Monday, March 30, 2020

Urdu novel Hatim love story read online urduadabpoint.ml



حاتِم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇
Coped by sidra hussain
At facebook group  rohea mohebt
قسط نمبر 1 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔



وہ دیکھو ہانیہ تمہاری ماما آگئی ۔۔۔
یہ سنتے ہی بِنا دیکھے ہانیہ نے مریم کی چھت سے چھلانگ لگا دی ۔۔۔۔
ہاہاہا مریم کا قہقہ گونجا تھا جس کا مطلب وہ اُسے بیوقوف بنا چکی تھی ۔۔۔
اسنے نے غصے سے مریم کی طرف دیکھا  ماما نہیں آئی ہانیہ نے منہ بنایا ۔۔۔۔۔
اگر مجھے چوٹ لگ جاتی تو؟
" تو" پھر کیا ہوتا چوٹ لگتی مر نہیں جاتی تم ۔۔۔۔۔
ہانیہ  " ہانیہ " پُتر  نیچے آ ۔۔۔۔
وہ جو چھت پر کھڑی اپنی اکلوتی دوست سے مِحوِ گفتگو تھی ماما کی آواز اتے نیچے بھاگی تھی ۔۔۔۔۔
جی جی ماما ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پُتر کتنی دفعہ کہا ہے اس ٹائم چھت پر نہ جایا کرو دوپہر کے دو بج رہے ہے اور تم اتنی دھوپ میں اکیلی کیا کر رہی تھی؟
اکیلی نہیں ماما مریم تھی ساتھ ۔۔۔۔۔
یہ سنتے ہی کنیز  کے کان کھڑے ہو گئے ۔۔۔
مریم تھی ساتھ؟  پھر تو تم ان کی چھت پر چلی گئی ہو گی
نہیں ماما نہیں گئی تھی ہانیہ صاف جھوٹ بول گئی تھی
ہانیہ پُتر تم ایک دن میری باتیں یاد کرو گی  میری بچی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما پلیز آپ پھر شروع ہو جائے آپ کہی نہیں جا رہی اور نہ میں آپ کو چھوڑ کر جاؤں گی جو میں یاد کروں گی آپ ہمیشہ میرے ساتھ رہے گی اچھا؟
ہانیہ نے اپنی ماما کے گِرد اپنے بازوں پھیلائے ۔۔۔
اچھا چلو مجھے چھوڑو اور اپنا کام کر لو صبح دوسرے دن ہی تم نے اپنی استادنی کو سبق نہ سنایا تو تمہیں مارے گے وہ ۔۔۔۔۔
میری بھولی امّاں یہاں ایسا نہیں ہوتا یہ یونیورسٹی ہے یہاں مار نہیں پرتی ہاں ڈانٹتے زیادہ ہے  آج پہلا دن تھا مزا بہت آیا اج کچھ زیادہ کام بھی نہیں ملا ماما ۔۔۔۔۔
چلو تم پھر بھی پڑھ لو میں نے بھی کسی کا سوٹ سلائی کر کے دینا ہے مجھے بھی کام کرنے دو۔۔۔۔۔۔۔
" ماما " ہانیہ نے کچھ سوچتے ہوئے اپنی ماں کو آواز دی ۔۔۔
بولو بھی ہانیہ  کتنی دفعہ کہا ہے مجھے امّاں کہا کر۔۔۔۔۔
امّاں اگر میرا کوئی بھائی ہوتا کتنا مزا اتا میں اُسے بہت تنگ کرتی ۔۔۔۔۔۔۔
(کنیز  کی ایک ہی  بیٹی ہے ہانیہ اُن کے شوہر کا انتقال 12 سال پہلے ہوا جب ہانیہ 8 سال کی تھی  ۔۔۔
کنیز محلے میں کنیز آپا کے نام سے جانی جاتی وہ لوگوں کے کپڑے سلائی کر کے اپنا گزارہ کرتی ۔۔۔
ہانیہ بہت خوبصورت رنگ سفید آنکھیں موٹی لمبے بال جب ہنستی تو گالوں پر ڈمپل نمایاں ہوتے جو اُسکی خوبصورتی کو بڑھا دیتے کنیز اکیلی رہنے کی وجہ سے اسکا بہت خیال رکھتی ہمیشہ ڈرتی کسی وجہ سے بھی لوگوں کو باتوں کا موقعہ نہ ملے )
چلو شروع ہو گیا  تمھارا بھائی نامہ جاو شاباش کام کرنے دو اور تم بھی جلدی سے پڑھ لو پھر مارکیٹ چلے گے ۔۔۔۔۔
مارکیٹ کا سنتے ہی ہانیہ کے چہرے پر مسکراہٹ پھیلی تھی. سچ ماما؟
جی جی چلو اب اُٹھو ۔۔۔۔
ہانیہ مارکیٹ کا سنتے ہی پڑھنے بیٹھ گئی ۔۔۔
کنیز کو اپنی بیٹی پر بہت پیار آیا وہ ایسی ہی تھی چھوٹی چھوٹی باتوں پر خوش ہو جاتی کبھی زیادہ کی چاہ نہیں کی ۔۔۔۔۔۔۔
ماما ۔۔۔۔۔۔اب کیا ہوا؟
میں پڑھ لکھ جاؤں گی تو آپ کو سلائی نہیں کرنے دوں گی ۔۔۔۔
اچھا؟  پڑھو گی کب کنیز کی بات سمجھتے ہی ۔۔۔
ماما پڑھ تو رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چلو یار اج پارٹی ہے رحمان کے گھر ۔۔۔۔۔
نہیں مجھے نہیں جانا میں بور ہو جاتا ہوں اُسے پارٹی کہتے ہے اُسنے سگریٹ کا کش لگاتے جواب دیا ۔۔۔
چلو یار چلتے ہیں ۔۔۔۔
حسن تنگ نہ کرو میرا موڈ نہیں ۔۔
حاتم تم ہمیشہ ایسا کرتے ہو ۔۔۔

اج ہانیہ امی کے ہاتھ کا سلائی ہوا ریڈ کلر کا جوڑا پہن کر بہت پیاری لگ رہی تھی ۔۔۔۔
کنیز نے اپنی بیٹی کی نظر اتاری ۔۔۔
میری بچی وہاں انے جانے میں کوئی مسئلہ تو نہیں؟
نہیں امّاں ۔۔۔۔
دھیان سے جایا کر مجھے تیری فکر رہتی ہے ۔۔۔۔
ہانیہ نے پیچھے سے اکر اپنی ماما کو بانہوں میں لیا ۔۔۔
ماما کیوں ہوتی ہے پریشان میرے ساتھ مریم ہوتی ہے ۔۔۔
بیٹا اسی بات کا تو ڈر ہے مریم تیرے ساتھ ہوتی ہے ۔۔۔۔۔
اُف ماما میں لیٹ ہو جاؤں گی بائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 اللہ حافظ میری بچی ۔۔۔۔۔
ہیلو ہانیہ ۔۔۔۔ہائے رخسار ہانیہ نے مسکرا کر جواب دیا۔۔۔
یار تیری مسکراہٹ مجھے مار دے گی ۔۔۔
 بس کچھ بھی ۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ یونی میں فنکشن ہونے والا ہے تم کرو گی کچھ؟
ہانیہ فنکشن کا سنتے ہی بیذار ہوئی تھی ۔۔۔
نہیں میں تو چھٹی کروں گی ۔۔
بلکل نہیں  مریم جھٹ سے بولی میں فنکشن پر ضرور اؤں گی اور تم میرے ساتھ اؤ گی سمجھی ۔۔
اچھا یار دیکھے گے ابھی چلو کلاس کا ٹائم ہو گیا ہے
۔۔
ہانیہ گھر آئی کھانا کھا کر ہاتھ دھو رہی تھی جب یاد انے پر امّاں کو آواز دی ۔۔۔۔
امّاں یونی میں فنکشن ہے ۔۔۔۔
تو نئے کپڑے بنوانے ہے پتر؟
ارے نہیں امّاں میں عید والا سوٹ پہن جاؤں گی میں نے کونسا حصّہ لیا ہے ۔۔۔۔
تو حصہ لے لیتی پُتر میں نیا سوٹ بنا دیتی ۔۔۔
کوئی ضرورت نہیں امّاں ویسے بھی کوئی شوق نہیں مجھے ۔۔۔۔۔
حاتم کیا فنکشن پر آؤ گے؟
نہیں کوئی فائدہ نہیں بور ہونا ہے بس ۔۔۔
اس دن کیوں بور ہونا ے اس دن تو بہت کچھ ہوگا انجوائے کرنے کو حسن نے حاتم کو انکھ ماری تھی اپنی بات سمجھانے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔
بکواس مت کرو رحمان بولا تھا ۔۔۔
حاتم کو ایک امیر باپ کی بگڑی اولاد کہا جائے تو غلط نہیں ہو گا وہ بلکل اپنے باپ جیسا تھا اسکے برعکس اسکی ماں ایک نیک نرم دل عورت تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حسن بھی حاتم جیسا تھا اسلیے ان دونوں کی بہت اچھی بنتی ۔۔۔۔
رحمان دونوں سے مختلف ہمیشہ ان کو سمجھانے کوشش کرتا رحمان کو کسی چیز کی کمی نہیں تھی وہ بھی زندگی کو خوب انجوائے کرتا لیکن وہ اپنی حدود اچھے سے جانتا تھا ۔۔۔۔۔
جیسے جیسے فنکشن قریب ارہا تھا سب تیاریوں میں مصروف ہو گئے تھے ۔۔۔۔
ہانیہ کو گھر جانے کے لیے مریم کا بہت ویٹ کرنا پڑتا ۔۔
امّاں گھر الگ پریشان رہتی ۔۔
ہانیہ کے پاس موبائل نہیں تھا نہ ہی کبھی اس نے فرمائش کی امّاں سے۔۔۔۔۔۔۔۔
گھر میں ایک بٹنوں والا موبائل تھا جس پر ہانیہ کے ماموں کبھی کبھی فون کرتے ۔۔۔۔۔

ہانیہ اپنا عید کا سوٹ نکال کر کب سے سوچ رہی تھی ۔۔
کیا ہوا ہانیہ کیا سوچ رہی ہو؟
سوچنا کیا امّاں اسکے ساتھ جو جوتا لیا تھا وہ ٹوٹ گیا تھا اب کل کیا پہنوں گی ۔۔۔۔
امّاں نے تھوڑا سوچا۔۔۔ چل میری بیٹی میں نیا جوتا لے دوں تمہیں ۔۔۔
نہیں امّاں پہلے ہی اپ نے یونی کے لیے جوگر لے کر دیے میں وہی پہن کر جاؤں گی ۔۔۔۔
وہ اچھے نہیں لگے گے پُتر آجا میں لے دیتی ہوں ہانیہ دُکھی ہوئی نہیں امّاں رہنے دو۔۔۔۔۔۔۔۔
 وہ اُٹھ کمرے میں چلی گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں تو کہتا ہوں حسن ستارہ کو فون کر وہاں چلے حاتم نے ڈرائیو کرتے مشورہ دیا ۔۔۔۔
چھوڑ یار۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب وہاں مزا نہیں اتا میری بات چل رہی ہے دوسرے کوٹھے پر وہاں چلے گے ابھی یونی ہی چلو ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ یہ دوپٹہ بیگ میں رکھ لو یار کیا تم نے سر پہ سجایا ہے اتنی پیاری لگ رہی ہو ۔۔۔
میں اس دوپٹے سے ہی پیاری لگ رہی ہوں مریم ہانیہ نے مسکرا کر جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔
ہائے ہانیہ اج نہ مسکراؤ ورنہ یہاں کوئی لڑکا مر میٹے گا تم پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہیں کوئی اور بات نہیں آتی رخسار؟
ہانیہ مجھے لگتا ہے تمہاری شادی کسی شہزادے سے ہو گی۔۔۔۔۔۔
اچھا؟  چلو تم کبھی کام کی بات نہ کرنا فضول باتیں سن لو تم سے ۔۔۔۔
 وہ تینوں باتوں میں مصروف کسی بات پر ہنسی تھی ہانیہ کو کسی کی نظر خود پر محسوس ہوئی ادھر اُدھر دیکھنے پر اسے کوئی نظر نہیں ایا تھا۔۔۔۔۔۔۔
یار کیا لڑکی ہے حاتم کی نظرین ہانیہ سے ہٹ نہیں رہی تھی جب حسن بولا تھا ۔۔۔۔۔
چپ کر یہ میری ہے ۔۔۔۔
کیا ہو گیا ہے وہ لڑکی ہے کوئی شوپیس نہیں جو میری میری کر رہے ہو رحمان کو غصہ آیا تھا ۔۔۔
رحمان تو موڈ نہ خراب کیا کر حاتم نے رحمان کو انکھیں دیکھائی ۔۔۔۔۔۔
چلو فنکشن شروع ہونے والا ہے رحمان نے بات ختم کرنی چاہی ۔۔۔۔۔
وہ کہا گئی حاتم نے اپنی نظریں چاروں طرف گھومائی وہ کہی نہیں تھی ۔۔۔۔۔
سب اپنی اپنی سیٹ پر بیٹھ گئے تھے حاتم کا دماغ ہانیہ پر اٹکا تھا وہ اسے کہی نظر نہیں ارہی تھی ۔۔۔۔۔
حاتم اٹھا تھا چلو حسن ۔۔۔۔۔
کہاں؟
ستارہ کے پاس ۔۔۔۔
کیا ہو گیا ہے یار؟
تم اٹھو گے یا میں جاؤں؟
آرہا ہوں حسن جانتا تھا وہ نہیں اُٹھے گا حاتم پھر بھی چلا جائے گا۔۔۔۔
ستارہ کو فون کر حاتم نے گاڑی میں بیٹھتے ہی حسن کو کہا۔۔۔۔۔
اچھا یار حسن بیذار ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ حاتم آیا ہے ایک لڑکی نے آکر ستارہ کو بتایا ۔۔۔
بھیج دو پوچھنے کیوں آئی ہو ۔۔۔۔
اچھا جی ۔۔۔۔۔
اگئ میری یاد؟  حاتم کو دیکھتے ہی ستارہ نے گلہ کیا ۔۔۔
تم تو جیسے یہاں میری آس پر بیٹھی ہو حاتم کی بات سن کر ستارہ کا موڈ اوف ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادھر آؤ ۔۔۔۔۔
حاتم کے بُلوانے پر ستارہ اپنی جگہ سے نہیں ہلی ۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم  اگے بڑھا ستارہ کا بازو مڑور کر کمر کے پیچھے کیا یہ نخرے مجھے نہ دیکھایا کرو سمجھی ۔۔۔۔۔۔۔
آآآ چھوڑو حاتم چھوڑو درد ہو رہا ہے ۔۔۔
حاتم نے اسکا رُخ اپنی طرف کیا اسکی گردن پر ہونٹ رکھ دیئے تھے ۔۔۔۔
تم بہت برے ہو حاتم ۔۔۔۔
حاتم ستارہ پر جھوکا ہی تھا جب ہانیہ کا ہنستا ہوا چہرہ حاتم کے ذہین میں ایا وہ فوراً پیچھے ہٹا تھا ۔۔۔
کیا ہوا؟
ستارہ نے حاتم کو اپنی طرف کھینچا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔جاری ۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سدرہ حسینحاتِم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسط نمبر 2 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حاتم کو ایک پل بھی سکون نہیں مل رہا تھا عجیب بے سکونی طاری تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہو گیا ہے مجھے؟ ۔۔۔۔
حاتم اتنے دنوں بعد آئے ہو اور موڈ دیکھو اپنا ۔۔۔
ستارہ نے حاتم کا منہ ہاتھ سے اپنی طرف کیا جس کو حاتم نے اک جھٹکے سے پیچھے کیا اور وہاں سے نکلا ۔۔۔۔۔۔
حسن کو آوازیں دیتا وہ تیزی سے باہر کا گیٹ عبور کر گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یار حاتم کیا ہو گیا ہے تمہیں پہلے فنکشن چھوڑا پھر یہاں سے بھی فوراً نکل آئے پروبلم کیا ہے آخر؟
وہ لڑکی ۔۔۔۔حاتم کے منہ سے بے اختیار نکلا تھا ۔۔۔۔
حسن پتہ کرو وہ کون ہے  کہا رہتی ہے ؟
کہی دل تو نہیں آ گیا اس پر؟
بکواس بند کرو اپنی جو کہا وہ کرو حاتم کا موڈ خراب دیکھ حسن چپ رہا ۔۔۔۔۔۔
امّاں کہا ہو اپ ہانیہ گھر اتے ہی امّاں کو ڈھونڈنے لگی 2 تو کمرے تھے گھر میں دونوں میں دیکھا امّاں نہیں تھی ۔۔
ہانیہ جلدی سے چھت پر گئی جہاں امّاں کپڑے دھوپ میں پھیلا رہی تھی ۔۔۔
آگئی میری بچی؟
ہانیہ نے کوئی جواب نہیں دیا منہ پھولا کر ماں کو دیکھتی جا رہی تھی ۔۔۔
کیا ہوا ہانیہ بول پُتر ۔۔۔۔
امّاں کتنی دفعہ کہا ہے یہ کام میرے لیے چھوڑ دیا کریں آپ نہیں مانتی نہ؟
پُتر تو بس دھیان سے پڑھا کر کام میں خود کر لیا کروں گی
یہ بتا پُتر تیرا وہ شو کیسا تھا مزا آیا؟
جی امّاں ۔۔۔
ہانیہ بھی اپنی ماں کے ساتھ کپڑے تار پر ڈالنے لگی "امّاں "
ایک بات بتاؤں؟
ہاں پُتر بول ۔۔۔۔۔۔۔
امّاں مجھے زیادہ لوگوں میں کوفت ہونے لگتی ہے میرا دل نہیں کرتا ایسے فنکشن میں جانے کو ۔۔۔۔

نہ میرا پُتر عادت بنا اپنی اگے چل کر تجھے مسئلہ نہیں ہو گا جب میری بچی پڑھ لکھ جائے گی تو  بڑے لوگوں میں اُٹھنا بیٹھنا ہو گا۔۔۔۔
اگلے دن ہانیہ کب سے تیار ہو کر مریم کو بولا رہی تھی مریم کی تیاری ہی ختم نہیں ہو رہی تھی ۔۔۔
ہانیہ گھر کے اندر ہی آگئی تھی چلو مریم تم یونی جا رہی ہو یا شادی پر؟
آ رہی ہوں یار خود تو کچھ لگاتی نہیں اب مجھے نہ منا کر ۔۔۔۔۔
اج سب کل فنکشن کی باتوں میں مصروف تھے رخسار نظر نہیں آرہی یار۔۔۔۔۔۔
مریم فون کرو اُسے تم ۔۔۔۔اچھا یار ۔۔۔۔
ہیلو ۔۔۔کہاں ہو یار ۔۔۔۔
تم لوگوں کے پیچھے ۔۔۔۔مریم نے پیچھے دیکھا اگر تم یہی تھی تو کال کیوں پِک کی میرا بیلنس ضائع کردیا ۔۔۔
وہ باتوں میں مصروف تھی جب اچانک کسی نے مریم کا دوپٹہ کھینچا ۔۔۔
آآآ ۔۔۔یہ کیا بدتمیزی ہے؟
اس سے پہلے حسن  مریم کی بات کا جواب دیتا حسن اور حاتم کی نظر پاس کھڑے وجود پر پڑی جو سہم کر مریم کے بازوں پکڑے پیچھے ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
حاتم نے اشارہ کیا تو حسن نے فوراً سوری بول دیا " غلطی "
غلطی سے؟  تم لڑکوں کو لڑکیوں کی عزت نہیں کرنی اتی مریم کی زبان کو بریک نہیں لگ رہی تھی وہ بولتی جارہی تھی جس کو صرف حسن سُن رہا تھا ۔۔۔
حاتم تو بس ہانیہ کو دیکھ رہا تھا جو پہلے ہی ڈری سہمی تھی حاتم کی نظروں سے کنفیوز ہوئی تھی ۔۔۔۔
چلو بھی مریم ہانیہ کی دھیمی سی آواز مریم کے کان میں پڑی تھی ۔۔
کیوں چلوں میں یہ لڑکے سمجھتے کیا ہے میں ان کی شکایت کروں گی ہانیہ اور رخسار کوئی تماشا نہیں چاہتی تھی جیسے تیسے وہ مریم کو وہاں سے لے گئی ۔۔۔۔۔
حاتم تم نے مجھے کیوں نہیں بولنے دیا کیسی زبان چل رہی تھی اس لڑکی کی اور بلکل خاموش ۔۔۔
اُس سے بھی حساب برابر کر لے گئے پہلے میرا کام کرو  ۔۔۔ کیا ضرورت تھی اتنا بولنے کی؟
سہی ہے میں وہاں اکیلی گلا پھاڑ پھاڑ کر تقریر کر آئی ہوں تم لوگ ان کو کہنے کی بجائے مجھے کہہ رہی ہو مریم کو اب اِن دونوں پر غصہ آیا تھا ۔۔۔
میں یہاں کوئی جھگڑا نہیں کرنا چاہتی مریم آہستہ سے بولی تھی ۔۔۔
بس تم ڈرپوک ہی رہنا ہانیہ زمانہ بدل گیا ہے نکل آو اب باہر اپنے حق کے لیے بولنا سیکھو ۔۔۔۔۔
اب پھر شروع ہو جاؤ مجھے بھوک لگی ہے رخسار نے بات ختم کرنا چاہی ۔۔۔۔
حاتم گھر داخل ہوا گھر میں مہمان موجود تھے جن کو سلام کرنا ضروری نہیں سمجھا گیا ۔۔۔۔۔۔
وہ سیدھا اپنے روم کی طرف بڑھ گیا ۔۔۔۔
ابھی وہ فریش ہوا ہی تھا جب دروازہ نوک ہوا ۔۔
اجائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما اپ آجائے ۔۔۔۔۔۔۔
حاتم بیٹا یہ کیا طریقہ تھا ۔۔۔۔
کیا؟
حاتم تو جیسے انجان بنا ۔۔۔
تم نے مہمانوں سے سلام لینا بھی ضروری نہیں سمجھا کیا؟
ماما وہ آپ کے مہمان تھے میں اُن سے مل کر کیا کرتا ۔۔۔
بری بات ہے حاتم مہمان تو مہمان ہوتے ہے رحمت ہوتے ہے ۔۔۔۔۔۔۔
ماما میں تھکا ہوا ہوں چھوڑے اپ یہ بتائے طبیعت کیسی ہے اپکی ۔۔۔۔
ٹھیک ہوں روبینہ  (حاتم کی ماں ) کو بہت دکھ ہوا تھا حاتم کی اس حرکت سے لیکن وہ کچھ نہیں کر سکتی تھی وہ جانتی تھی حاتم پر کوئی اثر نہیں ہو گا ۔۔۔۔۔

ہانیہ پتر کھانا کھا لے ۔۔۔
ائی ماما بس دو منٹ کا کام رہ گیا ہے ۔۔۔۔
پُتر کھانا کھا لے پہلے کب سے دو منٹ دومنٹ کہہ رہی ہو ۔۔۔۔۔۔۔
اچھا امّاں آگئی ۔۔۔۔
حاتم اپنی انکھیں بند کیے ہانیہ کو ہی سوچ رہا تھا جب موبائل پر بیل ہوئی۔۔۔
حاتم نے انکھیں کھولے بغیر موبائل کان کو لگایا ۔۔۔۔۔
ہیلو ۔۔۔حاتم سب پتہ چل گیا ۔۔۔۔۔
حاتم ایک جھٹکے سے اُٹھ بیٹھا جلدی بتا اس کا نام ۔۔۔۔
ہانیہ نام ہے اسکا باپ نہیں ہے ماں لوگوں کے کپڑے سلائی کر کے گھر چلاتی ہے ۔۔۔
اور فون نمبر؟
حاتم کو اچانک یاد آیا ۔۔۔۔۔
یار فون نمبر تو نے کہا نہیں تھا ۔۔۔
تو؟  تیرا اپنا دماغ نہیں ہے ۔۔۔۔
اچھا یار دیکھتا ہوں غصہ کیوں کر رہا ہے۔۔۔۔
حاتم کی بے چینی بڑھتی جا رہی تھی وہ بار بار اپنا موبائل دیکھ رہا تھا ۔۔۔
موبائل کی بیل ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔
ہاں بول حاتم نے فون اُٹھاتے ہی کہا ۔۔۔
یار موبائل نہیں ہے اُس کے پاس اُسکی دوست ہے ایک مریم جو اس دن زبان چلا رہی تھی اسکے پاس ہوتا ہے موبائل اسکا نمبر بھی لے لیا ہے میں نے ۔۔۔۔۔۔۔
چل نمبر سیڈ کر مجھے ابھی ۔۔۔۔
اوکے ۔۔۔۔۔۔۔
حاتم نے مریم کے نمبر پر کال کی فون پہلی بیل پر ہی اُٹھا لیا گیا تھا ۔۔۔۔
ہیلو ۔۔۔۔ہیلو ۔۔۔مقابل خاموشی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو بولو بھی فون کیا ہےتو   منہ میں چنے ڈالے ہے ۔۔۔۔
تم مریم بات کر رہی ہو؟
نہیں مریم کا بھوت تم بتاو کون ہو؟
تمہاری دوست سے بات کرنی ہے ۔۔۔۔
ہانیہ سے؟
ہاں ۔۔۔
تم ہو کون ؟
حاتم ۔۔۔۔۔۔
کون حاتم؟
ہانیہ سے بات کرنی ہے بہت ضروری بدلے میں تمہیں جو چاہیے ملے گا ۔۔۔
مریم کا دماغ سُن ہو گیا کچھ سمجھ نہیں آیا اُسے ۔۔۔۔۔۔
ٹھیک دس ہزار لگے گے ۔۔۔
منظور ہے یہی تو حاتم چاہتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مریم کو حیرات کا جھٹکا لگا ہانیہ سے بات دس ہزار دے گا ۔۔۔۔۔۔
دس منٹ بعد کال کرنا ۔۔۔۔۔
اوکے تم بیل کرنا ۔۔۔
میرے پاس بیلنس نہیں ہے ۔۔۔
میں کروا دیتا ہوں ۔۔۔
اوکے ۔۔۔۔۔
تھوڑی دیر میں ہی مریم کو میسج موصول ہوا ۔۔۔
500 کا بیلنس؟  مریم کا منہ کھلا رہ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مریم کی سوچ ابھی بھی وہی اٹکی تھی یہ کون ہو سکتا ہے ہانیہ سے کیا کام؟
ہانیہ ہانیہ کہا ہو؟  مریم ہانیہ کو چھت سے اواز  دے رہی تھی ۔۔۔۔
آگئی بابا سانس تو لو ۔۔
ہانیہ بھاگتی ہوئی چھت پر آئی ۔۔۔
تمہاری امّاں کہا ہے؟
کسی کے گھر کپڑے دینے گئی ہے ۔۔۔۔
مریم  نے شکر کیا ۔۔۔۔
تمہارے لیے فون ہے ۔۔۔۔۔۔
میرے لیے؟  کس کا؟
پتہ نہیں کہہ رہا تھا تم سے بات کرنی ہے ۔۔۔۔۔
کہہ رہا؟  لڑکا تھا؟
ہاں تبھی فون کی بیل ہوئی ۔۔۔
نہیں نہیں نہ رسیو کرنا مجھے نہیں بات کرنی پتہ نہیں کون ہے ۔۔۔۔۔
کہتے کہتے مریم رسیو کر چکی تھی ۔۔۔
سن تو لو یار ۔۔۔
نہیں مجھے نہیں کرنی اگر کوئی جاننے والا ہوتا گھر کے نمبر پر کرتا ۔۔۔
حاتم ہانیہ کی آواز سُن چکا تھا ۔۔
ہانیہ تیزی سے سیڑھیاں اترتی ہوئی نیچے اگئی ۔۔۔۔۔۔
وہ ۔۔۔۔۔ گھر کا نمبر دو اس سے پہلے مریم کچھ کہتی حاتم بولا تھا ۔۔۔
وہ نہیں دوں گی ۔۔۔
50 ہزار ملے گے پھر بھی نہیں؟
مریم کا سر چکرا گیا تھا 50 ہزار اسنے منہ میں دوہرایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں 50 ہزار ۔۔۔۔
ٹھیک ہے لیکن پہلے پیسے ۔۔۔۔۔۔
اوکے کل یونی میں ملتے ہے
Next read ....................

مریم سونے کے لیے لیٹی تو نیند آنکھوں سے بہت دور تھی ۔۔۔۔۔۔
کون ہو سکتا ہے یہ اُسے ہانیہ سے ایسا بھی کیا کام جو اتنے ُپیسوں کی آفر کردی ۔۔۔۔
چلو مجھے کیا میں تو خوب شاپنگ کروں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج مریم وقت سے پہلے ہی تیار باہر کھڑی تھی ۔۔۔
ہانیہ جیسے ہی گھر کے باہر آئی اُسے حیرات کا جھٹکا لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارے واہ مریم خیریت تو ہے؟
کچھ نہیں یار آج ٹائم سے آنکھ کھل گئی تھی میں نے سوچا کیا تمہیں انتظار کروانا ۔۔۔۔۔
ہاہاہا اچھا جی دونوں رکشہ کی طرف بڑھی تھی ویسے ہانیہ وہ کون ہو سکتا ہے؟
کون؟
یار وہی جس کی کل کال آئی تھی ۔۔۔
کوئی نہیں کسی نے مذاق کیا ہو گا  ہانیہ نے بہت بے فکری سے جواب دیا ۔۔۔
مریم اب  بھی یہ سوچ رہی تھی پیسوں کا کرنا کیا ہے ۔۔۔۔۔۔
یونی پہنچتے ہی مریم بار بار اپنا موبائل دیکھ رہی تھی ۔۔۔
آخر موبائل کی بیل بجی تھی مریم نے فوراً سے پہلے کال ریسیو کی ۔۔۔۔
ہیلو ۔۔۔۔۔
جلدی کینٹین پہنچو اتنا کہتے ہی فون بند ہو گیا تھا ۔۔۔
مریم جلدی ہی کینٹین میں کھڑی تھی ابھی ادھر اُدھر دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔مریم ۔۔۔جب اسکے کان میں آواز پڑی مریم اس ٹیبل کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہاں حاتم کے ساتھ حسن بھی موجود تھا جسے پہچاننے میں مریم کو ایک منٹ بھی نہیں لگا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن حاتم کو مریم نے پہلے نہیں دیکھا تھا ہاے یہ کتنا پیارا ہے جیسے کوئی ہیرو ہو مریم اپنی سوچ میں گم تھی جب حاتم نے مریم کے اگے چُٹکی بجائی ہیلو میڈم ۔۔۔۔
حاتم نے اپنی جیب سے ایک لفافہ نکال مریم کی طرف بڑھایا ۔۔۔۔۔
مریم نے ہانیہ کے گھر کا نمبر نکال موبائل حاتم کے ہاتھ میں  پکڑا دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک سوال کر سکتی ؟
نہیں حاتم نے مریم کا سوال پورا ہونے سے پہلے ہی جواب دیا تھا ۔۔۔۔۔
مریم پیسے کے کر خوش تھی وہ اسکے اگے کچھ نہیں سوچنا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ اج جلدی چلے ۔۔۔۔۔
کیوں؟
یار مارکیٹ جانا ہے ۔۔۔۔
میں امّاں کو نہیں بتا کر آئی کل چلے گے ۔۔۔۔۔
نہیں تم گھر فون کر لو مریم نے کہتے ہی نمبر ملا کر ہانیہ کی طرف بڑھایا ۔۔۔۔۔۔۔
اسلام  وعلیکم  امّاں ۔۔۔۔
وعلیکم السلام میری بچی سب ٹھیک ہے ۔۔۔
جی امّاں وہ مریم بازار جانا چاہتی ہے مجھے ساتھ لے کر تو چلی جاؤں؟
چلی جاؤ میری بچی جلدی آجانا ۔۔۔۔۔
شکریہ امّاں اللہ حافظ ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ دونوں مارکیٹ میں کھڑی تھی ایک کے بعد ایک چیز مریم خرید رہی تھی ۔۔۔
تمہارے پاس اتنے پیسے کہا سے آئے؟
میری کمیٹی نکلی ہے ۔۔۔
اچھا کب ڈالی یہ کمیٹی اور خالہ جانتی ہے؟
نہیں نہیں امّاں کو نہیں بتانا اور اپنی امّاں کو بھی  نہ بتانا وہ میری کلاس لگوا دیں گی ۔۔۔۔۔
تو یہ چیزیں جب گھر لے کر جاؤ گی خالہ پوچھے گی ۔۔۔۔۔
ہاں تو کہہ دوں گی دوست کی ہیں پھر ایک ایک کر کے استمعال کر لوں گی ۔۔۔۔
اچھا اب بس کرو سارا بازار خرید لو گی کیا؟
مریم میں بہت تھک گئی ہوں بھوک بھی لگی ہے چلو بھی گھر چلے ۔۔۔۔
چل تجھے کچھ کھلاتی ہوں۔۔۔۔۔
ہانیہ گھر آتے ہی اپنی امّاں کے گلے لگی تھی ۔۔۔
پیاری امّاں بہت تھک گئی ہوں امّاں نے ہانیہ کو پیار کیا چل میرا پتر کپڑے بدل میں کھانا لاتی ہوں ۔۔۔
نہیں امّاں مریم نے بازار سے بریانی کھلائی تھی مجھے نیند ارہی ہے میں سونے لگی ہوں ہانیہ کہتے ہی کمرے میں گھس گئی ۔۔۔۔۔۔
کر لیا فون حسن نے پوچھا ۔۔۔
نہیں ۔۔۔
کیوں؟
ابھی سوچ رہا ہوں کہا سے شروع کروں ۔۔۔
تو کب سے اتنا سوچنے لگا؟
جیسے پہلے لڑکیوں کو ہینڈل کرتا ہے ویسے ہی کر ۔۔۔۔
مجھے نہیں لگتا یہ اتنی آسانی سے قابو ائے گی ۔۔۔۔
کون نہیں قابو آرہا؟  رحمان نے سیٹ سنبھالتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یار بھوک بہت لگ رہی ہے اسکی بات کر رہے تھے ۔۔۔
چلو بتاو کیا کھانا ہے حسن اور حاتم بات بدل گئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ اُٹھ پتر شام کی اذان ہونے والی ہے کنیز کب سے ہانیہ کو آواز دے رہی تھی ہانیہ اُٹھنے کا نام نہیں لے رہی تھی ۔۔۔۔
فون کی بیل ہونے لگی تھی ہانیہ اُٹھ کر موبائل ڈھونڈنے لگی ۔۔۔۔۔۔
اسلام وعلیکم ہانیہ نے کال رسیو کرتے ہی سلام کیا ۔۔۔۔
وعلیکم السلام ۔۔کیسی ہو ہانیہ؟
انجان آواز سنتے ہی ہانیہ کی پوری انکھیں کھلی تھی ۔۔۔
آ آپ کون؟
تمہارا دوست ۔۔۔۔
ہانیہ نے جھٹ سے فون بند کیا دل کی دھڑکن تیز ہوئی ہانیہ کے دماغ میں کل مریم کے سیل پر انے والی کال ائی وہ چھت کی طرف بھاگی ۔۔۔
مریم مریم کتنی آوازیں دینے کے بعد بھی مریم کا کچھ پتا نہیں تھا ۔۔۔۔ہانیہ نیچے آگئی جیسے ہی کمرے کی طرف ہوئی بیل دوبارہ ہونے لگی ہانیہ کے ہاتھ پاؤں پھولنے لگے ۔۔۔
کال رسیو کر موبائل کان کو لگایا لیکن ہانیہ بولی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔
بات تو کرو ہانیہ ۔۔۔
اپنے نمبر کہا سے لیا کون ہے آپ ؟
جس چیز کی دل سے چاہ ہو مل ہی جاتی ہے تم تو پھر دل میں رہتی ہو ۔۔۔
ہانیہ نے فون بند کیا اور سیل آوف کر دیا ۔۔۔۔
کچھ تو سوچنا ہو گا یہ لڑکی ۔۔۔حاتم کچھ سوچتے ہی اپنی ماں کے کمرے کی طرف بڑھا ۔۔۔۔
روبینہ نماز پڑھ رہی تھی حاتم وہاں بیٹھ انتظار کرنے لگا ۔۔۔۔
ماما مجھے شادی کرنی ہے روبینہ نے اپنی دعا ختم کی ہی تھی حاتم نے اپنی بات شروع کی ۔۔۔۔
کیا؟  شادی؟  کس سے؟
اپکو اس کے گھر رشتہ لے کر جانا ہے بس ۔۔
وہ تو ٹھیک ہے اپنے بابا سے بات کی؟  وہ میں کر لوں گا اپ جانے کی تیاری کریں ۔۔۔۔۔۔
کون ہے کہا رہتی ہے نام کیا ہے؟
سب بتا دوں گا جب جانے کا پروگرام بنے بتا دیجئے گا ۔۔۔۔۔۔۔
کیا تو رشتہ بھیجے گا؟ ۔۔۔حسن کو اپنے کانوں پر یقین نہیں آیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
تو شادی کرے گا اس لڑکی سے؟
تو کبھی تو شادی کرنی تھی ۔۔۔۔۔
تجھ میں اس لڑکی میں بہت فرق ہے سوچ کا ایج کا سٹیٹس کا ۔۔۔۔۔
تو کیوں فکر کرتا ہے سب چھوڑ دے ۔۔۔۔۔۔۔
اور اگر اسنے انکار کر دیا تو؟
نہیں کرے گی ۔۔۔
تجھے کیسے پتہ؟
اتنے امیر گھر سے رشتہ جائے گا تو نہیں کرے گی انکار ۔۔۔۔۔

کیا حاتم تمہارا دماغ تو خراب نہیں ہو گیا تم اس غریب بستی میں جانے کا کہہ رہے ہو وہ بھی اپنے اکلوتے بیٹے کا رشتہ لے کر؟
پاپا اپ کو جانا ہو گا حاتم اپنے باپ کی انکھوں میں انکھیں ڈالے کھڑا تھا تو ٹھیک ہے میں نہیں جاؤں گا اپنی ماں کو بھیج دو اتنا کہتے ہی کلیم صاحب وہاں سے روانہ ہوئے ۔۔۔۔

یار مریم کل ایک لڑکے کی کال آئی تھی گھر مجھے کچھ سمجھ نہیں آرہی پتہ نہیں کون ہے ۔۔۔۔۔
کیا کہتا تھا؟
میں نے بات ہی نہیں کی ۔۔۔۔۔۔۔
روبینہ بیگم بہت تیاری کے ساتھ ہانیہ کے گھر گئی تھی کنیز کے پلے کوئی بات نہیں پری تھی بیٹھے بیٹھے کہاں سے رشتہ آگیا ہے کنیز نے ان کو یہ کہہ کر بھیجا وہ اپنی بیٹی سے پوچھ کر بتائے گی ۔۔۔۔۔
ہانیہ کی گھر آتے ہی مٹھائی پر نظر پری اماں یہ کہا سے آئی ہے ہانیہ کھاتے کھاتے امّاں کے پاس کیچن میں پہنچی ۔۔۔۔
بتاتی ہوں پہلے تو کپڑے بدل لے ۔۔۔
کوئی آیا تھا کیا؟
کپڑے بدل روٹی کھا پھر بتاتی ہوں ۔۔۔۔۔ہانیہ نے ڈبہ وہاں رکھا اور کپڑے بدلنے چلی گئی ۔۔۔۔۔
ہانیہ پتر تو کسی کو پسند کرتی ے؟  ہانیہ نے حیرانگی سے ماں کی طرف دیکھا ۔۔۔
ایسی کوئی بات ہے تو مجھے بتا دے ۔۔۔
کیا ہو گیا ہے اماں ہانیہ کو کچھ سمجھ نہیں ارہا تھا ۔۔۔
پتر رشتہ ایا ہے لڑکا تیرے سکول میں ہی پڑھتا ہے ۔۔۔
ہانیہ سنتے ہی سن ہو گئی ۔۔۔۔۔
میری یونی سے؟
امّاں سچ میں مجھے نہیں پتہ کچھ ۔۔۔
نام بتایا اسنے کوئی ؟

ہاں کوئی حا حاتم ہاں حاتم نام ہے لڑکے کا ۔۔۔۔
امّاں اپ نے کیا کہا ۔۔۔؟
پتر ابھی تو کچھ نہیں میں نے سوچا تجھ سے پوچھ لوں ۔۔۔۔۔۔۔
امّاں اپ انکار کر دینا بیٹا وہ نمبر بھی دے گئی تھی عورت ۔۔۔۔۔۔۔
لائے امّاں اپ ابھی کال کر کے انکار کریں ۔۔۔
ہانیہ نے نمبر ملاتے ہی فون ماں کو پکڑایا ۔۔۔
اسلام دعا کے بعد ہانیہ کی ماں نے انکار کردیا رشتے سے ۔۔۔۔۔۔۔
کوئی مسئلہ ہے تو بتائے بہن کیوں انکار کیا ہے اپ نے ۔۔۔
میری بچی ابھی چھوٹی ہے ہم نے ابھی شادی نہیں کرنی ۔۔۔۔۔۔۔
تو ٹھیک ابھی ہم منگنی کر لیتے ہے شادی  دو سال بعد کر لے گے حاتم کی ماں کو اندر سے یہ ڈر لگ رہا تھا حاتم انکار سن کر کیا ری ایکٹ کرے گا ۔۔۔۔
نہیں بہن میری بچی راضی نہیں کہتے ہی فون بند کر دیا ۔۔۔۔

ہاہاہا تو کہتا تھا انکار نہیں کرے گے ہاہاہا اسے نے تو ایک دن نہیں لگایا انکار کرنے میں ۔۔۔۔
دانت اندر کر اپنے مجھے اچھے سے اتا ہے انکار کو ہاں میں بدلنا تو صبح ہونے دے ۔۔۔
حاتم نے کچھ سوچتے ہوئے مریم کو کال کی ۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم کا نمبر دیکھتے ہی مریم نے ایک منٹ ضائع کیے بغیر کال رسیو کی ۔۔۔
ایک کام ہے ۔۔۔۔۔۔
ہاں بولو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کل جب میں تمہیں فون کروں ہانیہ کو ساتھ لے کر اس جگہ پہنچ جانا ۔۔۔۔۔
نہیں ۔۔۔۔میرا مطلب میں اسے کیا کہوں گی ۔۔۔۔۔۔
میرا کام پورا ہوتے ہی تمہاری منہ مانگی رقم تمہیں مل جائے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ کہتے ہی فون بند کر دیا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔

مریم ایک بات بتاؤں؟  ہاں بولو ۔۔۔۔۔
کل کسی حاتم کا رشتہ ایا میرے لیے اور اسکی ماں نے بتایا وہ ہماری یونی پڑھتا ہے ۔۔۔
مریم یہ سنتے ہی ساری گیم سمجھ گئی تھی ۔۔۔
پھر تم نے کیا کہا؟
کیا کہنا تھا انکار کر دیا ۔۔۔۔
جلدی چلو کلاس کا ٹائم ہو گیا ہے ہانیہ گھڑی دیکھتے ہوئے بولی ۔۔۔۔۔۔
مریم کے موبائل پر کب سے کال ارہی تھی لیکن وہ ایگنور کر رہی تھی ۔۔۔۔
کال رسیو کرو یا تمہاری دوست کو بتاوں کتنے پیسے لے کر تم نے نمبر دیا تھا ۔۔۔۔۔
میسج پڑھتے ہی مریم نے کال رسیو کی ۔۔۔
جلدی اس کو لے کر کینٹن کے پیچھے آو ۔۔۔
وہاں کیوں؟
جتنا کہا اتنا کرو ۔۔۔۔۔فون بند ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ چلو کینٹین چلے ۔۔۔۔
مجھے بھوک نہیں ۔۔۔
اچھا چلو تمہیں کچھ دیکھانا ہے ۔۔۔
کیا؟
چلو تو ۔۔۔
ہم ادھر کیوں جا رہے ہے مریم یہاں کوئی نہیں جاتا تمہیں کچھ دیکھانا ہے تمہارا مسئلہ حل کرنا ہے مریم ہانیہ کا ہاتھ پکڑے تیزی سے چلتی جا رہی تھی ۔۔۔۔۔
وہاں کوئی ہے رکو مریم مجھے نہیں جانا مریم رکی تھی حاتم ہانیہ کی طرف ایا تھا تم جاو حاتم نے مریم کو کہا ہانیہ نے مریم کی طرف حیرانگی سے دیکھا ۔۔۔
میں نہیں جاؤں گی جو بات ۔۔۔۔
میں نے جو کہا وہ کرو  حاتم نے اسکی بات مکمل ہونے سے پہلے اپنی بات کہی ۔۔۔۔ہانیہ کچھ سمجھ نہیں پا رہی تھی  مریم حاتم کا غصہ دیکھ جانے لگی جب ہانیہ نے اسکا بازوں پکڑا۔۔۔ نہیں میں اپنے سر کو ہلایا ۔۔۔۔۔۔
کچھ نہیں بس بات کرنا چاہتا ہے یہ حاتم ہے یہ ۔۔۔۔
ہانیہ کی انکھوں میں نمی تیرنے لگی پ پل پلیز نہیں جاو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم نے ہانیہ کے بازوں کو اپنی گرفت میں لیا وہ ایک دم کانپ گئی تھی آرام سے بات سنو گی نہ تمہیں مسئلہ ہو گا نہ مجھے ۔۔۔۔۔
ہانیہ نے اک بار بھی حاتم کی طرف نہیں دیکھا وہ مریم سے اپنی نظریں نہیں ہٹانا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری
رائٹر ۔۔۔۔۔۔۔۔سدرہ حسین
حاتِم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسط نمبر 4
چ چھو چھوڑے مجھے پلیز ۔۔۔۔۔۔ہانیہ کی آنکھوں سے آنسوں مسلسل بہہ رہے تھے جن کا حاتم پر کوئی اثر  نہیں ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے ایک بار بھی نظر اُٹھا کر حاتم کی طرف نہیں دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔
اِدھر دیکھو میری طرف ۔۔
مقابل اس بات کا کوئی اثر نہیں ہوا ۔۔۔
تم نے سنا نہیں ادھر دیکھو میری طرف حاتم دھاڑا تھا ۔۔۔
ہانیہ کے رونے میں اور تیزی آئی تھی ۔۔۔۔۔
ہانیہ نے اپنی گھنی لمبی پلکیں اُٹھا کر حاتم کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔
رشتے سے انکار کیوں کیا؟
ہانیہ نے حاتم کی ایک بات نہیں سنی وہ رونے میں مصروف اپنا بازوں چھوڑوانے کی کوشش کر رہی تھی ۔۔۔۔۔
حاتم نے ایک جھٹکے سے ہانیہ کو اپنے اور قریب کیا ۔۔۔
تمہیں میری بات سمجھ نہیں آرہی حاتم نے بہت چبا کر الفاظ ادا کیے  گرفت اور مضبوط کی۔۔۔۔۔
پ پیل پلیز مجھے درد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور جو تکلیف مجھے ہوئی  تمہارے انکار سے ۔۔۔۔۔۔
مجھے انکار کی وجہ بتاؤ ۔۔۔۔
ہانیہ نے کوئی جواب نہیں دیا اُسکا سر چکرا رہا تھا سب اسکی سمجھ سے باہر تھا ۔۔۔۔۔
مج مجھے جانے دیں ۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے میری ماما اج پھر تمہارے گھر کال کریں گی اس بار جواب ہاں میں ہونا چاہئے سمجھی؟
ہانیہ نے وہاں سے دوڑ لگائی تھی ۔۔۔
رحمان کینٹین سے نکلا ہی تھا جب اسکی نظر ہانیہ پر پڑی جو بار بار اپنے آنسوں صاف کرتی تیز چل رہی تھی ۔۔۔۔
رحمان کو زیادہ حیرات تب ہوئی جب پیچھے حاتم کو آتے دیکھا ۔۔۔
رحمان ہانیہ کے پیچھے گیا تھا ۔۔۔سُنیے میری بات سُنے لیکن ہانیہ کہا سننے والی تھی وہ اپنے کانپتے وجود کو گھسیٹتے ہوئے رکشہ میں آ بیٹھی تھی ۔۔۔
امّاں کا خیال ذہین میں اتے ہی اپنے ہواس درست کرنے لگی۔۔
مریم کب سے ہانیہ کا ویٹ کر رہی تھی کافی دیر گزرنے کے بند وہ سمجھ گئی تھی ہانیہ گھر چلی گئی ہے مریم بھی اپنا بیگ اُٹھائے گھر روانہ ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔
آرہی ہوں کنیز کے چھت سے نیچے اتے اتے تیسری بار دروازہ نوک ہوا تھا ۔۔۔۔
دروازہ کھلتے ہی ہانیہ اپنی امّاں کے گلے لگ پھوٹ پھوٹ کر رونے لگی ۔۔۔
کنیز بہت پریشان ہوئی ۔۔۔
کیا ہوا ہے  ۔۔۔کیا ہوا میری بچی؟
ہانیہ کی رو رو کر ہچکیاں بندھ گئی تھی کنیز نے پانی لا کر پلایا کیا ہوا ہانیہ کنیز نے فکر مندی سے بیٹی کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اما امّاں میرے سر میں بہت درد ہے صبح سے ۔۔۔۔
تو پُتر اس میں رونے والی کیا بات ہے ؟
ہانیہ پُتر تو کب بڑی ہو گی؟
کنیز کہتے ہی باہر کو چل دی آپ کہا جارہی ہے ۔۔۔۔
تیرے لیے دوائی لینے باجی سیما سے. ( محلے کی ڈاکٹر )..
ہانیہ اُٹھ پھر اپنی ماں کے گلے لگی امّاں اب میں ٹھیک ہوں آپ کہی نہیں جاو میرے پاس رہے ۔۔۔
کنیز کے ہونٹوں پر مسکراہٹ پھیلی میری بچی تم نے پریشان کردیا تھا ۔۔۔۔
مریم گھر اگئی تھی لیکن ہانیہ کا سامنا کرنے کی ہمت نہیں ہو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
کیا کہا پھر اُسنے حسن دوسری بار پوچھ چکا تھا لیکن حاتم ابھی بھی ہانیہ کی انکھوں میں ہی کھویا تھا ۔۔۔
بتا بھی یار ۔۔۔
کہنا کیا اچھے سے سمجھا دیا ہے اب انکار نہیں کرے گی ۔۔۔۔۔۔
چل یار اج ستارہ ک کی طرف چلتے ے۔۔۔۔
میرا موڈ نہیں حاتم کہتے ہی اُٹھ کھڑا ہوا گھر جا کر ماما سے کال بھی کروانی ہے ۔۔۔۔
اس لڑکی کو تم نے کیا کہا؟
رحمان نے اتے ہی سوال کیا ۔۔۔۔۔
تمہیں اس سے کیا جو بھی کروں ۔۔۔۔
دیکھو حاتم تم جو مرضی کرو مجھے پرواہ نہیں میں نے کبھی کچھ نہیں کہا کیوں کہ لڑکیاں اپنی مرضی سے تمہارے پاس آتی ہے لیکن زبردستی کسی کی زندگی خراب نہیں کرنے دوں گا ۔۔۔
کیوں تیرا دل آ گیا ہے اُس پر؟
"حاتم " وہ میری بہنوں کی طرح ہے ۔۔۔
بہن تو نہیں ہے نہ ۔۔۔۔
چلو بہن کی طرح ہے تو رخصتی کی تیاری کرو۔۔۔۔
تم دور رہو اس سے ورنہ۔۔۔۔
ورنہ کیا وہ میری ہونے والی بیوی ہے سمجھے تم دور رہنا کہتے ہی حاتم رُکا نہیں چلا گیا ۔۔۔
رحمان کو ایک بار پھر اسکا روتا ہوا چہرا یاد ایا رحمان کو ابھی بھی بات ہضم نہیں ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ سو کر اُٹھی تھی جب حاتم کی حرکت یاد آئی اسکے کہے گئے الفاظ زہین میں گم رہے تھے ۔۔۔
میں نہیں کروں گی اس سے شادی کبھی نہیں بدتمیز ہانیہ نے سوچا اور اُٹھ کر باہر ائی امّاں کو آواز دی لیکن امّاں گھر نہیں تھی ۔۔۔
ہانیہ کو مریم کا خیال ایا تو چھت پر چلی گئی دو آوازوں کے بعد مریم آگئی تھی ۔۔۔۔
ہانیہ کچھ نہیں بولی ۔۔۔۔۔۔سوری مریم نے بات شروع کی اسنے مجھے بہت فورس کیا تھا پلیز معاف کردو مجھے ۔۔۔۔۔ہانیہ کی ایک ہی تو دوست تھی کب تک ناراض رہتی ۔۔۔۔۔۔
رات سونے کے لیے لیٹے ہی تھے جب موبائل بجنے  لگا ۔۔۔۔
ہانیہ پُتر دیکھ کس کا فون ہے ۔۔۔۔جی ماما
نمبر دیکھتے ہی ہانیہ نے سپیکر اوپن کر موبائل اپنی اماں کی طرف بڑھایا ۔۔۔۔
سلام دعا کے بعد روبینہ نے رشتے کی بات دہرائی  بہن جی میں نے پہلے بھی جواب دیا تھا اپکو۔۔۔۔۔۔۔
اپ ایک بار پھر اپنی بیٹی سے پوچھ لے ۔۔۔۔
کنیز نے سوالیہ نظروں سے اپنی بیٹی کی طرف دیکھا ۔۔۔
ہانیہ نے نہ میں سر کو ہلایا ۔۔۔۔
نہیں بہن جی ہم اپ سے معزرت کرتے ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم دوبارہ انکار سنتے ہی باہر چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خاتم ساری رات نہیں سویا تھا صبح ہوتے ہی حسن کی طرف روانہ ہوا ۔۔۔۔۔
ہانیہ پُتر اُٹھ جا دیر ہو جائے گی امّاں اج نہیں جانا میں نے ۔۔۔۔
کیوں؟
امّاں طبیعت نہیں ٹھیک ۔۔۔۔۔۔۔
اج رخسار بھی نہیں آئی تھی مریم اکیلی بور ہو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔بھوک محسوس ہوتے وہ کینٹین پہنچی فون کیوں نہیں اُٹھا رہی تھی ابھی وہ اپنے برگر کے ساتھ انصاف کر  رہی تھی جب حاتم ٹیبل پر دونوں ہاتھ رکھے جھکا تھا ۔۔۔۔۔۔
مجھے اب تمہاری کوئی بات نہیں سُننی نہ میں کوئی کام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رکو رکو جلدی کس بات کی ہے یہ سنو پہلے حاتم نے موبائل مریم کی طرف بڑھایا جس میں مریم کی کال ریکارڈ تھی ۔۔۔۔۔
وہ سُنتے ہی مریم کے ہاتھ سے برگر گِرا تھا ۔۔۔۔
میں مانتی ہوں میری غلطی تھی میری دوست بہت معصوم ہے پلیز چھوڑ دو ۔۔۔
بہت جلدی خیال نہیں اگیا تمہیں میری بات سُنو اب تم وہ کرو گی جو میں کہوں گا اگر کوئی کھیل کھیلنے کی کوشش کی یہ ریکارڈنگ تمہارے گھر پہنچ جائے گی ۔۔۔
مریم کا منہ کھلا رہ گیا تھا حاتم وہاں سے چلا گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔
ہاں تو کیا پلین ہے حسن موبائل پہ مصروف حاتم سے پوچھ رہا تھا ۔۔۔
پہلے اس بیماری کو چھوڑ پھر بتاتا ہوں تو بتا میں سن رہا ہوں حاتم نے اگے بڑھ کر حسن کے ہاتھ سے موبائل کھینچا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم نے اپنا پلین حسن کو بتا دیا تھا یار اگر یہی کرنا ہے تو تھوڑا ویٹ کر لے ۔۔
کیوں؟
میرا کزن دوبئی جا رہا ے اسکا فلیٹ بلکل مناسب ہے اس کام کے لیے تجھے پتہ ہے تھوڑی سی بات بھی باہر نکلی تو میڈیا والے ۔۔۔۔۔
۔
اوکے ۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ یار پرسوں منگنی ہے رخسار کی وہ بہت زور دے رہی تھی ۔۔۔
یار میں نہیں جاو گی ۔۔۔
کیوں؟
سوٹ لینا پڑے گا ۔۔۔۔
تو میرا پہن لینا دونوں چلے گے بس مجھے نہیں پتہ میں اکیلی نہیں جاوں گی ۔۔۔۔
اوکے ۔۔۔اگلے دن ہانیہ یونی تو گئی تھی لیکن سارا دن ڈر میں نکل گیا گھر آکر ہانیہ نے شکر کا کلمہ پڑھا تھا وہ ریلیکس ہو گئی تھی جیسے کوئی بھیانک خواب گزر گیا ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیار ہو؟
مریم کے موبائل پر مسیج ایا تھا ۔۔۔۔
ابھی بھی پیچھے ہٹ جاو پلیز یہ ٹھیک نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔
تمہیں جیسا کہا گیا ہے ویسا کرو ورنہ ۔۔۔۔
ہانیہ تیار ہو ؟مریم نے چھت سے آواز دی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلکل آجاؤ جلدی ۔۔۔۔
کیسی لگ رہی ہوں میں؟
گڑیا کی طرح ۔۔۔۔۔مریم نے ہانیہ کو گلے لگایا مریم نہیں جانتی تھی جو غلطی مذاق میں وہ کر بیٹھی تھی اسکا کیا انجام ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری
رائیٹر ۔۔۔۔۔۔سدرہ حسین
حاتِم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇👇👇👇
قسط نمبر 5۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم نے گاڑی پر جانا ہے؟
ہانیہ نے گاڑی دیکھتے پوچھا ۔۔۔۔۔۔ہاں رخسار نے بھیجی ہے ہمیں اس کے گھر کا کیا پتہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دونوں گاڑی میں بیٹھ گئی تو ڈرائیور نے گاڑی اگے بڑھا دی ۔۔۔۔۔۔۔۔
مریم نے ہانیہ کے ہاتھوں کو اپنے ہاتھ میں لیا ۔۔۔۔۔
"ہانیہ " تم مجھے معاف کر سکتی ہو ۔۔۔
کس بات کے لئے؟ ہانیہ نے حیرت سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔
میری ہر غلطی کے لیے پلیز میں تمہارا بُرا نہیں چاہتی ۔۔۔۔
چھوڑو بھی مریم جو ہو گیا بھول جاؤ اور اتنا تیار ہو کر کون روتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
گاڑی رکتے ہی ڈرائیور باہر ایا۔۔۔ آئیے میں اپکو فلیٹ تک چھوڑ آؤں گاڑی کا دروازہ کھولتے ڈرائیور نے کہا ۔۔۔۔۔
فلیٹ؟  ہانیہ نے مریم کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔
ہا ہاں وہ منگنی کا سارا انتظام یہی کیا ہے تم چلو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈرائیور فلیٹ کے باہر تک چھوڑ واپس چلا گیا ۔۔۔۔۔
مریم نے بیل بجائی پہلی بیل ہونے پر ہی دروازہ کھلا تھا ۔۔۔۔۔۔ہال میں اتے ہی ہانیہ کی نظر مولوی صاحب پر پڑی رخسار کی منگنی ہے یا شادی؟  ہانیہ جھٹ سے بولی ۔۔۔۔۔۔۔
کہا ہے رخسار مریم ساکت تھی وہی تو جانتی تھی سب ۔۔۔۔۔۔۔۔
بولو مریم ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کی اپنی بولتی بند ہوئی جب اسکی نظر کمرے سے باہر اتے وجود پر پڑی ۔۔۔۔
حاتم سگریٹ کا کش لگاتا دونوں کی طرف آرہا تھا ۔۔۔۔
ہانیہ نے مریم کی طرف دیکھا مریم نظریں جھکا گئی ۔۔۔۔۔
حاتم نے سگریٹ نیچے پھینک کر اوپر پاؤں رکھا ۔۔۔۔۔۔
ہاتھ بڑھا کر ہانیہ کا بازوں پکڑا مریم اگے بڑھنے لگی جب حاتم نے ہاتھ کھڑا کر اسے وہی رُکنے کا کہا ۔۔۔۔۔
ہانیہ کا سر چکرانے لگا تھا ۔۔۔۔۔۔
حاتم اسے کھینچتا ہوا روم میں لے آیا لاتے ہی بیڈ پر گِرایا وہ اس پر جھکا  تھا ہانیہ کے بال اپنی مٹھی میں لیے کہا تھا میں نے انکار نہیں سُنوں گا ۔۔۔۔
چ چھو چھوڑے پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 اپنے ذہین کو نکاح کے لیے تیار کر لو سویٹ ہارٹ ابھی ہمارا نکاح ہو گا حاتم ایک جھٹکے سے اس کے بال  چھوڑ کمرے سے باہر نکل گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نکاح؟  ہانیہ نے نکاح کا لفظ دوہرایا نہ نہی نہیں  ہانیہ بیڈ سے اٹھتے ہی دروازے کی طرف لپکی ۔۔۔۔
کھولو دروازہ کھولو مریم دروازہ کھولو ہانیہ نے پورے زور سے دروازہ کھٹکھٹایا تھا ۔۔۔۔۔
حاتم دروازہ کھول غصے سے ہانیہ کی طرف دیکھا اس کی جان لرز رہی تھی ہانیہ نے فوراً حاتم کے اگے ہاتھ جوڑ زمین پر بیٹھی گئی خدا کے لیے جانے دیں مجھے میں اپکے پاؤں پکرتی ہوں ہانیہ حاتم کے پیروں میں پڑ گئی تھی ۔۔۔۔۔
حاتم خوش تھا جس کا انکار اسے تکلیف دے رہا تھا وہ اسکے پیروں میں بیٹھی بھیک مانگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔حاتم نے ہانیہ کو بالوں سے پکڑ کھڑا کیا ۔۔۔
آآآآآ ۔۔۔۔۔چپ کر کے میری بات سُنو اگر یہاں سے جانا چاہتی ہو تو چپ کر کے نکاح کرو ورنہ ساری زندگی یہی گزارو گی اگے تم خود سمجھ دار ہو 5 منٹ ہے تمہارے پاس اپنا فیصلہ بتا دو ویسے اگر نکاح کے بغیر بھی رہنا چاہو تو مجھے کوئی اعتراض نہیں ہانیہ دو قدم پیچھے ہوئی ۔۔۔
حاتم مسکراتے ہوئے کمرے سے چلا گیا تھا ۔۔۔۔۔
ہانیہ کو لگ رہا تھا جیسے کسی نے اس کے پاؤں  زنجیر میں جھکڑ لیے ہو دماغ  ماؤف ہو گیا اللہ تعالیٰ میری مدد کرے پلیز ۔۔۔۔۔
 کیا سوچا پھر تم نے؟
ہانیہ نے خالی انکھوں سے حاتم کی طرف دیکھا پلیز ۔۔۔۔۔
فیصلہ بتاو؟
نکاح ۔۔۔۔۔۔
ہاہاہاہا اچھا فیصلہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔
نکاح ہو چکا تھا ہانیہ وہی گھٹنوں میں سر دیئے رونے میں مصروف تھی جب اُسے دروازہ بند ہونے کی آواز آئی حاتم کو دیکھتے ہی کھڑی ہوئی  ۔۔۔۔کیا ہوا ڈر کیوں رہی ہو؟
حاتم صوفہ پر بیٹھا میں تمہاری غلط فہمی دور کرنے آیا تھا ۔۔۔۔۔
تم یہ مت سوچنا میں تمہارے پیار میں پاگل ہوں یا محبت کرتا ہوں تم سے ۔۔۔۔
ہانیہ کھڑی حاتم کی بات غور سے سن رہی تھی دل تیزی سے دھڑک رہا تھا یوں  محسوس ہو رہا تھا جیسے دل باہر آجائے گا ۔۔۔۔۔
میں نے نکاح کیا تم سے۔۔ اپناؤں گا نہیں اور طلاق کا سوچنا بھی مت وہ نہیں دوں گا ساری زندگی میرے نام پر گزارو گی "اپنے گھر میں "
تم بلکل اپنے نام جیسے ہو بے حِس ظالم خدا کا خوف کرو حاتم ۔۔۔
ہاہاہاہا ۔۔۔" خوف " تمہیں کیا لگتا ہے مجھے خدا کا خوف نہیں ہے ۔۔
مجھے خوف ہے تو اس ٹائم تم میرے نکاح میں ہو ورنہ تم اس لائق نہیں ۔۔
یہ تم کیا کر رہے ہو ؟حاتم کو شرٹ کے بٹن کھولتے دیکھ ہانیہ اُچھلی تھی ۔۔۔
کیوں تمہارا شوہر ہوں کیا ایسے جانے دوں گا تمہیں؟
ہانیہ کے ہاتھ پاؤں پھولے گئے وہ اندر تک کانپ گئی تھی ۔۔۔
اگر تم نے ایسا کچھ کیا تو میں تمہیں ۔۔۔نہیں میں خود کو ختم کر لوں گی ۔۔
تم یہاں سے جانے کے بعد کچھ بھی کرنا مجھے فرق نہیں پڑتا ۔۔۔۔۔
وہ جیسے جیسے ہانیہ کی طرف بڑھ رہا تھا ہانیہ کی سانس رک رہی تھی۔۔۔۔
رکو رکو پلیز خدا کے لیے ۔۔۔۔۔
حاتم نے ایک نہیں سُنی ہانیہ کی کمر کو جھکڑ کر ہانیہ کو اپنے قریب کیا ۔۔۔۔
پ پلی پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔
ششششششش۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حاتم نے اپنی انگلی اسکے ہونٹوں پر رکھ دی ۔۔۔۔۔۔۔
کتنا انتطار کیا تھا اس لمحے کا میں  نے ۔۔۔۔
ہانیہ کسی چڑیا کی طرح پھڑپھڑا رہی تھی ۔
تھی تو ایک کمزور سی لڑکی جو اپنی ابرو بچانے میں ناکام ہو گئی تھی ۔۔۔۔
مریم کب سے دروازہ کھٹکھٹا رہی تھی  حاتم نے دروازہ کھولا تو مریم اسے دھکا دے کر ہانیہ والے روم کی طرف لپکی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ بیڈ پر بیٹھی بلک بلک کر رو رہی تھی مریم دروازے میں ہی رک گئی تھی ہانیہ کا دوپٹہ زمین پر پڑا دیکھ اسکا رونا اسکی حالت  دیکھ مریم سمجھ گئی تھی مریم وہی زمین پر بیٹھ رونے لگی ۔۔۔۔۔
یہ ڈرامے بند کرو دونوں۔۔۔ نیچے گاڑی کھڑی ہے چلی جاؤ اس سے پہلے میرا ارادہ بدلے ۔۔۔
یہ سنتے ہی مریم اُٹھ ہانیہ کی طرف بھاگی ۔۔۔
ہانیہ ہانیہ اُٹھو چلو گھر چلے ۔۔۔۔
مجھے نہیں جانا یہ سُنتے ہی مریم نے حاتم کی طرف دیکھا ۔۔۔۔
تو ٹھیک تم چلی جاؤ میری بیوی میرے پاس رہنا چاہتی ہے حاتم نے پانی کا گلاس منہ کو لگاتے ہوئے جواب دیا ۔۔۔۔
نہیں ہانیہ میری بہن اُٹھو پلیز چلو یہاں سے پلیز اُٹھو مریم جیسے تیسے ہانیہ کو لیے گاڑی میں آ بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ پلیز خود کو سنبھالو خالہ کو کیا کہوں گی ۔۔۔۔۔۔
امّاں؟   ماں کا سوچتے ہی ہانیہ کے رونے میں اور تیزی ائی ۔۔۔۔۔۔
خالہ گھر نہیں ہے شاید مریم ہانیہ کو گھر چھوڑنے آئی تو کنیز گھر نہیں تھی ہانیہ تم اپنی حالت درست کر لو پلیز اس سے پہلے خالہ اجائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کی حالت سنبھلی تو مریم اپنے گھر چلی گئی ہانیہ وہی لیٹ سو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
یار نکاح تو پلین میں شامل نہیں تھا پھر اچانک؟
ہاہاہا اسنے میری بات نہ مان کر اچھا نہیں کیا اب میں اسے گھر نہیں لاؤں گا اور وہ کسی اور سے شادی بھی نہیں کر سکے گی ....
اس میں تمہارا کیا فائدہ؟
ہاہاہا یہی تو تمہیں پتہ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ پُتر تو اُٹھ گئی؟
جی امّاں.... بھوک تو نہیں لگ رہی..
نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہانیہ تیری انکھیں کیوں اتنی سوجی ہوئی ہے کچھ نہیں امّاں سو کر اُٹھی ہوں نہ اس لیے ۔۔۔۔۔۔
صبح کے لیے کپڑے استری کردوں؟
نہیں امّاں مجھے چھٹیاں ہو گئی ہیں ۔۔۔۔۔۔
اچھا ۔۔۔۔؟
امّاں اپکو روٹی بنا دوں؟
نہیں میری بچی میں پکا لوں گی تو اب پڑھ لے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہاری دوست کہا ہے؟ مریم گھاس پر بیٹھی پڑھ رہی تھی جب حاتم نے اکر پوچھا ۔۔۔
مریم نے کوئی جواب نہیں دیا اُٹھ کر جانے لگی ۔۔۔۔۔
اچھا سُنو یہ بھی دیکھتی جاؤ حاتم نے ایک لفافہ مریم کی طرف بڑھایا ۔۔۔
یہ؟
دیکھ لو ۔۔۔۔۔
مریم نے لفافہ کھولا تو اس میں نکاح سے لے کر بعد تک کی تصویریں تھی ۔۔۔۔۔۔
کیا چاہتے ہو تم رشتہ بھیجو اب نہیں انکار کرے گی وہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہا اب اسکی کیا ضرورت ہے؟
پاس کھڑا رحمان ساری بات بہت غور سے سن رہا تھا
.............جاری۔۔۔۔۔۔۔رائیٹر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سدرہ حسین
حاتِم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇👇👇👇
قسط نمبر 5۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم نے گاڑی پر جانا ہے؟
ہانیہ نے گاڑی دیکھتے پوچھا ۔۔۔۔۔۔ہاں رخسار نے بھیجی ہے ہمیں اس کے گھر کا کیا پتہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دونوں گاڑی میں بیٹھ گئی تو ڈرائیور نے گاڑی اگے بڑھا دی ۔۔۔۔۔۔۔۔
مریم نے ہانیہ کے ہاتھوں کو اپنے ہاتھ میں لیا ۔۔۔۔۔
"ہانیہ " تم مجھے معاف کر سکتی ہو ۔۔۔
کس بات کے لئے؟ ہانیہ نے حیرت سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔
میری ہر غلطی کے لیے پلیز میں تمہارا بُرا نہیں چاہتی ۔۔۔۔
چھوڑو بھی مریم جو ہو گیا بھول جاؤ اور اتنا تیار ہو کر کون روتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
گاڑی رکتے ہی ڈرائیور باہر ایا۔۔۔ آئیے میں اپکو فلیٹ تک چھوڑ آؤں گاڑی کا دروازہ کھولتے ڈرائیور نے کہا ۔۔۔۔۔
فلیٹ؟  ہانیہ نے مریم کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔
ہا ہاں وہ منگنی کا سارا انتظام یہی کیا ہے تم چلو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈرائیور فلیٹ کے باہر تک چھوڑ واپس چلا گیا ۔۔۔۔۔
مریم نے بیل بجائی پہلی بیل ہونے پر ہی دروازہ کھلا تھا ۔۔۔۔۔۔ہال میں اتے ہی ہانیہ کی نظر مولوی صاحب پر پڑی رخسار کی منگنی ہے یا شادی؟  ہانیہ جھٹ سے بولی ۔۔۔۔۔۔۔
کہا ہے رخسار مریم ساکت تھی وہی تو جانتی تھی سب ۔۔۔۔۔۔۔۔
بولو مریم ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کی اپنی بولتی بند ہوئی جب اسکی نظر کمرے سے باہر اتے وجود پر پڑی ۔۔۔۔
حاتم سگریٹ کا کش لگاتا دونوں کی طرف آرہا تھا ۔۔۔۔
ہانیہ نے مریم کی طرف دیکھا مریم نظریں جھکا گئی ۔۔۔۔۔
حاتم نے سگریٹ نیچے پھینک کر اوپر پاؤں رکھا ۔۔۔۔۔۔
ہاتھ بڑھا کر ہانیہ کا بازوں پکڑا مریم اگے بڑھنے لگی جب حاتم نے ہاتھ کھڑا کر اسے وہی رُکنے کا کہا ۔۔۔۔۔
ہانیہ کا سر چکرانے لگا تھا ۔۔۔۔۔۔
حاتم اسے کھینچتا ہوا روم میں لے آیا لاتے ہی بیڈ پر گِرایا وہ اس پر جھکا  تھا ہانیہ کے بال اپنی مٹھی میں لیے کہا تھا میں نے انکار نہیں سُنوں گا ۔۔۔۔
چ چھو چھوڑے پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 اپنے ذہین کو نکاح کے لیے تیار کر لو سویٹ ہارٹ ابھی ہمارا نکاح ہو گا حاتم ایک جھٹکے سے اس کے بال  چھوڑ کمرے سے باہر نکل گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نکاح؟  ہانیہ نے نکاح کا لفظ دوہرایا نہ نہی نہیں  ہانیہ بیڈ سے اٹھتے ہی دروازے کی طرف لپکی ۔۔۔۔
کھولو دروازہ کھولو مریم دروازہ کھولو ہانیہ نے پورے زور سے دروازہ کھٹکھٹایا تھا ۔۔۔۔۔
حاتم دروازہ کھول غصے سے ہانیہ کی طرف دیکھا اس کی جان لرز رہی تھی ہانیہ نے فوراً حاتم کے اگے ہاتھ جوڑ زمین پر بیٹھی گئی خدا کے لیے جانے دیں مجھے میں اپکے پاؤں پکرتی ہوں ہانیہ حاتم کے پیروں میں پڑ گئی تھی ۔۔۔۔۔
حاتم خوش تھا جس کا انکار اسے تکلیف دے رہا تھا وہ اسکے پیروں میں بیٹھی بھیک مانگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔حاتم نے ہانیہ کو بالوں سے پکڑ کھڑا کیا ۔۔۔
آآآآآ ۔۔۔۔۔چپ کر کے میری بات سُنو اگر یہاں سے جانا چاہتی ہو تو چپ کر کے نکاح کرو ورنہ ساری زندگی یہی گزارو گی اگے تم خود سمجھ دار ہو 5 منٹ ہے تمہارے پاس اپنا فیصلہ بتا دو ویسے اگر نکاح کے بغیر بھی رہنا چاہو تو مجھے کوئی اعتراض نہیں ہانیہ دو قدم پیچھے ہوئی ۔۔۔
حاتم مسکراتے ہوئے کمرے سے چلا گیا تھا ۔۔۔۔۔
ہانیہ کو لگ رہا تھا جیسے کسی نے اس کے پاؤں  زنجیر میں جھکڑ لیے ہو دماغ  ماؤف ہو گیا اللہ تعالیٰ میری مدد کرے پلیز ۔۔۔۔۔
 کیا سوچا پھر تم نے؟
ہانیہ نے خالی انکھوں سے حاتم کی طرف دیکھا پلیز ۔۔۔۔۔
فیصلہ بتاو؟
نکاح ۔۔۔۔۔۔
ہاہاہاہا اچھا فیصلہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔
نکاح ہو چکا تھا ہانیہ وہی گھٹنوں میں سر دیئے رونے میں مصروف تھی جب اُسے دروازہ بند ہونے کی آواز آئی حاتم کو دیکھتے ہی کھڑی ہوئی  ۔۔۔۔کیا ہوا ڈر کیوں رہی ہو؟
حاتم صوفہ پر بیٹھا میں تمہاری غلط فہمی دور کرنے آیا تھا ۔۔۔۔۔
تم یہ مت سوچنا میں تمہارے پیار میں پاگل ہوں یا محبت کرتا ہوں تم سے ۔۔۔۔
ہانیہ کھڑی حاتم کی بات غور سے سن رہی تھی دل تیزی سے دھڑک رہا تھا یوں  محسوس ہو رہا تھا جیسے دل باہر آجائے گا ۔۔۔۔۔
میں نے نکاح کیا تم سے۔۔ اپناؤں گا نہیں اور طلاق کا سوچنا بھی مت وہ نہیں دوں گا ساری زندگی میرے نام پر گزارو گی "اپنے گھر میں "
تم بلکل اپنے نام جیسے ہو بے حِس ظالم خدا کا خوف کرو حاتم ۔۔۔
ہاہاہاہا ۔۔۔" خوف " تمہیں کیا لگتا ہے مجھے خدا کا خوف نہیں ہے ۔۔
مجھے خوف ہے تو اس ٹائم تم میرے نکاح میں ہو ورنہ تم اس لائق نہیں ۔۔
یہ تم کیا کر رہے ہو ؟حاتم کو شرٹ کے بٹن کھولتے دیکھ ہانیہ اُچھلی تھی ۔۔۔
کیوں تمہارا شوہر ہوں کیا ایسے جانے دوں گا تمہیں؟
ہانیہ کے ہاتھ پاؤں پھولے گئے وہ اندر تک کانپ گئی تھی ۔۔۔
اگر تم نے ایسا کچھ کیا تو میں تمہیں ۔۔۔نہیں میں خود کو ختم کر لوں گی ۔۔
تم یہاں سے جانے کے بعد کچھ بھی کرنا مجھے فرق نہیں پڑتا ۔۔۔۔۔
وہ جیسے جیسے ہانیہ کی طرف بڑھ رہا تھا ہانیہ کی سانس رک رہی تھی۔۔۔۔
رکو رکو پلیز خدا کے لیے ۔۔۔۔۔
حاتم نے ایک نہیں سُنی ہانیہ کی کمر کو جھکڑ کر ہانیہ کو اپنے قریب کیا ۔۔۔۔
پ پلی پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔
ششششششش۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حاتم نے اپنی انگلی اسکے ہونٹوں پر رکھ دی ۔۔۔۔۔۔۔
کتنا انتطار کیا تھا اس لمحے کا میں  نے ۔۔۔۔
ہانیہ کسی چڑیا کی طرح پھڑپھڑا رہی تھی ۔
تھی تو ایک کمزور سی لڑکی جو اپنی ابرو بچانے میں ناکام ہو گئی تھی ۔۔۔۔
مریم کب سے دروازہ کھٹکھٹا رہی تھی  حاتم نے دروازہ کھولا تو مریم اسے دھکا دے کر ہانیہ والے روم کی طرف لپکی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ بیڈ پر بیٹھی بلک بلک کر رو رہی تھی مریم دروازے میں ہی رک گئی تھی ہانیہ کا دوپٹہ زمین پر پڑا دیکھ اسکا رونا اسکی حالت  دیکھ مریم سمجھ گئی تھی مریم وہی زمین پر بیٹھ رونے لگی ۔۔۔۔۔
یہ ڈرامے بند کرو دونوں۔۔۔ نیچے گاڑی کھڑی ہے چلی جاؤ اس سے پہلے میرا ارادہ بدلے ۔۔۔
یہ سنتے ہی مریم اُٹھ ہانیہ کی طرف بھاگی ۔۔۔
ہانیہ ہانیہ اُٹھو چلو گھر چلے ۔۔۔۔
مجھے نہیں جانا یہ سُنتے ہی مریم نے حاتم کی طرف دیکھا ۔۔۔۔
تو ٹھیک تم چلی جاؤ میری بیوی میرے پاس رہنا چاہتی ہے حاتم نے پانی کا گلاس منہ کو لگاتے ہوئے جواب دیا ۔۔۔۔
نہیں ہانیہ میری بہن اُٹھو پلیز چلو یہاں سے پلیز اُٹھو مریم جیسے تیسے ہانیہ کو لیے گاڑی میں آ بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ پلیز خود کو سنبھالو خالہ کو کیا کہوں گی ۔۔۔۔۔۔
امّاں؟   ماں کا سوچتے ہی ہانیہ کے رونے میں اور تیزی ائی ۔۔۔۔۔۔
خالہ گھر نہیں ہے شاید مریم ہانیہ کو گھر چھوڑنے آئی تو کنیز گھر نہیں تھی ہانیہ تم اپنی حالت درست کر لو پلیز اس سے پہلے خالہ اجائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کی حالت سنبھلی تو مریم اپنے گھر چلی گئی ہانیہ وہی لیٹ سو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
یار نکاح تو پلین میں شامل نہیں تھا پھر اچانک؟
ہاہاہا اسنے میری بات نہ مان کر اچھا نہیں کیا اب میں اسے گھر نہیں لاؤں گا اور وہ کسی اور سے شادی بھی نہیں کر سکے گی ....
اس میں تمہارا کیا فائدہ؟
ہاہاہا یہی تو تمہیں پتہ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ پُتر تو اُٹھ گئی؟
جی امّاں.... بھوک تو نہیں لگ رہی..
نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہانیہ تیری انکھیں کیوں اتنی سوجی ہوئی ہے کچھ نہیں امّاں سو کر اُٹھی ہوں نہ اس لیے ۔۔۔۔۔۔
صبح کے لیے کپڑے استری کردوں؟
نہیں امّاں مجھے چھٹیاں ہو گئی ہیں ۔۔۔۔۔۔
اچھا ۔۔۔۔؟
امّاں اپکو روٹی بنا دوں؟
نہیں میری بچی میں پکا لوں گی تو اب پڑھ لے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہاری دوست کہا ہے؟ مریم گھاس پر بیٹھی پڑھ رہی تھی جب حاتم نے اکر پوچھا ۔۔۔
مریم نے کوئی جواب نہیں دیا اُٹھ کر جانے لگی ۔۔۔۔۔
اچھا سُنو یہ بھی دیکھتی جاؤ حاتم نے ایک لفافہ مریم کی طرف بڑھایا ۔۔۔
یہ؟
دیکھ لو ۔۔۔۔۔
مریم نے لفافہ کھولا تو اس میں نکاح سے لے کر بعد تک کی تصویریں تھی ۔۔۔۔۔۔
کیا چاہتے ہو تم رشتہ بھیجو اب نہیں انکار کرے گی وہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہا اب اسکی کیا ضرورت ہے؟
پاس کھڑا رحمان ساری بات بہت غور سے سن رہا تھا
.............جاری۔۔۔۔۔۔۔رائیٹر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سدرہ حسین
حاتِم۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇
قسط نمبر 7۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇👇
وہ گاڑی میں بیٹھی اپنی سوچو میں گم تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 کیا ایسا نہیں ہو سکتا یہ وقت پیچھے چلا جائے اور حاتم کا وجود میری زندگی سے نکل جانے اللہ میری مدد فرما ۔۔۔۔۔۔
چلے بی بی جی ڈرائیور کی آواز سے ہانیہ چونکی ۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ گاڑی سے باہر آئی اپنا دوپٹہ درست کرتی ہوئی ڈرائیور کے پیچھے چل دی ۔۔۔۔۔۔۔
ڈرائیور فلیٹ کے باہر ہانیہ کو چھوڑ چلا گیا تھا۔۔۔۔۔
ہانیہ نے اپنے منہ سے پسینہ صاف کرتے ہوئے بیل پر ہاتھ رکھا ہی تھا لیکن بیل بجنے سے پہلے ہی دروازہ کھل گیا تھا ۔۔۔۔۔
خوش آمدید ۔۔۔۔
ہانیہ اچانک حاتم کی آواز سے  کانپ گئی تھی ۔۔۔۔۔
یہی کھڑی رہو گی؟
ہانیہ نے التجائی نظروں سے حاتم کی طرف دیکھا جیسے وہ ابھی ہانیہ کو کہہ دے گا واپس چلی جاؤ ۔۔۔۔۔
کیا ہوا ہانی اور کتنا انتظار کرواؤ گی؟
ہانیہ نے اپنے قدم اندر کی طرف بڑھا دئیے ۔۔۔
حاتم دروازہ بند کرتے ہی ہانیہ کی طرف متوجہ ہوا ۔۔۔
کیسی ہو میری جان حاتم کی نظر ہانیہ کے چہرے کی طرف اُٹھی تھی ہانیہ کا سفید پرتا رنگ اسکی بے بسی بیاں کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔
ڈر کیوں رہی ہو میری جان تمہیں دیکھ لگ نہیں رہا تم کچھ دنوں کی دلہن ہو حاتم نے اگے بڑھ کر ہانیہ کا ہاتھ پکڑنا چاہا ۔۔۔
ہانیہ جھٹ سے دو قدم پیچھے ہوئی پیچھے دیوار ہونے کی وجہ سے وہ اور دور نہیں ہو سکتی تھی ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ بولنا چاہ رہی تھی لیکن آواز کہی دھب کر رہ گئی تھی ۔۔۔۔۔
کیا ہوا یار تم تو ایسے بیہیو کر رہی ہو جیسے پہلی بار میرے قریب آرہی ہو ۔۔۔۔
حاتم ہانیہ کے ْقریب اسکی خوشبو اپنے  اندر اتارنے لگا جو حاتم کے ہواس بے قابو کر رہی تھی ۔۔۔
م مج مجھے آپ سے بات ۔۔۔۔۔۔۔
ششششششش ابھی کچھ نہیں ۔۔۔۔۔
حاتم نے ہانیہ کے ہونٹوں پر اپنی انگلی رکھ دی ۔
ہانیہ نے اپنے پورے زور سے حاتم کو پیچھے دھکیلنا چاہا لیکن وہ اسے ایک انچ بھی ہلا نہیں سکی تھی ۔۔۔۔
حاتم نے ہانیہ کی گردن پر اپنے ہونٹ رکھ دئیے ۔۔۔۔۔
پ پل پلیز  میری بات ۔۔۔۔۔۔۔۔
ششششش حاتم اسکی ایک بات بھی نہیں سُننے کو تیار نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔
مریم کب سے رحمان کو ڈھونڈ رہی تھی رحمان نے کل سے کوئی رابطہ نہیں کیا تھا مریم تھک ہار کر گھاس پر آکر  بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔
ہانیہ کی رونے سے ہچکیاں بندھ گئی تھی حاتم ایک جھٹکے سے ہانیہ کو چھوڑ پیچھے ہوا تھا ۔۔۔۔
کیا مسئلہ ہے تمہارا لڑکی؟
یہاں رونے آئی ہو؟  حاتم اپنی تیز آواز میں دھاڑا ہانیہ روتے ہوئے وہی زمین پر بیٹھ گئی ۔۔۔۔
حاتم غصّے سے کمرے میں چلا گیا تھا۔۔۔۔۔
ہانیہ جب رو رو کر تھک گئی تو پیاس محسوس ہوتے اپنی مدد اپ کیچن میں گئی وہاں پانی پی کر خود کو حاتم سے بات کرنے کے لیے تیار کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔
جب وہ کمرے کی طرف آئی تو حاتم ایک ہاتھ میں شراب کا گلاس  لیے دوسرے ہاتھ سے سگریٹ پینے میں مصروف تھا۔۔۔۔۔۔
م مجھے بات کرنی ہے ۔۔۔۔۔
بولو سُن رہا ہوں حاتم بہت بیزاری سے بولا تھا ہانیہ کو اس وقت اپنا اپ بہت چھوٹا فیل ہو رہا تھا پر اج بات کرنی تھی ہر حال میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آ آپ پلیز میرے گھر رشتہ بھیج دیں میری امّاں کو پتہ چل گیا تو وہ مر جائے گی میرا ان کے علاوہ کوئی نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے کوئی پرواہ نہیں ہے بس ایک بات اپنے ذہین میں بیٹھا لو میں تمہیں جب جب کہوں گا تمہیں یہاں انا ہو گا ۔۔۔۔۔
یہ رونا دھونا گھر چھوڑ کر ایا کرو سارا موڈ خراب کر دیا ہے جاؤ یہاں سے نیچے ڈرائیور موجود ہے ۔۔۔۔۔
ہانیہ اگے بڑھی حاتم کے پیروں میں پڑ گئی میں بیوی ہوں اپکی کوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری زندگی میں یہی جگہ ہے تمہاری حاتم نے ہانیہ کو بالوں سے جکڑا میرے سامنے ڈرامے نہ کیا کرو تم میری بیوی نہیں تم میری رکھیل سے بھی بتر ہو ۔۔۔۔۔
یہ الفاظ نہیں تھے جو ہانیہ کی روح تک گھائل کر گئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا تھا یہ انسان " نہیں" یہ انسان نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم  ہانیہ کو چھوڑ باہر چلا گیا ہانیہ اٹھی اپنا اپنا اپ درست کرتی فلیٹ سے نکلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مریم تم یہاں بیٹھی ہو  میں کب سے تمہیں تلاش کر رہا تھا ۔۔۔
میں نے بھی اپکو تلاش کیا اپ نے کوئی رابطہ بھی نہیں کیا تھا ۔۔۔۔۔۔
میں تو کب سے کال کر رہا تھا موبائل چیک کرو مریم نے اپنا موبائل نکالا تو وہ اوف تھا ۔۔۔سوری ۔۔۔
کوئی بات نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ؟
وہ وہ حاتم سے ملنے گئی ہے ۔۔۔۔۔۔
کیوں ۔۔۔۔۔۔
وہ بلیک میل کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
تو؟  مجھے بتاتی اُسے بھیج دیا؟  رحمان اور مریم باتیں کر رہے تھے جب مریم کی نظر اتی ہوئی ہانیہ پر پڑی ۔۔۔۔
ہانیہ مریم نے ہانیہ کا نام لیا اور اسکی طرف بھاگی ہانیہ مریم کو دیکھتے ہی اسکے گلے لگ کر رونے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اور برداشت نہیں کر سکتی وہ انسان نہیں ہے مریم  وہ انسان نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان نے قریب اتے ہی ہانیہ کے سر پر ہاتھ رکھا چپ ہو جاؤ سب ٹھیک ہو جائے گا  ہانیہ رحمان کو دیکھتے ہی اپنے انسو صاف کرنے لگی ۔۔۔۔
ہانیہ یہ ہماری مدد کرے گے  مریم نے ہانیہ کو حیران ہوتا دیکھ جلدی سے بتایا ۔۔۔۔
میرا نام رحمان ہے میں اس مسئلے کو حل کرنے کی پوری کوشش کروں گا ۔۔۔۔
آ آپ ہماری مدد کیوں؟
ہانیہ نے فوراً سوال کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ پریشان نہیں ہو اپ میری بہن کی طرح ہو اور اپ اپنے بھائی کو تھوڑا ٹائم دے دو سب ٹھیک ہو جائے گا  ۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے بھیگی انکھوں سے رحمان کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان ہانیہ کا دیکھنا سمجھ گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپ بھروسہ کر سکتی ہو مجھ پر بہن کہا ہے اپکو بھائی ہونے کا فرض پورا کروں گا  رحمان ہانیہ کے سر پر ہاتھ رکھ کر بول رہا تھا ہانیہ کے بہتے انسو رحمان کو تکلیف دے رہے تھے
ہانیہ بس ہاں میں سر ہلا پائی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ گھر آئی تو سر میں بہت درد تھا وہ اتے ہی لیٹ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ پُتر تو سو گئی ہے؟
نہیں امّاں بس سر میں بہت درد ہے ۔۔۔۔۔
یہ دیکھ تیری ساری درد بھاگ جائے گی دیکھ میں کیا لائی اپنی بیٹی کے لیے ۔۔۔۔
کنیز نے سوٹ ہانیہ کی طرف بڑھایا ۔۔۔
امّاں کیوں اتنے پیسے خرچ کیے؟   کیوں کیا اپنی بیٹی پر پیسے خرچ نہیں کروں گی تا کس پر کروں گی یہ بتا کیسا ہے؟  پسند ایا؟
ہاں امّاں بہت پیارا ہے ہانیہ کے چہرے پر وہ خوشی نہیں تھی جس کو دیکھنے کے لیے کنیز سوٹ لائی تھی ۔۔۔
پُتر زیادہ درد ہے تو اُٹھ دوائی لادوں ۔۔۔
نہیں امّاں بس خود ٹھیک ہو جائے گی کنیز ہانیہ کے پاس آئی ہانیہ کا سر گود میں رکھ دبانے لگی چل تو سو جا ٹھیک ہو جائے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ پُتر کیا ہوا رو کیوں رہی ہو  ؟
 ماں کی گود میں اتے ہی صبر کا دامن چھوٹ گیا تھا دل کر رہا تھا اپنی ماں کو سب بتاؤں اپکی بیٹی کس اذیت میں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ نہیں امّاں ہانیہ نے اپنی ماں کے گرد اپنے بازوں پھیلائے  ۔۔۔۔ امّاں اپ میرے لیے دعا نہیں کرتی؟
پُتر تیرے لیے تو ہر وقت دعائیں کرتی ہوں میری بچی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ پُتر کیا بات ہے کچھ چھپا رہی ہے مجھ سے کنیز ماں تھی کتنے دنوں سے اسنے اپنی بچی کو ہنستے نہیں دیکھا تھا وہ فکر مند تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے کوئی جواب نہیں دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
پریشان نہ ہو پُتر اٹھ دوائی لے ائے ۔۔۔۔
نہیں امّاں مجھے سونا ہے بس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات ہانیہ اُٹھی تو امّاں دعا مانگ رہی تھی ہانیہ اُٹھتے ماں کے پاس اکر بیٹھ گئی بھوک لگی ے؟
کنیز نے ہاتھ منہ پر پھیرتے ہی ہانیہ سے پوچھا ۔۔۔۔
نہیں امّاں ۔۔۔۔۔۔
وہ مریم تمہیں آوازیں دے رہی تھی جا سن لے اسکی بات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا امّاں ۔۔۔۔۔۔
رات ہو گئی ہے ہانیہ پُتر چھت پر نہ جانا ان کے گھر چلی جا ۔۔۔۔
جی امّاں ۔۔۔ہانیہ اُٹھ مریم کے گھر چل دی تھی ۔۔۔۔
کیسی طبعیت ہے خالہ بتا رہی تھی تمہارے سر میں درد ہے ۔۔۔۔۔ہاں اب ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔
رحمان کا فون ایا تھا کل ہمیں وہ حاتم کے گھر لے جائے گا تم تیار رہنا ۔۔۔۔
ان کے گھر؟
ہاں رحمان بتا رہا تھا حاتم کی ماں بہت اچھی ہے وہ اپنی ماں کی بات بہت مانتا ہے تو ان سے بات کرنی چاہیے ۔۔۔۔
حاتم غصہ ۔۔۔۔۔۔
تو کرے غصہ اس کے گھر والوں کو بھی پتا ہونا چاہیے کیا کرتا پھر رہا ہے وہ تم بس اپنا ذہین بنا لو صبح جانا ہے ۔۔۔۔
مجھے ڈر لگ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ بہادر بنو کچھ نہیں ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور سُنا کہا غیب تھا اج یونی بھی نہیں ایا؟ حسن نے بیٹھتے ہوئے پوچھا
ہاں مصروف تھا  کچھ ۔۔۔
کہاں؟
چھوڑ یار کیا بتاؤں سارا موڈ اوف کردیا تھا اسنے ۔۔۔۔
کس نے؟
ہانیہ نے ۔۔۔۔۔
تفصیل سے بتاؤ مجھے کچھ سمجھ نہیں ارہی۔۔۔
یار فلیٹ پر بلایا تھا اُسنے رو رو کر ہی میرا دماغ خراب کر دیا ۔۔۔۔۔
اچھا جی مجھ سے چھپ چھپ کر ملاقاتیں ہو رہی ہے ۔۔۔۔
کیسی ملاقات کچھ اور سوچنا پڑے گا چھوڑ چل ۔۔۔۔
کہاں؟
ستارا کے پاس ۔۔۔۔۔۔۔
سوچ لے پچھلی دفعہ جو کیا تھا میں تمہاری اس حرکت کی وجہ سے دوبارہ نہیں گیا وہاں۔۔۔۔۔۔
اب چلنا ہے یا میں جاؤں؟
آرہا ہوں یار چل ۔۔۔۔۔۔۔۔
ستارا جی تو اج کوٹھے پر نہیں ہے ۔۔۔کہاں گئی حسن نے فوراً پوچھا ۔۔۔۔۔
انکا شو تھا جی وہاں گئی ہے ۔۔۔۔۔۔
اُسے فون کرو 10منٹ میں یہاں پہنچے حاتم کہتے ہی ستارا کے کمرے میں چلا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
باجی ستارا حاتم صاحب ائے ہے بہت غصے میں ہے اپ جلدی اجاؤ ۔۔۔۔۔
نہیں مجھے اتے اتے ٹائم لگ جائے گا اُسے کرنے دو انتظار اسے بھی تو پتہ چلے انتظار کس بلا کا نام ہے ستارا نے ایک ادا سے جواب دے کر فون بند کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری
رائیٹر ۔۔۔۔۔سدرہ حسین
#حاتِم۔۔۔۔۔۔۔۔👇
#قسط نمبر 8..........👇
حاتم انتظار کرتے کرتے نیند کی وادی میں اُتر گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ستارا تین گھنٹے بعد آئی تھی ۔۔۔۔۔۔
کمرے میں اتے ہی اسکی نظر حاتم پر پڑی جو بیڈ سے نیچے ٹانگیں لٹکائے سو رہا تھا ۔۔۔۔
ستارا کے ہونٹوں پر اپنی فتح کی مسکراہٹ پھیلی تھی ۔۔۔۔۔چوڑیوں کی چن چن سے حاتم کی آنکھ کھلی حاتم فوراً اپنی انکھیں مسلتا ہوا اُٹھ بیٹھا تھا ۔۔۔۔۔
میں نے کہا تھا 10 منٹ میں آؤ ۔۔۔۔۔۔
کیوں میں تمہاری غلام ہوں؟  وہاں بھی میں اپنے کام سے ہی گئی تھی ۔۔۔۔۔۔
حاتم نے جھٹ سے ستارا کو جبڑوں سے پکڑا ۔۔۔۔
بہت زبان نہیں چلنے لگی تمہاری ۔۔۔۔۔۔
چھوڑو مجھے حاتم چھوڑو ۔۔۔۔۔
کیا سمجھتے ہو تم خود کو میں نے کچھ غلط نہیں کہا میں یہاں کام کرتی ہوں تمہاری غلام نہیں ایک آواز دینے پر بھاگی اؤں ۔۔۔۔
حاتم نے ستارا  کے بالوں کو مٹھی میں لیا میں چاہوں تو تم صرف میرے میرے اختیار میں رہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ستارا نے بڑے پیار سے حاتم کے چہرے کو اپنے ہاتھوں میں لیا تو؟  لے جاؤ نا جس حال میں رکھو گے میں رہ لوں گی شادی بھی مت کرنا بس اپنے پاس رکھ لینا یہ زندگی نہیں ہے سزا ہے میرے لیے حاتم جو میں گزار رہی ہوں ۔۔۔۔
ہاہاہاہا  بس سارا غرور ختم؟  ابھی تو بہت باتیں کر رہی تھی ۔۔۔
حاتم نے ستارا کو دھکا دے کر بیڈ پر گِرایا تم یہی اچھی لگتی ہو حاتم اس پر جھکا تھا ۔۔۔۔
ستارا کی آنکھ سے آنسو نکلا تھا جو وہی جذب ہو گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ یہاں کیوں بیٹھی ہو؟
کنیز پانی پینے اُٹھی تو ہانیہ کو باہر صحن میں بیٹھا دیکھا ۔۔۔
کچھ نہیں امّاں نیند نہیں آرہی تھی ۔۔۔۔۔۔
" ہانیہ پُتر " کنیز نے ہانیہ کے سر پر اپنا ہاتھ رکھا کیوں پریشان رہتی ہے تو؟
ہانیہ نے اپنی ماں کا ہاتھ پکڑ کر چوما نہیں امّاں اپکو کیوں لگتا ہے ایسا؟
اتنے دنوں سے ٹھیک سے کھاتی بھی نہیں سوتی نہیں کمزور ہوتی جارہی ہو کتنے دنوں سے میں نے اپنی بچی کو ہنستے نہیں دیکھا کنیز کی انکھیں نم ہوئی ۔۔۔۔
ہانیہ جلدی سے سیدھی ہوکر بیٹھی نہیں امّاں پریشان نہیں ہو سب ٹھیک ہے بس پڑھائی تھوڑی مشکل ہے اس لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔
کنیز کا دل اپنی بیٹی کے لیے بہت پریشان تھا انہیں ہانیہ کی بات پر یقین نہیں ایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صبح ہانیہ مریم کے ساتھ یونی پہنچی تو رحمان پہلے سے ہی انتظار کررہا تھا ۔۔۔۔
میرا دل نہیں مان رہا پلیز اسے غصہ آگیا تو؟
تو؟  رحمان ہانیہ کی طرف متوجہ ہوا ۔۔۔۔۔۔۔
پلیز بھائی میری بات ۔۔۔۔۔۔۔
بس کردو ہانیہ آنٹی بہت اچھی ہے  تم دیکھنا سب ٹھیک ہو جائے گا  رحمان نے ہانیہ کے سر پر ہاتھ رکھ ہانیہ کو تسلی دی ۔۔۔۔۔۔۔
وہ تینوں روانہ ہو گئے تھے ہانیہ بہت بے چین سی گاڑی سے باہر دیکھ رہی تھی ۔۔۔
میری بہن کو کیا پسند ہے کھانے میں؟  رحمان نے ہانیہ کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔
سب کھا لیتی ہوں ہانیہ نے مسکرا کر کہا ۔۔۔۔۔۔
اچھا میری بہن تو ہنستی ہوئی اور بھی پیاری لگتی ہے ہانیہ مطمئن تھی رحمان کے ساتھ خود کو محفوظ محسوس کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان نے گاڑی بڑے سے بنگلے کے سامنے روکی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ حاتم کا گھر ہے مریم نے اوپر منہ اُٹھائے پوچھا ۔۔۔۔۔۔
جی بلکل چلو اب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اندر جاتے ہی رحمان نے میڈ کو روبینہ بیگم کو بلانے بھیجا۔۔۔۔۔۔۔
وہ رحمان کا سنتے ہی آگئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسلام و علیکم آنٹی ۔۔۔۔
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیسے ہو بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ٹھیک ہوں انٹی ان سے ملے یہ ہماری یونی میں پڑھتی ہیں ۔۔ یہ ہانیہ اور یہ مریم ۔۔۔۔۔۔۔
روبینہ نے دونوں کو پیار کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیٹھو بچو ابھی وہ بیٹھے ہی تھے میڈ چائے لے کر ائی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اج کیسے یاد آئی میرے بچے ۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان نے میڈ کی طرف دیکھا ۔۔۔۔
روبینہ نے رحمان کا اشارہ سمجھتے ہی میڈ کو جانے کا کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان نے ساری بات روبینہ کو بتائی روبینہ کو جیسے اپنے کانوں پر یقین نہیں آرہا تھا وہ سب سن کر خاموش بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
کتنا ٹائم گزر گیا تھا سب  چپ تھے ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ اب آپ کیا چاہتی ہو بیٹا؟
سب کی نظریں ہانیہ کی طرف اُٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ چپ تھی رحمان نے ہانیہ کی مشکل آسان کی ۔۔۔۔۔
آنٹی ہانیہ میری بہن کی طرح ہے اور یقین کرے کوئی اپنی بہن کے لیے ایسا شوہر نہیں چاہے گا پھر جب اسنے نکاح کر ہی لیا ہے تو اسے سمجھائے یا تو ہانیہ کو اپنا لے یا چھوڑ دیں اس طرح اذیت میں نہیں رہنے دوں گا میں ہانیہ کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
روبینہ جو کب سے اپنے آنسو روکے بیٹھی تھی ہانیہ کو تسلی دے کر وہاں سے چلی گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان آکر ہانیہ کے سامنے گھٹنوں کے بل بیٹھا تھا ہانیہ جو اپنے آنسو صاف کر رہی تھی رحمان کو ایسے دیکھ حیران ہوئی ۔۔۔۔
بھائی پر بھروسہ نہیں؟
ہانیہ نے ہاں میں سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو رو کیوں رہی ہو؟
مجھے ہمیشہ سے اپنی زندگی ادھوری لگتی تھی ایک بھائی کی کمی فیل ہوتی تھی یہ انسو خوشی کے ہے مجھے لگتا ہے میری زندگی میں جو کمی تھی وہ اللہ نے پوری کردی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس پھر رونا بند کردو اور اللہ کا شکر ادا کرو اتنا پیارا بھائی  دے دیا اپکو ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ مسکرائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان کھڑا ہوا چلو چلتے ہے اُٹھو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کھانا کھاؤ گی؟  رحمان نے ڈرائیو کرتے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے تو بھوک نہیں ہانیہ بولی تھی لیکن مجھے تو لگ رہی ہے اپ کھلا ہی دو مجھے کھانا ۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے مریم کو غصّے سے دیکھا ۔۔۔۔
کیا یار بھوک لگی ہے ۔۔۔۔۔۔۔
رحمان ہنسا اور گاڑی ایک ہوٹل کے سامنے روک دی ۔۔۔۔۔۔۔اجاؤ یہاں بہت مزے کا کھانا ملتا ہے رحمان کہتے ہی ہوٹل کی طرف چل دیا ہانیہ اور مریم بھی پیچھے پیچھے چل دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ کھانا کھانے میں مصروف تھے جب حاتم کی نظر ان پر پڑی وہ حسن کے ساتھ پہلے ہی وہاں موجود تھا ۔۔۔۔۔۔
رحمان کے ساتھ ہانیہ کو دیکھ حاتم کی رگیں تن گئی تھی ہانیہ کسی بات پر مسکرا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
حاتم غصے سے اُٹھ ان کے ٹیبل کی طرف ایا ۔۔۔۔۔۔۔
واہ شوہر کے سامنے تمہارے ڈرامے خاتم نہیں ہوتے اور غیر مرد کے ساتھ بہت ہنس ہنس کر باتیں ہو رہی ہے ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ حاتم کو دیکھتے ہی سہم گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
حاتم بیٹھ کر بات کرو یہاں لوگ بھی موجود ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم چپ کرو اس دن تو بہت لیکچر دے رہے تھے اج خود ہی ڈیٹ پر اگئے ۔۔۔۔
اپنا منہ سنبھال کر بات کرو سمجھے رحمان بھی کھڑا ہوا مریم اور ہانیہ ایک دوسرے کو دیکھنے لگی ۔۔۔۔۔۔
حاتم نے رحمان کا گریبان پکڑ لیا یہ میری بیوی ہے دور رہو اس سے نہیں بلکہ میں دور کروں گا تم سے ۔۔۔
حاتم نے ہانیہ کا ہاتھ پکڑا چلو میرے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔۔
اس سے پہلے ہانیہ کچھ کہتی رحمان فوراً بولا ہاتھ چھوڑو اسکا ۔۔۔۔
بڑی تکلیف ہو رہی ہے تجھے ؟
حاتم ہاتھ چھوڑو ہانیہ کا گھر جاؤ آنٹی تمہارا انتطار کر رہی ہے انھیں تمہاری شادی کی مبارک باد دے کر ایا ہوں ۔۔۔۔

سنتے ہی حاتم کی گرفت ڈھیلی ہوئی تھی تم گھر گئے؟
ہاں وہی سے آرہے ہیں ۔۔۔۔۔
حاتم نے ایک نظر ہانیہ کی طرف دیکھا تمہیں تو میں بعد میں دیکھتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہتے ہی حاتم وہاں سے چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم لوگ بیٹھو کھانا کھاؤ ہانیہ ابھی تک کانپ رہی تھی مریم نے ہانیہ کو پانی پلایا پلیز ریلیکس ہو جاؤ وہ چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گھر چلو ہانیہ اتنا ہی کہہ پائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما "ماما" حاتم ماں کو آوازیں دیتا ان کے روم ایا ۔۔۔
روبینہ جائےنماز پر بیٹھی دعا مانگ رہی تھی حاتم بیٹھ انتظار کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
روبینہ جائے نماز کو تہہ لگا رہی تھی انھوں نے حاتم کی طرف دیکھا بھی نہیں تھا ۔۔۔۔۔
ماما ۔۔۔۔۔۔
روبینہ بیڈ پر بیٹھ گئی حاتم جانتا تھا وہ ناراض ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما ایک بار میری بات سن لے ۔۔۔۔۔۔
روبینہ ابھی بھی خاموش بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما  پلیز ۔۔۔۔
تم جانتے ہو حاتم تمہارے باپ نے ساری زندگی عورت کو کیا سمجھا ہے لیکن تم تو میرے بھی بیٹے تھے تمہیں عورت کی عزت کا تھوڑا تو پاس ہونا چاہیے تھا میں بہت شرمندہ ہوں خدا کی بارگاہ میں ۔۔۔میں تمہاری اچھی پرورش نہیں کر سکی روبینہ بیگم رو دی تھی اپنی ماں کو روتا دیکھ حاتم کو ہانیہ سے نفرت ہو رہی تھی ۔۔۔۔
ماما سوری میں سب ٹھیک کردوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔
تم اسے گھر لے آؤ ۔۔۔۔ماما اپ فکر نہ کرے تھوڑا ٹائم دیں میں سب ٹھیک کردوں گا۔۔۔۔
حاتم کہتے ہی رکا نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم نے اچھا نہیں کیا رحمان..............
حاتم حسن کو کال ملا رہا تھا لیکن حسن رسیو نہیں کر رہا تھا حاتم نے ہانیہ کو کال ملائی ۔۔۔۔۔۔
ہیلو۔۔۔۔۔۔۔۔
تم نے یہ اپنے ساتھ اچھا نہیں کیا لگتا ہے تمہیں اپنی بوڑھی ماں پر ترس نہیں اتا اب تم دیکھو میں کیا کرتا ہوں ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کی بات سنے بغیر وہ کال بند کر چکا تھا ۔۔۔۔

ہانیہ وہی بیٹھ گئی تھی کیا ہوا میری بچی کنیز ہانیہ کی طرف بڑھی ہانیہ اس سے پہلے بیہوش ہو گئی تھی ہائے میری بچی کیا ہوا تجھے کنیز کے ہاتھ پاؤں پھول گئے تھے۔۔۔۔۔۔
کنیز مریم کی مدد سے ہانیہ کو ہسپتال لے آئی تھی ڈاکٹر نے کچھ ٹیسٹ کروائے تھے ۔۔۔۔۔۔۔
کنیز کب سے کھڑی اپنی بچی کے لیے دعائیں مانگ رہی تھی آنٹی جی اپکو ڈاکٹر صاحبہ بلا رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیکھیے اپ اسکا بہت خیال رکھا کرے ابھی شروع شروع کے دن ہے اسکے کھانے پینے کا بہت خیال رکھے وہ اتنی کمزور ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا مطلب جی؟
کنیز کو کچھ سمجھ نہیں آئی تھی ۔۔۔
اپکی بیٹی امید سے ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی؟
جی جی بہت مبارک ہو اپکو انکے ہسبیڈ کہاں ہے ۔۔۔۔
کنیز کے لیے یہ لمحہ یہی ٹھہر گیا تھا ۔۔۔۔ڈاکٹر بات کر رہی تھی لیکن کنیز سن نہیں رہی تھی کنیز اُٹھ کر روم سے باہر ائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا خالہ کیا کہا ڈاکٹر نے؟
کنیز خاموش تھی کرسی پر بیٹھی ٹیک لگائے دیوار کو دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
خالہ بولے بھی کیا کہا ڈاکٹر نے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری
رائیٹر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سدرہ حسین
حاتم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇
#قسط نومبر 9 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇👇👇
بتائیے بھی خالہ ہوا کیا ہے ؟
کیا کہا ڈاکٹر نے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کنیز خاموش تھی آنسو تھم گئے تھے ۔۔۔۔۔۔
کنیز خاموشی سے اُٹھی ہانیہ مریم کو ساتھ لیا  اور گھر آگئی ۔۔۔۔۔۔مریم ہانیہ کو چھوڑ اپنے گھر جانے کے لیے اُٹھی ہی تھی کہ کنیز کی آواز پر قدم وہی رک گئے تھے ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ اُمید سے ہے ۔۔۔۔۔اب یہ نہ کہنا خالہ مجھے کچھ نہیں پتہ ۔۔۔۔۔۔
کنیز کے الفاظ ہانیہ کے قدموں سے زمین کھنچنے کے لیے کافی تھے ۔۔۔۔۔۔
کنیز مریم کے جواب کا انتظار کرنے لگی لیکن وہ خاموش تھی کنیز نے ایک بار بھی ہانیہ کی طرف نہیں دیکھا بول مریم  کیا چھپا رہی تھی اتنے دنوں سے؟
مریم کچھ نہیں بولی کنیز اُٹھ باہر صحن میں آگئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ پریشان نہ ہو سب ٹھیک ہو جائے گا ۔۔۔۔۔
نہیں اب کچھ ٹھیک نہیں ہو گا  مریم  میں امّاں کا سامنا کیسے کروں گی؟
تو ابھی ارام کر میں صبح خود اکر خالہ سے بات کروں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔مریم  جا چکی تھی ۔۔۔۔۔
ہانیہ ساری رات انتظار میں رہی کب امّاں کمرے میں ائے وہ بات کرے ۔۔۔۔۔۔
صبح فجر کی اذان ہوئی تو ہانیہ اُٹھ باہر آئی کنیز چارپائی پر لیٹی تھی ۔۔۔
ہانیہ ماں کے قدموں میں آ بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔
امّاں مجھے معاف کردیں امّاں میری کوئی غلطی نہیں ہے معاف کردیں مجھے ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کب سے ماں کے پاؤں پکڑے رو رہی تھی امّاں اُٹھے بات کریں مجھ سے امّاں۔۔۔۔۔
 ہانیہ جو اتنے دنوں سے اذیت میں تھی اج رونا چاہتی تھی اپنی ماں کو سب بتانا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔
وہ روتے روتے چیخنے لگی تھی ماں کے پاؤں چھوڑ منہ کی پکڑا تھا امّاں میری بات کیوں نہیں سُن رہی اُٹھے امّاں ۔۔۔۔
ہانیہ کی چیخے سُنتے ہی مریم اور اسکی امّاں بھاگی آئی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔
دروازہ کھول ہانیہ کیا ہوا پُتر دروازہ کھول ۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے جلدی سے دروازہ کھولا خالہ دیکھے امّاں کو کیا ہوا وہ بول کیوں نہیں رہی ۔۔
مریم سُنتے ہی محلے کی ڈاکٹر کی طرف بھاگی اُسے ساتھ لے کر آئی ۔۔۔۔۔
ڈاکٹر نے دیکھتے ہی کنیز کے منہ پر دوپٹہ دے دیا تھا ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ وہی زمین پر بیٹھ گئی تھی  مریم امّاں کو بتاؤ میری کوئی غلطی نہیں ہے میں نے کچھ نہیں کیا مریم تم تو جانتی ہو نہ؟
  بتاؤ امّاں کو مریم  ۔۔۔۔
چپ کرو ہانیہ یہاں محلے کے لوگ ہیں خدا کے لیے چپ کرو کیا بتائے گے ہم  پلیز بات سمجھو ۔۔۔۔۔
ہانیہ اپنے ہواس کھو چُکی تھی مریم کے بہت سمجھنے کے بند بھی وہ وہی باتیں دوہرا رہی تھی  ۔۔۔۔۔۔۔
یہ قیامت بھی آ کر گزر گی تھی آج کنیز کو گئے تیسرا دن تھا رحمان کو جب پتہ چلا وہ انا چاہتا تھا لیکن مریم منا کر چکی تھی محلے والے پہلے ہی بہت مشکوک ہو رہے تھے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم کو بھی خبر مل چکی تھی لیکن اسکے نزدیک ہانیہ کے لیے یہ سزا کافی نہیں تھی ۔۔۔۔۔
ہانیہ کھانا کھا لو ۔۔۔۔
مجھے بھوک نہیں ہے مریم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پلیز یار تھوڑا سا کھا لو ۔۔۔۔نہیں کھانا مجھے مریم تنگ نہ کرو ۔
مریم میری امّاں مجھ سے ناراض چلی گئی میں ساری رات کمرے میں بیٹھی ان کا انتطار کرتی رہی ۔۔۔۔۔۔
مجھے باہر انا چاہیے تھا بات کرنی چاہیے تھی ہانیہ چُپ ہو جاؤ نہیں تھی خالہ تم سے ناراض ماں بھی کبھی اپنے بچوں سے ناراض ہوتی ہے کیا؟
تم کھانا کھا لو تم سوچو خالہ ہوتی تو تمہیں اس حال میں دیکھ کر خوش ہوتی؟
حاتم مجھے تم سے بات کرنی ہے ۔۔۔۔۔
تو کرو۔۔۔۔
فون پر نہیں مل کر کرنی ہے ۔۔۔
چل ٹھیک میں اتا ہوں حاتم رحمان کو اپنے گھر نہیں بلانا چاہتا تھا فوراً اس کے گھر جانے کی ہامی بھری لی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مریم یہ ہانیہ اس دن بار بار کیا کہہ رہی تھی میری کوئی غلطی نہیں امّاں کو بتاؤ؟
کچھ نہیں امّاں بس صدمے میں تھی بیچاری اس لیے ۔۔۔۔
مجھے تو کوئی بات لگتی ہے چنگی بھلی تھی اچانک کیا ہو گیا جو دل پہ لے لیا کنیز نے ۔۔۔
چھوڑ بھی امّاں کچھ نہیں تیرا وہم ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں بول کیا کہنا تھا؟
دیکھ حاتم جو ہو گیا چھوڑ وہ وہاں اکیلی رہ رہی ہے اسکی امّاں کا انتقال ہو گیا ہے اسکی دیکھ بھال کرنے والا کوئی نہیں اسکی حالت بھی ٹھیک ۔۔۔۔۔
بس بس یہ بتاؤ میں کیا کروں؟
تم  اسکے شوہر ہو  وہ تمہاری بیوی اور تمہارے ہونے والے بچے کی ماں بھی ہے ۔۔۔۔
تمہیں کیسے پتہ وہ میرے ہونے والےبچے کی ماں ۔۔۔۔۔۔۔
"حاتم " اپنی زبان کو لگام دو ۔۔۔۔۔۔
وہ تمہاری بیوی یے ذمداری ہے تمہاری ۔۔۔۔
تمہیں کیوں تکلیف ہو رہی ہے؟
حاتم میں تمہیں بہت پیار سے سمجھا رہا ہوں ۔۔۔۔۔
اور اگر میں نہ سمجھا تو کیا کر لو گے؟
تم کچھ نہیں کر سکتے جو غلطی تم لوگوں نے میرے گھر جا کر کی ہے اس کا خمیازہ تو بھگتنا ہو گا ۔۔۔
اور جو تم کر رہے ہو اسکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 اوکے میرے پاس فضول باتوں کے لیے ٹائم نہیں ہے حاتم رحمان کی بات سنے بغیر وہاں سے چلا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
مریم تم ہانیہ کے پاس ہو؟
جی اپکی بات کروا دوں؟
کیا بات کروں گا میں وعدہ کیا تھا اپنی بہن سے سب ٹھیک کر دوں گا لیکن ۔۔۔۔۔۔
مریم؟
جی ۔۔۔۔۔۔۔ہانیہ کے ماموں خالہ کوئی نہیں ہے؟
ایک ماموں ہی ہے نام کے وہ ایک گھنٹے کے لیے ائے اور چلے گئے تھے۔۔۔۔
ہانیہ سے بات کروا دو ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ بات کرو ۔۔۔۔۔۔۔
اسلام وعلیکم!
وعلیکم السلام ۔۔کیسی ہے میری بہن؟
زندہ ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔
بہت افسوس ہوا انٹی کا سُن کر اللہ کے فیصلوں میں ہمارا کوئی اختیار نہیں ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ خاموش تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان بھی خاموش ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ؟
جی بھائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر میں اپکو اپنے گھر لانا چاہوں تو آجاؤ گی؟
اپ میرے بھائی ہو مجھے کوئی اعتراض نہیں لیکن؟
کیا؟
اپکے گھر والے؟
میری فیملی میں ماما  دادا جان کے علاوہ کوئی نہیں اور ان سے بات کر چکا ہوں مجھے اپکی فکر رہتی ہے اپ یہاں ماما کے پاس اجاؤ گی تو مجھے تسلی رہے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔
چلو میں کل آپکو لینے آؤ گا اوکے؟
جی ۔۔۔۔۔اپنا خیال رکھنا اللہ حافظ ۔
اللہ حافظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
"حاتم "۔۔۔۔۔۔۔۔ اجائے ماما ۔۔۔۔
ماں کو دیکھتے ہی حاتم نے سگریٹ چھپانے کی ناکام کوشش کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا سوچا؟
کس بارے میں ماما؟
کب لا رہے ہو ہانیہ کو گھر؟
ماما میں نے کہا تھا تھوڑا ٹائم دے مجھے میں سب ٹھیک کردوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔
کتنا ٹائم؟
ماما پلیز ۔۔۔۔۔حاتم بیزار ہوا ۔۔۔۔
صبح ہوتے رحمان مریم سے ایڈریس پوچھ کر ہانیہ کو لینے چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کو لیئے وہ اپنے گھر پہنچا رحمان کی ماما اور دادا نے ہانیہ کو کھلے دل سے تسلیم کیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مریم اج کافی دنوں بعد یونی آئی تھی حاتم مریم کو دیکھتے ہی اسکے پاس پہنچا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہا ہے تمہاری دوست؟
تمہیں اس سے کیا؟
جو پوچھ رہا ہوں وہ بتاو ورنہ اپنی دوست کا حال دیکھا ہے نہ؟
حاتم نے جیسے دھمکی دی ۔۔۔۔
میں  ہانیہ نہیں ہوں سمجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو نہ بتاو میں خود اسکے گھر آجاؤں گا اج ۔۔۔۔۔۔
وہ گھر نہیں ہے اب ۔۔۔۔۔۔۔۔
تو؟  تمہارے گھر آجاؤں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ رحمان کے گھر ہوتی ہے ہماری طرف انے کی ضرورت نہیں مریم نے ڈر سے فوراً بول دیا تھا ۔۔۔۔۔
حاتم کو سُنتے ہی سانپ سونگھ گیا تھا ۔۔۔۔۔
بہت شوق ہے اسے غیر مردو  کے پاس جانے کا  حاتم سوچتے ہوئے وہاں سے چلا گیا ۔۔۔۔۔
مریم کو خود پر غصہ آیا پاگل ہی رہنا مریم تم مریم خود سے بات کرتی ہوئی کلاس میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیٹا کچھ کھا لیتی بھوک تو نہیں لگی آسیہ(رحمان کی ماما) نے کمرے میں اتے ہی ہانیہ سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں انٹی بھوک نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو جوس پی لو میں میڈ سے کہہ کر ائی ہوں وہ لاتی ہو گی باہر بھی نہیں نکلی تم سارا دن کمرے میں گزار دیا۔۔۔۔۔
ہانیہ رونے لگی تھی اسے یہاں اکر بہت عجیب لک رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
آسیہ نے ہانیہ کو اپنے ساتھ لگایا نہ میری بچی روتے نہیں اللہ سے صبر مانگو بس چُپ ہو جاو ۔۔۔۔۔۔۔
حاتم کب سے سگریٹ کے کش لگاتا کسی بات پر غور وفکر کر رہا تھا اچانک اسکے ذہین میں ستارا کی بات آئی ( یہ زندگی نہیں سزا ہے جو میں گزار رہی ہوں )
حاتم کے چہرے پر مسکراہٹ پھیلی تھی وہ ٍفیصلے پر پہنچ چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری
رائیٹر۔۔۔۔۔۔سدرہ حسین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔🙂اج کوئی یہ نہ کہے قسط
حاتِم۔👇
#قسط نمبر ۔10 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇
انسان بہت عجیب طبیعت کا مالک ہے نہ تو زیادہ پیار میں سمجھ پاتا ہے کہ جو وہ کر رہا ہے ٹھیک ہے یا نہیں اور نہ اپنی انا  اور غصے میں  اج حاتم بھی اسی جگہ پر کھڑا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما ہانیہ کیسی ہے؟
ٹھیک ہے بہت خاموش رہتی ہے ٹھیک سے کھاتی بھی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔
ماما اپ خیال رکھا کرے اسکا وہ بہت مشکل میں ہے ماما مجھے سمجھ نہیں آرہی میں یہ مسئلہ کیسے حل کروں؟
 رحمان میرے بچے کچھ فیصلے ہمیں وقت پر چھوڑ دینے چاہیے تم پریشان نہیں ہو ۔۔۔۔۔
ماما مجھ میں ہمت نہیں ہے میں ہانیہ کا سامنا کروں میں اپنا وعدہ پورا نہیں کر سکا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمت نہیں ہارتے رحمان دیکھنا اللہ تعالیٰ ہانیہ کو بہت نوازے گے بیٹا تم مل لو اس سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو!  ۔۔۔۔۔۔ہاں بول
رحمان کے گھر پر نظر رکھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں؟
مل کر بتاؤں گا ابھی جو کہا وہ کر یا کسی سے کروا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ باہر لان میں بیٹھی چائے پی رہی تھی جب رحمان ہانیہ کو دیکھتے اُس کی طرف آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسی ہے میری بہن؟  رحمان نے بہت پیار سے ہانیہ کے سر پر ہاتھ رکھا ۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک اپ کیسے ہو؟
میں بھی ٹھیک ہوں۔۔۔۔۔۔۔بھائی مریم آئی تھی یونی؟
جی آئی تھی اداس ہو گئی ہو؟  ملنا ہے ؟
نہیں بس ویسے  ہی پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا بات ہے؟  کچھ کہنا چاہتی ہو؟
نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یونی جانا چاہتی ہو؟
کوئی بھی بات نہیں ہے بھائی اپ کیوں پریشان ہو رہے ہے؟
چلو مان لیتا ہوں کوئی بات نہیں ہے لیکن ایک وعدہ کرو اپنے بھائی سے ۔۔۔۔۔۔۔
بولے کیسا وعدہ ۔۔۔۔۔۔۔
اپکو کسی بھی چیز کی ضرورت ہو اپ بِلا جھجک مجھے بتاؤ گی یا ماما سے بھی کہہ سکتی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گڈ گرل ۔۔۔۔۔رحمان جا چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
مرد مرد میں بھی کتنا فرق ہوتا ے ایک حاتم جو عورت کو پاؤں کی جوتی سمجھتا ہے اور  بھائی رحمان جو عورت کو سر کا تاج سمجھتے ہے ہانیہ اور نہیں سوچنا چاہتی تھی اُٹھ کر روم میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یار تو نے کیوں کہاں رحمان کے گھر کا بتا مجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا پہلے ہی بہت دماغ خراب ہے بعد میں بات کرے گے ابھی چل کلاس میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ بیٹا اج تم  ناشتہ کرنے نہیں آئی آسیہ دروازہ نوک کرتے ہی روم میں آئی مقابل خاموشی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ ہانیہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آسیہ پریشان ہوئی ۔۔۔ہانیہ آسیہ نے ہانیہ کے ماتھے پر ہاتھ رکھا یہ تو بخار میں تپ رہی ہے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آسیہ نے فوراً  فیملی ڈاکٹر کو گھر بلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ان کو فوراً ہسپتال منتقل کرنا پڑے گا ڈاکٹر نے ہانیہ کو چیک کرتے ہی کہا ۔۔۔۔۔۔
کوئی مسئلہ نہیں ہم ابھی چلتے ہے آسیہ نے رحمان کو فون کر کے بتایا اور ہانیہ کو لیے ہسپتال چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا ماما،؟  رحمان بھی ہسپتال پہنچ گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پتہ نہیں بیٹا صبح ناشتے پر نہیں آئی میں کمرے میں پوچھنے چلے گئی وہ بخار میں تپ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما وہ ٹھیک تو ہو جائے گی نہ؟
کیوں نہیں اپ دعا کرو اپنی بہن کے لیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو!  حاتم ہانیہ ہسپتال ہے ۔۔۔۔۔۔۔
کیوں؟
یہ نہیں پتہ بس اتنی خبر ملی ہے ۔۔۔۔۔۔
وہ وہاں سے گھر نہیں جانی چاہیے ۔۔۔۔۔۔۔۔
تو کہاں؟
اُسے وہاں سے نکالنے کا بندوبست کرو میں بھی آرہا ہوں ابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایسا کرنے کی کیا ضرورت ہے؟  وہ تمہاری بیوی ہے جا کر اُسے لے آؤ ۔۔۔۔۔۔
تمہیں جتنا کہا اُتنا کرو جلدی کام کرو اور مجھے فون کرو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسی میری بیٹی؟
جی ٹھیک ہے  اب انہیں کافی کمزوری ہے کھانے پینے کا خیال رکھے ابھی انجیکشن دیا ہے صبح تک اُٹھ جائے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی بہتر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان تم گھر چلے جاؤ میں ہوں یہاں بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں ماما میں بھی یہی رہو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہاں کیا کرو گے صبح ہمیں لینے آجانا جاؤ میرا پیارا بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک دل تو نہیں مان رہا چلے پھر اپ کال کر لینا مجھے ضرورت پڑنے پر ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حسن نے چوکیدار کو کچھ پیسے دیئے اور ہانیہ کو لے ایا تھا رات کی وجہ سے کام آسان ہو گیا تھا آسیہ بھی سو رہی تھی۔۔۔۔
حاتم ہانیہ میری گاڑی میں ہے کہاں آؤں وہ بیہوش ہے یا دوائیوں کا اثر مجھے پتہ نہیں جلدی بتاو۔۔۔۔
ہاہاہا اُسے ستارا کے پاس چھوڑ آؤ میں فون کر دوں گا ۔۔۔۔
کیا حسن نے گاڑی روک دی تھی ۔۔۔۔۔۔
حاتم تم نے پی رکھی ہے کیا؟
تمہیں جتنا کہاں کرو اپنا دماغ کیوں چلانے لگتے ہو ۔۔۔۔۔۔
حاتم سوچ لو یہ غلط ہے بیوی ہے تمہاری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کس کی بیوی ہے؟
تمہاری یار ۔۔۔۔۔۔
تو تمہیں کیوں تکلیف ہو رہی ہے جاؤ جو کہاں وہ کرو ۔۔۔۔
اوکے حسن نے ایک نظر ہانیہ کی طرف دیکھا اج پہلی بار اسکا دل حاتم کی بات ماننے سے انکاری تھا ۔۔۔۔۔۔۔
لیکن اُسے یہ کرنا تھا سو وہ روانہ ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ ہے کون؟  کیوں یہاں چھوڑ کر جا رہے ہو؟  اور یہ اس حالت میں کیوں ہے؟  سو رہی ہے؟
ستارا سوال پر سوال کیے جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
بولنے دو گی تو ہی بولوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم کال کرے گا ابھی بتا دے گا تمہیں سب میں جا رہا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایسے کیسے بتا کر جاؤ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نہیں بتا سکتا بائے ۔۔۔۔۔حسن جواب دیے بغیر چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم فون اُٹھاؤ  ستارا کب سے کال کر رہی تھی حاتم سے رابط نہیں ہو پا رہا تھا وہ پاگلوں کی طرح بار بار کال ملا رہی تھی کمرے میں ادھر اُدھر چکر لگا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ستارا کی نظر ہانیہ کے چہرے پر پڑی وہ پاس اکر بیٹھ گئی ہانیہ کو دیکھ ستارا کہی ماضی میں کھو گئی تھی وہ بھی اسی حالت میں یہاں لائی گئی تھی ۔۔۔۔
ماضی۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما میں اُسی سے شادی کروں گی وہ پیار کرتا مجھ سے ۔۔
عائشہ میری بچی تمہارے پاپا نہیں مانے گے کوئی مستقبل نہیں اس لڑکے کا۔۔۔۔۔
 تم ہماری بیٹی ہو ہم کیسے جان بوجھ کر تمہیں اندھے کنویں میں دھکیل دیں ۔۔۔۔۔۔
ماما میں اخری بار کہہ رہی ہوں میں اُسی سے شادی کروں گی اپ پاپا کو منائے بس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارسلان صاحب جو اپنی بیٹی کی باتیں سن رہے تھے کمرے میں داخل ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری
رائٹر ۔۔۔۔۔سدرہ حسینحاتِم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسط نمبر 11……………..👇👇👇👇
عائشہ کیا تم ہماری مخالفت کرو گی؟
پاپا میں ایسا نہیں کرنا چاہتی اپ لوگ مجبور کر رہے ہو مجھے ۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے پھر تم فیصلہ کر لو تمہیں ماجد چاہیے یا ہم لوگ؟
 "پاپا" عائشہ کو اس بات کی اُمید بلکل نہیں تھی وہ پریشان ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی عائشہ اب آپ فیصلہ کر لو ارسلان صاحب وہاں رکے نہیں چلے گئے عائشہ جاتے باپ کو تب تک دیکھتی رہی جب تک وہ آنکھوں سے اوجھل نہیں ہو گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ اپ نے عائشہ کو کیا کہا ہے ایسا کیسے کر سکتے اپ؟
نفیسہ بیگم پریشان نہیں ہو میں جانتا ہوں ماجد صرف ہماری جائیداد کے پیچھے ہے وہ عائشہ کو یہ قدم کبھی نہیں اُٹھانے دے گا اپ بے فکر رہے
آپ جو بھی کہے مجھے بہت ڈر لگ رہا ہے نفیسہ اپ ارحم سے کہے وہ بات کرے عائشہ کبھی اپنے بھائی کی بات نہیں ٹالتی مجھے امید ہے وہ سمجھا لے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے میں آج ہی فون کروں گی ارحم کو اپ سو جائے ۔۔۔۔۔۔
نفیسہ اور ارسلان صاحب کی دو اولادیں تھیں 22 سالہ بیٹا ارحم جو دوبئی میں تعلیم حاصل کر رہا تھا 19 سالہ عائشہ جو ایف ایس سی کی سٹوڈنٹ تھی عائشہ جس لڑکے کو پسند کرتی تھی  وہ اُسی کے کالج کا سٹوڈنٹ تھا ارسلان صاحب اس لڑکے کے بارے میں سب پتہ کروا چکے تھے وہ ایک مڈل کلاس فیملی سے ہونے کے باوجود بہت بڑے بڑے شوق رکھتا تھا ماں باپ سے سیدھے منہ بات تک نہیں کرتا تھا  اور پھر ارسلان صاحب کا،اندازہ بلکل ٹھیک تھا وہ عائشہ کو پسند نہیں کرتا تھا بس وہ یہ جان گیا تھا عائشہ ایک امیر گھر کی بیٹی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاپا میں آجاؤں ؟
ارسلان صاحب سٹڈی روم میں بیٹھے تھے جب عائشہ نے دروازے پر اکر اجازات مانگی۔۔۔۔۔
آؤ عائشہ کیسی ہے میری بیٹی؟
ٹھیک ہوں پاپا مجھے آپ سے بات کرنی ہے ۔۔۔
بولو بیٹا میں سُن رہا ہوں ۔۔۔۔۔
پاپا مجھے ماجد سے ہی شادی کرنی ہے اور یہ میرا اخری فیصلہ ہے ارسلان بہت غور سے اپنی بیٹی کی طرف دیکھ رہے تھے. ۔۔۔۔۔۔
پاپا پلیز مان جائے ۔۔۔۔
ٹھیک ہے پھر تمہیں بھی ہماری بات ماننی ہو گی ۔۔۔۔
کیا؟
تم یہاں سے ہر رشتہ تعلق  توڑ کر جاؤ گی ہماری طرف سے تم آزاد ہو میں اپنی ساری جائیداد ارحم کے نام کر رہا ہوں جب تم فیصلہ کر چکی ہو تو یہ بھی فیصلے بہت ضروری ہیں ۔۔۔۔۔
پاپا؟
ارسلان کو اپنا وہاں کھڑے رہنا مشکل لگ رہا تھا اس لئے وہ چلے گئے عائشہ وہی کھڑی اپنے آنسو صاف کرنے لگی۔۔۔  ہیلو میری ڈول ۔۔۔۔۔۔۔۔
بھائی آپ ؟عائشہ جھٹ سے اپنے بھائی سے چمٹ گئی ۔۔۔۔۔۔
جی  مجھے پتہ تھا میری بہن مجھے مس کر رہی تھی تو میں حاضر ۔۔۔
اچھا کیا جو اپ آگئے اب آپ نے پاپا کو ماننا ہے میرے لیے ۔۔۔۔۔۔
اوکے میں فریش ہو جاؤں پھر بات کرتے ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارحم کو جب نفیسہ نے ساری بات بتائی تو وہ فکر مند ہوا اُسے لگا وہ عائشہ کو فون پر نہیں سمجھا سکے گا اس لیے وہ پاکستان آیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
جی تو عاشی اب بتاؤ مجھے اصل بات کیا ہے کیوں سب کو پریشان کررہی ہے میری گڑیا ۔۔۔۔۔۔
بھائی مجھے ماجد سے شادی کرنی ہے پاپا کہتے ماجد سے شادی کر لو لیکن ہمیں چھوڑ دو  ۔۔۔۔۔۔۔
اپ نے کیا سوچا پھر ۔۔۔۔۔۔۔بھائی پلیز میں اپ سب کے بغیر نہیں رہ سکتی اور ماجد کو بھی نہیں چھوڑ سکتی اپ پاپا کو منا لو ۔۔۔۔۔
پہلے میں ماجد سے ملنا چاہتا ہوں۔۔۔۔۔ ٹھیک میں اپکو کل ہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں میں اکیلا جاؤں گا تم نمبر دو مجھے ۔۔۔۔اوکے
تو تم ماجد ہو؟  جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں شادی کرنا چاہتے ہو میری بہن سے؟
پیار کرتا ہوں عائشہ سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم تو ابھی سٹڈی کر رہے ہو تو کیسے مینج کرو گے ؟
میں سب کرلوں گا میں نے بہت کچھ سوچ رکھا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو ٹھیک ہے لیکن میں تمہیں ابھی بتا دوں پاپا تمہاری طرف سے بہت انسیکیور ہے انھوں نے سب میرے نام کردیا ہے ۔۔۔۔۔
یہ کیا کہہ رہے ہے تم اس جائیداد پر عائشہ کا بھی اتنا ہی حق ہے ماجد ارحم کی بات سُنتے ہی اپے سے باہر ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
وہ ہمارے گھر کا مسئلہ ہے تمہیں کیا فرق پڑتا ہے اس سب سے؟
آپ سنبھال کر رکھے اپنی بہن کو مجھے نہیں شادی کرنی اس سے ماجد جانے کے لیے اُٹھا ہی تھا ۔۔۔۔۔میں جانتا تھا تم جیسا گندا انسان یہی کر سکتا ہے ۔۔۔۔۔۔
اپنی زبان کو لگام دو ارحم میں لحاظ کر ۔۔۔۔۔۔
لحاظ تو میں کر رہا ہوں ہم عزت دار لوگ ہے ائندہ میری بہن کے قریب نظر بھی نہ انا ۔۔۔۔۔
تمہاری بہن خود میرے پیچھے پڑی ہے بڑے ائے عزت والے میں چاہوں تو دو منٹ میں یہ عزت اتار کر رکھ دوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
"ماجد" ارحم  نے ماجد کے منہ پر تھپڑ رسید کردیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہاری ہمت ۔۔۔۔۔تم دیکھنا میں کرتا کیا ہوں ماجد غصے میں وہاں سے چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔
جی بھائی مل ائے ؟ ارحم گھر ایا تو عائشہ جو کب سے ہال میں بیٹھی انتظار کر رہی تھی فوراً بھائی کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی اور مجھے امید نہیں تھی میری بہن کی چوائس ایسی ہے ایک نمبر کا لالچی انسان ہے وہ ۔۔۔۔۔۔
بھائی اپ یہ پاپا کے کہنے پر کر رہے ہو؟  عائشہ کے ذہین میں وہ بات آئی جو وہ سوچنا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔
عائشہ اپ اپنے بھائی کو ایسا سمجھتی ہو؟
اپ سب ملے ہوئے ہو مجھے پتہ ہے عائشہ روتی ہوئی اپنے روم میں چلی گئی  ۔۔۔ ۔۔۔
ارحم وہی کھڑا پریشان سا عائشہ کو جاتے دیکھتا رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عائشہ کب سے ماجد کو کال کر رہی تھی لیکن وہ مسلسل لائن مصروف کر رہا تھا ۔۔۔۔
عائشہ نے مسیج ٹائپ کیا ۔۔۔۔۔
کال رسیو کرو ورنہ میں خود کشی کرلوں گی ۔۔۔۔۔۔
مسیج پڑھتے ہی ماجد مسکرایا ۔۔۔۔نہ  بے بی اتنی آسان موت؟
ماجد نے جلد کال کی ۔۔۔۔۔۔۔
کیا بات ہوئی ہے بھائی سے ۔۔۔۔۔.
کیا فائدہ تم میرا یقین نہیں کرو گی تم تو اپنے بھائی کی بات مانو گی ۔۔۔۔۔
بتاو تو مجھے تم پر پورا یقین ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہارے بھائی نے پہلے مجھے آفر دی جب میں نہیں مانا تو دھمکی دینے لگا کہ  بھول جاؤ تمہاری شادی عائشہ سے کبھی نہیں ہو گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پھر؟  اب؟
عائشہ میں تمہارے بغیر نہیں رہ سکتا پلیز میری بات مانو گی؟
کیا  بات،؟
ہم آج ہی نکاح کر لیتے ہیں پھر آہستہ آہستہ سب مان جائے گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے میں اج ہی اجاؤ گی تم انتظام کر لینا ۔۔۔۔۔۔۔۔.
ماما عائشہ کھانا کھانے نہیں آئی ارحم نے کھانے کے ٹیبل پر عائشہ کو نہ پا کر پوچھا ۔۔۔۔
نہیں بیٹا کہتی بھوک نہیں ۔۔۔۔۔
میں لے کر اتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں بیٹھ جاو ابھی سوچنے دو اُسے صبح بات کرے گے تم کھانا کھاؤ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات سب سو گئے تھے عائشہ جو کب سے سب کے سونے کا ویٹ کر رہی تھی گھر سے نکلی وہ خود کی  سوچ میں تھی  میں ایک دو گھنٹے میں ہی واپس آجاؤں گی ماما پاپا کو ابھی نہیں بتاؤ گی وہ اس بات سے انجان تھی کہ شاید اب وہ کبھی اپنوں سے نہیں ملے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دروازے پہ دستک ہوئی ماجد نے فوراً دروازہ کھولا ۔۔۔۔۔۔
مولوی صاحب کہاں ہے؟  عائشہ نے روم میں آتے ہی پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ آرہے تم ارام سے بیٹھو یہاں ماجد نے صوفہ کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔
تم بیٹھو میں پانی لاتا ہوں ۔۔۔۔۔تھوڑی دیر بند ماجد جوس لیے روم میں ایا ۔۔۔۔
تم تو پانی لینے گئے تھے؟
ہاں پھر سوچا جب تک مولوی صاحب نہیں اتے جوس پیا جائے ساتھ نہیں دو گی میرا؟
عائشہ مسکرائی کیوں نہیں اب تو ساری زندگی ساتھ گزارنی ہیں عائشہ جوس  پکڑ پینے لگی تھی ۔۔۔۔۔
جوس پیتے ہی عائشہ کا سر چکرانے لگا ماجد روم سے باہر تھا عائشہ وہی صوفہ پر لیٹ گئی تھی ۔۔۔۔۔
صبح جب عائشہ کی آنکھ کھلی وہ بیڈ پر موجود تھی اس سے پہلے اپنے حلیے پر غور کرتی مقابل ماجد کو سوئے دیکھ عائشہ کی چیخ نکلی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماجد انکھیں مسلتا ہوا اُٹھا کیا تکلیف ہے کیوں چیخے مار رہی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ نے اپنی پوری انکھیں کھولے ماجد کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمارا تو ابھی نکاح؟
تو کیا ہوا نکاح بھی ہو جائے گا  جاو ابھی چائے لاؤ ۔۔۔۔۔۔۔
ماجد صبح ہو گئی ہے مجھے گھر جانا تھا عائشہ کے آنسو بہنے لگے ۔۔۔۔
پہلے تو میرے لیے مر رہی تھی اب گھر جانے کی پڑ گئی ہے ماجد نے اپنی شرٹ پہنتے ہوئے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماجد فریش ہو کر ایا تو عائشہ وہی بیٹھی رو رہی تھی میں باہر جارہا ہوں دروازه لاک ہو گا کھانے پینے کی ہر چیز موجود ہے یہاں ماجد بات کرتے ہی باہر چلا گیا عائشہ وہی بیٹھی اپنی بربادی کا ماتم کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
ناشتے پر بھی عائشہ نہیں آئی تو ارحم اسکے روم میں بلانے ایا  عائشہ موجود نہیں تھی انھیں تھوڑی دیر میں سب سمجھ آگیا تھا عائشہ جا چکی ہے انھوں نے عائشہ کو ڈھونڈنے کی کوشش نہیں کی تھی ارسلان صاحب سختی سے ارحم کو منا کر چکے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات ماجد نے اتے ہی عائشہ کا بازو پکڑ اپنے قریب کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چھوڑو مجھے پہلے نکاح کرو مجھ سے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہا تم سے نکاح؟  سوچنا بھی مت تمہارے گھر والے زیادہ عزت والے ہیں اب میں روز یہاں انکی عزت کا جنازہ نکالوں گا ماجد نے عائشہ کو بالوں سے جکڑا تھا نہیں بلکہ تمہیں کوٹھے پر چھوڑوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آآآآ اماں اماں ہانیہ نیند میں بول رہی تھی ستارا اپنے ماضی سے باہر آئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ انکھیں کھولے اِدھر اُدھر دیکھنے لگی وہاں کی ایک ایک چیز ہانیہ کو کچھ غلط ہونے کا اشارہ دے رہی تھی رقص کرتی لڑکیوں کی تصویریں گانوں کی آتی آوازیں ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ خود میں سمٹ کر بیٹھ گئی تھی کہاں ہوں میں؟  یہ کون سی جگہ ہے؟  ۔۔۔۔
میں یہاں کیا کر رہی ہوں؟ آپ کون؟
ہانیہ کچھ بھی سوچنے سے قاصر تھی ستارا اج پھر خود کو کمزور لڑکی محسوس کر رہی تھی اُسے ہانیہ میں اپنا اپ نظر آ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اتنے میں ایک جھٹکے سے دروازہ کھلا ۔۔۔۔۔۔
دروازہ کھولتے ہی جو وجود کمرے میں ایا ہانیہ اسے دیکھ لرز گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
کیسا لگ رہا ہے میری پیاری وائف؟
ستارا جیسے وائف کا لفظ سنتے ہی ہوش میں آئی ( یہ حاتم کی بیوی ے؟ )
ستارا باہر جاؤ میں اپنی بیوی سے بات کر لوں ۔۔۔۔۔
ہانیہ بیڈ سے اُٹھتے ستارا کے پیچھے چپ گئی اس نے مضبوطی سے ستارا کو کندھوں سے پکڑا پلیز نہیں جانا آپ یہاں سے ستارا نے ہانیہ کا جسم کانپتا محسوس کیا ۔۔۔۔۔۔ستارا کچھ سمجھ نہیں پا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم ہانیہ کی طرف بڑھا ہانیہ انکھیں بند کیے ستارا کو مضبوطی سے پکڑے کھڑی تھی ۔۔۔۔۔۔
حاتم نے ایک جھٹکے سے ستارا کو پیچھے کیا اور ہانیہ کا ہاتھ پکڑا ۔۔۔۔۔۔پلیز چھوڑے مجھے چھوڑے ستارا سُنا. نہیں جاؤ یہاں سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن وہ............
جاؤ حاتم چِلایا تھا ستارا کمرے سے چلی گئی حاتم نے ہانیہ کو بیڈ پر گِرایا اور دروازہ لاک کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کا دماغ گھومنے لگا تھا بخار کی وجہ سے اسے اپنا اپ بوجھل لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم پاس پڑی کرسی اُٹھا کر ہانیہ کے سامنے آکر بیٹھا وہ سیدھی ہو کر بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔
بہت شوق ہے تمہیں غیر مردوں سے رابطے بڑھانے کا تمہارا وہ شوق یہاں بہت اچھے سے پورا ہو گا روز تم کسی نئے مرد کی بانہوں میں ہوگی ۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کو ایک منٹ لگا تھا سمجھنے میں وہ اس وقت کس جگہ پر ہے ۔۔۔۔
ہانیہ کچھ سوچے سمجھے بغیر حاتم کے قدموں میں بیٹھ گئی خدا کا واسطہ میرے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری
رائٹر ۔۔۔۔۔۔سدرہ حسین
حاتِم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسط نمبر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔12……..👇
خدا کے لیے مجھے یہاں نہیں چھوڑے آپ جیسا کہو گے میں کروں گی اپکو خدا کا واسطہ ہے پلیز ہانیہ اسکے قدموں میں ہاتھ جوڑے بیٹھی تھی لیکن حاتم خوفِ خدا سے بہت دور تھا ہانیہ کو اس حال میں دیکھ اسکی روح تک کو تسکین مل رہی تھی ترس ہمدردی کچھ بھی تو نہیں تھا بس انا تھی غصہ تھا جس میں سب جل رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم نے اُسے زمین سے اُٹھا کر بیڈ پر گِرایا تھا تم کیا سمجھتی ہو مجھے کچھ نہیں پتہ اس دن ہوٹل میں تو ہنسی نہیں بند ہو رہی تھی تمہاری اور اب؟
اب اسکے گھر ہی پہنچ گئی وہ ہانیہ پر جھکا ہانیہ کو خود کی سانس بند ہوتی محسوس ہوئی بخار میں تپتے جسم میں جیسے جان ختم ہو رہی تھی وہ کوئی مخالفت نہیں کر سکی حاتم اسکی حالت کا اندازہ اسکے جسم س نکلتی ہیٹ سے لگا سکتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کی آواز کہی حلق میں اٹک گئی تھی اسے لگ ریا تھا جیسے کوئی اسکے جسم کو نوچ رہا ہو وہ اپنے ہوش کھو رہی تھی انکھیں بند نہیں کرنا چاہتی تھی  کہی حاتم اسے یہاں چھوڑ  کر نہ چلا جائے  بہت کوشش کے باوجود اسکی انکھیں بعد ہو گئی ہر چیز سے بیگانی ہو گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان  بیٹا فون کیوں نہیں اُٹھا رہے تھے؟
"ًماما " آپ رو رہی ہے؟  ماں کی روتی آواز سنتے ہی رحمان کی نیند اُڑ گئی ۔۔۔۔۔
بیٹا ہانیہ نہیں ہے یہاں ۔۔۔
کیا؟  کہاں گئی؟
مجھے کچھ نہیں معلوم بیٹا میری آنکھ کھلی تو وہ یہاں نہیں تھی  میں نے سب دیکھا لیکن وہ نہیں ہے یہاں ۔۔۔۔
ماما میں آرہا ہوں ابھی آپ روئے نہیں پلیز پریشان نہیں ہو رحمان ماں کو تسلی دے رہا تھا جبکہ خود کا دل ڈوب رہا تھا کہی حاتم؟
ہانیہ کی آنکھ کھلی تو ستارا ڈریسنگ سے ٹیک لگائے ہانیہ کو ہی دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
حاتم ؟
چلا گیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں نہیں وہ ابھی یہی ہو گا میں خود دیکھتی ہوں ہانیہ جلدی سے اُٹھ کھڑی ہوئی سر چکرا رہا تھا لیکن وہ ٹائم گنوانا نہیں چاہتی تھی ۔۔۔
کیسی لڑکی ہو تم ؟ تم دنیا کی پہلی لڑکی ہو گی جسکا شوہر خود اُسے کوٹھے پر چھوڑ کر گیا ہے گھر سے بھاگ کر آئی ہو ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ ستارا کی کوئی بات نہیں سن رہی تھی وہ کمرے سے باہر جانے کے لیے اگے بڑھی وہ جا چکا ہے ستارا نے ہانیہ کا بازوں پکڑ اسے پھر بتایا حاتم یہاں نہیں ہے جا چکا ہے  ۔۔۔۔۔۔
نہیں  نہیں ہانیہ کے قدم اُلٹی سمت بڑھے وہ ایسا نہیں کر سکتے میرے ساتھ  میں بیوی ہو ان کی نکاح ہوا ہے ہمارا وہ ایسا کیسے کر سکتے ہے نہیں  نہیں  ہانیہ دیوانہ وار  چِلا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
ستارا نے اگے بڑھ کر ہانیہ کو سنبھالنا چاہا ہانیہ کو ایسے روتا دیکھ ستارا بھی رونے لگی تھی پلیز چُپ ہو جاو میری بات سُنو پلیز شور نہ کرو میری بات سُنو  ستارا ہانیہ کو کچھ سمجھانا چاہتی تھی  لیکن ہانیہ کچھ نہیں سننا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما ایسے کیسے کوئی آکر ہانیہ کو لے جائے اور اپ سوئی رہ گئی ۔۔۔۔
کہی وہ خود تو نہیں چلی گئی؟  رحمان کو اچانک خیال آیا ۔۔۔۔
نہیں بیٹا اسکی کنڈیشن ایسی نہیں تھی ڈاکٹر نے بولا تھا صبح تک سوتی رہے گی وہ کیسے ۔۔۔۔
اپ پریشان نہیں ہو میں کچھ کرتا ہوں آپ گھر جائے پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ ہسپتال ہے یہاں سے کیسے کوئی لڑکی کو اغواء کر کے لے جا، سکتا ہے رحمان ڈاکٹر سے بات کر رہا تھا اچانک اس کے ذہین میں حسن کا نام ایا رحمان ڈاکٹر کا جواب سنے بغیر وہاں سے بھاگا سارے راستے وہ حسن کو کال کر رہا تھا لیکن حسن کال پک نہیں کررہا تھا۔۔۔۔
حسن کہا ہے رحمان نے حسن کے گھر داخل ہوتے ہی میڈ سے پوچھا  ۔۔۔۔
وہ سو رہا ہے جی ۔۔۔۔۔۔۔
وہ حسن کے روم کی طرف تیزی سے بڑھا "حسن" حسن اُٹھو رحمان نے اسے  جھنجوڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہو گیا ۔۔۔۔رحمان تم یہ کیا طریقہ ہے اُٹھانے کا یار ۔۔۔۔۔۔۔۔
حسن میں ایک بار پوچھوں گا جھوٹ مت بولنا ہانیہ کو ہسپتال سے تم لائے ہو؟
نہیں تمہیں کس نے کہا؟
میں نے کیمرے میں دیکھا رحمان نے فوراً  ہوا میں تیر چھوڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حسن خاموش ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔رحمان وہی بیٹھ گیا تھا حسن میں تمہارے اگے ہاتھ جوڑتا ہوں میں نے اُسے بہن کہا ہے مجھے بتا دو حاتم کہا ہے ہانیہ اسکے ساتھ ہے؟  بتاو؟
تم بولتے کیوں نہیں بولو حسن۔۔۔۔ رحمان اپنی جگہ  سے کھڑا ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔
پلیز حسن بتا دو رحمان رو دینے کو تھا ۔۔۔۔
و وہ حاتم کے پاس نہیں ۔۔۔۔۔۔۔
تو؟  کہاں ہے؟
بتاو کہاں ہے وہ کہاں چھوڑ کر ائے  ہو بولو ۔۔۔۔۔۔
وہ کو کو ۔۔۔۔۔۔۔
بتاؤ بھی حسن پلیز بتا دو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس بات کا، ستارا کو ڈر تھا وہی ہوا  ہانیہ کی آواز سن کر روشن بائی کمرے میں آئی تھی ہانیہ نے روشن بائی کو دیکھنے ہی ستارا کو اور مضبوطی سے پکڑا کیا تکلیف ہے لڑکی کیوں رو رہی ہو کون مر گیا ہے تمہارا ۔۔۔۔
ہانیہ کا دل چاہا وہ چیخ چیخ کر بتائے  میری ماں مر گئی ہے میری ماں کے بعد میرا شوہر جسے میرا محافظ ہونا چاہیے مجھے اس گندی جگہ پر چھوڑ چلا گیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
ستارا ؟
جی روشن بائی۔۔۔۔۔۔۔۔
چوہدری ایا میں تو کہتی ہوں اس لڑکی کو وہاں چھوڑ آ اسکا دماغ درست ہو ۔۔۔۔۔
نہیں نہیں میں چلی جاتی ہوں اسکی طبیعت ٹھیک نہیں ک کل کل سے کام پر لگا دے گے پلیز روشن بائی بس اج کا دن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک  ہے  تمھاری مان لیتی ہوں لیکن اس لڑکی کی آواز نہیں آنی چاہیے اسکی بات سُنتے ہی ہانیہ نے اپنا  ہاتھ منہ پر رکھا روشن بائی چلی گئی ۔۔۔۔۔۔
ستارا نے ہانیہ کو دیکھا جو کانپ رہی تھی ستارا نے ہانیہ کو گلے لگایا کچھ نہیں ہو گا پلیز بس چپ رہو ششش بس آواز نہ ائے یہ بہت بے رحم لوگ میں کچھ نہیں کر سکوں گی میں بس آدھے گھنٹے تک اتی ہوں تم ارام کرو ۔۔۔۔۔۔ہانیہ نے ستارا کو چھوڑنے سے انکار کیا ۔۔۔
نہیں اپ میرے پاس رہے اپ نہیں جاو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ستارا نے ہانیہ کے چہرے کو اپنے ہاتھوں میں لیا میں بس ابھی اجاؤ گی تم آرام کرو ۔۔۔۔
نہیں ۔۔۔ہانیہ نے پھر نہ میں سر کو ہلایا ۔۔۔۔۔۔
وہ دوبارہ اجاے گی اچھا تم ایسا کرو اندر سے دروازہ لاک کر لو ٹھیک ہے؟
جی ۔۔۔۔میں ابھی اتی ہوں ستارا کے جاتے ہی ہانیہ نے دروازہ لاک کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تم حاتم سے پوچھو مجھے نہیں پتہ میں تو حاتم کے پاس چھوڑ ایا تھا ہانیہ کو ۔۔۔۔
تم جھوٹ بول رہے ہو ۔۔۔۔۔
دیکھو رحمان مجھے نہیں پتہ وہ کہا ہے حاتم اسکا شوہر ہے ہانیہ اسکے پاس ہو گی
ہو گی؟  مطلب تم نے ہی تو کہا میں حاتم کے پاس چھوڑ ایا ہوں ۔۔۔۔
ہا تو یہی کہہ رہا ہوں وہ اپنے شوہر کے پاس ہے تمہیں کیوں مسئلہ ہو رہا ہے ۔۔۔۔۔
حسن میری طرف دیکھ کر بتاو مجھے مسئلہ نہیں ہونا چاہیے؟
تم جاو حاتم سے پوچھو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ ہانیہ دروازہ کھولو ۔۔۔۔ہانیہ میں ہوں ستارا ۔۔۔۔۔
ہانیہ نے دروازہ کھولا مجھے یہاں نہیں رہنا ستارا کے کمرے میں اتے ہی ہانیہ جھٹ سے بولی ۔۔۔۔۔۔
شششش چپ ستارا نے دوبارہ دروازہ لاک کیا ۔۔۔۔
کہا جاؤ گی بتاو ۔۔۔۔۔میں کہی بھی چلی جاؤں گی بس یہاں نہیں پلیز اپ بھی چلے میرے ساتھ اپ اتنی اچھی ہے اپ یہاں کیوں رہ رہی ہے ہانیہ نے ستارا کا ہاتھ پکڑا جیسے ستارا ایک جھٹکے میں چھوڑوا گئی  میں یہاں اپنی مرضی سے رہتی ہوں اور تمہیں بھی اب یہاں رہنا ہے سمجھی؟
سوچنا بھی مت تم یہاں سے جاسکتی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں نہ سوچوں میں جاؤں گی یہاں سے ضرور میں یہاں نہیں رہوں گی میں اللہ سے دعا کروں گی وہ مجھے یہاں نہیں رہنے دے گا دیکھنا آپ میرا الله میری مدد فرمائے گا ۔۔۔۔۔۔۔
اللہ؟  ستارا اللہ کے نام پر چونکی ۔۔۔۔۔
وہ جب سے یہاں آئی تھی کبھی اللہ سے دعا نہیں مانگی تھی وہ جانتی تھی یہ سزا ہے اور مجھے کاٹنی ہے ہر حال میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے نماز پڑھنی ہے ستارا اپنے خیال میں تھی جب ہانیہ کی آواز پر چونکی ۔۔۔۔۔
کیا؟
مجھے نماز پڑھنی ہے ۔۔۔۔۔۔۔
جائے نماز  نہیں ہے یہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی صاف کپڑا تو ہوگا؟
ہاں دیتی ہوں ۔۔۔۔۔
ستارا نے ہانیہ کو اپنے کپڑے بھی دہیے لو فریش ہو جاو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ وضو کرکے ائی اور نماز پڑھنے لگی ستارا وہی کھڑی ہانیہ کو دیکھ رہی تھی میں جب یہاں آئی میں نے کیوں نہیں مدد مانگی میں نے کیوں اللہ سے دعا نہیں کی وہ تو معاف کرنے والا ہے کیوں اپنی سزا سمجھ کر میں یہ سب جھیلتی رہی کیوں ۔۔۔۔
ہانیہ نے دعا کے لیے ہاتھ اُاٹھائے آنسو ہتھیلیوں کو بھیگو رہے تھے اے میرے اللہ مجھ پر رحم فرما میری مدد فرما مجھے نہیں پتہ مجھے یہاں نہیں رہنا مجھے یہاں سے نکالے وہ کسی چھوٹے بچے کی طرح رو رہی تھی  جیسے ایک چھوٹا بچہ اپنی ماں سے رو رو کر اپنی بات منواتا ہے ویسے ہی ہانیہ اپنے رب کے حضور رو رو کر اپنی بات منوا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حسن اگر میری بہن کو کچھ ہوا تو میں تمہیں کبھی معاف نہیں کروں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان جانے کے لیے پلٹا ہی تھا جب حسن کی آواز پر رکا ۔۔۔۔
وہ کوٹھے پر ہے ۔۔۔۔۔۔۔
کیا؟  رحمان کو جیسے یقین نہیں ایا تھا ۔۔۔۔۔۔
کوٹھے پر ہے ستارا کے پاس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان نے دیوار کا سہارا لیا تھا وہ ستارا کے نام سے خوب واقف تھا حاتم کے منہ سے ستارا کا نام کافی بار سن چکا تھا ۔۔۔۔
حسن نے رحمان کو سہارا دینا چاہا نہیں میرے پاس مت انا تم لوگ انسان نہیں ہو سکتے بلکل نہیں تم دونوں جانور کہلانے کے لائق بھی نہیں ہو ۔۔۔۔۔۔
میں ایسا نہیں چاہتا تھا حسن نے اپنے دل کی بات سامنے رکھی۔۔۔۔۔۔
نہیں مجھے ٹائم ضائع نہیں کرنا چاہیے تم پتہ بتاو کوٹھے کا جلدی۔۔۔۔۔
حسن خاموش تھا ۔۔۔۔۔
بتاو بھی پلیز جلدی ۔۔۔۔۔۔۔۔
میں چلتا ہوں تمہارے ساتھ حسن نے اپنا جوتا پہنا رحمان اور حسن گھر سے نکلے ۔۔۔۔۔۔
ستارا باجی دروازہ کھولے ۔۔۔۔۔۔
ہاں کیا مسئلہ ہے اس نے دروازہ کھولتے ہی پوچھا ۔۔۔۔۔
اپ کو اور اس لڑکی کو روشن اپا بلا رہی ہے ۔۔۔۔
کیوں؟
پتہ نہیں جی کوئی ایا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے بڑی امید سے ستارا کو دیکھا چلو ہم اتے ہیں ۔۔۔۔۔
ہانیہ اور ستارا روشن بائی کے سامنے کھڑی تھی پر وہاں کوئی نہیں تھا ہانیہ بار بار ادھر اُدھر دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
ارمان صاحب ائے ہے ارمان کا نام سنتے ہی ستارا سمجھ گئی انہیں کیوں بُلایا گیا ہیں ۔۔۔۔۔
اس لڑکی کو تیار کر کے اس کے پاس بھیجو ۔۔۔۔۔
روشن بائی میں نے کہا تھا کل۔۔۔۔۔۔
کل بھی یہی کرنا اور اج بھی  جاو اسے تیار کر کے بھیجو ۔۔۔۔
میں چلی جاتی ہوں ۔۔۔۔
وہ نئی لڑکی مانگ رہا ہے تم نئی ہو؟  روشن بائی غصے سے بولی تھی ۔۔۔۔۔
ہانیہ کچھ بولنے لگی  جب ستارا نے چپ رہنے کا اشارہ کیا۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے ستارا ہانیہ کو لیے تیزی سے روم میں گئی ۔۔۔۔
تم پاگل ہو ان کو غصہ آگیا تو تم سوچ بھی نہیں سکتی کیا حال کرے گے تمہارا ۔۔۔۔۔۔
جو کہتے ہے وہ کرو بس ۔۔۔۔۔۔
ن نہ نہیں میں نہیں جاؤں گی ۔۔۔۔
تمہیں جانا ہوگا میری بات سمجھو ۔۔۔۔
ہانیہ تیز آواز میں رونے لگی تھی نہیں جاؤں گی میں کہی بھی نہیں پلیز کچھ کرو ۔۔۔۔
میں کیا کر سکتی ہوں ؟
مجھے یہاں سے بھگا دے پلیز۔۔۔۔۔۔
وہ تم بھول جاؤ تم مر کر بھی یہاں سے نہیں جا سکتی اب یہی مقدر ہے تمہارا ۔۔۔۔۔۔۔
چپ ہو جاو آواز بند کرو اپنی ۔۔۔۔
اس لڑکی کا تماشا ختم نہیں ہوا روشن بائی کمرے میں آئی ۔۔۔۔۔
میں کہی نہیں جاؤں گی مجھے یہاں سے جانا ہے بس ہانیہ خود کو مضبوط ثابت کرنا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ستارا ۔۔۔روشن بائی دھاڑی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کی آواز سے ہانیہ کانپ گئی تھی۔۔۔
جی ؟ اس لڑکی کو چھوڑ کر اؤ وہاں۔۔۔۔۔۔
جی اچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو ۔۔۔۔۔۔۔۔چلو بھی ستارا ہانیہ کو کھنچتے ہوئے وہاں سے لے آئی ۔۔۔۔۔۔۔چھوڑے مجھے پلیز ۔۔۔۔۔۔
بس کرو تم انکار کرو گی زیادہ اذیت برداشت کرنی پڑے گی جاؤ ستارا نے ہانیہ کو اندر دھکیل دروازہ باہر سے بند کردیا تھا خود اس دروازے سے ٹیک لگائے رونے لگی مجھے معاف کردینا میں تمہیں اس سب سے بچانا چاہتی ہوں جو میں نے سہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کمرے میں داخل ہوتے ہانیہ کی نظر 40 سالہ ارمان پر پڑی جو شاید بہت بے صبری سے ویٹ کر رہا تھا ہانیہ کو دیکھتے مسکرایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری
رائٹر ۔۔۔۔۔۔۔سدرہ حسین
حاتِم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ازقلم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سدرہ حسین۔
قسط نمبر 13………………………….👇
وہ وہی دروازے کے ساتھ لگی آیت الکرسی پڑھ رہی تھی بند آنکھوں سے آنسو بہہ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔
ارمان جو تھوڑی دیر پہلے مسکرا رہا تھا اب ہانیہ کو دیکھ پریشان ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حسن اور رحمان کوٹھے پر پہنچ گئے تھے رحمان گاڑی سے نکلتے ہی اندر کی طرف بھاگا سنو رحمان میری بات سنو رکو رحمان کے قدم وہی رکے کیا مسئلہ ہے؟
وہ یہاں کی بڑی اپا ہے روشن بائی وہ ایسے نہیں انے دے گی ہانیہ کو ۔۔۔۔۔۔
تو؟
تو یہ کہ ہمیں کچھ سوچنا ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔۔
مطلب کیا؟  جلدی بتاو میں ہانیہ کو ایک اور منٹ یہاں برداشت نہیں کر سکتا ۔۔۔۔۔۔
وہ پیسے لے کر مان جائے گی حسن نے جھجکتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
تمہارا مطلب میں اپنی بہن کا سودا کروں؟  رحمان زمین پر بیٹھ گیا تھا ۔۔۔۔
نہیں تم یہی رہو میں لے کر اتا ہوں رحمان نے سر اُٹھا کر حسن کو دیکھا ۔
یقین کرو میں لے آؤں گا وعدہ ہے تم سے ۔۔۔۔۔۔۔
جلدی جاو ۔۔۔رحمان وہی بیٹھا ویٹ کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارمان ہانیہ کی طرف بڑھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نو پلیز نو میرے پاس نہیں انا ہانیہ چِلانے لگی تھی ۔۔۔۔
اوکے نہیں آتا پہلے خاموش ہو جاو چپ کرو. ۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے گالوں پر بہتے انسو بے دردی سے صاف کیے تم یہاں اپنی مرضی سے نہیں آئی؟
ہانیہ نے نہ میں سر کو ہلایا ۔۔۔۔۔۔
اوکے رونا بند کرو میں جتنا بھی بُرا انسان سہی مگر میں زبردستی کے حق میں ہرگزنہیں ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔
یہاں بیٹھ جاو ارمان نے بیڈ کی طرف اشارہ کیا ۔۔۔۔.
نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیٹھ جاو میں نے کہا نا ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں  میں یہی ٹھیک ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
روشن بائی جس لڑکی کو میں یہاں چھوڑ کر گیا تھا اُسے لینے آیا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ جو بہت غور سے حسن کی بات سن رہی تھی غصے سے کھڑی ہو گئی یہاں کوئی مذاق ہو رہا ہے میاں؟
نہیں میری بات سُنے وہ غلط فہمی کی ۔۔۔۔
بس بس یہ ممکن نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔
کیوں میں آپکو اسکے بدلے جیتنے پیسے کہے دینے کو تیار ہوں ۔۔۔۔۔
پیسوں کا سُنتے ہی اپا کے منہ میں پانی آیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
ہاں وہ ٹھیک ہے لیکن تم اسکا کرو گے کیا ہم نے اُسے کام پر لگا دیا ہے۔۔
رحمان سے ویٹ نہیں  ہو رہا تھا وہ حسن کے پیچھے ہی آگیا روشن بائی کی بات سُنتے رحمان کو کھڑے رہنے کے لیے سہارے کی ضرورت پڑی اسکے آنسوں نے اسکی شرٹ کو بھیگو دیا  ایک مضبوط مرد کوٹھے پر کھڑا اپنی بہن کے لیے آنسو بہا رہا تھا ۔۔۔۔۔
حسن کے پاس الفاظ تھے لیکن ان کو ادا کرنا دنیا کا مشکل ترین کام لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
پھر بھی میں اُسے لے کر جاؤ گا آپ قیمت بتائیے ۔۔۔۔۔
ارمان نے کمرے  سے باہر اتے ہی بولنا شروع کر دیا روشن بائی کسی اور لڑکی کو بھیجا اس نے رو رو آسمان سر پہ اُٹھایا ہے اور آئندہ بھی خیال رکھیے گا ۔۔۔۔
معذرت چاہتی ہوں جی وہ نئی لڑکی ہے گھبرا گئی ہو گی ۔۔۔۔۔
جو بھی یہ آپکا کا مسئلہ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی جی آپ بے فکر ہو کر کمرے میں جائے میں بھیجتی ہو روشن بائی بہت نرمی سے بولی۔ رخشندہ ائے رخشندہ؟
جی روشن اپا رخشندہ فوراً حاضر ہوئی ۔۔۔۔۔۔
وہ ستارا کو بھیج جلدی اور اس لڑکی کو لے کر  آ ارمان صاحب کے کمرے سے ۔۔۔۔
رحمان اللہ سے دعائیں کر ریا تھا یہ ہانیہ ہی ہو وہ دونوں ارمان کی بات سمجھ چکے تھے  ۔۔۔۔۔۔
جی روشن بائی ستارا اپنا دوپٹہ سیٹ کرتی ہوئی آئی رحمان انکھیں بند کیے دعا مانگ رہا تھا جب ستارا کی آواز پر چونکا  ۔۔۔۔۔۔۔۔
عاٹشہ؟ کتنے سالوں بعد اج رحمان نے عائشہ کا نام لیا تھا یہ یہاں کیا کر رہی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
  رحمان نے اپنی نظریں اوپر اٹھائی عائشہ کو دیکھتے ہی رحمان گھٹنوں کے بل بیٹھ گیا تھا تیز آواز میں رونے لگا تھا یقینن وہاں موجود ہر انسان نے کبھی کسی مرد کو اتنی بے بسی سے روتے نہیں دیکھا تھا روتا کیسے نہ اک اسکی بہن دوسری اسکی محبت دونوں کو وہ دل و جان سے چاہتا تھا دونوں کو دنیا کی سب سے گندی جگہ کوٹھے پر پایا تھا میں اس دنیا کا سب سے بد قسمت انسان ہوں  انکھیں لال ہو چکی تھی سانس اٹکنے لگی تھی۔۔۔۔۔۔۔
رخشندہ ہانیہ کو لے آئی تھی عائشہ رحمان سے منہ موڑے اپنے آنسو چھپا رہی تھی ۔۔۔۔
بھائی کیا ہوا ہے حسن اور روشن بائی خود سکتے میں تھے ہانیہ روتی ہوئی رحمان کی طرف بڑھی کیا ہوا بھائی میں ٹھیک ہوں آپ کیوں رو رہے ہے پلیز کیا ہوا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ستارا جا تو ارمان کے پاس اسکا موڈ بہت خراب ہے اب خوش کر دینا اُسکے یہ الفاظ نہیں تھے جو رحمان کے کانوں میں پڑے تھے اُسے لگ رہا تھا جیسے کسی نے  گرم سلاخیں اُسکے کانوں میں گُھسا دی ہو ۔۔۔۔ستارا وہاں سے قدم اُٹھانے والی تھی جب رحمان دھاڑا ۔۔۔۔۔۔۔
رک جاؤ عائشہ ایک قدم بھی اگے مت بڑھانا ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اپنی جگہ ہی رک گئی تھی رحمان غصّے سے اُٹھ عائشہ کی طرف بڑھا اِدھر دیکھو ۔۔۔
میری طرف دیکھو عائشہ ۔۔۔۔۔۔
ک کو، کون عائشہ میں ستارا ہوں رحمان نے بہت بے دردی سے اسکا منہ پکڑ اوپر کیا میری انکھوں میں دیکھ کر بتاو کون ہو تم ۔۔۔
وہ جو کب سے آنسو روکے کھڑی تھی رحمان کی آنکھوں میں دیکھتے ہی آنسو بہنے لگے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بولو کون ہو؟
عائشہ تو رحمان کی انکھوں میں کھو گئی تھی کیا ہے اسکی آنکھوں میں بے بسی ،غصہ ۔محبت ،دکھ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں تم سے پوچھ رہا ہوں بولو عائشہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ نے ہتھیار ڈال دیئے تھے  اپنی انکھیں جھکا گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہو رہا ہے یہاں۔۔۔۔۔۔ارے ارمان صاحب آپ چلے لڑکی آتی ہے بس ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں میں جارہا ہوں بھاڑ میں جاؤ آئندہ نہیں آؤں گا یہاں ۔۔۔۔
ارے آپ تو ناراض ہی ۔۔۔۔۔
ارمان نے روشن بائی کی بات نہیں سُنی اور وہاں سے چلتا بنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ڈرامہ لگا رکھا ہے جاؤ تم لوگ یہاں سے میرا دھندا خراب نہ کرو روشن بائی غصے سے بولی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
ہم یہاں سے اِن دونوں کو لے کر جائے گے ستارا نے حیرانگی سے رحمان کی طرف دیکھا اور کچھ بولنے کے لیے منہ کھولا تھا رحمان نے اسکے منہ پر اپنی انگلی رکھی شششششششش پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں  نہیں اس لڑکی کا سودا ہو سکتا ہے ستارا کا نہیں وہ میرے کوٹھے کی رونق ہے ۔۔۔۔۔۔
"بس "رحمان نے اپنا ہاتھ اُٹھا کر روشن بائی کو چپ رہنے کا کہا.....
اگر تو آپ ان دونوں کو ہمارے ساتھ بھیجتی ہے تو آپکا بھی فائدہ ہو گا اور اگر آپ اپنا فائدہ نہیں چاہتی تو پولیس کو بُلا لیتے ہے کیا خیال ہے بتا دیں حسن نے فوراً اپنی بات سامنے رکھی جو جلد ہی روشن بائی کو سمجھ آگئی تھی  ۔۔۔۔
ساری بات طے ہونے کے بعد وہ چاروں وہاں سے نکل آئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ انکھیں بند کیے  سیٹ سے ٹیک لگائے سوچ رہی تھی جو دعا میں نے آج مانگی وہ میں نے اس دن کیوں نہیں مانگی جب ماجد یہاں چھوڑ گیا تھا آج ہانیہ کو دعا مانگتے دیکھا تو میں نے بھی دعا مانگ لی جبکہ اس دعا میں ہانیہ جیسا یقین نہیں تھا اُمید نہیں تھی تو کیا اللہ چاہتے  تھے میں اُن سے دعا مانگوں انسو تو تھم نہیں رہے تھے عائشہ بھی رونا چاہتی تھی؟
ہانیہ آپ ٹھیک ہو؟  رحمان نے موڑ کر ہانیہ کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔
جی بھائی میں ٹھیک ہوں آپ ٹھیک ہو؟
جی میں بھی ٹھیک ہوں رحمان کی نظر عائشہ پر پڑی جو شاید اِن کی بات نہیں سُن رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان بھی سیدھا ہوکر بیٹھ گیا تھا ۔۔۔۔۔
سب خاموش بیٹھے تھے حسن بھی خاموشی سے ڈرائیو کر رہا تھا کافی سوچنے کے بعد حسن نے ہانیہ کو آواز دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
"ہانیہ " مجھے معاف کر سکو گی؟
کس لیے؟  حسن نے اپنا گناہ قبول کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ خاموش تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بولو معاف کردو مجھے ۔۔۔۔۔۔۔رحمان نے ہانیہ کی طرف دیکھا ۔۔۔۔
عائشہ نے ہانیہ کے ہاتھوں پر اپنے ہاتھ رکھ ہانیہ کو تسلی دی ۔۔۔۔۔۔
جی میں نے آپ کو معاف کیا میں اپنے اللہ کی شکرگزار ہوں جس نے مجھے اپنے حفظ و امان میں رکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
حسن نے گاڑی روک دی ۔۔۔۔۔
تھیکیو ہانیہ میں بہت شرمندہ ہوں۔۔۔۔۔
چلو گھر آ گیا رحمان نے گاڑی سے باہر نکلتے ہوئے کہا تم بھی آجاؤ حسن ۔۔۔۔۔
نہیں یار پھر کبھی سہی میں اب چلوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے ۔۔۔۔۔۔۔۔
ارے میری بچی ہانیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آنٹی ہانیہ آن کے گلے لگتے ہی رونے لگی نہ میری بچی چپ ہو جاؤ اللہ نے بہت کرم کیا جو تم واپس آگئی آسیہ کی نظر عائشہ پر پڑی اُن کو ایک منٹ لگا تھا عائشہ کو پہچاننے میں اور پہچانتی بھی کیسے نہیں اِس لڑکی کے لیے ساری ساری رات روتے دیکھا تھا رحمان کو عائشہ کی تصویر آج بھی رحمان کی روم میں موجود تھی۔۔۔۔۔
عائشہ؟  آسیہ نے اپنے بیٹے کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔
رحمان نے انکھوں میں آنسو لیے ہاں میں سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ اپنا نام آسیہ کے منہ سے سنتے حیران ہوئی۔۔۔۔۔۔۔
آسیہ نے بہت محبت سے عائشہ کو گلے لگایا اسنے گلے لگتے ہی رحمان کی طرف دیکھا تو کیا واقعی رحمان کو مجھ سے محبت تھی؟
چلو سب فریش ہو جاؤ میں کھانا لگواتی ہوں آسیہ نے ماحول خوشگوار کرنے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ؟
جی ۔۔۔۔۔بیٹا عائشہ کو بھی اپنے ساتھ لے جاؤ جلدی سے فریش ہو کر کھانے کے لیے آجاؤ بھوک لگی ہے مجھے زیادہ ویٹ نہ کروانا آسیہ نے مسکرا کر کہا ۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ دونوں روم میں چلی گئی تھی
رحمان ماں کے گلے لگتے رونے لگا آسیہ بھی بیٹے کو ایسے دیکھ دکھی ہوئی اللہ نے میرے بیٹے کی سُن لی تو اب رونا کس بات کا؟
رحمان نے ماں کے گرد اپنی گرفت  اور مضبوط کی اور ایک چھوٹے بچے کی طرح رو ریا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری
حاتِم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ازقلم۔۔سدرہ حسین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسط نمبر  14…….
بس کردو میری جان رونا آسیہ رحمان کو تسلی دے رہی تھی لیکن آج رحمان کا خود پر کوئی اختیار نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
آسیہ نے رحمان کو خود سے الگ کیا پہلے چُپ ہو جاؤ میرے بچے ادھر آؤ یہاں بیٹھو رحمان صوفہ پر بیٹھ چکا تھا آسیہ نے اُس کی طرف پانی بڑھایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 نہیں ماما ۔۔۔۔رحمان آسیہ نے دوبارہ پانی دیا تو رحمان نے پکڑ  کر پی لیا میرے بچے بس کردو تمہیں تو خوش ہونا چاہئے ۔۔۔۔۔۔۔۔
"خوش " ماما میرا دل کر رہا تھا زمین پھٹ جائے اور میں اس میں سماء جاؤں ماما آپ کو یاد ہے نہ ؟

رحمان اپنی ماما کے ہاتھ پکڑ کر اُن کی طرف متوجہ ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے کتنی کوشش کی تھی عائشہ کو سمجھانے کی آپ کو یاد ہے جی میری جان مجھے یاد ہے حوصلہ کرو میں اپنے بیٹے کو اس حالت میں نہیں دیکھ سکتی جاؤ فریش ہو جاؤ پھر تفصیل سے بات کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔
"ماما" جی بولو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے بولنے دیں ورنہ میرا دل پھٹ جائے گا ماما اُسکے دل کی حالت کا اندازہ اسکی انکھوں سے لگایا جا سکتا تھا..

. مرد جیتنا بھی مضبوط کیوں نہ ہو اپنے سے منسلک رشتوں  کی تکلیف سے بکھر ہی جاتا ہے ٹوٹ جاتا ہے ریزہ ریزہ ہو جاتا ہے جو اج رحمان ہو گیا تھا اپنے وجود کو کیسے گھسیٹ کر گھر تک لایا تھا یہ اللہ کے بعد صرف رحمان ہی جانتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رحمان عائشہ سے بہت محبت کرتا تھا اُس نے عائشہ کو بہت سمجھایا تھا ماجد اچھا لڑکا نہیں لیکن عائشہ ہمیشہ ہر دلیل غلط ثابت کردیتی تھی عائشہ جانتی تھی رحمان اُسے پسند کرتا ہے وہ ہمیشہ یہی سمجھتی تھی رحمان مجھے ماجد سے الگ کرنا چاہتا ہے……………

  ایک دن رحمان کو پتہ چلا عائشہ نے بھاگ کر ماجد سے نکاح کر لیا اس دن رحمان نے عائشہ کی خوشیوں کے لیے دعا کی تھی لیکن جیسے ہی ماجد کالج انا شروع ہوا رحمان بہت حیران ہوا……..

عائشہ کیوں نہیں آتی بہت پوچھنے کے بعد رحمان کو پتہ چلا ماجد عائشہ کو چھوڑ چکا ہے رحمان عائشہ کے گھر بھی گیا بہت تلاش کرنے کی  بھی کوشش کی لیکن وہ کبھی نہیں ملی……………
 وہ دن رحمان کے لیے بہت تکلیف دے تھے  کبھی عائشہ کی بہت فکر ہوتی تو کبھی بہت غصہ اتا خود کو سمجھانے میں رحمان کو کافی وقت لگا لیکن عائشہ کی یاد کو وہ کبھی فراموش نہیں سکا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ماما اگر ہانیہ کو اج کچھ ہو جاتا تو میں حاتم کو مار دیتا شوٹ کردیتا میں اور عائشہ ماما وہ پتہ نہیں کب سے وہاں تھی اُسنے میری ایک نہیں سُنی تھی ماما میں اُسے کبھی معاف نہیں کروں گا کبھی نہیں میرے ساتھ یہ سب کیوں؟

کہاں تھی وہ مجھے کچھ سمجھ نہیں آرہی بیٹا کیا بولے جارہے ہو سنبھالو خود کو تم تو ہانیہ کو لینے گئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان نے بولنے کے لیے منہ کھولا ہی تھا سامنے عائشہ اور ہانیہ کو آتے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آ گئی آپ دونوں چلو کھانا کھاتے ہیں جاؤ رحمان آپ بھی فریش ہو کر جلدی آؤ کب سے کہہ رہی ہوں اب جلدی آؤ ۔۔۔۔۔۔۔

نہیں ماما مجھے بھوک نہیں عائشہ نے اپنی پلکیں اُٹھا کر رحمان کو دیکھا ۔۔۔
رحمان کی انکھیں سب بیان کر رہی تھی عائشہ کے دل کو کچھ ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔

رحمان جانے کے لیے پلٹا ہی تھا بھائی پلیز ہمارے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔سوری ہانیہ مجھے ۔۔۔۔۔۔
پلیز ہانیہ نے بہت پیار سے کہا تو رحمان انکار نہیں کر سکا اوکے میں آتا ہوں پھر ویٹ کرلو بھائی کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی  کرتے ہیں  ویٹ آپ جلدی سے آجاؤ ہانیہ نے مسکرا کر کہا جبکہ مسکرانا اس وقت سب سے مشکل کام لگ رہا تھا رحمان کو ایسے دیکھ ہانیہ کو بہت دکھ ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
حاتم اُٹھ جاؤ اتنی دفعہ آئی ہوں بیٹا آپ کے بابا آرہے ہے پھر تمہارا پوچھے گے اُٹھ جاؤ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما پلیز سونے دیں بابا جب آئے گے مل لوں گا اسنے اپنا کمبل منہ تک کھینچا ۔۔۔۔۔
حاتم؟  حاتم  ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ماما ۔۔۔۔۔بیٹا تم ہانیہ کو نہیں لائے؟
ماما وہ نہیں انا چاہتی طلاق مانگ رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں مجھے لے چلو میں بات کروں گی وہ معاف کردے گی تمہیں ۔۔۔۔۔
معافی کا لفظ سُنتے ہی حاتم کی انکھیں کھل گئی وہ جھٹ سے اُٹھ بیٹھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
معافی؟  کس بات کے لیے؟
بیٹا جو تم نے کیا تمہیں اُس سے معافی مانگنی چاہئے ۔۔۔۔۔
کیا ہو گیا ماما آپ کو اپ اپنے بیٹے کو ہلکا لے رہی ہے میں کیوں معافی مانگوں گا اُس سے میں نے کچھ غلط نہیں کیا بلکہ جو اس نے کیا اسکی سزا تھی یہ ۔۔۔۔۔
حاتم تم نے زبردستی کی ہے بیٹا تمہیں تھوڑا بھی ملال نہیں اس بات کا اللہ سے ڈرو اور معافی مانگ لو یہ نہ ہو وہ یتیم بچی نے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما یہ  لیکچر  نہ دیں میرا موڈ خراب کردیا ہے آپ نے ۔۔۔.۔۔۔۔۔۔
تمہیں کب سمجھ آئے گی؟
کبھی نہیں اپکا بیٹا جیسا ہے خوش ہے اپنی زندگی میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ سب کھانا کھانے میں مصروف تھے عائشہ نے کتنی دفعہ چور نظروں سے رحمان کو دیکھا جبکہ اسنے ایک بار بھی عائشہ کی طرف نہیں دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کمرے میں آتے ہانیہ نے عائشہ سے سارے سوال کر ڈالے آپی بتائے نہ آپ بھائی کو اور بھائی آپ کو کیسے جانتے تھے ۔۔۔۔
میں تو بتا دوں گی پہلے مجھے یہ بتاو رحمان کو اتنی پیاری بہن کہا سے مل گئی رحمان شروع سے بہت دکھی ہو جاتا بہن کے نام پر ۔۔۔۔۔۔۔

ہانیہ نے اپنی ساری بات عائشہ کو سنائی ماں کا لفظ منہ میں آتے ہی ہانیہ کے آنسو حلق میں اٹک گئے تھے عائشہ نے ہانیہ کو گلے لگا کر بہت پیار سے سمجھایا اسکا  دھیان ہٹانے کے لیے عائشہ نے اپنی بات شروع کردی تمہارا بھائی تھا بہت شرارتی ہم شروع سے ساتھ پڑھتے تھے بہت اچھے دوست بھی لیکن شاید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان بیٹا سو گئے؟
نہیں ماما آ جائے رحمان جانتا تھا وہ ضرور ائے گی وہ آکر بیٹھی اپنے بیٹے کی طرف دیکھ رہی تھی وہ ماں کی گود میں سر رکھ کر لیٹ گیا تھا …….

آسیہ نے رحمان کی بات سُن لی تھی لیکن خاموش تھی اسنے اپنی ماں کے چہرے کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔
ماما؟ چپ ہو جائے پلیز وہ اُٹھ کر ماں کا منہ صاف کرنے لگا رحمان مجھے بہت خواہش تھی اللہ مجھے بیٹی عطا کریں پھر بھی میں اللہ کی رضا میں رضی تھی  اور آج میں اللہ کی بہت شکرگزار ہوں الله مجھے آپ جیسا بیٹا عطا کیا اب تو اللہ نے مجھے دو دو بیٹیاں نواز دی ۔۔۔۔۔۔
ماما آپکو عائشہ سے کوئی پرابلم؟
کیسی باتیں کر رہے ہو میرے بچے عائشہ میرے بیٹے کی وہ محبت ہے جس کو اللہ نے لوٹا کر میرے بیٹے کو انعام سے نوازا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھینکیو ماما  وہ ماں کے ساتھ لپٹ گیا رحمان کو جو ڈر ستا رہا تھا اب وہ بھی دور ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ رات سب کے لئے بہت اداس تھی رحمان  نے اپنی ماما کے ساتھ اور ہانیہ عائشہ نے ایک دوسرے کے آنسو صاف کرتے گزار دی۔۔۔۔۔
صبح کی نماز ہانیہ اور عائشہ نے ساتھ پڑھی عائشہ نے دعا کے لیے ہاتھ اُاٹھائے  مجھے معاف کردے میرے مالک میں نے کیسے سوچ لیا کہ وہ میری سزا تھی اور مجھے کاٹنی ہے میں نے یہ کیوں نہ سوچا میرا اللہ تو غفور الرحیم ہے میری توبہ کیسے نہیں قبول کرے گا میرا اللہ تو ستر ماؤں سے بڑھ کر مجھے چاہتا ہے مجھے معاف کردے میں نے کیوں اپنی تکلیف میں آپ کو نہیں پکارا ۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان نے بھی اپنے رب کے اگے سجدہ شکر کیا اور  بہن کے لیے اپنے رب سے رو رو کر دعا مانگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارے تم لیٹ گئی؟  جی آپی مجھے نیند آرہی ہے میں سونا چاہتی ہوں آپ بھی سو جائے ۔۔۔
نہیں ہانیہ آپ سو جاؤ میں اج کھلی فضا میں سانس لینا چاہتی ہوں میں تھوری واک کر کے آتی ہوں ۔۔۔۔۔
اوکے ہانیہ جلد ہی سو گئی تھی ۔۔۔۔۔
ابھی  سورج نے اپنا دیدار نہیں کروایا تھا عائشہ لان میں ننگے پاؤں واک کرنے لگی۔۔۔۔۔۔
رحمان واک کے لیے باہر جارہا تھا جب عائشہ پر نظر پڑی وہ بھی رحمان کو دیکھ چکی تھی سر پہ حجاب کیے وہ اُسے بہت پیاری لگی لیکن غصہ اپنی جگہ وہ عائشہ کو اگنور کرتا باہر چلا گیا عائشہ کی انکھیں نم ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری

#حاتِم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
#ازقلم سدرہ حسین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
#قسط نمبر 15…………………………
اُسنے نم آنکھوں سے آسمان کی طرف دیکھا اور اللہ کا شکر ادا کیا وہ اپنے پیار کرنے والوں میں واپس آ گئی تھی کتنا ہرٹ کیا میں نے سب کو پتہ نہیں ماما بابا کیسے ہو گے اور بھائی مجھے یاد کرتے ہو گے؟  وہ خود سے سوال کرتی روم میں آکر لیٹ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حسن دو دن سے یونی نہیں آیا تھا رحمان سے حاتم کی دوستی ختم ہو چکی تھی حاتم اکیلا بور ہو رہا تھا بہت کالز کرنے کے بعد بھی حسن سے رابطہ نہیں ہو رہا تھا تبھی حاتم نے ہانیہ کے پاس جانے کا سوچا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم آتے ہی ستارا کے کمرے میں آجاتا تھا لیکن آج وہاں کوئی اور لڑکی کو دیکھ حاتم چونکا ستارا کہاں ہے؟
اسکو کہی اور بھیج دیا ہے آپ آجائے ۔۔۔۔۔

حاتم غصے سے روشن بائی کے کمرے میں پہنچا یہ ستارا کہاں اور ہانیہ؟
روشن بائی جو پہلے ہی ستارا کے جانے سے اپنے اندر غصہ بڑھے بیٹھی تھی فوراً پھٹ پڑی اور سارا ماجرا حاتم کو سُنا دیا حاتم حسن کا نام سُنتے آگ بگولہ ہو میں جان سے مار دوں گا اُسے حاتم حسن کے گھر کی طرف روانہ ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ماما بہت بھوک لگ رہی ہے کھانا لگا دیں رحمان یونی سے آیا تو سیدھا اپنے روم کی طرف بڑھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو بچیوں ہو گیا کھانا تیار؟
جی آنٹی بلکل ریڈی اج ہانیہ اور عائشہ مل کر کھانا بنایا تھا ۔۔۔
تم لوگ میری ایک بات نہیں سُنتی منا کیا تھا پھر بھی خود کو تھکا لیا کوئی بات نہیں آنٹی اتنے کام سے کون تھک جاتا ہے عائشہ نے مسکرا کر آسیہ کی طرف دیکھا چلو آپ سب کی خوشی میں ہی میری خوشی ہے اب کھانا لگا بھی دو رحمان آتا ہی ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھوڑی دیر میں ہی رحمان  اپنی آستین فولڈ کرتا سیڑھیوں سے آتا دکھائی دیا عائشہ نے بہت اُمید سے رحمان کی طرف دیکھا ایک بار دیکھ لے میری طرف مانی پلیز عائشہ شروع سے ہی رحمان کو مانی کہہ کر پکارتی تھی اج پہلی بار عائشہ کے دل نے مانی کو پکارا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آسیہ نے رحمان کا عائشہ کو اگنور کرنا نوٹ کیا تھا وہ جانتی تھی ان کا بیٹا بہت نرم دل ہے جلد ہی سارا غصہ ختم کردے گا عائشہ بہت اداس ہوئی عائشہ بیٹا کھانا کھاؤ عائشہ کو پلیٹ میں چمچ گھومتے دیکھ آسیہ نے کہا
جی  آنٹی ۔۔۔۔۔رحمان بیٹا کیسا بنا کھانا؟
مزے کا ہے ماما آپ کیوں پوچھ رہی ہے؟
کیوں کہ آج کھانا میری بیٹیوں نے بنایا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی  بہت اچھا ہے ماما تو ٹھیک ہے پھر انکو آئسکریم کھلا لانا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان نے ماں کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔
بیٹا اتنا اچھا کھانا کھلایا آپکو اب آپ بھی تھوڑا دل بڑا کرو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان کی نظر ہانیہ پر پڑی جو بہت چُپ سی کھانا کھا رہی تھی ایسے منہ کے ساتھ میں آئسکریم نہیں کھلاؤں گا اسنے ہانیہ کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ہانیہ نے فوراً سر اُٹھا کر رحمان کی طرف دیکھا کیسا منہ؟
جیسا ابھی میری بہن کا ہے اُترا ہوا پورے 12بجے ہوئے ہے مجھ پر نہیں یقین تو ماما سے پوچھ لو بتائے ماما ۔۔۔۔۔۔۔
جی بلکل ٹھیک کہہ رہا ہے رحمان میری دونوں بچیاں خاموشی توڑ دیں اب اللہ کا شکر ادا کرو اور ایک نئی زندگی کا آغاز کرو ہانیہ بیٹا یہ مشکل ٹائم بھی گزر جائے گا اللہ تعالیٰ سب بہتر کرے گا میں اپنے بچوں کو ایسے نہیں دیکھ سکتی اوکے؟
جی عائشہ نے بھی اہستہ سی آواز میں کہا تو ٹھیک تم سب اج رات کو آئسکریم کھانے جارہے ہو اور کوئی بہانہ نہیں چلے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حسن کہا ہے حاتم نے گھر پہنچتے ہی تیز آواز میں پوچھا وہ کراچی گئے ہے چوکیدار کو جیسے حسن نے کہا اُسنے ویسے بتا دیا وہ جیسے ہی آئے اُسے میرے گھر بھیجنا ۔۔۔۔
جی اچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آنٹی؟  ہانیہ نے آسیہ کو آواز دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہلے تو آپ دونوں مجھے آنٹی کہنا بند کردو رحمان کی طرح ماما بولا کرو آسیہ نے دونوں کو پیار کیا ۔۔۔۔۔
جی تو ماما ہم تیار ہیں بھائی کہا رہ گئے جاؤ میری جان بھائی کو بُلا لاؤ نہیں آپ رہنے دو سیڑھیوں سے جانا پڑے گا عائشہ بُلا لاتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں؟  عائشہ جھٹ سے بولی ۔۔۔۔۔۔۔
جی کیوں کیا ہوا؟
نہیں کچھ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاؤ پھر آسیہ اپنے بیٹے کو جانتی تھی وہ زیادہ دیر ناراض نہیں رہ سکتا عائشہ سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ آہستہ آہستہ سیڑھیاں چڑھنے لگی کاش وہ پہلے ہی کمرے سے باہر آجائے وہ دل میں سوچ رہی تھی۔۔۔۔۔
عائشہ نے دروازہ نوک کیا لیکن کوئی جواب نہیں آیا اسنے دوبارہ نوک کیا جب کوئی جواب نہیں آیا تو عائشہ دروازہ کھول کمرے میں داخل ہوئی وہ شاید شاور لے رہا ہے پانی کی آتی آواز سے اسنے اندازہ لگایا کمرے میں ہر چیز بہت ترتیب سے رکھی ہوئی تھی وہ کمرے کا جائزہ لینے لگی پانی کی آواز آنا بند ہو گئی تھی عائشہ جلدی کمرے سے جانے کے لیے پلٹی اس کی نظر ایک جگہ  پر رک گئی یہ تصویر عائشہ اپنی تصویر دیکھ سب بھول گئی اسکی اور رحمان کی تصویر دونوں ایک دوسرے کی طرف دیکھ کر ہنس رہے تھے جو کالج کے ایک فنکشن پر لی گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم یہاں کیا کررہی ہو رحمان واشروم سے باہر آیا تو عائشہ تصویر میں کھوئی تھی جو رحمان کی آواز پر چونکی وہ رحمان کی طرف دیکھ نظریں جھکا گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
و و وہ آ آنٹی آپکو بُلا رہی تھی رحمان کو اسکا یوں جھجک کر بات کرنا ذرہ اچھا نہیں لگا تھا ۔۔۔۔۔۔۔اوکے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ  نے باہر جانے کو اپنے قدم اُاٹھائے رحمان نے اسکی کلائی سے پکڑا اور کچھ نہیں کہو گی؟
اسکی انکھوں سے دو موتی گِرے  " سوری فور ایوری تِھیگ"
رحمان  اسکے سامنے آکر کھڑا ہو گیا بس؟
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوپر دیکھو میری طرف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسنے اپنی بھیگی پلکیں اُٹھا کر رحمان کی طرف دیکھا آئندہ سوری نہیں بولنا جس تکلیف سے تم گزر کر آئی ہو وہ میری تکلیف سے کیی زیادہ تھی عاشی مجھے تم پر نہیں خود پر غصہ آنا چاہئے میں نے کیوں نہیں تمہاری حفاظت کی  کیوں تمہارے حال پر چھوڑ دیا تھا رحمان کے آنسوں عائشہ کے ہاتھ پر گِرے تو اُسنے حیرانگی سے رحمان کی طرف دیکھا  میں نے سب کو دکھی کیا ماما بابا بھائی آپکو مجھے تو سزا ملنی تھی عائشہ کے رونے میں تیزی آگئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مانی میں اُسکے ساتھ بھاگی نہیں تھی ہم بس نکاح کرنے والے تھے شششششششش بس چُپ مجھے کچھ نہیں سُننا لیکن میں بتانا چاہتی ہوں ششششش کہا نہ بس چُپ رحمان نے اپنی انگلیوں سے اُسکے آنسوں صاف کیے   چلو نیچے میں آتا ہوں تمہاری فیورٹ جگہ پر چلے گے اوکے

حسن جانتا تھا حاتم غصّے میں ہو گا اسلیے وہ ابھی ملنا نہیں چاہتا تھا اسنے پہلے ہی چوکیدار کو سمجھا دیا تھا لیکن کب تک وہ بار بار کال کر رہا تھا آخر حسن نے ملنے کا فیصلہ کر ہی لیا وہ حاتم کے گھر کی  طرف روانہ ہوا تھا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حسن گھر  میں داخل ہوا تو روبینہ سامنے بیٹھی تھی کیسی ہے آنٹی ۔۔۔۔؟
اللہ کا شکر بیٹا آپ ٹھیک ہو؟
جی حاتم؟
آپ بیٹھو میں پیغام بھیجتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میڈ نے جاکر حاتم کو حسن کا بتایا تو حاتم غصّے سے لال ہو گیا اسنے جلدی سے اپنی الماری کھولی ریوالور نکالی اور ہال کی طرف بڑھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما ٹھیک ہے؟
جی آنٹی آپ نے کبھی چکر نہیں لگایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم نے ہال میں آتے ہی حسن پر ریوالور تانی حاتم بیٹا یہ کیا کررہے ہو ۔۔۔۔
حاتم اِسے نیچے کرو ہم بیٹھ کر بات کرتے ہیں ۔۔۔۔۔
نہیں تم نے کیا سوچا تھا مجھے پتہ نہیں چلے گا تمہاری ہمت کیسے ہوئی اسکے یار کے ساتھ مل کر تم نے میرے ساتھ گیم کھیلی ۔۔۔۔
حاتم وہ بھائی ہے اسکا یار نہیں اسکو نیچے کرو ۔۔۔۔۔۔۔
حاتم میں تمہارے آگے ہاتھ جوڑتی ہوں حسن نے اگے بڑھ کر حاتم سے ریوالور لینے کی کوشش کی لیکن حاتم بضد تھا ریوالور سے گولی نکل چکی تھی دونوں نے کھینچنا بند کردیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری
#حاتِم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  👇
#ازقلم سدرہ حسین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇
#قسط نمبر  16۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇
"ماما" ماما ماما حاتم اپنی ماں کی طرف لپکا  ماما اُٹھے پلیز ماما؟
روبینہ کے سینے پر گولی لگی تھی وہ خون میں لت پت اپنی آنکھیں بند کر چکی تھی
حسن وہی کھڑا  بے بس سا سب دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم اپنی ماں کو گود میں لیے چیخ رہا تھا کوئی ڈاکٹر کو فون کرو ماما اَٹھے پلیز ماما مجھے چھوڑ کر نہیں جائے میں آپکا بیٹا آپ کے بغیر کچھ نہیں ہوں ۔۔۔۔۔۔
حاتم کے باپ نے شروع سے کبھی اپنی بیوی بچے کو کچھ خاص اہمیت نہیں دی وہ پاکستان میں کم ہی رہتے تھے حاتم کا کوئی بہن بھائی نہیں تھا اسلیے وہ اپنی ماں کے ساتھ زیادہ اٹیچ تھا وہ جتنا بھی بُڑا انسان سہی لیکن ماں کے سامنے کبھی بدتمیزی سے بات نہیں کرتا تھا لیکن اج اسکا واحد سہارا بھی اس دنیا سے رخصت ہو گیا تھا جسکا ذمدار وہ خود تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حاتم اب کوئی فائدہ نہیں حسن نے ہوش میں آتے ہی روبینہ کا بازو پکڑ چیک کیا وہ جان گیا تھا روبینہ کی سانسیں رک چکی ہیں ۔۔۔۔۔

نہیں تم جھوٹ بول رہے ہو ماما انکھیں کھولے پلیز ماما ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رحمان گاڑی میں بیٹھا ہانیہ اور عائشہ کا ویٹ کر رہا تھا جو ماما کو ساتھ چلنے پر فورس کر رہی تھی آسیہ مان نہیں رہی تھی بچوں آپ لوگ جاو انجوائے کرو میں کیا کروں گی ماما پلیز ہمیں اچھا لگے گا بچوں میری طبعیت ٹھیک نہیں ۔۔۔۔۔
کیا ہوا طبعیت کو اپ نے بتایا نہیں  ہم بھی نہیں جا رہے پھر ۔۔۔۔۔
ارے نہیں میری جان ہم پھر کسی دن ڈنر پر چلے گے ۔۔۔۔۔۔
بہت کوششوں کے بعد بھی ہانیہ اور عائشہ ناکام ہی لوٹی دونوں نے آتے ہی گاڑی کے دونوں  بیک ڈور کھولے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو کِدھر میں ڈرائیور ہوں کیا؟
نہیں کیوں؟  ہانیہ نے سوال پر سوال کیا ۔۔۔۔۔۔
دونوں میں سے ایک اگے اکر بیٹھو ہانیہ بات سمجھتے ہی کھل کر مسکرائی رحمان نے اج پہلی بار اُسے خوش دیکھا اسکی گالوں پر پڑھتے ڈمپل اسکی خوبصورتی کو  اور بڑھاتے رحمان نے دل میں اپنی بہن کی خوشیوں کی دعا کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپی آپ آگے ہانیہ کے منہ میں ابھی آدھی بات تھی عائشہ فوراً پی پیچھے بیٹھی نہیں تم بیٹھ جاؤ اگے ۔۔۔۔
ہانیہ  نے آکر فرنٹ سیٹ سنبھالی۔۔۔۔۔۔۔۔
 گڈ گرل چلے؟
جی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ مسلسل گاڑی سے باہر نظریں جمائے بیٹھی تھی ہانیہ بھی خاموشی سے  اپنی ہاتھوں کی لکیروں کو دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوگیا ہے بھئی کچھ بولو کوئی بات کرو نہیں تو گھر واپس لے جاؤں گا
بھائی اپ بتائے نہ کچھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ بھی ٹھیک ہے میں اپکو کہہ رہا ہوں اور الٹا مجھ پر ہی ڈال دیا ۔۔۔
چلے بتائے ہم کہا جا رہے ہے؟
ہم عاشی کی فیورٹ جگہ پر جارہے ہے فوڈ سٹریٹ میں ایک بہت اچھا ائسکریم پوائنٹ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گڑیا آپ بتاو آپکی کی فیورٹ جگہ کون سی ہے؟
میری؟  میں کبھی کہی گئی ہی نہیں بابا کی بہت پہلے ہی ڈیتھ ہوگئی تھی بھائی تھے نہیں اور میری امّاں ہانیہ نے ایک گہری سانس لی وہ تو بہت بھولی تھی بات کرتے ہی ہانیہ رونے لگی ۔۔۔۔
یہ کیا بات ہوئی میں نے اُداس ہونے کے لیے تو نہیں کہا ہانیہ نے جلدی سے اپنے انسوں صاف کیے ۔۔۔۔۔۔۔

لیکن یہ انسان کے اپنے اختیار میں نہیں ہوتا ہمارے اپنوں سے دوری کی اذیت ہمارے اندر کہی نہ کہی ہمیشہ باقی رہتی ہے اُسکو ہم کبھی بیاں نہیں کر پاتے بس کبھی کھبی آنسوؤں کی شکل میں  اُسے بہا دیتے  ہے ۔

وہ آئسکریم پوائنٹ پہنچ چکے تھے ہانیہ کون سا فلیور کھاؤ گی ؟
رحمان نے گاڑی سے نکلتے ہوئے پوچھا۔۔۔
میرے بھائی جو بھی لے آئے میں کھا لوں گی ۔۔۔۔
چلو آپ دونوں بیٹھو میں میں لے کر اتا ہوں ۔۔۔۔
کیا رحمان کو ابھی بھی میرے فیورٹ فلیور کا یاد ہے جو مجھے پوچھا نہیں عائشہ  نے ٹیبل کی طرف جاتے ہوئے سوچا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لو جی اپنی اپنی آئسکریم جلدی سے شروع ہو جاؤ آئسکریم پر نظر پڑتے ہی عائشہ نے رحمان کی طرف دیکھا وہ عائشہ کی فیورٹ تھی۔۔۔
 یہ انسان مجھے شرمندگی کی کھائی میں دھکیلتا جارہا ہے میں نے کیوں وقت رہتے اس پر یقین نہیں کیا تھا ۔۔۔۔۔
ہیلو ستارا.....!
عائشہ اپنی سوچ میں گم تھی جب ایک بھاری مردانہ آواز اُسکے کانوں سے ٹکرائی عائشہ ایک سیکنڈ میں وہ آواز پہچان گئی تھی  اُسے اپنا سر اُٹھانا دنیا کا مشکل ترین کام لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ آدمی عائشہ پر جھکا تھوڑا ٹائم ہمیں بھی دے دو ۔۔۔۔۔
رحمان ایک جھٹکے میں اپنی جگہ سے کھڑا ہوا کون ہو تم پیچھے رہ کر بات کرو  ۔۔۔۔۔۔۔۔
 اس سے بھی قریب رہ چکے ہیں ہم تمہیں کیوں اتنا مسئلہ ہو رہا ہے مانا آج تمہارا ٹائم ہے تم نے پیسے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چُپ رحمان نے اُسکا گریبان پکڑا تمہاری زبان کھینچ لوں گا وہ تیز آواز میں بول رہا تھا لوگ دیکھنے لگے   تھے ۔۔۔۔۔
عائشہ کی آنکھوں سے آنسو بہہ رہے تھے ہانیہ نے اگے بڑھ کر عائشہ کو سہارا دیا  آپی پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حسن حاتم کے گھر پر ہی موجود تھا وہ مشکل وقت میں آسکے ساتھ رہنا چاہتا تھا جو بھی ہوا  لیکن وہ ہمیشہ سے دوست تھے حسن اس دوستی کو نبھانا چاہتا تھا جنازہ ہو چکا، تھا سب مہمان جارہے تھے حاتم اپنے روم میں آکر بیٹھ گیا حسن بھی اسکے پیچھے روم میں آیا تھا حاتم حسن کو دیکھ غصہ نہیں ہوا آج پہلی بار حاتم کو روتا دیکھا تھا حسن آکر حاتم کے ساتھ بیٹھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آس دن جب تم نے کہا ہانیہ کو کوٹھے پر چھوڑ آؤ  پہلی بار مجھے ڈر لگا تھا میں ڈرائیو کر رہا تھا پر میرے ہاتھ کانپ رہے تھے پھر بھی میں اُسے چھوڑ آیا وہاں حاتم آس دن جو میں نے رحمان کی آنکھوں میں دیکھا میرے اُس ڈر نے مجھے جھنجوڑ کر رکھ دیا مجھے احساس ہوا میرا یہ گناہ ہر گناہ پر بھاری ہے وہ میرے سامنے ہاتھ جوڑے اپنی بہن کی زندگی کی بھیک مانگ رہا تھا مجھ سے کوٹھے کا پتہ پوچھ رہا تھا
"حسن " حاتم کی آواز پر حسن خاموش ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں  نے جب پہلی بار ہانیہ کو دیکھا تھا مجھے لگا مجھے اُس سے محبت ہو گئی ہے لیکن اُسنے میری محبت کا سر اپنی نہ سے کُچل دیا میرے دل نے بھی اُس نہ کو گوارہ نہیں کیا میری انا کو للکارا تھا اُسنے ۔۔۔۔۔
تمہارے کہنے کا مطلب تم نے جو کیا وہ ٹھیک تھا؟
کل بات کرے گے حسن میرے سر میں درد ہو رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حسن وہاں سے اُٹھ گھر کے لیے روانہ ہوا

گھر آتے ہی رحمان کمرے میں چلا گیا کمرے میں جاتے ہی رحمان غصے سے ہر چیز زمین پر پھیک رہا تھا اسکی ہمت کیسے ہوئی اسکے کانوں میں بار بار وہی الفاظ گونج رہے تھے "اس سے بھی  قریب رہ چکے ہے ہم"  وہ اپنے کانوں پر ہاتھ رکھے زمین پر ڈھیر ہوا تھا  ۔۔۔۔۔
عائشہ نے کمرے میں آتے ہی دروازہ لاک کرلیا تھا وہ زمین پر بیٹھی بیڈ سے ٹیک لگائے پھوٹ پھوٹ کر رو رہی تھی اپنے گھٹنوں میں منہ دیئے وہ کچھ بھی سوچنا نہیں چاہ رہی تھی  ۔۔۔
آپی دروازہ کھولے پلیز آپی دروازہ کھولے ہانیہ کے بہت نوک کرنے کے بعد بھی آس نے دروازہ نہیں کھولا ۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے آپی کو ٹائم دینا چاہئے ہانیہ اپنے آنسوں صاف کرتی ہال میں آکر صوفہ پر لیٹ گئی تھی  آسیہ بھی سو چکی تھی ہانیہ جب سے اس گھر میں آئی تھی ابھی تک پورا گھر نہیں دیکھا تھا ہانیہ  وہی صوفہ پر اپنے اوپر دوپٹہ پھیلائے ہی سو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات 2 کے قریب رحمان کو پیاس محسوس ہوئی وہ زمین سے اُٹھا پانی پینے لگا لیکن جگ خالی تھا وہ پانی پینے نیچے آیا سیڑھیوں سے نیچے آتے ہی اسکی نظر ہانیہ پر پڑی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
"ہانیہ " ہانیہ  ؟
جی  بھائی ہانیہ جلدی سے اُٹھ کر بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گڑیا یہاں کیوں سو رہی ہو؟
آپی نے دروازہ لاک کر دیا تھا مجھے لگا اُن کو اکیلے رہنا ہے تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان کی حالت بھی ہانیہ کو عائشہ سے مختلف نہیں لگی لال انکھیں سوجی ہوئی سب بتا رہی تھی
"بھائی"
جی بولو........
آپ ٹھیک ہو؟
بلکل ٹھیک ہوں بھائی کی جان اپکا بھائی کمزور نہیں ہے لیکن کبھی کبھی تکلیف کی انتہاء پر انسان ٹوٹ جاتا ہے پر میری بہن نے پریشان نہیں ہونا اللہ نے چاہا تو اپکا بھائی سب ٹھیک کردے گا اوکے؟
جی ۔۔۔۔اپ ماما کے روم میں چلی جاتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے ذہین میں نہیں آیا بھائی ہانیہ نے مسکرا کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔چلو میں چھوڑ آؤں اُٹھو شاباش ۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان ہانیہ کو آسیہ کے روم میں چھوڑ آیا کیچن میں اتے ہی خود پانی پیا کچھ یاد انے پر کیچن سے عائشہ کے روم کی چابی لی اور اسکے روم کی طرف بڑھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دروازہ کھلنے کی آواز سے وہ خود میں سمٹ گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری

…حاتم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ازقلم- سدرہ حسین۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسط نمبر  18……………
آسیہ کا دل اپنے بیٹے کےلیے پریشان ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ اُن کا دل نہیں دکھانا چاہتی تھی ماما آپ ناراض تو نہیں؟
نہیں بیٹا آپکی مرضی بہت اہمیت رکھتی ہے لیکن جواب ہاں میں ہوتا تو مجھے بہت خوشی ہوتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیجئیے چائے آگئی گرما گرم ہانیہ نے کمرے میں آتے ہی تیز آواز میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
تینوں نے اپنا اپنا کپ اُٹھایا۔۔۔۔۔۔
"ہانیہ " بیٹا آپکو ڈاکٹر کے پاس جانا ہے اج ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں ماما میں بلکل ٹھیک ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اللہ آپکو صحت دے بیٹا نارمل چیک اپ کے لیے جانا ہے آج 12 بجے عائشہ کے ساتھ چلے جانا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما اپ لے جائیے گا میں ناشتے کے بعد سونا چاہتی ہوں ۔۔۔۔
کیوں؟  طبعیت ٹھیک ہے؟
جی جی بلکل ٹھیک آج رات ٹھیک سے سو نہیں پائی تو ۔۔۔۔۔۔۔۔عائشہ رات والی بات بتا کر اُن کو پریشان نہیں کرنا چاہتی تھی عائشہ اور آسیہ اپنی باتوں میں مصروف جب آسیہ کی ہانیہ پر نظر پڑی تھوڑی دیر پہلے والی رونق ہانیہ کے چہرے سے غیب تھی سفید پڑتا رنگ اُسکی پریشانی بیان کر رہا تھا آسیہ نے اگے بڑھ کر ہانیہ کے ماتھے پر پیار کیا میری بیٹی بہت بہادر ہے یہ ٹائم بھی گزر جائے گا پریشان نہیں ہونا ہانیہ بھیگی انکھوں سے مسکرائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حسن کافی دیر سے حاتم کو کال کر رہا تھا لیکن دوسری طرف سے کوئی جواب نہیں مل رہا تھا۔۔۔۔۔
 مجھے خود جا، کر حاتم کو دیکھنا چاہئے مجھے رات وہی ٹھہرنا چاہیے تھا وہ خود سے باتیں کرتا حاتم کی طرف جانے کی تیاری کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم کب سے ماں کے کمرے میں بیٹھا رو رہا تھا ماما آپکا بیٹا بہت بُرا ہے بہت  بُرا اپنے ہاتھوں سے آپ کو مار دیا خود کو برباد کردیا کون ہے میرا اس دنیا میں کس کے کندھے پر سر رکھ کر روؤں ماما کیوں چلی گئی آپ کیا یہ میری سزا؟  سزا کس بات کی سزا ؟
"سزا " کا لفظ زہین میں اتے ہی اُسے ہانیہ کا روتا چہرہ یاد آیا ماما آپ چاہتی تھی میں ہانیہ کو گھر لے آؤں میں اُسے لے اؤں گا پلیز آپ واپس اجاو میں آپ کی ہر بات مانوں گا ماما پلیز ۔۔۔۔۔
حاتم!  کیا ہو گیا یار یہ کیا حالت بنائی ہوئی ہے تم نے اپنی حسن اُسے اس حالت میں دیکھ پریشان ہوا حسن میں نے اپنی ماما کو خود ان ہاتھوں سے مار دیا ہے حاتم نے اپنے ہاتھ حسن کی طرف بڑھائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ سب ایک حادثہ تھا تم نے جان بوجھ کر تو یہ سب نہیں کیا نہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُٹھو یہاں سے چلو فریش ہو کر اؤ ہم ساتھ ناشتہ کرتے ہیں ۔۔
حسن؟
بول یار میں سُن رہا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہانیہ مجھے معاف کردے گی؟
حسن کو حاتم کے منہ سے معافی کا لفظ سُن کر جھٹکا لگا تو معافی مانگے گا ہانیہ سے؟
ہاں ماما چاہتی تھی میں اُسے گھر لے اؤں تو میں اُسے گھر لانا چاہتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
اور وہ آجائے گی؟
ہاں میں معافی مانگ لوں گا ۔۔۔۔۔۔۔
تمہیں لگتا ہے جو تم نے کیا اس سب کے لیے معافی کا لفظ کافی ہے؟
آج آنٹی اس دنیا سے چلی گی تو تم کتنی تکلیف میں ہو تم سوچو اسکی ماں مر گئی تھی وہ اس دکھ سے باہر نہیں آئی تھی کہ تم نے اُسے کوٹھے پر پہنچا دیا تھا اب کیسے سوچ سکتے ہو تم تو اس سے معافی کا حق بھی نہیں رکھتے ہو ۔۔۔۔
 کیا واقعی میں اپنی انا میں  ہر حد سے گزر گیا ہوں؟  وہ مجھے معاف نہیں کرے گی؟  ہمارے بچے کے لیے بھی نہیں؟  ذہین میں سو سوال لیے وہ اٹھ کر اپنے کمرے کی طرف بڑھ گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رحمان بیٹا ہم اُسے مجبور نہیں کر سکتے وہ شادی نہیں کرنا چاہتی رحمان نہ چاہتے ہوئے بھی مسکرایا تھا ماما مجھے اس کم عقل لڑکی سے یہی اُمید تھی پتہ نہیں کیوں مجھے لگ رہا تھا وہ یہی جواب دے گی اور شاید میں وجہ بھی جانتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا وجہ؟
کچھ نہیں ماما آپ جاؤ ہانیہ کو لے کر نہیں تو لیٹ ہو جائے گی میں اُسے منا لوں گا اپنے بیٹے پر بھروسہ رکھیے رحمان مسکراتا ہوا اپنی ماں کے گلے لگ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ کمرے میں سو رہی تھی جب اُسے اپنے کمرے میں کسی کی آہٹ محسوس ہوئی اُسنے اپنی انکھیں مسلتے ہوئے سامنے دیکھا رحمان کرسی رکھ عائشہ کے بلکل سامنے بیٹھ چکا تھا ۔۔۔۔۔۔
عائشہ کی پوری انکھیں کھل گئی تھی وہ جلدی سے اُٹھ بیٹھی ت تم یہاں؟
ہاں تم نے بُلایا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
میں نے؟  عائشہ حیران ہوئی ۔۔۔۔۔۔
ہاں تم جانتی تھی اگر نہ کرو گی میں تو ضرور اؤں گا تمھارے پاس تو ِانڈائریکٹ  تم نے ہی مجھے بُلایا ہے ۔۔۔۔۔۔
مانی پلیز مجھے اِس بارے میں بات نہیں کرنی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن مجھے تو کرنی ہے تمہیں مجھ پر یقین نہیں ہے؟
ایسا نہیں ہے میں خود سے زیادہ تم پر یقین کرتی ہوں مانی لیکن تم مجھ سے بہت بہتر لڑکی ریزرو کرتے ہو میں تمہارے لائق نہیں ہوں تمہیں زندگی بھر شرمندگی اُٹھانی پڑے گی میری وجہ سے میرا ماضی ہمیشہ میرے مستقبل پر حاوی رہے گا تم میرے ساتھ ایک اچھی زندگی نہیں گزار سکو گے عائشہ نے بولتے ہوئے رحمان کی طرف دیکھا جو بہت غور سے عائشہ کی طرف دیکھ رہا تھا عائشہ چُپ ہو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
بس؟  بول لیا؟  یا کچھ اور بھی بولنا چاہتی ہو؟
عائشہ اپنا سر جھکا گئی نہیں بس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شادی تو میں تم سے ہی کروں گا یہ بات ذہین میں بیٹھا لو عاشی اور یہ فضول باتیں سوچنا  بھی  بند کرو ہم ایک دوسرے کے ساتھ ہو گے تو زندگی بہت خوبصورت ہو گی آسان ہو گی میری نظر میں تم سے  بہتر لڑکی اس دنیا میں کوئی نہیں ہو سکتی ایک اور بات میں تمہارے گھر تمہیں شادی کے بعد ہی لے کر جاؤں گا اب سوچ کر ماما کو جواب دے دینا اور ایک بات رحمان جاتے جاتے پلٹا جواب ہاں میں ہونا چاہئے۔۔۔۔
مانی؟  رحمان دروازے کے پاس پہنچا ہی تھا جب عاشی کی بھیگی آواز نے اس کے قدم وہی روک دیئے ۔۔۔۔۔۔۔
پلیز میں تمہارا  اچھا چاہتی ہوں میری بات مان لو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ہم دونوں کا اچھا چاہتا ہوں تم میری بات مان لو کہتے ہی وہ رُکا نہیں چلا گیا تھا۔۔۔۔۔۔
رحمان اپنا موبائل ٹیبل پر بھول گیا تھا اس پر مسلسل اتی کال عائشہ کو پریشان کر رہی تھی کون  ہے جس کو ذرا صبر نہیں ہے وہ موبائل ہاتھ میں لیے باہر ائی رحمان کچن میں چائے بنا رہا تھا عائشہ اُسے دیکھتی ہوئی کچن کی طرف ائی کال آرہی ہے تمہاری چائے کا مجھے بول دیتے میں بنا دیتی وہ رحمان کو چولہے کے سامنے سے ہٹاتے ہوئے بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو ۔۔۔
کیسے ہو میں کب سے فون کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
میں ٹھیک ہوں کیا ہوا خیریت؟
حاتم کی والدہ کا انتقال ہو گیا ہے رحمان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ تم کیا کہہ رہے ہو حسن کب؟ کیسے ؟
دو دن پہلے یار پریشانی میں تمہارا خیال ہی نہیں ایا کچھ حالات ایسے ہو گئے تھے تم ملو پھر ساری بات بتاتا ہوں ایک ضروری بات بھی کرنی ہے اسلیے ہی فون کیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے شام میں ملتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اللہ حافظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا؟  رحمان کو پریشان دیکھ عائشہ نے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم کی ماما کی ڈیتھ ہو گئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ اللہ کے فیصلے ہے ہم انسان اس میں بے بس ہے تم پریشان نہیں ہو عائشہ نے رحمان کی پریشانی کم کرنا چاہئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس ایسے ہی زندگی کی ہر پریشانی مشکل میں میرے ساتھ کھڑی رہنا عاشی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُسنے بہت اُمید سے عائشہ کی طرف دیکھا وہ بغیر کوئی جواب دیئے کچن سے باہر آگئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارے ماما اپ اگئی کچن سے نکلتے ہی عاشی کی نظر آسیہ پر پڑی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی بیٹا آسیہ نے صوفے پر بیٹھتے ہوئے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما ہانیہ کہاں ہے؟
وہ کمرے میں چلی گئی ہے جاؤ بیٹا اسکے پاس وہ پریشان ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں ماما سب ٹھیک ہے؟  ڈاکٹر نے کیا کہا؟
سب ٹھیک ہے۔۔۔۔۔لیکن آج ہسپتال میں ہانیہ نے بچے کے والد کے نام کی جگہ حاتم کا نام لکھوانے سے منع کردیا ۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک کیا ماما وہ اس لائق ہی نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن بیٹا ۔۔۔۔۔۔
ماما اپ پریشان نہیں ہو میں اُسے دیکھتی ہوں آپ پانی پیے گی؟
نہیں میں اب ارام کروں گی آپ ہانیہ کے پاس جاؤ ۔۔۔۔۔۔جی ماما۔۔۔

لاکھ ناراضگی سہی لیکن تمہیں مجھے بتانا چاہئے تھا حسن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یار کیا بتاتا تم نہیں جانتے قسمت نے کیا کھیل کھیلا ہے حاتم کے ساتھ حسن نے اس دن ہونے والا تمام ماجرہ رحمان کو سنایا ۔۔۔۔۔۔
اہ  خدایا یہ کیا ہو گیا ہے حاتم کیسا ہے وہ تو اپنی ماں کے ساتھ بہت اٹیچ تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں یار وہ   ٹوٹ گیا ہے حالات نے اُسے بدل دیا ہے وہ ہانیہ سے معافی مانگنا چاہتا ہے ۔۔۔۔
یہ آج بول دیا ہے دوبارہ مت بولنا حسن انسانیت کے ناتے مجھے ہمدردی ہے حاتم سے لیکن جو اُسنے کیا ہے معافی کی کوئی گنجائش نہیں نکلتی اُسکے زہین سے بھی ایسے خیالات نکال دینا ۔۔۔۔۔۔۔۔
یار تم بچے کا سوچو وہ اس دنیا میں ائے گا تو باپ کی بھی ضرورت ہوگی ۔۔۔۔
حسن بچے کو باپ کی ضرورت ہوتی ہے درندے کی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری
حاتِم۔۔۔۔۔۔۔۔  👇👇👇👇👇👇👇👇
از-قلم  سدرہ حسین ۔۔۔۔۔۔۔
قسط نمبر 19…….

آئندہ ہم یہ بات نہ ہی کریں تو بہتر ۔۔۔۔۔۔
یار سوچ سمجھ تو لو رحمان اتنا جذباتی کیوں ہو رہے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان ایک جھٹکے سے کھڑا ہو گیا تھا دیکھو حسن میرے صبر کو اتنا نہ ہی آزماؤ تو بہتر ہے میں تمہیں بھی بس اسلیے برداشت کر رہا ہوں کیوں کہ تمہاری وجہ سے میری بہن خیریت سے گھر آگئی تھی ورنہ تم بھی اسکے گناہ میں برابر کے شریک ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بات ختم کرتے ہی رحمان رُکا نہیں ۔۔۔۔۔۔۔
بات تو سُنو حسن کا پکارنا بے مقصد تھا رحمان جا چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا بات ہے  عائشہ یہاں اکیلی کیوں بیٹھی ہو ۔۔۔۔۔۔۔
کچھ نہیں ماما ہانیہ سو گئی تھی میں اکیلی بور ہو رہی تھی سوچا ہال میں بیٹھ کر ٹی وی دیکھ لوں ۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ؟
جی ماما۔۔۔۔۔۔
بیٹا کیا سوچا جو بات صبح کی تھی میں نے ۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما جیسا آپ کو بہتر لگتا ہے ۔۔۔۔۔۔
نہیں بیٹا اپ اپنا فیصلہ کرنے میں خود مختار ہو میری جان کوئی پریشر نہیں ماما میں رحمان کو اور دکھی نہیں کر سکتی وہ میرے محسن ہے جو احسان اسنے مجھ پر کیا ہے وہ میری جان مانگنے کا بھی حق رکھتے ہے وہ ۔۔۔۔۔۔۔
اسکا مطلب اپ رحمان سے محبت نہیں کرتی؟
ماما میں اُسکی بہت عزت کرتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ میرے سوال کا جواب نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ خاموش تھی اور اُسکی یہ خاموشی کسی کو بہت بُری لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان سب سُن چکا تھا اس بات کا علم عائشہ کو بھی ہو گیا تھا وہ اُسے دروازے میں دیکھ چکی تھی رحمان غصے سے سیڑھیاں چڑھتا ہوا اُسکی انکھوں سے اوجھل ہو گیا تھا عائشہ کا دل ڈوب رہا تھا میں کیوں اِس انسان کا دل دُکھا جاتی ہوں میں اپ سے بہت محبت کرتی ہوں اپکی محبت نے میرے دل میں اپنی جگہ اُسی دن بنا لی  جب اپ نے مجھے کوٹھے پر دیکھتے ہی اک پل کے لیے بھی سوچا نہیں تھا بلکہ ایک پل بھی ضائع نہیں کیا تھا مجھے وہاں سے نکالنے میں رحمان میں چاہتی ہوں اپ میری محبت کو خود محسوس کرے اس محبت کو کسی احسان کا بدلہ نہیں سمجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کیا ہوا عائشہ بتاو پھر اگلے جمعہ کو اپکا نکاح کردے رحمان کے دادا جان کو بھی خبر کرنی ہوگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی؟  جی ماما ۔۔۔۔۔
کہاں ہے دادا جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اٹلی اپنی بیٹی مطلب رحمان کی پھوپھو سے ملنے گئے ہے تم دونوں جس دن سے ائی ہو حالات ہی ایسے تھے میرے ذہین میں  نہیں رہا اپکو بتانا ۔۔۔۔۔۔۔
جی ماما ٹھیک ہے جیسا اپکو بہتر لگے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ پریشان سی اُٹھ کر اپنے کمرے کی طرف بڑھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہانیہ اُٹھ جاؤ ڈنر کا ٹائم ہو رہا ہے ۔۔۔۔
آپی تھوڑا سا، اور سونے دیں پلیز وہ منہ تک کمبل کھینچتی ہوئی بولی ۔۔۔۔
یہ آخری دفعہ ہے اب نہیں اُٹھاؤں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے جلدی سے منہ پر سے کمبل ہٹایا آپی تھوڑا سا سونے دیتی تو کیا جاتا آپ کا؟
اور تم بتاؤ جہاں زیادہ سو کر کچھ نہیں بنا تھوڑی دیر میں کیا ہو جاتا؟
یہ بھی ٹھیک ہے چلے اُٹھ گئی اب میں ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ؟
 جی اسنے اپنے بال باندھتے ہوئے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں مانی سے شادی کر رہی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا؟  ہانیہ ایک دم سے اُٹھ عائشہ کے سامنے آکر بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔
مانی شادی کرنا چاہتے ہے میں نے انکار کیا لیکن وہ پھر بھی کرنا چاہتے ہے میں اُسے اب کوئی دکھ نہیں دینا چاہتی ۔۔۔۔۔
آپی انکار کیوں آپ بھائی کو پسند نہیں کرتی؟
عائشہ کے انکھوں سے دو موتی گِرے تھا ۔۔۔۔۔۔۔
محبت کرتی ہوں ہانیہ بہت محبت اب دور بھی نہیں رہ سکتی اُس سے لیکن.......
لیکن کیا آپی؟
ہانیہ خدا جانتا ہے مجھے رحمان کی محبت پر کوئی شک نہیں  لیکن وہ ہے تو مرد اتنے سالوں بعد اپنی محبت کو دیکھ کر اُسکی محبت نے جوش مارا ہو لیکن مرد  تھک جاتے ہے ہانیہ جو اُس دن ائسکریم پوائنٹ میں ہوا اگر وہ زندگی کی روٹین بن گئی تو مانی ان حالات سے اُکتا  جائے گا اور اگر اس نے مجھے چھوڑ دیا تو؟
بات کرتے کرتے عائشہ رو دی تھی ۔۔۔۔۔۔
آپی ہانیہ نے اُسے گلے لگایا آپی میری زندگی میں حاتم آنے والا پہلا مرد تھا جس نے مجھے بے اعتباری دکھ ذلت ورسوائی کے کچھ نہیں دیا اگر میری زندگی میں رحمان بھائی نہیں آتے تو شاید میں کبھی مرد پر اعتبار نہیں کر پاتی میں آپکو پکا بتا سکتی ہو بھائی آپکو بہت خوش رکھے گے آپ پریشان نہیں ہو آنے والا وقت بہت خوبصورت ہو گا ہانیہ نے اُسے خود سے الگ کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ چاروں کھانا کھانے میں مصروف تھے رحمان بہت خاموشی سا کھانا کھا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے اپکے دادا جان کو پوچھ لیا ہے رحمان بیٹا وہ نیکسٹ جمعہ سے پہلے آجائے گے اور انشاءاللہ جمعہ کو ہی آپ دونوں کا نکاح کردیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔رحمان کے اتنے چھوٹے سے جواب نے عائشہ کو اور پریشان کیا ۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ بیٹا اب آپ دونوں تیاری شروع کردو دن بھی کم ہے  تم رحمان کی اکلوتی بہن ہو بغیر کسی جھجھک کے تیاری کرنی ہے  اپنے سارے ارمان پورے کرنا ۔۔۔۔۔۔
جی ماما ۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ اپ نے بھی کوئی کسر نہیں چھوڑنی کھلا خرچ کروانا رحمان کا۔۔۔۔۔ شادی کے جوڑے کا کلر بھی سوچ لینا ۔۔۔۔۔۔
جی ماما عائشہ نے رحمان کی طرف دیکھا جو کھانا کھانے میں مصروف تھا جیسے اُسے کوئی دلچسپی ہی نہ ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ بات آسیہ نے بھی نوٹ کی  ہانیہ اور عائشہ کھانا کھاتے ہی باہر لان میں چلی گئی رحمان بھی کھانا کھاتے ہی اٹھنے والا تھا جب آسیہ کی اواز پر وہی بیٹھ گیا ۔۔۔۔
تم خوش نہیں؟
خوش ہوں ماما ۔۔۔۔۔۔۔
میں تمہاری ماں ہوں بیٹا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم ہانیہ کو اپنی زندگی میں شامل کرنا چاہتا ہے ……………..
پھر تم نے کیا جواب دیا؟
ماما میں نے کہا ایسا خیال بھی ذہین میں نہ لائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کا بھی یہی جواب ہو گا لیکن یہ فیصلہ ہمیں ہانیہ پر چھوڑنا چاہیے بیٹا آسیہ نے اپنا ہاتھ بڑھا کر رحمان کے ہاتھ پر رکھا ۔۔      ۔
جی ماما ۔۔۔۔۔تو آپ بات کر کے دیکھ لیں پھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے میں کل ہی بات کروں گی اُس سے تم فکر نہیں کرو شادی کی تیاری کرو بس میں بہت بے صبری سے انتطار کررہی ہوں تمہیں دولہا بنا دیکھوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ماما رحمان اپنے کمرے کی طرف بڑھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپی کتنے پیارے لگ رہے ہیں تارے ہانیہ نے آسمان کی طرف دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔
بہت پیارے ہانیہ تم نے کیا سوچا ہے؟
کس بارے میں؟
اپنی لائف کے بارے میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈلیوری  کے بعد اپنی سٹڈی مکمل کروں گی پھر جاب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور شادی؟
کیا ہو گیا آپی آپکو ہانیہ ایک جھٹکے سے سیدھی ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے کوئی انوکھی بات تو نہیں کی اتنی لمبی زندگی اکیلے کیسے گزارو گی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اکیلی کیوں بھائی ہے آپ ہے ماما اور پھر میرا بے بی بھی ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔
میں اکیلی تو نہیں۔۔۔۔
 آپی چائے پینے کو دل کر رہا ہے ہانیہ نے بات ختم کرنی چاہی عائشہ سمجھ گئ تھی ۔۔۔۔
اچھا جی تم یہی بیٹھو میں بنا کر لاتی ہوں وہ اٹھ کر کچن کی طرف بڑھی راستے میں رحمان سے ٹکراتے ٹکراتے بچی سوری چائے پیئو گے میں ہانیہ اور اپنے لیے بنانے جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں تھنکیو رحمان بے رخی سے کہتا ہوا باہر نکل گیا عائشہ وہی کھڑی اُسے جاتا دیکھتی رہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارے ہانیہ اپ یہاں؟
جی آپی چائے بنانے گئی ہے ہم دونوں یہاں بیٹھی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان باہر جانے والا تھا ہانیہ کو لان میں دیکھ وہی بیٹھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
طعبیت کیسی ہے؟
بلکل ٹھیک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اللہ کا شکر ہے اللہ میری بہن کو ہمیشہ خوش رکھے رحمان نے اپنا ہاتھ ہانیہ کے سر پر رکھا ۔۔۔۔۔.۔۔۔
تھیکیو بھائی میں اج بہت خوش ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی خاص وجہ؟
جی بلکل اپ کی اور آپی کی شادی جو فیکس ہوگئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کو خوش دیکھ رحمان نے اپنا ارادہ ملتوی کردیا وہ حاتم کی بات کر کے ہانیہ کو اداس نہیں کرنا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ نے ٹرے لا کر ٹیبل پر رکھی جس میں تین کپ تھے اسنے رحمان کو یہاں بیٹھتے دیکھ لیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔       
رحمان جانے کے لیے اُٹھ کھڑا ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مانی تمہارے لیے چائے لائی تھی میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے طلب نہیں  وہ کہتے ہی وہاں سے چل دیا رحمان نے بہت مشکل اپنی ہنسی کنڑول کی اُسکے برعکس عائشہ کی انکھیں نم ہوئی تھی خود کو سمبھالتی ہوئی کرسی پر بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
آپی بھائی کو کیا ہوا؟
کچھ نہیں تم چائے پیئو بہت مزے کی بنی ہے ۔۔۔۔
ہاہا یہ تو میں پی کر بتاؤں گی ہانیہ نے مسکراتے ہوئے چائے کا کپ اپنے ہونٹوں کو لگایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ؟
جی آپی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہیں کبھی کسی نے کہا نہیں تم ہنستی ہوئی بہت پیاری لگتی ہو تمہارے یہ ڈمپل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کو رخسار اور مریم کی یاد آئی۔۔۔۔ کہا ہے رخسار بہت کہتی تھی ہانیہ مریم کا نام نہیں لینا چاہتی تھی شاید اُسے یاد بھی نہیں کرنا چاہتی تھی اور یہ بات مریم بھی اچھے سے جانتی تھی اسلیے اُس نے بھی کبھی رابطہ کرنے کی کوشش نہیں کی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہا کھو گئی؟
کہی نہیں آپی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم دونوں یہاں بیٹھی ہو میں پورے گھر میں ڈھونڈ ائی ہوں آسیہ نے آتے ہی دونوں کو متواجہ کیا ۔۔۔۔۔
رات ہو رہی اندر اجاؤ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں ماما آپ آجاؤ چائے بھی ہے یہاں اجائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آسیہ نے بھی اتے ہی اپنی جگہ بنائی میں تم دونوں کو کہنے آئی تھی صبح سے شاپنگ شروع کردو دو تین دن میں رحمان کی پھوپھو اور دادا بھی اجائے گے پھر اُن کو، بھی تائم دینا ہو گا ۔۔۔۔۔
جی  ماما اپ ٹینشن نہیں لے آپ دیکھنا میں بہت شاپنگ کرنے والی ہوں آپی آپ نے  گرین کالر کا لہنگا لینا ہے جس پر گولدن کام ہو اور بھائی گولڈن شیروانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کتنے پیارے لگو گے اپ دونوں وہ کافی تائم وہاں بیٹھ کر پلینگ کرتے رہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حاتم کب سے لیٹا چھت کو گھور رہا تھا، ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کافی سوچنے کے بعد اُسنے حسن کو کال ملائی دوسری بیل پر کال پک کر لی گئی تھی ۔۔۔۔۔۔
ہوئی بات؟
ہوئی تھی بات یار لیکن ۔۔۔۔۔۔۔
کیا لیکن؟
یار  وہ نہیں مانا ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ کون ہوتا ہے منا کرنے والا وہ میری بیوی ہے میں چاہوں تو ابھی لے اؤں اُسے کوئی مجھے روک نہیں سکتا ۔۔۔۔۔۔۔
حاتم تم پھر جلد بازی کر رہے ہو ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے یار نہیں کرتا اب میری ایک ملاقات کروا دو بس میں خود راضی کر لوں گا اُسے ۔۔۔۔۔۔۔
کچھ کرتا ہوں یار ٹائم دو مجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری
حاتِم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇👇👇👇👇👇
از-قلم. سدرہ حسین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسط نمبر  20 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حسن بہت دیر سے سوچ رہا تھا لیکن کسی نتیجے پر نہیں پہنچا ۔۔۔۔۔۔
تھک ہار کر اُس نے رحمان کو کال ملائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کافی کالز کرنے کے بعد بھی کوئی جواب نہیں ملا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان سو چکا تھا حسن نے بھی موبائل سائیڈ ٹیبل پر رکھا اور سونے کی تیاری کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رحمان کے گھر شادی کی تیاریاں اپنے عروج پر تھی تین دن سے آسیہ ہانیہ اور عائشہ شاپنگ پر جارہی تھی پھر بھی  ابھی کافی لمبی لسٹ باقی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما میرے پاؤں دیکھے کتنی سوجن ہوگئی ہے آسیہ جلدی سے اُٹھ ہانیہ کے پاس آئی ہاں بیٹا یہ تو واقعی ۔۔۔۔۔
لیکن پریشان نہیں ہو ایسی حالت میں ہو جاتا ہے تھکاوٹ سے۔۔۔۔۔
 گرم پانی میں نمک ڈال کر اس میں اپنے پاؤں کو 15 منٹ کے لیے رکھو بلکل ٹھیک ہو جائے گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما میں پانی گرم کر کے لاتی ہوں عائشہ بھی جلدی سے اُٹھ کچن میں گئی۔۔۔۔۔۔۔۔
بس اپ گھر پر ارام کرو  کہی نہیں جانا جو کچھ رہ گیا ہے میں اور عائشہ دیکھ لے گے اوکے؟
جی ماما ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رحمان شاور لے کر نکلا تو موبائل پر مسلسل بیل ہورہی تھی اپنے بالوں کو تولیے سے صاف کرتا ہوا وہ موبائل کی طرف بڑھا ۔۔۔۔۔۔۔
حسن؟  رحمان نے کال کٹ کردی وہ کافی دنوں سے حسن کو اگنور کر رہا تھا وہ جانتا تھا اسنے کیا بات کرنی ہے گھر میں شادی کا ماحول تھا وہ ہانیہ کو پریشان نہیں کرنا چاہتا تھا وہ موبائل کو وہی رکھ اپنی شرٹ پہننے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حسن حاتم کی بار بار کال سے پریشان ہو گیا تھا اب وہ آمنے سامنے بات کرنا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
حسن گاڑی نکال حاتم کے گھر کی طرف بڑھا میں اج حاتم کو سیدھا سیدھا جواب دے دوں گا اُدھر رحمان میری بات سُننے کو تیار نہیں اِدھر حاتم صبر نہیں کر رہا پتہ نہیں اتنی محبت کہاں سے جاگ گئی یا یہ بھی کوئی چال؟
حسن کے دماغ نے ایک نئی سوچ کو جنم دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گاڑی حاتم کے دروازے کے سامنے رکی ہارن دے رہی تھی چوکیدار نے گیٹ کھولا حسن گاڑی اندر کھڑی کرتے ہیں حاتم کے کمرے کی طرف بڑھا جہاں حاتم بے ہوش سا زمین پر پڑا تھا پاس پڑی سریج اور سگریٹ بتا رہے تھے حاتم کافی نشہ کر چکا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم؟  حاتم اُٹھو انکھیں کھولو حاتم میں حسن انکھیں کھول یار۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 کافی کوشش کے بعد بھی حاتم نے کوئی حرکت نہیں کی حسن نے ملازم کی مدد سے حاتم کو بیڈ پر لٹیا اور ملازم کو وہاں کی صفائی کا کہہ کر خود ہال میں اکر بیٹھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کافی دیر انتطار کرنے کے بعد حسن نے دوبارہ کمرے کا رُخ کیا ۔۔۔۔۔۔
حاتم اُٹھو یار حسن نے پاس پڑا پانی کا جگ اُٹھایا اور سارا حاتم  پر انڈیل دیا حاتم نے جھٹ سے انکھیں کھولی اہہہہہہ یار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کب سے اُٹھا رہا ہوں کیوں کیا اتنا نشہ جب ہینڈل نہیں کر سکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔
یار لیکچر بند کر چائے مانگوا سر درد  سے پھٹ رہا ہے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم ایسی حرکتیں کرو گے تو ہانیہ کو واپس لانا اور مشکل ہو جائے گا یار تجھے میری بات کیوں سمجھ نہیں آرہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُسے واپس آنا ہو گا خود نہیں آئے گی تو زبردستی ہی سہی  ۔۔۔۔۔۔۔
پھر وہی باتیں شروع کردی تم نے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا یار میں فریش ہو لوں چائے کا بول ملازم کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مجھے ایک بات سچ سچ بتانا حاتم!
ہاں بول پہلے کون سا جھوٹ بولتا ہوں تیرے ساتھ اُسنے چائے کا سِپ لیتے ہوئے حسن کی دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔
تو ہانیہ کو اپنے پاس کیوں لانا چاہتا ہے؟
سچ بتاؤں؟
بلکل سچ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں کہ میں بہت اکیلا ہو گیا ہوں مجھے لگتا ہے میری بیوی کو میرے پاس ہونا چاہیئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مطلب یار مجھے لگا تو محبت میں پاگل ہورہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محبت؟  وہ ہوجائے گی یار جب گھر آئے گی میرے پاس رہے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مطلب تمہیں اُس سے محبت نہیں تھی ؟
پتہ نہیں حاتم نے کھوئے ہوئے انداز میں جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا بکواس ہے حسن کو آج واقعی غصہ ایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم نے سب برباد کردیا ہے حاتم تمہیں کچھ اندازہ ہے؟
ابھی تم کہہ رہے ہو محبت ہی نہیں تھی؟
یار اچھی لگی تھی مجھے حاتم شاید محبت کا اظہار کر کے خود کو کمزور مرد ثابت نہیں کرنا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اور یہ جو تم اج کل اتنا نشہ کرنے لگے ہو؟
یار تم کیا پولیس والو کی طرح سوال جواب کر رہے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم بیذار ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رحمان کے دادا اور پھوپھو بھی آ چکے تھے گھر میں ایک خوشگوار ماحول تھا ۔۔۔۔۔
اج مہندی تھی  عائشہ کے کہنے پر زیادہ لوگوں کو انوائٹ نہیں کیا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
 رحمان کافی دنوں سے عائشہ کو اگنور کر رہا تھا عائشہ بھی اس بات سے پریشان تھی بہت بار کوشش کی رحمان سے بات کرے لیکن ہر دفعہ ناکام ۔۔۔۔۔
پارلر والی کو گھر بُلایا گیا تھا. عائشہ نے  اج  ییلو کلر کی فراک پہنی جو پاؤں تک ارہی تھی پالر والی نے بھی عائشہ کو مہندی کے فنکشن کو ذہین میں رکھتے ہوئے سمپل سا تیار کیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
ارے آپی آپ بہت پیاری لگ رہی ہے ہانیہ نے کمرے میں آتے ہی کہا ۔۔۔۔۔۔۔
تمہارا اپنے بارے میں کیا خیال ہے ہانیہ نے وائٹ کالر کی فراک  پہنی تھی جس پر تھوڑا سا سیلور کام بڑی مہارت سے کیا گیا تھا  وہ بغیر میکاپ کے ہی پری لگ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم نے میکاپ نہیں کروایا؟
آپی مجھے نہیں پسند میکاپ کرنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ کیا بات ہوئی عائشہ جلدی سے اپنی جگہ  سے اُٹھی اور ہانیہ کو وہاں بیٹھا دیا چلو جلدی سے تیار کردو اسکو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپی  پلیز  ہانیہ کی التجا کسی کام نہیں آئی تھی پارلر والی نے ہانیہ کو بھی لائٹ سا میکاپ کردیا آپ بہت پیاری لگ رہی ہے اپ دلہن کی بہن ہے؟
"جی"۔۔۔اس سوال پر ہانیہ اور عائشہ ایک آواز میں بولی تھی دونوں مسکرا دی بہت قیمتی ہوتے یہ خوشی کے پل ہماری زندگی میں جو تھوڑی دیر کے لیے ہی سہی ہمیں اپنے غم بُھلا دیتے ہیں جیسے اب عائشہ اور ہانیہ اپنے سارے دکھ تکلیف بُھلا کر خوش ہورہی تھی ایک دوسرے کے لئے اپنوں کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دروازہ نوک ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔باجی آپ کو باہر لان میں بُلا رہے ہے ۔۔۔۔۔۔۔
اپ چلو ہم آرہے ہیں ہانیہ جلدی سے جواب دے کر کھڑی ہوئی چلے آپی اج تو بھائی اپ کو دیکھتے رہ جائے گے دونوں مسکراتی ہوئی لان کی طرف بڑھی لان. کو بہت اچھے سے سجایا گیا تھا عائشہ نے ایک نظر پورے لان کو دیکھا جلتی بجتی لائٹس لان کو اور خوبصورت بنا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلے آپی کیا ہوا؟  عائشہ کو ایک جگہ پر رُکتے دیکھ ہانیہ نے پکارا ۔۔۔۔۔۔
ھممم کچھ نہیں چلو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان جو اپنی ماں سے باتوں میں مصروف تھا عائشہ کو دیکھ اپنی نظریں نہیں ہٹا سکا کاش میں تمہیں بتا سکتا تم اس وقت کسی ریاست کی شہزادی سے کم نہیں لگ رہی عائشہ لیکن ابھی کچھ نہیں کہوں گا بہت ہرٹ کیا ہے تم نے ۔۔۔۔۔۔تمہیں بھی تو احساس ہونا چاہیے "رحمان" وہ اپنی سوچ میں گم تھا جب آسیہ نے آہستہ سے رحمان کو آواز دی ۔۔۔۔۔۔۔
یہاں بیٹھو بیٹا دونوں کو ساتھ بیٹھا کر مہندی کی رسم شروع کردی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 ہانیہ بار بار دائیں طرف لان میں لگے پودوں کی طرف دیکھ رہی تھی وہ کب سے کسی  کی  نظر خود پر محسوس کررہی تھی لیکن بہت غور کرنے کے بعد بھی وہ کسی کو وہاں دیکھ نہیں پائی اخر تھک ہار کر اپنا وہم سمجھ کر ہانیہ نے اپنی جگہ چینج کی ۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ مسلسل رحمان کو دیکھ رہی تھی لیکن رحمان جان بوجھ کر ہانیہ سے باتوں میں مصروف تھا پلیز رحمان نہیں کرے ایسا اب تو بات مان لی ہے میں نے اپکی پھر بھی عائشہ کی پلکیں  ایک پل میں بھیگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مہندی کا فنکشن اپنے اختتام کو پہنچا سب مہمان جا چکے تھے کیوں کہ بارات کا فنکشن میرج ہال میں رکھا گیا تھا جو مہمان گھر پر موجود تھے وہ بھی اپنے اپنے کمروں میں جا چکے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپی مجھے ایک بات بتانی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے کمرے میں اتے ہی اپنی بات شروع کی ۔۔۔۔۔۔۔۔
بولو عائشہ جو اپنی جیولری اتار رہی تھی مصروف سے انداز میں بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے لگا جیسے باہر لان میں کوئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ نے حیرانگی سے ہانیہ کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سچی آپی مجھے بار بار لگ رہا تھا جیسے کوئی چھپ کر دیکھ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں ہانیہ اتنے لوگ تھے باہر کون چھپ کر دیکھ سکتا ہے اپ کا وہم ہے چینج کرو اور سو جاؤ تھک گئی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ بھی اُٹھ کر چینچ کرنے چلی گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ نے ہانیہ کو تسلی تو دے دی تھی لیکن وہ خود اس بات سے پریشان ہوگئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔

ہانیہ اور عائشہ سونے کے لیے لیٹ گئی تھی ہانیہ تھکاوٹ کی وجہ سے جلد ہی نیند کی وادی میں اُتر گئی تھی لیکن عائشہ کا ذہین ابھی بھی لان میں کہی اٹکا تھا کون ہو سکتا ہے؟
حاتم؟
کیا واقعی حاتم ہو سکتا ہے اب کیوں ایسی حرکتیں کر رہا ہے
کیا وہ ہانیہ کی حالت سے بے خبر ہے مجھے رحمان کو بتانا چاہیے لیکن وہ تو ناراض ہے اب کیا کروں؟
وہم بھی تو ہو سکتا ہے عائشہ نے ایک نظر ہانیہ کی طرف دیکھا جو بہت سکون سے سو رہی تھی
 اے میرے پروردگار یہ سکون اب ہمیشہ ہانیہ کے چہرے پر برقرار رکھنا عائشہ بھی سوچتے سوچتے سو گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔

اج ایک نئی صبح کا آغاز ہوا تھا سب نماز کے بعد ہال میں جمع باتوں میں مصروف تھے
 عائشہ وہاں سے اُٹھ باہر لان میں اگئی تھی رات ہانیہ کی بتائی ہوئی جگہ کو بہت غور سے دیکھ رہی تھی کوئی یہاں بہت اسانی سے چھپ سکتا ہے وہ اپنی ہی سوچ میں گم اندازے لگا رہی تھی
 جب رحمان واک کر کے گھر  میں داخل ہوا وہ ایسے اکیلے عائشہ کو وہاں کھڑا دیکھ رک گیا تھا عائشہ اپنی ہی دھن میں اندازہ لگاتی ہوئی اُلٹے پاؤں چل رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
پاگل ہو گئی ہے یہ؟
رحمان سوچتا ہوا اگے بڑھا کیوں کہ رحمان نیچے رسی دیکھ چکا تھا جسکی وجہ سے عائشہ گِرنے والی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آآآآآآ بلکہ گِر چکی تھی رحمان کی بانہوں میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مان لیا تم شادی سے خوش نہیں ہو لیکن یوں خود کو کیوں نقصان پہنچا رہی ہو رحمان نے بہت سنجیدگی سے اپنی بات پوری کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ شرمندہ ہوئی۔۔۔۔۔۔۔
نہیں ایسی بات نہیں ہے مانی سوری عائشہ بات بات کرتے کرتے سیدھی کھڑی ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اُسکی بات سُنے بغیر اندر جا چکا تھا عائشہ اپنے الفاظ منہ میں لیے کھڑی رہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہال میں اتے ہی رحمان کی نظر ہانیہ پر پڑی۔۔۔۔۔۔۔
 جو چہرے سے ہی بہت تھکی تھکی سی لگ رہی تھی گم سم سی بیٹھی رحمان نے ہانیہ کے سر پر ہاتھ رکھا کیا ہوا بھائی کی شادی پر بہن کا ایسا منہ؟
ہانیہ مسکرائی کیسا بھائی اتنی خوش تو ہوں موڈ تو مجھے آپی کا ٹھیک نہیں لگ رہا چپ چپ سی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ان کا موڈ بلکل ٹھیک ہے بس اپنے گھر والوں کو مس کررہی ہے بہت جلد اسکی یہ پریشانی بھی دور کردے گے اپ بتاؤ کیوں اتنی اداس بیٹھی تھی؟
سچی میں بھائی اپی کا ہی سوچ رہی تھی اور تو کوئی بات نہیں ۔۔۔۔۔۔۔
رحمان نے بہت نرمی سے ہانیہ کا ہاتھ اپنے ہاتھ میں لیا میری بہن بہت بہادر ہے میں جانتا ہوں کسی بات پر پریشان نہیں ہونا اپکا بھائی ہر فیصلے میں اپکے ساتھ کھڑا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھینکیو بھائی آپ کے ہوتے ہوئے مجھے کوئی ٹینشن ہو بھی نہیں سکتی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اج بہن بھائی یہی بیٹھ کر باتیں کرتے رہے گے کیا کوئی تیاری نہیں کرنی اور یہ عائشہ کہاں ہے آسیہ نے پاس  سوفے پر بیٹھتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پتہ نہیں ماما میں نے دیکھا نہیں آپی کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپکی آپی باہر پودوں میں کچھ ڈھونڈنے کی کوشش کررہی تھی میں نے دیکھا ابھی۔۔۔۔۔۔
چلو ہانیہ اُٹھو تیاری شروع کرو میں عائشہ کو لے کر آتی ہو پارلر والی بھی اتی ہو گی ۔۔۔۔۔۔
جی ماما ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاریحاتِم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇👇👇👇👇👇
ازقلم. سدرہ حسین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسط نمبر 21 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پارلر والی لڑکی نے کوئی کسر نہیں چھوڑی تھی عائشہ سی گرین لہنگا پہنے جس پر گولڈن کام کیا گیا تھا ماتھے پر ماتھا پٹی سجائے بہت پیاری لگ رہی تھی .....
 اللہ میری بیٹی کو ہر بُری نظر سے محفوظ رکھے آسیہ نے کمرے میں اتے ہی عائشہ کی نظر اُتاری اور پارلر والی کو باہر جانے کا کہا عائشہ پریشان سی آسیہ پر نظریں جمائے بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
پریشان نہیں ہو میری جان مجھے اپ سے ضروری بات کرنی ہے ۔۔۔۔۔۔
جی ماما کہئیے ۔۔۔۔۔۔
آسیہ نے عائشہ کے ماتھے پر پیار کیا اور کرسی گھسیٹ کر عائشہ کے پاس بیٹھ گئی
 اُسکے ہاتھوں کو اپنے ہاتھوں میں مضبوطی سے پکڑا عائشہ میری بیٹی پیچھے جو بھی ہوا جیسے بھی اُسے بھول کر ایک نئی زندگی کا آغاز کرنا ہے
 رحمان تم سے بہت پیار کرتا ہے میں نے اُسے ساری ساری رات تمہارے لیے روتے دیکھا اب تم نے اس رشتے کو اتنی محبت دینی ہے کہ کبھی تمہارا ماضی تمہارے سامنے ائے تو تم دونوں ٹوٹنے کی بجائے ہمت سے ساتھ کھڑے رہو عائشہ  جو نظریں جھُکائے آسیہ کی بات سُن رہی تھی
 اج اسکے پاس کوئی الفاظ نہیں تھے اس نے بس مثبت میں اپنے سر کو ہلایا آسیہ نے بہت پیار سے عائشہ کا منہ اپنے ہاتھ سے اوپر کیا میری جان کچھ باتوں کو چھپانا بہت بہتر ہوتا ہے
جو باتیں ہمیں پتہ ہیں وہ کسی دوسرے کو بتانا ضروری نہیں میری بات سمجھ ائی؟
جی ماما عائشہ اپنے انسو اپنے حلق میں اتارتے ہوئے بس اتنا ہی بولی رحمان اور آسیہ کا فیصلہ تھا
عائشہ کے ماضی کے بارے میں کسی کو کچھ نہیں بتایا جائے اور اس پر پورا عمل بھی کیا گیا تھا گھر میں موجود مہمان پوری سچائی سے ناواقف تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما؟
جی؟  اپ بہت اچھی ہے عائشہ کہتے ہی آسیہ کے گلے سے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور میری بیٹیاں دنیا کی سب سے اچھی  بیٹیاں ہیں
آسیہ نہیں چاہتی تھی عائشہ روئے اس لیے جلد ہی عائشہ کو خود سے الگ کیا عائشہ میرے بعد بھی ہانیہ کو اس گھر میں بیٹی کی حیثیت ہی ملنی چاہیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپ کیسی باتیں کر رہی ہے ماما پلیز اللہ اپکو ہمیشہ ہمارے سروں پر سلامت رکھے ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کی فکر نہیں کرے وہ میری اور مانی کی جان ہے ماما ہم ہمیشہ اُسے خوش رکھنے کی کوشش کرے گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں آجاؤں؟
ہانیہ نے تھوڑا سا منہ اندر کی طرف لاکر معصوم سا سوال کیا جس پر آسیہ اور عائشہ مسکرائی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلکل نہیں پہلے پارلر والی کو اندر لاؤ وہ تمہیں تھوڑا میکاپ کردے عائشہ نے فوراً اپنی بات مکمل کی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ دروازہ کھولے جھٹ سے اندر ائی ماما دیکھے مجھے کہی سے بھی کوئی کمی ہے؟  ہانیہ نے اپنی سیمپل سے پرنٹ ریڈ کالر کے لہنگے کو گھمایا جسکی کُرتی کے گلے اور دامن پر ہلکہ سا گولڈن کام ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
آسیہ اپنی جگہ سے کھڑی ہوئی اور ہانیہ کو اپنے ساتھ لگا کر بہت پیار کیا میری بیٹی ہے ہی بہت پیاری لیکن بھائی کی شادی ہے تھوڑ ساا تو میکاپ کروا لو نہ ۔۔۔۔۔۔۔
اوکے ماما کل آپی نے کروا دیا تھا اور آج اپ کے کہنے پر کروا رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
گڈ گرل چلو وہاں بیٹھو میں لڑکی کو بھیجتی ہوں آسیہ کہتے ہی روم سے نکلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپی اپ بہت ہی نہیں بہت ہی زیادہ پیاری لگ رہی ہو ۔۔۔۔۔۔
اچھا جی اپ بھی کچھ کم نہیں لگ رہی عائشہ نے پیار سے ہانیہ کی گال کھنچھی ۔۔۔۔۔۔۔
آآآآ اتنی زور سے آپی ۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہا چُپ ڈرامے باز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دونوں کے قہقہے کمرے میں گونجے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سب میرج ہال میں پہنچ گئے تھے زیادہ مہمانوں کو انوائٹ نہیں کیا گیا تھا پھر بھی شہر کا سب سے اچھا میرج ہال بک کروایا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب مہمان دولہن کا ویٹ کر رہے تھے سب سے زیادہ انتطار تو رحمان کو تھا رحمان گولڈن کالر کی شیروانی پہنے بہت پیارا لگ رہا تھا آجاؤ عاشی کہاں رہ گئی ہو رحمان نے اپنا بائیا ہاتھ اپنے دل پر رکھا جو آج زورو سے دھڑک رہا تھا میں بہت بے چین ہوں اج تمہارے سارے ڈر دور کردوں گا عاشی میں تم سے بہت محبت کرتا ہوں مجھے بدلے میں محبت نہیں چاہئے میں تمہیں کبھی اس بات کے لیے فورس نہیں کروں گا کہ تم میری محبت کے بدلے مجھے محبت دو تمھارا میرے ساتھ ہونا ہی میری طاقت ہے رحمان اپنی سوچو میں کھویا تھا آسیہ دو بار رحمان کو آواز دے چکی تھی ۔۔۔۔۔۔
رحمان آسیہ نے رحمان کے کندھے پر ہاتھ رکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ماما؟
بیٹا اپنا ہاتھ بڑھاؤ عائشہ کو اسٹیج پر لانے میں اُسکی مدد کرو ۔۔۔۔۔۔۔
جی ماما رحمان نے اپنا ہاتھ بڑھایا جسکو تھام کر عائشہ اسٹیج پر بیٹھ چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نکاح کا مرحلہ بھی گزر گیا تھا سب خوشی خوشی کھانا کھانے میں مصروف تھے ہانیہ  نے ابھی پہلا نوالہ ہی منہ میں ڈالا تھا کسی کی نظر  خود پر محسوس ہوئی ہانیہ نے اُس طرف دیکھا ہی تھا کوئی پیچھے ہوا تھا ہانیہ اپنی جگہ سے اُٹھ کر اُس طرف بڑھی تھی ۔۔۔۔۔۔
کون ہے یہاں ہانیہ بِنا کچھ سوچے برائیڈل روم کی طرف بڑھی دروازہ کھولتے ہی ہانیہ نے دو بار آواز دی کون ہے؟  کوئی ہے کیا؟
وہ کسی کو نہ پا کر واپس پلٹی ہی تھی کسی نے اُسکا بازوں پکڑ کر اُسے روم کے اندر کھینچا تھا اِس سے پہلے ہانیہ کی چیخ نکلتی وہ دروازہ لاک کر ہانیہ کے منہ پر ہاتھ رکھ چُکا تھا وہ دیوار کے ساتھ لگی اپنی پوری انکھیں کھولے اُس وجود کو دیکھ کر سہم گئی تھی منہ پہ ہاتھ کی وجہ سے بول نہیں پا رہی تھی لیکن انکھوں سے آنسوں نکل حاتم کا ہاتھ بھیگو رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شششششش شور نہیں کرنا میں چھوڑ رہا ہوں اوکے؟
شور نہیں کرنا سمجھ آئی ؟
ہانیہ ساکت تھی حاتم نے اپنا ہاتھ ہٹایا تھا لیکن خود ابھی بھی کسی دیوار کی مانند اسکے سامنے کھڑا تھا اُسے ہانیہ کا جسم کانپتا محسوس ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ریلیکس میں تمہیں کچھ نہیں کہوں گا ہانیہ اپنی نظریں جھکا گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں تمہیں اپنے ساتھ لے جانا چاہتا ہوں رحمان کو میں سمجھا لوں گا تم بتاؤ آنا چاہو گی میرے ساتھ؟
مقابل مکمل خاموشی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
میں جانتا ہوں  میں نے بہت غلط کیا ہے تمہارے ساتھ میں سب ٹھیک بھی کردوں گا تم بس میرے ساتھ چلو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کے الفاظ کہی دم توڑ چکے تھے اُسنے اپنے وجود کو خود میں سمیٹتے ہوئے بس نہ میں اپنے سر کو ہلایا ۔۔۔۔۔۔
حاتم نے  ایک زور دار مکا دیوار پر دے مارا جس سے ہانیہ اور سمٹ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔
میں کہہ رہا ہوں میں سب ٹھیک کردوں گا چلو اگر تمہیں ٹائم چاہیے تو میں تمہیں ٹائم دیتا ہوں لیکن میں نہ سُننے کا عادی نہیں تم جانتی ہو اتنا کہتے ہی حاتم دروازہ کھول ہانیہ کی نظروں سے اوجھل ہوا ۔۔۔۔۔
وہ اپنے بوجھل سے وجود کو گھسیٹتے ہوئے پاس پڑی کرسی پر بیٹھ گئی تھی کیوں آخر کیوں ہر بار سب برباد کرنے آ جاتے ہو حاتم کیسے ٹھیک ہو سکتا ہے  سب کیا میری ماں کو، واپس لا سکتے ہو تم  ۔۔۔۔
تم کبھی نہیں بدل سکتے  کبھی نہیں ۔۔۔۔
وہ خود، سے باتیں کرتی اپنے دونوں ہاتھوں میں اپنا چہرہ چھپائے رونے میں مصروف تھی ۔۔۔۔
ہانیہ ہانیہ کیا ہوا بیٹا آسیہ ہانیہ کو ہی ڈھونڈتی ہوئی برائیڈل روم کی طرف ائی تھی ہانیہ کو روتا دیکھ وہ پریشان ہوئی طبعیت ٹھیک ہے؟  ہانیہ بیٹا میری طرف دیکھو ڈاکٹر کے پاس چلے؟
نہیں ہانیہ نے خود کو سنبھالتے ہوئے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ٹھیک ہوں ماما کی یاد آرہی تھی آسیہ نے ہانیہ کو گلے لگا کر تسلی دی بیٹا میں ہوں نہ؟
کیا تم مجھے اپنی ماما نہیں سمجھتی؟
آپ میری ماما ہی ہے اگر آپ سب نہیں ہوتے تو پتہ نہیں ہانیہ کے رونے میں اور تیزی آگئی تھی ۔۔۔۔
ہم نہیں ہوتے تو کوئی اور ہوتا بس چُپ ہو جاؤ رحمان دیکھے گا تو پریشان ہوگا بھائی کی شادی پر بہن روتی ہوئی اچھی لگتی ہے ؟
چلو اپنا ہلیہ درست کرو اور جلدی سے آجاؤ ۔۔۔۔۔۔۔
جی ماما ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم گھر آتے ہی غصے سے چیزیں زمین پر پھینکنے لگا ہانیہ کی روتی ہوئی انکھیں کانپتا وجود اُسے پریشان کر رہا تھا۔۔۔۔
جب میں نے کہا سب ٹھیک کردوں گا تو اُسے سمجھ کیوں نہیں آتی اب کیا چاہتی ہے؟  حاتم اُسکے پیروں میں بیٹھ کر معافی مانگے کبھی نہیں کبھی بھی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب گھر آچکے تھے کچھ رسمیں ادا، کر کے دولہن کو روم میں بھیج دیا تھا رحمان کافی دیر سے ہانیہ کی اداسی کو محسوس کر رہا تھا ہانیہ اپنے کمرے میں آئی تو رحمان بھی پیچھے ہی آگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دروازہ بند ہونے کی آواز سے ہانیہ نے پیچھے پلٹ کر دیکھا، ۔۔۔۔۔
بھائی آپ؟
جی بیٹھو یہاں رحمان بیڈ کی دوسری طرف اشارہ کرتے ہوئے خود بھی بیٹھ چکا تھا، ۔۔۔۔۔۔
بھائی سے جھوٹ نہیں بھولنا بلکل بھی نہیں اوکے؟
جی ۔۔۔۔۔
کچھ ہوا ہے؟
اداس کیوں ہو کسی نے کچھ کہا ہے؟
ہانیہ بہت مشکل سے مسکرائی نہیں بھائی میں نے ماما کو میرج ہال میں بھی بتایا تھا میرے سر میں درد ہے بس اسلیے ۔۔۔۔۔۔۔
میڈیسن لی؟
نہیں ابھی لیتی ہوں ۔۔۔۔۔۔
اوکے ریلیکس کرو میڈیسن اور چائے بھجواتا ہوں پریشان نہیں ہوا کرو بھائی بھی پریشان ہو جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔
جی بھائی سوری ۔۔۔۔۔۔
اب مار کھاؤ گی بھائی کو سوری بولتے ہے؟
ہانیہ بس مسکرا دی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان نے میڈ سے میڈیسن اور چائے کا کہا  اور خود ماں کے کمرے کا رُخ کیا جہاں آسیہ عشاء کی نمازی سے فارغ ہوکر بیٹھی تھی ۔۔۔۔
کیسی  ہے میری ماما؟
اجاؤ میرے جگر ماما ٹھیک ہے ابھی تک گھوم رہے ہو عائشہ ویٹ کررہی ہو گی
ماما تھینکیو ۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان ماں کے گلے لگ گیا تھا ۔۔۔۔کس بات کے لیے؟
آپنے عائشہ کو تسلیم کیا اُسکے ماضی کے ساتھ میں اپکے بغیر کچھ نہیں کر پاتا ماما۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مسکے لگانا بند کردو چلو وہ ویٹ کر رہی ہوں گی میری جان ۔۔۔۔۔۔
ماما آپکو پتہ ہے؟ آپ بہت اچھی ہے ……
مجھے تو نہیں پتہ تھا لیکن میرے بچوں نے مجھے بتا دیا ہے۔۔۔۔۔۔
مطلب؟
مطلب کچھ نہیں چلو جاؤ مجھے بھی نیند آرہی ہے ۔۔۔۔۔۔
اوکے ماما رحمان نے ماں کے ماتھے پر پیار کیا اور اپنے کمرے کی طرف روانہ ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جہاں عائشہ پہلے ہی رحمان کے روایے سے سہمی بیٹھی تھی مجھے نہیں لگتا وہ روم میں آئے گے کتنی بار یہ خیال عائشہ کے ذہین میں اکر گزرا تھا ۔۔۔۔۔
دروازہ نوک ہوا عائشہ نے فوراً دروازے کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان بلا کی سختی منہ پر سجائے کمرے میں داخل ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسلام و علیکم!
وعلیکم السلام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان اپنی شیروانی کے بٹن کھولتا ہوا صوفے کی طرف بڑھا اپنی شیروانی کو وہاں رکھ عائشہ کے پاس آکر بیٹھ گیا تھا رحمان کو اپنی ہنسی کنڑول کرنا دنیا کا سب سے مشکل کام لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
اس سے پہلے رحمان کچھ کہتا عائشہ کا آنسو اسکے ہاتھ پر گِرا دکھ رحمان تنگ کرنے کا ارادہ ملتوی کر چُکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان نے فوراً عائشہ کا ہاتھ اپنے ہاتھ میں لیا سوری میری جان میں تو بس تنگ کر رہا تھا پریشان نہیں ہو پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان نے اپنی جیب سے ایک بہت خوبصورت ڈبی نکالی جس میں ایک ڈائمنڈ رِنگ موجود تھی۔۔۔ عائشہ کی طرف بڑھائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن عائشہ کی طرف سے کوئی رسپانس نہ پا کر رحمان نے عائشہ کا گھونگھٹ اُٹھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہو گیا ہے یار کیوں رو رہی ہو؟
بتاؤ ادھر دیکھو ۔۔۔۔۔۔۔۔
آآ آ آپ ناراض تھے مجھ سے ۔۔۔۔۔
ہاہایا میں ناراض ہو سکتا ہوں تم سے؟
پھر اتنے دونوں سے ٹھیک سے بات بھی نہیں کی اُس دن میرا مطلب یہ ۔۔۔۔۔
ششششششش کچھ نہیں کہنا بس چُپ ہو جاؤ تم مجھے اتنے سالوں سے تنگ کرتی ائی ہو تو کیا میں تھوڑا بھی حق نہیں رکھتا ۔۔۔۔۔
بتاؤ؟
تم نے اُس دن جو بھی کہا مجھے فرق نہیں پڑتا میں اتنا جانتا ہوں میں تم سے اتنی محبت کرتا ہوں عاشی کہ وہ ہم دونوں کے لیے کافی ہے  عاشی آئندہ مجھے ان انکھوں میں آنسو نہیں نظر آئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ نے اپنی پلکیں اُٹھا کر رحمان کی انکھوں میں دیکھا جہاں پیار کے علاوہ کچھ نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔۔
مانی؟
جی جان رحمان نے شریر سے لہجے میں جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم گھر کب جائے گے؟
کیا ساری باتیں آج ہی طے کرنی ہے  رحمان  کی بات کا مفہوم سمجھتے ہی عائشہ اپنی نظریں جُھکا گئی تھی اُسنے بہت پیار سے رِنگ عائشہ کے ہاتھ میں پہنائی کیسی لگی؟
بہت پیاری ہے لیکن اپ نے مجھے بہت ڈرا دیا تھا عائشہ نے رحمان کے سینے پر مکا مارتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہاہاہا ابھی سے ڈر گئی ۔۔۔۔۔۔۔
بہت پیاری لگ رہی ہو عائشہ رحمان نے بہت محبت سے عائشہ کو گلے لگایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری
حاتِم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇👇👇👇👇👇👇👇👇
از-قلم  سدرہ حسین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسط نمبر 22۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
2nd last...............................
ہانیہ کب سے گھٹنوں میں منہ دیئے رو رہی تھی کمرے میں ہچکیوں کی آواز بلند ہونے لگی تھی وہ منہ پہ ہاتھ رکھے اُن کو روکنے کی کوشش کر رہی تھی سر درد سے پھٹنے والا تھا وہ وہی زمین پر لیٹ گئی تھی کمرے میں لگے کلاک پر 3 کا ٹائم  ہو گیا تھا وہ پتہ نہیں کب نیند کی وادی میں اُتر گئی  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ کی انکھ کھلی تو وہ رحمان کے کندھے پر سر رکھے سو رہی تھی رحمان کو سکون سے سوتا دیکھ عائشہ مسکرائی تھی "مانی" مانی اُٹھے نماز کا ٹائم نکل جائے گا رحمان تھوڑا سا ہلا  اور عائشہ کو خود میں سمائے سونے لگا تھا مانی پلیز اُٹھے نہ ۔۔۔۔۔
نماز کا ٹائم گزر جائے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا بابا مانی نے سائیڈ ٹیبل سے اپنا موبائل اُٹھا کر دیکھا نماز میں 30 منٹ باقی تھے یار ابھی تھوڑا اور سونے دو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلکل نہیں اُٹھے جلدی شاور لے اور نماز کے لیے جائے عاشی رحمان کا لیٹنا بھی مشکل کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
اوکے ڈئیر وائف تو جلدی اُٹھانے کی سزا بھی ملے گی عاشی جلدی سے پیچھے ہوئی تھی رحمان عاشی پر جُھکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مانییییی پلیز ۔۔۔۔۔۔۔
تم نے میری ایک نہیں سُنی اب میں بھی نہیں سُنوں گا مانی نے کہتے ہی اپنے ہونٹ عاشی کے ہونٹوں پر رکھ دیئے تھے اب ہوا حساب برابر مانی پیچھے ہوتا ہوا مسکرایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ کو نماز کے بعد ہانیہ کا خیال ایا تو ہانیہ کو دیکھنے اُسکے کمرے میں آگئی ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کو نیچے فرش پر لیٹا دیکھ عائشہ کے ہاتھ پاؤں پھولے تھے ہانیہ کیا ہوا؟  ہانیہ اُٹھو کیا ہوا ہے؟
عائشہ کے جھنجھوڑنے سے ہانیہ اپنی انکھیں مسلتی ہوئی اُٹھ بیٹھی آپی آپ یہاں؟
مجھے چھوڑو یہ بتاؤ نیچے کیوں سو رہی تھی؟
ویسے ہی رات یہاں بیٹھی تھی پتہ ہی نہیں چلا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جھوٹ ہانیہ مجھ سے چھپاؤ گی؟
نہیں آپی ایسی کوئی بات نہیں ۔۔۔
تمہاری انکھیں سب بیان کر رہی ہے ہانیہ رات رو کر گزاری ہے؟
آپی ۔۔۔۔۔
ہانیہ ایک جھٹکے سے عائشہ کے گلے لگی تھی آپی میں اُسے معاف نہیں کر سکتی کبھی بھی نہیں ۔۔۔۔
کس کو؟
حاتم کو وہ کل آیا تھا ہال میں مجھے لینے ۔۔۔۔۔۔
کیا؟  اور تم اب بتا رہی ہو ہانیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں آپ سب کو پریشان نہیں کرنا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم کیوں پریشان ہو گے میری جان میری طرف دیکھو ادھر ہانیہ کیا ہم تمہارے اپنے نہیں ہیں؟
آپی میں کبھی نہیں جاؤں گی اُسکے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے نہیں جانا وعدہ ہے تم سے تمہاری مرضی کے بغیر کچھ نہیں ہوگا اپنی حالت دیکھو ہانیہ ماما دیکھے گی تو؟
ہمیں اب اُن کا بھی خیال رکھنا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنا منہ صاف کرو نہیں بلکہ اُٹھو میں کپڑے نکالتی ہوں تم شاور لے کر فریش ہو جاؤ چلو اُٹھو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ اپنا منہ صاف کرتی وہاں سے اُٹھ گئی تھی لیکن ذہین ابھی بھی کہی الجھا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان نماز کے بعد گھر آیا تو عائشہ روم میں نہیں تھی وہ چینچ کر واک کے لیے چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ شاور لے کر نکلی تو عائشہ دونوں کی چائے پاس رکھے اُسکا انتطار کر رہے تھی ۔۔۔۔۔۔۔
اجاؤ جلدی چائے ٹھنڈی ہو جائے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 ابھی آئی ہانیہ پاس اکر چائے کا کپ سنبھالتی ہوئی بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کیا معافی کی کوئی گنجائش نہیں نکلتی؟
نہیں آپی اپ یہ سوال کر رہی ہے؟
میں صرف پوچھ رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔
نہیں آپی کوئی گنجائش نہیں ہانیہ سپاٹ لہجے میں کہتی ہوئی چائے پینے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان واک کے بعد کمرے میں ایا تو عائشہ کمرے میں نہیں تھی رحمان پھر سے سونے کی تیاری کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔
جانتی ہو ہانیہ حاتم کی ماں کی ڈیتھ ہوگئی ہے ۔۔۔۔۔
کیا؟  ہانیہ سُن کر حیران ہوئی کب کیسے؟
حاتم حسن کو مارنے والا تھا اور گولی اُسکی ماں کو لگ گئی مجھے لگتا ہے وہ بدل گیا ہے مانی کو پیغام بھجوایا تھا حاتم نے تمہیں گھر لے جانا چاہتا ہے ۔۔۔۔
یہ سُنتے ہانیہ کے ہاتھ کانپنے لگے تھے وہ چائے کا کپ ٹرے میں رکھ سیدھی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اٹس اوکے  ہانیہ تمہارے بھائی نے کوئی جواب نہیں دیا ہے ۔۔۔۔۔
جیسا تم چاہو گی ویسا ہو گا یہ وعدہ ہے ہمارا کوئی پریشر نہیں ہے تم ریلیکس ہو جاؤ چائے پیؤ شاباش ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حاتم رات ہونے کا ویٹ بے صبری سے کر رہا تھا وہ اج ولیمے میں ہانیہ سے ملنا چاہتا تھا اُس کا جواب سُننا چاہتا تھا کل ہوئی ملاقات نے اسے ایک منٹ بھی قرار نہیں لینے دیا تھا اُسکی انکھوں سے بہتے انسو پہلی بار حاتم کے دل پر گِرے تھے مجھے معاف کردو ہانیہ میں جانتا ہوں میں نے بُرا کیا ہے تمہارے ساتھ بس ایک بار گھر اجاؤ میں جانتا ہوں میں بہت جذباتی ہوں غصے کا تیز ہوں تم گھر اجاو گی تو سب ٹھیک ہو جائے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ولیمے کا فنکشن اپنے عروج پر تھا رحمان اور عائشہ نے اوف وائٹ ڈریسنگ کی تھی اُن کے پیچھے وائٹ پھولوں کی سجاوٹ نے ان کو چار چاند لگائے تھے دونوں اسٹیج پر بیٹھے گفتگو میں مصروف تھے ہانیہ آسیہ کے ساتھ مہمانوں سے مل رہی تھی ہانیہ نے  بلیک فراک پہنی تھی جو اُسکے وائٹ کالر کو اور بھی نمایا کر رہی تھی ماما میں بیٹھ جاؤں؟
کیوں کیا ہوا طبعیت  ٹھیک ہے؟
نہیں ماما چکر آرہے سر میں بہت درد ہورہا ہے ہانیہ اپنے سر پہ ہاتھ رکھتی ہوئی کرسی پر بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ بیٹا آپ ایسا کرو میڈ کے ساتھ گھر چلی جاؤ گھر جا کر آرام کرو ۔۔۔۔۔
جی ماما میں بھی یہ سوچ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
لیکن رابطے میں رہنا ہے میں میڈ سے بھی کہہ دیتی ہوں طعبیت کا فون پر بتاتی رہے ہم جلد آجائے گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپ فکر نہیں کرے ماما ہانیہ کو وہاں سے اُٹھنا بہت مشکل لگ رہا تھا ماما آپ آپی اور بھائی نہیں بتانا پلیز ۔۔۔۔۔۔
جی نہیں کہتی میری جان اپ دھیان سے جاؤ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ گھر پہنچی تو شور سے باہر آتے طبعیت بہتر لگنے لگی میڈ کو چائے کا بول خود چینچ کرنے لگی ہانیہ وائٹ کالر کی شلوار قمیض پہنے دوپٹے کے بغیر واشروم سے باہر نکلی تھی اپنے بالوں کو جوڑے کی شکل دیتے سامنے دیکھ ہانیہ ٹھٹھکی تھی ۔۔۔۔۔۔
تم نے کوئی جواب نہیں دیا تو میں نے سوچا خود ہی پوچھ لوں تمہارے قریب آکر حاتم ہانیہ کے بلکل سامنے آکر کھڑا ہوا تھا ہانیہ کو اپنا وجود برف ہوتا محسوس ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹکٹکٹک۔۔۔۔۔بی بی جی چائے ۔۔۔۔۔۔۔۔
دروازہ نوک ہوا  میڈ چائے لائی تھی ہانیہ نے ایک بار دروازے کی طرف دیکھا اور دوسری بار حاتم کو ۔۔۔۔۔۔۔۔
میری جان بہت پیاری لگ رہی ہو حاتم نے اپنے ہاتھ سے ہانیہ کے منہ پر آتے بال کان کے پیچھے کیے میں جانتا ہوں تم کبھی نہیں چاہو گی مجھے غصہ ائے۔۔۔۔۔۔۔
بی بی جی چائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔میڈ دوبارہ آواز دے رہی تھی ۔۔۔۔۔
ہانیہ کو اپنے ماتھے پر پسینہ محسوس ہوا جسکو صاف کرتی ہوئی وہ دروازے کی طرف بڑھی حاتم پیچھے دیوار کے ساتھ کھڑا ہو گیا تھا وہ کسی سے ڈرتا نہیں تھا لیکن اج وہ تسلی سے بات کرنا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔
ہانیہ نے دروازہ کھولتے ہی میڈ کے ہاتھ سے ٹرے لی ۔۔۔۔۔
میں رکھ دیتی جی کمرے میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ  نہی نہیں می میں خو خود رکھ لوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا جی طبعیت زیادہ خراب ہے یہ ساتھ دوائی بھی ہے آپ کھا لو، اگر آپ کہو تو میں سر دبا دوں؟
نہ  نہی نہیں نہیں میں سونے لگی ہوں تم جاؤ ہانیہ نے کہتے ہی دروازہ لاک کیا کانپتے ہاتھوں سے ٹرے لاکر ٹیبل پر رکھی ۔۔۔۔۔۔
حاتم نے بہت غور سے ہانیہ کو دیکھا اج وہ اُسے پریشان نہیں کرنا چاہتا تھا وہ سہمی سی کھڑی شاید حاتم کے بولنے کا ویٹ کر رہی تھی حاتم کا یوں ٹکٹکی بندھے دیکھنا ہانیہ کو کنفیوز کررہا تھا،
"دوپٹہ " ہانیہ کو اچانک دوپٹے کا خیال آیا تھا وہ جلدی بیڈ کی طرف بڑھی جہاں دوپٹہ پڑا تھا دوپٹہ پکڑتے ہی اُسنے اپنے شانوں پر پھیلایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہاں آؤ یہاں آکر بیٹھو۔۔۔۔۔۔۔۔۔حاتم نے صوفے کی طرف اشارہ کیا تھا، ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ فوراً صوفے پر جا بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
حاتم نے ٹرے سے دوائی اور پانی ہانیہ کی طرف بڑھایا جسکو وہ ایک پل ضائع کیے بغیر پکڑ کر کھا گئی تھی  نہ چاہتے ہوئے بھی آنکھوں سے آنسوں نکلے تھے جنکو حاتم نے صاف کرنا چاہا تھا ہانیہ سہم کر پیچھے ہوئی تھی
 پ پل پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے چائے پیئو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے حاتم کی طرف دیکھا وہ شاید پہلی بار حاتم کو دیکھ رہی تھی یہ وہ تو نہیں ہے ایک بار میں بات مان لی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ایسے نہ دیکھو ورنہ خود کو روک نہیں پائوں گا ۔۔۔۔۔
ہانیہ کانپتے ہاتھوں سے چائے کا کپ اُٹھائے پینے لگی حاتم ہانیہ کے سامنے گھٹنوں کے بل بیٹھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے حیرانگی سے دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایسے کیا دیکھ رہی ہو؟
ک کچ کچھ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔
اب کیسا محسوس کر رہی ہو؟
ٹھ ٹھی ٹھیک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم نے بہت نرمی سے ہانیہ کا، ہاتھ اپنے ہاتھ میں لیا تھا میں جانتا مجھے معاف کرنا تمہارے لیے مشکل ہے بہت مشکل پھر بھی میں چاہتا ہوں تم یہ مشکل کام کرو ہانیہ میں بہت بُرا انسان ہوں لیکن مجھے لگتا ہے تم میری زندگی میں آؤ گی تو ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے ایک جھٹکے سے اپنا ہاتھ کھینچا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
می میں  ن نہی نہیں آؤں گی آپکے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں؟
ہانیہ اپنے انسوؤ پر اختیار کھو چکی تھی وہ مسلسل بہہ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپ اپکی وجہ سے م می میری ماما مر گئی ہانیہ نے بہت مشکل سے یہ الفاظ ادا کیے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے دکھ ہے اس بات اور اس کی سزا بھی مجھے مل چکی ہے ہانیہ۔۔۔۔
 حاتم کسی مجرم کی طرح سر جُجھکائے اج ہانیہ پر حیرات کے پہاڑ توڑ رہا تھا ۔۔۔۔۔
م مج مجھے کس بات کی سزا دی؟
میں نہیں جانتا ہانیہ میں نے اج تک جو بھی کیا کیوں کیا ۔۔۔۔کیا وجہ تھی لیکن میں نہیں چاہتا میری اولاد میرے جیسی ہو میں چاہتا ہوں ہم دونوں مل کر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ب بلکل نہیں ۔۔۔۔ہانیہ کے منہ سے بے اختیار نکلا تھا جس پر حاتم نے سر اُٹھا کر ہانیہ کی طرف دیکھا ۔۔۔۔
یہ یہ بس میری اولاد ہے  آپکی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنے دل سے پوچھو کیا یہ سچ ہے ؟
ج جس دن آپ مجھے کھ کوٹھے پ پر چھو چھوڑ ائے تھے میں نے اُس دن الله سے دعا کی تھی مجھے موت اجائے اگر نہیں تو میری اولاد کو میرے وجود میں ہی ختم کردے آپ جانتے ہے ایک ماں یہ دعا تکلیف کی کس آخری حد پر کرتی ہے "نہیں " بلکہ کوئی ماں یہ دعا کر ہی نہیں سکتی کیوں کہ کسی اولاد کا باپ اپکی طرح بے حس نہیں ہوتا ہانیہ کی ہچکیاں بندھ گئی تھی لیکن حاتم چاہتا تھا وہ بات کرے بولے اپنا غصہ نکالے وہ چُپ سر جھکائے بیٹھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
میں نے نکاح سے لے کر کوٹھے تک آپ کو اللہ کے کتنے واسطے دیئے حاتم اور آپ جانتے ہے انسان اللہ کا واسطہ کب دیتا ہے؟
جب وہ تکلیف کی آخری حد کو چھو رہا ہو کوئی راستہ نظر نہیں آرہا ہو جیسے کہ میں تھی بے بس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے اپنے آنسوں صاف کیے اگر اپ چاہتے ہے آپکی اولاد  آپ جیسی نہ ہو تو آپ اس پر اپنا سایہ بھی نہ پڑنے دینا ۔۔۔۔۔۔۔۔
میں آپکو کبھی معاف نہیں کر سکتی یہ میرے اختیار میں ہی نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ آخری بار سوچ لو میں اپنی غلطی کی معافی مانگتا ہوں تم سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
"غلطی " یہ غلطیاں نہیں گناہ تھے اور ہر گناہ کی معافی نہیں ہوتی وہ مضبوط لہجے میں کہہ رہی تھی ۔۔۔۔
حاتم خالی نظروں سے ہانیہ کو دیکھ رہا تھا لیکن وہ حاتم کو نہیں دیکھ رہی تھی ادھر اُدھر نظریں گُما رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں انتظار کروں گا ۔۔۔۔۔۔۔
کوئی فائدہ نہیں ہانیہ جھٹ سے بولی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور اگر میں تمہیں خدا کا واسطہ دوں؟  حاتم اپنا ضبط کھو چکا تھا انسو انکھوں سے رواں تھے ہانیہ لاجواب تھی چُپ تھی ۔۔۔۔۔
میں جانتا ہوں میں سب برباد کر چکا ہوں ہانیہ اپنے ان ہاتھوں سے اپنی ماں کو موت کے گھاٹ اتار چکا ہوں وہ ماں جس نے ساری زندگی صرف میرے لیے میرے باپ کی نفرت برداشت کی مار کھائی ہر دکھ ذلت میرے لیے برداشت کی  میں اپنے باپ کو کچھ نہیں کہہ سکتا تھا لیکن جو غصہ بچپن سے میرے اندر بڑھ رہا تھا اُس غصے نے مجھے برباد کردیا میں جانتا ہوں اس سب میں تمہارا کوئی قصور نہیں ہے میں تمہارے اگے ہاتھ جوڑتا ہوں خدا کے لیے مجھے معاف کردو ہانیہ میرے ساتھ چلو اپنے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ خاموش تھی آنسو سوکھ چکے تھے اے میرے اللہ تو ہر چیز پر قادر ہے آج ایک سر پھیرا مرد عورت کے قدموں میں بیٹھا معافی کا طلبگار ہے مجھے سیدھا راستہ دیکھا دے میرے مولا ہانیہ دل میں دعا مانگ رہی تھی حاتم ہانیہ کے چہرے پر نظریں جمائے جواب کا انتظار کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
کافی ٹائم گزر گیا تھا دونوں خاموش تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹائم چاہیے؟
حاتم کے سوال پر ہانیہ خاموش تھی وہ اپنی جگہ سے کھڑا ہوا  میں انتظار کرنے کا حق تو رکھتا ہوں نہ؟
مقابل مکمل خاموشی تھی ۔۔۔۔
حاتم الٹے قدم دروازے کی طرف بڑھا تھا میں جواب کا انتظار کروں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری

حاتِم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔👇👇👇👇👇👇
از-قلم  سدرہ حسین ۔۔۔۔۔۔۔۔
قسط نمبر 23۔۔۔۔۔
Last episode.......

گھر پہنچ کر حاتم نے خود کو کمرے میں بند کرلیا تھا ملازموں کو بھی سختی سے منع کردیا کوئی بھی آئے تو کہہ دینا میں گھر نہیں ہوں وہ کمرے میں ٹہل رہا تھا کردے گی معاف مجھے؟  میں نے تو خدا کا واسطہ بھی دیا ۔۔۔۔۔
خدا کا واسطہ؟ وہ اپنے ہی الفاظ پر الجھا میں دعا کروں گا ۔۔۔۔۔۔۔
لیکن وہ کیوں سُنے گا میری؟  میں تو بہت گنہگار ہوں مجھے تو یاد بھی نہیں میں نے آخری بار کب نماز پڑھی تھی لیکن میں پھر بھی مانگوں گا اُس سے وہ تو معاف کرنے والا ہے مجھ جیسو کو تو زیادہ ضرورت ہے اسکی رحمت کی عنایت کی حاتم وضو کر اللہ کے حضور حاضر تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حاتم کے جانے کے بعد سے  ہانیہ اپنی جگہ سے ایک انچ بھی نہیں ہلی تھی ٹھنڈے پڑتے وجود میں تھوڑی بھی ہمت نہیں تھی اپنے ماضی کی تلخ یادوں کو یاد کر اپنی قسمت پر افسوس کر رہی تھی میں کیسے معاف کردوں؟
کیا مجھ میں اتنی ہمت ہے میں جانتی ہوں اللہ تعالیٰ معاف کرنے والوں کو پسند کرتا ہے کیا مجھ میں اتنا ظرف ہے؟  میں اُسکے ساتھ گئی تو مر جاؤں گی میں کیسے اُس کے ساتھ زندگی گزار سکتی ہوں ؟ آسیہ دو بار دروازہ نوک کر ہانیہ کو سوتا سمجھ واپس جا چُکی تھی ہانیہ اپنی سوچ کا تسلسل برقرار رکھے اپنی ہی دنیا میں گم تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حاتم نماز کے بعد ہاتھ اُٹھائے اللہ سے اپنے گناہوں کی معافی مانگ رہا تھا میں جانتا ہوں مجھے مانگنا نہیں اتا کیوں کہ مجھے ہمیشہ میرے بن مانگے تو نے سب عطا کیا لیکن اج میرے ٹوٹے پھوٹے لفظوں کو اپنی بارگاہِ میں قبول فرما ہانیہ کے دل میں میرے لیے رحم ڈال دے اے میرے اللہ مجھے خالی ہاتھ نہ لوٹانا میں تیرا گنہگار بندہ تجھ سے التجاء کرتا ہوں حاتم سجدے میں گِر گیا تھا رو رو کر اپنے رب سے ہانیہ کو مانگ رہا تھا اپنی انا غصے میں کیے گئے فیصلوں پر شرمندہ تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 ہانیہ بھی نماز کی ادائیگی کے بعد کمرے سے باہر آئی تھی سب ہال میں بیٹھے باتوں میں مصروف تھا ہانیہ خاموشی سے عائشہ کے ساتھ اکر بیٹھ گئی تھی عائشہ بھی فوراً ہانیہ سے مخاطب ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسی طبعیت ہے اب؟
ٹھیک ہوں آپ بتاؤ  کیسا گزرا دن ۔۔۔۔۔۔
بہت اچھا جب اتنے پیارے رشتے ہمارے پاس ہو تو زندگی بہت اسان لگنے لگتی ہے اور کچھ تو بہت خاص ہوتے ہے جو ہماری زندگی کو اور بھی خاص بنا دیتے ہیں عائشہ نے رحمان کی طرف دیکھتے ہوئے کہا ہانیہ عائشہ کی بات سمجھ کر مسکرا دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آؤ روم میں چلتے ہیں ۔۔۔۔۔۔
وہ دونوں اُٹھ رحمان کے کمرے میں آگئی تھی جو اب عائشہ کا بھی کمرہ تھا
مجھے لگتا تم گھر آکر بھی سوئی نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔
اپکو کیوں لگا ایسا؟
تمہاری آنکھوں سے لگ رہا ہے اداس سی لگ رہی ہے ہانیہ کچھ کہنا چاہتی ہو؟  کرنا چاہتی ہو؟ بتا دو ہم تمہارے ساتھ ہے ۔۔۔۔۔
آپی میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں بولو کیا؟
میں حاتم کے ساتھ جانا  چاہتی ہوں اُسے موقع دینا چاہتی ہوں اپنے بچے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔
میں اللہ کے لیے اُسے معاف کرنا چاہتی ہوں ہانیہ کی اواز حلق میں کہی اٹک گئی تھی عائشہ نے اُسے گلے لگا لیا اللہ تعالیٰ تمہیں اسکا اجر ضرور دے گا ہانیہ مجھے اسکا یقین ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپی میں اپنے بچے کو مکمل زندگی دینا چاہتی ہوں میں نہیں چاہتی کچھ ادھورا رہ جائے اسکی زندگی میں اس کے لیے مجھے یہ کرنا ہوگا ۔۔۔۔
بہت اچھا فیصلہ ہے ہانیہ میں آج ہی مانی سے کہوں گی حاتم سے بات کر لے تم بلکل پریشان نہیں ہونا اوکے؟
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ اپنے کمرے میں آکر سو چکی تھی اب وہ زیادہ سوچ کر کنفیوز نہیں ہونا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ بھی کب سے رحمان کا ویٹ کر رہی تھی لیکن وہ کمرے میں آنے کا نام نہیں لے رہا تھا ایک گھنٹے بعد رحمان  کمرے میں ایا تو عائشہ صوفے پر بیٹھی سو رہی تھی رحمان دیکھ کر مسکرایا دروازے بند ہونے کی آواز سے عائشہ نے انکھیں مسلتے ہوئے رحمان کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔
یہ کیا جان دوسرے دن ہی بستر الگ کرلیا شریر سے لہجے میں کہتا ہوا رحمان عائشہ کی طرف بڑھا ۔۔۔۔۔
نہیں میں تو آپکا ویٹ کر رہی تھی کہاں رہ گئے تھے آپ؟
تمہارے دل میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہاں بیٹھے مجھے بات کرنی ہے مذاق چھوڑے ۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا بھئی خیریت؟ میری بیگم اتنی سنجیدہ؟
پلیز رحمان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے اوکے سن رہا ہوں یار بولو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے فیصلہ لے لیا ہے ۔۔۔۔۔۔
کیا؟
وہ حاتم کے پاس جانا چاہتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور وہ ایسا کیوں کررہی ہے؟
وہ معاف کرنا چاہتی ہے ہر گناہ سے حاتم کو ازاد کرنا چاہتی ہے رحمان وہ اُسکے ہونے والے بچے کا باپ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پھر بھی تم نے سہی سے پوچھنا تھا کوئی پریشر تو نہیں نہ  کوئی دھمکی تو نہیں دے رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایسا کچھ نہیں مانی یہ اُسکا خود کا فیصلہ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک میں خود ایک بار بات کروں گا مجھے تسلی نہیں ہورہی ۔۔۔۔۔
مانی اپکی فکر بجا ہے لیکن آپ اُسے اپنے فیصلے سے ہٹنے پر فورس نہیں کرے گے ۔۔۔۔۔۔
اوکے جان نہیں کروں گا خوش؟
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں مجھے یاد آیا صبح تیار رہنا کہی جانا ہے...........
کہاں؟
بس اب کوئی سوال نہیں یہ سرپرائز ہے اٹھو چلو سو جاؤ تھک گئی ہو ۔۔۔۔
اور اپ نہیں آرہے؟
تم سو جاؤ مجھے تھوڑا کام ہے میں اجاؤں گا ابھی ۔۔۔۔۔
اوکے گڈ نائٹ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رحمان اپنا موبائل پکڑ کمرے سے باہر ایا حاتم کو کال ملاتے  ہوئے ہال عبور کرتا وہ لان میں آگیا تھا ۔۔۔۔
پہلی بیل پر ہی کال رسیو کرلی گئی تھی ۔۔۔۔
میں تم سے ملنا چاہتا ہوں رحمان نے کال رسیو ہوتے ہی اپنی بات بیان کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی؟
ہاں ابھی آجاؤ اگر آ سکتے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے حاتم اک لمحہ ضائع نہیں کرنا چاہتا تھا گاڑی کی چابی پکڑتے ہی کمرے سے باہر نکلا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ ٹائم بعد ہی وہ رحمان کے گھر موجود تھا ۔۔۔۔۔
دونوں خاموش تھے ایک دوسرے کے بولنے کا ویٹ کر رہے تھے ۔۔۔
میں اپنی بہن کو تمہارے ساتھ ایسے نہیں بھیج سکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔
میں سب کچھ اُسکے نام کرنے کو تیار ہوں ۔۔۔۔۔
حاتم تم اج بھی شاید وہی کھڑے ہو میں نے پراپرٹی یا بینک بیلنس کی بات نہیں کی تمہیں لگتا ہے انسان کو خوش رہنے کے لیے ان  بے جان چیزوں کی ضرورت ہوتی ہے؟
تو؟
میرا مطلب تھا پہلے تم وعدہ کرو آج کے بعد تم نشے والی چیزوں سے دور رہو گے کوٹھے پر نہیں جاؤ گے سب سے بڑھ کر اپنے غصے پر کنڑول رکھو گے ۔۔۔۔۔۔
میں تم سے کوئی جھوٹ نہیں بولوں گا رحمان لیکن میں اپنی طرف سے پوری کوشش کروں گا کہ ہانیہ کو مجھ سے کوئی شکایت نہیں ہو میں اُسے خوش رکھنے کی ہر ممکن کوشش کروں گا۔۔۔۔۔۔
مجھے اپنی ہر غلطی پر احساسِ ندامت ہے رحمان بس ایک بار میرا یقین کرلو میں اس یقین کو کبھی نہیں ٹوٹنے دوں گا رحمان کو اپنی سماعت پر یقین کرنا مشکل ہورہا تھا کیا یہ حاتم ہی ہے؟  کیا کوئی انسان اس حد تک بدل سکتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا رحمان؟
کچھ نہیں تم کل دن کے اجالے میں آکر ہانیہ کو لے جانا وہ اپنے گھر خوش رہے ہمیں اس سے بڑھ کر کیا چاہیے رحمان اپنی بات مکمل کرتے ہی کھڑا ہوا حاتم نے اگے بڑھ کر رحمان کو گلے لگایا تھا تھینکیو رحمان تمہارا یہ احسان رہے گا مجھ پر ۔۔۔
بس میری کنڈیشنز یاد رکھنا حاتم اس کے بعد معافی کی کوئی گنجائش نہیں ہوگی وہ  بھائی تھا دل میں جو خوف اتنے دنوں سے اپنے پنجے گاڑے تھا کیسے اُسے نظر انداز کرسکتا تھا لیکن اج حاتم کو دیکھ اُسے اپنا خوف بے معنی لگا تھا۔۔۔۔۔۔
صبح سب اپنی اپنی روٹین کے مطابق اُٹھے اپنے اپنے کام میں مگن تھے ہانیہ ناشتے کے بعد اپنا کمرہ درست کررہی تھی جب دروازہ نوک ہوا ۔۔۔۔
بھائی آپ اجائے۔۔۔۔۔۔
کیا کررہی ہے میری ڈول؟
کچھ نہیں بھائی فارغ بور ہورہی تھی سوچا کمرہ ٹھیک کرلوں ۔۔۔۔۔
ہانیہ جو فیصلہ اپنی آپی کو سُنایا تھا اس پر قائم ہو؟
جی بھائی ہانیہ نے بہت مضبوط لہجے میں جواب دیا تھا جس سے رحمان کو بھی تسلی ہوئی ۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے اج حاتم لینے ارہا ہے اپنا ضروری سامان رکھ لو ۔۔۔۔۔
اتنی جلدی؟  ہانیہ حیران ہوئی ۔۔۔۔
جب اپ نے فیصلہ کرلیا ہے تو دیر نہیں کرنی چاہئے اللہ میری بہن کو ہمیشہ خوش رکھے رحمان ہانیہ کے سر پر ہاتھ رکھے بول رہا تھا ہانیہ کی انکھیں نم ہوئی ۔۔۔۔۔
بھائی؟
جی بھائی کی جان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھینکیو فور ایوری تھینگ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب ہمارا جھگڑا ہوجانا ہے پر ۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں بھائی اپ نے جو کچھ میرے لیے کیا ہے تو کیا مجھے بھائی نہیں مانتی؟  رحمان نے ہانیہ کو بات مکمل نہیں کرنے دی ۔۔۔۔
میرے سگے بھائی بھی ہوتے تو شاید اتنا نہیں کر پاتے ۔۔۔۔۔۔اور مجھے سب سے زیادہ تکلیف اپنی بہن کے ان موتیوں سے ہوتی ہے بس چپ یہ اپکا گھر ہے ہانیہ اس گھر پر اپکا بھی اتنا ہی حق ہے جتنا کہ میرا ہے اس گھر کے دروازے ہمیشہ اپ کے لیے کھلے رہے گے یہ گھر ہمیشہ اپکا انتطار کیا کرے گا ۔۔۔۔۔
جی بھائی ۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو تیاری کرلو اپکی آپی کو بھیجتا ہوں  ہیلپ کروا دے گی ۔۔۔۔۔۔
---------------------------
حاتم آدھے گھنٹے سے ہال میں بیٹھا ویٹ کر رہا تھا ہانیہ کمرے میں عائشہ اور آسیہ کے ساتھ باتوں میں مصروف آپی اب اتنی جلدی بھی نہیں کہا تھا میں نے ۔۔۔۔۔۔۔
تو بیٹا کوئی بات نہیں کل بھی تو جانا تھا آج چلی جاؤ گی بچے کے اس دنیا میں انے سے پہلے تم دونوں میں سب ٹھیک ہوجائے گا، آسیہ نے ہانیہ کو سمجھانے کی کوشش کی تھی جس میں کافی حد تک وہ کامیاب بھی ہوگئی تھی ایک گھنٹے کے طویل انتطار کے بعد ہانیہ حاتم کے ساتھ گاڑی میں موجود تھی راستے میں دونوں نے کوئی بات نہیں کی تھی گاڑی گھر کے سامنے رکی تھی ہانیہ پہلے بھی اس گھر میں آچکی تھی اس لیے بغیر کچھ پوچھے گاڑی سے نکل کر ہال میں آگئی تھی حاتم نے ملازم سے کہہ کر ہانیہ کا سامان روم میں بھجوا دیا خود ہانیہ کے پیچے ہال میں ایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ کھاؤ گی؟
ہانیہ نے نفی میں سر ہلایا ۔۔.۔۔۔۔۔
میں نے سامان روم میں بھجوا دیا تم سیٹ کروا لو میں کچھ دیر میں اتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم کہتے ہی گھر سے باہر نکل گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ ملازم کی مدد سے اپنا سامان رکھ رہی تھی لیکن اندر سے جان کہی اٹکی تھی وہ خود کو جتنا مضبوط ثابت کرنے کی کوشش کررہی تھی ڈر اتنا ہی حاوی ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔
جلدی تیار ہوجاؤ جان رات سے کہا تھا کہی جانا ہے لیکن مجال ہے لڑکیاں جلدی تیار ہوجائے کبھی ۔۔۔۔۔۔
مانی  آرہی ہوں نہ آپ بھی بتا کچھ نہیں رہے کہا جانا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سرپرائز ہے جان رحمان موبائل میں مصروف بولا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے چلے اب خود موبائل میں لگ گئے عائشہ نے اتے ہی رحمان پر جتایا ۔۔۔
رحمان مسکرایا تھا حد ہے ویسے آدھے گھنٹے سے کون انتطار کر رہا تھا ۔۔۔۔
اچھا چلے ۔۔۔۔۔
چلو جی دونوں اپنے سفر پر نکلے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک گھنٹے سے ڈرائیو کررہا تھا رحمان لیکن عائشہ کو کچھ سمجھ نہیں ائی گاڑی ایک خوبصورت علاقے میں داخل ہوئی تو عائشہ نے حیرانگی سے مانی کی طرف دیکھا ہم گھر جا رہے ہیں؟
جی جان لیکن ایک وعدہ کرو مجھ سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا؟
کسی کو کچھ بھی بتانے کی ضرورت نہیں ہے اب تم میری بیوی ہو عزت ہو میری مجھے لگتا ہے یہی کافی ہے ۔۔۔۔۔۔۔
لیکن مانی ہم اتنی بڑی بات کب تک؟
جب تک چُھپا سکے گے پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے عائشہ اتنے سالوں بعد اپنے گھر کے باہر کھڑی تھی اندر جانے کی ہمت نہیں ہورہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مانی پلیز واپس چلے؟
میری عاشی اتنی کمزور تو نہیں ۔۔۔۔۔
اپنے کمزور کر دیتے ہیں مانی کس منہ سے سامنا کروں سب کا بہت دکھ دیا ہے سب کو ۔۔۔۔۔۔۔
عاشی تم یہ سوچو ہمارے اپنے ہی ہماری طاقت ہے رحمان عائشہ کا ہاتھ تھامے گھر کے اندر داخل ہوا سامنے ہال میں بیٹھا ارحم اپنی چھوٹی سی بیٹی کو اُٹھا کر باتیں کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔
کیا کھایا تھا آج سکول میں ؟
بابا میں نے آج کچھ نہیں کھایا تھا ۔۔۔۔۔
کیوں؟
اج آپکی عاشی کا موڈ نہیں تھا بابا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں کسی فرینڈ نے کچھ کہا تھا بات کرتے کرتے ارحم کی نظر عائشہ پر پڑی جو دور کھڑی رو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
عائشہ؟
ارحم عائشہ کی طرف بھاگا میری بہن عائشہ بھائی کے گلے لگتے ہی رونے لگی کہاں تھی عائشہ بیٹا کبھی ہماری یاد نہیں ائی تمہیں کتنا تلاش کیا تھا بابا سے چُھپ کر میں نے بہت ہرٹ کیا تم نے عائشہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سوری بھائی مجھے معاف کردے رحمان نے دونوں کو سنبھالہ تھا باہر آواز سُنتے ہی نفیسہ اور ارسلان صاحب باہر آئے تھے علینہ  (عائشہ کی بھابھی )بھی کمرے سے باہر ائی اتنے سالوں بعد اپنی بیٹی کو دیکھ ارسلان صاحب پگھل گئے تھے عائشہ کو گلے سے لگائے بہت شکوے کیے عائشہ سب سے معافی مانگ کر خود کو سنبھالنے کی کوشش کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
عائشہ اس سے ملو ہماری چھوٹی سی عاشی ارحم نے اپنی بیٹی کو عائشہ کی طرف بڑھایا ۔۔۔۔۔
اسلام و علیکم!
وعلیکم السلام !  پھوپھو کی جان ۔۔۔۔۔
یہ اپکی پھوپھو ہے ارحم نے عائشہ کا تعارف کروایا ۔۔۔
بابا میری فرینڈ کی پھوپھو ہے اب میں بھی بتاؤ گی میری بھی پھوپھو ہے عاشی نے بری معصومیت سے اپنی بات کہی سب مسکرا دیے تھے رحمان کو عائشہ کے شوہر کی حیثیت سے بہت عزت دی گئی سب کھانے پر باتوں میں مصروف تھے عائشہ نے اللہ کا شکر ادا کیا واقعی ہمارے اپنے ہماری طاقت ہوتے ہیں اللہ تعالیٰ نے ماں باپ عطا کر کے ہم پر سب سے برا احسان کیا ہے میں اللہ کی شکرگزار ہوں جس نے مجھے ذلت کی کھائی سے نکال کر مجھے اس مقام پر پہنچا دیا ۔۔۔۔۔
کیا ہوا عائشہ کھانا پسند نہیں ایا علینہ نے بہت محبت سے عائشہ کے کندھے پر ہاتھ رکھا ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں بھابھی کھانا بہت اچھا بنا ہے۔۔۔۔
 تمہارے بھائی اکثر نام لیتے تھے عائشہ کو بریانی بہت پسند ہے لیکن اب تم اچانک ائی تو ٹائم نہیں تھا اج تم یہی رک جاؤ رات میں بنا کر کھائے گے ۔۔۔۔۔۔
نہیں ماما، گھر میں اکیلی ہے تو ۔۔۔۔
کوئی بات نہیں  عائشہ اگر رکنا چاہو تو رک جاؤ گھر پھوپھو بھی تو ہے ۔۔۔۔۔
چلو پکا ہو گیا اج اپ دونوں یہی رہو گے علینہ نے کنفرم کرنا چاہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
میں؟  نہیں اپ عائشہ کو روک لے میں کل لینے اجاؤ گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیٹا اپ بھی رہو گے تو مجھے خوشی ہو گی ارسلان صاحب نے بہت پیار سے کہا رحمان منع نہیں کر سکا تھا نفیسہ بیگم اپنی بیٹی کو دیکھ اللہ کا شکر ادا کر رہی تھی سب خوش تھے رحمان نے عائشہ کی طرف دیکھا جو پہلے ہی مانی کی طرف دیکھ رہی تھی عائشہ نے رحمان کا شکریہ ادا کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
--------------------------

ہانیہ نماز کے بعد باہر لان میں اکر بیٹھ گئی تھی حاتم ابھی تک گھر نہیں ایا تھا ہانیہ کو بھوک محسوس ہورہی تھی لیکن جھجک کی وجہ سے کہہ نہیں پارہی تھی کافی انتطار کے بعد ہانیہ ہال میں اکر بیٹھ گئی تھی وہی بیٹھے بیٹھے وہ سو گئی تھی ۔۔۔۔۔۔
حاتم شاید اُسکے سونے کا ہی ویٹ کر رہا تھا باہر فضول لونگ ڈرائیو کے بعد جب وہ گھر ایا تو ہانیہ صوفے پر سو رہی تھی ملازم کو کھانے کا پوچھا تو اسنے بتایا ہانیہ بی بی نے کھانا نہیں کھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم نے ہانیہ کو دو بار آواز دی لیکن وہ بہت گہری نیند میں تھی حاتم نے پاس بیٹھ کر ہانیہ کے کندھے پر اپنا ہاتھ رکھا ہانیہ ایک دم اچھلی تھی ۔۔۔۔۔۔
سوری میں ڈرانا نہیں چارہا تھا لیکن میں نے آواز بھی دی تھی ۔۔۔۔
ہانیہ شرمندہ ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
می میر میری آن انکھ لگ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ریلیکس ہوجاؤ ہانیہ اور کھانا کیوں نہیں کھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے بھوک نہیں تھی ہانیہ صاف جھوٹ بول گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے تو بہت بھوک لگی ہے میرا ساتھ نہیں دو گی؟
ج جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہلے تو ڈرنا بند کرو ہانیہ میں کچھ نہیں کہوں گا تمہیں پرامس پلیز ریلیکس ہوجاؤ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ اپنا دوپٹہ سہی کرتی ہوئی کچن کی طرف بڑھنے لگی تھی جب حاتم اُس کا ہاتھ تھام چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
یہاں بیٹھو ۔۔۔۔۔۔۔۔ہانیہ سمٹ کر صوفے پر بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔
حاتم گھٹنوں کے بل جھکا تھا مجھے معاف نہیں کرسکتی؟
کر تو دیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں کیا ہانیہ جب تم مجھے معاف کردو گی ہمیں بات کرنے کے لیے بہانے کی ضرورت نہیں پڑے گی ۔۔۔۔۔
م می میں ایک دم سے کیسے سب ٹھیک کردوں؟  ہانیہ بے بسی سے بولی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
مطلب تمہیں ٹائم چاہیے ہانیہ جتنا ٹائم چاہئے لے لو تم میرے پاس آگئی ہو میرے لیے یہ بھی بہت ہے بس اب مجھے چھوڑ کر نہیں جانا پلیز حاتم ہانیہ کے ہاتھ تھامے رونے لگا تھا میں بہت اکیلا ہو گیا ہوں بہت اکیلا ہانیہ مجھ سے دور ہونے کا سوچنا بھی مت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ خاموش تھی حاتم بھی خاموش تھا۔۔۔۔۔
مجھے بھوک لگی ہے ہانیہ کی برداشت ختم ہوگئی تھی وہ صبح سے بھوکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
اُتھو چلو کھانا کھاتے ہے ہانیہ ٹیبل پر بیٹھتے ہی کھانا کھانے لگی تھی حاتم کی پرواہ کیے بغیر وہ کھانے میں مصروف تھی حاتم مسلسل اس پر اپنی نظریں جمائے تھا وہ پہلے سے جیسی نہیں تھی ہیلدی لگ رہی تھی ہانیہ نے خود پر نظریں محسوس کرتے ہی اپنی کھانے کے رفتار کم کی ۔۔۔۔۔
جب بھوک لگی تھی تو کھانا کیوں نہیں کھایا تھا؟
ویسے ہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آئندہ ایسا نہیں ہو اپنی صحت کا بہت خیال رکھنا ہے ہانیہ ۔۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی بات نہیں کرو گی؟
صبح نماز کے لیے اُٹھا دوں اپکو؟
حاتم مسکرایا بلکل اُتھا دینا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ منہ صاف کرتی اپنے کمرے کی طرف جانے لگی ۔۔۔۔۔۔
اب لیٹ جاؤ گی؟
جی ۔۔۔۔۔۔
نہیں چلو پہلے تھوڑی واک کرلو اتنا کھانا کھا کر لیٹنا ٹھیک نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔
جی حاتم ہانیہ کو ساتھ لیے لان میں ایا  جوتا اتارو اور گھاس پر واک کرو میں یہاں بیٹھتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔۔ہانیہ جوتا سائیڈ پر اتار واک کرنے لگی تھی حاتم اپنے موبائل پر مصروف تھا اچانک ہانیہ چیخی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
آآآآآ ۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا ہانیہ کیا ہوا ہے ہانیہ نے اپنا پاؤں اُٹھایا تو خون بہہ رہا تھا پاوں میں شیشہ پیوست تھا حاتم ہانیہ کو کرسی پر بیٹھا کر دھاڑا تھا ملازم کو، آواز دیتا حاتم غصے سے چیخ رہا تھا ہانیہ سہم گئی تھی درد سے آنسو بہہ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی صاحب جی  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم لوگوں کو فارغ رہنے کے پیسے ملتے ہے؟
یہاں صفائی نہیں کی گئی جاو ڈاکٹر کو فون کرو نہیں میں خود کر لیتا تمہیں تو بعد میں دیکھتا ہوں ۔۔۔۔۔
وہ 50 سالہ مرد اپنا سر جُھکائے اندر چلا گیا ہانیہ اپنا درد بھول اسے دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔
حاتم ڈاکٹر کو کال کر نیچے بیٹھا تھا اوپر کرو اپنا پاؤں ۔۔۔۔۔
نہیں  ہانیہ نے روتے ہوئے انکار کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پلیز درد نہیں ہوگی بس یہ شیشہ نکال دوں ورنہ زیادہ درد ہو گی ۔۔۔۔۔۔
نہیں ہانیہ اپنا پاؤں اور پیچھے کر گئی تھی ۔۔۔۔۔
پلیز صرف ایک سکینڈ حاتم نے ہانیہ کی سُنے بغیر اسکا پاؤں پکڑ شیشہ کھینچ دیا ۔۔۔۔۔۔
آآآآآ تکلیف سے رونے میں تیزی آگئی تھی چلو اندر بیڈ پر چلو ۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے بہت درد ہورہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے حاتم ہانیہ کو اُٹھا کر بیڈ روم میں لے ایا تھا بس ڈاکٹر ارہا ہوگا اب رونا تو بند کرو یار ۔۔۔۔۔۔
مجھے درد ہورہی ہے ۔۔۔۔۔
مجھے پتہ ہے لیکن پلیز رو نہیں ۔۔۔۔۔۔۔
اتنے میں ملازم ڈاکٹر کو لے کر کمرے میں داخل ہوا ۔۔۔۔۔
ڈاکٹر نے بینڈیج کردی اور میڈیسن لکھ کردی تھی ہانیہ اب کچھ ریلیکس ہوگئی تھی لیکن درد کی وجہ سے انکھیں ابھی بھی نم تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر جا چکا تھا حاتم نے ایک ملازم کو میڈیسن لینے بھیجا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ابھی آتا ہوں حاتم کمرے سے باہر جانے والا تھا جب ہانیہ کی آواز کانوں میں پڑی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاتم؟  وہ جانتی تھی حاتم کہاں جارہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کے ایسے آواز دینے پر اندر کہی سکون اترا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی بولو ۔۔۔۔۔۔۔۔
میری ایک بات مانے گے؟
ہانیہ آئندہ یہ  نہ پوچھنا کہہ دیا کرو تمہاری کہی ہر بات میرے لیے بہت اہمیت رکھتی ہے ۔۔۔۔۔
آپ ان کو کچھ نہیں کہنا آپکو ایسے بات نہیں کرنی چاہیے تھی وہ ملازم ہے تو کیا انسان نہیں ہانیہ نے ڈرتے ڈرتے اپنی بات مکمل کی ۔۔۔۔۔۔۔
حاتم ہانیہ کا ہاتھ تھام کر بیٹھ گیا تھا بس،؟
اگر ایسے ہی پیار سے مجھے سمجھاؤ گی تو میں ہر بات سمجھ جاؤ گا ہانیہ نے حیرانگی سے حاتم کی طرف دیکھا کیا یہ وہی انسان ہے کہی میں خواب تو نہیں دیکھ رہی اگر ہانیہ نے حاتم کو موقع دیا تھا تو حاتم بھی اسکا پورا فائدہ اُاٹھانا چاہتا تھا وہ ہانیہ کو کوئی شکایت کا موقع نہیں دینا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کبھی کبھی انسان اپنے ماحول میں ایسا ڈھل جاتا ہے کہ اپنے اندر موجود اچھے انسان کو نہیں پہچان پاتا جبکہ ہر بُرے انسان میں اچھا، انسان موجود ہوتا ہے جسکو حاتم پہچان گیا تھا سدھر گیا تھا ہانیہ حاتم کے ساتھ خوش رہنے کی کوشش کرنے لگی تھی دونوں کے درمیان سب کچھ ٹھیک نہ سہی لیکن اب بہت کچھ ٹھیک ہونے لگا تھا حاتم کا ہانیہ کا بہت خیال رکھنا ہر بات ماننا ہانیہ کے دل سے ماضی کی گرد صاف کرنے لگا تھا ہانیہ کی کنڈیشن کو نظر میں رکھتے ہوئے حاتم نے کبھی اسے تنگ نہیں کیا تھا وہ ایک کمرے میں رہتے ہوئے ہانیہ کو کبھی فورس نہیں کیا تھا عائشہ اور رحمان حاتم کی غیر موجودگی میں بہت بار ائے تھے ملنے رحمان ہانیہ کو موبائل بھی دے گیا تھا جس پر وہ ہانیہ سے بات کرتے حال پوچھ لیتے تھے اخر کار وہ دن بھی اگیا تھا جس کا اب سب کو انتطار تھا ہانیہ کی طبعیت بہت خراب ہورہی تھی عائشہ فون پر سُنتے ہی آسیہ اور رحمان کے ساتھ ہسپتال پہنچی تھی ہانیہ آپریشن تھیٹر میں تھی حاتم پریشان سا باہر کھڑا تھا  رحمان نے حاتم کو تسلی دی اللہ سے دعا کرو سب ٹھیک ہوجائے گا پریشان نہیں ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر نے باہر اتے ہی خوشخبری سنائی مبارک ہو بیٹی ہوئی ہے سب سُن کر خوش ہوئے ایک دوسرے کو مبارک باد دینے لگے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھوڑی دیر باد سیسٹر نے اکر حاتم کا پوچھا  ۔۔۔۔۔
جی میں ہوں حاتم ۔۔۔۔۔۔اپکی وائف بُلا رہی ہے ۔۔۔۔۔
حاتم سُنے ہی ہانیہ کے روم کی طرف بڑھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسی ہو؟
ٹھیک ہوں ۔۔۔۔۔
اپ خوش ہے؟
بہت خوش ہوں ہانیہ حاتم نے اپنا ہاتھ ہانیہ کے سر رکھا میں نے اللہ سے دعا کی تھی اگر مجھے معاف کردیا گیا ہے تو مجھے بیٹی سے نواز دے اور اج مجھے یقین ہوگیا ہے اللہ نے مجھے معاف کردیا ہانیہ ۔۔۔۔
ہانیہ نے حاتم کا ہاتھ اپنے ہاتھوں میں لیا میں نے بھی اپکو معاف کیا حاتم دل سے معاف کیا میری بیٹی کے باپ سے بڑھ کر اسکا کوئی محافظ نہیں ہو سکتا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اللہ تعالیٰ ہماری بیٹی کی قسمت اچھی کرے آمین ۔۔۔
آمین حاتم کی انکھ سے انسو ندامت گِرا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
کچھ دن بعد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ یار یہ کیوں نہیں سوتی؟
اپ پوچھ لو شاید اپکو بتا دے ہانیہ نے شرارت سے کہا ۔۔۔۔
یار نیند ارہی ہے پلیز ۔۔۔۔۔۔
اپ دوسرے روم میں چلے جاؤ ۔۔۔۔
نہیں مجھے یہی سونا ہے تم دونوں کے پاس، حاتم منہ پر تکیہ رکھتے ہوئے بولا ۔۔۔۔۔
پھر سونے کی کوشش کرے ایک گھنٹے بعد تاجور سو گئی تھی ہانیہ اسے لیٹا کر بیڈ پر آئی ہی تھی کہ حاتم ہانیہ کی طرف دیکھ مسکرایا ۔۔۔۔۔۔۔
یہ اپکو نیند آئی تھی ۔۔۔۔۔۔
یار ائی تھی اب اُڑ گئی ۔۔۔
تاجور اُٹھ جائے گی اپ سو، جاؤ ۔۔۔۔
ہاہاہا بہانے مت بناؤ یار اب اتنا جاگنے کا انعام بھی تو ملنا چاہیے حاتم ہانیہ پر جُھکا ہی تھا کہ تاجور رونے لگی ۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کا قہقہ روم میں گونجا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ختم شد
اپ کو یح تحریر کیسی لگی کمینٹ کر کے ضرور آگاہ کریں
شکریہ

Reactions:

0 comments:

Post a Comment