہ لو گی؟
جی بلکل میں وہاں اکیلی تو نہیں ہوگی کینزہ بھی ہوگی  میرے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ؟  وہ جو بچپن کی دوست ہے؟  دانیہ نے سوچتے ہوئے پوچھا، ۔۔۔۔۔۔۔
جی جی میں ملوایا تھا منگنی پر اپکو ۔۔۔۔
یاد اگیا مجھے ۔۔۔۔۔
لڑکیوں کیا ہو رہا ہے یہاں کائنات بھی مٹھائی پکڑے باہر ائی یہ لو دونوں منہ میٹھا کرو 5 ڈیٹ فکس ہو گئی ہے ۔۔۔۔۔۔
واہ میں بتا رہی ہوں بہت مزا انے والا ہے  دعا نے مٹھائی منہ میں ڈالتے ہوئے گرم جوشی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلکل میں نے سلیمان سے کہہ دیا ہے میں اب شادی تک ماما کی طرف ہی رہوں گی وہ مان بھی گئے ہے تھوڑے سے دن ہیں اور اتنی تیاری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حال ۔۔۔۔۔
رافعہ بار بار اپنی بیٹی کے سر پر دوپٹہ سیٹ کرتی لیکن اسے کہاں ہوش تھی وہ تو اپنے ہاتھ پر لگے گہرے کٹ سے نکلتے خون کو دیکھ دیکھ کر روتے ہوئے ایک لفظ بول رہی تھی ۔۔۔۔
خون "خون" ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 
وہ کہتے کہتے ہی ہوش کی دنیا سے بیگانی ہوئی ۔۔۔
سر دیکھے کٹ کافی گہرا ہے سسٹر کی آواز پر میر ہوش میں ایا تھا وہ جلدی سے اگے بڑھا اپ باہر چلی جائے وہ رافعہ سے کہتا ہوا دعا کا ہاتھ پکڑے جہاں زخم کے علاوہ بھی کیی کٹ کے نشان تھے سسٹر سے کچھ کہہ رہا تھا رافعہ باہر اکر بیٹھ گئی تھی ایک ماں کا اپنی اولاد کو تکلیف میں دیکھنا کیسا ہو سکتا ہے جیسے ننگے پاؤں اگ کے شعلوں پر چلنا نہیں شاید اس سے بھی بھر کر جسکو بیان کرنے کے لیے الفاظ ہی نہیں بنے ۔۔۔انہوں نے اپنے آنسو صاف کرتے ہوئےکرسی کی پشت سے ٹیک لگا دی وہ تھکنا نہیں چاہتی تھی لیکن تھک گئی تھی پانج سال سے وہ اپنی بیٹی کو اس حال میں دیکھ رہی تھی اس تکلیف میں جس وجہ سے دعا اتنی اذیت میں  تھی یہ تو وجہ بھی نہیں جانتے تھے ۔۔۔۔۔۔
آپ پریشان نہیں ہو وہ ٹھیک ہے کٹ گہرا ضرور تھا لیکن زیادہ نہیں سسٹر نے باہر اتے ہی بتایا ۔۔۔۔۔
میں نے لاسٹ ٹائم بھی کہا تھا ان سے ایسی چیزیں دور رکھا کریں اپ کیسے لاپرواہی کر جاتی ہے ۔۔۔۔۔۔
بیٹا میں اندر جا سکتی ہوں؟
جی میں  نے ڈاکٹر کو دعا کی حالت کے بارے میں سب بتا دیا اپ چلی جائے اسکے پاس نہیں تو وہ اُٹھتے ہی ہنگامہ کرے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رافعہ جلد ہی کمرے کی طرف بڑھ گئی میر دعا کو بہت غور سے دیکھ رہا تھا کیا یہ واقعی دعا ہے؟  رافعہ کمرے میں اتے ہی دعا کے سر پر ہاتھ رکھے اسکی ماتھا چوم پاس بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
میر وہاں سے نکلتے ہی اپنے کیبن کی طرف بڑھا اپنی کرسی سے ٹیک لگائے انکھیں بند کی اسے یاد تھا جب پہلی بار اسنے دعا کو دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماضی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اج کینزہ اور دعا کا   Fazaia medical clg Islamabad میں پہلا دن تھا وہ کب ادھر سے ادھر گھوم رہی تھیں کینزہ پینٹ کے ساتھ ٹوپ  اوپر وائٹ کوٹ  پہنے بال کھلے چھوڑے ہوئے تھی اسکے برعکس دعا مہندی کلر کی سمپل سی فراک اور اسی کلر کا دوپٹہ سر پر لیے ہوئے تھی جس کو وہ اپنے دائیں ہاتھ سے بار بار سیٹ کرتی اسنے اپنا وائٹ کوٹ بازو پر ڈالا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یار وہ دیکھ مجھے لگتا ہے یہ لڑکیاں نیو بینچ کی ہیں دور کھڑے رضوان نے اپنے دوست میر سے کہا اسکی نطر پڑی تو وہ دعا سے اپنی نظر ہٹانا ہی بھول گیا سفید رنگ پر پڑتی سورج کی ہلکی سی روشنی جس میں دعا اپنی انکھیں چھوٹی کیے کینزہ سے کچھ کہہ رہی تھی وہ کوئی کانچ کی نازک سی گڑیا لگ رہی تھی ۔۔۔۔
چل تنگ کرتے ہے رضوان کہتے ہی اگے بڑھا اور پیچھے پیچھے میر بھی ۔۔۔۔۔۔۔
اپ دونوں کچھ پریشان سی لگ رہی ہیں ہم کچھ مدد کر سکتے ہیں؟ ۔۔۔۔۔۔۔
دعا اپنا دوپٹہ سیٹ کرتی ہوئی نظریں جُھکا گئی تھی کینزہ جھٹ سے  بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی وہ ہمیں اپنی کلاس نہیں مل رہی آج ہمارا فرسٹ ڈے ہے ۔۔۔۔
دیکھا کہا تھا میں نے رضوان نے سرگوشی کی
 آپ سیدھی جاکر لیفٹ جاے وہاں سیڑھیاں عبور کر رائٹ سائیڈ پر جائے وہاں پھر سے سیڑھیاں عبور کرتی اوپر جائیے گا رائٹ سائیڈ پر اپکی کلاس ہے ۔۔۔۔۔
میر نے ان کو بہت آرام سے سمجھایا تھا وہ اسکی بات سمجھ کر اثبات میں سر ہلاتی ہوئی وہاں سے چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اتنے میں ایش چلتی ہوئی میر اور رضوان تک ائی ۔۔۔۔یہ کون تھیں اسنے شکوک سی نظریں میر پر ڈالتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔
نیو گرلز تھیں رضوان نے ہنستے ہوئے کہا تو ایش سب سمجھ گئی تھی "ایش کا نام عائشہ تھا لیکن وہی سر پھیرو کے چونچلے نام پسند نہیں تو نام کا ستیاناس کردیا "
وہ انکے بتانے کے مطابق  اپنی ہی دھن میں چلتی ہوئی وہاں پہنچی تو انکے سر پر آسماں ا گِرا تھا وہاں جینس واشروم تھا لڑکے باہر نکلتے انکو عجیب نظرو سے دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ جھٹ سے پلٹی  سیڑھیاں پھلانگتی ہوئی واپس ائی بہت بدتمیز لڑکے تھے دعا نے ہانپتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چھوڑو یہاں یہ سب چلتا ہے ہمیں پہلے سے الرٹ رہنا چاہیے تھا وہ دونوں خود کو نارمل کرتی ہوئی سیڑھیوں میں ہی بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔
دعا کے موبائل کی بیل ہوئی اسنے ہانپتے ہوئے کال رسیو کی ۔۔۔۔
اسلام وعلیکم!  بھائی ۔۔۔۔۔۔
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا تمہارا،سانس کیوں پھولا ہوا ہے؟
سیڑھیاں چڑھ رہی تھی بھائی آپ بتاؤ ماما جانی، بابا جانی، اپ، بھابھی سب ٹھیک ہیں؟  وہ ایک سانس میں ہی بولے گئی تھی
جی  جی سب ٹھیک ہیں اور ہم تمہیں بہت مس کررہے ہیں دعا۔۔۔۔۔
Miss u too bhai Jan.........
Next .....
کوئی پرابلم تو نہیں ہوئی دعا؟
نہیں نہیں سب ٹھیک ہے بھائی آپ فکر نہیں کرے اگر کوئی پرابلم ہوئی میں آپکو فون کردوں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ لو تمہاری بھابھی مجھے کھا جانے والی نظروں سے دیکھ رہی ہے بات کرلو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا بھائی کی بات سُن مسکرائی ۔۔۔۔۔
اسلام وعلیکم میری جان کیسی ہے؟  دانیہ اکلوتی تھی شروع سے وہ اس بات کو بہت محسوس کرتی تھی شادی کے بعد دعا سے اسکی اچھی بنی وہ اسے اپنی چھوٹی بہن کی طرح ٹریٹ کرتی ۔۔۔۔۔۔
وعلیکم السلام ۔۔۔۔میں ٹھیک ہوں آپ بھی ٹھیک ہے؟
حال ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سر راؤنڈ کا ٹائم ہو گیا ہے سسٹر کے بولتے ہی میر اپنی سوچ سے باہر ایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی چلو ۔۔۔۔وہ کہتے ہی ہاتھ میں اسٹیتھو سکوپ پکڑے اپنی گلاسز لگائے باہر کی طرف بڑھا ۔۔۔۔۔۔
راؤنڈ لگاتے وہ ایک ایک مریض کی فائل چیک کرتا ان سے بات کرتا ان کا حال پوچھتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ دعا کے روم میں ایا تو وہ بیٹھی اپنی ماں سے گھر جانے کے لیے ضد کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر میر کو دیکھتے ہی دعا اپنی ماں سے لپٹی ۔۔۔۔۔۔۔
ماما انجیکشن ۔۔۔۔۔ماما انجیکشن  ۔۔۔۔۔
نہیں میری جان دیکھو ان کے ہاتھ خالی ہیں ۔۔۔۔۔
میر نے اسٹیتھو سکوپ گلے میں ڈال اپنے ہاتھ اسکے سامنے پھیلائے دیکھو میرے ہاتھ خالی ہے یہ دیکھو ۔۔۔۔۔۔
وہ ماں سے لپٹی اپنا منہ  آغوش ميں  چھپانے کی سہی کر رہی تھی  ۔۔۔۔
دعا ادھر دیکھو میری طرف میر نے بہت پیار سے اسکا نام پکارا تھا ۔۔۔۔۔۔
نہیں انجیکشن ۔۔۔۔انجیکشن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیکھو میرے ہاتھ خالی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا یہ ڈاکٹر تمہیں پارک لے کر جائے گے سسٹر جانتی تھی دعا کو کیسے ہینڈل کرنا ہے ۔۔۔۔
پارک؟  پارک وہ خوش ہوگئی تھی  اور ماں کو چھوڑ سیدھی ہوئی ۔۔۔۔
میر کا کتنی دفعہ دل کیا تھا  وہ پوچھے تو اسکی یہ حالت کیسی ہوئی لیکن دل کانپ رہا تھا روح نکلتی محسوس ہورہی تھی شاید وہ اس کے پاگل ہونے کا عرصہ سُن کر ہی  سمجھ گیا تھا یہ کیا ہوا تھا زبان یہ پوچھنے سے انکاری تھی دعا پاگل کیسے ہوئی گزرے وقت میں جو دعا کے بھروسے کی دھجیاں اڑائی تھی  شاید وہ پانچ سال پہلے انکو سمیٹتے ہوئے پاگل ہوگئی تھی.تو کیا میں اس گناہ کا مرتکب ہوا ہوں۔۔نہیں  نہیں کوئی اور وجہ ہو گی دوسرے ہی پل وہ خود پر لگائے الزام سے خود کو آزاد کرنا چاہ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
پارک ۔۔۔۔دعا نے اسکا کوٹ کھینچا تو وہ ہوش میں ایا ۔۔۔۔۔
دعا اچھے بچے ایسے نہیں کرتے رافعہ نے فوراً دعا کا ہاتھ پکڑا ۔۔۔۔
کوئی بات نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔میر کو اپنا کھڑا رہنا مشکل لگ رہا تھا اس سے زیادہ مشکل یہاں سے قدم اُاٹھانا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو گی میرے ساتھ پارک؟  میر نے ناجانے کیا سوچ کر  کہہ دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا پارک جائے گی دعا پارک جائے گی بچوں کی طرح تالیاں بجاتے اسکا دوپٹہ سر سے سرک گیا جسکو رافعہ نے فوراً اسکے سر پر درست کیا ۔۔۔۔۔۔
دعا کو چھٹی کب ملے گی؟  رافعہ نے میر  کی طرف دیکھتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی کل تک اسکے کہتے ہی سسٹر نے میر کی طرف دیکھا کیوں کہ اصولاً تو انکو ابھی چُھٹی دے دینی چاہیے تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا میں راؤنڈ لگا لوں پھر اپکو پارک لے کر جاؤ گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
--------------------------------
ماضی ۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ اور دعا کو اج دس دن یہاں ہو گئے تھے دعا بہت اداس ہوگئی تھی کینزہ تھوڑی لاپرواہ سی لڑکی تھی اسلیے وہ جلد یہاں ایڈجسٹ ہوگئی ۔۔۔۔
دعا تو کبھی گھر سے دور نہیں رہی تھی حساس بھی تو بھی بہت تھی روز گھر کال کرتی گھنٹہ گھنٹہ بات کرتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا تم بہت لکی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ فون بند کر اپنے بیڈ پر لیٹی تھی جب کینزہ نے دعا کو دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔
سو تو ہے لیکن تم نے کیا سوچ کر کہا؟
ویسے تو مجھے یہ شروع سے ہی لگتا تھا تمہاری فیملی پرفیکٹ فیملی لگتی تھی مجھے لیکن اب تو شاید مجھے تم پر رشک اتا ہے تمہاری بھابھی تو کتنی اچھی ہے روز سامنے سے تمہیں فون کرتی ہے کتنی فکر کرتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ؟  دعا اُٹھ کر سر پر دوپٹہ سیٹ کرتی ہوئی بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔
مجھے لگتا ہے ہم سے وابستہ رشتوں کو ہمارے پیار توجہ کی ضرورت ہوتی ہے اور ان کا پیار  ہمارے لیے آکسیجن کی طرح ہوتا ہے جو ملتی رہے تو ہم زندہ رہتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا ہم کہی گھومنے نہیں گئے یار اس ویک اینڈ چلے ۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ سیدھی ہوکر لیٹ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں اج میرے بھی ذہین میں ایا تھا لیکن ہمیں یہاں کے راستوں کا کیا پتہ کہی گم ہوگئے تو دعا کہتے خود ہی مسکرا دی ۔۔۔۔
ہاہاہا نہیں گم ہوتے جانی بس اس ویک اینڈ پروگرام بناتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ بات پوری کر دعا کی طرف دیکھا جو نیند کی وادی میں اتر چکی تھی اسنے  اُٹھ اسکے اوپر کمبل دیا خود بھی لائٹ اوف کر سو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج کا دن بہت تھکا دینے والا تھا وہ دونوں بھوک سے نڈھال کیفے ائی تھیں وہاں وہ گِرنے کے سٹائل میں کرسی پر بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا کھانا ہے دعا جلدی بتاو ورنہ میری جان نکل جانی ہے ۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ نے اپنے پیٹ پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
یار کچھ بھی منگوا لو دعا نے موبائل میں گھس کر جواب دیا بھابھی کی اتنی مسڈکال؟  ۔کینزہ تم آرڈر کرو میں میں دو منٹ میں ائی وہ کال ملاتی ہوئی کیفے سے باہر نکلی ۔۔۔۔۔
پہلی بیل پر ہی کال رسیو کرلی گئی تھی ۔۔۔۔۔
السلام و علیکم ۔۔۔بھابھی خیریت آپ کال کررہی تھی میں کلاس لے رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
و علیکم السلام ۔۔۔۔حوصلہ رکھو گڑیا ایک تو تم پریشان ہو جاتی ہو جھٹ سے کائنات ائی ہوئی ہے ہم تمہیں مس کر رہے تھے تو کال کردی ۔۔۔۔۔۔
دعا نے ایک لمبی سانس خارج کی جیسے اسنے پہلے چند منٹ سانس روکی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا بولو بھی کہاں گئی دعا؟
دعا نہ چاہتے ہوئے بھی رونے لگی اور اپنا روخ دیوار کی طرف موڑے اپنے آنسو صاف کرنے لگی میں بھی بہت مس کررہی ہوں اپ سب کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بُری بات میری جان روتے نہیں تم ویک اینڈ  اجاو ملنے کائنات نے اسکی مشکل حل کرنی چاہی ۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں آپو نیکسٹ ویک اینڈ اؤں گی سب کیسے ہیں بھائی کیسے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
سب ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا بات ختم کر نم آنکھوں کو اپنی  انگلی سے صاف کرتی پلٹی تھی کہ بہت زور سے کسی سے ٹکرائی تھی اسکا دوپٹہ اتر پیچھے گردن پر گرا تھا ۔۔۔۔۔۔
آآآآآ۔۔۔۔اسکا موبائل نیچے گِرا جسکی سکرین ٹوٹ چکی تھی وہ جو پہلے ہی اپنے آنسوں بمشکل روکے تھی  اپنا دوپٹہ سر پر لیتے ہوئے رونے لگی ۔۔۔۔
میر نے جھک کر موبائل اُٹھایا تو وہ ٹوٹ چکا تھا اسنے دعا کی طرف دیکھا پھر موبائل کی طرف نہ تو وہ موبائل سے کسی غریب گھر کی لگ رہی تھی نہ ہی اس کالج میں اسکی موجودگی اسکی غُربت کو ظاہر کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
سوری آپ روئے نہیں میں اپکا نقصان پورا کردوں گا اس موبائل کی قیمت 2 لاکھ سے اوپر کی ہی تھی جو فرقان نے اسکے برتھ ڈے پر گفٹ کیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نو تھینکیو ۔۔۔۔۔۔اسنے کہتے ہی موبائل لینے کی غرض سے اپنا ہاتھ پھیلایا ۔۔۔۔۔۔
دیکھیے غلطی میری تھی میں بھاگ کر آرہا تھا میں نے اپکو دیکھا نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا  کو اس دن والی بات بھی بھولی نہیں تھی وہ دیکھتے ہی میر کو پہچان گئی تھی ۔۔۔۔
وہ اب رونا بھول کر میر سے مخاطب تھی ۔۔۔۔۔
آپ میرا موبائل واپس کرے اج کا تو پتہ نہیں لیکن اس دن والی حرکت پر آپکو معافی مانگنی چاہیئے تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اسے دعا کی بات سمجھنے میں مشکل نہیں ہوئی تھی ۔۔۔۔
اہ اس دن کے لیے بھی سوری وہ بس مذاق ۔۔۔۔۔
مذاق؟  جو اپ جیسے سینیئر لوگ کرنا اپنا فرض سمجھتے ہے ۔۔
دعا کی باتیں تلخ سہی لیکن اسکا انداز اپنے سرابے کی طرح نرم تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
میر نے اسکا موبائل ابھی تک ہاتھ میں پکڑا تھا شاید اسکا دل دعا سے بات کرنے کا تھا جسکا اچھا خاصا بہانا ب مل گیا تھا ……………
دیکھیے پلیز میرا موبائل مجھے واپس کریں میری دوست اندر ویٹ کررہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے لیکن پھر کہہ رہا ہوں اگر اپ چاہے تو میں موبائل لے دوں گا آپکو ۔۔۔۔۔۔۔
اسنے کہتے ہی موبائل دعا کے ہاتھ پر رکھا ۔۔۔۔
نو تھینکیو سو مچ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا کہتے ہی کیفے کے اندر چلی گئی وہ وہی کھڑا اسے جاتا دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر اور ہارون دو بھائی ہے انکے والد کا راولپنڈی  کے اچھے بزنس مین میں شمار ہوتا اسکے باوجود ہارون وکیل تھا اور میر حمزہ  MBBS  کے سیکنڈائیر میں ۔۔۔۔۔۔۔۔
میر  کو ہوسٹل میں رہنا پسند نہیں تھا اسنے یونی کے قریب 15 منٹ کی مسافت پر فلیٹ لے رکھا تھا

---------------------
صبح لازمی بازار جانا ہے مجھے موبائل خریدنا ہے دعا بیڈ شیٹ ٹھیک کرتی ہوئی بولی ۔۔۔۔۔۔۔
لیکن تم نے بتایا نہیں موبائل گِرا کیسے؟ کینزہ نے اپنے بیگ میں کچھ ڈھونڈتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔
یار بتایا تو تھا فون سُن کر پلٹی تو اچانک ہاتھ سے گِر گیا کتنی بار پوچھو گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا انکل کا فون آرہا ہے  کینزہ نے بجتے موبائل پر نمبر دیکھتے ہوئے موبائل دعا کی طرف بڑھایا ۔۔۔۔۔۔
وہ کال رسیو کرتی ہوئی کھڑکی میں آ کھڑی ہوئی جہاں سے پورا چاند نظر آرہا تھا اور اسکی روشنی میں دعا کا چہرے اور خوبصورت لگ رہا تھا ۔۔۔۔
اسلام و علیکم!  بابا جانی ۔۔۔۔۔
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔میری بیٹی کیسی ہے؟
بابا میں بلکل ٹھیک ہوں آپ بتائے آپ کیسے ہے اور باقی سب ۔۔۔۔۔۔
الحمدلله سب ٹھیک ہیں  بیٹا اپکا فون کیوں بند ہے؟
بابا جانی میرا موبائل نیچے گِر ٹوٹ گیا دعا نے بُرا سا منہ بنایا  اب صبح ٹھیک کروانے کے لیے دوں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیٹا ٹھیک کروانے میں ٹائم لگے گا میں پیسے ٹرانسفر کردیتا ہوں آپ نیو خرید لو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی بابا جانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا بچا پریشان نہیں ہونا کوئی بھی مسئلہ ہو مجھے یا اپنے بھائی کو کال لر لینا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی بابا جانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دعا چاند پر نظریں جمائے ہوئے تھی اسکا موڈ گھر بات کر فریش ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔
اسنے اپنی ماما سے بھی بات کر فون بند کردیا تھا اب وہ موبائل کینزہ کو دے کر اپنے بستر پر لیٹ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
------------------------------------------------

 آج ہفتے کا دن تھا صبح نماز ادا کر دعا دوبارہ سو گئی تھی کینزہ کی انکھ کھلی تو گھڑی  10 بجا رہی تھی
دعا آُٹھو یار آج تو باہر جانا تھا کینزہ نے اپنے  بال باندھتے ہوئے دعا کو آواز دی ۔۔۔۔۔
اُٹھتی ہوں مجھے بھوک بھی لگی ہے وہ کمبل میں ہی منہ دہیے بولی تھی ۔۔۔۔۔۔
چلو پھر منٹ لگاؤ اُٹھ جاو کینزہ اپنے کپڑے لیے واشروم میں گھس گئی تھی دعا بھی اپنی انکھیں مسلتی ہوئی اُٹھ بیٹھی ۔۔۔۔۔۔
وہ Centaurus mall  ائی تھیں انہوں نے اس مال کے بارے میں کافی سُنا تھا وہ لمبی ڈرائیو کے بعد یہاں پہنچی تھیں کینزہ جیتنا اس mall کے بارے میں سُنا تھا یہ اس سے بھی خوبصورت ہے دعا نے سر اوپر اُٹھائے چاروں طرف نظریں گھماتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
ہاں یار بہت ہی خوبصورت ہے وہ کافی شاپنگ کے بعد موبائل والی شاپ پر پہنچی تھیں ابھی وہ موبائل خرید کر شاپ سے باہر ہی نکلی تھی کہ انکی نظر میر پر پڑی جو ایش کو ہاتھ میں لیڈیز سوٹ پکڑے کچھ کہہ رہا تھا انکے دیکھتے ہی اس کی نظر بھی ان پر پڑی تھی وہ موبائل والی شاپ کے سامنے کھڑی تھیں میر نے ایش سے کچھ کہا اور دونوں انکی طرف ائے ۔۔۔۔۔۔
ہیلو!
ہائے ۔۔۔۔۔۔کینزہ نے بہت گرم جوشی سے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ لوگ یہاں؟
جی وہ ہم شاپنگ کرنے ائے تھے دعا کا موبائل ٹوٹ گیا تھا وہ بھی لینا تھا میر نے دعا کی طرف دیکھا  تو اسکا نام دعا ہے وہ گلابی رنگ کی سمپل سی فراک پہنے اسی رنگ کا دوپٹہ سر پہ سیٹ کیے ہوئے تھی میر کو وہ ہر بار دیکھنے پر نازک سی گڑیا کی طرح لگتی جسکو ہاتھ لگانے سے وہ ٹوٹ جائے گی وہ مسلسل ادھر ادھر نظریں گھما رہی تھیں جیسے وہ میر اور ایش کو دیکھ ہی نہ رہی ہو ۔۔۔۔۔۔
میرا نام میر حمزہ ہے  اس سے ملو یہ ایش میری فرینڈ ہے اسکا آج برٹھ ڈے ہے اس کے لیے گفٹ لینے ائے تھے ہم یہاں ۔۔۔۔۔۔۔
دعا نے ایک سرسری سی نظر ایش پر ڈالی جس نے وائٹ پینٹ کے ساتھ پنک شرٹ پہن رکھی تھی جو مشکل سے اسکے پیٹ کو ڈھکے ہوئے تھی ۔۔۔۔۔۔
دعا کو پتہ نہیں کیوں لگا کہ برتھ ڈے والی بات پر ایش نے میر کو حیرانگی سے دیکھا دوسرے ہی پل دعا اپنا وہم سمجھ کر سر جھٹک گئی ۔۔۔۔۔۔
اپ دونوں اب ہوسٹل جارہی ہو؟
جی ہمارا کام ختم ہو گیا ہے ۔۔۔۔۔۔
چلے ہم بھی ادھر ہی جارہے ہیں ہمارے ساتھ ہی اجائے ۔۔۔۔۔
کینزہ نے دعا کی طرف دیکھا وہ سر کو نفی میں ہلا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پلیز اجائے ہمیں اچھا لگے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میر انکا جواب سُنے بغیر جھٹ سے بولا ایش نے بھی میر کی ہاں میں ہاں ملائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ اتنے اصرار پر دعا کی طرف دیکھے بغیر راضی ہوگئ میر اور ایش پلٹ کر اگے چلنے لگے دعا نے اپنے پاؤں سے کینزہ کو اپنے ہونے کا احساس دلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آآآآ ظالم عورت ۔۔۔۔اسنے سرگوشی کی ۔۔۔۔۔۔
کیا ضرورت تھی ہم خود چلے جاتے ۔۔۔۔
کوئی بات نہیں اتنا تو اصرار کررہے تھے پھر ہمارے پاس اتنا سامان بھی ۔۔۔۔۔۔
وہ چلتے ہوئے گاڑی تک پہنچے اپ سب گاڑی میں بیٹھو میں ابھی ایا میر کہتے ہی انکی انکھوں سے اوجھل ہوا ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا گاڑی میں بیٹھ اپنے نیو موبائل میں سم ڈال کر اسے اون کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔
میر واپس اکر گاڑی میں بیٹھا تو ہاتھ میں شاپنگ بیگ تھے جس میں کیک کے علاوہ کچھ کھانے پینے کی چیزیں بھی تھی  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ گاڑی سٹارٹ کر چکا تھا کینزہ میر اور ایش سے باتیں کر سفر انجوائے کرنے لگی دعا مسلسل اپنے موبائل میں گُھسی ہوئی تھی وہ اسکی سیٹنگ نہیں کر پارہی تھی میر بیک مرر سے کافی بار اسے دیکھ چکا تھا وہ الجھی ہوئی موبائل کو کبھی اوف کرتی کبھی اون ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ اپ بھی ہمیں جوائن کرے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مطلب؟  کینزہ نے نہ سمجھی میں میر کی پشت کی طرف دیکھا دعا بھی سر اُٹھا کر جواب کا انتظار کرنے لگی
ایش کی برتھ ڈے ہے اپ بھی ہمارے ساتھ چلے ۔۔۔۔۔
نہیں ہمیں ہوسٹل ہی چھوڑ دیں دعا کینزہ کے جواب دینے سے پہلے ہی بولی۔۔۔۔۔۔۔۔
میر نے ایک نظر ایش پر ڈالی اور ڈرائیو کرنے لگا ایش تھوڑا پیچھے کو مڑی ۔۔۔۔۔۔۔
پلیز دعا چلو نہ مجھے اچھا لگے گا ویسے بھی ہم سب اپنے گھروں سے دور ہیں ہمیں ایک دوسرے کی خوشی غم میں ساتھ دینا چاہیے ہم اپ کوھوسٹل چھوڑ دیں گے

دعا ابھی سوچ ہی رہی تھی جب میر پھر سے بولا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پلیز میں اپکے موبائل کی سیٹنگ بھی کردوں گا چلیے ہمارے ساتھ۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو دعا وہ اتنا کہہ رہے ہیں تو کیا بُڑائی ہے  وہ اپس میں سرگوشی کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔
یار ایسے کیسے منہ اُٹھا کر چلے جائے نہ کوئی گفٹ لیا نہ کسی کو بتایا ۔۔۔۔۔
گفٹ ہم اپنی شاپنگ سے نکال لے گے اور بتانا کس کو ہے یہاں کوئی ہمارا ہوسٹل میں ویٹ تو نہیں کررہا ۔۔۔۔۔۔۔
پھر بھی کینزہ مجھے اچھا نہیں لگ رہا ایسے ۔۔۔۔۔۔
کچھ نہیں ہوتا پلیز ۔۔۔۔۔۔
چلے ٹھیک ہے ہم چلتے ہیں آپکے ساتھ کینزہ نے دعا سے بحث کا یہی نتیجہ نکالا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا کی نظر بیک مرر پر پڑی تو میر اسی کو دیکھ رہا تھا وہ اپنا دوپٹہ سیٹ کرتی سیدھی ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
---------------------------------
حال۔۔۔۔۔۔
میر واپس دعا کے روم میں ایا تو وہاں دانیہ دعا کو کسی بات پر راضی کررہی تھی پاس بیٹھی چھوٹی سی بچی بہت غور سے انکو دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر دروازے پر ہی رک گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اپنی جان کو اج پارک لے کر چلوں گی وعدہ پکے والا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پکے والا؟  دعا نے کہتے ہی اپنا ہاتھ اگے بڑھایا جسکو دانیہ نے فوراً تھام لیا ۔۔۔۔۔۔۔
ماما گھر کب تک جانا ہے اب دانیہ سیدھی ہو رافعہ سے مخاطب تھی ۔۔۔۔۔
جی اپ لوگ جا سکتے  ہیں گھر  میر نے اندر اتے ہوئے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھینکیو ۔۔۔۔۔۔دانیہ میر کو دیکھ کھڑی ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اٹس اوکے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ؟
جی میرا نام دانیہ ہے میں اسکی بھابھی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے اپ  میرے ساتھ ائے مجھے دعا کے بارے میں بات کرنی ہے ۔۔۔۔۔۔
جی چلیے عانبیہ آپ یہی رہو میں ابھی ائی وہ جاتے جاتے اپنی بیٹی کو دیکھ بولی  جو دعا کے ساتھ کھیل رہی تھی گھر میں واحد وہ چھوٹی بچی تھی جس کو دعا کبھی نقصان نہیں پہنچاتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ میر کے پیچھے پیچھے اسکے کیبن میں پہنچی ۔۔۔۔۔۔
بیٹھیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔میر خود بھی کرسی پر بیٹھ اپنے دونوں ہاتھ اپس میں جھکڑے سامنے میز پر رکھ الفاظ ڈھونڈنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔
یہ سب کیسے ہوا ؟؟؟؟
جی مطلب؟
میرا مطلب اپ اسکا دھیان نہیں رکھتے میں نے دیکھا اسکے بازؤں پر پہلے بھی کافی کٹس کے نشان ہیں ۔۔۔۔۔۔
وہ اپنی بات کا رخ بدل گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی میں آفس میں ہوتی ہوں میری مجبوری ہے گھر ماما اور میڈ ہوتی ہیں جو کافی دھیان بھی رکھتی ہیں لیکن کبھی کبھی وہ آپے سے باہر ہو جاتی ہے پتہ نہیں کیا ہو جاتا ہے اُسے اس وقت وہ ذہنی طور پر بیمار بھی نہیں لگتی بہت غصے سے بس ایک ہی بات دوہراتی ہے میں پاگل نہیں ہوں وہ چِِلاتی  ہے اور خود کو نقصان پہنچاتی ہے اپ سے پہلے جو ڈاکٹر تھے ہم انکو یہ سب بتا چکے تھے ۔۔۔۔۔۔۔
اور علاج کہا چل رہا ہے؟
جی ڈاکٹر رامین کے پاس انکا کلینک ہے گھر کے پاس ہی وہاں ۔۔۔۔۔۔
انکی یہ حالت ہوئی کیسے؟  میر نے بہت ہمت جمع کر آخر کار سوال کر ہی ڈالا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سر بیڈ نمبر 2 والے مریض کی حالت بہت خراب ہورہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ ابھی میر کی بات پر غور کررہی تھی جب سسٹر نے اتے ہی اطلاع دی ۔۔۔۔
میر فوراً کھڑا ہوا ۔۔۔۔۔
اوکے اسکا بہت خیال رکھیے گا وہ کہتے ہی سسٹر کے ساتھ چل دیا تھا  ۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ بھی دعا کے روم کی طرف بڑھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
--------------
ماضی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ میر کے فلیٹ پر پہنچ گئیں تھیں جہاں دعا سر جھکائے موبائل کو گھور رہی تھی وہی کینزہ میر کے فلیٹ کا معائنہ کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ تین کمروں پر مشتعمل فلیٹ تھا جسکو بہت خوبصورتی سے ڈیکوریٹ کیا گیا تھا اسکی صفائی ستھرائی کو دیکھ بلکل نہیں لگ رہا تھا وہاں کوئی لڑکا اکیلا رہتا ہے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اجاؤ گرلز میر اور ایش کچن سے ہاتھوں میں ٹرے تھامے ہال میں پڑے ڈائننگ ٹیبل تک ائے جب ایش نے ان دونوں کو پکارا ۔۔۔۔۔۔۔
دعا بہت بے دلی کے ساتھ انکی طرف بڑھی جسکی اصل وجہ شاید موبائل کا نہ چلنا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ نے آج کی گئی شاپنگ سے ایک سوٹ نکالا اور ایش کو اپنی اور دعا کی طرف سے گفٹ کیا ۔۔۔۔۔
کافی فورس کرنے کے بعد ایش نے تحفہ قبول کیا جب وہ کیک کاٹ کھانے پینے سے فارغ ہوئے تو میر دعا کے پاس اکر بیٹھا ۔۔۔۔۔۔
لائے موبائل کی سیٹنگ کردوں ۔۔۔۔۔
دعا نے میر کو دیکھتے ہوئے اپنا موبائل اسکے ہاتھ میں دیا دعا اج پہلی بار اسے غور سے دیکھا تھا وہ  ہینڈسم تھا چہرے پر کافی کشش تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر کے دیکھتے ہی وہ فوراً نظریں جھکا گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ہلکا سا مسکرایا اور پھر موبائل میں لگ گیا اسنے 5منٹ میں موبائل کی سیٹنگ کر دعا کو موبائل پکڑ دیا ۔۔۔۔۔۔
تھینکیو ۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی بات نہیں ہماری پہلی دونوں ملاقاتیں اچھی نہیں رہی شکر اس بار کچھ تو اچھا ہوا ۔۔۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو کینزہ ہوسٹل چلے وہ جلدی سے اُٹھ کینزہ کے پاس پہنچی جو ایش سے باتوں میں مصروف تھی ۔۔۔۔۔۔
چلے میں چھوڑ دوں میر بھی اپنی جگہ سے جھٹ سے اُٹھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
----------------------------------
مزا آگیا یار آج تو اتنے دنوں کی بوریت ختم ہوگئی کینزہ اپنا جوتا اتراتے ہوئے بولی ۔۔۔۔۔
ہمیں نہیں جانا چاہیئے تھا کینزہ نہ جان نہ پہچان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چھوڑو بھی یار یہاں ہم میر کے علاوہ جانتے ہی کس کو ہے یہاں ۔۔۔۔۔۔
اچھا کیا جانتی ہو اسکے بارے میں بتاؤ مجھے دعا اپنی انکھیں بند کر بیڈ سے ٹیک لگائے ریلیکس ہونے کی کوشش کررہی تھی ۔۔۔۔۔
یہی وہ اسکا نام میر ہے یہی پڑھتا ہے پاس میں اسکا فلیٹ ہے کینزہ اپنے بالوں کا جوڑا بناتے بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
واہ اتنی زیادہ انفارمیشن؟  دعا مسکرائی ۔۔۔۔۔۔
نہیں ابھی ایک اندازہ بھی رہتا ہے میرا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی مس کینزہ وہ بھی بتا دیں اپ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا اب لیٹ کر گھر کا نمبر ڈھونڈنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ یہ ایش اور میر پیار کرتے ہیں شاید ۔۔۔۔۔۔۔
مجھے تو ایسا نہیں لگا دوست کی طرح ہی بات کررہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا گھر کے نمبر پر ٹچ کرنے والی تھی کہ انجان نمبر سے میسج ایا ۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا نے کھول کر دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
تھینکیو دعا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دعا نے اپنا نام دیکھتے ہی میسج لکھ اوکے کیا ۔۔۔۔۔۔۔
کون ہو اپ؟  اور تھینکنو کیوں؟
سوری  میں میر اور میرے فلیٹ پر انے کا شکریہ ۔۔۔۔۔۔۔
دعا جھٹ سے اُٹھ کر بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اپ نے میرا نمبر؟؟؟؟
جی اسکے لیے سوری اپکے موبائل کی سیٹنگ کرتے ہی میں نے اپنے نمبر پر بیل کی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں؟
سچ کہوں؟
کیوں اپ جھوٹ بولنے کا ارادہ رکھتے ہے؟  دعا نے میسج بھیج کینزہ کی طرف دیکھا جو سو چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جھوٹ نہیں بولنا چاہتا لیکن ڈر ہے ۔۔۔۔۔
کس بات کا؟
اپ غصہ نہ کرے ۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر ایسی بات ہے تو نہ جھوٹ بولے نہ سچ میرا نمبر بھی اپنے موبائل سے ڈیلیٹ کرے ابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پلیز دعا میری سُن لیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر میں نہ سُننا چاہوں ؟؟؟؟
میں پھر بھی سُناؤ گا دعا مجھے لگتا ہے میں نے جس دن سے اپکو دیکھا ہے مجھے کچھ اور اچھا نہیں لگتا کچھ اور یاد نہیں رہتا میں ہر وقت آپ کے بارے میں سوچتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میسج ریڈ کرتے ہی دعا نے فوراً نمبر بلاک کیا  اور گھر کال کردی 10 منٹ بات کرنے کے بعد وہ اُٹھ کر فرہش ہوئی اور سونے کے لیے لیٹ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
-------------------------
آج اتوار تھا اسلیے دعا اور کینزہ 11 بجے اُٹھیں فریش ہوئی اور ناشتہ کرنے کیفے چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔
ابھی انہوں نے ناشتہ شروع کیا ہی تھا کہ کوئی آکر انکی ٹیبل پر جُھکا دعا تو ڈر کر سیدھی ہوئی  ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہائے۔۔۔۔۔
ہیلو میر آجائے ہمارے ساتھ ناشتہ کرے کینزہ نے کافی بے تکلفی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ضرور وہ کرسی پر بیٹھ چکا تھا ۔۔۔۔۔۔
دعا کنفیوز  سی اپنا دوپٹہ سیٹ کرتی ہوئی اُٹھ کھڑی ہوئی میں روم میں جارہی ہوں تم آجانا ۔۔۔۔
دعا پلیز بیٹھو ہمارے ساتھ وہ کتنی بیچارگی سے بولا تھا ۔۔۔۔۔۔
میں نے ناشتہ کر لیا ہے  ۔۔۔۔۔۔۔
پھر بھی ہمارا ساتھ دینے کے لیے بیٹھ جاؤ پلیز ۔۔۔۔۔
بیٹھ جاؤ دعا ۔۔کینزہ بھی منہ میں نوالہ ڈالتے ہوئے بولی ۔۔۔۔۔۔
دعا نے میر کی طرف دیکھا اسکی کی انکھوں میں امید لہجے میں التجاء تھی ۔۔۔۔۔
وہ کینزہ کی طرف دیکھتی ہوئی بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
میر ناشتہ کرتے ہوئے مسلسل یہی سوچ رہا تھا کینزہ کو کس بہانے سے بھیجوں ۔۔۔۔۔
اسنے ناشتہ کرتے کرتے ہاتھ چائے کے کپ کو مارا جو کینزہ کی گود میں گِرا ۔۔۔۔
آآآآ وہ فوراً کھڑی ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ؟  دعا بھی کھڑی ہوئی ۔۔۔۔
سوری  میر بھی کھڑا ہوا
کچھ نہیں ہوا تم دونوں بیٹھو میں واش کر کے اتی ہوں نہیں میں چینچ کر کے لئے آتی ہوں وہ کہتے ہی دعا کی سُنے بغیر وہاں سے چلتی بنی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا بے بسی سے اسے جاتا دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیٹھے پلیز مجھے بات کرنی ہے ۔۔۔۔۔۔۔
اپ نے میرا نمبر بلاک کردیا وجہ جان سکتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وجہ اپ جانتے ہے وہ بہت دھیمی اواز میں بولی ۔۔۔۔۔۔۔
کیا کسی کو چاہنا گناہ ہے؟
چاہنا گناہ نہیں لیکن جو اپ کر رہے ہے وہ گناہ ہے ۔۔۔۔۔
میں کیا کر رہا ہوں؟  اسنے ناسمجھی میں دعا کی طرف دیکھا ۔۔
پہلے دن کی طرح بیوقوف بنا رہے ہے آپ میرے بارے میں کیا جانتے ہے ہمیں ملے دن ہی کتنے ہوئے ہے اور آپ محبت کے دعویدار بن گئے ؟
دعا نے بہت نرمی سے اپنی بات سامنے رکھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا محبت ٹائم کی پابند ہے؟
یا اس بات کی پابند ہے وہ جس سے کی جاری ہے اسے کتنا جانتی ہے ۔۔۔
پھر بھی یہ غلط ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر ایک جھٹکے سے کھڑا ہوا انکھوں میں نمی لیے وہ دعا کی انکھوں میں دیکھ کر بولا ۔۔۔۔
میری محبت کی توہین مت کریے آپکو یہ سب مذاق لگ رہا ہے ؟
وہ چلا گیا تھا دعا اسے تب تک دیکھتی رہی جب تک انکھوں سے اوجھل نہیں ہوا وہ نرم سا دل رکھنے والی  حساس لڑکی جو چھوٹی چھوٹی باتوں پر پریشان ہو جاتی وہ اس انجان شخص کے لیے بھی اتنی ہی پریشان ہوئی ۔۔۔۔۔۔
میر چلا گیا؟  کینزہ نے آتے ہی سوال کیا دوسرے ہی پل وہ دعا کو دیکھ ٹھٹھکی ۔۔۔۔
کیا ہوا رو کیوں رہی ہو؟  دعا کیا ہوا یار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما کی یاد آرہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جھوٹ سچ بتاو میر نے کچھ کہا ؟
روم میں چلو دعا اپنی انکھیں صاف کرتی ہوئی چل دی کینزہ بھی اسکی پیروی کرتی ہوئی روم میں اگئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بتاو کیا ہوا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
دعا کی دھڑکن تیز ہورہی تھی تیزی سے آنے کی وجہ سے اسکا سانس بھی پھول گیا تھا وہ روم میں اتے ہی پانی پینے لگی ۔۔۔۔
بتا بھی دو آخر ہوا کیا ہے دعا ۔۔۔۔۔۔
بیٹھو یہاں دعا نے اسکا ہاتھ کھینچا ۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا نے موبائل ٹوٹنے سے لے کر اب تک کی ساری بات کینزہ کو بتائی تو وہ منہ کھولے دعا کو دیکھنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اتنا کچھ ہو گیا اور تم نے مجھ سے چھپایا؟
چھپایا تو نہیں کینزہ بس بتایا نہیں مجھے بہت ڈر لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔
کس سے؟  مجھ سے؟  کینزہ نے قہقہ لگایا ۔۔۔ ۔۔۔
نہیں خود سے میں ایسا کوئی کام نہیں کرنا چاہتی جس سے بابا جانی کو تکلیف پہنچے ۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا؟  تم پاگل ہو  ؟ یار وہ تم سے اپنے دل کی بات کہہ رہا ہے کچھ غلط کرنے کو نہیں کہہ رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا تم بتاو کیا یہ بات میں گھر بتا سکتی ہوں؟ دعا نے اپنا رُخ کینزہ کی طرف موڑا ۔۔۔۔۔۔
نہیں ۔۔۔۔۔۔۔
تو یہ غلط ہی ہوا نہ جو بات  سب سے چھپانی پڑے وہ غلط ہی ہے  کینزہ میں ایک غلطی کر  چوروں والی زندگی نہیں گزار سکتی مجھے ایک ایک پل جھوٹ کا سہارا لینا ہوگا اور سب سے بڑھ کر میں نامحرم کی محبت میں پڑ کر گنہگار نہیں بننا چاہتی ۔۔۔۔۔۔
تو کیا کسی کا دل توڑنا ثواب ہے؟
کینزہ کے سوال پر دعا نے انکھیں جُھکا لی وہ تو پہلے ہی میر کی نم انکھیں بھول نہیں پارہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔

رات سونے سے پہلے وہ گھر بات کر لوشن لیے بستر پر آ بیٹھی ۔۔۔۔
نمبر ان بلاک کیا؟  کینزہ نے اپنے کپڑے الماری میں رکھتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔
وہ لوشن کھول ہاتھوں پر لگانے لگی  ۔۔۔۔۔۔
میں تم سے پوچھ رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں اور میں ان بلاک کروں گی بھی نہیں مجھے بابا جانی ماما جانی کو دھوکہ نہیں دینا ہے میں یہاں پڑھنے ائی ہوں ۔۔۔۔۔۔
اوکے جیسے تمہاری مرضی مجھے تو میر اچھے گھر کا لگا یار ہینڈسم ہے تم پتہ نہیں کیوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا اپ لیٹ کر منہ تک کمبل لے چکی تھی وہ اس بارے میں سوچنا نہیں چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ بھی سر جھٹکتی ہوئی لائٹس اوف کر لیٹ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا کو دور کہی موبائل کی آوازیں آرہی تھی لیکن وہ اسے پکڑ نہیں پارہی تھی پھر اچانک اسنے ڈر کر اپنی انکھیں کھولی پاس ٹیبل پر موبائل بج رہا تھا اسنے پکڑتے ہی تائم دیکھا رات کے 2 بج رہے تھے اسکا دل کانپ گیا تھا اتنی رات کو فون؟
اسلام و علیکم!
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔۔
کون؟  دعا نے موبائل کان سے ہٹا کر دیکھا وہ تو کوئی انجان نمبر تھا اتنی رات کو انے والی کال پر پریشان ہوتی ہوئی نمبر کو اگنور کر گئی تھی ۔۔۔۔۔۔
میں میر بات کرریا ہوں دعا اسکی آواز سن کر اندازہ لگا سکتی تھی وہ رو رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ رو رہے ہے؟
دعا مجھے تم سے محبت ہوگئی ہے میں  نہیں رہ سکتا تمہارے بغیر پلیز ۔۔۔۔
دیکھیے مجھے میرے گھر والوں نے بہت اعتماد کے ساتھ یہاں بھیجا ہے میں  انکا بھروسہ نہیں توڑ سکتی پلیز آپ ایسے نمبر بدل بدل کر مجھے تنگ نہیں کریں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شادی کرو گی مجھ سے؟
جی؟  وہ جو کینزہ کے سونے کی وجہ سے آہستہ بات کررہی تھی اچانک تیز آواز میں بولی ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں اگر ابھی نہیں کرنا چاہتی تو کوئی بات نہیں میں اپکا ویٹ کروں گا لیکن پلیز ابھی ایک دوست کی حیثیت سے ہی بات کر لیں پلیز دعا ۔۔   
تھی تو وہ بھی ایک لڑکی حساس نازک سا دل رکھنے والی جسکی عمر محض 18 سال تھی اسکی دھڑکن تیز ہوئی تھی نہ جانے رات کے اس پہر کیوں اسکو میر کا اپنے لیے رونا برا لگ رہا تھا اسکے منہ سے شادی کی بات سُن اسکی محبت پر یقین کا گماں ہوا ۔۔۔۔۔۔۔
اپ روئے تو نہیں پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔
اپ سو جائے صبح بات ہوگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے اپنا خیال رکھنا ۔۔۔۔۔۔۔
جی اللہ حافظ ۔۔۔۔۔۔۔
وہ موبائل رکھ لیٹی تو انکھوں سے نیند کوسو دور تھی ۔۔۔۔۔۔
کیا کروں؟  اللہ تعالیٰ پلیز مجھے سیدھا راستہ دیکھا وہ کروٹ بدل سونے کی کوشش کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حال۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ گھر آتے ہی میڈ کے ساتھ کھانا لگانے لگی عانبیہ اور دعا ٹیبل پر بیٹھی بھوک بھوک چِلا رہی تھیں رافعہ فریش ہوکر ٹیبل پر ائی تو دانیہ پلیٹس سیدھی کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔
دانیہ بیٹا رابی کھانا لگا لیتی تم فریش ہوجاتی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی بات نہیں ماما میرے بچوں نے مجھے فریش ہونے دینا تھا؟  جتنی بھوک انکو لگی ہے مجھے ہی کھا جانا تھا ۔۔۔۔۔۔
اس بات پر دانیہ اور رافعہ مسکرا دی ۔۔۔۔۔۔۔
وہ خود بھی پلیٹ میں چاول ڈال کر کھانے لگی  اب اپ دونوں نے کھانا کھاتے ہی سونا ہے جب اُٹھو گی تو پارک لے کر جاؤں گی ۔۔۔
دعا  نے اپنی چاول والی پلیٹ اُٹھا کر زمین پر دے ماری  اپنے دونوں  ہاتھ سینے پر باندھے اپنا غصہ ظاہر کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ اُٹھ اسکے قریب ائی کیا ہوا میری جان ؟
اسنے دعا کے کندھے پر ہاتھ رکھنا چاہا جسکو وہ غصے سے جھٹک گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے نہیں لگاؤں گی ہاتھ پکا بتاؤ کس بات کا غصہ ہے؟
پارک جانا سونا نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس اتنی سی بات پر غصہ چلو کھانا کھاؤ پھر چلتے ہیں اسنے دوسری پلیٹ دعا کے سامنے رکھی اور چاول ڈالنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔
کھانے کے بعد وہ وہ دونوں کو لیے پارک ائی تھی پوری دنیا میں یہ وہ واحد جگہ تھی جہاں اکر دعا خوش ہوتی پارک انے کے لیے وہ ہر بات مان جاتی تھی دوائی سے لے کر انجیکشن تک دعا سے کچھ بھی منوانا ہوتا تو پارک کا نام لینے سے وہ جھٹ سے مان جاتی  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا بچوں کی طرح جھولے لیتی خوش ہورہی تھی دانیہ  نےاسکا دوپٹہ گلے میں ڈال پیچھے گِرا لگا رکھی تھی وہ اسے لیڈیز پارک ہی لاتی کیوں کہ جسکا ہاتھ ہمیشہ اپنا دوپٹہ سیٹ کرنے میں لگا رہتا تھا اب وہ اس دوپٹے کی اہمیت سے بہت دور کھڑی تھی ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔Don't copy or paste anywhere without my permission..
تیرے عشق میں پاگل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسط نمبر  چار …….👇👇👇👇👇👇
بقلم ۔۔۔۔۔۔۔سدرہ حسین ۔۔۔۔
دانیہ بہت تھک چکی تھی لیکن دعا اور عانبیہ کو اتنا خوش دیکھ گھر جانے کو دل نہیں کررہا تھا وہ اپنا موبائل نکال کائنات کو کال کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔
اسلام و علیکم!
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔۔۔کتنے دن ہو گئے تم نے چکر ہی نہیں لگایا  اسکے کال رسیو کرتے ہی دانیہ نے شکوہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ  میں بہت بزی تھی میری نند ائی ہوئی تھی اج ہی گئی ہے تم بتاو سب ٹھیک ہو؟
ہاں ۔۔۔۔۔اس نے ایک گہری سانس لی ۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا دانیہ پریشان ہو؟
اسنے اپنی انگلی سے انکھوں میں آتی نمی کو صاف کیا ۔۔۔۔۔۔۔
دعا نے آج پھر اپنی کلائی پر کٹ لگا لیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ٹھیک ہے نہ؟
ہاں پارک لے کر ائی ہوں مجھے لگتا ہے کائنات میں اپنی ذمداریا نبھا نہیں پارہی میں جتنی بھی کوشش کروں کچھ نہ کچھ غلط ہو ہی جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں میری جان ایسا نہ سوچو جس طرح تم نے سب سنبھال لیا ہے اگر میں وہاں ہوتی تو شاید اتنا بھی نہ کر پاتی  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کائنات کی آواز بھاری ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کائنات پلیز اب تم تو پریشان نہیں ہو میں تو بس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں دانیہ میں شاید تمہارے احسان کبھی نہیں اتار سکتی ۔۔۔۔۔۔
یہ کہہ کر تم مجھے شرمندہ کررہی ہو۔۔۔۔۔۔
چلو چھوڑو سب۔۔۔۔۔تم سب کے ساتھ ساتھ اپنا بھی خیال رکھا کرو میں جلد چکر لگاؤں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے اللہ حافظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو بچوں گھر جانے کا ٹائم ہوگیا ہے وہ فون بند کرتے ہی انکی طرف آئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماضی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اج وہ صبح سے دعا کررہی تھی میر نہ تو فون کرے نہ ہی اس سے سامنا ہو لیکن شاید قسمت میں کچھ اور ہی لکھا تھا وہ  اپنا بیگ کندھے پر ڈالے ہاتھ میں بُکس پکڑے کینزہ کے ساتھ باتیں کرتی اپنی کلاس سے باہر. آرہی تھی سامنے سے اتے میر پر نظر پڑی  تو وہ ٹھٹھک کر رک گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر نے کینزہ سے تھوڑا ٹائم مانگا تو اسنے دعا کی طرف دیکھتے ہوئے اثبات میں سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔
پلیز دعا ایک بار یم بیٹھ کر بات کر لے ؟
یہ ٹھیک نہیں ہے دعا بہت بے بسی سے بولی ۔۔۔۔
پلیز  ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے وہ لان میں ہی بیٹھ گئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔
دعا میری طرف دیکھو کیا تمہیں مجھ پر یقین نہیں؟
نہیں ۔۔۔دعا کے منہ سے بے اختیار لیکن سچ نکلا تھا وہ رات سے یہی تو سوچ رہی تھی  لوگ تو نبھانے سے زیادہ چھوڑ جانے میں مہارت رکھتے ہیں دعا کی زندگی میں پہلی بار کوئی کوئی محبت کا اظہار کر رہا تھا وہ سکول کے بعد گرلز کالج میں ہی پڑھی تھی یہاں میر کا اظہارے محبت اسکے دل میں کوئی دستک دے رہا تھا لیکن وہ ڈر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
اتنی تکلیف نہ دو دعا میر نے اپنی انکھیں گھماتے ہوئے کہا جیسے وہ خود کو رونے سے روک رہا ہو ۔۔۔۔
میں کسی کو تکلیف نہیں پہچانا چاہتی  پلیز مجھے فورس نہیں کریں۔۔۔۔
میں بھی دل کے ہاتھوں مجبور ہوں دعا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے سوچنے کے لیے ٹائم چاہیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیا ٹائم دیا لیکن مجھے نہ نہیں کرنا دعا پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے جانا چاہیئے وہ دوپٹہ ٹھیک کرتی ہوئی کھڑی ہوئی
دعا ایک ریکویسٹ ہے ۔۔۔۔
جی؟
میرا نمبر ان بلاک کردو ۔۔۔۔۔۔
اوکے ۔۔اللہ حافظ
وہ کہتے ہی وہاں سے سیدھی ہوسٹل ائی ۔۔۔۔۔
دروازہ بند کر وہ پریشان سی اپنا دوپٹہ بیڈ پر پھینک کر بیڈ سے ٹیک لگائے زمین پر بیٹھ گئی تھی وہ گھٹنوں میں سر دینے کتنی دیر وہاں بیٹھی میر کو سوچ رہی تھی ۔۔۔۔۔
کوئی بُڑائی نہیں میر میں اچھے گھر کا ہے گڈ لوکنگ ہے تو کیا میں گھر بتا دوں؟
شادی تو ایک دن ہونی ہی ہے تو میر سے ہی سہی جو مجھ سے محبت کرتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اپنی سوچوں میں گم تھی جب کینزہ نے دروازہ نوک کیا ۔۔۔
وہ جلدی سے اُٹھ اپنا دوپٹہ لیے دروازہ کھولنے کے لیے اگے بڑھی ۔۔۔۔
تم آگئی؟ مجھے بتایا بھی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسنے روم میں اتے ہی منہ بنایا ۔۔۔۔۔۔
دعا نے اسکے پوچھے بغیر ساری بات اسے بتا دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رات وہ سونے سے پہلے گھر بات کرتے ہی موبائل سائیڈ ٹیبل پر رکھنے لگی تو اسے میر کا خیال ایا اسنے موبائل دوبارہ منہ کے سامنے کیا اور اسکا نمبر ان بلاک کیا ۔
اسنے موبائل رکھنے کے لیے ہاتھ بڑھایا ہی تھا کہ میسج کی ٹیون پر پھر سے موبائل منہ کے سامنے کیا ۔۔۔۔
تھینکیو کا میسج اسکو کیسے پتہ چلا میں نے نمبر ان بلاک کردیا ہے اسنے ایک نظر کینزہ کو دیکھا جو گہری نیند میں تھی ۔۔۔۔۔
میر محبت زبردستی کی قائل نہیں ہے میں بس اتنا کر سکتی ہوں کہ گھر والوں سے بات کروں ۔۔۔۔۔۔۔
اسنے مسیج لکھ اوکے کردیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے کوئی اعتراض نہیں لیکن اس سے پہلے میں چاہتا ہوں اپ مجھے سمجھ لے تھوڑا سا ٹائم تو دیں ہمارے رشتے کو دعا مجھے یقین ہے کل بہت خوبصورت ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عورت کو کیا چاہیے ہوتا ہے؟  عزت؟  محبت؟  جو میر کے لفظوں سے صاف واضح تھیں ۔۔۔۔۔۔
اوکے میر لیکن میں زیادہ دیر گھر والوں سے نہیں چھپاؤں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی میں بھی یہی چاہوں گا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ تقریباً ایک گھنٹے سے چیٹنگ کررہے تھے اس دوران دونوں نے اپنی اپنی فیملیز کے بارے میں ایک دوسرے کو بتایا ۔۔
اوکے اب سونا چاہیے دعا کو اب نیند آرہی تھی  ۔۔۔۔۔۔
جی بلکل سو جاؤ کوئی بھی مسئلہ ہو مجھے میسج کردینا ۔۔۔۔
اوکے اللہ حافظ ۔۔۔۔۔
اپنا بہت خیال رکھنا دعا اللہ حافظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  ۔
دن گزر رہے تھے دعا اور میر زیادہ رات کو میسج پر ہی بات کرتے دعا نے کالج میں بات کرنے سے منع کیا تھا ۔۔۔۔۔۔
میں صبح گھر جارہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دعا نے لیٹتے ہی میسج کیا ۔۔
نو یار میں نے سوچا تھا کل ڈنر پر چلے گے ۔۔۔۔
اگر میں گھر نہیں بھی جاتی تو  بھی اپکے ساتھ ڈنر پر نہیں جانا تھا ۔۔۔۔
وہ کیوں ۔۔۔۔۔۔۔۔
جب تک ہم اپنے گھروں میں بات نہیں کرلیتے انکی رضا مندی نہیں لے لیتے تب تک ویٹ کرلے میر پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے کوئی بات نہیں دعا جیسے تمہیں بہتر لگے ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہر گزرتے دن کے ساتھ دعا کے دل میں میر کی محبت اپنا سر اُٹھا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔اسکا دعا کی ہر بات پر جُھک جانا اسکی فکر کرنا اسکے دل میں میر کے لیے جذبات اُمڈ رہے تھے  ۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک بات کہوں دعا؟
جی  کہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
تم ابھی اپنے گھر میں بات نہیں کرنا پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی اس بار نہیں کروں گی کیوں کہ پہلی بار گھر جارہی ہوں لیکن اگلی بار ضرور کروں گی میں زیادہ دیر تک نہیں چُھپا سکوں گی ۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے دعا جیسے تم خوش ۔۔۔۔۔۔

وہ تین ہفتوں بعد گھر ائی تو گھر میں عید کا سما لگ رہا تھا سارا کھانا دعا کی پسند کا بنا کائنات بھی ائی ہوئی تھی سب ہال میں بیٹھے باتیں کررہے تھے دعا اپنے بابا کا بازو دونوں ہاتھوں سے تھامے انکے کندھے پر اپنا سر ٹکائے بیٹھی تھی ۔
بہت مس کیا بابا جانی میں نے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رافعہ مسکرا دی اچھا جی ایسا لگ رہا ہے بس بابا کو ہی مس کیا ہے میری بیٹی نے ۔۔۔۔
نہیں ماما جانی آپکو بھاٹی کو بھابھی آپی سب کو کیا لیکن اپنے بابا جانی کو سب سے زیادہ اسنے باپ کا نام لیتے ہی انکے بازو پر اپنی گرفت مضبوط کی  ۔۔۔۔۔۔۔
عابد صاحب نے اپنا ہاتھ دعا کے سر پر رکھا تو دعا رونے لگی ۔۔۔
کیا ہو گیا میری بچی اگر وہاں دل نہیں لگ رہا تو واپس اجاو میں یہاں ایڈمشن کروا دوں گا ۔۔۔۔
وہ رونے ہوئے بس نفی میں سر ہلا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
فرقان اُٹھ کر دعا کے سامنے گھٹنوں کے بل بیٹھا گڑیا کیوں پریشان کررہی ہو میری جان کچھ ہوا ہے وہاں؟
نہیں تو  وہ ڈر سے سیدھی ہوکر بیٹھی اگر بھائی کو میر کے بارے میں پتہ چل گیا تو اسنے اپنی نظر بابا کی طرف گھمگئی
 دعا کو دیکھ رہے تھے میں اگلی بار آؤں گی تو میر کے بارے میں بتا دوں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔
پھر آنسوں صاف کرو اور چلو آئسکریم کھانے چلتے ہیں وہ بھائی کی بات پر چونکی ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں میں بہت تھکی ہوئی ہوں کل چلے گے  ۔۔۔
ہاں دعا ٹھیک کہہ رہی ہے کل چلے گے وہ تھکی ہوئی ہے اج رہنے دیں میں چائے لاتی ہوں دانیہ کہتے ہی چائے لینے چلے گئی
حال۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر گھر ایا تو کھانے سے انکار کر وہ اپنے کمرے میں آگیا اپنے گلاسز اور گھڑی اتار کر ڈریسنگ ٹیبل پر رکھتے ہوئے وہ خود کو آئینے میں دیکھنے لگا کیا کوئی انسان اتنا بھی بے حس ہو سکتا ہے اسنے اپنے کسی خیال تحت اپنا فون جیب سے نکالا اور ایش کو فون ملایا جو پچھلے دو سال سے اسکی منگیتر بھی تھی  ۔۔۔۔۔
ہیلو ہینڈسم!
میر فون کان کو لگائے بیڈ پر سیدھا لیٹ چکا تھا شوز پہننے کی وجہ سے پاؤں بیڈ سے نیچے لٹک رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر؟
ہاں؟
بولو یار تم تو ڈرا رہے ہو وہ کہتے ہی مسکرائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈر تو آج میں گیا ہوں ایش اسنے اپنی انکھیں بند کرلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا ؟ آج تو ہوسپٹل میں پہلا دن تھا کیسا رہا؟
میں نے دعا کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا؟
ایش نے اپنے دماغ پر زور دیا ۔۔۔۔۔۔
ہاں اسلام آباد کالج والی دعا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میر نے اسے یاد کروانا چاہا
اہ ہاں وہ پاگل دعا ساتھ ہی اسکا قہقہ گونجا تھا اسے ایک پل لگا تھا اسے یاد کرنے میں ۔۔۔۔۔۔۔
ہاں وہ پاگل دعا میر  نے آہستہ سے دہرایا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا کہاں دیکھا ہوسپٹل میں؟  جاب کرتی ہے؟  اسنے تو کالج چھوڑ دیا تھا؟  ایش نے ایک ساتھ کتنے سوال کیے لیکن میر سُن نہیں رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا میر بولو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایش؟
ہاں سُن رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
انسان کسی بہت برے گناہ کا مرتکب ہونے باوجود اس گناہ سے لاتعلق ہوسکتا ہے؟
کیا ہو گیا ہے میر دعا نے کہی سُنا تو نہیں دی  ؟
ایک بات بتاو ایش ………..وہ ابھی تک اسی پوزیشن میں لیٹا تھا ۔۔۔
تمہیں یقین ہے جو میرے فلیٹ پر تم لوگوں نے دیکھا وہ سچ تھا؟
کیوں نہیں تھا؟ اسنے سوال پر سوال کرنے میں ایک سیکنڈ نہیں لگایا تھا ۔۔۔۔
ایش تم ڈیوٹی پر ہو؟
ہاں کل بتایا تو تھا نائٹ ڈیوٹی چل رہی ہے آجکل ۔۔۔۔۔
اوکے پھر بات کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔
لیکن؟  ایش کی سُنے بغیر وہ فون بند کرچکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔

دانیہ اپنے کمرے میں لیٹی سونے کی کوشش کررہی تھی جب دروازہ نوک ہوا
آجائے ۔۔۔۔۔۔۔۔اسکی آواز پر رافعہ دروازہ کھول روم میں ائی ۔۔۔۔۔
ماما آپ؟  مجھے بلوا لیتی ۔۔۔۔۔دانیہ بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔
عانبیہ سو گئی؟  جی ۔۔۔۔
بیٹا کیا سوچا پھر تم نے؟
کس بارے میں ماما؟  وہ شاید جان کر بھی انجان بن رہی تھی ۔۔۔
رشتے کے بارے میں اچھا لڑکا ہے تمہیں خوش رکھے گا بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما، میں آپ کو چھوڑ کر نہیں جاسکتی کہی بھی پلیز یہ ضد چھوڑ دیں ۔۔۔۔
دعا کو میری ضرورت ہے اسکی آواز بھاری ہوگئی تھی ۔۔۔
لیکن میں ایک بیٹی کے لیے دوسری بیٹی کی زندگی خراب نہیں کرسکتی انہوں نے اپنے آنسو صاف کیے ۔دانیہ انکی گود میں سر رکھ کر لیٹ گئی ۔۔۔۔۔۔
ماما میں بھی فرقان کی جگہ کسی کو نہیں دے سکتی ان سے کیے گئے وعدے نہیں توڑ سکتی ماما آج بھی انکھیں بند کرتی ہوں تو فرقان کے الفاظ میرے کانوں میں گونجتے ہیں ماما پلیز مجھے فورس نہیں کریں میں خوش ہوں اپکے ساتھ اپنے بچوں کے ساتھ بہت خوش ہوں بس دعا کے لیے اللہ سے دعا کیا کرے وہ جلد ٹھیک ہوجائے رافعہ نے اپنے آنسوں صاف کیے اور دانیہ کے ماتھے پر پیار کیا اب وہ واقعی فورس نہیں کرنا چاہتی تھی وہ اسکے بال سہلانے لگی دانیہ جلد ہی سو گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میر نے بہت کوشش کی سونے کی لیکن بے سود رات کے 2 بج رہے تھے اسنے پھر سے ایش کو کال ملائی ۔۔۔۔۔۔۔
میر تم سوئے نہیں؟  اسنے کال اٹینڈ کرتے ہی حیرانگی سے سوال کیا ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں اور مجھے لگتا ہے میں اب کبھی نہیں سو پاؤں گا ۔۔۔۔۔
کیوں آخر ہوا کیا ہے تم کیوں پریشان ہو میر شیئر کرسکتے ہو وہ اب فکرمند ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا پاگل ہے ۔۔۔۔۔۔
ہاہاہاہاہا جانتی ہوں تم اس بات پر آج پریشان ہورہے ہو؟
وہ واقعی پاگل ہے اسنے زور دے کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہا اسکا مطلب یہ ہے وہ ذرا بھی نہیں بدلی ؟
میر کے صبر کی انتہاء ہوگئی تھی اسکے آنسوں اب لڑی کی صورت گِرنے لگے وہ سچ میں پاگل ہوگئی ہے اس نے روتے ہوئے مشکل سے یہ الفاظ ادا کیے ۔۔۔۔۔۔۔۔
ایش خاموش تھی یا بات سمجھنے  کی کوشش کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہیں کیسے پتہ چلا ؟
اسنے اپنی کلائی کاٹ لی تھی ہوسپٹل میں تھی ایش وہ پہلے جیسی بلکل نہیں لگ رہی  انکھوں کے نیچے ہلکے ہاتھوں پر خود کو دی گئی اذیتوں کے نشان ۔۔۔۔۔۔۔۔میر کو اپنا بولنا مشکل لگ رہا تھا وہ مرجھائی سی اب اسکو اپنے سر پر دوپٹہ ہونے یا نہ ہونے سے بھی فرق نہیں پڑتا مجھے لگ رہا ہے میرا دماغ پھٹ جائے گا ۔۔۔۔۔۔
ایش کا دماغ ماؤف ہوگیا تھا وہ بولنا چاہ رہی تھی لیکن الفاظ کہی دم توڑ چکے تھے وہ میر کے کو تسلی دینا چاہ رہی تھی لیکن زبان برف کی مانند محسوس ہورہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ بہت تھک چکی تھی لیکن دعا اور عانبیہ کو اتنا خوش دیکھ گھر جانے کو دل نہیں کررہا تھا وہ اپنا موبائل نکال کائنات کو کال کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔
اسلام و علیکم!
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔۔۔کتنے دن ہو گئے تم نے چکر ہی نہیں لگایا  اسکے کال رسیو کرتے ہی دانیہ نے شکوہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ  میں بہت بزی تھی میری نند ائی ہوئی تھی اج ہی گئی ہے تم بتاو سب ٹھیک ہو؟
ہاں ۔۔۔۔۔اس نے ایک گہری سانس لی ۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا دانیہ پریشان ہو؟
اسنے اپنی انگلی سے انکھوں میں آتی نمی کو صاف کیا ۔۔۔۔۔۔۔
دعا نے آج پھر اپنی کلائی پر کٹ لگا لیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ٹھیک ہے نہ؟
ہاں پارک لے کر ائی ہوں مجھے لگتا ہے کائنات میں اپنی ذمداریا نبھا نہیں پارہی میں جتنی بھی کوشش کروں کچھ نہ کچھ غلط ہو ہی جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں میری جان ایسا نہ سوچو جس طرح تم نے سب سنبھال لیا ہے اگر میں وہاں ہوتی تو شاید اتنا بھی نہ کر پاتی  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کائنات کی آواز بھاری ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کائنات پلیز اب تم تو پریشان نہیں ہو میں تو بس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں دانیہ میں شاید تمہارے احسان کبھی نہیں اتار سکتی ۔۔۔۔۔۔
یہ کہہ کر تم مجھے شرمندہ کررہی ہو۔۔۔۔۔۔
چلو چھوڑو سب۔۔۔۔۔تم سب کے ساتھ ساتھ اپنا بھی خیال رکھا کرو میں جلد چکر لگاؤں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے اللہ حافظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو بچوں گھر جانے کا ٹائم ہوگیا ہے وہ فون بند کرتے ہی انکی طرف آئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماضی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اج وہ صبح سے دعا کررہی تھی میر نہ تو فون کرے نہ ہی اس سے سامنا ہو لیکن شاید قسمت میں کچھ اور ہی لکھا تھا وہ  اپنا بیگ کندھے پر ڈالے ہاتھ میں بُکس پکڑے کینزہ کے ساتھ باتیں کرتی اپنی کلاس سے باہر. آرہی تھی سامنے سے اتے میر پر نظر پڑی  تو وہ ٹھٹھک کر رک گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر نے کینزہ سے تھوڑا ٹائم مانگا تو اسنے دعا کی طرف دیکھتے ہوئے اثبات میں سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔
پلیز دعا ایک بار یم بیٹھ کر بات کر لے ؟
یہ ٹھیک نہیں ہے دعا بہت بے بسی سے بولی ۔۔۔۔
پلیز  ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے وہ لان میں ہی بیٹھ گئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔
دعا میری طرف دیکھو کیا تمہیں مجھ پر یقین نہیں؟
نہیں ۔۔۔دعا کے منہ سے بے اختیار لیکن سچ نکلا تھا وہ رات سے یہی تو سوچ رہی تھی  لوگ تو نبھانے سے زیادہ چھوڑ جانے میں مہارت رکھتے ہیں دعا کی زندگی میں پہلی بار کوئی کوئی محبت کا اظہار کر رہا تھا وہ سکول کے بعد گرلز کالج میں ہی پڑھی تھی یہاں میر کا اظہارے محبت اسکے دل میں کوئی دستک دے رہا تھا لیکن وہ ڈر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
اتنی تکلیف نہ دو دعا میر نے اپنی انکھیں گھماتے ہوئے کہا جیسے وہ خود کو رونے سے روک رہا ہو ۔۔۔۔
میں کسی کو تکلیف نہیں پہچانا چاہتی  پلیز مجھے فورس نہیں کریں۔۔۔۔
میں بھی دل کے ہاتھوں مجبور ہوں دعا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے سوچنے کے لیے ٹائم چاہیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیا ٹائم دیا لیکن مجھے نہ نہیں کرنا دعا پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے جانا چاہیئے وہ دوپٹہ ٹھیک کرتی ہوئی کھڑی ہوئی
دعا ایک ریکویسٹ ہے ۔۔۔۔
جی؟
میرا نمبر ان بلاک کردو ۔۔۔۔۔۔
اوکے ۔۔اللہ حافظ
وہ کہتے ہی وہاں سے سیدھی ہوسٹل ائی ۔۔۔۔۔
دروازہ بند کر وہ پریشان سی اپنا دوپٹہ بیڈ پر پھینک کر بیڈ سے ٹیک لگائے زمین پر بیٹھ گئی تھی وہ گھٹنوں میں سر دینے کتنی دیر وہاں بیٹھی میر کو سوچ رہی تھی ۔۔۔۔۔
کوئی بُڑائی نہیں میر میں اچھے گھر کا ہے گڈ لوکنگ ہے تو کیا میں گھر بتا دوں؟
شادی تو ایک دن ہونی ہی ہے تو میر سے ہی سہی جو مجھ سے محبت کرتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اپنی سوچوں میں گم تھی جب کینزہ نے دروازہ نوک کیا ۔۔۔
وہ جلدی سے اُٹھ اپنا دوپٹہ لیے دروازہ کھولنے کے لیے اگے بڑھی ۔۔۔۔
تم آگئی؟ مجھے بتایا بھی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسنے روم میں اتے ہی منہ بنایا ۔۔۔۔۔۔
دعا نے اسکے پوچھے بغیر ساری بات اسے بتا دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رات وہ سونے سے پہلے گھر بات کرتے ہی موبائل سائیڈ ٹیبل پر رکھنے لگی تو اسے میر کا خیال ایا اسنے موبائل دوبارہ منہ کے سامنے کیا اور اسکا نمبر ان بلاک کیا ۔
اسنے موبائل رکھنے کے لیے ہاتھ بڑھایا ہی تھا کہ میسج کی ٹیون پر پھر سے موبائل منہ کے سامنے کیا ۔۔۔۔
تھینکیو کا میسج اسکو کیسے پتہ چلا میں نے نمبر ان بلاک کردیا ہے اسنے ایک نظر کینزہ کو دیکھا جو گہری نیند میں تھی ۔۔۔۔۔
میر محبت زبردستی کی قائل نہیں ہے میں بس اتنا کر سکتی ہوں کہ گھر والوں سے بات کروں ۔۔۔۔۔۔۔
اسنے مسیج لکھ اوکے کردیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے کوئی اعتراض نہیں لیکن اس سے پہلے میں چاہتا ہوں اپ مجھے سمجھ لے تھوڑا سا ٹائم تو دیں ہمارے رشتے کو دعا مجھے یقین ہے کل بہت خوبصورت ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عورت کو کیا چاہیے ہوتا ہے؟  عزت؟  محبت؟  جو میر کے لفظوں سے صاف واضح تھیں ۔۔۔۔۔۔
اوکے میر لیکن میں زیادہ دیر گھر والوں سے نہیں چھپاؤں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی میں بھی یہی چاہوں گا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ تقریباً ایک گھنٹے سے چیٹنگ کررہے تھے اس دوران دونوں نے اپنی اپنی فیملیز کے بارے میں ایک دوسرے کو بتایا ۔۔
اوکے اب سونا چاہیے دعا کو اب نیند آرہی تھی  ۔۔۔۔۔۔
جی بلکل سو جاؤ کوئی بھی مسئلہ ہو مجھے میسج کردینا ۔۔۔۔
اوکے اللہ حافظ ۔۔۔۔۔
اپنا بہت خیال رکھنا دعا اللہ حافظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  ۔
دن گزر رہے تھے دعا اور میر زیادہ رات کو میسج پر ہی بات کرتے دعا نے کالج میں بات کرنے سے منع کیا تھا ۔۔۔۔۔۔
میں صبح گھر جارہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دعا نے لیٹتے ہی میسج کیا ۔۔
نو یار میں نے سوچا تھا کل ڈنر پر چلے گے ۔۔۔۔
اگر میں گھر نہیں بھی جاتی تو  بھی اپکے ساتھ ڈنر پر نہیں جانا تھا ۔۔۔۔
وہ کیوں ۔۔۔۔۔۔۔۔
جب تک ہم اپنے گھروں میں بات نہیں کرلیتے انکی رضا مندی نہیں لے لیتے تب تک ویٹ کرلے میر پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے کوئی بات نہیں دعا جیسے تمہیں بہتر لگے ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہر گزرتے دن کے ساتھ دعا کے دل میں میر کی محبت اپنا سر اُٹھا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔اسکا دعا کی ہر بات پر جُھک جانا اسکی فکر کرنا اسکے دل میں میر کے لیے جذبات اُمڈ رہے تھے  ۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک بات کہوں دعا؟
جی  کہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
تم ابھی اپنے گھر میں بات نہیں کرنا پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی اس بار نہیں کروں گی کیوں کہ پہلی بار گھر جارہی ہوں لیکن اگلی بار ضرور کروں گی میں زیادہ دیر تک نہیں چُھپا سکوں گی ۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے دعا جیسے تم خوش ۔۔۔۔۔۔

وہ تین ہفتوں بعد گھر ائی تو گھر میں عید کا سما لگ رہا تھا سارا کھانا دعا کی پسند کا بنا کائنات بھی ائی ہوئی تھی سب ہال میں بیٹھے باتیں کررہے تھے دعا اپنے بابا کا بازو دونوں ہاتھوں سے تھامے انکے کندھے پر اپنا سر ٹکائے بیٹھی تھی ۔
بہت مس کیا بابا جانی میں نے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رافعہ مسکرا دی اچھا جی ایسا لگ رہا ہے بس بابا کو ہی مس کیا ہے میری بیٹی نے ۔۔۔۔
نہیں ماما جانی آپکو بھاٹی کو بھابھی آپی سب کو کیا لیکن اپنے بابا جانی کو سب سے زیادہ اسنے باپ کا نام لیتے ہی انکے بازو پر اپنی گرفت مضبوط کی  ۔۔۔۔۔۔۔
عابد صاحب نے اپنا ہاتھ دعا کے سر پر رکھا تو دعا رونے لگی ۔۔۔
کیا ہو گیا میری بچی اگر وہاں دل نہیں لگ رہا تو واپس اجاو میں یہاں ایڈمشن کروا دوں گا ۔۔۔۔
وہ رونے ہوئے بس نفی میں سر ہلا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
فرقان اُٹھ کر دعا کے سامنے گھٹنوں کے بل بیٹھا گڑیا کیوں پریشان کررہی ہو میری جان کچھ ہوا ہے وہاں؟
نہیں تو  وہ ڈر سے سیدھی ہوکر بیٹھی اگر بھائی کو میر کے بارے میں پتہ چل گیا تو اسنے اپنی نظر بابا کی طرف گھمگئی
 دعا کو دیکھ رہے تھے میں اگلی بار آؤں گی تو میر کے بارے میں بتا دوں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔
پھر آنسوں صاف کرو اور چلو آئسکریم کھانے چلتے ہیں وہ بھائی کی بات پر چونکی ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں میں بہت تھکی ہوئی ہوں کل چلے گے  ۔۔۔
ہاں دعا ٹھیک کہہ رہی ہے کل چلے گے وہ تھکی ہوئی ہے اج رہنے دیں میں چائے لاتی ہوں دانیہ کہتے ہی چائے لینے چلے گئی
حال۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر گھر ایا تو کھانے سے انکار کر وہ اپنے کمرے میں آگیا اپنے گلاسز اور گھڑی اتار کر ڈریسنگ ٹیبل پر رکھتے ہوئے وہ خود کو آئینے میں دیکھنے لگا کیا کوئی انسان اتنا بھی بے حس ہو سکتا ہے اسنے اپنے کسی خیال تحت اپنا فون جیب سے نکالا اور ایش کو فون ملایا جو پچھلے دو سال سے اسکی منگیتر بھی تھی  ۔۔۔۔۔
ہیلو ہینڈسم!
میر فون کان کو لگائے بیڈ پر سیدھا لیٹ چکا تھا شوز پہننے کی وجہ سے پاؤں بیڈ سے نیچے لٹک رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر؟
ہاں؟
بولو یار تم تو ڈرا رہے ہو وہ کہتے ہی مسکرائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈر تو آج میں گیا ہوں ایش اسنے اپنی انکھیں بند کرلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا ؟ آج تو ہوسپٹل میں پہلا دن تھا کیسا رہا؟
میں نے دعا کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا؟
ایش نے اپنے دماغ پر زور دیا ۔۔۔۔۔۔
ہاں اسلام آباد کالج والی دعا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میر نے اسے یاد کروانا چاہا
اہ ہاں وہ پاگل دعا ساتھ ہی اسکا قہقہ گونجا تھا اسے ایک پل لگا تھا اسے یاد کرنے میں ۔۔۔۔۔۔۔
ہاں وہ پاگل دعا میر  نے آہستہ سے دہرایا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا کہاں دیکھا ہوسپٹل میں؟  جاب کرتی ہے؟  اسنے تو کالج چھوڑ دیا تھا؟  ایش نے ایک ساتھ کتنے سوال کیے لیکن میر سُن نہیں رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا میر بولو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایش؟
ہاں سُن رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
انسان کسی بہت برے گناہ کا مرتکب ہونے باوجود اس گناہ سے لاتعلق ہوسکتا ہے؟
کیا ہو گیا ہے میر دعا نے کہی سُنا تو نہیں دی  ؟
ایک بات بتاو ایش ………..وہ ابھی تک اسی پوزیشن میں لیٹا تھا ۔۔۔
تمہیں یقین ہے جو میرے فلیٹ پر تم لوگوں نے دیکھا وہ سچ تھا؟
کیوں نہیں تھا؟ اسنے سوال پر سوال کرنے میں ایک سیکنڈ نہیں لگایا تھا ۔۔۔۔
ایش تم ڈیوٹی پر ہو؟
ہاں کل بتایا تو تھا نائٹ ڈیوٹی چل رہی ہے آجکل ۔۔۔۔۔
اوکے پھر بات کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔
لیکن؟  ایش کی سُنے بغیر وہ فون بند کرچکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔

دانیہ اپنے کمرے میں لیٹی سونے کی کوشش کررہی تھی جب دروازہ نوک ہوا
آجائے ۔۔۔۔۔۔۔۔اسکی آواز پر رافعہ دروازہ کھول روم میں ائی ۔۔۔۔۔
ماما آپ؟  مجھے بلوا لیتی ۔۔۔۔۔دانیہ بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔
عانبیہ سو گئی؟  جی ۔۔۔۔
بیٹا کیا سوچا پھر تم نے؟
کس بارے میں ماما؟  وہ شاید جان کر بھی انجان بن رہی تھی ۔۔۔
رشتے کے بارے میں اچھا لڑکا ہے تمہیں خوش رکھے گا بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما، میں آپ کو چھوڑ کر نہیں جاسکتی کہی بھی پلیز یہ ضد چھوڑ دیں ۔۔۔۔
دعا کو میری ضرورت ہے اسکی آواز بھاری ہوگئی تھی ۔۔۔
لیکن میں ایک بیٹی کے لیے دوسری بیٹی کی زندگی خراب نہیں کرسکتی انہوں نے اپنے آنسو صاف کیے ۔دانیہ انکی گود میں سر رکھ کر لیٹ گئی ۔۔۔۔۔۔
ماما میں بھی فرقان کی جگہ کسی کو نہیں دے سکتی ان سے کیے گئے وعدے نہیں توڑ سکتی ماما آج بھی انکھیں بند کرتی ہوں تو فرقان کے الفاظ میرے کانوں میں گونجتے ہیں ماما پلیز مجھے فورس نہیں کریں میں خوش ہوں اپکے ساتھ اپنے بچوں کے ساتھ بہت خوش ہوں بس دعا کے لیے اللہ سے دعا کیا کرے وہ جلد ٹھیک ہوجائے رافعہ نے اپنے آنسوں صاف کیے اور دانیہ کے ماتھے پر پیار کیا اب وہ واقعی فورس نہیں کرنا چاہتی تھی وہ اسکے بال سہلانے لگی دانیہ جلد ہی سو گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میر نے بہت کوشش کی سونے کی لیکن بے سود رات کے 2 بج رہے تھے اسنے پھر سے ایش کو کال ملائی ۔۔۔۔۔۔۔
میر تم سوئے نہیں؟  اسنے کال اٹینڈ کرتے ہی حیرانگی سے سوال کیا ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں اور مجھے لگتا ہے میں اب کبھی نہیں سو پاؤں گا ۔۔۔۔۔
کیوں آخر ہوا کیا ہے تم کیوں پریشان ہو میر شیئر کرسکتے ہو وہ اب فکرمند ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا پاگل ہے ۔۔۔۔۔۔
ہاہاہاہاہا جانتی ہوں تم اس بات پر آج پریشان ہورہے ہو؟
وہ واقعی پاگل ہے اسنے زور دے کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہا اسکا مطلب یہ ہے وہ ذرا بھی نہیں بدلی ؟
میر کے صبر کی انتہاء ہوگئی تھی اسکے آنسوں اب لڑی کی صورت گِرنے لگے وہ سچ میں پاگل ہوگئی ہے اس نے روتے ہوئے مشکل سے یہ الفاظ ادا کیے ۔۔۔۔۔۔۔۔
ایش خاموش تھی یا بات سمجھنے  کی کوشش کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہیں کیسے پتہ چلا ؟
اسنے اپنی کلائی کاٹ لی تھی ہوسپٹل میں تھی ایش وہ پہلے جیسی بلکل نہیں لگ رہی  انکھوں کے نیچے ہلکے ہاتھوں پر خود کو دی گئی اذیتوں کے نشان ۔۔۔۔۔۔۔۔میر کو اپنا بولنا مشکل لگ رہا تھا وہ مرجھائی سی اب اسکو اپنے سر پر دوپٹہ ہونے یا نہ ہونے سے بھی فرق نہیں پڑتا مجھے لگ رہا ہے میرا دماغ پھٹ جائے گا ۔۔۔۔۔۔
ایش کا دماغ ماؤف ہوگیا تھا وہ بولنا چاہ رہی تھی لیکن الفاظ کہی دم توڑ چکے تھے وہ میر کے کو تسلی دینا چاہ رہی تھی لیکن زبان برف کی مانند محسوس ہورہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ سچ میں دعا ہی تھی؟
تین منٹ کی خاموشی کے بعد ایش نے اپنا شک دور کرنا چاہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں وہ دعا ہی تھی اسکے گھر والوں نے بتایا وہ پانچ سال سے اس حالت میں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔میر نے ایک ہاتھ سے موبائل تھام رکھا تھا دوسرے ہاتھ سے وہ اپنے ماتھے کو مسل رہا تھا درد شدید سے شدید ہوتا جارہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم ٹھیک ہو؟  ایش کو اب بات کرنے کے لیے الفاظ نہیں مل رہے تھے تو اس نے یہی پوچھ لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں میں ٹھیک ہوں مجھے کیا ہونا ہے جو انسان کسی کی زندگی تباہ کر اتنے سکون سے زندگی گزار رہا ہو اسے کیا ہوسکتا ہے نہ کوئی احساس ندامت نہ ضمیر کی آواز  اتنے سالوں  سے مجھے تو کبھی اسکا خیال چھو کر بھی نہیں گزرا میں نے کبھی سوچا ہی نہیں اسکے بارے میں  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے ریلیکس میر تم پریشان نہیں ہو پلیز  یہ بھی تو ہو سکتا ہے جو تم سوچ رہے ہو ایسا نہ ہو کینزہ نے اسکی پریشانی کم کرنی چاہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ جھٹ سے اُٹھ بیٹھا تھا تم دعا کرو پلیز دعا کرو ایش ایسا ہی ہو۔۔۔۔۔۔۔
ماضی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کائنات اپنے گھر واپس جا چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا اپنے کمرے میں لیٹی تھی دراوزہ کھلنے کی آواز پر چونکی ۔۔۔۔
بھابھی آپ؟  وہ اب بیٹھ چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
جی میری جان میں نے سوچا تھا میں فری ہوکر پوچھوں گی کیسا experience  رہا انجوائے کیا؟
دانیہ اپنے ہاتھ میں پکڑی ٹرے اب اپنے اور دعا کے درمیان رکھ بیٹھ گئی
کھیر؟  دعا کی نظر ٹرے میں پڑی کھیر پر پڑی تو وہ خوشی سے چہکی ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی چلو شروع سے شروع ہوجاؤ پہلے دن سے لےکر سب بتاؤ ورنہ کھیر واپس لے جاؤں گی وہ دونوں اس بات پر ہنسی اور اپنی اپنی کھیر پکڑ کھانے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسنے پہلے دن سے لے کر دانیہ کو سب بتایا میر کا قصہ وہ چھپا گئی ۔۔۔۔۔۔۔
بھابھی؟
جی جان دانیہ اب کھیر ختم کر منہ صاف کررہی تھی
  ایک بات پوچھوں؟
پوچھو میرے بچے اجازت کیوں لے رہی ہو؟
ہمیں کیسے پتہ چلتا ہے ہم جو کررہے ہیں وہ ٹھیک ہے یا غلط؟
دانیہ نے اسکی بات پر سر اُٹھا کر گہری نظروں سے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری جان یہ ہماری نیتوں پر انحصار کرتا ہے کچھ اچھے کام بھی ہماری بُری نیت کی وجہ سے بُرے کہلاتے ہیں اور کچھ بُرے کام ہماری اچھی نیت کی وجہ سے اچھے کہلاتے ہیں ۔۔۔۔
دعا نے ناسمجھی سے دانیہ کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔
نہیں سمجھ ائی؟
اسنے اپنے سر کو نفی میں حرکت دی ۔۔۔۔۔۔۔
دیکھو اگر کوئی امیر بندہ کسی غریب کی مدد  کر نیکی کرتا ہے لیکن وہ یہ سوچ کر کرتا ہے کہ لوگوں کو پتہ چلے میں کتنا سخی ہوں اور وہ اس موقعے کا فائدہ اُٹھاتے ہوئے جگہ جگہ بیٹھ کر اپنا کیا گیا دکھاوا لوگوں پر عیاں کرے تو بیٹا وہ نیکی تو نہیں ہوگی اسی طرح اگر ہم کسی کے اچھے کے لیے صاف نیت سے کوئی جھوٹ ہی بول دیتے ہیں تو وہ جھوٹ بھی ہماری نیکی میں شمار ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔
کچھ سمجھ ائی؟
جی وہ مسکرائی شاید اسکے دل کا بوجھ ہلکا ہو گیا تھا وہ جانتی تھی میر کے معاملے میں اسکی نیت بلکل صاف تھی وہ اس سے محبت کرنے لگی ہے وہ بھی شادی کا خواہش مند ہے تو اس میں کوئی بُرائی نہیں اب وہ پکا ارادہ کرچکی تھی اگلی بار جب گھر ائے گی تو سب بتا دے گی میر کے بارے میں ۔۔۔۔
کہا کھو گئی؟  نیند تو نہیں ائی؟
نہیں بھابھی بلکل نیند نہیں ائی اپ بتائے کیا کرتی رہتی ہے اپ اور ماما مجھے مس تو کرتی ہیں نہ؟
ہم تمہیں مس کرنے کے علاوہ کچھ نہیں کرتے کھانے کے ٹیبل پر جب سب جمع ہوتے ہیں تو پہلا ذکر تمہارا ہی ہوتا ہے بہت دیر باتیں کرنے کے بعد دانیہ اُٹھ کر چلی گئی دعا نے میر کے لیے دو بار میسج لکھ ڈیلیٹ کردیا کیوں کہ میسج کرنے میں پہل ہمیشہ میر ہی کرتا تھا لیکن جب سے وہ گھر ائی تھی میر نے کوئی کال یا میسج نہیں کیا تھا وہ موبائل رکھ کر سونے کی کوشش کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صبح وہ فجر میں اُٹھی تو سب سے پہلے موبائل چیک کیا وہاں کوئی کال یا میسج نہ پاکر وہ بہت مایوس ہوئی "کہی اسکی طبعیت تو خراب" نہیں  وہ بلکل ٹھیک تھا اسنے اپنے خیال کو جھٹکا اور نماز پڑھنے چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
قرآن کی تلاوت کے بعد وہ لان میں آگئی جہاں دانیہ پہلے ہی واک کررہی تھی اسلام وعلیکم!
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا اپنا جوتا اتار کر گھاس پر واک کرنے لگی ۔۔۔۔۔
بھابھی؟  اپکی نظر میں پیار  محبت اور عشق میں کیا  فرق ہوتا ہے؟
دانیہ کے قدم رکے وہ دعا کو دیکھ رہی تھی جسکا چہرہ گلابی دوپٹے میں کِھلا کِھلا سا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا، بھابھی؟
میری جان ایسے سوال کرو گی تو ایسے ہی دیکھوں گی نہ وہ مسکراتی ہوئی پھر سے دعا کے ساتھ چلنے لگی ۔۔۔۔۔۔
مجھے ایسا لگتا ہے پیار انسان کسی سے بھی کرسکتا ہے شاید وہ عادت کی طرح ہوتا ہے جو ہمیں کسی کی بھی ہو سکتی ہے محبت انسان صرف ایک بار کرتا ہے دوبارہ کی کوئی گنجائش نہیں ۔۔۔
عشق عام انسان کے بس کی بات ہی نہیں عشق وہی جو اللہ نے اپنے محبوب سے کیا صحابہ نے رسول سے اور ولیوں پیغمبروں نے خدا سے اسنے اپنی بات کہہ کر لمبی سانس لی دعا بہت غور سے اسکی بات سُن رہی تھی دانیہ کے دیکھنے پر وہ مسکرا دی لیکن بھابھی ہم محبت کی آخری حد کو عشق کہہ سکتے ہے میری جان کہہ سکتے ہے لیکن وہاں تک ہر انسان کی رسائی ممکن نہیں ۔۔۔۔۔
دانیہ نے دعا کی طرف دیکھا جو اب خاموش سی پھول کو ہاتھ میں لیے اسکی خوشبو خود میں اتار رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ناشتے کے بعد روم میں ائی تو موبائل چیک کرنے لگی موبائل سکرین پر کینزہ کا پیغام جگمگا رہا تھا ۔۔۔۔
ہائے دعا میں تو گھر میں بور ہورہی ہوں۔۔۔۔۔۔۔
بور کیوں کل تو ہم نے واپس چلے جانا ہیں انجوائے کرو گھر والوں کے ساتھ وہ میسج اوکے کر میر کے لیے میسج لکھنے لگی  ۔۔۔۔۔۔۔
اسلام و علیکم!  میر اپکی طبعیت ٹھیک ہے؟
وہ کتنی دیر جواب کا ویٹ کرتی رہی لیکن جواب نہیں ایا اب بے قراری بڑھنے لگی تھی اسنے کال مِلا دی بیل جانے کے باوجود کال پک نہیں کی گئی اللہ پلیز میر ٹھیک ہو آخر کیوں نہیں رابطہ ہو پا رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جیسے تیسے ٹائم گزر گیا وہ واپسی کے لیے تیار بیٹھی کینزہ کا ویٹ کررہی تھی ۔۔۔۔
گڑیا فون کرو اُسے فلیٹ کا ٹائم ہورہا ہے دانیہ نے گھڑی کی طرف دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔
کی ہے ابھی پہنچ جائے گی بھائی بھی تو نہیں ائے نہ ابھی تک ۔۔۔۔۔۔۔
لو جی میں تو حاضر ہوں میری ڈول فرقان نے دروازہ عبور کرتے ہی اپنے آنے کی اطلاع دی ۔۔۔۔۔
اور میں بھی حاضر ہوں پیچھے آتی کینزہ نے بھی آواز لگائی ۔۔۔۔۔۔
سب مسکرا دیئے ۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما جانی کہا ہے؟  وہ جانے کے لیے کھڑی ہوئی تو دانیہ سے ماں کا پوچھنے لگی ۔۔۔۔
ماما نماز پڑھ رہی تھی میں لے کر اتی ہوں فرقان اپ سامان رکھوا لیں ۔۔۔۔۔۔
رافعہ ائی تو چہرے کے گرد دوپٹہ لپیٹ رکھا تھا دعا ان سے ملی تو انکھوں میں نمی اتر ائی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما آپ میرے لیے دعا کریئے گا ۔۔۔۔۔۔۔
میری بچی ماؤں کو بھی دعاؤں کے لیے کہنے کی ضرورت ہوتی ہے رافعہ نے دعا کے ماتھے پر پیار کیا دعا دانیہ سے مل روانہ ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ صبح تیار ہوتے ہوئے بھی مسلسل میر کا سوچ رہی تھی آخر کہاں ہے وہ کیوں نہیں رابطہ کیا اسنے  اسکا دل بہت بے چین ہورہا تھا اب وہ جلد سے جلد میر سے ملنا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اپنے ہاتھ میں بکس پکڑے کینزہ سے باتیں کرتی لان عبور کر اپنے کیمپس کی طرف بڑھ رہی تھی جب اسکی نظر میر اور ایش پر پڑی وہ دونوں کسی بات پر ہنس رہے تھا دعا ایک دم ٹھٹکی پھر وہ کینزہ کے ساتھ کلاس میں آگئی تھی سر احمد لیکچر دے رہے تھے لیکن دعا اپنی سوچوں میں گم اگر میر ٹھیک تھا تو اسنے میرے میسج کا جواب کیوں نہیں دیا وہ کتنا خوش لگ رہا تھا ایش کے ساتھ کیا وہ مجھ سے محبت نہیں ۔۔۔
اس سے اگے وہ سوچنا نہیں چاہتی تھی دل و دماغ پر میر چھایا تھا میں کیوں شک کررہی ہوں محبت کرتی ہوں اور محبت میں شک کی کوئی جگہ نہیں  ۔۔۔۔۔۔۔
دعا کیا بات ہے تم جب سے واپس ائی ہو بہت خاموش ہو خیرہت؟  وہ دونوں کیفے میں بیٹھ سموسے اور کولڈڈرنک کے ساتھ انصاف کررہی  تھی جب کینزہ نے فکرمندی سے پوچھا
نہیں تو تمہارا وہم ہے ۔۔
ہیلو گائز ۔۔۔۔۔۔میر اتے ہی دعا کے ساتھ والی کرسی پر بیٹھا دعا کا دل زور سے دھڑکا اس نے اپنا دوپٹہ تھوڑا اگے کھینچا ۔۔۔۔۔۔۔
ہائے میر کیسے ہو؟  کینزہ نے پہل کی ۔۔۔۔۔۔
میں بھی ٹھیک ہوں یہ بتاّؤ کب ائیں تم دونوں؟ وہ بہت نارمل انداز میں پوچھ رہا تھا ۔۔۔۔
لیکن نا جانے کیوں جو تکلیف دعا کو تین چار دن سے ہورہی تھی وہ آنسوؤں کی شکل میں انکھوں سے بہنے لگی  کینزہ نے حیرات سے دعا کو دیکھا وہ اپنے آنسوں صاف کرتی ہوئی اپنی بکس ٹیبل سے اُٹھائے تیزی سے چلی گئی پیچھے میر اور کینزہ کی آواز دینے پر بھی وہ رکی نہیں میر اور کینزہ نے ایک دوسرے کو حیرت سے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ نے روم میں اتے ہی دعا سے سوال کیا وہ جو گھٹنوں میں سر میں دیئے رو رہی تھی پاس پڑے موبائل پر میر کی کال آرہی تھی لیکن وہ ہر چیز سے بے نیاز بیٹھی آنسوں بہا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
بتاؤ تو آخر ہوا کیا ہے دعا کیوں رو رہی ہو یار ابھی رات کو ہم واپس ائے تھے اداس ہوگئی ہو بولو بھی۔۔۔۔۔
اسنے اپنا سر اُاٹھایا اسکا چہرہ آنسوؤں سے تر تھا ہم جس دن یہاں سے گئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ سانس لینے کو رکی تھی
ہاں کیا ہوا بتاؤ۔۔۔۔۔۔
اس دن سے میر نے مجھ سے بات نہیں کی میں نے میسج کیا کال بھی لیکن کوئی جواب نہیں دیا مجھے لگا تھاشاید طبعیت خراب ہے آنسوں ابھی اسکی گالوں پر گر رہے تھے ۔۔۔۔۔
کینزہ کے لبوں پر پیار بھری مسکراہٹ پھیلی تم اس بات پر رو رہی ہو؟
دعا نے حیرت سے اُسے دیکھا تم ہنس رہی ہو اسنے اپنے آنسو صاف کیے ۔۔۔۔
چلو چھوڑو تم کال رسیو کرو میر وہ کب سے کال کررہا ہے میں فریش ہوجاؤں پھر بات کرتے ہیں اوکے؟
دعا نے بھی اثبات میں سر کو جنبش دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسلام و علیکم!
وعلیکم السلام ۔۔۔تم ابھی تک رو رہی ہو؟
نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔وہ مشکل سے بس اتنا ہی کہہ پائی
دعا کوئی مسئلہ ہے؟
نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یار بات کرو کیا نہیں نہیں لگائی ہوئی ہے رو کیوں رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میر کی آواز میں سنجیدگی در ائی ۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ نے نہ میسج کا جواب دیا نہ کال اٹینڈ کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں کیوں کہ تم اپنے گھر گئی تھی میں ڈسٹرب نہیں کرنا چاہتا تھا تم اس بات رو رہی تھی؟
وہ بلکل خاموش تھی ۔۔۔۔۔۔
دعا میں آئندہ میں تمہاری انکھوں میں آنسوں نہ دیکھوں میری بات سمجھ آ رہی ہے؟
جی آپ مجھے ایک میسج کر بتا دیتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سوری مجھے بتا دینا چاہیئے تھا اچھا سُنو ۔۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔
I love you dua...................
I Love you 2 meer............
چند دن پہلے ملا شخص دل کے اتنے قریب پہنچ گیا تھا دعا نے سوچا اور مسکرا دی ۔۔۔۔۔۔
کینزہ شاور لے کر ائی تو دعا کو دیکھا وہ اب ریلیکس لگ رہی تھی وہ اس کے قریب اکر بیٹھی دعا کا ہاتھ اپنے ہاتھوں میں لیے اسکی انکھوں میں دیکھ اپنی بات شروع کی ۔۔۔۔۔۔
دعا آج میں خود کو قصور وار محسوس کررہی ہوں
کیوں؟  وہ مزید سیدھی ہوکر بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے ہی تمہیں کہا تھا میر کی بات پر غور کرنے کو اور آج تمہیں تکلیف میں دیکھ مجھے افسوس ہوا خود پر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں کینزہ سوری یار بس پتہ نہیں مجھے کیا ہو گیا تھا اس میں تمہارا کوئی قصور نہیں ۔۔۔۔۔
لیکن جو بھی ہے دعا تمہیں رونا نہیں چاہیے تھا میر کے سامنے لڑکیوں کو اتنا کمزور نہیں ہونا چاہیئے دو دن میسج کے جواب نہ ملنے پر رو دیں۔۔۔۔۔۔۔
دعا اپنا سر جُھکا گئی پتہ نہیں مجھے کیا ہو گیا تھا میر کو سامنے دیکھ مجھے رونا اگیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حال ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما دعا کہاں ہے؟  کینزہ نے کچن میں کھڑی رافعہ سے پوچھا ۔۔
اپنے کمرے میں سو رہی ہو گی بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں ماما میں دیکھ کر ائی ہوں کہی چھت پر تو نہیں؟
وہ کہتے ہی سیڑھیاں عبور کرتی چھت پر پہنچی ۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا ……..دعا بیٹا کہاں ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دعا ۔۔۔۔۔۔۔
وہ آوازیں دیتی اسے سب جگہ دیکھ چکی تھی لیکن وہ کہی نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔۔
وہ بھاگتی ہوئی نیچے ائی ماما وہ چھت پر نہیں ہے ماما اپ عانیبہ کو ناشتہ کروائے میں پارک دیکھ کر اتی ہوں وہ کہتے ہی چابی اُٹھا کر باہر نکلی جاتے جاتے چوکیدار کو گھورنا نہیں بھولی تھی تمہیں تو آکر پوچھتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ تیز ڈرائیو کر پانچ منٹ میں پارک پہنچ چکی تھی  لیکن وہ وہاں بھی نہیں تھی وہ پارک میں ہر جگہ دیکھ چکی تھی ہر جگہ واک کرتی عورتیں اور مرد دیکھائی دیں رہے تھے لیکن وہ کہی نہیں تھی پہلے بھی دعا اکثر ایسا کرتی کسی کو بٹائے بغیر وہ قریب پارک چلی جاتی لیکن آج وہ یہاں نہیں تھی دانیہ کے ہاتھ پاؤں ٹھنڈے پڑ گئے تھے کہاں ڈھونڈوں تمہیں میری جان کیوں کرتی ہو تم ایسے دانیہ اپنی انکھوں میں ائی نمی کو صاف کیا وہ واپس گھر ائی تو رافعہ دانیہ کا موبائل پکڑے دانیہ کا ہی انتظار کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما وہ کہی نہیں ہے ماما میں نے سب جگہ دیکھ لیا وہ اندر آتی ہوئی رافعہ کو دیکھ بولی ۔۔۔۔
وہ ہسپتال ہے انہوں نے موبائل دانیہ کی طرف بڑھاتے ہوئے بتایا
آپ کو کیسے پتہ ؟
سسٹر کا فون ایا تھا وہ ڈاکٹر جو نیا ایا ہے وہ واک کرنے پارک ایا تھا دعا ننگے پاؤں گئی تھی راستے میں  اسکے پاؤں میں شیشہ لگ گیا وہ دعا کو ہوسپٹل ساتھ لے گیا ۔۔۔۔۔
ماما میں دیکھتی ہوں دانیہ کہتے ہی باہر جانے لگی جب رافعہ کی آواز پر رکی ۔۔۔۔۔
ناشتہ کرو پھر عانبیہ کو سکول چھوڑ ہوسپٹل جانا چلو شاباش اجاؤ
میں  بھی پھوپھو کے پاس جاؤ گی عانبیہ نے ماں کی طرف دیکھتے ہوئے کہا
نہیں میری جان آپ سکول جاؤ پھوپھو کو میں جلد گھر لے آؤں گی ۔۔۔۔۔۔۔
 اب انکی زندگی ایسی ہی تھی جو کبھی لوگوں کے لیے آئیڈیل فیملی ہوا کرتی تھی اب اس میں پریشانیوں کے علاوہ کچھ نہیں تھا وہ تو کافی حد تک عادی بھی ہوگئے تھے ان پانچ سالوں میں کتنی دفعہ دعا گم ہوئی تھی یاد بھی نہیں ۔۔۔۔۔
لیکن ماما وہ شور کررہی ہو گی انکو تنگ کررہی ہو گی ۔۔۔۔۔۔
نہیں اسنے بتایا نیند کا انجیکشن دیا ہے سو رہی ہے رافعہ نے دانیہ کو ٹیبل پر بیٹھنے کا اشارہ کیا دانیہ گِرنے کے انداز میں بیٹھ گئی اسنے ریلیکس ہونے کے لیے سر کرسی کی پشت پر ٹکا دیا رافعہ جو خود کو بہت مضبوط ثابت کررہی تھی نوالہ منہ میں ڈالتے ہی رونے لگی دانیہ نے محسوس کرتے ہی انکھیں کھول انکی طرف دیکھا "ماما" پلیز وہ اُٹھ انکے کے پاس ائی کندھوں سے پکڑ تسلی دینے لگی ۔۔۔
ماما سب ٹھیک ہو جاٹے گا پلیز روئے تو نہیں پریشان نہیں ہو ۔۔۔
جسکی جوان بیٹی پاگل ہو بار بار گم ہوجائے وہ کیسے نہ روئے میں تو اپنے اللہ کی شکر گزار ہوں جو میری بیٹی کو اپنے حفظ و ایمان میں رکھتا ہے ورنہ دنیا والوں سے کیا بعید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے ماما میں چلتی ہو میں آفس پہنچ کر ناشتہ کرلوں گی پلیز  چلو عانبیہ اجاو بیٹا وہ کہتے ہی کمرے سے بیگ لینے چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
علی بخش تم کب اپنی لاپرواہی چھوڑو گے کتنی دفعہ سمجھایا سویا نہ کرو ڈیوٹی پر ۔۔۔
معاف کردو بی بی جی صبح صبح انکھ لگ جاتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لاسٹ وارننگ دے رہی ہوں آئندہ ایسا ہوا تو نوکری سے ہاتھ دھو بیٹھو گے دانیہ نے جانے سے پہلے علی بخش کو ڈانٹا جو ہر  بار معافی مانگتا لیکن پھر سو جاتا وہ برسوں سے یہاں کام کرتا تھا بھروسے کے قابل تھا جسکی وجہ سے اسکو نکالنا نہیں چاہتے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ عانبیہ کو سکول چھوڑ ہوسپٹل پہنچی تو دعا کو دیکھ ٹھٹھکی وہ دوپٹے کے بغیر ہی گھر سے نکل ائی تھی دانیہ نے سسٹر سے  دوپٹے کا انتظام کرنے کو کہا اور میر کے کیبن کی طرف بڑھ گئی وہ اپنی انکھیں بند کر ٹیبل پر جھکا ہوا تھا دروازے پہ دستک سے سیدھا ہوا ساری رات جاگنے سے سر میں درد کی وجہ سے انکھیں لال لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
اسلام وعلیکم!
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔بیٹھے
تھینکیو سو مچ  ڈاکٹر؟
ڈاکٹر میر حمزہ اسنے دانیہ کی بات سمجھتے ہی اپنا پورا نام بتایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور تھینکیو کی کوئی بات نہیں میں واک کرنے گیا تھا وہاں گھاس پر بیٹھی رو رہی تھی شیشے کو نکالنے کی کوشش میں زخم بھی بڑھا لیا تھا میں نے دیکھتے پہچان لیا لیکن مجھے یہ توقع بلکل نہیں تھی کہ وہ وہاں اکیلی ائی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی وہ اکثر ایسی حرکت کرجاتی ہے  ہم بہت کوشش کرتے ہیں دھیان رکھے لیکن ۔۔۔۔۔
میر نے پاس پڑا پانی کا گلاس اُٹھایا بنا سانس لیے ختم کردیا مجھے دعا کے بارے میں پوری انفارمیشن چاہیے ۔۔۔۔
دانیہ  اپنے بیگ میں موبائل ڈھونڈ رہی تھی اس نے فوراً میر کی طرف دیکھا ۔۔۔۔
میں آپکی ہیلپ کرنا چاہتا ہوں مجھے بتائیے یہ سب کہا سے شروع ہوا اور کیسے پھر دیکھتا ہوں کیا کر سکتے ہیں ۔۔۔۔۔
دانیہ نے اک گہری سانس لی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ بات پچھلے پانچ سال سے دعا کی ڈاکٹر پوچھ رہی ہے لیکن ہم اسکا جواب دینے سے قاصر ہے ۔۔۔۔۔
اب حیران ہونے کی باری میر کی تھی مطلب؟
دعا اسلام آباد  کے  ایک میڈیکل  کالج کی سٹوڈنٹ تھی ایک رات اسکا فون ایا تھا دانیہ بتاتے ہوئے شاید واپس اسی وقت میں پہنچ چکی تھی ۔۔۔۔۔
دانیہ کے موبائل پر رنگ ہورہی تھی اس نے اپنی انکھیں مسلتے ہوئے موبائل  کا رخ اپنی طرف کیا  "دعا " دانیہ نے ٹائم دیکھا تو رات کے 2 کا ٹائم تھا پھر اسنے ایک نظر فرقان کو دیکھا اور موبائل اُٹھائے ٹیرس پر اگئی کال رسیو کر وہ دھیمے سے بولی ۔۔۔
دعا خیریت؟
مقابل بس رونے کی آواز آ رہی تھی جسنے دانیہ کو مزید پریشان کیا وہ اپنے کمرے سے نکل چھت پر ائی کیا ہوا دعا بچے رو کیوں رہی ہو بولو نہ  پلیز
بھ بھا بھابھی مج مجھے گھر آنا ابھی۔۔۔
ابھی؟
جی مج مجھے ابھی گ گھر انا ہے اسکی ہچکیوں میں بندھی آواز نے دانیہ کو پریشانی میں ڈال دیا تھا ۔۔۔۔
پہلے چُپ کرو رونا بند کرو دعا میری بات سُنو جان اس ٹائم کیسے آسکتی ہو گھر۔۔۔ تمہارے بھائی  کو بتاؤں گی وہ پریشان ہوگے اور وجہ پوچھے گے دانیہ اتنی تو سمجھ دار تھی وہ جانتی تھی اگر وہ بھائی کو بتانا چاہتی تو انکو ہی کال کرتی۔۔
کینزہ کہاں ہے دانیہ کو اچانک یاد آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے کسی کا نہیں پتہ بس مجھے گھر انا ہے ورنہ میں پاگل ہوجاؤں گی پلیز ۔۔۔۔
دعا پلیز میری جان رونا تو بند کرو میرا دل بند  ہوجائے گامیری بات سُنو  پلیز تم سو جاؤ میں صبح کی فلیٹ بک کروا دیتی یوں لیکن رونا نہیں اب اوکے ؟
جی۔۔۔۔۔ اسنے جی کہہ کر فون بند کردیا تھا میرے پاس اسکی دوست کا نمبر نہیں تھا اسلیے میں اس سے بھی رابطہ نہیں کرسکی تھی لیکن صبح کینزہ اسکی دوست کا فون آیا دعا کی طبعیت بہت خراب ہے فرقان میرے شوہر اسلام آباد پہنچے انکو  دعا ایسی حالت میں ہی ملی دانیہ نے اپنی انکھوں میں ائی نمی صاف کی لیکن وہ میر کو دیکھ ٹھٹھکی اسکی  انکھوں سے آنسوں بہہ رہے تھے وہ شاید کچھ سوچ رہا تھا اسکی آنکھوں میں کچھ تو تھا لیکن دانیہ سمجھ نہیں پائی کمرے کی خاموشی کو دانیہ کے موبائل پر بجتی رِنگ نے توڑا ۔۔۔۔۔۔۔
اسلام و علیکم!  کینزہ کیسی ہو؟
 کینزہ کا نام سُنتے ہی میر کا سحر ٹوٹا ۔۔۔۔۔
وعلیکم السلام ۔میں ٹھیک ہوں۔بھابھی کیسی ہے اپ اور دعا؟
ٹھیک ہے سب۔۔۔۔۔۔
میں نے یہ بتانے کےلیے فون کیا تھا کے میں اگلے ہفتے پاکستان آرہی ہوں ۔۔۔۔
گڈ نیوز اکیلی آرہی ہو؟
جی  ۔۔۔۔۔
اوکے کینزہ میں دعا کے ساتھ ہوسپٹل ہوں بعد میں بات کرتے ہیں ۔۔۔
وہ ٹھیک ہے؟  اسنے فکرمندی سے پوچھا ۔۔۔۔۔
جی ٹھیک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے بھابھی اللہ حافظ میں بعد میں کرتی ہوں فون۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے۔۔۔۔۔
تو؟  اسکی دوست نے کچھ نہیں بتایا تھا؟  میر نے ڈرتے ہوئے سوال کیا ۔۔۔۔۔۔
وہ بھی نہیں جانتی تھی کچھ لیکن میں یہ ضرور جانتی ہوں یہ دعا کے لیے صرف ایک آزمائش ہے اور کسی کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ خاموش ہوئی تو میر نے اپنی پلکیں اُٹھائی تبھی دروازہ نوک ہوا دانیہ دعا اُٹھ گئی ہے بہت رو رہی ہے  سسٹر کے بتاتے ہی دانیہ کھڑی ہوئی میر بھی میر غیر ارادی طور پر دانیہ کے پیچھے ہو لیا سسٹر نے دانیہ کو دوپٹہ تھمایا جسکو دانیہ دعا پر اوڑھ چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارے میری جان کیا ہوا؟  دعا کیوں رو رہی ہو ادھر دیکھو میری طرف دانیہ نے اسکا چہرہ اپنے ہاتھوں میں بھرا ۔۔۔۔
دعا کے پانچے پر خون لگا تھا جسکی طرف وہ اشارہ کر خون خون کہتے رو رہی تھی ۔۔۔۔
تو کیوں گئی تھی باہر اکیلے میرے ساتھ جاتی دعا میری طرف دیکھو دانیہ جانتی تھی اُسے کچھ بھی کہنا فضول ہے پھر بھی وہ کہنا چاہتی تھی کبھی کبھی انسان بولنا چاہتا ہے سامنے والا نہ سُنے پھر بھی دل  کرتا، ہے وہ اپنی تکلیف بیان کردے جب بھی دعا ایسے گھر سے نکلتی یہ اللہ کے بعد  صرف دانیہ اور اسکی ساس ہی جانتی تھیں وہ کن انگاروں پر لوٹتی تھیں دنیا جہاں کے تکلیف دے خیالات ان کا ذہین ماؤف کردیتے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر جو دروازے میں ہی کھڑا تھا بہت غور سے دعا کو دیکھ رہا تھا ایک میڈیکل سٹوڈنٹ جس کا شاندار مستقبل اسکا انتظار کررہا تھا میں اپنی انا، کی تسکین کے لیے اسے اذیت میں  مبتلاء کردیا اب اس میں کوئی شک نہیں کہ دعا اس حالت میں صرف میری وجہ سے ہے لیکن کینزہ نے کیوں نہیں بتایا دانیہ کو وہ سب جو اس دن میرے فلیٹ پر ہوا کینزہ تو سب جانتی تھی پھر کیوں؟
دعا تم جلد ٹھیک ہوجاؤ تاکہ میں تم سے معافی مانگ سکوں "معافی" نہیں میں معافی کا حقدار تو نہیں ہوں  بلکل نہیں  وہ واپس مڑ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماصی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ سو گئی ہو؟
دعا نے چھت کو گھورتے ہوئے کینزہ کو آواز دی ۔۔۔۔۔۔
نہیں بولو کینزہ اپنی انکھیں بند کیے سیدھی لیٹی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے نہ ڈر لگنے لگا ہے ۔۔۔  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کس سے؟
خود سے محبت سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ کیوں؟
مجھے لگتا ہے دن بدن میری محبت اخری منزل کی طرف بڑھ رہی ہے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ  جھٹ سے انکھیں کھول اُٹھ کر بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آخری منزل؟
ہاں محبت کی اخری منزل عشق ۔۔۔۔
تو  محبت ہو یا عشق ڈر کیسا؟
کیوں کہ جیسے محبت اور عشق میں فرق ہے ایسے اس میں ہارے ہوئے انسان میں بھی فرق ہوتا ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔
مثلاً؟
جیسے محبت میں ہارے ہوئے انسان کا دل مر جاتا ہے دوبارہ محبت کی گنجائش نہیں ہوتی ایسے عشق میں ہارا ہوا انسان ہی مر جاتا ہے  محبت میں ہارے ہوئے انسان کا دل نہیں کام کرتا لیکن دماغ کام کرتا ہے اور عشق میں ہارے ہوئے انسان کا دل و دماغ مفلوج ہوجاتا ہے وہ اپنی سمجھ بوج ہی کھو دیتا ہے یا یہ کہہ لو پاگل ہی ہو جاتا ہے ۔۔۔۔
اللہ اللہ دعا کیسی باتیں کررہی ہو چُپ کر کے سو جاؤ سوتے ہوئے اتنی مایوسی کی باتیں نہیں کرتے کینزہ پھر سے لیٹ گئی دعا انکھیں بند کیے ہی مسکرا دی ۔۔۔۔۔۔۔
اگلے روز میر نے دعا سے ڈنر کے لیے بہت کہا لیکن وہ نہیں مانی وہ ابھی بھی باضد تھی جب تک گھر والوں کو نہیں بتا دیتے تب تک وہ اس کے ساتھ باہر نہیں جائے گی ۔۔۔۔۔
میر نے ہار مان لی لیکن ناراض نہیں ہوا اور کیفے میں ہی لنچ کا بول دیا وہ اور کینزہ کیفے پہنچی تو میر پہلے ہی انکا ویٹ کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم دونوں کو پتہ ہیں سٹوڈنٹس سکالرشپ کے لیے اپلائی کررہے ہیں وہ لنچ شروع کرچکے تھے جب میر نے بتایا ۔۔۔۔۔
نہیں  ہمیں تو کچھ پتہ نہیں اس بارے میں جواب دعا کی طرف سے ایا تھا
کیا تم نے اپلائی کیا ہے؟  کینزہ نے سوال کیا جس پر دعا نے چونک کر میر کی طرف دیکھا جسنے کھاتے ہوئے لاپرواہی سے اتبات میں سر ہلایا ۔۔ ۔ 
کینزہ اور دعا نے ایک دوسرے کی طرف دیکھا ۔۔ 
میرا تو یہی مشورہ ہے تم دونوں بھی اپلائی کردو ۔۔۔۔
نہیں میں بابا جانی سے اتنی دور کبھی نہیں جاؤں گی دعا کا رنگ پھیکا پڑ گیا تھا میر نے نوٹ کیا تھا دعا نے لنچ کے دوران کتنی دفعہ اپنا دوپٹہ ٹھیک کیا تھا ٹھیک ہونے کے باوجود وہ اسے بار بار ہاتھ لگاتی شاید اسکی عادت ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ کمرے میں ائی تو کینزہ نے دعا کی خاموشی کو نوٹ کیا دعا اُٹھو پہلے فریش ہوجاو ۔۔۔۔۔۔
میرا دل نہیں کررہا وہ ایسے ہی جوتا اُتارے بغیر پیچھے لیٹ گئی تھی ۔۔۔۔
کینزہ شاور لے کر ائی تو وہ اسی پوزیشن میں لیٹی اپنے ماتھے کو دونوں ہاتھوں سے مسل رہی تھی کینزہ دعا کے پاس ہی بیٹھ گئی ۔۔۔۔
پریشان ہو؟
نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں جانتی ہوں تم میر کے اپلائی کرنے سے خوش نہیں ہو لیکن یہ بھی تو ہوسکتا ہے وہ سلیکٹ ہی نہ ہو تم ابھی سے ٹینشن لے رہی ہو دعا ایک پل ضائع کیے بغیر اُٹھ بیٹھی "کینزہ" ایک وعدہ کرو گی دعا نے اسکے ہاتھ اپنے ہاتھوں میں لیے  ۔۔۔ ۔
کیسا وعدہ؟
اگر میر کے بارے میں گھر بتانے سے پہلے مجھے کچھ ہوجاتا ہے میرا مطلب میں مر جاؤں تو پھر تم کچھ نہیں بتانا گھر میں نہیں چاہتی وہ مجھے غلط سمجھے وہ یہ گمان کریں میں انکو نہیں بتانے والی تھی میں چھپا رہی تھی اجکل دعا کی باتیں کینزہ کو پریشان کرنے لگیں تھی لیکن وہ اپنی پریشانی چُھپائے مسکرائی دعا یار تم بھی نہ پوری پاگل ہو وہ دعا کے سر پر مصنوعی تھپڑ لگاتے ہوئے وہاں سے اُٹھی۔۔۔۔۔
میں نے مذاق نہیں کیا  کینزہ۔ دعا نے بہت سنجیدگی سے کہا ۔۔۔
اوکے بابا یہ بتاؤ روح بن کر مجھے تو نہیں ڈراؤ گی ؟
اس سے پہلے کہ دعا کچھ کہتی اسکے موبائل پر میسج جگمگایا ۔۔۔۔۔۔۔
میں تمہیں بہت مس کررہا ہوں دعا ۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا میسج پڑھتے ہی مسکرائی ۔۔۔۔۔۔۔
یہاں مس کررہے ہو اور اگر اسکالرشپ میں سلیکٹ ہوگئے پھر وہاں جاکر مس نہیں کرو گے؟
ہاہاہایا وہاں جاکر تو زیادہ مس کروں گا تم دعا کرنا میں سلیکٹ ہوجاؤں ۔۔
یہ میسج پڑھتے ہی دعا کی مسکراہٹ غیب ہوگئی تھی میں کبھی یہ دعا نہیں کروں گی میر کبھی نہیں یہ اسنے بس دل میں ہی سوچا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شب و روز گزرتے جارہے تھے  دعا کے خیال میں اس سے زیادہ خوبصورت زندگی ہو ہی نہیں سکتی  تھی اک روز کینزہ اور دعا لان میں بیٹھی سٹڈی کررہی تھی جب ایش ان کے پاس ائی ۔۔۔۔
ہیلو گائز؟
اسلام وعلیکم!  دونوں نے سر اُٹھا کر سلام لی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وعلیکم السلام ۔۔۔کیسی ہو تم دونوں وہ خود ہی انکے ساتھ بیٹھ چُکی تھی۔۔۔
الحمدلله فائن ۔۔۔۔۔جواب دعا نے دیا تھا
گڈ مجھے میر نے بتایا تھا اپنے اور تمہارے ریلیشن کے بارے میں اس لیے میں تمہیں پروگرام میں شامل کرنا چاہ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
مطلب؟
میر کی برتھ ڈے ہے  5 دن بعد ہم اسکے فلیٹ پر ہی چھوٹی سی پارٹی کررہے ہیں تو کیا تم دونوں بھی آؤ گی؟
اس سے پہلے کہ کینزہ ہامی بھرتی دعا فوراً بولی ٹائم دن کا ہے؟
ہاہاہاہا کیسی بات کررہی ہو دعا برتھ ڈے پارٹی دن میں کون کرتا ہے رات میں ہی یوگی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے دعا چاہ کر انکار نہیں کرسکی ویسے بھی وہ کون سا اکیلی جارہی تھی کینزہ بھی سُنے ہی خوش ہوگئی۔۔۔۔۔۔
وہ ابھی روم میں ائی تھی کہ دانیہ کی کال آنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسلام و علیکم!
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔کیسی ہے میری جان؟
بلکل ٹھیک آپ بتاؤ کیسی ہے اور باقی سب؟
ہم سب ٹھیک ہیں اور بہت خوش بھی تمہیں بہت مس کررہے تھے ۔۔۔۔۔۔
میں بھی بہت مس کرتی ہوں وہ لمحے بھر کو دکھی ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے اب پریشان نہیں ہو تمہیں ایک گڈ نیوز دینی ہے ۔۔۔۔۔۔
جلدی جلدی بتائے پھر ۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا میری جان بہت جلد تم پھوپھو بن جاؤ گی ۔۔۔۔۔
کیا؟  دعا ایک دم خوشی سے چِلائی تھی ۔۔۔۔۔۔
جی بلکل ۔۔۔۔۔
اہ سچ مے میں پھوپھو بن جاؤ گی؟  مجھے تو یقین ہی نہیں آرہا بھابھی آپکو بہت بہت مبارک ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھینکیو لیکن یہ مبارک تم گھر آکر دینا پھر ہم اس خوشی کو سلیبریٹ کرئے گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی بھابھی؟  اس بار جب میں گھر اؤں گی تو مجھے بھی اپکو کچھ بتانا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے میں انتظار کروں گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 کینزہ میر کے لیے کیا گفٹ لوں وہ کلاس جانے کے لیے تیار ہورہی تھی جب دعا نے بہت فکرمندی سے پوچھا ۔۔۔۔
ہاہاہا کچھ بھی نہیں تم چلی جاؤ گی پارٹی میں یہی گفٹ کم نہیں ہوگا اس کے لیے۔۔۔
دعا جو اپنے بالوں کو کور کررہی تھی ایک دم پلٹ کر کینزہ کو دیکھنے لگی ۔۔۔۔
مذاق اُڑا رہی ہو میرا؟
جانے بھی دو دعا سچی مے کہہ رہی ہوں میں نہیں کہتی تھی تم بہت لکی ہو
دیکھو میر کتنی محبت کرتا ہے تم سے اور تم اس سے اور ایک میں ہوں
اتنی پیاری ہونے کے باوجود اکیلی تن تنہا اسنے بُرا سا منہ بنایا تو دعا نے اسے اپنی بانہوں میں  بھر لیا
میری جان تم کیسے اکیلی ہو میں ہوں نہ تمہارے ساتھ کینزہ نے بھی بہت محبت سے اسے گلے لگایا دعا تمہیں بخار ہے؟ کینزہ نے الگ ہوتے ہوئے پوچھا ۔۔۔
نہیں ہاں بس تھوڑا سا ہے رات تک ٹھیک ہوجائے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ بیٹا اپنا بہت خیال رکھنا ہے تم نے رافعہ نے دانیہ کو رابی کی ہیلپ کرتے دیکھ کر کہا اور چھوڑو سارے کام شاباش جاؤ ارام کرو ۔۔۔۔۔
ماما اتنے کام سے کیا ہوتا ہے مجھے فارغ رہ رہ کر کوفت ہونے لگتی ہے
ماما بھی کہتی ہو اور بات بھی نہیں مانتی رافعہ نے بھی خفا ہوتے ہوئے کہا ۔۔۔۔
اوکے ماما جارہی ہوں اپنے اور فرقان کے لیے چائے بنا لوں اپ پیئے گی؟
نہیں میں اب کھانے کے بعد ہی پیوں گی وہ کہتے ہی اپنے روم میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ چائے لے کر روم میں ائی تو فرقان لیپ ٹاپ گود میں رکھے کچھ کام کر رہا تھا دانیہ کی طرف دیکھ مسکرایا ۔۔۔۔۔
میری بیگم کو کیسے پتہ چل گیا مجھے چائے کی بہت ضرورت ہے ۔۔۔۔
ہاہاہا دیکھ لے پھر دل کو دل سے راہ ہوتی ہے دانیہ نے مسکراتے ہوئے چائے کا کپ فرقان کی طرف بڑھایا فرقان کپ کے ساتھ دانیہ کا ہاتھ بھی تھام چکا تھا یہاں بیٹھو میرے پاس وہ بھی مسکراتے ہوئے فرقان کے ساتھ ہی بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ میں اکثر لوگوں کے مسئلے سنتا تھا تو سوچتا تھا جب میری شادی ہوگی تو میں کیسے بیوی، ماں, بہنوں میں انصاف کروں گا مجھ سے اگر کسی کے معاملے میں بھی زیادتی ہو گئی تو ؟
لیکن اگر مجھے پتہ ہوتا اللہ تعالیٰ نے اتنی اچھی شریکِ حیات میری قسمت میں لکھی ہے
جو میری زندگی کو اور خوبصورت بنا دے گی تو میں اس سے بھی پہلے شادی کر لیتا فرقان اپنی بات پوری کر مسکرایا دانیہ نے بہت محبت سے فرقان کی طرف دیکھا
 اس میں میرا کوئی کمال نہیں
 فرقان میں نہ چاہتے ہوئے بھی اکثر اپنے رب سے شکوہ کر جاتی تھی ساری زندگی یہی سوچتی رہی اللہ نے مجھے کیوں بہن بھائیوں کے پیار سے محروم رکھا
لیکن دعا اور کائنات نے میری یہ بھی کمی پوری کردی اور ماما بابا  نے بھی اتنا پیار دیا پھر کیوں میں اتنے پیارے رشتوں کو کوئی تکلیف دوں ۔۔۔۔۔۔
اچھا؟  بیگم اپ کی بات میں میرا تو ذکر ہی نہیں تھا فرقان اب دانیہ کو تنگ کرنے کا ارادہ کیے سیدھا ہوکر بیٹھا تھا ۔۔۔۔۔۔
فرقان اپ نے اپنی محبت سے  میرے وجود کو مکمل کیا ہے بس اپ ہمیشہ ایسے ہی رہیے گا اپ بدل تو نہیں جائے گے؟  دانیہ کی انکھیں نم ہوئی تو فرقان نے بھی تنگ کرنے کا ارادہ ملتوی کیا ۔۔۔۔۔
میری جان میری ہر سانس پر تمہارا حق ہے  زندگی نے مہلت دی تو " بس کردے فرقان " دانیہ اسکے منہ پر ہاتھ رکھ چُپ کروا چکی تھی ۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا ؟ اسنے دانیہ کا ہاتھ ہٹاتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔
ایسی باتیں نہ کرے فرقان وہ روہانسی ہوئی ۔۔۔۔۔
اچھا بابا نہیں کرتا اپنا موڈ ٹھیک کرو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ اور کینزہ اج میر کے لیے گفٹ لینے مال ائی تھیں دعا دو گھنٹے سے گھڑی پسند کرنے کی کوشش میں لگی تھی کینزہ جی بھر کر بیزار ہورہی تھی ۔۔۔۔
دعا میں نے سچ میں یہی زمین پر بیٹھ جانا ہے یار بس کردو ۔۔۔کر بھی لو اب پسند ایک گھڑی خریدنے میں اتنا وقت لگا رہی ہو ۔۔۔۔۔۔
بس وہ سامنے والی شاپ لاسٹ پلیز ۔۔۔۔۔۔۔
افف چلو بھی جلدی کرو ۔۔۔۔۔ 
تین گھنٹے میں وہ ایک گھڑی خرید واپس آئیں
کینزہ تو آتے ہی سو گئی
 دعا نماز ادا کر گھر بات کر کے میر کے میسج کا انتظار کرنے لگی رات 12 کا ٹائم ہوچکا تھا
 دعا نے جمائی لیتے ہوئے میر کو خود میسج کیا پھر اس میسج کے جواب کا انتظار کرتے دعا وہی بیٹھی بیڈ سے ٹیک لگائے سو گئی تھی صبح فجر کی نماز کے ٹائم دعا کی آنکھ کھلی ۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ایسے ہی سو گئی تھی؟  خود سے سوال کرتے ہوئے اسنے اپنا موبائل چیک کیا جس پر نہ تو میر کا میسج تھا نہ کال وہ موبائل واپس رکھ نماز پڑھنے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ اٹھو یار کینزہ ۔۔۔۔۔۔
کیا ہو گیا ہے دعا پلیز سونے دو ۔۔۔۔وہ اپنا کمبل کھینچ منہ تک لے گئی تھی ۔۔۔
تم رات بھی جلدی سو گئی تھی اب اُٹھو مجھے کچھ بتانا ہے ۔۔۔۔
کینزہ نے بس اپنا کمبل منہ پر سے ہٹایا بولو ۔۔۔۔۔۔
میر نے رات سے رپلائی نہیں کیا ۔۔۔۔۔۔
یار کال کرلو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اس ٹائم سویا ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔۔
تو پھر مجھے بھی سونے دو پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ پلیز ۔۔ ۔۔۔
افففف۔۔۔۔ کینزہ اُٹھ بیٹھی کیا کروں بتاو اج ویسے بھی رات پارٹی پر جارہے ہے ہیں پھر ٹینشن کیسی دعا ۔۔۔۔۔
دعا کے آنسوں گال پر گِرنے لگے تو کینزہ نے فوراً اسے گلے سے لگایا دعا یار پلیز ایسے چھوٹی چھوٹی باتوں پر پریشان نہیں ہوتے ہو سکتا ہے وہ جلدی سو گیا ہو اسکی طبعیت خراب ہو ۔۔۔۔
اب رونا نہیں پلیز اتنا اچھا دن تھا اور تم نے رو کر شروع کیا ۔۔۔۔۔۔
نہیں میں نے نماز سے شروع کیا تھا اسنے آنسو صاف کرتے ہوئے کہا تو کینزہ مسکرا دی ۔۔۔۔۔۔۔۔
حال ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ دعا کو گھر لے ائی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر طبعیت خراب کا کہہ کر گھر آگیا تھا اسنے 15 منٹ تک شاور لیا پھر ٹیرس پر کھڑا چائے کا انتظار کرنے لگا میڈ دروازہ نوک کر اندر ائی اور میر کو چائے تھاما دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر صاحب میرے شوہر کی دوائی لائے ہو؟
میڈ کے شوہر کا کچھ دن پہلے ایکسیڈنٹ ہوا، تھا جس میں اسکی ٹانگ کاٹ دی گئی تھی کل اسنے میر کو دوائی ختم ہونے کا بتایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں  مجھے یاد نہیں رہا میرے ذہین سے نکل گیا تھا کل انشاءاللہ لادوں گا ۔۔۔۔۔۔
صاحب جی بڑا تنگ کرتا ہے جی کوئی نیند کے لیے بھی دوائی لا دینا تم نے کیسے سنبھالہ تھا اُسے؟
جی؟
میرا مطلب جب اُسے ٹانگ کا پتہ چلا تو کیسے سمجھایا سنبھالہ کیسے میر بہت غیب دماغی سے سوال کررہا تھا اسکا ذہین دعا پر اٹکا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
صاحب جی سمجھانا کیا تھا بس مریض کو پیار توجہ کی ہی ضرورت ہوتی ہے پھر چاہیے وہ جس بھی مرض میں مبتلاء ہو آہستہ آہستہ ٹھیک ہو ہی جاتا ہے سنبھل جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک جاؤ ۔۔۔۔۔۔وہ چلی گئی تھی لیکن میر اب اسکی بات پر الجھا کیا دعا کو وہ پیار نہیں مل رہا؟  اسکی بھابھی آفس جاتی ہے بھائی اور بابا بھی جاتے ہوگئے
گھر اسکی ماں اکیلی اسکے ساتھ رہتی ہوگی کتنی توجہ دیتی ہوگی اس پر۔۔۔۔۔ تو کیا دعا کو بھی پیار اور توجہ کی ضرورت ہے؟  وہ وہی کھڑا اندازے لگا تھا جب اسکے موبائل پر رِنگ ہوئی ۔۔۔۔۔
ایش کی طرف سے آتی کال کو وہ رسیور کر چکا تھا رسمی علیک سلیک کے بعد ایش نے پھر سے دعا کا پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
میر کیا واقعی دعا؟
ایش؟  تمہیں کیا لگتا ہے میں یہ سب مذاق کررہا ہوں؟  وہ اذیت سے بولا
میر ایسا تو نہیں کہا میں نے بس پوچھ رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
ایش مذاق تو وہ تھا جو ہم نے میری برتھ ڈے والے دن کیا تھا بلکہ جھوٹی برتھ ڈے والے دن ۔۔۔۔۔۔
وہ اور کینزہ میر کے فلیٹ کے باہر کھڑی تھی
دروازہ ایش نے کھولا تھا وہاں ایش ، رضوان اور میر کے علاوہ کوئی نہیں تھا  انہوں نے اندر داخل ہوتے ہی چاروں طرف دیکھا وہ پارٹی والا ماحول بلکل نہیں لگ رہا تھا
 نہ کوئی سجاوٹ نہ زیادہ دوست وہ حیران سی ہال میں آکر بیٹھی تھیں ۔۔۔
میر؟  دعا نے سوالیہ نظروں سے ایش کی طرف دیکھا ۔۔۔
اجاتا ہے دعا اتنی بھی کیا ہے صبری  اج ایش کا انداز اتنا عجیب سا تھا کہ ان دونوں کو لگ رہا تھا وہ پہلی بار ایش سے مل رہی ہیں ۔۔۔۔
میر کچن سے ہاتھ صاف کرتا ہال  میں ایا تو دعا کا دل میر کو دیکھ بے قابو ہوا
اسکا دل کیا وہ میر سے رات سے اب تک کے انتظار کا حساب مانگے بلیک کالر کا ڈریس پہن کر ائی تھی بلکل سیمپل فراک جس پر گولڈن باریک سے لیس لگی تھی ہم کالر دوپٹہ ہمیشہ کی طرح ہاتھ سےٹھیک کرتی ہوئی کھڑی ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Happy birthday meer...
دونوں نے گفٹس میر کی طرف بڑھاتے ہوئے اسے وِش کیا ۔۔۔
تھینکیو سو مچ ۔۔۔۔۔۔۔۔
میر کا انداز بہت نارمل سا تھا دعا سب کے سامنے نہیں پوچھنا چاہتی تھی میسج کے بارے میں سو وہ خاموش ہی رہی کچھ دیر بعد ہی کیک کاٹا گیا
 میر نے سب سے پہلے کیک دعا کی طرف بڑھایا لیکن دعا نے اپنے ہاتھ سے تھوڑا سا کیک لےکر منہ میں ڈال لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
کھانا کھانے کے ساتھ ساتھ سب میر کے روم میں مووی دیکھ رہے تھے
دعا کا بخار بڑھ گیا تھا اسے اپنا بیٹھنا مشکل لگ رہا تھا جب اچانک میر کی آواز روم میں گونجی گائز ہمیں تھوڑا ٹائم ہی دے دو دعا کے ساتھ ساتھ سب نے میر کی طرف دیکھا جیسے بات سمجھ نہیں ائی ہو
 میرا مطلب ہے مجھے اور دعا اکیلے میں تھوڑا ٹائم مل سکتا ہے جہاں میر کی بات پر ایش اور رضوان نے خوشی کا اظہار کرتے ہوئے شور  مچایا وہی دعا نے حیرت سے کینزہ کی طرف دیکھا چلو دیا ٹائم
برتھ ڈے تمہاری ہے تو اتنی بات تو ماننی پڑے گی سب اپنی جگہ سے اُٹھ باہر ہال میں آنے لگے دعا سر جھکائے بیٹھی رہی اسے یہ سب اچھا نہیں لگ رہا تھا لیکن وہ سب کے سامنے بولنا بھی نہیں چاہ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر دعا کے قریب بیٹھ چکا تھا ۔۔۔۔
آپکو ایسے سب کو بھیجنا نہیں چاہیئے تھا ۔۔۔۔
کیوں تمہیں اچھا نہیں لگ رہا میر نے دعا کا ہاتھ پکڑنا چاہا جسکو دعا نے ایک جھٹکے سے اپنی گود میں رکھ لیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں وہ پتہ نہیں کیا سوچ رہے ہو گئے ہم تو فون پر بھی بات کرسکتے تھے دعا نے ابھی تک نظریں نہیں اُٹھائی تھی لیکن میر مسلسل دعا کے چہرے پر فوکس کیے بیٹھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا ہم محبت کرتے ہیں ایک دوسرے سے تو کیا مجھے اتنا حق بھی نہیں میں تمہارا ہاتھ پکڑ سکوں؟
میر پلیز دعا کا دل زور سے دھڑک رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
کیا؟  جواب دو ۔۔۔۔۔۔۔
محبت ہونے اور محرم ہونے میں فرق ہوتا ہے میں آپ سے بہت محبت کرتی ہوں اور اللہ سے دعا بھی کرتی ہوں وہ ہمیں ایک دوسرے کے لیے محرم بنا دے ۔۔۔۔۔۔۔۔
تم کس دنیا میں رہتی ہو دعا؟  میر کی آواز میں کچھ تو تھا دعا پہلی بار اپنی گھنی پلکیں اُٹھا کر میر کی طرف دیکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا فوراً کھڑی ہوئی پتہ نہیں کس بات پر رونا آریا تھا بخار سے تپتا وجود سر چکرانے لگا تھا اسکے آنسوں دیکھ میر نے بہت نرمی سے بات شروع کی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے سوری پلیز تم رونا نہیں کوئی بات نہیں جیسا تمہیں اچھا لگتا ہے جو تمہیں ٹھیک لگتا ہے ویسا ہی ہوگا اب رونا نہیں اوکے؟
دعا نے اپنے آنسوں صاف کرتے اثبات میں سر کو جنبش دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے میں سب کو بلوا کر لاتا ہوں وہ واشروم ہے جاؤ فریش ہوجاؤ میرا مطلب اپنا منہ دھو اؤ سب کیا سوچے گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی دعا کہتے ہی واشروم کی طرف بڑھ گئی
میر نے اپنے موبائل سے ایش کو میسج کیا اور جھٹ سے اپنی شرٹ کے بٹن کھول اسے بے ترتیب کیا اپنا ہاتھ بالوں میں لے جاکر ہاتھ کو دائیں بائیں گھما کر اپنا حلیا رف سا بنا کر وہ بیڈ کی سائیڈ پر لیٹ چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
دعا منہ دھو کر واشروم سے نکلی تو میر کی طرف دیکھ اسکا رنگ سفید پڑا
 اسی ٹائم سب دروازہ کھول کمرے میں داخل ہونے میر فورا کھڑا ہوا ایش اور رضوان نے جیسے بات کو سمجھتے ہوئے شور کیا دعا ابھی تک واشروم کے دروازے کے سامنے کھڑی تھی
 وہ کچھ نہیں سمجھ پارہی تھی میر  ایک ایک کر بٹن بند کرنے لگا کینزہ ابھی تک انکھیں پھاڑے دعا کو دیکھ رہی تھی دعا میر کی طرف متوجہ تھی وہ کچھ سمجھنا چاہ رہی تھی ۔۔۔۔۔
اُسی پل رضوان نے اپنا کریڈٹ کارڈ میر کی طرف بڑھایا لو بھائی تم تو واقعی شرط جیت گئے ۔۔۔۔۔
میر کے چہرے پر فاتحانہ مسکراہٹ تھی لیکن دعا ابھی بھی نہ سمجھی سے میر کو دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
سوری دعا وہ دراصل ہماری شرط لگی تھی جب پہلے دن  تم دونوں نے ہم سے راستہ پوچھا تھا تو رضوان کو غلط فہمی ہوگئی تھی تمہارا حلیہ دیکھ رضوان کا خیال تھا کہ تم جیسی لڑکیاں لڑکوں کو منہ نہیں لگاتی
اس لیے اتنا ڈرامہ کرنا پڑا دیکھو اب طریقہ آنا چاہیے منہ کے ساتھ ساتھ اور بھی بہت کچھ مل جاتا ہے میر نے اپنا آخری بٹن بند کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا تو جیسے پتھر کا مجسمہ تھی بس مجسمے کی انکھوں سے آنسوں گِر گر کر اسکا دوپٹہ بھیگو رہے تھے اب وہ سمجھ چکی تھی جو حالات میر پیدا کر چکا تھا وہاں اسکی دی جانے والی صفائی بے کار ہوگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ بھی شاکڈ دعا کو دیکھ رہی تھی لیکن دعا تو اب کسی اور دنیا میں ہی تھی اتنے دنوں سے جو محبت کا محل اسنے کھڑا کیا تھا
 اب وہ گِر چکا تھا لیکن اس گِرے ہوئے محل کو اُٹھانے کی ہمت دعا میں نہیں تھی
 وہ تو کبھی میر کو دیکھتی کبھی ایش اور رضوان کو جن کے قہقے کمرے میں گونج رہے تھے کینزہ کی طرف دعا نے ایک بار بھی نہیں دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
میر اب اپنے قدم دعا کی طرف بڑھا رہا تھا قریب اکر اسنے دھیمی آواز میں مسکراتے ہوئے سوری کہا اس نے اپنی پلکوں کو حرکت دی انکھیں بند کرتے ہی انکھوں سے جیسے سمندر اُمڈ ایا ہو ۔۔۔۔۔۔
اسنے انکھیں بند کر اپنی محبت کے لیے کوئی دعا نہیں مانگی
اسنے یہ بھی نہیں سوچا کہ میں انکھیں کھولوں اور یہ کوئی بھیانک خواب ہو
 وہ تو یہ سوچ رہی تھی جو الزام میر اس پر لگا رہا تھا جسکو یہ لوگ سچ سمجھ رہے ہیں اس میں اسکا کتنا حصہ ہے
اسکو اپنی محل کے گِرنے کا افسوس نہیں تھا اس پر قربان ہونے والی عزت کا افسوس تھ
ا وہ کچھ نہ کر کے بھی گنہگاروں کی طرح کھڑی تھی اپنی صفائی میں کہنے کے لیے کچھ نہیں تھا اس کا دوپٹہ سر سے گِر کر گردن میں آگیا تھا لیکن اج اسکو پرواہ نہیں تھی بخار میں تپ رہے وجود میں جان نہیں تھی پاؤں جیسے زنجیروں میں جھکڑے تھے وہ وہاں سے بھاگنا چاہتی تھی لیکن قدم نہیں اُٹھا پارہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ویسے ایک بات ہے میر تم ٹھیک ہی کہہ رہے تھے اس دن
یہ جو زیادہ پارسا بنتی ہیں دو دو گز کے دوپٹے لپیٹ کر بری نیک  ذرا  سی تنہائی کیا ملی اپنی شرم و حیا  بھول جاتی ہیں ۔۔۔۔
بلکل  ایش  اب  مجھے میر کی باتیں سمجھ اگئی ہے ویسے ایک غلطی ہوگئی ہے رضوان بہت ریلیکس سا بیڈ پر بیٹھ گیا تھا جہاں سے تھوڑی دیر پہلے میر اُٹھا تھا۔۔۔۔۔۔۔
کیا غلطی ؟ میر جو دعا کے سامنے کھڑا تھا پلٹ کر رضوان کی طرف دیکھا۔۔۔
جو تجربہ تم نے کیا وہ مجھے خود کرنا چاہیے تھا اسنے بات کرتے ہوئے اپنی ایک انکھ دبائی ۔۔۔
ان کے قہقہے ایک بار پھر کمرے میں گونجے تھے دعا ابھی بھی انکھیں جُھکاٰئے کھڑی تھی انکے منہ سے نکلے الفاظ دعا کو کتنی اذیت دے رہے تھے اسکا اندازہ وہ کبھی نہیں لگا سکتے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے سٹاپ میر جیسے سریس ہوا ۔۔۔۔۔۔۔
دعا نے اپنی پلکیں اُٹھا کر میر کو دیکھا اوکے دعا یہ سب ایک مذاق تھا
 مجھے تم سے کبھی محبت نہیں تھی
  بلکہ یوں کہو کہ مجھے تم میں کوئی انٹرسٹ نہیں تھا لیکن ابھی جو تمہارے اور میرے درمیان ہوا اسکے لیے دل سے سوری لیکن میں نے کوئی زبردستی نہیں کی سب تمہاری مرضی سے ہوا ہے ۔۔۔
دعا نے اپنی انکھیں کھول میر کی انکھوں میں دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔
پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ پہلا اور آخری الفاظ دعا کے منہ سے نکلا تھا ۔۔۔۔۔
سوری دعا میں معافی مانگ رہا ہوں  ویسے تم کتنی پاگل ہو یار میرے ڈرامے کو سچ سمجھ کر میرے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔۔
تم واقعی پاگل ہو دعا ایک بار پھر کمرے میں قہقہوں کی آواز گونجی ۔۔۔۔۔
جو اذیت وہ دعا کو اپنے لفظوں سے پہنچا رہا تھا اسکا اندازہ وہ نہیں لگا سکتا تھا  کیوں کہ جنکو اندازے ہوتے ہیں وہ خود اذیت پہنچانے والے ناموں کی فہرست میں نہیں ہوتے  دعا کے کانوں میں تو ایک ہی بات گونج رہی تھی " تم کتنی پاگل ہو یار"
تو اسکا مطلب تم نے ہم سب سے جھوٹ بولا تھا؟  ایش کو تو جیسے جھٹکا لگا ۔۔۔۔۔
ہاں جھوٹ تھا میں سمجھ گیا تھا وہ میری باتوں میں اکر بھی مجھے ٹچ نہیں کرنے دے گی
 میں نے اپنی انا کی تسکین کے لیے تم لوگوں کے سامنے ڈرامہ کیا میں شرط ہار کر رضوان کے سامنے چھوٹا نہیں ہونا چاہتا تھا میر کی انکھوں سے آنسوں گِر اسکی شرٹ کو بھیگو رہے تھے
 اسکی نظر اپنی شرٹ پر پڑی تمہیں یاد ہے؟  ایش اس رات دعا کا دوپٹہ آنسوؤں سے بھیگ گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
ہاں مجھے یاد ہے۔۔۔۔۔۔ لیکن مجھے کبھی نہیں یاد ایا ایش کبھی نہیں دیکھو میری بےبسی میں اس سے معافی بھی نہیں مانگ سکتا کیا اللہ تعالیٰ مجھے یہ موقع دے گا؟ بولو ایش ۔۔۔۔۔

ایش فون بند کرچکی تھی میر بھی فون رکھ چکا تھا اسنے اپنی گلاسز اتار کر سائیڈ ٹیبل پر رکھی اور سونے کی نیت سے اپنی انکھیں بند کی لیکن اب واقعی سونا مشکل رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رابی دروازہ کھولو دانیہ نے نوڈلز بناتے ہوئے رابی کو آواز دی دو بار دروازہ نوک ہو چکا تھا لیکن رابی پتہ نہیں کہا تھی دانیہ خود ہی دروازہ کھولنے اگئی  ۔۔۔۔۔
اسلام وعلیکم!
وعلیکم السلام ۔۔۔کیسی ہو کاٹنات دانیہ نے اسے گلے لگاتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔
میں ٹھیک ہوں تم بتاؤ ۔۔۔۔
جی اللہ کا شکر میں بھی ٹھیک ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما؟  اسنے دانیہ سے الگ ہوتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ روم میں ہے تم وہی جاکر مل لو میں چائے لے کر اتی ہوں اکیلی ائی ہو؟
 نہیں ڈرائیور چھوڑ کر گیا ہے  ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اپنی ماں کے روم کی طرف بڑھ گئی دانیہ اب نوڈلز کے ساتھ ساتھ چائے کی تیاری میں لگ گئی ۔۔۔۔
اسلام و علیکم ماما ۔۔۔۔۔۔۔۔
وعلیکم السلام میری جان ۔۔۔۔
رافعہ کائنات سے مل رہی تھی پاس بیٹھی دعا جو بلاکس کے ساتھ کھیل رہی تھی دانیہ کو دیکھتے ہی بیڈ سے اتر کر نیچے چھپنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ گھر میں انے والے مہمانوں سے ڈر جاتی تھی کائنات بھی اس دفعہ کافی ٹائم کے بعد ائی تو وہ اسے بھول چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا بیٹا یہ آپی ہے باہر اؤ آپی سے ملو رافعہ کی بات سُن کر بھی دعا باہر نہیں ائی تو کائنات بیڈ کی دوسری سائیڈ کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔
دعا باہر اّؤ میری جان کائنات نے بہت سے آنسوں اپنے اندر اتارے وہ اپنی ماں کے سامنے رونا نہیں چاہتی تھی
 دنیا میں سب سے مشکل ترین کام اپنوں کو تکلیف میں دیکھنا ہے اور وہ ہماری بے بسی کی انتہاء ہوتی ہے جب انکے لیے کچھ نہیں کر پاتے ۔۔۔۔۔۔۔
باہر اجاؤ میری جان میں اپ کے چاکلیٹ بھی لائی ہوں لیکن دعا اپنی انکھوں پر ہاتھ رکھے اپنی جگہ سے نہیں ہلی ۔۔۔۔۔
لو میں تو دعا کے لیے نوڈلز لائی تھی لیکن وہ تو یہاں نہیں ہے دانیہ کی آواز پر دعا نے اپنی آنکھوں سے ہاتھ ہٹا لیے کائنات اپنی ماں کی طرف آکر بیٹھ گئی تھی
 دانیہ نوڈلز لے کر دعا کی طرف بیڈ کے نیچے دیکھنے لگی بایر آکر اچھے بچوں کی طرح آپی سے ملو پھر یہ نوڈلز ملے گے ۔۔۔۔۔۔
دعا نے نفی میں سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا اچھے بچے ایسے کرتے ہیں؟  چلو شاباش پھر ہم کل پارک بھی چلے گے پرامس ۔۔۔۔۔۔۔۔
پارک کا سنتے ہی دعا کا ڈر کہی پیچھے رہ گیا اور وہ بیڈ کے نیچے سے باہر اگئی کاٹنات نے جلدی سے اگے بڑھ کر اسے گلے لگایا اسکا منہ چومتے ہی کائنات اپنا ضبط کھو چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر مشکل سے ہی ایک گھنٹہ سو سکا جگا تو سر پہلے سے بھی بھاری تھا اُسنے سگریٹ سلگا کر ہونٹوں میں دبائی وہ سگریٹ کا عادی نہیں تھا بس کبھی کبھی پی لیتا تھا موبائل پکڑ ایش کو کال کرنے لگا لیکن اُسنے کال رسیو نہیں کی پھر ہوسپٹل فون کر اسنے دانیہ کا نمبر سسٹر سے لیا اب وہ کچھ سوچتے ہوئے دانیہ کا نمبر ملانے لگا ۔۔۔۔۔۔۔
ارے کائنات شامی بھی چیک کرو تمہیں بہت پسند ہے نہ بس کردو دانیہ کتنا کِھلاؤ گی یار سب ہی میری پسند کا تھا اچھا ہوا تم آ گئی مجھے بہت دنوں سے شاپنگ پر جانا تھا اب کل انشاءاللہ چلتے ہیں اسی لمحے دانیہ  کا موبائل بجنے لگا …
اسلام وعلیکم!
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔کیسی ہے اپ؟
جی الحمدلله ٹھیک اپ کون بات کررہے ہے؟
جی میں ڈاکٹر میر دعا کے بارے میں پوچھنے کے لیے فون کیا تھا ۔۔۔۔۔
دانیہ اپنی حیرانگی چھپاتے دعا کے بارے میں بتانے لگیں جی وہ بھی ٹھیک ہے ابھی بینڈیج چینچ کی لیکن مجھے لگتا ابھی اسے پاؤں میں تکلیف ے ۔۔۔۔
جی اپ فکر نہیں کریں اب ٹائم تو لگے گا زخم بھرنے میں ۔۔۔۔
کیا میری دعا کے فادر سے بات ہوسکتی ہے؟
سوری وہ اس دنیا میں نہیں ہیں اپ دعا کے بارے میں کچھ بات کرنا چاہتے ہے تو مجھ سے کرسکتے ہے ۔۔۔۔۔۔
سوری چلے میں پھر فون کروں گا الله حافظ ۔۔۔۔
الله حافظ ۔۔.۔
ماما وہ ڈاکٹر کا فون تھا دعا کا پوچھ رہے تھے دانیہ نے کھانا شروع کرتے ہوئے بتایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماضی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ اگے بڑھی اسنے تقریباً میر کو دھکا دے کر پیچھے کیا اور دعا کا ہاتھ پکڑ کر اسے کھینچتی ہوئی
 ہال سے اپنے بیگ اٹھائے وہاں سے نکلی رات کی وجہ سے سڑک سنسان تھی وہ تقریباََ دوڑتے ہوئے ہوسٹل کی طرف بڑھنے لگی دعا کا ہاتھ ابھی بھی کینزہ کے ہاتھ میں تھا
وہ اسکے ہاتھ سے اسکے بخار کا اندازہ لگا سکتی تھی لیکن اسے جلد از جلد ہوسٹل پہچنا تھا دعا کا دوپٹہ کہی سڑک پر ہی گِر گیا تھا
اسنے راستے میں کوئی بات نہیں کی 30 منٹ میں وہ ہوسٹل کے کمرے میں تھیں یہ 30 منٹ نہیں 30 گھنٹوں جیسے تھے دعا کمرے میں اتے ہی زمین پر بیٹھ گئی کینزہ پانی کا گلاس لیے اسی کے پاس آکر بیٹھی پانی؟
اسنے کینزہ کی انکھوں میں دیکھا میں نے کچھ نہیں کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں جانتی ہوں تم پانی پیئو دعا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں میں نے واقعی کچھ نہیں کیا وہ جھوٹ بول رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے مجھے یقین ہے تم پر دعا ریلیکس پلیز کینزہ نے ایک بار پھر پانی کا گلاس دعا کی طرف بڑھایا جسکو وہ زمین بوس کرچکی تھی اسکی کرچیاں زمین پر بکھر چکی تھی ۔۔۔۔۔
کینزہ تمہیں سمجھ کیوں نہیں آرہی میں نے سچ میں کچھ نہیں کیا وہ دھاڑی تھی میں بھی کہہ رہی ہوں میری جان مجھے تم پر یقین ہے ۔۔۔۔۔۔۔
تم میرا دل رکھنے کے لیے کہہ رہی ہو تمہاری انکھوں میں جو بے یقینی ہے میں دیکھ رہی ہوں اور سمجھ بھی رہی ہوں میں پاگل نہیں ہوں وہ اپنا منہ ہاتھوں میں دیے رونے لگی چیخنے لگی ۔۔۔۔۔
نہیں دعا سچ مے میں جھوٹ نہیں بول رہی نہ تمہارا دل رکھنا چاہ رہی ہوں میرا دل کہہ رہا ہے میر جھوٹ بول رہا ہے دعا ایسا سوچ بھی نہیں سکتی ۔۔۔۔۔
دعا اک دم سے کھڑی ہوئی مجھے اکیلا چھوڑ دو پلیز کینزہ تھوڑی دیر کے لیے اکیلا چھوڑ دو وہ ہاتھ جوڑے کینزہ کے سامنے التجاء کررہی تھی ۔۔۔۔
اوکے لیکن پلیز دروازہ لاک نہیں کرنا ورنہ میں کہا جاؤں گی اوکے ؟
اوکے وہ اب بیڈ پر گِرنے کے انداز میں بیٹھ گئی تھی
 میر کی کہی گئی ایک ایک بات ذہین میں فلم کی طرح چلنے لگی
وہ چیخ چیخ کر رونا چاہتی تھی کینزہ باہر اگئی تھی وہ کچھ نہیں سمجھ پارہی تھی کیا جھوٹ کیا سچ لیکن اسے دعا کے لیے بہت بُرا لگ رہا تھا رہ رہ کر میر پر غصہ ارہا تھا
کیا اتنا آسان ہوتا ہے کسی کو ذلت کی کھائی میں دھکیل دینا کیوں میر؟  میر تمہارے ہاتھ نہیں کانپے دھکا دیتے ہوئے کیوں تمہارا دل نہیں پھٹ گیا دعا کا دل دکھاتے ہوئے
تم کیوں نہیں پاگل ہوگئے اتنا سوچ کر پلین بناتے ہوئے میر مجھے یقین ہے دعا سچی ہے تمہیں اس سب کا حساب دینا ہوگا دوزخ کی اگ میں جھلس جاؤ گے تم کینزہ نے اپنی انکھوں سے آنسوں صاف کیے سب لڑکیاں ایک جیسی نہیں ہوتی کچھ لڑکیاں مضبوط ہوتی ہیں جو تکلیفوں پریشانیوں سے اور مضبوط ہوجاتی ہیں
لیکن کچھ بہت حساس کمزور ہوتی ہے جو ذرا سی ٹھیس سے بکھر جاتی ہیں تم نے اج دعا کو جو ٹھیس پہنچائی ہے میر تمہیں اللہ کو جواب دینا ہوگا
اور دعا کا خیال اتے ہی وہ پھر روم کی طرف بڑھ گئی دعا اپنا موبائل ہاتھ میں پکڑے رو رہی تھی ۔۔۔۔۔
دعا تم نے کسی کو فون کیا؟
بھابھی کو...........
تم نے بتا دیا ان کو سب کچھ؟
نہیں ۔۔۔۔۔۔اچھا کیا دعا وہ پریشان ہو جاتی ۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا نے کینزہ کا  ہاتھ مضبوطی سے تھاما کینزہ پلیز تم کسی کو کچھ نہیں بتانا گھر پر میں انکی نظروں میں گِرنا نہیں چاہتی پلیز ۔۔۔۔۔
نہیں بتاؤ گی وعدہ ہے تم سے لیکن اب رونا بند کرو تمہیں بہت بخار ہے سونے کی کوشش کرو پھر صبح داکٹر کے پاس چلے گے ٹھیک ہے؟
وہ رات انکی زندگی کی سب سے لمبی رات تھی جو ختم ہونے کو نہیں آرہی تھی
دعا ساری رات اپنی پوزیشن سے نہیں ہٹی اور کینزہ بھی وہی بیٹھی تسلیوں کے الفاظ ادا کرتی رہی
 صبح آذان کی آواز ائی تو دعا اپنے آنسوں صاف کرتی ہوئی اُٹھی تو اپنا توازن برقرار نہ رکھ سکی کینزہ جیسے تیسے کسی کی ہیلپ لے کر دعا کو ہوسپٹل لے ائی فرقان کو کال کر کے بتایا فرقان سُنتے ہی اسلام آباد پہنچ گیا تھا
جب دعا ہوش میں ائی تو کسی کو بھی  پہنچاننے سے انکاری تھی بس یاد تھا تو ایک جملہ "میں پاگل نہیں ہوں "
کینزہ سے کچھ پوچھا گیا لیکن اسنے کچھ نہیں بتایا اسنے اپنی دوست سے کیے گئے وعدے کو نبھایا ڈاکٹر نے پھر یہی اندازہ لگایا کہ بہت زیادہ بخار دعا کے ذہین پر اثر چھوڑ گیا ہے فرقان دعا کو گھر لے آیا تھا کینزہ بھی وہاں نہیں رہنا چاہتی تھی وہ بھی واپس یہی شفٹ ہوگئ تھی  ۔۔۔۔۔۔
شروع شروع میں سب کو لگتا تھا دعا کچھ عرصے میں ٹھیک ہوجائے گی لیکن وقت گُگزرنے کے ساتھ ساتھ یہ اندازہ بھی غلط ثابت ہوا
دانیہ کی ڈلیوری کے دن نزدیک تھے جب آفس سے واپسی پر فرقان اور عابد صاحب کا ایکسیڈنٹ ہوا عابد صاحب تو موقع پر اس دنیا سے رخصت ہوگئے فرقان نے ہوسپٹل میں ایک دن گزارا اس ایک دن اسنے دانیہ سے بہت سے وعدے لیے وہ بھی ہمیشہ کے لیے انکو چھوڑ گیا کچھ دنوں بعد دانیہ کو اللہ نے اپنی رحمت سے نوازہ کینزہ نے اس مشکل وقت میں انکا بہت ساتھ دیا دعا کا بہت خیال رکھا وقت گزر رہا تھا
 سب کچھ بدل گیا تھا ہسنا مسکرانا تو سب بھول گئے تھے  پھر وہ دن ایا جب عانبیہ نے پہلی بار ماما بولا اس دن رافعہ اور دانیہ انکھوں میں نمی لیے مسکرائی
اب رافعہ دانیہ کی شادی کرنا چاہتی ہے لیکن دانیہ فرقان سے کیے گئے وعدوں پر قائم ہے کینزہ کی ایک سال پہلے اپنے کزن سے شادی ہوگئی تو وہ امریکہ چلی گئی
 لیکن ہفتے میں وہ ایک بار کال کر دعا کا ضرور پوچھتی اس اُمید کے ساتھ کہ دانیہ کا جواب شاید اس بار اسے خوشی دے لیکن وہ ہر بار مایوس ہوتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایش اور میر کو سکالرشپ کے لیے سلیکٹ کرلیا گیا تھا
 وہ دونوں امریکہ سے MBBS  کی ڈگری لے کر دو، سال پہلے پاکستان ائے تو دونوں نے اپنی انڈرسٹینڈنگ کو دیکھتے ہوئے شادی کا فیصلہ کیا
 دونوں خاندانوں کی رضامندی سے دو سال پہلے انکی منگنی کردی گئی
 اب وہ اپنی اپنی لائف میں مصروف تھے میر لاہور میں اور ایش اسلام آباد میں جاب کررہی تھی۔۔۔۔۔۔
 اس سارے سفر میں انکو کبھی دعا کا خیال نہیں ایا اس دن میر دعا کو نہیں دیکھتا تو کبھی اپنے کیے گناہ کا خیال نہ اتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دانیہ کہاں رہ گئی ہو یار چلو بھی کائنات کب سے ہال میں بیٹھی دانیہ کا انتطار کررہی تھی وہ دونوں شاپنگ کے لیے جارہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسلام وعلیکم!
و علیکم السلام کینزہ کیسی ہو بچے کب ائی پاکستان؟
کل ائی تھی اپی اچھا ہوا آپ یہاں ہی ہو میرا بہت دل کررہا تھا اپ سب سے ملنے کو دانیہ آپی کہاں ہے؟  دعا؟
بیٹھو تو بھئی سب سے مل لینا گھر میں سب کیسے ہیں؟
سب ٹھیک ہیں آپی ۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ؟  دانیہ کمرے سے نکلی تو کینزہ کو دیکھ بہت خوش ہوئی رسمی علیک سلیک کے بعد اسے پتہ چلا وہ مارکیٹ جارہی تھیں تو کینزہ نے ان کو زبردستی مارکیٹ بھیجا

یہ کہہ کر کہ وہ دعا کا خیال رکھے گی دانیہ بھی رابی کو چائے کا کہہ کائنات کے ساتھ چلی گئی عانبیہ سکول تھی سو وہ دعا کی طرف سے بے فکر ہوکر چلیں گیئں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اسلام آباد انا چاہ رہا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔
میر سے فون پر بات کرنے کے ساتھ ساتھ ایش کافی بنا رہی تھی میر کی بات سُن ایش کے ہاتھ رک گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہیں نہیں لگتا تم خود سے بھاگ رہے ہو؟
اگر میں نہیں بھاگوں گا تو میں بھی پاگل ہوجاؤں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہاہا سو فنی میر تم جیسے لوگ پاگل نہیں ہوتے جو گناہ کرکے بھول جاتے ہیں
جو کسی کو اذیت میں مبتلا کرکے بھول جاتے ہیں ۔۔۔۔۔
تم بھول رہی ہو ایش تم بھی اس سب میں شریک تھی ۔۔۔۔۔۔۔
مجھے اسی بات کی امید تھی تم سے میر ہم اس مذاق میں شریک تھے

 لیکن تمہارے جھوٹ یا گناہ میں نہیں وہ تمہارے جھوٹ کی وجہ سے اس حال میں ہے نہ کہ مذاق کی وجہ سے ۔۔۔۔۔
میرا تمہیں یہی مشورہ ہے تم بھاگنے کی کوشش نہ کرو بلکہ وہی رہ کر اس سب کو فیس کرو ۔۔۔۔۔۔
ایش کافی تیار کر صوفے پر بیٹھ چکی تھی اب وہ میر سے بات کرنے کے ساتھ ساتھ کافی کا گھونٹ گھونٹ پی رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسے؟ میں اس کے ساتھ ہر وقت نہیں رہ سکتا
 میں اسکے گھر نہیں جا سکتا میں بار بار انکے گھر کال نہیں کرسکتا میر نے اپنا سر کرسی کی پشت سے لگا لیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی راستہ ڈھونڈو میر اگر اپنی تکلیف سے باہر آنا چاہتے ہو تو کچھ کرو
 اب ہم 5 7 سال پہلے والے ٹین ایج سٹوڈنٹ نہیں ہیں
 جو اپنی غلطیوں کو اگنور کرے یا اس سے بھاگے
 ویسے بھی تم نے اسلام آباد آکر کیا کرنا ہے میری نائٹ شفٹ ہے آدھا دن میں سو کر گزارتی ہوں فیملی تمہاری آؤٹ اوف کنٹری تم وہی رہ کر اس مسئلے کا حل ڈھونڈو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے مطلب تم میرے مسئلے میں مجھے اکیلا چھوڑ رہی ہو؟
بات یہ نہیں ہے میر مجھے اب ڈر لگنے لگا ہے دعا کی حالت سے کتنے دن گزر گئے میں سو نہیں سکی  اگر تم دعا سے معافی نہ مانگ سکے تو؟
تو میں اپنے اللہ سے معافی مانگ لوں گا وہ تو الرحمن  الرحیم ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
تم تصویر کا ایک رُخ دیکھ رہے ہو میر اگر وہ الرحمن الرحیم ہے تو وہ الجبار القھار بھی تو ہے تم کیوں بھول رہے ہو اگر وہ چاہے گا تو تم اپنے گناہوں کی معافی مانگ سکو گے اگر وہ چاہے گا تو تم سے یہ حق بھی چھین لے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر کا دل کسی نے اپنے مٹھی میں لیا تھا وہ فون بند کرچکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کینزہ دعا کی کمزوری بہت اچھے سے جانتی تھی وہ رافعہ سے اجازات لے کر دعا کو پارک لے گئی تھی
تاکہ وہ اسے خوش دیکھ سکے اسکا اندازہ بلکل ٹھیک تھا دعا پارک اکر بہت خوش تھی وہ جھولے لیتی بار بار ہاتھ ہوا میں ہلا کر کینزہ کو بھی دعوت دے رہی تھی
 اب کینزہ بھی اپنا دوپٹہ کمر پر بندھے جوتا اتار کر دعا کے ساتھ کھیلنے کو تیار تھی وہ کافی ٹائم دعا کے ساتھ وہاں انجوائے کر کے اُسے گھر لے ائی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
گھر اتے ہی اسنے دعا کے کپڑے چینج کروائے کھانا کھلا کر سونے کے لیے لیٹا دیا لیکن دعا سونے کے موڈ میں نہیں تھی وہ بار بار تھوڑی سی انکھ کھول کر کینزہ کو دیکھ لیتی پھر انکھیں بند کرلیتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ اسکی حرکت نوٹ کر مسکرا دیتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ اور کائنات گھر ائی تو کینزہ ہال میں ٹی وی دیکھ رہی تھی وہ انھیں دیکھ مسکرائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کینزہ بور تو نہیں ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں دانیہ اپی میں نے تو دعا کے ساتھ بہت انجوائے کیا ہم پارک گئے تھے ۔۔۔۔۔
واہ دعا تو بہت خوش ہوگی کہاں ہے؟  کائنات  کینزہ سے پوچھتے ہوئے اسکے پاس ہی بیٹھ گئی ۔۔۔۔
سو گئی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
سو گئی وہ؟  دانیہ نے بہت حیرانگی سے پوچھا ۔۔۔۔۔
جی جی آپی۔۔۔۔ مجھے یاد ایا میں تو آپ سب کے لیے گفٹ لائی تھی ایک منٹ میں لے کر ائی گاڑی میں پڑے ہیں ………..

میں دعا سے شادی کرلوں تو تمہیں کوئی اعتراض نہیں ہوگا؟
میسج پڑھتے ہی ایش نے گہری سانس لی اور میسج ٹائپ کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر تمہیں لگتا ہے یہ آخری حل ہے تو مجھے کوئی اعتراض نہیں
 اگر تم ایسے ہی اپنے گناہ کے حصار سے نکل سکتے ہو تو مجھے کوئی اعتراض نہیں
اگر تمہیں لگتا ہے اب کی بار تم اسے دھوکہ نہیں دو گے تو مجھے کوئی اعتراض نہیں
سب سے بڑھ کر اگر دعا ٹھیک ہوجاتی ہے تو مجھے خوشی ہوگی ۔۔۔۔۔۔
میر کو میسج پڑھ کر حیرت کا جھٹکا لگا وہ ایش سے ایسے جواب کی امید نہیں کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھینکیو ایش ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھینکیو کی کوئی بات نہیں میر مجھے بھی اس مسئلے کا یہی حل نظر آرہا تھا
بحثیت ڈاکٹر مجھے لگتا ہے اکر دعا اس دن سے اسی حالت میں ہے
تو اگر تم اس کے قریب رہو اسکا خیال رکھو تو ہو سکتا ہے وہ ٹھیک ہوجائے میر ہم ہمیشہ سے اچھے دوست رہے ہیں اگر  تمہیں کبھی بھی میری کسی ہیلپ کی ضرورت پڑے تو مجھے ضرور یاد کرنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کائنات میں تھوڑی دیر میں اتی ہوں دانیہ بیگ کندھے پر ڈالتے ہوئے دروازے کی طرف بڑھ گئی جس تیزی سے وہ گئی تھی وہ جانتی تھی دانیہ کہاں جارہی ہے ۔۔۔۔۔۔
40 منٹ کی مسافت کے بعد دانیہ فرقان اور عابد صاحب کی قبر پر پہنچ گئی تھی مصروفیات کی وجہ سے وہ یہاں کم ہی اتی تھی
 اج کائنات گھر پر موجود تھی موقع ملتے ہی دانیہ نے قبرستان کا رخ کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعا مانگنے کے بعد بھی وہ وہاں سے اُٹھی نہیں
سر جھکائے انسؤں بہا رہی تھی یا شاید یہاں آنسوں بہانے کی  ضرورت نہیں پڑتی یہاں تو آنسوں اپنا راستہ خود تلاش کر لیتے ہیں
جب ہمارے اپنے اس دنیا سے رخصت ہوجاتے ہیں تو لوگ کہتے ہیں کچھ دن گزرے گے تو صبر اجائے گا
 زخم بھر جائے گئے غلط کہتے ہیں لوگ زخم کبھی نہیں بھرتے بس ہم ان زخموں کے عادی ہوجاتے ہیں ان زخموں کو چُھپا لیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
وہ کب سے وہاں خاموش بیٹھی قبروں کو دیکھ رہی تھیں
 دل میں بہت سے باتیں تھیں جو وہ چیخ چیخ کر فرقان کو بتانا چاہتی تھی لیکن وہ ایسا نہیں کرسکتی تھی
 اس  کے کانپتے ہونٹ ہلے تھے فرقان میں تھکی نہیں ہوں بس آپ بھی ہوتے تو مجھ سے بہتر سب کام کرلیتے
دعا کو سنبھال لیتے شاید وہ ٹھیک بھی ہوچکی ہوتی
 فرقان آپ کیوں چلے گئے عانبیہ مجھ سے پوچھتی ہے ماما میرے بابا کب ائے گے میں اُسے کیسے سمجھاؤں فرقان؟
 ہم دنیا کے سامنے خود کو کتنا بھی مضبوط ثابت کرلے اندر سے ہم اتنے ہی کھوکھلے ہوتے ہیں
جو برداشت ہم سب کے سامنے دکھا رہے ہوتے ہیں کسی کمزور لمحے وہ برداشت ہم سے چھوٹ جاتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دروازہ نوک ہونے پر رابی نے دروازہ کھولا میر اپنا تعارف کرواتا ہوا گھر میں داخل ہوا سامنے ہال میں ہی کائنات دعا کو کھانا کھلا رہی تھی میر سیدھا وہی اگیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
علیک سلیک کے بعد میر نے اپنا تعارف کروایا جس پر کائنات نے مسکراتے ہوئے اسے بیٹھنے کا کہا ۔۔۔۔
میں دعا کی بڑی بہن ہوں کائنات ۔۔۔۔۔
اسنے نوالہ دعا کے منہ میں ڈالتے ہوئے بتایا ۔۔۔۔۔۔۔
اپکی ماما؟  مجھے ان سے ضروری بات کرنی ہے ۔۔۔۔
جی میں بلواتی ہوں رابی چائے لیے ہال میں ائی تو اسنے ماما کو بلانے کا کہا ۔۔۔۔۔۔۔
تھوڑی دیر میں وہ بھی اگئی تھی ڈاکٹر میر کو اپنے ماتھے پر پسینے کے قطرے محسوس ہونے لگے ۔۔۔۔۔۔۔
اسنے چائے کا کپ ٹیبل پر رکھتے اپنی بات کا آغاز کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
آنٹی میں اندازہ لگا سکتا ہوں دعا جس حال میں ہے اپ کتنی پریشان رہتی ہے میں آج آپ کو یہ بتانے آیا ہوں کہ دعا کا علاج ممکن ہے لیکن ۔۔۔۔
لیکن کیا؟ ڈاکٹر میر اپ جو بھی کہنا چاہتے ہے کہہ دیجئے جواب کائنات کی طرف سے آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی میں جب امریکہ میں تھا وہاں ایک ڈاکٹر تھے بہت اچھے ڈاکٹر تھے مجھے یقین ہے اگر دعا کو وہاں لے جایا جائے تو یہ بلکل نارمل ہوجائے گی ۔۔۔۔۔
اسکی بات سُنتے ہی کائنات نے اپنی ماں کی طرف دیکھا جہاں کچھ دیر پہلے امید تھی وہی اب مایوسی کا راج تھا ۔۔۔۔
ڈاکٹر میر اپکا یوں فکر کرنا دعا کے لیے سوچنا ہمیں اچھا لگا لیکن سوری یہ ناممکن ہے ۔۔۔۔۔۔
لیکن کیوں؟
دیکھیے دعا کی حالت تو اپکے سامنے ہے اسکے ساتھ اتنی دور جانے والا کوئی نہیں ہے  ماما کی طبعیت بھی ٹھیک نہیں اور بھابھی تو عانبیہ اور آفس چھوڑ کر کیسے جاسکتی ہے؟
آپکے بابا یا بھائی؟
پانچ سال پہلے کار ایکسیڈنٹ میں انکی ڈیتھ ہوگئی تھی ۔۔۔۔
سوری ۔۔۔۔۔۔
کوئی بات نہیں ڈاکٹر میر اپ یہاں تک ائے اپکا بہت شکریہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے پاس ایک حل ہے اس بات کا ۔۔۔۔
جی جی بتائیے ۔۔۔۔۔۔
اگر آپ لوگوں کو اعتراض نہیں ہو تو میں ہیلپ کر سکتا ہوں میں کچھ دنوں میں امریکہ جانے والا ہوں تو اپ دعا کو میرے ساتھ۔۔۔۔۔۔۔۔
جتنے ڈر سے میر نے اپنی بات انکے آگے رکھی اتنی ہی حیرانگی سے ماں بیٹی نے ایک دوسرے کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔
اگر اپ کا دل نہیں مان رہا تو آپ دعا سے میرا نکاح کردیں ۔۔۔۔۔
میر نے ایک اور بم پھوڑ چکا تھا ۔۔۔۔۔۔
دروازے سے اندر آتی دانیہ کے قدم ایک جگہ پر ہی رک گئے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر میر ہم آپ کی بات مان بھی لے اپ جتنے یقین سے کہہ رہے ہے دعا ٹھیک ہوجائے گی اگر ایسا نہ ہو سکا تو کائنات نے ذرا سنبھلتے ہوئے پوچھا ؟
 پہلی بات تو یہ اللہ نے چاہا تو دعا بلکل نارمل ہوجائے گی
 دوسری بات میں سوچنا نہیں چاہتا لیکن اگر ایسا کچھ ہوا بھی تو میں یہ رشتہ پورے خلوص سے نبھاؤں گا یہ میرا وعدہ ہے آپ سب سے ۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر میر جس حالت میں وہ ہے آپکو کیوں لگا اسے آپکے خلوص سے فرق پڑے گا اُلٹا آپ اس سے اُکتا جائے گے دانیہ نے صوفے تک اتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔
اپ سب یہ کیوں نہیں سوچ رہے وہ ٹھیک ہوجائے گی نارمل زندگی گزارے گی میں جواب کا انتظار کروں گا میر کہتے ہی رکا نہیں وہ جانتا تھا جو وجہ انکو دے کر جاریا ہے
 ممکن تھا انکا جواب ہاں میں ہو لیکن نہ کے ڈر سے وہ ایک پل بھی مزید نہیں رکنا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔۔
ماما ہم کسی پر کیسے اعتبار کرسکتے ہیں وہ غیر ہے ہم جانتے بھی نہیں اُسے ایک دو ملاقات کے بعد وہ سیدھا رشتہ لے کر ہی اگیا دانیہ کا دل کانپ رہا تھا انجانا سا خوف اسے اپنے حصار میں لیے ہوئے تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن بیٹا سوچو اگر ہماری دعا ٹھیک ہوگئی تو؟
ماما وہ یہاں بھی ہوجائے گی ٹھیک اپ پلیز منا کردے ڈاکٹر کو ۔۔۔۔۔
دانیہ پلیز ٹھنڈے دماغ سے سوچو تو سہی یار مجھے تو اس پروپوزل میں کوئی برائی نظر نہیں آرہی ہو سکتا واقعی دعا نارمل ہوجائے ۔۔۔۔۔
کائنات اگر یہ نہ ہوسکا تو؟  تو میر کیا کرے گا طلاق دے کر اسے ہمارے پاس چھوڑ جائے گا تو کیوں رسک لے ہم دانیہ کہتے ہی اپنے روم کی طرف بڑھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر کی دلائی گئی امید دانیہ کے دل میں بھی کہی نہ کہی دستک دے رہی تھی لیکن بات کا دوسرا رخ پہلے پر حاوی تھا وہ دعا کی زندگی کے ساتھ کوئی رسک نہیں لینا چاہتی تھی
 وہ ایک زندہ لڑکی پر کوئی تجربہ نہیں کرنا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر نے گھر آکر کھانا نہیں کھایا تھا وہ کب سے ایش کو کال ملا رہا تھا لیکن ایش رسیو نہیں کررہی تھی
 میر کا دل اب زورو سے دھڑک رہا تھا
دعا کے گھر سے انے والے جواب کا سوچ کر  میر کی سانس اٹک گئی تھی
 وہ بے چینی سے کمرے میں اِدھر اُدھر چکر کاٹ رہا تھا اللہ تعالیٰ میں دعا سے معافی مانگنا چاہتا ہوں
 مجھے اس توفیق سے محروم نہیں کرنا پلیز اے میرے پروردگار مجھ پر رحم فرما دے "رحم" میں نے دعا پر رحم کیا تھا؟

 تو کیوں میں اپنے لیے رحم کی دعا مانگ رہا ہوں مجھے تو اپنے لیے سزا مانگنی چاہیے اسنے صوفے پر گِرتے ہی اپنی انکھیں موند لی
کیوں میں اتنا بے حس ہوگیا تھا ؟
میر کے موبائل پر میسج آیا تو اسنے انکھیں کھول موبائل سامنے کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں بولو میں بزی تھی ۔۔۔۔۔
میں دعا کے گھر پروپوزل لے کر گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا؟  وہ مان جائے گے؟
ہاں میں نے بات ہی اس انداز میں کی تم دعا کرنا پلیز وہ مان جائے۔۔۔۔۔۔۔
تمہیں کیوں لگتا ہے میں دعا کروں گی؟
تو کیا نہیں کرو گی؟
کروں گی میر لیکن ایک بات کہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں بولو ۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر میں دعا کی جگہ ہوتی تو تمہیں کبھی معاف نہ کرتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری امید کی ڈوری کو مت توڑو ایش پلیز
میر ہر گناہ کی معافی نہیں ہوتی
  ایک  لڑکی کو زندہ درگور کردینا
 اسکے دل کو اتنی بے رحمی سے کچل دینا
میں اج بھی سوچ رہی تھی میر اس دن جو کچھ تم نے کہا
 وہ اگر سچ ہوتا تو کبھی دعا پاگل نہیں ہوتی
 کیوں کہ وہ بھی گنہگار ہوتی لیکن وہ تو بے گناہ تھی
دانیہ کب سے گھٹنوں میں سر دیئے رو رہی تھی اج وہ کھانا کھانے بھی نہیں گئی رابی دو بار بلانے ائی دانیہ نے طبعیت خراب کا بہانہ بنا کر اُسے واپس بھیج دیا ۔۔۔۔۔۔۔
کھانا تو رافعہ اور کائنات نے بھی ٹھیک سے نہیں کھایا عجیب کشمکش سے دوچار گھر میں عجیب سی بے چینی سب اپنی اپنی سوچ میں گم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کائنات عانبیہ کو رافعہ کے کمرے میں سُلا کر کھانا لیے دانیہ کے روم میں ائی جہاں ہر طرف اندھیرے کا راج تھا وہ لائٹ اون کر دانیہ کے قریب زمین پر ہی بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ؟  دانیہ تم اتنی کمزور تو کبھی نہیں تھی کائنات نے اسکے بازوں پر اپنا ہاتھ رکھ کر اسے اپنے ہونے کا احساس کروایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ پلیز یار دیکھو جیسا تم کہوں گی وہی ہوگا ہم تمہاری بات سمجھ رہے ہیں ۔۔۔
نہیں سمجھ رہے میری بات اسنے اپنا آنسوؤں سے بھیگا چہرہ گھٹنوں سے اوپر اُٹھایا، ۔۔۔۔۔۔
کیا میں نہیں چاہتی دعا ٹھیک ہوجائے؟
ہم نے یہ کب کہا دانیہ؟
نہیں تم اور ماما تو یہی سمجھ رہے ہو ۔۔۔۔۔
دانیہ تم غلط سمجھ رہی ہو ایسا نہیں ہیں ہم تو بس یہ سوچ رہے تھے رسک لینے میں کیا بڑائی ہے میر اچھے گھر کا لگتا ہے داکٹر ہے ہو تم ایک بار سوچو تو ہماری دعا ٹھیک ہوگئی ہے پہلے جیسی نارمل  ہم سب اور کیا چاہتے ہیں بتاؤ؟
مجھے نہیں پتہ لیکن میرا دل اس بات پر نہیں مان رہا کچھ غلط ہوگیا تو میں دعا کو کسی اور آزمائش میں نہیں دیکھ سکتی ۔۔۔۔۔۔
اچھا چلو ابھی کے لیے بس تم کھانا کھاؤ ہم کل بات کریں گے اوکے؟

صبح میر  پارک تو آگیا لیکن واک کرنے کی ہمت نہیں کر پایا وہ وہی بینچ پر بیٹھ گیا تھا جب اُسے جیسے  دور سے دانیہ اپنی طرف آتی دیکھائی دی وہ جسنے اپنی گلاسز  ہاتھ میں پکڑ رکھی تھی اب وہ گلاسز لگائے دانیہ کو دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔
دانیہ اب اسی بینچ پر تھوڑے فاصلے پر بیٹھ چکی تھی ۔۔۔۔۔۔
کیسی ہے آپ؟
الحمدلله ٹھیک مجھے اپ سے بات کرنی تھی اس لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی جی آپ بولے میں سُن رہا ہوں میر کا دل جیسے دھڑکنا بھول گیا تھا ۔۔۔۔۔۔
اپ دعا کی حالت اچھے سے جانتے ہے؟
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔
پھر اپ نے اتنی بڑی بات کیسے کہہ دی؟
میں نے یہ بھی تو کہا تھا وہ ٹھیک ہو سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر میر اگر ایسا نہ ہوسکا تو؟
میں ایسا سوچنا نہیں چاہتا ۔۔۔۔۔۔۔
لیکن مجھے اسکا جواب چاہیے ۔۔۔۔۔۔
وہ پھر بھی میری ذمداری ہوگی جسکو میں اپنے دل سے نبھاؤں گا ۔۔۔۔
اپکو نہیں لگتا یہ باتیں کہنے میں زیادہ آسان اور ان پر عمل کرنا زیادہ مشکل ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپ مجھ پر بھروسہ تو کریں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وجہ؟
مطلب؟
مطلب کوئی ایک وجہ تو بتائے جسکی وجہ سے میں اپ پر بھروسہ کروں ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمیں کچھ چیزیں وقت پر چھوڑ دینی چاہیے مس دانیہ مجھے امید ہے اپ مایوس نہیں ہوگی ۔۔۔۔۔۔
دانیہ جواب دیئے بغیر وہاں سے چلی گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر نے اپنی انکھیں بند کر کھلی فضا میں سانس لینا چاہا لیکن اسے اپنا دم گھٹتا ہوا محسوس ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ماما اپ جو فیصلہ کرے میں اپ کے ساتھ ہوں دانیہ نے عانبیہ کے منہ میں نوالہ ڈالتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔
دانیہ میری بچی جیسے اب تک تم سب سنبھالتی ائی ہو اگے بھی تمہیں ہی دیکھنا ہے سب مجھے یقین ہے تم جو بھی فیصلہ لو گی دعا کے حق میں بہتر ہی ہوگا ۔۔۔۔۔
لیکن ماما ۔۔۔۔۔۔
دانیہ ماما ٹھیک کہہ رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اج میر سے ملنے گئی تھی اسکی بات پر رافعہ اور کائنات نے حیرانگی سے اسکی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔
اپ ٹھیک کہہ رہی تھی اگر دعا کے ٹھیک ہونے کا یہی ایک راستہ ہے تو ہمیں سوچنا چاہیے ۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ بیٹا اگر تم سوچنے کے لیے اور ٹائم لینا چاہتی ہو تو۔۔۔۔۔
نہیں ماما اپ اج میر کو بلوا کر سارا کچھ فائنل کرلے چلو عانبیہ سکول کے لیے دیر ہوجائے گی دانیہ جلد ہی وہاں سے چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
میر کو شام کی چائے پر رافعہ نے گھر بلایا تھا اس وقت وہ رافعہ اور کائنات کے ساتھ شادی کے بارے میں بات کررہا تھا دانیہ عانبیہ اور دعا کے ساتھ چھت پر کھیل رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
انٹی میری فیملی پاکستان میں نہیں ہے میں جب دعا کو امریکہ لے کر جاؤں گا اُن سے ملوا دوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔
بیٹا کوئی تو ہوگا یہاں؟
نہیں آنٹی پاکستان میں کوئی نہیں ہے چند ایک دوست ہیں لیکن وہ بھی اس وقت شہر میں موجود نہیں ۔۔۔۔۔۔۔
چلے کوئی بات نہیں یہ بتایئے نکاح کا دن کونسا مقرر کرنا ہے؟  اب کی بار کائنات بولی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ جمعہ؟
اتنی جلدی مطلب دو دن بعد؟
انٹی مجھے دعا کے علاوہ کچھ نہیں چاہیے بس اپنی دعاؤں کے سایے میں اسے میرے ساتھ رخصت کردیجئے گا ۔۔۔۔۔۔۔
وہ تو ٹھیک ہے بیٹا لیکن ہمارے کچھ خاص مہمان ہوگے نکاح پر ۔۔۔۔

سب طے ہو گیا تو میر جاچکا تھا دانیہ دعا اور عانبیہ کو نیچے لے آئی تھی
صبح تم دونوں جاکر شاپنگ کرلینا رافعہ نے دانیہ کو خاموش بیٹھا دیکھ کر بات شروع کی ۔۔۔۔۔۔
اپ لسٹ بنا دینا ماما ہم چلے جائے گے ۔۔۔۔جواب کائنات نے دیا ۔۔۔۔۔۔۔
رافعہ دانیہ کے ساتھ آکر بیٹھی ۔۔۔۔۔
میری بیٹی کیوں پریشان ہورہی ہو اللہ سب بہتر کرے گا میری بچی تو بہت بہادر ہے ۔۔۔۔
دانیہ اپنا ضبط کھو کر رافعہ کے گلے لگ رونے لگی ماما مجھے ڈر لگ رہا ہے ۔۔۔۔۔
نہیں میری جان ڈرو نہیں بس دعا کرو الله سے وہی ہو جو ہماری بیٹی کے حق میں بہتر ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما دعا کیسے سمجھے گی وہ ہمارے بغیر کیسے رہے گی ۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ بس چُپ ہوجاؤ سب ٹھیک ہوجائے گا کائنات نے بھی اپنے آنسو صاف کر دانیہ کو تسلی دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میر آج خود کو بہت ہلکا محسوس کررہا تھا دل کا بوجھ کافی حد تک اتر چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسی ہو ایش؟
وہ میسج کر شاور لینے کے لیے چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہوں ابھی ڈیوٹی سے ائی سونے لگی تھی تم سُناؤ ۔۔۔۔۔۔۔
وہ شاور لے کر واپس روم میں ایا تو ایش کا میسج دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کل نکاح ہے میرا اور دعا کا تم آؤ گی؟
ہاہاہا اگر تم میرا امتحان لینا چاہتے ہو تو میں پہلے ہی بتا دیتی ہوں میں فیل ہوں ۔۔۔
مطلب؟
مطلب اگر میں وہاں اگئی تو کمزور پڑ جاؤں گی ہوسکتا ہے اپنی بات سے بھی مکر جاؤں اس لیے مجھے تو تم رہنے ہی دو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دانیہ اور کائنات شاپنگ کر کے گھر ائی  تھی بھوک سے بُرا حال ہورہا تھا رابی کو کھانے کا کہہ کر دانیہ دعا کے کمرے میں گئی تو وہ وہاں نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔۔
رابی دعا کہا ہے؟
دانیہ کچن کے دروازے میں کھڑی پوچھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
اپنے کمرے میں ہی سو رہی تھی جی رابی نے چاول ٹرے میں نکالتے ہوئے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں ہے وہاں تو ہی پوچھ رہی ہوں دانیہ غصے سے کہتی ہوئی سیڑھیاں عبور کرنے لگی میں چھت پر دیکھتی ہوں ماما کے کمرے میں دیکھو ۔۔۔۔۔
جی اچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ چھت پر بھی نہیں تھی  دانیہ واپس ائی تو رابی ہال میں ہی کھڑی تھی دیکھا ماما کے روم میں؟
جی نہیں ہے وہاں بی بی جی دوائی کھا کر سوئی تھی انہوں نے مجھے دھیان رکھنے کو کہا تھا رابی نے ڈرتے ہوئے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔
کچھ نہیں ہوتا تم لوگوں سے، کتنی دفعہ کہا ہے اپنے کان اور انکھیں کھلی رکھا کرو لیکن نہیں یہاں سُنتا کون ہے۔۔۔۔۔۔
ریلیکس ہوجاؤ دانیہ وہ پارک نہ چلی گئی ہو چلو پارک چلتے ہیں  کائنات نے دروازے کی طرف بڑھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں تم بیٹھو میں دیکھ کر آتی ہوں ۔۔۔۔۔۔
دانیہ گاڑی کی چابی اُٹھائے کائنات کی انکھوں سے اوجھل ہوگئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
کائنات وہی صوفے پر بیٹھ گئی تھی بھوک کی شدت میں کمی آگئی تھی پھر وہ کسی خیال سے اُٹھی اور عانبیہ کے روم میں چلی گئی وہ ابھی نیند سے جاگی تھی ۔۔۔۔
پھوپھو جانی وہ کائنات کو دیکھ کر مسکرائی ۔۔۔۔۔۔۔
اُٹھ گئی میری جان بھوک لگی ہے؟
نہیں ماما جانی کہاں ہے ۔۔۔۔۔۔۔
باہر گئی ہے تھوڑی دیر میں اجائے گی اپ کو پتہ ہے ہم اپ کے لیے بہت پیارے پیارے ڈریسز لائے ہیں ۔۔۔۔۔۔
دیکھائے پھر ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہا دیکھاتی ہوں میری جان بس ماما کو آنے دو کائنات نے اسکے گال چومتے ہوئے اُسے اُٹھا کر اپنی گود میں بیٹھایا اب اسکے چہرے کو دیکھنے لگی وہ دعا سے کتنی ملتی ہے ویسے ہی نقش رنگ نزاکت اللہ تعالیٰ اس کے نصیب اچھے کرے دعا جیسی قسمت نہ ہو کائنات کی انکھیں نم ہوئی ۔۔۔۔۔
پھوپھو جانی آپ رو رہی ہو؟
نہیں پھوپھو کی جان کائنات نے عانبیہ کو گلے سے لگایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دانیہ پارک کے اندر جانے لگی تھی جب اسکی نظر تھوڑی دور سڑک پر پڑی وہاں بہت سے لوگ کھڑے تھے دانیہ کا دل خوف سے لرز گیا اسنے بنا کچھ دیکھے ادھر دوڑ لگا دی وہ لوگوں کو پیچھے کرتی اگے بھر رہی تھی کسی کی آواز دانیہ کی سماعت سے ٹکرائی  مجھے لگتا ہے لڑکی مر چکی ہے ۔۔۔۔۔۔
دانیہ نے ایک نظر اس آدمی کی طرف دیکھا اور دھیرے سے اپنا قدم اگے رکھا ایک زور دار چیخ اسکے گلے سے نکلی اور وہ نیچے بیٹھتی چلی گئی دعا  کار کی ٹکر سہہ نہیں پائی اور اس دنیا کو چھوڑ کر چلی گئی ایک معصوم نازک سی لڑکی جو کسی کے عشق میں اپنے ہوش و ہواس کھو چکی تھی وہ پاگل لڑکی اس دنیا میں  نہیں رہی تھی دانیہ نے  کانپتے ہاتھوں سے اپنا دوپٹہ اتار کر دعا کے وجود پر پھیلایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس گھر سے آج ایک اور جنازہ اُٹھا تھا دعا ایک بار پھر سب کے زخم تازے کر اس دنیا سے رخصت ہوگئی تھی ایسے زخم جو کبھی نہیں بھرتے کبھی بھی نہیں میر  جنازے سے واپس ایا تو کینزہ اسے وہاں دیکھ اپنی انکھیں مسلنے لگی وہ کیسے میر کو بھول سکتی تھی لیکن وہ میر کا وجود دعا کے گھر میں دیکھ سمجھ نہیں پارہی تھی رابی نے پاس سے گزرتے ہوئے اسے بتایا اسی کے ساتھ کل دعا کا نکاح تھا کنیزہ تو جیسے سانس لینا بھول گئی تھی کل رات ہی تو دانیہ نے ساری بات  کینزہ کو بتا کر اسے نکاح کی دعوت دی تھی لیکن وہ شخص میر ہوگا یہ اسے وہم و گماں میں بھی نہ تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم پانچ سال پہلے دعا کی زندگی میں ائے تو اسکی زندگی ایک جگہ پر رک گئی اب پھر تم اسکی زندگی میں ائے تو اسکی زندگی ہی ختم ہوگئی میر تم کیوں ائے تھے واپس کیوں کینزہ اپنا منہ ہاتھوں میں چھپائے رونے لگی ۔۔۔
میں بس اس سے معافی ۔۔۔۔۔
معافی؟
کینزہ اسکے منہ سے معافی کا لفظ سُنتے ہی سیدھی ہوئی کس کس بات کی معافی مانگتے تم اس سے میر؟
جھوٹے پیار کی؟  اسکے جزبات سے کھیلنے کی؟  اس کا دل توڑنے کی؟
اس پر تہمت لگانے کی؟  اسے اس حال تک پہچانے کی؟
تو جاؤ میر پھر اللہ بھی نہیں چاہتا تھا تم اس سے معافی مانگو اور وہ تمہیں معاف کردے ۔۔۔۔۔۔۔
سہی کہتے ہیں لوگ الله کے ہر کام میں مصلحت ہوتی ہے تم اس گناہ کی معافی کے حقدار نہیں بلکہ سزا کے حقدار تھے اس لیے اللہ نے دعا کو تم سے دور کردیا تمہیں معافی مانگنے کا موقع نہیں دیا میر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

"تم تصویر کا ایک رُخ دیکھ رہے ہو میر اگر وہ الرحمن الرحیم ہے تو وہ الجبار القھار بھی تو ہے تم کیوں بھول رہے ہو اگر وہ چاہے گا تو تم اپنے گناہوں کی معافی مانگ سکو گے اگر وہ چاہے گا تو تم سے یہ حق بھی چھین لے گا "

میر کے کانوں میں ایش کے الفاظ گونجے تھے کینزہ بول رہی تھی لیکن وہ سُن نہیں رہا تھا ہم انسانوں کو گناہ کرتے وقت کیوں خدا یاد نہیں اتا کیوں ہم یہ نہیں سوچتے ہمارے اک غلط الفاظ یا غلط اعمال سے دوسرے کو کتنی تکلیف پہنچی ہے کیا ہم ہڑے سے بڑے گناہ کرکے کے بھی  معافی کا ایک لفظ بول کر اس گناہ سے آزاد ہو سکتے ہیں؟  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ختم

Reactions:

0 comments:

Post a Comment